Skip to main content

Full text of "Dars e Nizami Darja Sabeaa Maoqoof Alai 7th year"

See other formats


افاداث : لا ا سرا مکل .ت شر اتازالامائزہ ضرت ولان یم السفان صَاحب 


صرروناق ادرارس المرب ہپالتان 


شرعیات: سپیلں وترتب چدید 


مولانا می رانوارالحق سی مام پیش دفظ :مُولانا فقنظام الین شامزن تم 


اتاد برای برس عا ڈها ال 


تقریظات: ملاتا احسان الث رشا ی بار می و موا ارال شوت رر 


7 > | ۲ ۰ ۶م‎ 
VIO 7.007 


جات ان 2213768 


تشبیات. ہیل اور اضافۃعنوانات کے ساتھ ایک ےا تفر 


- 


افاداث :”انا رام رگ رہد نم اتا الامانذہ رت ولا نایم اران صَاحب 


صرروفاق الدارں الع بپالتان 


تشریات سلیل وترتیب جدید ۱ 
مولان ی را نوا راخ قا ی مر پش ری امھ 0-1 
ا مم پیش لفظ ٣:‏ ولنا ی نظام الین شام رن م _ 


اساد ہرایے دارالاقتاء 


تقریظات: ۶نا احسان الترشاق بسعئیزی و موللا دال شوت صا امو ری 


٦7‏ )-۔>_٭گ یرگڈ 
لاا ین اتان 2213768 


تی 4 رکش انات کے جم توق 
کیت بک دارالا شما ع لرا ہت یتفوظا ہں_ 


امام : یل اشر ف اف دارالاشاع کرای ٍ 
کپوزک نز ملا نا طارص د نی صاحب 

اعت : اء اح پگ پس رابک 
غ ام : ا 


میت الت رآ ن اردو باذا کرای ادارۃالمعارف جا مع دارالعو م رای 


بت الوم 20با روڈ لا ہور ادارواسلامیات۱۹۰۔ا نا ری لا مور 

کڈ لو پچیوٹ پاز ارس ل پاد کسی اماردو زارلا ہور 
ا ا رکٹ راج پازارراوالینژی کتب اماد یی ف٢‏ تال روۋمتان 
پو یور ی باک یر زارشاور اار۶ اسلا میات م وکن ج رګا رووا ا ذارکراتی 


یا ت اتب بلقا ل اقرف الم د اشنا قالاپ وا القرآن ولعلومالا ملام 8-437 یب روڈ کہا یی 


ف رست ضا ن 


مین الپدا جد جل م 


الاب الضار ت اتتا ب احیاءاموات 


ٹا کتاب المضاربة4 
و اپب :مضمارم تکا ان» لوی 
اور اصطلا ی تتن کم ولال بم لکرنے 
واے اور ال کے با کک کے درمیان 
تلق یل ورک م_ 
و :ضار بت کی تھریف اور گل 


ارت بضاعت اورٹرضل ے 


دریان کارق کے ال ےل 


tr ÛC‏ ے؟ مضاریت 


کچھ ددم دیے گا شرط لگا وک اکر 


مضار مت می ال یکوئی ش رط کا ی ہو 
٠‏ جن سے اس کے کی مقدار یس 
٠‏ | جات بات رہ نت 


تو :۔ مضار پک رای ا مال وال 
کر ےکی شرط؛مضاربت اورشرک تکی 
صورت میں عقر مضار ہت شس ال 
والے کے ذ مہ می کیک ےکی شر اک 
موتا عقر مفاوضہ ما عاك کے شرکاء بش 
اک ی س 2 
ENA‏ 


اخقیارات ماگل ہو جاتے میں؟ گیا 
مضارب اپنا ال مضارت کر 
س جا جاک ےا مال کی یل 
اقوال یبورک 


و ایک مضاربت کا ما لک یکن 


ال ےکلہ کت ے؟ 
ال کے لے تاعرو مقررو» مال گی 
تفیل,درنل 

فقو اگ رب المالی نے انا مال 
مضا ب لوس کسوس شر ر صو مکی 
شارت کے لے دیا تو ا کی رعاعت 
رد سے بای اورکس جرک اور 
اگ با و دور ےلودوسر e‏ 
ٹ کاردبار کے گے د پاچ 75 
مضارب مال نضاربت خلاف شرط 
دوسرےشہرئے جا چھروہاں سے پگ 


ارس نے کے بع دای کے لخر ی واج 
آ جاۓے۔غلاف ورزی 4 نضورلاں 


کی ضااب شان ازم ١‏ ے۔ 
جائع صخیر اور مسو کی رواوں س 
اخلاف اور اس کا عل۔ اہ ایک شمر 


ای ملا م 


ا .ا د ا 
ےت نے ذ ریہ ایک ڑکا ہو جانے کے بحراگراں 
م پازاروں ںکا رو با رکا ہوا سے پا سے نس ب کا وگو یکر ےآو نب ثایت 
ا جج فازنت کے لئے یں ہوگا پانھیں؟ اور رب الال کے ما یکا 
انان پا سی شم ری شرو زان صییل ذمہ دارکون ہوگاء ال کی ادا یک کیا 
| مہائل اق ال امہ ولائل۔ صورت ہوگی؟ ار رب الما ل لئے 
او :۔ اکر رپ ایال نے مضارب کے سے بوری تمت وسو لکر و 
کاک و و ن کاک اک تہ کا کی دو مطالہ 
کرو ا ہو کیاکی مضار بکو کن ہوتا لکت ےس کی فی ل تم اقول 
ےکن ذو مال تفار بے کا لے اا َ‫ 

مخ اوخ بر ےجس پیش پراری کے بعد باب المضارب یضارب 

ھی زی کیا ا "02 و پاپ مضارب کا دور ےکو 
0ء 1و0 شارت ا کن رت الال نے 
و E‏ مضار ت ے کاروہار دوسر ےکومضارب نان ےکی اماذت | 
کرنے کے اعدا کہ ےآ جا ےلو ین دی ورای کر نے تخل مل 
وب سی اتوال اتک رام ءد نل 

یړ سا ے جو تھے نی ال و کا رت 
مضارب ارب المالی کےجن می ازخود مفارب بنا نا اور ایک ان کا دوسرے 
ہوجاۓ؟ اورا اگمرا یما ہ9 جا ےوک یکرم تن سکواشین ہنا ناء رب الما لکی اجازت 
:و 1 ل تر کو کے بعد ہو با خیرات +دونوں ےم ا 
یر نے کے بعدا سکی تمت ای بڑھ کے ورمیان امہ فقہاء کے اقوالء 


گی بش ےک میس ےو دا اکنا تل رال : 7 

ہوتخعبیل مال مم اختلاف اه 5 :رب الال نے نف کیاکی 
07 شرط بر ای کومضار بک ال دیا برای 
٠‏ ۔ ایک شس کے پاک مضاربت نے ددص ےش لکوایک تھائی کے کشرز 


بے دہ مال دیدیاء برای مضاربت ے 
کل پارو موو رمع سآ ا نکی 
می طرں موی اور وو متاح لال 
ہوں کے ا ہیں ست ہکی پار صورتوں 
مس سے بی صور تک یلیل رکم 


ہے ہزار ددم تھے اس نے ان ے | 
انر خر ی رک ری تک کی اور ال سے 
ایک بیہ پیا م وکیا ء برای ونت جب کہ 
کی تیت گی زا رر کی ابد مس ی 
ڈیڑھ برا ہوگئیء ای کی طرف انی 
لات کی تست ک ۔ ستل کی یری 


او :ضار بکا مال مضار ہت کے 


7 ۔ ستل کیا دور ی اور ترک 
ا »ولا 


۱ تھائی حصہ ےگا وراک کے غلا مکا ی 


ایک ٹھائی حصہ ہوگ ریہ وہ بھی اس 
کاردہار می لحم رک رے اورک 1 
حصہ بر اہوگا ارا زوك 8 
ای کے سا تح مضار ب تکامعام کیا اور 
اس میں اہ مول کے لے می ش رک تک 
یں ما لک افحضیل کم ومیل 

: مضارب کے محرول 
ےس یں ارت 


الال بامضمارب مر جاۓ ءیاا ندنل 


و :اہراب الما مہا ےا سے 
: مفار بک برطر فکردے پھر اے 
ا کی خر ہوئی و کس ہوک ہوہ ابا 
تصرف باتی رک کات ے یں ۔اگر 
7 ھ0 
راس ا لمال ال مال شیل مو جود ہو یا 
اے دوسری کل ہل برل دا ہو 
مالک سیل :عم ورال 

وج 72 ردپ الال اور ماداب 
وولوں ہی مضاریت کے موابد وک 
کرو سا ال 1 ایل 2 و یی 


دلال او رسا ر کے درمیا نٹرتی؟ 


و امار ہت کے اک یی سے 


| ضا ہوجاۓء اراتاضا ع مواج 
لش ی او اب 


الال اور مضارب دوثوں جن ل 


و ا 
سورت میں موجوددمال ل سے یھ یا 
سب ضا م وکیا ہو اکر رب امال ایی 
پری بی وصو ل کر A,‏ 
رے٤‏ ا ررلوں طورے اتا معاہرہ 
شک کے دوپارہ میا کن کل 
انل پک وزی 

و کا ا : ضار ب کیا کا موکرکتا 
ے؟ او رکا ایل بر ے؟ یل 
تال اش ولال۔ 

و8 :اگ رمقارب بے بال کے دامکو 
میا دسرے کے ماد وقول 


ٰ کر نے۔ ایے مو کے وو رتا ۶ 


ج یہاں بیان سے یئ ء ا نکر 
ال اکل ضس 
رھ ہر مضارب کو یکن ےو 


۱ مار یت کے ال ٹس سے اپے خلا یا 
7اد یکا نا حکردے اگ مارب کے 


ال سے پھھ مالاس رب الما کوک 
کاروبار 50 2 دے تال ٣ی‏ 
تفصیل مم اقوا ل نتب ےک رامم ءال 
تر :ارب اراپ شر ہونے 
سے با باشہرے نین جا سے 
ا ےی سیا کن و یں 
مضارب تک اور فاد ہ کے قوق میں 


ےک نیلم 


ت8 :۔ مضارب اپ سفرکی بدت مل 
نوق اورضرو رک سا مان خر ی کے کے 
بح ری جب اس ش رم وائی ےآ ا 
توا ےکی اکتا چاہے اکر ای کن سر 
س ا رور ما e‏ وک وہ رات کے 


ین الہدابجد بر جلرنشخ 


یک ا کک رک و 
وت اپ ےگ مھ بی ت مک رسلا ہو يانہ ا سے رب الال کے ہاتھ پاروسو میں 
ک رکا وتو مضار بک وکں انراز اور جج فو ىہ رلنے اے مراک بت ہو ۓے 
صاب ےفقہ اتال می لا نا جا ے٭ لے میں روخ ت کر ے کا فصل 
لسم ال پعم اختلاف امبو ل ۱ مال يمول 

:ارب اپ مشار برت سے زج ۔ ہار نمف نع کی شر 
کاو کات امال ان ےا ے ضار ب کے با ایک ہزار درم 
سفرفقہ وظیرہ کے اخراجات کال م وی ٤‏ اوزان ذولون کےا شارب 
یں شارک سا سے انی ۔ گر مضارب نے ایک ییا لا خر ړا سکی قمت دو 
ات ساب نکوم راس تیا پا ےلو اس زارو رتم مول» رفلام نے ایخ کو 
یس س ےکی یکن اخراجا کوبھی شا ش٠‏ لکرڈالا باو ا کا فد سی سط رب اداکیا 
رک ے؟ یا گر مضا ری تک کل م جا گا؟ تل کی بور فصل چم 
سے ساما نت کرای شی جیب ےکی 
رز اک ری کر ڈانے الال رک ے 
روا و8 
ران رم میس اس شا لکا 
سے پانیں؟ مرا تیل کم رمل 


در ہوں اور وو ان ے ایک غلا 7 
0و ی قب تک اداشی سے لی 
27 ورتم ضا ہو گے ای 2 رب 


ووی تل ۔ مضاربہت کے عفرن الال نے وہر اداکردیی ہہ جن جار ہار 
سای نی ی نت المال 6 ا 
رج ۔ اگر مضارب کے مایا مقار ب کا ال مم سکس طرع جص 
90س یھو ہوگاءاور اکر کی صورت خر بددارگیٰ کے 


ول ا ل ا ۱ 
ما ی یل کم ورای 

صلاخلا ف‌کایان 
وار رال 
س ےکہا کے میرے ال دہ زار دزگموں 
می سے رال الال ایک رار اور ال 
ے دانع شرم 7 ھی آ لے رار 
ہے اور رب الما ا 72 
وولون یزار یل نے راس امال کے طور 
رد سے ے۔ ارب الما اورمضارب 
اکن کار کیا کے مس 


اختلاف ہوجان ےک وہ نف ہے یا 


میں پار درم تھے ۔ ال نے ان ے 
کیٹڑے فر یړ ر دو راا نکوفروشت 
کروی کر پا کو ٹم کش دے کا تھا 
الست ور ہ وھ صلی ور 
تفصیل تاقوالا ددلال 
: و ۔اگرمارب کے پا جرارددہم 
ہوںء اور رپ الما ا سو کے عونشس 
ایک لام نر یدکراپے اک مارب کے 
باتھ ہار درم ے فروش تگردیا ا 
مارب اس غلا ر رلک یی ٢و‏ سے 
کے ددم ےفر وخ تکر ےکا؟ اوراگر 
مفارب ایک براد سے ایک لام خر یکر 


اس نے نفام کے مات ضار ہت 
کے گے وی ہن ۔اورووسرے نے 
کہا کہ وہ تو جضاعت کے لے ہیںء 
2230 

و ۔ :اگ رماربت بے ما لی کا ووی 
کر 0)0 ےکہا 
کیم نے کے مہ مال قر کے عو پردیا 
انررب امال ےکی اکس باس 
ےے مہ مال بضاعت امات پا مضمارہت 
کے کدی تا ار الا نے 
رو یکی کس نے اس ال سے ایک 
ت27 کےکارو پا رک ےک وکہا تھاء 
لیکن مضارب اکا ئک ہکرت ہو۔ گر 
رب املال نے ووی کیا کے میکي ےُ 
و کے کاروپار 2 دی 


| تی بک عضارب کہ اکت نے غد‎ | ١ 


کے کاروپار کی دۓے 07 
دوپوں ہی نے اسۓ ائۓ ووی رگواہ 
ھی پیک رین کرد ا کے 
a‏ 
ار بھی نین کرد ہوء تو اختلاف 
مس رح رشن کیا جائۓء مسائ ل کی 
میں ری 
پل کتاب الو دیعة4 

و ات ورلچت کا یانں - 
رج وور صتورع ستوورع 


اتو دع ء تقدبی کی آری ف میم ر | 


ور لجرت »جوت اورره 
و :رتوو نے مال مان تک 
اپ نگھروالوں کے علاوہ دوسرے کے 


ET‏ نکسورٹوں یل مال امانت 
کودوسردل کے پا بھی رکید ینا ہوتا 
ہے الرمور او رتور کے ورمیا اك 
0 پان رک ےکی صورت میں 
احجازت دن می اشتلاف ہوگیاءاگر 
موو نے انی ابام تک وای یکا مھا 
ا روون ل و سے انار 
ریا رما ل ایل کم دا 2 
شیع :۔ اگرمستودع نے مال امام کو 
ا سے مال می اس رح بلا د کہ دولوں 
میس رن یہ ری» ار مووغعغ نے 
مستود عکواس کے ما لکواپنے مال شش 
ملا د نے تادان سے بر یکردیا ہو تل 
ک ےئ لکواباعت رکئے کے ب رتوو 
8 ,9ٰ0 
بی اور ایوا یکی کس یں ملد اتام 
ای کی نصیبل گم اقوال ا 
ولال 

و ۔ اکر صتودعغ کے پاس ال 


امات اس کے اپ ارادواوراختیار کے ٠‏ ۱ 


انر وہ اں کے ذائی ال ےی کل 
جا ءاگرمستودرع نے مال امامت س 
ےپور کر لے کے بح راک جیما اتا 
بھی مال اس شی ملاد ہا رسا را مال امامت 
پا کل کی اتور مع نے ال امامت 


| کی طاظت میں خیات ےکا م لیا بعد 


شس اس خیاحت کے ا رکو مر کے 


لے طور پر ا یکی تال تک نے لگا ۱ 


فی ال یکم اقو ول اص ال 

و 8 الک نے الۓ تور 
سے ابی اہاثت لپ ماگی راا نے 
دۓ ے ضاف 0 گر 


ت الہداے جد یڑ لر رش 


AFT a‏ سرت سد 
متوو لت مت مود (مالک ا ےگرویا ا ما لکی یل بم »الوال 
ات) کے علاد مکی وو نے کے ا دلال- 

ساس انیا رکیا ہوہ مال کی تفص و :اکر مالک نے اۓ ستوون 
اختلاف ائمیکرام »دلا سےکہا کم میرے اس بال کوحناظت 
او :کیا توور مال امام وس رس ٠‏ کے لئے ابی بیو با اب ےگھ کے افراد 
جاتے وقت اپنے ساتھ نے اسلکتا ےہ ٹس ہے کاو یا فلا ں لکوتردیاءیا 
فرقر کا ہو باورا ءاور مال ایارک ا گے فلاں کرو س رگواوراں | ۔ 
اس کال ول کیل سوا ری ارغ کیا کر میں رکو ا فلاں صندوثی مل 
ضرورت ہو ہو یا نہ مون ہو ار ای رکھویافلاں ضصندوق می ت رکھو یلجنا 
نے کل سا کر نے جان ےکی راح مستودع نے ان شرلوں کے خلا فک 
انح کروی ہو اوی صدروق مل روہ ضا ہوکیا صا ل 
رک کیل )کی کی با کیا مات یکی توالا برای _ 

۱ و ا 
مات رک کو زوو کر زین 
ازخرر وم چ نال کو اما دی اوراں 
کے پاک سے دہ امات ضا لی ہوکئی اہ 
اتی امات کے شا ہو جانے 7 
ے توان وصو کر ےگا I‏ 


ریہ بعد میں ان میں ہے ایک تھا 
کرای سے اپ حص وای ما کے بار 
ووخصوں ل بے مال لطورٹرش 


کی٠‏ کووب پچ رپجوڈوں بعدان س ین ول ات دائل 

ے صرف ای گنیس مقروش کے اس وج ا 
اکر اہج حص ہکا مطال کر ےیل روے ہیں جس کے پارے مین دو 
مال ہم ءالوال ات 7٭ مول نے اسںطر دو یکی اک یتام 


وج گر ایک تس نے ای ایک پر 
وو ابا ر ےک نے ر۶ 
7 مل م ہو یا موا اکر ووم تہنوں کی 
یز 070 
ایک نے ای ذم دار اسۓ ربک 
کے سپردکردگی کی ای چیہ کے بارے 
میس جوت بل سی ری 2 ب کی ایی 

جز جوقائل تی ہو با نود دآرمیوں کے 
درمیان امامت کے طور پر رکه ری * ران 

یں سے ایک نے وومرے کے حال 


روپ رف میم رے ہیں: می نے ال 
ہے ماس کی امانے رک تھا ستل ری 
پور یتیل اتوال اکر مدلا 

وج ایی ا 
لے بے ی کیا سے ارک فور 
قعچیانے یدگ کےا کم دے 
دی ا کیا بعد ہیں دوسرے برک کے لے 
کیم کی بای س میس غ بددوی 
اور انام نساع, کے اقوال, فصل 
مال +دلانل 


کر اا ا 


FT a AF a تھا‎ 


ح. ہے کا سے سائ ل کی خیل کم اقوال 
و8 ے کاب عاریت کا یانء اک ولال۔ 
07 0 زی ۔عاریت ب اکرایے کے ما کو اں 
اقرا تما کرام »اصطلا ی الفا کے مالک کل بپہنضیانے کے خر کا 


کان ڈمہدار ہوگا؟ گر عاریت پر ے 
مو ۓےکھوڑ ےکوی تن انت تس 
الک مالک ے شرا 
آراہست اناج بادا اور وہ 
داشا اوا ےگا 
نہیں نیل اتل عم درئل_ 

و6 کیا ایک نٹ اپنے پا اما 
کےکھوڑ وا سے غلام پا ازم یا خور 
الک کے غلام یالوک یا سی نی سے 
تھ با کک کے بای دای کے سے 
ہو ے؟ تفصبیل الم 


۲ :کو شس ابنی خالی م کی 


ور Ec‏ ن الفاظ ے عار یت دیا 

© ہے اریت پول چردے 
کے بعد ال سے وای لیا جات ہے یا 
| س سا لک افصیل م اقول اک 
۱ 7 ساگر عارینے ل مو ڇر ضا 
ہوجاۓ ءا ارت شی تی رکواجارہ ہر 


د پا ری پے اسے دیب 


دوسر ے لعا ر درے سعلما سے اوزال 


گی خر کیا ےس ہکی تفیل عم 


اتلاف ا ولنل_ کوھتی کے لئے دے و تر انی 
ای :کو نز عاریت پردیی ےک اق ستاو کن الفاطظ ے کیے, یل 
صورتںں ہوثی ہیں ءا نکیل اوران مائل چم وال ول 

انلم راک ری نے کی سے عار ایک .ےت (کتاب الھبة 
اوھ ھت ت86 کک کک 
مار ہے رر سعلماے ‏ کل مول موت رن رط ۔- وس 
و :ادوپ اشرفیاں یا یی اوروز اصطلاگی الفاظ _واہی' ےکر والا 
یکس رح عار یت پردک جائیلء موب پیوس جک یکی 


ا ں کا رن ایچاب اور بول حرط 
فضرے۔ 

و وو ا کے 
گم کے !خی ری مال ہبہ پناس ہبہ کے 
نر کک ک ےم ہونے ےبھد 
و یل اتی م اقوال ام 
رم م »دلا 


رک گر درخت لگانے یا یکرنے یا 
ان فی رت کے اریت ایا از ۱ 
ا میس درشت ای ما ھی غرلی یا 
ارت بنا ڈالی تو کیا اس ز می کا مالک 
اسے انی ضرورت پک الغوروایں لے 


گن ادا جد بھ بل م 


با _ am‏ آس اتا ہتس 
٦‏ اوج 227 غ الفاظڑ ےم عقّر ہو ہے 
گر وی مکان ایک نی نے دو دمیوں 
1 > اکر دفقیبروں دو الہ ارو و 
دل در کم :ہہ با صد کے ور مردئۓ ء 
تفصی ل اتل پک باتو ال ا٠‏ ولال_ 
و ا یا مان اون 
۱ ٹیس اسر ب یکی اک ای کودوتیای اور 

دوسر ےکو ایک تائی ا 
اک جردا یو ےا اد 
ای کوان کے حصو ں کی افصییل چاری» 


وتم الک ىا 
ہوگا - ل مشا کو ہ کے کا مہ 
ال ۴ اقوال ای ےکرام» 
دنل۔ 

و :ق جن کے رش 


و یا صب کر نکی صورت یں 


تب کر نے ۓے ا اران ETA‏ 
ہگ > مابات ےک اور ای کی سو ہے و ہو 
ا نے ا جو ابھی کک ور کات دايا ٹن رط 
گیہوں کے اندر سے پا کل چو رانوں و 
و و وشن بی کےا وائیں لے کا ۳۷۶ 02920 
گن جو رورے بی سے بب کیا یل وای لین پائ سے پیل انل کم 


مال کم دای 

وگ کو ہبہ یا فروض تک مول 
تر جو یی سے ی اس کے م مس 
مو جود ہو وہای چ کالب مالک ہوگاء 
اکر باپ نے یامال نے اہ چو ےھ 
ت7 ال ےکن اة 


وال ا رلال- 

کے ہہ سے رو جا ا 
مواح, ارک نے انی قائل زراعت 
زی نک یکو ہیی ودای نے ای کے 
کناروں مل درخت لگاد ہے یا دوکان 
نوادی یا کوئی جوترہ بنالیا تو کیا ای 


و 5ک رہ ہک یگئی اور 
ای مکی طرف سے انس ےول بای 
گی ماں ما خود یہ نے اس مال بر شکیاء 
ا ا بالفہ بیو کوگوئی چچ ہن ی اورا 
گیطرف سے ال کے شوہر نے ج- 
کرای مات ل ایل نم ءال ا 
داال_ 


وج :اگ روآ دمیوں نے این ترک 


ان ی ن رشن سے 
نف حلشم کے بن 
کروی ارک نے اٹ من 
E 2200‏ 

9 ہے دور ےکو ب ہہ ہہ 
کیا سا کیل کم د ئل 


و :اگ مو ہوب لہ نے اپنے واب 


کا 


بیل۔ ہس جج بھ E‏ 


e‏ کے نٹ 


اتقامال لنےل و اورواہب نے الپ ہوہ ان کے نصف کے دے دوتو پاٹی 
ت کرلیاء اکر مووب کی طرف سے ضف ےم خود ماک ہو یا ان تم 
ان کے کے بر ہو ماک فصیی ل بم بول 
و کے ال ی تو :دی اورعرٹی کے لغوی اورشرتی 
دواہرے کی نے ال کہ گج و نے صن بم اتل ف ایب ولال 
ال یٹس سے لصف حصہ ایا ثاہت . فصل فى الصدقة 
رور اش و و نیل مک یان :صدقہ کے 
می ےا نات فا تک کے ے ت ضروری سے ی سء ال 
کے شک کا صرق ۔ صرد3 کے بعر 


و :ہہ کے بح دای ےکس طرح 
رج کیا م سی ے اوررہوں اکر نا جات 
بھی سے یں مب سے جو کرم کی 
مورت میس ئے شر وکا نیل سال» 
01 

و :اکر مو موب صاع ہوجاۓ اں 
کے بحو اس ینان خاب تلردے۔ 
اور ہوب لہ ے ا کا وان کی 
010و000 اگ ری ن ىاد 
دیک رط بے جگ می کیا ماک 


رجوء الدار کو صر دییا۔ نز ر کی 
۱ صورت پیم غیلب رمل 


وس 
ور :کاب اجار کا بیان »اچارات 
ی اور شی »وتء گم» 


اخلاف ای ء ‏ اصطلا ی الفاظطء 
سبءارکان ١‏ 

ار سے 
ہے ت7 جوف ےکی شر اور وسل »کون 
کو نک چزاجرت ی کن ہے ہی چز 


نیل ءاتلا فا بدلا ون کے 07 و یا دو کی 

و :ار کی نے ای باندی مم یکو اوت بن تی ے۔ مزافع اع مس 
| مک اورا ن ےل کواں ےک طرں ہوسکتا ے. ا مت تک 

کیااک باندٹی ےل کو لو زارکیایا ا ل 

لے م ب الخدم ومپائر ی کی کے »وای 

EE‏ و :عنام معلوم ہو ےکی صورت» 

ان شر وہ آن وام بک چرے اہار وی شیم نیل 

انی لوثاد ےگاء یا 1آزادکردےگایاام پل و شقن 

ولر بنا لگا انیل سک کم ورای و ef‏ :-ہاب۔ الاك اثزت کا تن 

و 099 0-7 


و :استاج کرای کے مکان یا 
کعیت پر بط کرلیا تو ال اچ تب 


اد اٹ ہوں۔ اور الل ے اج 
ر داد ےکا لکا دنآ نے ے 


ین ال بدا جد بر جارخ 


AFT ag e‏ بس ۔ 
جاۓ گاء سی i‏ 

ائ مدکی 
و 01-20 
اچرو کو یڑ کان اجر ت وصول 
کے کے ےا الو اوا سے پا 
روک کر رک لیں؟اگ ری کے e‏ 
ہو فلا مرکو چک کے اس کے؟ تا 
کے پاس لو اکا یسل لس جوب 
ہواوہا ی ےڑ رق ضول اکسا سے 
اگرمت جرنے بے اچ ر ے ابتزا مکو 
یس پیش ر اک لی کرو وروی جار اکام 
کہ ےکا تو ابر دوسزے ےکی اس 


TT‏ اتاو کے 
اند ری وق تی فصب پیا گیا الک 
مان اپ کرای ےکا کب مطال ہکرستا 


ا 
شہ رک جانے کے کے کرایے بے ی لو 
سواری والا ای ا جرت کہاں ۱ اور و 
انگ سنا سے سبل کی بور ی تنیل, 
اقرا ل نت ورا مم نکی د لال 

و ۔عام ى تل یا ماد پگ ىا 
خا درز ی ما پاور ہی سے متا ج نے 


اس ےگھ میں بلا کرای س ےکا مکرن ےکا کا مک وکراکتا ہے مسا لک یتفصیل, 

امحاب کیا یلاگ انی اج ت کا بولا _ 
۱ وقت مطال ےکر کے ہیں؟ اگ ری طرخ :ل۱ ا 
ان سے ای اک ڑا اکھانا ضا ہوجائۓ یا ےکی و سے میرے ایل و 


عا لک ےکآ کے ہی ں1 کے سو ےوش 
ےآ کے مر جب مات روہاں منیا 
ان شل دوافرادوفات با گے تھے اس 
سے بقیہ بے افرادکودی E‏ 


بل جا تو ای نقصا نکا اروق 
ات رع ہوگاء اقوالی اش کرام» 
ل وی »لای _ 

و :ول کاکماتا کے کے لئ جس 


کوک بلا ا گیا دہ انی اجر تکاکب سے مہ متا لمہ س کیک مرا بے خطا 
a‏ بوک اورا یکی ذم دار یک ب م فلا ں شر کے فلا ں س کک مرف انیا 
ہگ اوز اك ےا رق زول دوہ یا ال کا جواب ےآ 1 


1 کے لئ جس مدوریی بے رک گیا 
ہو۔ ا کی مہ دار کب تم ہوگیء 
تفیل توالا ولات 

و کک کی کا رکم یا ا دو کو ن 
تا ےک ای عزوو ری وصو ل کے 
کے کے نا لکورو ککراے پا کے 
باک رو کر رک ےکی صورت میں وو 
ال ضا ہو جا ے ا یکا ذم۔دارکون 
وک کو صورت ے ال ادا گیا 


2 تہ 
اس خ اک چھو ڑکر وای ۲ گیا 2 

ا سے اک صصورت یل بججائۓ کا 
نے جانے کے غل نے جانے رمعاطہ 
کٹ ےکیاہگر نس کے پاش اسے کی گیا 


سے بلاغ 


پت SECTS‏ وڈ 
0 جج ید ینا سا فيل بم »ورای 
وووالیی ےآ یا ما لکیافصیل رم وج :0 نے دوسر ےکا جا و رشلا 
اقوال امب خط لے جانے اور غل کے با نان گیچوں لادنے کے لے کراے پر 
نے جانے رمان وہ فرن»دلآل احرش اک وز ن کج یمک پالوپالاد 
اپ او الاچارة وا کین خلا تر کیا ا 

لیے لیا اور بعد اپ سات ایک اور 
۳ 7 ت نی اچاروں 2 جواز تس خواودود بلا ہو یا موا یا بل لیا 
س اشاق ہے اور س اخلاف 


ا خود ا ےکند سے یا 77 | 
: ہے۔ مالو اور زیو کور 1 2 ل وہ جانورعرکیا سا یفیل بت 
لئے لن ا لال 
رکنناء اورک کے کا مو ںکوکرنا یا نہ قوش کی نے ایک چا رکرایے ړا 
کنا پھیتی باڑ یک اگرنا “فصل کاس مم انان ھت 
گم دراگ کر اال پر مک نگیہوں لا دلیا _ اوروہ 
۱ و ۔ ار زین لع وقت فى اور جاور مرگیاء یا سواری کے ے جانور 
امت دی ےگ بات کی موی کے کرای لاء اورا نوا موک را کی 
لے ز مین لیت وق ت گن باتو ںک قرع ام ما مادا ا ا 
ضرورکی ےءز رت ک یل بم بات وال ابورا 
ا اس شس کارت زج :اک ایک جافورکومش لاو ے رو 
کی مو» ورشت ۶ ہوں:بزی رل نے جانے کے ےکا را 


اپلپاری ہو مال کی یل رھ عاریے لیا کر اس بر تین منز کک سوار 
دلا _ موگیاء پر و وال سے دوسرکی منزل بے 
و6 :ممت اجار ہو چانے کے بعد لوٹ آیاء اور ہاں وہ اور 
ز یکن کاما کک کے ہو ۓ درخت یامکاان 70 یل اقوال اک م 
کوای عالت رر دےگرٹوئے یا دلال۔ 

آل کے عن اوا قبت و کی E‏ ای كرما زین 


می تکرایے پرلیا۔ بعد س ا یکی 
' دور زین اک ےکر سوار ہوا ا 
۱ 0-2 


اراکروے اورخوو الک مجن جائے ‏ یا 
پوں بی اسے ربے دے وار کے 
چانورو ںکوکراہے 4 اناء اور نے گر 


۱ دوسرے کے ہوا ہگرد ینا ہکا یل کے جاور لاک ہویا ماک تفیل۔ 
کرایے نےکر دوصر ےکو ہنا یناہ _ ولال 
کیتش کے استعال کے انور :ارک نے ایک عدوراس لے 
کوکرایہ پر سک دوس سے کے استعال زدوری ړلا کہ وہ ا 6 زل میں 


گن ا لدا ے جد یر 


aT AFT TT‏ ھ2 


۸۹ 


لا 


ا 


رات سنوی شہرہیں یہنا ےکر 
وہ زرورال 01 سے 
ا ات وی إل 


ہی مھ 


.2 7 کر بت ے گیا 


پھر با مال بلاک ہوکیا یا لمت 
چنیا سال ینیل کم وی 


و E‏ 
ہر لے سے ب کہد با ا تاک ای س 
کیو ں کک کرو ںگا رگ رین وقت ر 
ہے گیہوں کہ رط (یشنی چون 
مارے با لے 1س بحر یں 
زینک سان وکیا سا کی لور 
تفصیل اقو ال ان کرا مزال رط کی 


و ای ورز ی واک کرد 


کہ ایک ددم کے عو اس کے کے 
کی تیا رک کے دے :لیکن اس نے 
ہیا ے تمص کے اء ما با جا مہ اکر کے 
وا می کی تفصیل عم اقوال اہ 
07 

پاپ الا جار ة الفا دة 

سے :باب اجاروفاسد کا ان ناں 
کی یف اق ال ام لال 

وج کرای یش نے ایک مان ہر 
بی ایک ددام کے اب سک ےکرایہ بے 


لاء ار ای صورت یل ایک اہ ای 


مکان یں روکر دوس رے مہو می بھی 
دنز ال ڈو زی فی 
می موا لہ لفظا ہر اکل ذکرکرن ےکا 
اون اور قاعدہء بے گھڑی 1 
تفصیل, اق ال ادلی 


وج :اگ نے دس ددجم کے وش 
ایک سال کے لے اک مکا نکراب رل 
می ہ نین کا صا بیس تاا ہی کا ۱ 
غارس ون سے اور دن یا ار 

سے ہہوگاء ما A‏ اتال 


املال 


نے گی ارک > وت 
ٹیا کرام رکال انیل 
او :عب ایس کا مطلب بگھم 
قوال اترام »ر 52 
وج ۔اذان۔ ت ad‏ ایا مت 
| تلی مق رن یدو نق اور رت پراجرت 


لن ےکا کم مان مس ماہر ہناد ینے 
کشر »اوا لارا مدلا 
و وا 025 
واعب ویره کے ساز و ماما کوکراہے 
لیا ینس شد و ال جا کاو وک ران نر 
دیا ووم کے لان ہو یاد مور م اې 
کک اقوال تکرام ولال 
و ضعہ پکودودھ پلا نے کے 
لے خا ودای مال ہو یا خی رہواجادہ یہ 
لین لی بجٹ کم اقوال ا 
ورال 

و یک دودھ پلا ما سکواس کے 
کھانے ا کے عو اجارہ 
رمتا ۔خواہ ان کے عالات مان 7 
4 ہوں ما پان یں کے گے 
ہوں رسای کی غصیل ۔عم۔ اقوال 
اکا م دلگ 

و6 ا کرای 
کے اہی شو ہر ےھ ستر یکمرنے سے 


کت 


E‏ تہ ہے او نس ]جم 


کے کو و 
بے ےکا کی وق لازم ہو سے یں؟ 
گرم ضعہ نے اپنے دود کے ہیا پیک 


کی کا دودے بلایا او ووو ن اعت | 


ہوگی یا میں ۔تفصیل مل _ اثوال 
ادرت 
و :اک یھ نے ایک جلا ے 
کین دا دبا تا کین ا ےڑا 
ب نگکردے اور ان یڑ ے سے آصف 
ای ردوری کے طور بر رک ےے۔ 
ا ےکا لک لوان 
کرای ےلاک وہ اس برخلا :دو 
ون لارو ر نے ا ےگا 
وان ن اک 
مزروری کےطور برو ےک ۔تغی اھان 
مل ضورع اور اس کا گم دو 
آےں نے جل ےککڑیاں اکل 
کر کے بازاد یش لانے بر شک تکیا۔ 
یران یں سے ایک ےک یں جح 
ال اوردوسرے نے ا کبیا ا 
دونوں نے اسم کیا ءاوردونوں نے 
کی ا نکو پا ھا رام ا لک یتیل 
تم ءا تقو ال ات کرام ءدلالی۔ 
و ا ے ایک اا 
سے اس شرع اجار کا محاملہ س ےکی کے 
AIO fos‏ ويم 
. کا کک ل وا 
اقوال اا ۱ ول 
و اکر خر نیت کی زین 
اس ترط برا جم مکی ی اس می بل 
آچلائوںگا۔ اس شس فی ڈالو ںگاء اور 


اس ممش بے بھی می ہی ڈالوں کا | ۱ 


مانک ز بین نے اس شرط پر زین اجرہٗ 
دک یک را دار ال ںو او رگھاد 
ڈا لگ پا ی کی تالیاں صاف او رگہری 
کیج ک6 اور وی ان ین ان جن 
چلا گا خاو صرف ایک سال کے لے 
زین کی ہو یا دون رالوں کے ےکی 
وسال فصل ل ا 


: لآل 


9 اک مز سرت 
کی کی ایک او کھت کے گوس یا ایک 
مکان دسرے کے مکان کے و 
رض کے رج 5 با ایک سواری دوک 
وار کے گن کرای نہ لی مسا یک 
تفیل, اام و اقوال ا بولا 

و اگ رای نخس نے فل کے ا لے 


ےک کا ترک ہو وہ لۓ 
شی ککو پا اس ےکر اواس لئے 
الت پل کہا ڈج ریس سے یں 
کاس حصکودوس اٹ یا کاگمدھا 
دري مین پر 7 پنیا و 
روا ےڈ کو دوسری جگ ب 
ا مال کی تفصییل تم 
اتال امہ ان ےد لال 

و6 :کی نے ایک زین اجار ہیل گر 
مقص یں تا کان ںکیا کا مکمرے 
کر 
کرنا۔ ای محالت ں ا نے زمین 
می کی کر ی ادص اجار هک رسکی م 
مریء اک نے اک لطا کن 
نک ان ا 
ے کرای پرلیا ۔ پرا ب اییا ی 


جن اہر یر صد بر 


جا > ام نس _ آجے 


سا مان لا دا ج وموم لا اما ت ہے اوراتقاقا 
و راس س ہا وت سے 


رک با متنا ما شصو رک سامان E‏ 


سا یلم ول مہ 
ام۔دلا 


باب مان الاجر 


:ایت ریف تمیں۔ایرنآ۔ 
کک م۔دلال | 
اجر رار وم سے ٹس نے ات 


آ پل یکا م کے تے اجادہپدیا- 
خواداییا ضرا رجی لوک ہو نے ہیں۔یا 
ا کوئی کارییری ہو گے روئی بے واا 
ا باور ات رول ررزی۔ 
اباو ره 

او :ترک ایھر ےم ات مکی خرالی 
ہو ہا ےک ورت میں دہ ا کا دار 
ہوتا سے پا ا می گم۔ 
اقوال اورا 

و :اہ اق نت کک کرای ے 
کوئی عادشہہوجائے۔ نا :سی کام افر 
رجا ا کا کے ڈوب ہا سے 
ال 0 ہوجا ے۔ تو وہ نقصان کا 
نان ہوگا ینعی ل مکل 

انلم رڈیل 

وا ایک س نے لک عوور 
ای لے رکھا کہ دہ اس کے ہد کے 
ےکو ایک مخحصویس جل سے دوسری 
صو جک جہنیادے۔ پھر نے 
جاتے ہوئۓ راستہ بیس اک مردور سے 
رز راو ار رتا 
ہو جاے ضصبیل سیر م اقوال 


اہ ۔دلا 7 


ری رت 
انور کے رگ سی طرید ے شر 
لگا باک خلا ماس کے موی کے کین 
ھا م نے یھنا ابا نس ے ووانسمان 
باجا ندم مکی با یک تک نے وانے نے 
برک غت کر کے ہو ال یکا حش کاٹ 0 
دی ۔ بقع یں وول ڑکا ابچھا موی ارا 
اق خائ کت ریف شال دم تام 
مسائ کی فعیل حم ۔ اقوال اتمہ۔ 
ولال 
و اکر ایر نای کے قیضہ میں 
ز تج ےل چز شال ہوجاۓ۔یا 
کام کا نقصان ہوا ےلو وہ ا لقصان 
7 زم دار ہوگا ا ہیں۔ مال کی 
سن جم .اق ال اراگ 

باب الا جار ی اعدالشرن 
£ :۔ باب چندشرطوں میں سے ایک 
اجار ٥ک‏ رکا ا وریا 
ا ےک سلاکی تم نے فاری 


۱ تداز کی کی ایک درام اودرو انراز 


تو دودرم اور پاکتالٰی انرا زکی ۳۲ 

ین ودم ھی چ چڑوں ٹین سے 
ای ککوانقیارکرنے پہ ہرای کک اجرت 
تعن ل و دوس ارت کان 
ہرگ مسا لک یتیل گم اقوال 
ائہ۔دلانل ١‏ 
و :ا اہ کو وت کے بارے س 
اغتار و گیا مو شلا : اکر ےکی ڑا آ نج ی 
کروی تو ا یکی عزوو ری میس ایک ددہم 
س7 اوراگرکل ر8 تو نمف درم 
ہوگا۔ پچھر بالف اگ رتیس رت جو ےون 


پش 


1710‪ 0 ۹ بلتم 


/] ,ص7‎ 7۳7  ]- 2 


یکرو ۔ سام لکیافصیل حم ۔اقوال 
ارام ۔داال- 
او :اہ مالک د کان یا مکان نے 
انی جک وا شر پرکرابہ پرد کم 
اراس میں عمط رکا کاروپا رکرو یا خود ر موتو 
ما ہوار ایی ورتم اور اللو ےک کاروپار 
روا یوت ےکورکھو بامواردوو رتم 
ہوں کے یا اس جافور ‏ ہکیہوں لا رکر 
| نے جاؤ یا اس ےف ری مگ ہت ر کک نے 
جا تو ایک درم اور اکم ہو لاوکر نے چا 
ا دو رہ تاد بک نے چا تو دوورہم 
لازم ہیں گے یل مال عم 
اقوالل اتر کرام ولگ 
٠ :‏ باب اجارة العبد 
:باب غلا مکواجارہ بد ینا۔ اگ 
نے دہرے 2 فلا م کو 1ڈ 
ضرمت کے لے اجار ہلان کیا وہای 
غلا موا ۓ تیر سر س بھی نے جاسکتا 
ے۔ گی نے ےکپ ہجو کراب 
لیا اورا نے ا کی اجرت غلام کے 
تھے ٹیش و ہرک ۔ لو کیا بعد بیل وہ اں 
ارت کو اس سے وای نے کت 
ےر سای کی تل کم _ اقوال 
00 
و :ا مس 0 دوسرے کے 
فلا مکوقص ب کر کے اپنے پا رکھا ای 
رص میں ا غلام نے ووسرے کے 
اک بلا زم تک کے اجرت وصو لکل 


ین اک ا صب دو ابت ال ے 


کرخورک ی گیا اکر ای تا صب نے خود | 


اس خلا مکو کی جک کام رکو اکر ا کی 
اجر خوروصول کی کے غلا مکی 


ارت اکا اپنا موی بی وصو لکر ے 
استعال میں نے آےء سای کی 
تل م ا ختلاف ام ورال 


7 ایی نے ایک فم دان 


دڈپیٹون کے ے اس حرط کے ساتجھ 
اچارہ لاک ایک ہین کے اسے جار 
درم اور ایک نہ کے اسے ا درم 
یس کے ای یی ےک کے خلا مک 
ماہوارایک دم ےک اجار ہ لی اور 
ورا بس بر یگ ی کرلی کن ایی بیاری 
کی وج سے با جھاگے ر ےکی وج سے وہ 
تاک رہا۔ ینہ کےآخ یس اس نے 


اس کے ما تک سے اک با تک شکاہت ۱ 


گی تو ا کہا کہ وہ تو اب ے ڈرا 


باب الاختلاف 


و :ہاب مو اور متاجر سے |. 


درمیان اختلاف۔اگ بپڑے کے مالک 
اور اک کے ورزی کے مان ہے 
اختلاف مرک مال ککپتا م وک س نے 
قیاع سی کوک تھا کرم ن یکی دی اور 


ورز ی کہتا ہو ٹیش یگیئی۔ ہی 


رح ر یا چام رک نے زاردنگک 


| سے ی کہا تھاادر مال کفکتا مرک 


2 مر رین ا و 
تھا سا کی خیل م ورال 

قب ا کے کے مالک اورکاری 
کر (درڑیی پا ری ) کے درمیان ای 
بات کا اختلاف :وک ھکار اپنے کا مکی 
ابقر تک طالب ہواور ما کک کہا ہوم 


جن الہدا جرد ر 


تفہ aa AFT‏ آ سے 


مر ے لے کا م ہیں یی وج :کیا مجاطہ اجارہ ہے ہہوجانے 


اقزت کے بن کیا ے نیل مال کے بعد اتک کیا اکتا سے وکن 
م ۔اقوال ا دلانل صورنوں س 000 ضا 
باب فسخ الأجارة کی فصیل م اق ال ادرال 

وج :باب اجار ءکایا نی و TE‏ پک 
نے ایک مان ا ر 02( دکا کا روہار کے کرای ےی کان 
کوئی ایی غ ایی بای جور پش کے لئے AN‏ یی ضائحع موی 1 
یف ددے۔یا یف د کال ے۔ الک مکان نے انامکا نکر اے ای ا 
نیف دہ ہونے کے پاوجود اران وه کی ی طر اکل لای ہوکر بہت 


زیادہ مرو ہوکیا_ تو کہا ہے دولوں 
موزور کے جا سی و ٦‏ اجارہ 
کے لئ تی کا عم ہون بھی ضروری 
ہوگا۔ اگ رکرایہ دارا ۓ اا رہ کے مکان 


مم رئش اتتا رک - مال کک عم 
ےت 
و EI‏ س5 ا 
بب جہاے ۔ با کیت میں ڈالا جانے والا 


0 ن فشک ہوجاۓ یا ین کیک پا ضم یس شراب خواری 'زنا کاری وروش 
ہوجائے۔ ‏ کرای بر لیا ہوا لام بھاگ کا مکرنے کا ما تک مان اسے غا 
ان 1ر جو ان وخ E‏ دے O‏ ا اقوال 
با نے پر دہ رو ےکا سو مشا الکن 
E‏ و یر تا 
تن ٹوٹ کک کر مالک نے کے جوڑکر کرایہ بے جافور اح رکسی مجبوری سے 
می درست کراوی_ سال 1 خیال بدل دیا او O‏ 
یل حم اق ال ادرک ماک یت E‏ وق 
او :ار عقدا جار ککرنے وا لے ای یکی نے انا فلا می کے 
0 20 ےار لو 
کت رت 7 ق نین حا کے لئے رین 
درے وك ع ال ہیں یں اورا سی ملا مکو ناج 
سے ۔ تچ انی سان لک تخل حم 
ارہ پرلیاوواسے نےےگرراستہ مل چا اقرال ا وکل 
تھا کہ جانو رکا با کک م رگا ضا لک :ا ایک درز نے ای دنکان 
یل یم اقوا ادلا میں کا مکرنے کے ےا اک اور کو 


وج ۔اجارو س شط خار رسا 
7ھ 5 م اتال 


انل 


سال قہاجمرت رازم رکھا۔ 0211 
وہ اکل قب گیا یا اس نے ایے 
موجودہ پش کو چو کر نیا پپشہ انان کا 


اراد وکیا یک ی نے ای ک1 

ک2 
یل جم اتوال ات نل 

مسائل منثوره 

و اک رک نے اس ےکرایےیاعار یت 
کا فا ان کے 
سآ گ لادی یس سے دور ےکی 
زین کیق ج لگئی اک ری نے راستہ 
7 و انگارہ رگھا اور ہوا کے 
یھو کے سے وہ ا ڑکیا ل ے ووصرے 
کا نقصان ہوگیااگ ری نے اس کی کو 
را بکیا۔ برا سے پالی و کر 


دوکان یل ١ے‏ سکولاکر شای یں 
کے نام لوگ کر ےد ےے جہوں اوروہ 
ان سے معاملہ ع ےکر کے انس د کاندار 
سے نف صف رت ےکا کرات ہواگررسی 
ےک کا اون فکرایہ پرائس لے لاہ 
ال ر ہودہ کک دو و یک حت تک 
پال رمال یتیل یم ۔اقوال 


امیر لای 


او :اکر دواوٹ ای شرا ا 


کزان نل ےک ایک اوئٹ پر ایک 
ورو اور رو آ ری لۓ کون اور 
اوڑجےۓ ا دون کاو شر 
سا مان لاد نے کے ب سے ی کے اندر 
ستو کے با تھی اورمناسب انداڑے 


رای شر کم غ لے لا مآ 


زیون کا ل اور مک اور پ٤‏ ضرورت " 
کے مطابق پان ہوگامیان شک ولونا وره 
بیو کی فیل بیان سکی اکر اوتف 
ا کرای ےل کاک ےد کک زاد 
راہ یا ووسر یکوئی پر ے ےگ اور 
راس بیس دوسا ما نگم نج یکیااوراضاذہ 
کیا جا تار ہا مسا یک نیل م _ 
ولال 


ا ال 

و :ماب کا میان۔مکاعبت کی 
تحریف م دعل کیا غلام کے .لئے 
بد لکتاب تکوقو کر لوالا زم ہوتا ے۔ ۱ 
اورکیا مو یکا غلا مم سے بیکہنا لا زم ےک 
2 مطلو رم ار اکرو و کے نو تم آزاد 
موا گے کر صرف مطلو ررم اواکرنا 
کوک 

و ا ا 
کس طرں اد اکتا ے۔ اقوال امہ 
کرام ہد انل 


| ج:۔غلام نا کے اور غر تیر جو 


کاروپاری معام لہ تہ بھتتا ہو یا متا ہو 
اج غلام س ےک اکا رع کے برارد رم 


دو یا موارسو ا ےلو مآ زارمو 


۱ یل اتل م اال ادل 


و کیا معا کیت ہونے سے می 
خلام آزاد ہوجاتا ے۔ اگ رکنایت کا 
مال ہوجانے کے بعر ہو اس فلا مکو 
آ زارکرد ےنیل مسائل۔ 

نوج :اور اکر موی ابی باندکی سے ایک 
اد یاد ہا رست ر یکر ے پا اگ رخو دا 
مکاتب پیا لک اولا دز دف یکر ے 


وا نت 


جو سو سر ہہ 


ا ا کا ک E‏ 
یئ 
و :ل ایت فاسدہ کا بیان۔ 
اک رکوکی لمان ابینے غلا مکوشراب یا سور 
ایک تمت ادا کر نے بے یا مردہ لاک 
آوۓ ر ماب 9ھ7)080 
دیرے۔ سا یتیل تم ۔اخلاف 
ام ولا 
و :اگ مانب شر کے مطانی 
شرا ب اد اکر کےا زادہوجائۓ نکیا ال 
کی1 زار یل ہو جا ےکی تمت واب 
کر ےکی صورت میں خلام ٢‏ یم ادا 
کر ےگا گر موی اور ا کا مکا تب یم 
اا ی ان کیب ر کن ن 
وی لو یا ر ا 
سیل عم _ ورل 
رح :ارک سے اپے فلا مکی ایی 
مین ما رن ج کک ما ب بای 
جوخودا یں سے ۔اکرمولی ےکی 
دوسر ےآ کے مال کے کو فلا مک 
مکاحب بنا ےکی حرط رکی پچ زاس یر 
نے اس فلا مکواس ما کی اماز ت دی۔ 
باتوی سات کیل م ۔ اقوال 
اک ولال 
وار مولی نے این غلا مکو سو 
اشرفوں ران شر کے ااب 
بنا کان کے کوش موی اس خلا مکوایک 
فلام یب رین وای دے ۔کقو داورو 
کے درمیان فرق ۔ سات لک ینیل 7 
5 ۔ا ال امہ ا 
و :ار موی نے ہے فلا مکو ایک 
ا ?وان کے ۶ں کا س بای جس سکا 


وعف بیان ت سکیا ان کی مان کل | 
کک اقوا لع ۔ 
ول 
وم :اک ری فھرالی نے اپے خلا مکو 
شراب کے کل مک تب بنایا- پھر اب 
ا ع ل ٦‏ ور نکی ایک 
ملران موی 001 لر 
شرا بک شری وفروش ت کی پھر دونوں 
بس ےکوی ایک مسلمان وکیا ۔ سال 
یتیل بحم اقوال متا ولال 
باب مایجوز للمکاتب ان یفعله 
و :باب کا بک کیا کا کرک 
سے ۔کیامکاتب خر پر وفروشت اور اپی 
می کے مطابی س رک رکا ے۔خواہ وہ 
سفرموٹ کی مرضی ےلات تی وو کنا 
وہ انا مال نقصان کے ساتھ فروخت 


ٰ 1 ے۔ صا لک تفعیل رم ۔ 


و :کا کاب خود انا کا کر کات 
عا سرت او 
ےتا ہے کیا یکا جا اما یکا 
3 ہلت سے ما تقر ال د ےسا 
انی ملوکہباندی کاک سے نا0 

کپ و 
٦‏ 


وج :کیا ایک مکاحب خود ا می 
تار ی ن فلا مکو مک شب بناسکتا ‏ ےکیا وہ 
ای با خدکی کا ددس رے سے فا راکنا 

ہے۔ اکر دوسا مکاتب ایتا بد لکا مت 
ال سے یلاو اکرو ےک ہام کومکا جب 


: بنانے والا اسۓ مو یکواپنا بد ل تات 


اداکمر ےن اک دوسر ےکی ولا 77 


مین الدا جد یر 


و تحت 


کے" 
پیل مکاتب کے بد لیکابت اد اھر نے 
و تب اپا برل کات ادا 
کر ےئ اب اس کے ولا ءکا کون ن 
موک سا لصيل مدای 
و :ار کاب اپے زر ید غلا ماد 
ال رآ زادکردے پا ا یکی زات خور 
ای 2 کے فروضشت 202 ٤‏ 
کاک ورت سکردے کاپ یا 
ال کا دی یہ کے لام کے ات کیا 
لوک کک ہے۔ ما 1 
تیل ےم دال' 

وج :سکیا کید باون اور مکاتب ایی 


و ء راہ رات کاب بے 
ا رت فا ہونے َ 
ب ا کا یان سے جوم او ری 

یھ کت 
رشت دارو کو یڑا ے ولد یہت ا 
ابو ت اق سے با ا سے ذی رکم و 
ود ا 
کی موا اقیکرام۔ ال 
و اریم کا7 تب نے ان ام ول دا 
ر پرااور برای کے س ات ال وقت ہو یا 
موو ای کے بی کان ل ککون ہوا اوردہ 


ارما ر یړک موی ماندی ے 
اک ہک پیدرا وکیا نو وہ مکاح ہوگایا 
یں اوراس ہیی ٦‏ دی کاکون ماگ 
ہو قصل ا اقوال 


Mm 


۲ کہ‎ SET 


ادال 
رج :اگ رک یفص نے ایی باندی کا 
کا اس غلام س ےکر دیا ران دونوں 
کو مکا نب بنادیا وه سن 
کہ پداہوالو ىہ کہ بس ا ہوگا ار 
ہے سر ۷× کے : 
اس شرط ب ماع کیا کہ ای کی سارک 
لاو اویل د کل ل 2 
اقوال اض ول 
و :اگ کی ہکا نے ات مولی 
کاک شا و 
کیشیت ہے ا اني ے یسر یں 
کل ۔ بعد دور ےت نے ای پر 


انا ا تماق شاب کر دیا ۔ امک نے 


0 و ےا 
ے؟ ست رب یکر لی پرا ےواج کردیا۔ 
سای یئل کم ورال 


۱ و صل ,ری مک کو اس کے 


ا ول سے بی پیدراہوجاے لو وام 
ولد موک یا مکاض یر ےگی۔ اس کیک | 
شب کس سےثابت ہوگا۔ اکر کات انا 
بد لکمابت ادا کی ما ےا ا کا مر 
لازم ہوگا یی اور اکا سے دوس راب یھی 
پیا ہا ےت گم می سکیا فر ںآ ےک 
یل اتل مول 
وج :اکر موی ابی ام ول دکو مکاتہ 
بنادرے۔ اکر ام وللد نے ا موی کی 
وفات سے ت ی مل دابہت ادا 
کی لا ر 
وج اکر موی ابی مدير وکو مکاعہ 
باز ےا ا مات می مول کیا اور 


1 رت وقت اس باندی کے سواکوٹی اور 


س الہدا ےچد یړ 2۸ 


ہے MT TT‏ ہہ 

۱ الاک نے ن کہ شل ضہجچھوڑ اہو یا دضرا و :اکر ایی غلام نے ودای طرف 
ال کی موڑا ا سے اور ای موی کے اسیک اور غلا مکی ۱ 
اقوال ا ولال طرف سے جرک اکس سے ما تھا 
تو :اوی ی ای مکا یکو بره اسۓ موی سے م تب تکا معابطہ ہے 
بنا د ےت اس باندک یک وکیا کن چا سے ۔ 2 _ صوررت مز افصیل_ گم _ 

اگمزمولی ایے مکاح کے زاوکروےتز اتال کرام دراگ 


ا کا بد لننابت بای رجتا ہے پانئیں۔ :ایک موک کے رو ملاموں میں 
تسیل ئل عم ۔اقوال ائگرام۔ سے ایک فلام نے اپنے مول سے برل 
رلا کتابت د ےک رخودکو مکا تب بنایا ساتھ 
وچ :اگ اپ فلا مکو اک ال کے ی کس ارہ[ مت 
اندد ایک جرادد دک مکی ادای کے عوس یش نام ش ری کر لہا وکیا دوسا ھی 
کا تب بنایا یھر ای سے صرف ماب سو فلام بھی اس بد کاب تکو اواکرسکتا 
۱ نر اوی بر مال تک ری ل ہے۔ اگ ایک نے اداکردیا و دوصرے 
سای عم ۔ اق ال ائ کرام ورال سے اس کے حص کا ما ہک رکا ہے یا 
وج ا ا ہے ں۱ 0 ین 0 7 
گرا رمو نے اپنے ایی فلا )کو کرت ہوۓ اہۓ دو کو بیو ںکو 
کی ال تمت ایک ہرار ے اے ھی ان شی نت ری کے نی اک 
دوشار درئم پر ایک مال کی مت کی کے اواکمرتے وق کیا موی اس کے 
اوا سی کے لے متا جب بنایا پچ رع گیا تو لک نے پر یو کیا جا گا نیل 
سر یھ ال ما ی کم اقوال اید انی 
رک نین گھوڑا پا زی کی باب کتابة العبد المشت رک 
ومیل مال ا اقوال ام ا ا ا ران ف 
کرام ولا شت رک فلا م کے بارے میس ایک ما کک 
باب من يكاتب عن العبد دوسرے سے ہہ کک ےک نم اس فلا مکو 
رت اب۔ e‏ میرے حص سے ایک ہزار درم برل 


تن و کے ات ہے 
ہار د( اک کے مک ست کا معاطہ 
ےر نے اوررہ کک 


مک تب بنادواور ہر لکا برت وصول رلو 
چنا چ ال نے اس رر اسے مکا جب 
بای ورای ےے پر وصول کی کرای کی 
بعد بی غلام نے ابی عاجئی کا افرار 
راز ل سال م اتان 


ات٠‏ ولا ل 


کک 


مین الہدایے جد یړ 


7 :رو آویوں کے اک 


۱ ۱ و و 


پل ایک شف شک کبس ری سے اسے بے 
دا وکیا بعدازاں دوسر ےکیتمجستری 


ےکی اسے ایک بی ہوااوردونوں نے ۱ 


ی اس اپے یہ ےن ب کا اقرارجی 
گی ان کے بعد لن مات یل 
کنا کی ادای سے ما جزیکااظار 
کید من ہک شی گم _ اقوالی انم 
کرام ولا 

وج :مل کور کل ایام ویس ف اود 
اام کے تیاس سے می مال 
ورل 

او :اکر رومشک اکلوں ا 
ایک پات یکو مکا تہ ہنا یا ران یل سے 
ایک خ یں مال ترک ے اے آزاد 
کردیا۔ بعد بی باندکی نے ابی عاجزیی 
کا اترا رکرلیا۔ مل ہکی و ری فصیل _ 
اتوال ارا مم درت 

و e‏ 
سے اک ےے اہج < کو مد بر باد یا اور 
ر E‏ 


رولوں نے ا ےآ 1زادگر جا ان ایک 


9س ٗٔ9 ھ029؛ : 


ے ل او ردا یا بر دوسرے نے 
E 2‏ و 
رح اوری کا اتی ان تام 
سا کی تفحیل۔ اختلاف ائ کرام 
داز 

باب موت المکاتب وعجزه 

وموت المولى 


و ہاب کاک کے مرنے اا ٣ےا‏ 


ےت ip‏ 
یان۔ اکر کاب اٹی ادا کی کی قط 
کے اد اک نے سے عاج ہوجائے کیا 
کیا ہاے۔اقوال ا کرام دلا 
وج اگمرمکاجب اپٹی عاج یک تی 
کچ میا ےکی در کے ساسح 
اک نے اوران ی ءا کک 
مول کی رضا منری ے وو ووبارہ لام پتا 
ل ما اور ارا زخو پرراشی نہ 


5 اکر مکاح مال چو کر مرجائۓ تو 


ا یکی اولا داور با کک کا گم سای ۲٢‏ 
یل اقا لارام ولال 
و6 ور ماک نے اتے ر 


| وق ت کچھ مال چھوڑ جوا سکیل یں 


اواکر نے کے لے کی ہیں ۔ سماتھ 
بی اس نے ایک فرزند بھی کچھوڑاجھاس 
کے مان ہکھایت میں پیا ہوایا اک ع صہ 
اے ۶ پړا۔ ما کا نے ات 
می کو زات کنات یش غر پړا اور ل 
OLE‏ 


| مورا ا باپ اور غ دونو کو مول 


نے ایگ سات کاب بٹایا۔ مسا کی 
تخل م اقوال اورک 
ق :اگ رکو مکاجب ای عالت مس 
مرا ارو ں کےذ مب طورقرض اسک 
تو )ای ےا یکا ہر لکاہت ادا 
Oye‏ ۳۲ اورایکآ زا زرو زت سے 
ا٤ایک6‏ کا ت 
+000۰٢‏ جم 
ولا 
و ۔مکاتب نے صدقات کا ال 
یصو لکر کے اہے مو یکو وی کر ایک 


ہے 


ا پر چد یا ۱ ملم 


ہس چس او تحت ۔ 3 
سو ہہ ہے بع رم 0 ت2 
وگ ارق ر نے صد ےکا تو يکیا ہوا شس غلا م اوا سے ھرنے کے بح وک 
ما لیکھانے کے لے ال راکو ا تفیل یا سے لامکوا سے مرنے کے بحرا زاد 
مت کم ولال تر کت 
ك۳ اک ری فلام ےی سےکوئی اس ڈور رم غلا مکا ما نک ی نکیا ہو۔ 
م سرزد ہوگیا اورا کے ممول یکو یں . اکر زی کے غلام نے نی بادلا سے 
جرم کا نت نہ چلا اور ای لا کی کی حالت ا ل کی اہازت سے نیا کیا۔ پر وہ 
شس اسے مکاحب بالا اکر انل ممم با دی الام ےمم کی عالت می ہو 
موس وس ال کے مالک نے ا ےآ زادکردیا لو 
لاز مکی کی گیا تھا کے ال نے ایی ان کی صورنؤں ہیں فلا مک بآ زادہوگا 
ای ماکز ینا ماش کی 2 اورا یکی ولا مکاکون ن ہوگا۔ س آل 
جم مان لازم ہونے کے بحرا نے این ایل عم ورال 
اتی اہر کی سال گی و :۔ گر با ند یکوااس کے زادہونے 
تخل م ۔ اقو ال ان کرام ۔دلال سے چجھیٹوں یا ان سے زیادہ پر نہ پیدا 
وچ ۶9۷۲ء ہوا۔ را یکی دلاء بال کے موا کے 
کے بحا یکتاب ت کا گم ارال ٘ ززا شی ہونے کے اع ان جن کا 
ونت مول کے دارٹوں سے اہ یا ایک با پ کی آ زا کرد گیا ۔ ان و ںکی 
سے راد یاسمارے ورا قول سے وا کاخ کون ہوگانفصیل مراک _ 
دست بردار موا ل اور زا رکرو _ اقوال ات ولا 
مال کی تفیل م اقوال علاء و ا ی 722-0 
27 مدلا آ زاوکرده پانری سے نکا کا اور اک 


م کتاب الولاءي سے اولا کی موی تو اس ہیک اورا یکی 
و کناب الولا ء۔ ولا کے نی اور ولاء کا Ê‏ ضا ی ل د 
ری ا کل د اقوال اتہر 
موم رر و :راث جیپ ولا ءا ق اور ولا ء۶ 


و ےا آ زادشدہ غلا مکی ول رکا تی 
کون او رکیوں ہہوتا ہے ۔ اک شل مرداور 
عورت کا فرقی ہوتا سے با نہیں 70 
ا زادگ کے وفت بشرط کاد یی ہو 
وو اتے ین ور تار ا 
سال کم دمل 

و :اگ رھک تب اپنے مو یکی وفات ١‏ 


موالا ت کا مت تفیل سر 2 
اقوال ا ولا 

و :ا زارکر دو غلا مکی ولا ءبامیراٹ 
کا کو نکتتا تی رار ہو ہے۔ اکر موی 
کے مرجانے کے بعد ایا آزاد شرہ 
مرجاۓ جن سکاکوکی عص مو جودتہہواور 


0۶ ری یا 


کے 


کو سس و تح ے تک 
ری سرت نے مرتے وقت انا محاطات جح ہیں گے با ہیں اکراہ 

پاپ اور جا تچھوڑ ایا دادااور یا یک ووژ ا ٠‏ | کے محال یل عوام دخوائ کے درمیان 
رات اکن ن سان کی رن ہونا سے یا میں ۔ علا مکرامم کے 
فصل ےم _اقوال ام _ ورای ۱ اوال ولا 

و :ل الات کا یان۔ و اک رج راو می ججبور ما کک نے 
مالا ت کی تحریف۔ میں اول ما را ن ول رن از 


4 1 اا ےآ ے 2927 کے بعرحوال کے 
اورا سے موالا رت لر ےکر وہ ا کا مطالہہ کے ایر وا ہب نے خود بی حوالہ 


کردیا۔ اکر بردقی کی خر یار کے بحر 
ز یردق ی ع رجح نگ کر IE‏ 
ا ےو ی 
رضامن ری کےساتھ وی ر یرک پھر 
اک خر اد کے پاک دہ پلاک ہوا 

کور پالم نے نے الک َ 
سے تیو لکرلیا ۳ کے بعد وہ ایک 


وارث ہوگا_ اور ! ارزگ :1 نے 
ا انا ا مار 
فدہ ا کا عا لہ سے گا۔ اور اکر اک 
کوئی وارث نہ مونو ونی ال یکا وارٹ 
یوگ ست یل کم امام شا یکا 
ل ۔قولاحناف۔دانل۔۔ 

و :اکر وک موالا کر نے وانے 


ک موی ا والات کے سوا دو را کول دوسرے کے اتھ فروشت ہوتا دہا۔ 
وارث موچور مو گیا و مول ماک یل عم رای 
ولا کر نے وا ےا سے مو کو ھوڑ وق اکر یلوسر ھانے ا شراب 
کر ووسر ےکی 0 ھ۶ سے با اٹل شا ہک شان می کے 

ہے۔ سا یکیل کم رمل 1 کے رول ا صلی می سکم 

ب کتاب الاکر اه کو برا بلا کے کی رگ وی 

و -کماب۔ جور کے چانے کا پا ے نیل سا عم _اقوال ام 
0 .02 تراغ ل 
گی شرطط۔ ا سکی ریف میں ای وی کا ا . اگ رکف ککمات کے بر الک" 
تول اورا سک اوبلس ینعی ر دی ہو اور تین آ جا ے کہ مات شر 

0 787 س۶ 


و :اکر ی س برای رج رکا 
جا ےک اناگ مروخ تکردو اکرایہ ۱ 
ړووی خود قرس بائی رب ےکا افرارکرو 

ورت مو لکردیاجا ےگایاز روصت مار 
کھاٹی ہوگی۔ اور ود انس کے مطاب کام 
کرڈا لے ا خمامول ہوجاۓے۔ لو ہے 


ہو جا ۓےگا مت کیا سیل تم رر 

و اکور لدان کفار ےم 
بب رکا اور مر مات بان ے ارا 
یں کے ان تت لان ول دا 
و یل چ٭.- و 0 
سیرالشہد اءکامصدای 


کالہ داے جد یړ ا ملم 


ال AF ag‏ ےس ۔ 
۵ اوج :گر 7 ےت و6 3 3 
آرنے 4 ں رع جو رکیا جا کہ واج بکرنے وا نے اسباب ار کہ 
ان کے کے کی ورت مل چان دلوانہ۔ فلام زراری گے 
جانے نے ما کشو ضا ہو کا زبروست 
وف بداو اکر کیاکی سے یں 
ا n‏ 
تما کی ے یا جاۓ گا سیل 


و سے اساب خلش ہک ن کن 
صورقوں یں مر نے ہیں کسی چ وولف 
کمردینے ۔عدودوقمائ کے م پان 
کے سات ےکی سلوک ہو سنا ےم اتل 


مال ۔اقوال ار ول سیل م ورای 

اتو :ار یلوا کی ابی یو یکو و :ا خلا کک 
طلاق دی یا ا سے خلا مو زادکرد ہے اتی د س6ا ارا ے )اور ر ی عدا 
پرجبورکردیاگیااس لے اس نے وییاتی تھی کے لازم ہون ےکا اقرارکرے یا 


دو اتی یو یکوطلاقی دید ے۔ ا یکی 


ەلا ۲٣اه‏ 


گردباخواوبیوئی جشےطلاقی د یی رخو 
6 ا نہ ہو۔ مات کی نیل م 


او ال ادرال . باب الحجر للفساد 
وج :ہاگ کیا نے یکاک جات بر و ۔باب۔قمادکی دج ے ہُو رکرنا۔ 
یو رکا کرو ہا یو لاطلا ےا کیا یکوا نکی تضو ل خ یی غارف 
فلا مکو زادکرنے کے لے بک رکو وتیل کا کاو ےکر ا2 
اا کے وکن جانا کر نے ۔اقو ال ات٠ہ۔داانل‏ 

وکل نے اسے طلا دیدئی غلا مکو و اگ رق تی نے شکایت لے کے 
آزار کردا سائل 1 ٹیل _ بحر یکو ہو رکردیا چم کور نے ایتا معاطلہ 
2 ۔اوال ات روان ووسرے ای کے پا جن کیا اور اس 


و اگ ی نے ای لان رمز 
ہوخانے وریا اورا ی کی بوک نے 
یس سے مدکی کا وگو یکردیا دای 

کا روا ملام لا نے بیو رکی گیا اور اے 


نے ممل زیم لک وضور کر دیا جرک گم 
لاک خاف کی ایکا ج 
َ جح 2 ۔اقوال 


سان ما نل یاگیا ہے برد ہا ملام سے ادلا 

گیا ۔ ا ری سلا نکوصلیب کے او :اکر ہجو قاضی کے فیصلہ کے بعد 

واسلےنماز ہڑ ہین بیو رکیاگیا۔ م اتی اش سے ل کو معاملہ ےکر ہے ۔ 

ک ینیل تنا م صورقں کا ۶ کن اس صلی ائ کرام کے اصول اوران 

ا یتر ات ال کی یل می 
#إكتاب الحج ر توالا دلانل 


E‏ | مل 


TU a AZT a 
و .2 نے اتے 7 کیل م اقوال ام ورای ۔‎ 
پ و وج :اکر مقرو اۓ اس ما کو جو‎ 
پاک سا کک اں کے با موجود ہو کے اور‎ 
ترضدارو ںکوا نکن ر ے ر رای نہ‎ 
ہواگرمق روش کے پا ضس کی کل میں‎ 
ورام موچجور مول اور ونی اش ہے مہ‎ 
لازم ہہ نے ہہوں_ یا صورت ئ‎ 
مول ہو یا با کوں سے مال و‎ 
اسباب موچور ہیں نیل ا‎ 
ا6 اتال الام ولال‎ 
و :مق رض قر سک اوا کی سے‎ 
لے اس کےساما کک حدنک اورک‎ 
رحب سے فزوش تکرنا جا ئے ۔ ار‎ 
۱ ا کی ور کی عالت می ومز رض‎ 
کے باق دس کا قرا رک نے۔ اکر ای‎ 
رح مین و ا و ال باک‎ 
U الروت 90 سے‎ 
کر ےسا لکیل مدای‎ 
و :کی قرش کے ماس ال‎ 
ہون کا سنہ عل اوروو یہت کی ہوکہ‎ 
میرے بای ہی مال ہیں ہے اوز‎ 
اں ےش واو ا ےتیل میس وا لے‎ 
20ء0[ و موں یا ال کے‎ 
ا ںگواوجھی اس کے موا نوا ہی و ے‎ 
مون گر وو قی انش 6 بار توما ےیادہ‎ 
صنحعت ورف ت کا مالک ہو اکر ای کے‎ 
اس باندی ہواورتھا ی کا ا ے موت ل‎ 
ہے سائ لک تسیل کم ولال‎ 
و 7۴ں ارک قیر انر ے رپا‎ 
دی کے بعد اگ راس کے ر خواو اس‎ 
کے یھ کے ر ہیں ۔کیا رخاوا ہے‎ 
مر شک انی می کے مطابقی اپنے‎ | 


رخ :فی ور کے ما کی زک 3 لانم 
7 ایس اور ال کی اولاد اور ا پاء 
کے اخراجات اس کے ال میں لازم 
ہوں کے پا نہیں اور اس پر ہار نام 
دی رہ کےکفارے لازم یں 2 ا ۱ 
ل دسا یل ا 
و :کور سفیے اگر ری یا عمرہ یا قران 
کرنا جا سے پھر قران نمی برد انا 
جاے۔ یا دہ ایے مش اموت میں 
صدقات ورا تکرنا چاے۔ مات لک 
ل 
و :کی فان باطاخ لک وکو رکیا جاک 
ہے یں ۔تفیل می لیم اال 


ات ولا ال 


فصل فی حد البلوغ 

و 027 ہت 
1۶ لۓ وجا کم یی 
کر ے مر فصل یل م رمل 

باب الحجر بسبب الدين 
شرف کی وج ےتور ہون کایان 
وج باب ۔ مرف ہو نے کی جا پے 
بورکم ٹرش خواہوں کے مطالبہ 7 
مقر کو تیر میس ڈالنا یا بو رکرا۔ 
درست ہہوگا۔ راس ہے تر ل خواہوں 
کان یم سط رح وصو لکیاجاۓے ۔ لہ 


قان 
ا وو ر چو رک رکا ے۔ 
إا ی ل مد ازل 


و ریش تی ن 
ہون کم لگاد یا اکر اس کے پا ایا 
رکھا ہوا یال ہو سے اس ےک ےن بدا 
تھا اور ا کا ما کک کی 21 ر 
خواہوں س ے ایل ہو اور اپتا ال 
وائییں لیا le‏ ہو۔ ستل کی لور 
22 ر _اقوال اوگ 
کتاب الماذڈون 4 

وج ات ازوك ازوك گا 
ن 77و دنو ں کی 
ہوئی ے اورا ںکااٹر۔اے دوبار کور 
کرن ا کی اجاز ت کی می ںفیل 
مال ۔اقوال شا کرام۔ دلانل 


e 


طرف ےک رو اجاز ت جانے 
کے بعد وک بتک اورک کن چو کا 
کاروہا رکا ےوہ تمت ےن ید 
وفروخت ا سے مر اموک مات 
شس تابا تکرسکتا سے ی یں تام 
سای کی تیل م اقوال 
اردلا 

و خر ماؤو ن رحن مواللات 
کے کی اجازت ہو لی سے ان 
و اقوال ار 


.َ‫ مول کا اۓ نے فلامکوای م 

یت یداری کی انت دس ساد 

دن نات ا شل > 
صورتیں اق ال اع مدلل 


رار 


فہرست مضاشن 

7۳ر اکر مازون لام نے خود کے 
وع ےکی مال فی نکرنے 
کات ارک اوردہ تو دی کاھ اون مو یاد 
ہو اتر اردرست ہوگاباناں عبد ماذون 
انا 6ں ت کین ما کی 
تل حم اقوال تولا 

و :کی اگوی ماون فلا م ات فا مکو 
مکاحب بنا ن ےا آزاد رتا سے یا 


:کیا عبد باو کو ال بات کا 


| انفقیار ہوتا س کہ اب من یں عیب کل 


ن ےکی صورت یس ا یکی 77 
کرڑے ا اپنا بال اوحار یا شطو ںکی 
اداعی پر سے ما انا ال تصۂ اضائ 
کردسے۔ تام صا لکیافیل کم _ 
اقوال ادلی 

و ار عر ازوك مقر کو 
فروخ تگرد ے جانے کے بح ری ای 
رر با رہ جاے تفعمی۰لی مال _ 
و اگ رمولی ائۓ غلام اذو نکو 
بو رکرنا پا ےلو کب او رګي طز 
کر ان یک شر ط کیا ےر تفصیل 
مات کم دلا 

:ا اذو غلا مکا ول مرجائے 


| باد لیات ہوجاۓ یامد ہو جاۓ یا خود 


فلام ال کے پاش سے پھاگ ہا ے5 
ال کاافن بائی رگا بای اکر ماؤون 
اپنے مول کی ام لود خا ےا اس کے 


کک البدا جد بر 


E تع‎ AFT جا‎ 


لو و :ا ار اۋوت ): اثر کے لوگوں سے 


اتا مال قرضس میس لیا جو خودا سک ای 
ال تمت سےبھی زائ ہو۔ اس کے 


لف لوگوں کے مال ہونے کا اقرار 
کر نے اور اکر ایی حور ل مول اس 
غلا مکو فروش ت کردے۔_ سا 
من _اقوال ات ولال 
وج ۔ اکر ماذون غلام پر اک زیادہ 
تر لازم ہو گے ہوں جو ا سک ابی 
جا نکی تمت اور ال سب کی بموی 
ی اس ونت اں 
ازو نک موی ای ی الک ا کک 
کا سے پا س اکر مول اۓ اے 
غلا م ک ےکی ملا او زاوکردے۔ مات 


کی پر یتیل یم ال اہ ۔| 


رال 

و :اہ باؤون غلام اپنا ال حابات 
کے ساقھقذیل ہو یا کر اۓ مولی یا 
ای ے تم فروش ت کر ےس ایی 
شیک رای 

و :امول لۓ ازون وقرش 
فلام کے پاھ انا می فروخ کر سے 


اص تمت بام تبت مازیادہ تمت 


ر اکر اغلام کے پا تھ مال فروشت 
نے بی قضہ بی ا دے۔ 


سال ک یتیل 2 ال ا ا 


ورل 

زج :اگ رموٹی اپ ازول او ر هرو 
غلا زارکرو ےت قر کی 8 
ییصورت! تارمو خلا مکی ہت ایک 
آزادبی سے بعد ادائجگی رض کے لے 
خر خواہو ںآور ےک پر ا کا را 
تر ادانہہد۔ یا یک ادا“ رض ے 
بعد جم جاۓے امول اے امے 
لام وف روش تکردے جھاتی تمت کے 
برا رمقروش ہو پچ را کا خر برا راس بے 
کے ات لوت مان 
کیل جم ۔ اق ائھ..۔ رکال 


و ۔اگر موی اسے ازون مقر 


فلا مک وی کے پا فروخ تکرتے 
ا اپ کے مرش 
نے کے پارے مل بقلادے۔ ای 
مورت رض خواہو ںکو ان ک٤‏ 
رشک ادا سی کی ورت اک صورت 
یں اکر ال ماکح و ال ے ما مب ہوگیا 
مو رسای یل مال 
و :اگ ای رھک کی کہ 
ٹیس فلاں کا غلام موں۔ پھر وپاں 
ٹف تتزو ںکی خر بدوفروشت کر نے 
واںکی رم کاذمدارکون ہوگا۔ لی 
پیر ایل یم رمل 

فو :یگ اک پچ کے ول نے ای سکو 
تپا تک اجازت دی نو ا ےگن 


اق کی اجازت عاصل موی سے | 


کی ش ہیس ا رکوس 
کت بج کے اق کاعم۔ 
معتز مک عم اک لک یتیل زم 


7ر 


ین ا بدا جد یھ | جل 


و RFT‏ تحت او 


اقوال دای یں ملک وضاحت ول 

لإ كتاب الشفعه) ر8 :اکر ایک مکان ک ےکی نع مون 
او :کاب الشفعہ بشفعہ کے لغوی اور اور وولف لیت کے ما کک ہوں تو وہ 
شی می 270 شف کی عیب ال کے“ اب ےق دارہوں گے 
ل رین سن نوراو شیج 2 اختبار سے ا لق 
و :ت شف ی کے عابت ہون ےکی شی کیت کے اپار سے اس شس اقوال 
زنس ءواعاد یٹ ؛اقو ال امم علاء_ ولال 


و :اگ رشفعہ کے چت رگن داروں مل 
ےکی نے انا نکیا ھوڑ دی قد وتن 
0 2 0ئ0 ۳ 
کو اتب ہواوریم کے بحر کر 
مطال ےکر ےء اور اگ موجودشفعاء ٹل 
یکرو ے جانے کے بحم رکر 
ایک کے بعد دو راتس تن دا رآکر مطال 
کرے اور اگر موجو ر شیع ے انا تق 
خر یداد سے وائنل لے لیا ال کے بعر 


ےا :ا شفعہ جار کے بارے میں ۱ 

امام شای اقول صمل ر ورال 

و6 :جار کے بارے مل شفع خاہت 

ای رر 

عقلے ونقلے 

و زج تفع کےا داروں مل نت بکا 

ا رٹنا اور ال کا شوت و ل 

فاقوا امب ولال 

O: 67‏ شطعہ کےتصول می شرک 
ن الرقہ کا کم ای موجحدگی میں 


دوسرے شفع بھی اس کے تن ہوں پھروضی ےکم کے بفی ام کے بحر 
ا ء یک وت س باون ماتا ے اک خر یدارکو وای ںکردیا پر ددرا ی 
تیب کے ساقدہ درج بنری تیل ٦‏ گیا اورا نے ملا کر مات کی 
مال ءاقوال! رامدلا تفصیل یورال 


قوش :شف تیم بکس طر اور 
کیوں ہت )ا ےنیل 
م الب ولال 

و6 :ت شف چا سے میں اترا رک 


2 :۔شریک ل ہت 

ا ست مقدم ہوگا ا 
ا ی ھک ا 
ےط ان نای اورشرب نای سے 


راد اس کی تھریف ومثال اقوال امہ کس طر راو کیو ںا ا ےنیل 
کرام مدلا ای تل ریف مال »ولال 
تاق زه انه _القرامان ef‏ کی نی I‏ ا 
پیر اتا ے۔ ان شراک کا فا نرہ تجب 
گی لوار مولو وم اک ا عق ا کی عبار تک فان و ادرت رج ء 
بے مسا لکیافیل, ورال 


باب طلب الشفعة والخصومة 


مین البدا جد یړ 


ٰ ا نس am AFT‏ سے 


کہذمدارقاضصی شر ے با رک یا 
| سے ی شرن واقعت ہیں سے اس 


5١0‏ شف طل بپکرنا اور ال 


یش ناص ہکرنا شف طل بک رنے کا لے مطال یفاص تا خ ری مات کی 
طریقہ اں کے طلب نے کی موی فی ل رم اتال اض ورال 

سور یں رر و ابنراء ہی س زی ع جب تی کے باس اپا 
شف کے لئ شف کا ذکرہواورد ہپ راخ مگا ٹپ کرد ےجب ای اس س ےکن 
کرش کر ڈانے اورا خر مطالبہ د | من باتو کا موا لطر حکرےگا۔ 
کے سال ٦‏ اع کم قول اور ا کا مطا ل ہک بممل مھا جا ےگا 


ارا 3 ال ` 

| ر ا شفک ف پر 
ہیں کے۔ امد نیہ بلا حول ولاقو 3 الل 
اللہ یا بیان اللہ ا کی نے تر بدایا 
کے می ہیا طلب موا ہگواوظرر 
کر ےن کا مقص رکں الفا ے طلب 
شف کر 3 ہے سال 1 
تخل توا ضف ڈنل 

67 :کیا کو جائمیرادکےیفروشتکی 
قرہوۓے ب یگواہ مقر رکر لین ضرورگی 
ہے اور اگ ر شت ری نے ووی ٤1‏ 
خر یدار کین کوخ وی تو اس میں 


ENA 
تو :اکر ری ابی لیت کے ووی‎ 


ہوچاے کل صورت می نی ل 
بال ج او دک مرف م پش ف پا 
چ اک ری علیدیمکھانے سے انار 
کرد سے یا نک اپ ذوکی برگواہ یل 

کرو سا ال نیل برلا 

نو :کیج مخفو یہ پا رارک تت 
ا پاک ر کے انی رشت زی کے غلاف 
تک کے پا موا لہ یک رتا ہے کیا 
تیک نمل ہوتے ی ی انی مخفو ے 


عداات شرطے سے پا نی بفصبیل اء 027 ا 
تم ءاقوال اص ران مخفو ہا تیرادکی بت کی اداشگی میں 
وج طل ب شفعہمی ا یک دوس ریم مک ےا کن شف فر ق7 2 
کا نام ضرورت ا کا طر یت اور ا کا سے سال کی تفصیل کم اقوول 
تفص ل یع اج مم سکب پقند ہوتا ا دلال 

ہے مشت ری اور باج یں سے رای 7ج اکر ع پالم بی کے قیضہمیل ہو 
N E‏ انف اس ما کوقاض کیک میں نے 
طلپ. اشہاد گی صورت اور رت آ سے کا ی اے شفعہ کے پار سے 
تفص لتوا ل علا ء رل م اس سے اص کر ےکا اض ینف 
او :۔طلب اشہاد ے بعد اکر شع کگواتی کب ےگا او رکں طرح 
للب تومت میں چان کے اکر فی کر ےگا اور اکر شت ری نے بن پر 
طلب اشہاد کے بعد سی مت فی کم مرک تک رگا اس وتتش ام 


نا r‏ ملم 


E RAR TÎ 


TT lT ای کی‎ ITE 


ہے 
تل _اتو الا عم ۔ دزی کھرکھانے سے اکا کردیا۔( )با )اگ 
تج اکر کی نے ایک مکان ددسرے رولوں نے نی م کھالی تل 
کے ےن یدایادوسرےکا مکان کم 
ییا نو ان صورتوں شی ان کان کش کت 


ا ےکا ۔ ار مايل 
ی 
مخفو ع مکان میں عیب پایا او کیا اسے 
خار عیب ا خار روید اکل 
ہرک بساک فصل م ولال 

:اتی نے ی ےکن میں 
مل دبد ا عالاکر شع نے مشفوص کان 
کوای سے بل ےی دیکھا ہو۔ یا ای 


ا 2 ا 
برا پاش م 
ال صورت اور ریک 
دران تج تک مترار س اخلاف 
ہوجاے۔ تو مئ کا مل کں 


ےر ال :ی کے بد شف دلیا 
جائے اکر با ای رتم بیس سے مشت ری 
سے ب مکردے اکل موا فکردے؛ 
ار کا کات فی د ید ا جا ال 
کے بعد اع نے اپی رتم سے کیاکی 
موا ف کر دیا اکر شت ری نے خودت با 
کے لن ز یاد کر یل مسائل۔ 
دال 

وج اکر کی نے مکان اسباب اور 
ایا وره کے عو خر برا ا کو 
یں ےکا 0 
وزی نز کے عو خر برا یا اڑے اور 
اشروٹ نرہ و خر بدا ا کی 
یل لمات ای لاء دلا 

۳ :اک با سے اچ جانیرادمیعادی 
إ۲ ترش پرفروش تکی اور ی اسے خر ینا 
چا ست نمر سے خر بین ےکی صصورت میں 
تع کے ے طلب مواشیت ضروری 


و7 :یل : اخا فک ان ۔ گر 
تع نی کے دسا اشن کے 
بارے میں اختلاف ہوجاۓ و ا کا 
ل یط ںہو تل مہ ورال 
و :اہ اخقلائی صورت میں شت ری 
اور کے رولوں یی اۓ ا_ۓ مطلب 
کے گواہ ا کرد یں یسل کی پر 
اتیل اام دلا 

زج :.(1 )اگ ماکح ے ای ررم 
تمت پر تہ کیا کہ عان دن شس 
اخلاف ہوجاۓے۔ ال طرر کہ باح 
اس کیم تمت ہونے کا می ہو جآ 
شتی زیاد ہکا مدگی ہو وکس تمت بے 
)وراک با نے خر یبا 
سے بوک مون تم ت کا رکو کیا ادد ہر 
ای کےگواہ نے وگوکی کے مطال گوائی 
دی ۔( ۳ب یا رک کی کے پا کی 


تج 


تل > اض تھے جج 
NE‏ ۲ | بی شفعہ میں جس زمی نکو لین 
اکل ہوا ےہ یا ہیں مات کی ما تا تھا ال می بی مو کارت 
تقیل مم قوال ع ورال مرن ازو دک ری ماددیائیش بی ی ای 
و :۔ اگ رای ک ی ےول جا ماش یس لگا ہواباغ سوک وگیاءااگ راس ز می نکا 

باز ےکر برک اورا یک شع آ دا حصر ور یا ل ڈو بگیاء یا اگراں 
جھ یکوٹی زی یی ہو > ار محا كر زم نکاس ےق یدار نے ہم ادیاء 
| وا سے دونوں ہی زی موں گرا نک ن ما یک تسیل کم رمل 

اور محال شراب یا یہ کے و :ای نے الک زین یری 
جوا جو > سای کی تفیل_ جس یں چچلوں سے لرا ہوا درشت موتو 
جم اقوال امہ دلال اک ی بھی ا چو ںکا یا تک ہوگایا 
و ااا ا نین ۔ صل امکا ی صوروں ك 
ٹیل سے ایک سکم اوردوسرا وی ہواور اتر سا فصیل ۔ م دزی 
موایل شراب یا خر ےکا گیا ہوہ اور پر رار ایح یو ۱ 
اکر یذ ا باقن لیے وقت اعلام لے ٤ sx‏ درخت مس گے ہو ے کل وز 
7یا موق وی بات تر ہو۔ مسا کی لے اس کے بدا کا ی قش 
تفیل م دڈنل ان چلوں ی ن ہوگا ا یں اور 
و6 :کل : م ری کے ترفات کے تمت ارا کرے ې تفیل 
ا6 اگ شتی ےکن جائیداوخ ید اال 
کر اس میں تصر فکردیا اس کے بعد 7 0ا 
7 ی نے اس بے یج کے لئے شق کا 
لادء ا ای ین من مو 
درشت 1 ا کیت خلا دما نک 
کیت کروی اتل کی تخل تم ع 
ان واسشال اتال اتی کرام - ولال 
و کرو لۓ شف کی زین 
ل کر کے ا کی تم کا لی 
تر فکردے پرا ںکاکو ین رارک 
۱ 1 ے او رگواہوں کے ذرلچہاے ایت 
ا قالش ہوا ے۔ مال 
انیل م _ افوا ل ا شت رک اور 
ات 1 موتورم صورت یں ت یړراری 
ےار رن ددا 


27 ات فون فو نک امت 
ہو سے اوران میں نہیں ہوتا سے مراک 
یل اقوال نتا وکام دلا 
و6 0299 مکان کے اوپہ 
کی منرل فروخت ہونے شک 
.سا کیل م داي 
فک یاکوئی ویک شف کاخ 
وتا ے۔ ہبہ اش رط العو کے زرل : 
جر کک شف ثابت ہوا ے ا ۔ 
سیل ئل یم .رکیل 

کے شا اضف نن ےکی انل ا 
شر کا نکش اشن 


مین ال بدا جد یھ 


AFT a‏ رت ےد 


نیس ہو 290 و کے بعد اس س جن شف تا ے 
اتوال ارا لای ہیں رست رغصل تی 7 
تج اگ رکوئی فیس مدگی کے ووی کے ۵ ]و 27 :ئن فاسد مو ےکی صورت میں 
ایج می سکب شف حاصس لکرنا ا ہوا 
ےک فاسد ہوجانے کے بعد اکر 
نی کے ت مل ہواودا نی کے 
نل میں دوسرامکان فروشت ہو اے 
و :ہی کی موی زین میں شف شع می لیا جا سکتاہے بای ۔ اک طرں 
بت ہوتا ہے یا یں ال ہبہ س عون اکر اے با نے شر کی کے وال/دیا 


ہو اراک صورت میں شف نائز 
ہونے سے پیل با بعد مس بإ نے اپنا 
ال وایں کے لیا ہو۔ اکر رک 
چائمدادیل وش رکا ہشرک کو مک ر کے 
ا کی لیم پا سے ہوں اورکوی اک 
افاری موتو کی کي ات ل 
سال عم لال ٰ 

£ :اگ فی اپنے ‏ شفعہخ یدارک 
7 روو ارا ے ار 
ارت ا ضا مت لاو مت ون 
و ا و و ٠‏ میس شف کا 
O‏ ہوگا یا نہیں مسا لک یتفصبل, 
دزا 

باب ما تبطل به الشفعة 

تج ۔ پاب ےن بانوں ےن شفے 
تم ہوچاتا 07 ۔ صا لک 

5 _دلل 

او :اکر یک کا نیج ویک طرف 
ی ا ا 
مھا ے اوا ی کاوارث اک شف ہکا Egî‏ 
ہوگا با ہیں اکر شت ری مرجاے یا اس 
مشفو یمان کے باد سے ل پل وحیت 
| کر جا و شع اشن ان رہ جال یا 


کی ش رط ہونے ےم فرقی ہوتا سے 
ای اک نے اس لے خیارش مارک 
کرکوئی چیفر وخ تکی تو اس میں کو 
من شفیہ موا با تھیں۔ اس کی 
ر ل سال گم اقوال 
ام ولال 

و :ارک ےکوی مکان شط خر 
کے ات خر برا ای وقت ای مان کا 
تفئ اس مکا نکوشفعہ میں خر یر کے ا 
1 .اک رع نے مشر ی کی رط خیار 
کے ان رر بدلیا۔ گر ہت شط ار کے 
انار ہے کے بعد رواب یکنا چا ہے 
اکر بت خیاد کے اندد اس مان کے 
تد وور مکان فروخت ہو ان 
عاتد ب کو شفعہ بیس اس مکا نکو ین کا 
بن ہوگا ا یں ٍ07 
خیارالر دی کے سا تھھخ پرا اورا کے 
مل مکان فروخت ہوا اور اے ای 
ےت شف کی بناء برغ بدلیا۔ اس کے 
بعد ا کا خیارالرو بای ےگا پاش 
0ب ل : 


م٣۳۴‎ | ۔ گل ط ریت ےگحرغزیرے‎ ٤ Per 


اعت 


ہے ہہ سو تہ 
7 تھی الج > | گیا ےکر بعد میں معلوم ہوا صرف 
اقوال ا دراگ مف فر وخ تک ایا تھا یا اگ نے عفن 
و :ارح ےق سے نمل ے ہاے, 
ل ہی ات اس مرکا نکوفروش تک دی | ۔ زتحع: ضل E‏ 
ٹس کے ذر ییا کوان شقعہ تھا 1 ن سے ن شف ی سے تم ہو جات 
شع نے انا مکان خیارشرط اہ لے کد “ص“ ء0 
رککرفروش کیا تو ا کات خف بات لج رورت چ کک یک یھی شف کا 
رتاے ۶.2 Close‏ ہے ۔تفھیل موزی اور برکار ہونا لے سے علوم ہو 
سال م ۔اتوال اک دلال ے ادرو وط رر طرح ےل وگو ںکوستاتا 
و :اورشن الع کا وکیل ب نکر ے۔ اس ےکم سے کے کے ے 
ای مخفو ع زین فروخر یکر ے ای دوسرو لکی مدکی ضرورت موی ے۔ 
طرع اگ رضتز یکا شف وبل ب نکر اس ال بتاء ر ال کے چٹ رسای اور چتر 
کے خھ بدا یکر لے ۔ اس سل ہکا ری جیا نکد یی یں شف تم 
ہو ر اعد وک اکر ووی نے پا کی کر نے کے لے چن ردیر مس اود سای 
طرف سے نان الد رک لی ہو۔ سای اورا نک وضاحت ر“ 
کنیل احا م انتا ف ات لائل او :۔حیل رو وصور یٹس سے ہو دع 
و :ا شیج کو اکا مخفو رع کان اپات سا کر نے کورچ وچا ے اگر 
اک رار ے ‏ روخشت ہون ےک خی ری یار یحی لرا ا ےک ما نک اخ 
ای رای نے لیے سے انکا رکردیا اور ا مکا وتن شف وی ناء بے تر ی 
یں ای ےکم 0 کی 2ٹ ارت نر رشن 
برک ابعر شس رمعلوم ہو اک ووتو لہ یا یر نار یادرہم سے محا کر کے دیے 
اسباب کے عو فروض کیا گیا تھا وق تک ڑا د یر ے اسقاطا تن کے ے 
20 تمت تال ہوئی ےم ا کر کم صییل اتل ۔اوال 
زادہ ا تی ی الال 
یل کر او ات دای فو :اہ ایک مکا نکو اس کے تھا 
وار ع نے ایک مر ایک ا ا6 نرا 
AE ۱‏ اکن ا ہے 
ماک اکل یداروئیں ہے جس کانام تما ایک نے خر بدا۔ دونو ں صصورتوں میں 
صعلوم ہوا تھا کوک اور ے۔ با کروم شف وکس طرح جم کا _۔اوررونوں 
ست یارس سے بای کے ورن فصب ل ئل جم دئیل 
سات ھکوٹی دوس را بھی ہےاىی طرحع وای کے ر م مان 
لہ معلوم ہواکہ پورا رکا ن روخ تکیا 8 ور 


گن ا لدا ے جد یر 


کے ایک حص شت ری کے لے جن 
کر ویاو نیک جک ن ہوک اکر 
دوشریوں ٹس سے ایک نے اپنا حصہ 
تھرے کے پاتھ فروخ تکردیا۔ 
اور“ مس نے فروضشتکی سکیا سےا نے 
ان کی مکی نو شف ا سی موم 
کرس ے ا صان 902 
0 نیاوی اختلاف اور ا کې 
ول سا ایل عم۔اخلاف 
ر 

:اگ ری کے با عبد ماذون ہو 
اوروم کا نکی در کرت 
اس مکا نکی دہ سے اس کے موٹ یکوقن 
شوہ لک انیس ا سے بش ار 
لی ن 0 
اس خلا ماران شف ےک ہیں ۔ مال 
01-4 
:ناما لغ کے باب ماس کے و یکا 
اس نابا لغ کی طرف تر لکوت شف 
دید نایا مکان کے فروشخت مہو ےک خر 
)کا پر نما گی اضق رک لین اکر یکو 


وا کات ریا امرکوئی مکان اتی 
متخ إ ہت یکم 5 ت ي 

بہت زیادہ مت رفروض تکیا گیا و 

اپ ااال کت 

دن سال کی تفیل عم ۔اقوال 

ا ولال 

لكاب القسمتي 
او :تاس اقم لف ا قتصتلقت 
یں اقترا م صر رکا ہے یی ےک لفظ 


رة اقا رکا ام ہے۔ اس کے شی 
ن ہیں شت رک حصوں میں ےکی 
ایک حص ہک مالک کے لئ خصو 
رن ۔ ال کا سیب ہے شرکاء بین سے 
Od‏ ال ا 
کرنے کے لے اس کے ح ص کوخص وس 
کرد یا ناد ا اکن نے رن 
تن کب ان رورت 
سے مد کنا او رمتا زکردینا۔ یی ےک 
و چروں میں ون کنا سط 
چڑوں شس کی لکرنا۔ اورشا رکی جانے 
وای چڑوں غا رکا ۔اورا ںی شر 
ىہ سب کہ اک م کے بعد ہر حص کوٹ 
ا لر 02809۲ 
گے کی لغوی اور شرگی_ اور ال کا 
بوت۔ اگ دو آ بول لف 
ا موزونی یا حیواٹی یا اسیا تر با 

پچ راس کا بنڈار ہکرلیا نو اج حص ووو 
مرامیےفروشت کر کے ہیں یں اگر 
ایک میس یا لف جنسوں میں ش بک 
ہوں اوران یش سے ایک ان کی یم 
چاے اور دوسرا تہ پا ےن کیا و شی 


ا ۵ئ0 کے ۱ 


یی ئل حم ۔اقوال ات ورای 
£ :شت رک ما کی تی مک کاممکون 
کر ےگا اک خر ی اکا مر دار 
کون ہوگا ا ا 
اپ E‏ 
ان سک اثر رگن صفتوں کا ماما عانا 
ضروری ے۔ اک وو شر اخ کی اوتا م 
مقر کے خود یآ ہیں میں لک ری کا 
کم کرس تر کیا ہد 


a a کے‎ 


rr 


2ک ےک وہ 
و تک و 
وی د ولا 
2 0 
72 2 ک 
1 - 
رک کواں ہت 
تی ۔ اقوال ات 
می کسی مال کے 
جو +۶ 
4 مال یی پایا 
ت7 ے وراس 
ےت ےوران > 
ےت 


ارقو | 
۱ 
کک دیں۔خواہ با قول ہو 


ہو سا لکی پور ی تعمل یم اتال 


شی ال کی درقواست ر 

ستل ١‏ ورک 
ا لاوا 

کک ی 
ہت جو 
| ۱ کت 
ےک یگ ایک 
E‏ 


انی 1 
ان شی ے انب مو یا 
وارث 


98 
ےکوی نا با ہو یا اک صو 


کک کے 
11 
E‏ 2 
3 بت اقوال 
پپری صیل 
۰ : ےصرف 
اتے ولا ا 
اکر چٹرو ر ٤‏ 
2 
7 7 ا 
کر وی سا 
دابا ہو ا ۱ 
2 إحٌ واف اور دو 7 
توم 
21 و ا 
در بی ور 


21 تفیل عم ول ای 
٠‏ 


ار 

کک 
ری ون 
2 کی 7ھ 02 حص کا 
مر ٥‏ تن کا شر 
ما تا کت ٠‏ 
َ ہت ہو 
72 مر بقول ا 
رای لر ٰ 

۱ ینیم اور 
کی کت سامان کرای 
کہ یک ےی اد 
ےت 
بت 
اہ 7 _اقوال ات ولا 


کی ملم 


بل ETT‏ سے 


۳٣‏ آوج. ےت جواہرات موف تک ہی 
سر ےت 


مد لک ی یلم اال ا 
20 1 ر 
ا ۔اقوال ات لال وج :اکم جائیراد کے رک ا 
و :۔اکر چندشریکوں ک ےکی خت رک بعد ا گے کے کے لے یرہ 
مان ایک یش رش ہوں نو تایان رام ڈیا لے کے بے من ناف 


کر لا اے چاے اور درا 
اکا رکرے۔ اکر ش رکا ء ترک راست کی 
مقدار می اختا ف کر ب مس طرح 
ستل کیا جائۓے۔ سائ لک تفصیل _ 
رال 
و رمخت رک کا نو ںی تم کے رق 
کے انار سے موی یا ا کی 3 تمت کے 
ا ۔ ا می ایشا کے 
اوال اوران ےد ران کے | 
اختلا ف صرف ظاہری ہوتا ے ای 
وتا ےاورکیوں و ل شی کے 
وج اکر ال شک تکی یی پا سے 
سے یں الا فک ریش کر 
ایک بھی ان میس سے ےک ےک 
رت 
ر وکیا سے ووکگی کے دلوایا جا سے ان 
۱ یہ ال کا اا رکر ہیں او ری مر نے 
والوں ٹیش ے دو ا ری اس ہی کے 
ور ے حص رکو پا سے کی گواتی د ہی صت 
کی اور ی تفیل ۔اقوال اع کرام ۔ 
ل مراب 


باب دعوى الغلط فى القسمة 


اورک صل اور صورش۔ _اتمہ کا 
اختا ف کم ورال 

وج :اکرش رک اراد بی ای گم 
اور رز ین و ا ا ایگ دوکان 
وھ ا ںکی تی کس طر کا جائے۔ 
تفیل من کر اقوال ام ولال 

قوش ٹل( )تیم کےطریقکا ان 
پارا دی مک کیا طر تہ ہے اس میں 
تر صورت کیا ہوئی ےل کی 


تفیل مم رر 
وع کم ترک زمین میں زمین 
کے سا یھ نظ یا سایان بھی ہو ای 
طرب گر اکر ای زین کے ا بیتھ 
ارت بھی مو جور مون وکس طرح یی 
جائے ۔ اس می اکل قاعد کیا ے۔ 
تفصیل ئل یم اق ال ا ورای 
وی ار مک نے وا نے نے رکا 
کی زین اس رح س ےک کہ ان میس 
> ور سی 
نک راستہ دوس ر ےھ کی زین سے 
رہ گیا اور بوقت تیم ا سی ش رط نیل 
جھ یہی ںکیکئی اکر رات اور بای نک لے 
اا ی اا 
مکن ن ہولیکن تو ق کا کرو گی ہو 


وی رای کی یھ ےے مرف رک 


اعت 


" ر ھوےت ہر سور ہے 
جس A rS E‏ 
کا اقرارکر لیے کے بحرا بات کا دوگ 920 ھ7 مکمرے وال 
کیا کہ یر سے ح کیا فلاں چزفلاں ۱ خوداھی ترک سک کا عتدارہوجاے 


بک کے اس پل یکئی سے ممن م الک یل _ اق الی ات دازا 
1 سد وج ل ۔ہہایاۃ کا ان ای کی 


ا پا تاکر 
اس یرگ علیہ نے اے میم ے ?الاش 
کیا بلک راستہ سے اسے تا بک دیا ہے 

ا اور مگ 0 
شر کک قم کے وت اک تم تک 
اندازہ لگا نے کے پار ے مل اخلاف 


ہوا سال کی تفصیل یم۔اختلاف 


ا ا 
اپ نکودوسرےکوھار یڈ یات م 
ہے سک ے 9 
تیل موزل 

او :ار ی ایک شوک چ رک جا 
EL‏ 
ا دریان ذمان یا عکان کے اختبار سے 


اورا اخلاف ہوجاۓ ۔ا ون کے 
و لقان وی رکا بیان:اگر اللوں ا ے ضرمت کا 
ال کل چ سادا می مے ئن کت Eg‏ 
کسی ایک کے حص وا دو حص ن طرح ہو جا کہ ایک ایک فلا مکو دہ 
ہو مض کو تن کل کیا بی یی نکر ای 
Eb‏ ا رہ ےا نکی انل ا 
جا تو ال شرک کے نان کون درمیا نی رح سے معاعطہ ع کیا 
طرع و راکیا جات ےگا اگ ریم کے بعد جائے ۔ مسا لک یتیل یم ۔اقوال 
بور ےمان یش سے کک خر ر ار مولا 
e‏ ل ثاہت ہہ جاے OE f‏ 
ست کی ین صو رن ںکیا میں مرا کی ا کک پوس میس یتما جک جک وہ ایک 
ل الوا یئن ال اک مکا نلوا ی“ A‏ 


رم رر رہ میالوں کے رو 
مت رک ما نک انی رض مندکی سے مکان 
ومک کے اپ لے ایک ایک مکان 
صر ںکرلیں۔ ار روسوارگی کے وو 
خت رک ما کک ایک اک سوار یکو اہین 
: لئے ای کے ر صو کرای 9 
ان کی عوادگی یں باری پاری یہ رضا 


تیج اکر کان کے مان کے صف 
وی بک لو بے انا کرو لات 
تصہ یا اور دوسرے بای نصف حصہ بے 
کی نے اپا اتقات شاب کر کےاے 
0س ا 
ممعلوم مواکرا کک کل ےدک 
ذلوکوں کےت رت کی اداسے کی با رہ 


مین ا ہدا ے جد ہر بل م 


a AFT eg 
تی ر ( ما کی تتیل, کی سے‎ 
اتال ارام »ولا ان ردا جرازی ئل انی اورک‎ 
ویج :یش کو ا کیا شرٹی ہیں ا سک افعیل‎ 

میس غل وکراے وظیمرہ کے ے بار کن انز این کے دیک مزارعت 
کر اگ ریش ری ککی بای میں اتیاق کے جا مو ےک ما رصو ری اورا نکی 
زیاد وکر اےوصول ہو چا ے تو ا زیادلی تل بح ورال ہنس اور فی رکښ 
کان ہوگاء اکر دوفوں شریگوں نے پیا ےکا ضاطہ 

مفعت ماک ل کر نے بے ارک مقر ۲ و :وو دو فار صورطیں جن کو 
دولوں نے اتی اپی ایی یش ا ےکرانے صاح بفکتاب سی فدوری نے بیان 
اا 0 نیس ف مایا ےکن صاحب اعد ای 
سیل پیم ٠‏ ولال ایا ن کردا ے۔ا نی تصیل۔ اور 
او :ایی ادو شر ککھرو ںکوکراے ا نک حاصل پیاو راکم ع دزی 
سے کے لئے ان کے )کو ںکایاری و :سعزارعت کے مو ےکی چند 
مقر ہکن خلا ہون ےکی صورت لای شریں۔ اکر مزارعت کے مواطلہ کے 


ي فی الزمت کیا سے۔سائل کی وقت بے شرط کا کی م وک مرا یا 
وور ق وال زمیندار کے لئ صو ی طور سے عام 
و :کر یشک مل رارورخت م سے ”لہ میں من فر بھی 
ا ال O‏ حاون یقت ہی سا ل کی انیل یحم .یل 

میس بہوں اور رولوں ان چزوں سس ای زع :سهھزارکت کے نا جات ہو نکی 


یں اگرعقدعزارعت کے وقت پر 
شرط کا یک یھت ے جو لہ پیرا ہوگا دہ 
صرف شکار ا صرف ز دا رکا ہوگا 
کان ای کا بجو دونوں یس برایری 
سے یم ہوگا ۔ یا اک کے برخلاف شط 
کان ی ہو با خلہ کے بارے میں و 
نت 
تو 7 میں 
حامرلا 

و :ار عقد مزارعت انی شرطوں 
ےئش کرت ےو لی 
پیراوار وتو ال کا نکون ہوگا۔ اور 


| ر ہے مہا ہک ی کان یل سے 
رف و ون 
پیا ل کر کان کے کل ما رودو ا ۓ ی 
استعال می لا کر یں اکر وہ اپ سی 
مل نکی اء بر ایا یکرنا جا ہیں 
اس کی کیا یر حل گر کے 
ہیں سال کی تل تم اقول 
امو لی 
#إكتاب المزارعة4 

و :رارع تکاییان ۔ ال کے اوی 
اورشری ن ۔ اس می امام الوط اور 
صان کے اقوال۔ ان سے یی 

لال ۔بھیٹرکر یو کنا پو ےکم 


کو 


تھا ھی AFT‏ بی _ ]شض 


گر پیراوار 7 نہ مولو و 
وا ےک وکیا او رکہاں سے ےک زار 
عقر زار عت قاس ہو جا ےو مز دوروکیا 
تفیل عم ورال 

و :ارک وچ ے عزارعت فاسد 
ہو جاۓ اور کاشکا رک طرف ے ہو 
از یندا کی طرف سے یداو سے اور 


بی ےکی اور ز انز از اتراجات ا 


کو استما لکرنا صلال ہوگا رفصل 
مال عم ۔اقوال ا ورای 
وج ر موا ل عزارگت ےکر لین کے 
بعر رکو ھی اس کا مکرنے سے 
اور کرو ےیل ما 2 
زل 
و :اگ مزارع کے والوں س 
ےکوئی مرجاے تیادہ محا لہ ہا رہ 
جا ےکا وچا ےکا اگ نین سال 
کے لئ مام کیاکی وکر پپیلے سال بی 
س بجی کان سے سل زسیتدار 
مرجاے۔ اک رکاشیگار ماب کے بد یھ 
ئ کر نے پھر زمیندار مرجاے۔ ار 
زمیندار کے بہت ز یاد ہقرو ہو جانے 
کی وجہ سے اک کی زین فر وش کرد 
مسا 9-7 
:گر عزارعت کی مت تم 
ہوجانے کی ق تیار نہ ہو ای طرح 


اکر زمیندار مرجاے اورکتی مس ری أ 


تکار ہوسا لصيل م دانل 
و :اکر برت زراع ت تم بے ن 
S|‏ کا 010 
م می اضافہ نکر کےکھیقی یی کی 


ا و اکر زین ال سے واییں 
نے نے اوراک رخو دکاشگار ہے چا ےک 
کین کی کی ہوا ےکا فک رانا حصہ 
ےکر ا س کی شراک سے فاس 
و اک 
جانے کے حدم رجاۓ اورا ل کے ورڈ 
اس کے تار ہون ےکک اس میں حنت 
نے کےخواہشمندہوں گنز می کا 
ا لک ا نکواجازت ترد ےگ رما ہم 
کرو ینا پاج اور اگ ال کی ہس 
شکار کے ورت معابد وشت کر کے انا 
حص ےک رہ ہوجانا اہج ہوں کان 
زشن کے مالک اسے إن رکا پا ہے 
ہو ما ل انیل یم وی 


نع یھت تار ہدجانے کے بعد اق |“ 


کم شلا اے کاٹ ان مین اے 
اکٹ اکرنا ۔اس کل چلانایا ا ےشن 
یش ڈا لکر اس سے لہ نالتا پ رگم 
تک بیان ی بی میس اسے پان بھی 
کیک ارگ کی اوران کے 
اخراجا مس اب س ےآ کے ذمہ 
لازم یں 3 گر اوت معابرہ 
تزارعت ا نکامو ں کی شر کرد یکئی ہو 
ا نہیں کی کی ہو۔ مال 1 
فصل بحم ۔اقو ال ات وزی 
وج م۔عزارعت اور مواعات س 
کار عا اور زین دار کب او رکیا 
کیا ؤم واری ونی ہے۔ اہ مال سے 
موا ےکی ابتداء مس کیو ںکوتوڑن ےکی 


بھی شر اکر یگئی ہو۔ اکر عزارح تک ۱ 


صورت مل زمیتراراور ما گی دونوں ۓےۓ 


پا ات کو ہلل بی عالت لکاٹ 


بشم 


ین الہدای جد یر 


ہیں لو کر ذمہ دار ہوگی۔ 
تفصیل مال اقوال اتی ورل 
م کتاب المساقاة 
او :اقا ای کے اصطلای ی 
ین نا انت ی و 
2 ےک وہ اں کی ماسب اور 
رود وک بھا لیکرے پل سے کے 
اوران می کی٦‏ جانے کے احردولوں 
اک بک لش رک حص کے طور صف 
ر 
والے ا یکو مامت کے ہیں ۔ھیتی 
ور کے معابلکوعزارع کیا جات ے۔ 
ال پٹ سے لے زا رع تکی پٹ ال 
لے یا نک یکسا ںکیضرورت بہت مام 
مزل سے اور اس کے مسان بھی بہت 
سے ہیں ۔ اس مھا ط تک موت بہ تک 
مل ے ہے۔ اور بہت سے لیا ء 
ای کےا نے کے جال 
ہا ںت کک اام ما کک وشا ھا الشد 
پت ارک ما طت جا سے گر 
عرارعت جا ینیل ے الت ا 
موت کے تال پوکر م بائ ہوگا۔ 
خلا زین میں دونتبا ی حص میں ورشت 
کے ہوں اور ایک تپا یور 
موا طم کک یں عزارعت جات وما 
ے ۔ ال لی معط کو بہت ےعلاء 
مار فرماتے ہیں ۔ اور رسول اریپ 
ا و کے ERD‏ 
ٹا یکا معا لکیا تھا یس اراس سے پیل 
اعادیٹ سے ا لکا یا نکیا ہاچ ے۔ 
ماقا کے تھی ماق 5 معامدی اور 
زارعت میس فرقی۔ ا یکا جوت م 


ا دس 
وج :ع زارعت اور موا طن مل بدت 
OE‏ وچ ا لے 
بود ےن میں نو ز یھ لآ نارو ہیں 
ہوا ا کے لے دت جیا نکر نے کی 
شرط سے ا یں او رکیوں۔ مرا لکی 
سیل جم ورال 

و ار ورخ کے ت اورقا 
ےک الما وت سا قات کے ے 
تی نکیا س میں بل دآ ا جن ہو یا 
کن د ا ل وت ےی ھوزت 
ٹس واقی بی لآ گیا۔ یا کلک ںآ یا۔ 
21 کک سال 
انیل عم وای 

و :ھی جڑوں اکن درخوں میں 

YY 
بش سے یکوشھی ماپ رھم کر ےکی‎ 
ری یا یں یں سای‎ 
من اقوال ارا‎ 

وک کی ےکس ا 
درخشت جس میں ا ےبمل گے ہوں جو 
بھی بڑ نے وانے ہوں پا ا یی وی 
نس میں ایی کیتں کی ہوئ کہ وو کی 
ب ع والی مو اورا سخ سک حت ے 
ا نکو فا دہ ہوتا ہو وان پڑھنا 
ت موک مونم | باک می ل کت ے 
یل میتی کے بد نکی امید تمو پھر 
سا قات کے فاسد ہو جان ےکی صورت 
س عائل می ا ن ہوگ نہیں 
مالک تسیل مم اقول ادرال 
و :عافد ن SEN.‏ 
مرس سے دوسرے کے لے وہ موایرہ 


2 


ا 


ET a‏ مسر ہہ 


TEE 
ےا نے کرت ںا‎ 
گی ا6 ہوتے ہیں۔سائل گا‎ 


سل مولا 


و :ار مواپرہ ماتا کے کے 


بحر وونوں 7 ای مالت یں | 


کت اکل یی بئی ہوق ھک یاکرناچایے۔ 
مسا لک انیل کم ورال 


ش:۔اگرکاشکھاراود با کےا لی( 


ی من ای ل مت کات 
محا لا یوقت می پت ہو جا ۓےک کیل 
اس وت نک یے اور ہوں تو عا کو 
کیا کن ہوگاء 5 مسا٘ل٠‏ مزارعت 
اورا قا 3 افر ن کم ءداانل 

و 2 معاہرہ ا 2 کی 
اکتا سے او رکب اورک صورتوں سل 
ال رمعا کر لیے کے بح عال اج پش 
نر دسر ا پیش شرو کن 
پاج یا اے پچوڑ بیٹھ جانا جیا ے۔ اکر 
تی ےکس ای مل رشن تےکر 
ال سے اس یس لود ےک نے او رہل 
کت ماک کے ے محا کیل 
جائز ہوگا ان ۔ او راگ ا کرلیا و کی 
تم ہوگا..۔ ا لکیافعیل مدان 

کتاب الذبا 

و تد 
کرت 4 
جاۓءاورذ با کا 
ہت 
پا ں٤‏ ا یکوڑکا 7(زال ے )مگ یکا 
جانا ے سا ی یں 


امار 


یلیل 


زج نی مرن کا وی رم کے 


ذہ کا گار ی اورم یکو زع 
کر ېمسان یل کم د لال 
و :ف کے وقت یا شکاریی مانو رکو 


شکار رکچھوڑ ے ونت یا ا رار ے وشت 


مس مال ود ہوا کی م ۔اں 


ست میس کلم وراز یور کے درمیان 
کوئی فرق سے یں ار قا جوا ہکا 


ید ودای ل ا کن 
اس صد بی دو ے ان کا قول اوران 
ولال 

و :مترو ال Lisle‏ £ 
پارے میں اقوال ات اور ولال 
احاف-۔ اخیاری و ہ اور 
اط را ریذن کے لئ مم الس وقت 
7تت ل ےک ری 


اکر ہم اش کر ری سے ذ کرت 


ا اگ مین ونت پر ا سج ر یکو کر 
دوسرکی کچ ری سے جاور ور گردیا۔ 
سا سیل ای 

و جاور OL‏ کَ 
ال ےن کے اھ دوس ری تر 
۸0 
ان کا م کیا ے» سای کی 
تفیل بم ورال 

و جانورکوڈ )کر ے وق تک اکرنا 
او کیا کہنا شرط ے۔ اگر ڈں کا ارادہ 
SE‏ زا ں7 چاے اور 


بلخم 


مین الہداے چ بد بل“ مم 


aT SEIR 


اک کی وجہ سے وہ امد ہکہد سے ای i e‏ 


کے ساتھ دہ اندر یکردن ری چلا امہ کرام دلا 
د ےت کیا ا سںکاذ ہچ علال ہوگا۔ اتل و :چاو رکو اختیاری طور پعلال 
کال م رول کے کی ی او رکو نکون کی صورتیں 


ہیں ان کے طر لے کیاء اگ ان کے 
خلا فکیا جاۓ لو رو لی موک اور 
0 برا ں کا کل اث ہوگا یں 
دو سےا کے اقوال ۰ اع کے دلال 
ہثارےد انل ا 


و :ف 4 مقام کیا ہے یں 
G5‏ :ف کے وقتکو نکون یی ر 
کاٹ جاتی یں ۔ اوران شی سے ا 

کو ںکوکاتا: ضروری کہا کوک ے 


انر زع جج دہ عضيل می _ وا کے بری وغیرہکو زم 
اختلاف اترام دلگ کے کے بدا کے پیٹ ےن 
و :ا ددات اور ینگ سے و | کیام ک۲ ےت فتہا کی اس 
EPL‏ ماقا لارام ولا کےکھانے یا نکھانے کے پاد ےکیا 
قوش تچھری کے علادہ 2 چڑوں اقوال ہیں تنیل,ررنل 
سے جانورو ںکوز کیا ہا کا ے. ذ0 و نین کے پارے میں ارام اعم کا : 
کے وق کاب خی سب ہیں ە سا لی : صلک اور ان کے تل وی 
صا نی نکیا ملک اوران کے دل 
تر پل کن جانورو ںلوکھانا چان یا 


نا از سے ءاقوال ائ لای 

27 :ڈگ ناپ اور زی خلب کی 
رین مصلا 2٦‏ و 
جلاک ای ولومڑی وکو و نولا 
گی ج دنم اود بطا تک کیام ے٠‏ 
اں ا یں اور 
ان کے ولا کیا یں ءدرندہ انورو ںکو 
رم کو ل ن ج 


لٹ اکر و کیا کر ووا ری ز6 وک 


ال ےج ال نے اے دوبارہ رما اتی مار بشتء ایک خا ر دار پار 
کرکے فح کیا اور ا کی رکیسں تام و :رابک میں ا نک تی اور 
کاٹ دیں۔ اکر غار خلا ہرن بتو ان کا عم دی وژ اپاخلء 
ہوجاۓ ء ای طرں اکر التو چائو ر شل عقن رھ ستاب تیم کوکھانا 
ی دی وا ادا اک ن ہا ے بای رمل 


جن اع تن ون کے و SUE‏ 


کے لر ا 


۴۸و .وا دو سوہ ا 


یار سے ٹیس علا کر ےت اوک شس ن شر یتمرریف سببء 


تی ال ذع اور اٹ جس فرقی :ا سںکی شریس, 
و :لے اور ٹر ے بارے مل رومیت کم ماقوال نل رال 

فا ۓےکرامم کے!قو ال :ل درال او :قرب یگ نگ لوک ںکیطرف ے 
: کھوڑ ےکا ت اران کے کر لازم ہے٤‏ پالدار اولا دی طرف 
ووو کے استعال کے پارے میں اتوال سے قرب لازم مو ہے انیس +اقوال 


٦‏ 7 م »ولل 

و 0.0 چاور اورکتّا ارا 
کرنا ضروری ے کیا سان یں حص ہکا 
نمف ا ا ساقاں جص بھی قر بای می ادا 
مو سے اقوال ایر مل 


:گر ینس نے خورر ہا ی کے 
گانیت سے اب کے بدیی بع رس 
اش میس چ ہآ دیو ںکوئی ش ری ککرلیاء 
فقیر اور سافر رال لانم ج ىا 
یں کیل یال م اقوال امہ 


لاہ اور ان 


ولا انل 
چنرمفیراورضر١‏ ور ما 0 

قوج :جن جافورو ںکو سکھایا پا ے 
f‏ بان را جاۓ ‏ و ان 2 
چھڑےاورا نکی جر ‏ کاکیاکم مرگ »اور 
جلالکا سر ر90 

۱ زم :وریا ی جانوروں ٹل ےلو کون 
سا انو رکھانا ال ےءالن کے۶ یړ و 
فریشت اودکھا ےکا م ایک ی سے یا 


ال ین ری ےج اور درا کرام ولا 

انان قالعلا اف وی چنزمفیداورضروری مائل 

و :طا کےسعنی اور اک ماقو ال ۲ و ران کا وفت کیا شبری اور 
ائے دلا مفصلہ وان ل قراو رسا ترا م 7 

لو ز8 :مک اورجر یث اوردوسر یگھلیوں ارش مل ہواورا لںکایا کک دیہات 
LM‏ و کے کی ا کا را ضا من ۱ 
ضرورت ے نیس تھی کے علال و | مال کک اختیار ہوتا سے یا جافو رکاء اں 
ترام جو نے کے پارے میں اص کیا ۱ شی کیا ے ال 
ے۔ا 1 زرو کاک اکا ٹک رکھایا ا 


جارے+ اکر اکر یی یکر کی دی یا ہنرو نے 
شکارکیا مونو ا سک اکھا )کیا ہوگا ارخ | : 
روک ری سے بھی مرجاۓ :اتل 
کیل اتال ولال مفصلہ 
فکتاب الاضحیة4 
:اب التو تق رای ے اام | 


e8‏ :کر شھرکی ٦‏ دی کی وجہ سے اپ 
ربا یکمرنے میس جل ری عابتا موتو ای 
کیاصورت موق سے ہفھ ربا یککرنے 
یں الور کے7 ا ا ا 
222 کا تقار ہوتا ے 
تفیل کل ,اق ا مکل ورال 


کت لر م ۱ 


انا پت AZT‏ پش _ 
و :ل 5 سے 5 نکی سال کی" a‏ اک 
ا 007۶9 یلرل 

رپا یکرن ما سے پاہیں وی کن ارون ی قرمائی کی 
وج ام اش اورایام اران کے جاک ہے کیا و یا اورمرٹی بترا 
0990 کر ال کے اگ التو اور پا ری 
0 ت اد برع کے لے سے یہ را ہو ا کی 
سے اگ کوئی نس قربائی ہک کے اور رہن ہوک سے یا گیں۔اقوال 
قران کا وت تم ہوجاۓ ء مکی ال رل 


یل یل , وال اتر صل ری تر :اکسا تآ دمیوں نے تر بای کی 
و انڑھےء 02 رے» نیت سے ایک گاے غ یریک قربا 
کا کے وم کے انورو ں کی قرا کا 
عم خصیل سال :عم ہ اقوال اش - 
ںی بھی قربائی کی بقیہ شیو ںکو اجازت 


رک :اکر بای کے جا نو رک وم یا ال 
کا کا کٹا ہوا ہو با کک رو م مو 
وات یا نک ناف ہو یا اکل نہ ہو یا 
1 کے میس رش یکم ہو یبال نہ ہو ان 
تام صورتوں می اق ال ائ کرام صل 
دلال ء1 کے ی رو یکی کی کے جا شی کا 
ریت 

وچ نام نی حی ‏ م وجوم ٹوا ,»عقپاء» 


ربا اء ہک یھ ریف مم ء اقوای اہ 
u‏ | 
ونم اکر ہاو رکو قربالی کے لے 


خر یر سے وقت دوا عیب سے الم ہو 
کر کی وع سےا لک اق بای شس 
ہوئی ہوگکرا سک و ھا سے را سے 
ای مج ال لمکا عیب آ میا ہو اکر 
مالو رو رر ہے ارادو سے مر 
ھا گیا برای وقت اراد ہے بر لگیاکہ 
کی با ےکل ا کی قر بای ہوک اور 
کل71 ت جانورخت عببدار ہوگیاء 


پت اران وم سےا ک تس 
ا ات 
کرنےکضیت سے اک می شک تک ء 
ما لکی ایل رکم درل 
و :ا اور نژر کے جاور کے 
گوشت کا ہا مرف اور الں کے 
ری اق ال ارام نل رین 
کب اورما یکنا 
EE‏ فی کی الع کے ار 
اقوال علاء کیا قربائی کی کھالی 
روخ ت کرد ہے ےق بای افل بوجانی 
ہے جیما کہ روایات سے ثابت ے٠‏ 
تور ں کا کیا مراب ہے جاور کے 
ال اوروودے کے ایام الوا لاگ 
دلال 
و :آ دی کا انی قر بای کے جاتو رکوخود 
آ یں پر ے دجمروں کے پاتھوں 
ےڈ کرات 6 وق کی 


اہ سے ) ب 


a‏ نف AFT‏ تحت سر 


دماء › سالک تین قوال انٹوں وشت ورود م اور پیشا بک 
کیام ہے اقوالی لادلا فصل » 

قوی 
ن شلا ری ران جر ی عزن و عردوں اور گورٹوں ا 
ار ور نی سونے یاچا تد کے برتتوں می ےکھانا 


ندنل اور پیا اور ای سے تیل لانا اور تشیو 
و گر رای ا وا لے رو گان *اورسونے وج خدکی کے جچوں سے 
7 1ء:. َ8 کھانا ا کی سلائی سے سرمہلگاناء اور 
گی ہرک نے دوسرے کے جاور ڈنن ل کے آ نہ کرو نس ۱ 
گردیاء گر صا نے اٹ ای بر مسیائل اقوال ادلا مفصلہ 


لو و :را اگ خیش يلور جن ی یل 
ویر کے بتو ںکواستعا لکرناء سو ےۓے 
0 وکری ی حت وا رکواستمال 
کنا ءاقوال ارام سی 

و :اگ رکوئی وی غلم یا ازم بارے 


سے ت تر ر اور لۓ 


ری کر ا کو لڑایا اور ا کے ات 

پال بان ہکرادھ چلا ےگیا اور نے 
ای می سے اسے مم ال کک ذنا 
گردیا ء یا قصا بر بک لای اور ای کے 
بے میں نے ابی می ان 
چاو ا ا فصل 


ول تک رم مل ورای الک ےک کے میس نے و 
وی کرو وی مع سے انف بیہودی ما فصرانی با ملمان با ڑی ہے 
0ص272۶ خر یداے نو ا ے تو لکر کےکھانا ہار 
ال کا ےوش بھی یں روون ۱ ایس اقوال ائ کرام دای 

بعد یش خوش ہو جا یں ما بعد یسک یں و :بدایا او تحائف کے لانے بانے۔ 
یس یں سا شی رال کےسلملہ می فلام» باندی اور بیو ںکی 
ا ولال | یں تو کی باک ہیں انیس ہک رکوئی 
و اک ری نے دوسر ےکی یری کے ایا 990 
غص بآ ر کےا سکیف انی کروی کی نے ےآ پ کے پا گیا ےا 
امت رک ہوئی یکر کی قربا کرری» اےتبولکر ناوریش ی صا کر بای ہوا 
سال اقوال ات ولگ اقرا عایا »دلا 


و معاللات اور ریات ن 
وو کی اورک ےل وگو کی وای قبو کی 
ہاکق سے اورک نکینی قو لکی ہاکق 
ےا لی ایل بم زنل 

او :کے معاطلات اوردبانات می لگن 


ہپ وو رت 
| 200007 
کل لال 


تجح گرعوں او رگرھیوں اوراونڑں اور 


ال ہداے جد یڑ 


ا FT aT AFT aa‏ 
اوکوںی کی یں کے ا وای ټول :ایا کاک جانا رکا مواور 
پان ے سیل ششرائیاء اقوال بکد ری جز کیا ہوا کےاستعال 


ای یتیک کےکڈو کا کابد نا ے 
و کک عام وت می شک تکرناء اور روم کےطور راستعا لکرم ر ے 


وا اگرنا گان ےک کی ی ےم اور زان سے ر کے ہو ۓےکپڈرو ںکو 
ا پپننا تفصبیل مرائل » اقوالی علا مکرامء 
ات کا با اش نہ ہو یا بااش مار ُٰ رمل مقصلہ 
وال کے سے لہ یا ال کے بدا کا و : مردوں کے لے سونے اور 


ا 


اند بک اور رم کی چرولں ے 
دوسرے سے کر اکر ما اس ادوم ایل 


زمنت ت مال کر بورٹوں اور مرول 


کھیا کون ھی ل ش مامات ہیں کے نے چاندی وت 
سی ویو وی رہ کی عو کا اتا لکر 
تی ال توا ا ورای کےگلیتہ اور علقت کے بار سے میں ظ 
تر نل سیل ےکا بیان مردوں اور کال ے فرق حگید یر اھاکھواکر 
عورنو ںکو E‏ ۱ رک تخل مال ءاٹو ال علاءءد لال 


تک اجازت ےنیل مال اقوال 
ا ول مفصلہ 

وج. رس یکو ںکا کیہ باکر ای بے 
یك ءال کے بسر رونا یا اک 
اه بنا اکر ورواڑوں لڑکا ا ءکورنوں اور 
ردول رونوں حر رافیل ل 
اقوال امام 

وچ :چہادکی عالت می لت ود یا کا 
کز ت لما برام ولال 


2 :یپ کے ک۲ اور بانا س 
ایک تا ریشم اوردور رک اور چ کہا 
دو ی بپپڑے کے اندر اک رکچ دم 
مآ می ہوکوروں اور مروں سس |  '‏ 
:اس کے استعال کے بارے میں علا مآ 
کرام کے اقوال ان سل دا لیا 

ین 


چتدضروری مال 
و زمردوں کے لئے سو ن ےکی اوی 
1 مک نکن لوگو ںکواو 27 اگم نے 
وآ سال نميل ول 
Ma‏ 
ا رت یش وائیو ںکو 
بناعوانے شی ناک ٹوٹ جانے پر اے 
یسپ و 
استعال مسا لکیافصیل اقرا فتام 
ولال مفصلہ : 
0 :یو جو ںکوسونے حاندگا 
کے زلورات 2 وره gs‏ 
استعا ل کرام :نا ضا ف لر لد 
او کے کے لے وضو کے بحدا کی 
بے کے لے روبال او رکا کرات 
سال کی فصل اتوال اتل 


داگ 


اسر تی 


رت EFT‏ ساد 


2 کی سکرہباندح لیا 
کیل ہحمل ری 
3 لوی رل طرف د کا »اور 


ے مد کے بدن 
3ئ کیااک کش ۱ 
رکا سے ست رہ یا دہ مھ پک کون 
کون سے کے ہیں ناف او رک کا کیا 
عم سے مسا لک قصل کم ءاثوال 
علاء ولا ل مفصلہ. ۰ 


زج نکیا ۳ د لے ے پر و :عورت کے ول شل وت ہونے 
طرف د یو رک ي با نہ ہون ےکی صورت میں وہ ا ہی مرو 
کش طوں کے مات ای طرں ایتمی کے بدن ےکس حص ہب یکو دی کی 


| ہے ایر مرول ںگھہوت ہونے 
ا ےک ورت تس ور تک مد 
کر کا ما ا لک یل وگ 
اتوال ام ولا مفصلخ ‏ ۔ 

£ : ایک عورت کے گے ری 
عورت اضرو کناچا لے 
تسیل تاقوالا دال. 


چان یا او ڑگ عورت سے مما کر 
سے“ ےہ اموک طرف وکنا کیا ے 
ماک تسیل بم ورال مفصلہ 

و :گام نے کے لئ شہوت کے 

خو فک ےت 
٠‏ دی یا ا وی کیت سے 


ق وقت بی و ل ر تز سال ۱ 
مال اق ال علاء دا فدہ ۵ | و مرداپتی یوک یا طال بانگ یا 
ك یت رست بوس باندگی کے پد کوک 
مرک د وکسا ے یا رکا سے ء ایک 
ا پاپ تیوک اورپاندیزیادد: ہیں 
وی ادو بات کو را سای ی شی 
7 06ا و و ھ2 7 *اقوال ادلا مفصلہ- 
لو 09 و :لار ےکھا عراد ے اور ال 
جو اود کا ےاورا را۶ ر ا خۓرقل و 
افش ادر خان دوسر ےکی مرداہے ارم ےکن اعضا ماو کیک 
شرمگاوکو رک کے ہیں کیامرددوسرےکو اد کن اتآ کوئیں رک کا ےہ 


نیل اء اقوال علاء ء رلا 


رک تو وو 
27 نے جاتے ہوے ان کو 


لا سک »دمو س نما ا٠‏ اعزار 
ہی سک نکی ہناء بد وسر ےک ناف ے 
نے سے ول ی کو ھن اک ہو اتا 


ہے > سال کی یل مہ رال 


وس کے 


تھا خی اچ ا aa‏ و 


6۴۳م( فصل فی الاستبراءوغیزہ 


EE E 
مس خب ان کے پات پال دہاۓے؛‎ 

کےا جیا نیل ول مفصلہ۔ 
تر جھرسکورتوں کےسات بای میں اپنا 
سف میں جا یسا ے گرا یپحرسمقور کو 
زس 0008 
گن تو ان کیا ا 


سی زوزاع سن ت کا گی خن ہو ۱ 


اسر کہ نے سے پیل بادوران 
کے ےکیفیت 7 چاۓےء سک 
تفصیل ‏ توا اتیب ورال مفصلہ ۔ 

و :ایی مر دخی یلوہ کے بدن ے 
ن‌اعضا اواو رک وپسکیا ےتیل 
سال اق ال علا گرا مال مفصلہ- 
و ہے گے 
ل ےکس رع او کن ےکپڈروں میں انا 
جات ء خر یدار ا ےگہوت کے یر یا ۱ 
ےنات اود ار 
ج ا یں ل 07 ؛ اال 
علاء ول مقصلہ ۔ 

ری ھی ووب ا ورضن کی ترف 
اوراحیی کی طرف دن کے سل ر مس 
ان انم :چو نے کے اورا سی خلا کا 
51 7 سے کی 
2 او ال ارا مولا مفصلہ 
و :لام ای اک کک ےا 
نہیں اور ور فصل سال 
اق ال عل »ولا مفصلہ 

آ وج :ا نک اپ باندکی سے باش رای 
یوی سے ال کی می سے بفیرعزل 
رتا سے پا ہیں اک تفیل 
الاب :لال ممل 


و :ارا کا بیانء اس کے کن خی 
باندی خر یدنے ا ک طرں قبضہ ش 


آ ہے کے بعد اس ےرا بسر یں 


کرنے ام 
وج: اتبراء ےی کن لوگوں بے 
ا ےءاقو ال امہ 


1 ا 
سے کا اتی سے یماش 
یړک یس میں فروخت سے یل اں 
باثری سےپجمبستر یکر ےکا اتا بھی 
نہ موتو کیا ان صورتوں یں کی اں 
ترک یړ ا باندکی ےک ری کے 
لے راء لازم ہوگاء ان اخا ی 
صورتڑں کی پھے صورتیں, ا 
تخل رقوال علا کرام »دای مفصلہ 
و o‏ 
01 تک ہو پچ راس کے بای حصہ 
کا کی ما تک مو جا ےتڑا کے ےکی 
برا ضروری ہے با ں» اگ رخ یدی 
وگ ا خی جو وسی ہو یا مکاح ہوا بر 
دہ کے بعد ا ےتیٹ ٢‏ گیا اس کے 
بعد ہو مسلمان موی بامکاتیہ نے ایی 
ای لی مک کی تق کیا اب بھی ال پہ 
اک فی ل کم 


۲ : اکر کی کی انی جھاگی ہو 
افص بک ہو مااجرت ر لی موی یا 
ران میں ری ہوٹی باندی وای ںکرد ی 
مون اس میں اسبراءلاز گا انیس ان 
عمورتڑں شس ددا ہے اش 


ان ادا جد یھ 


ددرت جس د بت 


کے ساتھ وای کاعمء جہاد میس بای 
مو با نکی با باندی کے اتج اس کے 
تاز یکو ووای وی کی اہازت ے یا 
ینم سان کی یلیہ اجکام ء دال 
مفصلہ 
:اگ با دی جامد موتو ا کا ایرام 
تس طط رب سے ہوگا اکر ماک ہکااستجراء 
کرت مو ےخون ند ہو جاۓ یادنول 
بخ ار E‏ مو اے کن 
نے گے تو کیا کرنا ہوگاء مات کی 
فی ر 
قش :کیا نی خر بی ہو ےاشرا, 
سے کے لئے اور ےکر ی 
سے اکر ہے تو ا کی کیا ے 
اورا کا اس می کی تول ہے اوران کے 


2 نے اتی اہلی سے ظمار کیا ہو 
لابو ںاہ اکم یر ے لئ مر ماں 
کی بی ھی طرع ہو او رظہا ری ہے کٹ 
مل طور سے جل دو مک الکاں یش 
گز ری سے ظا مارک رن ےکا کیام ہے 
اس کیک نل ,دا ل منصلہ 


وج روآ زارگررلوں 1 من 


ا ے تصرف اوروی یں کر 

خان اقول ملا ۔کرام »اور 027 
افرزلال تفص 

ف الوا چنر ضرق توق 


02 کے ہارنے می 


ا کب اورا یکا 

قبرتا وں کے ورخوں و و ل 
فالودووخبرہ 

ےت ا 

راشان مسائل 

برایااورضیافت ے لق 

می ز بان اور ہمان کےآ داب 

میزبان ےآ داب 

کھانے کے1 داب 

و :درم اور سے وش رولٹانا 
ففل. ید عق پل 
ض :سپ کابیان 

ھائ یکر ےک کی( چا نمی ہیں 
ض :زارت ور ومظایر ء راء ت‫ 
071 

یل _ گانا ابو و ویر یی وام 


2 :ایک مرد کے لے دوصرے مرد 
5 پا اوں اور م کو لوسے دیتا اور 
دوسرے سے معا کر ناء ای طرں ایک 
ورت کے ے > دور کرت سے 
موالت رظ ہلزن :نیل مال اقوال 
امم ول مفصلہ ؛ مکاح اور مکامعے 
کے شی 

چترضرو ری اورعفی رماتل : _ 

مل :وواءوعلا کیان 

نل :ینہ یکرنااورناش نکتزناوغیرہ 
و و ون 


تھے 


) ز ہو ہر ہرد FS SE‏ 


ا۵۰ TT‏ ے| aN‏ 
پارے یل 

مل اول دکا نام رکھنا او خی کن 

فصل خوبت دصر دغر کیان 
لامور 

رخ :چاٹوروں کی پر اورگویر اور 
انمانوں کے پانمانوں کے یر اور 
فوخ ت کا کیام ے اوران ہے 


:سی ملا نکاا نی شرا بک بی 
ہوئی م ے خود پہاٹا تی رش کواراکرم 
اور لے والے کا اے وضو کر لیاء 
ما الک ایل 2 »ولا مفصلہ 
و :انار اوی کے می صورت ء 
ش رط ءاقوال ام رم٤‏ دانل مفصلہ 
و :اس جگھیت سے اکل شرو فل 
ویر ہک اک رع دوسرکی جگ سے لاکر 
اہۓ پاک تفو کر رکھنا کی اجار ہوتا 
سے اماک لک فی واقوال ام ۔ 


گا نکررکھا تاک بتو برک انا 


ہے 1 ایک دن ال كود يما اکہوہاسے کرام دلا مفصلہ 
فروش کہ ےا کیازیدال بانر لک و :کیا لوقت ضردرت باز ار سامان 
ہو فش سے٠‏ ما سے واموال وق وک تیتوں قاو رک کے 
زی رمسو یکرککاے افیش رق لے چڑوں کی میں ابی می کے 
بوک برا کا طر یق ہکیا ہوگا. اورا مطالں سی نکردے گر اکم کے پا 
عوا مک طرف سے چڑوں ی یں 
۱ 2 مت نکررہۓے کے لے زبزوست 
ر سواہ یج والا تنم بھی مطالبات ہو کس تو ووکا یا او ول 
ہو ال تیل ماقوال ضرعم مرن کی الا کی فر ےکن 
دٗلمفصلہ ۱ کے پاؤجود تھے ا لکی جات کل نہ 
: کک ےن می کا مء و کیا ا نکی 
ت جج موی مات کی لفصیل م 
اراو اژال اق رلا مقصل 


خی رر مہارے 
ا ےت 
ھن یا ردس ار یانےرودھ 
پ83 بک SOU‏ 91 ےے اے 
کرش رد کرای یوک یا :ی نے تہارک 
اک وھ لی لا ہے ای قر اٹل 


ردام وقت کے فلاف فت رکھڑا 
ہوجان ےکی صورت میں مسلمانو ںکا ایا 
تتھیارفر وخ تکرن عاو لآ میوں کے 
تھ انت پروروں کے | تجھ اور او رکا 
ره اے کے اتھ فروخت 
کراضص کے لق معلوم م وک وہ 
اسے شراب مناد ےگا ء مہا لک انیل, 


ہے جلدم 


بھا_ بی AZT‏ جح ET‏ 


ات ۵ ا وج: ححی کے ہوۓے مرول ے 


: تچ کسی ملران کا زيول کوبیوں رمت لیټاء اور انورو ںک وح یکرناء ۱ 
وغی رہ کوکوئی مان ما کان ٢تل‏ خاد اورکد ھےکوکھوڑی ہی کے لئ سوار 
کیہ یاراب یا سو رکاگوشت فروشت کرن, مسا لک فی لب ورال مفصلہ 
کر سر ےار بردیناتضمیل 8 ار ووی ونھرالیٰ کی عیارت. 


سو 

لو 4 ر زی ور ۲ کی کراب 
ے مم نا کو ددر( ی جل جا 

لدا نکا اجرت پرکا مکرنا 

اوراتھرت رسو لک »لقصل مل 

اقول اتیک رام ء لای مفصلہ 


ککرکیء ای دعا ان الفاطظ ےك رل٠‏ 
اللھم انی اسألک بمعقد ا زمن 
عرشک ؛ بن فلا ںک کر دعا ماع یء 
ین ال ءاقول علاء »درل 

تچ اخرعء »زوش ور 


دو ویره 22 اخلاف 


لو زج :مل ہمہ 1 زلیتوں اور ال یی ابرلا 1 
ارت ںکی خر یدوفروخت بااجارہ ری قوج :کیا تاج فلام لوک ںکو ایا اور 
تاف 1و ن سال 


ELE 
و :کے پااس ایی بم اس شرط‎ 
2ن و . طروتم‎ 


سان فار 


ہے ایتا تھا امان خر یدتا رہو لگاء ویج :اگ رلقیط رک نے قضکیااورا او 
ای طرع بلا شرط نظ رک ےکر صب e‏ 7 
رورت اس سے اااستما ی سامان کیت میں سطر ع 1 کن 

پنسا قصیل يمول تمرف رن کی یں ہو ۱ 
و فان یر تشر اورنقیا کے تضرنا یک تسیل ورل 
کک ءاقوا لعلا ولال أو £ کیا مت اک سی بی کے تایااں 
ےت :تن یکا ما مس رکرو کا ان ری کرلقیا یا بک کو عزوو ری بے 
سا کرم نکر او تخت شکرنارمت کی لا یا ځور بک ا ہے طور مزدوری 
و تو ء ول بور IL‏ ت اورا ووی کم 
چنتفرقاورمغی رس ئل کر کے ا ےل کیا توا یکی اجرت 
تج اترا سے رن ہے لق |. اپ کے لے انمو اکس 


آداب صان 

وج ال الزمہ اور مش رگن 2 
ادا رام می اقل ہوناءاقوال ان 
کرام ولال مفصلہ ۱ 

آ داب مد ےعلق چندمسائل 


وج :ا سے تلام کردا شی راہیڈالناء 
راہ کے »ای کے ماوں بی بیڑی 
ڈالار سا لک فصل بم ئل : 
و :عق کم علاع یش مردوکورت 
کے دران رن ہے یا ئہیں شین 


و £ ا تی اور رآن ید اورعلوم 
دیفیہ یں ابموز نین کے لے 
ان کاوظ قر رکرد ینا پھر ان کا اسے 
تو لکنا جج ےہ اران لوگوں نے اپنا 
زغ گی کل او زان مال 
ان کا اتال ہوگیا کیابقیہ وظیفہ دای 
2 با ال مل ء د(انل مفصلہ 

مین مگ راورمواعا ہے درمیان 
یوین 
کے ہو ےک نزات ۓتحلق ال 
سالقہ اور دہرے سے بڑھ 
ھائ کے ماع کا میان : 
قصل کا چڑوں ے 
اواب کے بیان س 
ل یدوفر وضت کے مان ٹل 
ل :وال بن او رزو نرہ کےتقوق 
سل :ر اورقرض کے مان یل 
ل : ش رک چزوں ے ف اذہ م کل 
کر 
فلت جات برق مآ 
فل تیراو ر چو دوسر ے ورل ما 1 
عم الام 

ٹا کتاب التحری کچھ 

باب دوم :زک 3 می کرک یکر کیان 
: باب ۳٣م:‏ : کڑوں اور برتتوں می ںتھری 
رن ےہ 
زاب اب 
فصل, ری مفصوب بان مم ج 
ا صب کے کل سے شی رو جائے : 


فض 


میس چو مال ستو مکی سے 


ھن الہد اے جا ۱ ۱ ے۵ لر نشم 


4 كتاب المضاربة‎ ٠ 


المضاربة مشتقة من الضرب فی الارضء سمی به لان المضارب يستحق الربح بسعيه وعمله وهى 
مشروعة للحاجة اليهاء فان الناس بين عنى بالمال غبى عن التصرف فيهء وبين مهتد فى التصرف صفر اليد عنهء 
فسمت الحاجة الى شرع هذا النوع من التصرف لینتظم مصلحة الغبى والذ كى والفقير والغنى» وبعث النبی 
صلى الله عليه وسلم والناس يباشرونه فقررهم عليه» وتعاملت به الصحابةء ثم المدفو ع الى المضارب امانة فی 
يده لانه قبضه بامر مالکه لا علی وجه البدل والوثيقة» وهو و کیل فيه لانه يتصرف فيه بامر مالکەء واذا ربح فهو 
شريك فيه لتملكه جزء من المال بعمله» فاذا فسدت ظهرت الاجارة حتى استوجب العامل اجر مثله» واذا 
خالف کان غاصبا لو جود التعدی منه غلی مال غیرہ. 

مضار ہکا باك 

ترجہ :۔ لفظ مضار بت بضرب سے ”تن سے جس کے معنی زین بر کے اور س کر نے کے ہیں اک بنا ہز ای کے موابلر 
کر سے وا کو مضا بکہاجاتا ےکی وک وا س ےکار و پار ی مقر سے شہروں اور لکول میں س رک ا سے اور ای سے انس ص انام 
مضا بتہ رکھاگیا س ےکی وک وہ مضا ب اپٹی عحنت او رکو ی سے بی ٹف حاص کر ےکا ن ہو اجاور ہے کل ایک چات اور 
مرو عقا ےکی وت ل وگو ںکواپنار وزگار ما کک کر نے کے لے سف کنا ہت ہے۔ اس یناء ےک انسافوں ٹیل یھ لوگ مال کن 
اظ سے مع ہوتے ہیں بک ا کو مزاسب طر تہ سے استما لک کے بج ےکا کان میں ڈ نک مکی ہو تا ے اور یلوگ ا یی 
مر ما کواد راد کر کے اس سے کھا کت ہیں کر ان ےپ ایر ٹم یں ہو کی ابی صلاحیت نیس ہو کی ے اک مناء بر ایمے 
تل یکی رت ٹیک ایآ کے ما کو وو ا تعن استعا لک کے جج کی 0ل و ا ا ا 
ہوا ی طرح نہ اور ےو تو کی میں اور و لقن اور فق کی میں ا لام کے سا تھ قا ہوںں 

وبعث النبی صلی الله علیہ و سلم الخ:. اور رول اللہ ص٥لی‏ اللہ علیہ ول مکو جب ر الت سے نوا گیا یوقت بھی 
آپ مضار تک مام ہکیاکرتے تھے اور آپ صلی اللہ علیہ و کم نے بھی اس گل کو جار ی رکھااور تتام کا ہکرام ر تی الہ 
تم بھی کرت رسے۔(ف : من صحا ہکرام ر شی ایل نم می مہ گل مضاربت بخ مکی انار یا اشتلاف کے چا ری رای 
رحاس کے ماد مو نے بے س بکااجما اور انفاقی ابت ہوگیا۔اس مضار ب تکی صورت ہے ہوگ یک لا : زیر نے بج کو پار 
روپ دی کہ ماس سے تار کر وای ش رط پےکہ اس می ال توا یکی طرف ے ج وپ بھی لٹ حاصل ہو اس می ںکوکی مقرار 


من الہد اے جد یڑ ۵۸ لر شم 
خلاضف ایی تھائی می رادو ہار ااا کے بر گی دوتھائی مر ایک تار ہوگا۔اس کے نے می دوفو ںککاش سی ہونا 
زور ی رے۔ ۱ 

ٹم المدفو ع الخ:. بر ای ضار بکوکاروبار کے لے جو ہہ مال دیا جاۓ گا دہ مال اس کے قضہ میس لبور ایا 
ہوگا کی وک وہ مضا ب اس مال یر اس مالی کے ماکک کے مم سے فی کر ےگااور ہے زع کی کی عو یار من کے خی ہوگا۔ اس 
ط رح دہ ضار ب اس مال شیل و کل ہوک کی وک وہ مار ب اس مال میس اس کے مالک کے کم سے تر فکمرےگااور جب 
مضار بکوا سکاردہار یش یھ ىف ہوگگاجب دہ مضارب انس مال شیل ش ریک ہو جا ےکک وک ووا بن و رت ال ے 
کک حص ہکا انک ہوگا۔ او راک کسی طر e‏ ل مضار بت فاسد ہو جاۓ تب وہ اجار ہ ہو جا ےک اک کہ ےکم پت 
ٹل بیس انی حن کاب د لی ےکا ن ہوگاا ور اج مل پا ےک او رگم وہای مل میں مال کے مال ککی مر ی کے خلا فکا مکمرے 
انب اس وقت خاص بکہلا ےٹاک وکل وہ مال تکر کے خر کے مال ٹیس زیا یکر نے والا ہو جا ۓگا۔ ۱ 

تو :کاب : مضا تک بیان ۔ لقو ی اور اصطلا ی حن ہمعم و لکل عم کر نے وا لے 
اورمال کے مالک کے در میان ای 6ا تفیل و رم ۱ 

قال المضاربة عقد يقع على الشر کة بمال من احد الجانبین ومرادہ الشركة فی الربح وهو يُستحق بالمال 
من احد الجانبین والعمل من الجانب الآخرء ولا مضاربة بدونها الا تری ان الربح لو شرط كله لرب المال کان 
بضاعة ولو شرط جميعه للمضارب كان قرضا. قال: ولا تصح الا بالمال الذى تصح به الشركة وقد تقدم بيانه 
من قبل ولو دفع اليه عرضا وقال بعه واعمل مضاربة فى ثمنه جازء لانه يقبل الاضافة من حيث انه تو كيل واجارة 
فلا مانع من الصحةء و کذا اذا قال له اقبض ما لی على فلان واعمل به مضاربة جازء لما قلناء بخلاف ما اذا قال: 
اعمل بالدين الذى فى ذمتك حیث لا يصح المضاربة لان عند ابی حنیفة لا يصح هذا الت وكيل على مامر فى 
البيوع وعندھما يصح لکن یقع الملك فى المشترى للآمر فتضصير مضاربة بالعرض. قال: ومن شرطها ان يكون 
الربح بينهما مشاعا لا یستحق احدھما دراهم مسماة من الربحء لان شرط ذلك يقطع الشركة بينهما ولابد 
منها كما فى عقد الشر كة. 

تمہ :۔ قد ور نے فر مایا کہ مضا ہت ایک ایی کل ہے جس شس ایک طرف سے مال د ےکر اس گل میں ش مت ل 
جائ ہو (ش]شنی اس مال سے معالل کر کے جو بے ای حا کل ہو اس میس دو ول شرپ ہور ہے ول )اس یل ایک ہاب سے نت 
اور یر اور دورس ےکی رف سے ما کی کت مون ہے ء اس ش رت کے اتر ہے گل مضاربت نیس ہو کا ے۔الاتری 
الخ : کیا اس کی میں ہے بات یں یاتے موک اکم مال کے ماک نے مال دتنے و فت الس کے سمارے لف کو اپینے بی لئ رک کی 
شر کر لی ہو تو اسے ہجاۓ مار بت کے کے گل بضع تکہا جا جا سے اور اکر اس میس شر کر یکی ہوک اس گل سے م سمل 
ہو نے والاسار ناس عحن کر نے وانے مخ سکابی ب وکا تذل زاس عم کو قر کاک کہاجا ےکا ( تن ایک تس نے دور سے 
I a‏ و ا و : 

قال ولاتصح الخ:. تزور نے فربایا ےک مضار بت کا گل اسے می مال سے و ہے۔ جس میں ش کت مون 
سے جن سکابیالن ہاب ال کت شگزرچچکاے۔ ای بنا بر لای نے ایک وای سامان د ےک کہاک تم اسے کہا یکی 
تمت سے مضا تککاکا مکرد تال اکر نا چائز ہوگا کی کہ ال میں آ ئد ہز مان کی طرف اضاف تکواس لے تو لک جا ےک فی 
الال می نکیل ممن وکیل بنازااور سا تھ تی اجار پر د ینا تھی ہے اس لے اس کے نا از مو ےک یکو وچ نیس موک ہے۔ اپزاے 


۱ ین الد اے جد یڑ ۱ ۵۹ ا ل رم ۱ 
ال ہیا اذاقال الخ :. اک بال کے مالک نے دوخ ر ےس ےکہاک ال جودو ے ی ہام اس وصو لکر کے 
ال ےکاروپا رکرو ٹوگز شن ستل اور ول لکی طرح یہ کی جائز ہوگا۔ ن کہ ال می ےک 
کہ دوس ر ےک طرف ا لک اضاف تک جائے۔ااس کے بر غلا ف اکر ایک مقر وض تفص سے مال کے کک کاک می راجا 
مال ہار ے ذمہ باق ے نواس س ےکاروہا رکرو یہ ای مضار ہت کی کی کہ امام ابو OIE E‏ 
اا نہیں ہو جا ہے۔ جلی اہ ای سے بس کاب الو می جیا نکیا ہا چا کان سا ین ر م ال کے یی سے وکیل ۔ 
جج ہوئی ے ین ا ںا لے جو چ ر یرک جاے گا پہلا ماک جیا کا کی مالک ہو جا گا۔ اس طر ںان دونوں خموں کے 
در میانع ضار ب کا کل فو ہو گار ع رص اور سامالنع کے ذر نیہ موگاں ٠‏ 

قال ومن شرطھا الخ:. تہ رگن مہ تھی فرایا ےک عقد مضمار ہ تک شر طول میس سے ایک ہے بھی ےکہ اس کل 
سے ج وف ما ل ہو ومان دونوں یل مخ رک ہو۔ می یہ بات نہ م کہ الس لف سے بے مقار ملا : انس پاپ اس در ہم جن اور 
معلوم ت ہک دےے گے مول کی وکل ش رکت ٹیل ایک شرط لگادہینے سے الت کے درمیان عقد ش ریت حم ہو جانا ہے عالا کہ 
مضاربت کے لگ یں ش رکت ہو :اض روری ہو جا ہے جع راکہ عق ر رکت مل ہو تاے۔ 

و :ضار یتک آم ف اور گل مار ت تل بضاعت اور قرش کے ور میا نم ۱ 

کافر ق »کے مال سے گل مضار یت ہوک ے؟ مضار ب تک میدش کیں۔ 

قال. فان شرط زيادة عشرة فله اجر مثله لفساده فلعله لا يربح الا هذا القدر فيقطع الشركة فى الربح 
وهذا لانه ابتغى عن منافعه عوضا ولم ينل لفساده والربح لرب المال لانه نماء ملکەء وهذا هو الحكم فى كل 
موضع لم يصح المضاربة ولا يجاوز بالاجر القدر المشروط عند ابی یوسف خلافا لمحمد كما بينا فی 
الشركةء ويجب الاجر وان لم يربح فى رواية الاصل لان اجر الاجیر بتسلیم المنافع او العملء وقد وجد وعن 
ابی يوسف انه لا يجب اعتبارا بالمضاربة الصحيحة مع انها فوقهاء والمال فى المضاربة الفاسدة غير مضمون 
بالهلاك اعتبارا بالصحيحة ولانه عين مستاجرة فى یدہء و كل شرط يوجب جهالة فى الربح يفسده لاختلال 
مقصوده وغير ذلك من الشروط الفاسدة لا يفسدها ويبطل الشرط كاشتراط الوضيعة على المضارب. 

ج :قدو رین فرایاس کاک عقد مضار ہت میس ( ف صدی) حصہ سے بے مشا ر کی ور ہم زیادود ےکی ش رط لگاد کی تو 
مضار بکو اکا اجر شل لےگا۔ (یشنی ا سکی اس عحن تکی عوام میں تی مز وور ی مل کا سے دہ سے کی )کوک ا کا عقر : 
مضار بت فاد م وکیا سے ۔ ای ےک شابید اس گل سے صرف اک مق دار سن اس ور م ی کافا تہ مو اہو ۔ ای ط رحاس کٹ یس 
دونوں ف رر کی ش رکت نیس ہو کک گی پھر ىہ اجر کل داجب ہو ن ےکا عم اس وج سے ےک اس مضارب نے اپنے کابدلہ 
یاپ سے نان عد کے فاسد ہو چا ےکا وچ سے اسے نیل پاسکاہے۔ اورا کال ر اعا سل فی ای کے مال ککا ہوگا کوک میلع 
اک کے کی تک کچل ہے۔ اس رح اجر اکٹل کے واجب ہو ےکا عم ہر اسک جک بے تاذ م وکا چہاں مضا ب کا عقد نہ ہوا 
۴و لایجاوزها الخ:. اور ابام الولو سف کے زد کیک عقر مفمار ہہ تکرتے وقت جس مق را رکی شش رط ان دوفول کے در مان لے ۔ 
پل ی اس مقار ے زیاد ہاج ل ہیں ےک( شل جرا شل ہر اردر ہم یں گر شرط مضاربت کے مطابقی ا کو آشھ سو لے 
چاہۓ قوذ اسے فط آم سوبی میں کے ) مان امام ھکاس ستل می اختلاف ہے ججیہاکہ م ےکتاب الش رکتہ مم پیل ی ان 

دیاسے۔ : 


ویجب الاجر الخ:. معلوم ہوناچاہ کے سو لک رایت کے مطابقی مضمار بت فاس د کی صو ر ت یں مضارب نےکر چہ 


پرا ر 4 بل تشم 


من ہیا ہو پھر بھی ا کی اج ت اجب م وگ یک وکل ایک مز دور یإاچر جب انی محنت سے ما م لکر ےکم ازاز ہکا 
کام ا کیا ت داجب ہو ہا ہے۔ چنا نج اس پگ یشارت ف سے جبکام پااگیا و وا کیا ت واجب ہو گی 
آورہ وت یرد تک عا جار کت زی ہے سے ول گ ات حدر با 
مت مضار بت فاسدہ کے متا سے میں اہم ہوتی ہے_ مین یے مضار ہت می مس پک لع نی ما سے اہیے بی مضار بت فاسدہ 
ین کی ارت نکی اور ہے بھی معلوم ہو نا جا کہ مضا بت فاسصدہ بی مار ب کے قضے می ںاگ کول مال ضا مو جاتا 
سے پوووا ںکاضامن کی مو تا ےکی وک مضار بت کی ای م ہے اورا ی وچ سے کیک اجار ہیں لیا ہو ایال می ج راس 
سے نے میس مول سے وہ لظو رابت مول سے اور یہ بھی معلوم ہنا چا کہ اس مضا بت می اگ کو ش رط ایی ای کی ہو 
ا کی کرت ین ال کی کی زی ئن کے لے دا ہآ یرفاقت حم ریو و وان ر 
مشار بب کو قاس دکر کیک ایا ہورنے سے صر مضسار رت یں غل ماتا ے۔ 
کرو OLE‏ دض REE bS‏ 
سے زین ارت کے کے نقصان بر داش تک ےکی ش رط کان وف :ا :ال والے نے مضا بکودوہرار دو پے مضمار مت 
رن نان ا ال کا زین ہو تذمیرے ہار ے در میان اک ع لصف نصف ہو کاو را رکاروہارٹش 
صان ہو ہا سے ڑا س کا نصف نتان بھی ت مکو بر واشت تک رنہ گا نذارسی ش رط فاسد ہو ہا ہے مین مضارہت i‏ 


و :اگ عقد مضا بت مس حصہ سے بک در ہم دہ ےکی شر گادیہلکر مضار بت یس 
ای کوک رط الاک ق موجن نے ان کے ی رار ٹیس چات ان دہ ی چو اراش 
رط کے علاد وکو دوس ری شرط فاسد ای کی ن ر اخلاف اء 
07 


ولابد ان يكون المال مسلّما الى المضارب ولايد لرب المال فيهء لان المال امانة فی يده فلابد من 
التسلیم اليهء وهذا بخلاف الشركة لان المال فى المضاربة من احد الجانبینء والعمل من الجانب الآخرڈ فلابد 
من ان يخلص المال للعامل لیتمکن من التصرف فيه» اما العمل فى الشركة من الجانبین فلو شرط خلوص اليد 
لاحدھما لم ينعقد الشركة وشرط العمل على رب المال مفسد للعقد لانه يمنع خلوص يد المضارب فلا 
يتمكن من التصرف فلا يتحقق المقصود سواء كان المالك عاقدا او غير عاقد كالصغير لان يد المالك ثابت لهء 
وبقاء يده يمنع التسليم الى المضارب» وكذا احد المتفاوضین واحد شریکی العنان اذا دفع المال مضاربة 
وشرط عمل صاحبه لقيام الملك له وان لم يكن عاقداء واشتراط العمل على العاقد مع المضارب وهو غير مالك 
يفسده ان لم یکن من اهل المضاربة فيه كالماذون بخلاف الاب والوصى لانھما من اهل ان ياخذا مال الصغير 
مضار بة بانفسهما فكذا اشتراطه عليهما بجزء من المال. 

تر جم :قدو ر قنے فر مایا ےکہ اور ہے کی ضر ور کیا ےک اس مضا بکور اک الما میتی ا سل ہو یور ے طور بر جوانے 
کرو یگئی ہو تن مال کے باک ککااس می ںکس ینف مکی تر فکر نے یا رکاوٹ ڈال ےکا اال نہ ہو _ لان المال امائنڈ الخ كوك ده 
ال اس مغمارب کے تینے میں بطو رات ہو ج ے ہنا مل طر یہ ےا ی کے جوا نےکر باضر ور کے اور ہے عقر کت 
کے بر فلاف ے ا کید ہ کہ مض بہت شال کے انی طرف سے ش رت کے سے ال و چ کان اس مضارب 
کی طرف سے ا کااپناکام ہت ہے اس ےہ ا ی نان جن سے کی ن ر ےا ےک مات 


یئن الد اے جد بد 1 2 
اپ کاروپار کے ال خر جکرنے میں وەدوسر ےکا اع نہ رہ کے اور صب ضرورت خر کر کے کان عقر کت یس 
رونوں را نک وکا م کر کا ن ہو تا سے اس لج اکر عق رغ رکم کی صورت میں بھی تز ر م پر ایک بی کات ہو اور دوس را 
تس خر ج کے موقد بر اہۓ ش رک کا اج ہو تو ش کت دہ ھل موک اورنہ منعقد موی سن بس کے قضے می مال نیس ہوک 
اس کے لئ ش رک ت اکا مکرن کن بی نہ ہوگا۔ 
ای طرحآگر عقر مضا ہت ٹل یال والے کے ذمہ میں کی کا مکر ن ےکی ش رط کا یکی ہو نذدوعقد فاسد م وکاک کک ا شرط 
گی وجہ سے اس عضیار ب کاس مال ہر ل ڈیہ ہا سل نہ ہو کے گااور اس ٹس ہے بات عا کہ مال کے مالک نے خود عقر 
ا ایریا کس ےکی سط سے شب 
ابال بر کی دہ وا ےکا اکل مکرد یناض رور ی سے ورن مقصود حا صمل نہ موک کی کہ مال بے مان ککافبضہ باق رہ جات ےگا 
عالاکہ ا لکاقضہ باق ر ہنا مضا ب کے قضے می ہو ےکور ہکا ہے اس لج مضاربت فاسد م وگی۔اسی طر اکر قد مفاوضہ یا 
عا کے شر کاء یس نے ایک کے کی سکو مضار بت کے لے مال دیااور اس مضارب کے سا تیم خود بج یکا م کر ن ےکی رط 
کا دی ن ی ےکہہ دیاکہ می بھی ہار ے سا ج ےکا کر و لگا نو ای مضار بت فاسد ہگ یکی وکل اس ش ری یکا اس مال بے با رہ 
جا تا ے اکر چہ ال نے عق مضمار بت ن ہکیاہو۔ ۱ 7 ۱ 
واشتراط العمل الخ:۔ اک طر اکر بجائۓ مالک ک ےکی دوصرے کی مرا کر لا ا 
کر ےک ش رط لگا یگئی ہو جب دہ کم عاق ہو تو بھی ہے مضارہت فاس موی بش رہ عق ھکر نے والا اس مال یں مضار بک 
رح مضار بن ہو۔ کے دغلا م سے ای کے موی کار وا رک ےکیااحجازت د ےدک سک خلا راون نے اکر اپتاا ل دوصرے 
کو ضار بت پرد ےکر خوو بھی ای پ رکا مک ےکی ش رط کا مو توش رط فاسد موی ر اس کے بر غلا فال چھوے ےکا مال ہے کے 
ماب نے یااس کے و کی نے دوسر ےکو مضار ب کر نے کے لے د ہو ئے خود اہی ےکا مک رن ےکی بھی شر مار ی ہو وہ طرط 
وکی جاک ىہ بھی اصل شد مل حصہ دار بن جا ےک کہ با پیا کاو کی خود جا وٹ ہے کے ما لیکو ضار بت کے 
لئے نے سناس فو اس کے تھوڑ ے کو بھی عون کے طور پر لن کی شر رکا ہے۔ : 
تو ج:۔ مضار بکو راس المال حوال ہکن ےکی شرطء مضاز ہت اور ش رکم کی صورت 
ٹس عقر مضا بت میں مال والے کے مہ ٹیل ک یکر ن ےکی شر لکا ہوناء عقد مفاوضہ یا 
عا کے ش رکا یس سے ایک ےکی کو مضار بت کے لے مال ویار خور کی اس 


میں ش یرہ نت لک یتیل عم ءا تتلافاخمہ ورای 

٠‏ قال واذا صحت المضاربة مطلقة جاز للمضارب ان یبیع ویشتری وی و کل ویسافر ویبضع ویودع لاطلاق 
العقد والمقصود منه الاسترباح ولا يتحصل الا بالتجارةفينتظم العقد صنوف التجارة وما هو من صنيع التجار 
والتوکیل من صنيعهم كذا الایداع والابضاع والمسافرة الاتری ان للمود ع له ان يسافر فالمضارب اولی كيف 
وان اللفظ دليل عليه لانها مشتقة من الضرب فى الارض وهو السیرء وعن ابی یوسف انه ليس له ان یسافرء 
وعنه عن ابی حنیفة انه ان دفع فی بلده لیس له ان يسافر به لانه تعريض على الهلاك من غير ضرورة وان دفع فى 

غير بلده له ان یسافر الیٰ بلدہ لانه هو المراد فى الغالبء والظاهر ما ذكر فى الکتاب. 
جم :۔ قدو رک نے فر ایا ہ ےک ۔ اور جب مشار ہے مطلق ر و تق قاری کےکام س کی جک شب ریابازادیا 
وت پااسباب و تیر ہک خحصوصیت نہ رع کی ہبہ پر چک ادر پر وقت اور ہرم کے اماك بیس ضار ی کر ےکی اجازت دی ی 


ین البد ایے جد یر ۳٣‏ ملر تشم 
ہو تذمضار بکواک با کال رااخقیار ہو جا ےکے وواپنامعاملہ تی ااد صا کے سا تج ان دن )کہ سے اورا کم کے لج دوہ ر ےکو 
انا وکیل تا سے اور انال لے کہ جال چا چاے۔ اک رح اپپنے مال بیس سے دوسر ےکو یھ د ےکر یھ س لک نے کے کے 
پاد کی کے پاس ا نبال مات کے طور بر رج ےکی وکل مضار بت ملق اا میس پر ی آزادی سے سکی غر یک ' 
جس عط رع ہو اس سے لٹ عا کل کیا ہا کے اور اح تاک صو رت شل ہو جا ہے ج بک لن سے تیار کیا جا کے۔ الیا سل ن کور 
سار ےکام تماد ت کی تمام کم یس شا ی مول گے۔ ای ط رح دوسرے ماج جس طر کا بھ وک یاکرتے ہیں اس سے کیان تام 
کا مو لک اجازت ہوگی۔ ایا ر یدرو فروخت ے لئے ایی کم جا جو کا اتی عدد کے لے دوصرو کو وکیل ینان بھی ہو جا 
ہے۔ ای مر اپنامای دوس ول کے پا ایت رکھنا بھی ہو تا ہے می دور و ںکوکار روات کے لے اما مال کی داو تا ہے 
تز ھار تکی غرم سے ما کو فیس بھی نے جانا مو تا ہے کیا فیس ربکت ہوک ننس کے پا اا کامال رکھا ہو تا ہے اسے 
اس جات پر اخقیار ہو تا کہ وہ سر پر جات وف اس مال ایا کو بھی ےا تھ نے جائے۔اسی یتاء یر مضارب کو وپررچ اول 
اپنے سا ت سفر میس نے جا کااخخقیار ہوگا۔ اور مضا بکواپنامال سفر یں نے چان ےکا اختیا رکیوں کیل دیا جائے عا اکلہ لفظ 
مضا ہت ٹس تی خود ای با تک د کل ہ ہک دہ سر یل نے جا ےک لہ ىہ اقتا مضار بت ضر ب لی الار ش ے تن سے جس 
کے ن ہیں ز بین میں یروس رکرنا۔ 
وعن ابی یوس الخ سن ابام ابول و ست سے د واییت کہ مضار بکواپناالی ےکر سفر یس جانا ہا یں ہے۔ اس سے 
مراد وہ ال ے من سکو سر بیس نے جانے سے سوا ری اختیا رک نے اور ای کے لے مال خر رن ےکی ضرورت موی ہو۔( 
امو )اور اام الویوست نے امام ابو نیش سے ایک دوس رکیاردایت لگ لک ہ ےک اک ال کے ماک نے مضار بکواا ی کے اپے 
شر یش مال دیاہہو ذاس مضا بکومالی ےکر سف کر ن ےکااخقیار زہ م وکاک کہ ال ار نے سے بلا ضر ور ت اس ما کو خطرے میں 
ڈالنا ہوگا۔او اکر مالک نے دو سر سے شر مال دیا ہو ب مضار بکومالی ےکر اپنے شہ چان ےک اور سف کر ن ےکیااجازت ہ وگ 
کی وک عمو ]بی تقصود ہو تا ےکہ مضا ب ا سے یش شل مضار ب کر سے اس کے خلاف تہ ے۔ لیکن اس کک نلام موی 
ہے جوا بھی صن مس یا نکیاگیا سے میتی اے سر نک نے 07 لآزادی اور اچازت ۲و 7 
قشع مضار بت مطلق مل لے ہو چانے کے بعد ضار بک وکیا اتا راتما ل ہو 
جات ہیں ؟کیا مضا ب ابنامال مضار بت ےکر سفر میں جا کت سے؟ سا ت لک یتفصبل, 
اقوال اض :د لا تل 
قال. ولا یضارب الا ان يأذن له رب المال او يقول له اعمل برأيك لان الشىء لا يتضمن مثله لتساویھما 
فى القوة فلابد من التنصيص عليه او التفويض المطلق اليه» و كان كالتو كيل فان الو كيل لا یملك ان یو کل غیرہ 
فیما و کله به الا اذا قیل له اعمل برأيیك بخلاف الایداع والابضاع لانه دونه فيتضمنه» وبخلاف الاقراض حیث 
لا يملكه وان قيل له اعمل برأيك لان المراد منه التعميم فيما هو من صنيع التجارء ولیس الاقراض منہء وهو 
تبرع كالهبة' والصدقة فلا يحصل به الغرض وهو الربح» لانه لا يجوز الزيادة عليه اما الدفع مضاربة فمن 
صنيعهم وكذا الشركة والخلط بمال نفسه فیدخل تحت هذا القول. : ۱ 
جم :۔ فد ورک نے فر ایا کہ مقار بکوىہ اخقیار یں وکاک دو ور کیک دوسر ےکواپنامال مضار ہت بد ے الت 
ال صصورت سد ناچا واج بکہ ال مال کے ماک نے صراح ال بات کیاچاز ت د ےدک ہیا کہ دیا کہ تخم‌اس مالی سے 


. 
4 


ای یہن داور مر ی کے مطال کا مکر وک ومک کی چ س ای یکول بی شال یں ہو ازم ٹنیس ہوک چو خو رای می ہو مین 


الد اے جد یھ و جل" م 

۱ مشار ہت کے مھا ےے میس اس با تکی مضا بکواجاز تشد وگ اک کی دوصر ےکووہ بھی ای ط رح ضار ہت E FS‏ 
کوک وونوں مضار ب قوت میں برای ہو جاتے ہیں مجن ایک مضار بکواتنااختیارنہ م گار و سے مضار بکواپنے مات ر کے 
نا بات ضرو ری مو یکہ ما کا ہاکک ص راح ای با تک اجازت د ےی مطلق ا کوان پینہ کے مطاب کا مک ےکی اجازت 
دے۔مضاری تکاىہ موای ہکس یکو وکیل منانے کے ل ہو جا کی کک ایی وکی کو سکام کےکرنے کے لئے وکیل بنایا جاتا 
ہسے انس کل اسے ا با ت کاظار یں موک وواپٹی طر ف ےکی او رکوو ل تایا جا تا سے اس شی اسے ا با تکااختیار یں 
ہو ]کہ وہای طرف ےکی او رکو وکیل بنا ےکر ای صورت میں بنا کا سے ج بک ااام وکل اس سے ہ ہکہہ د ےکہ تم ای 
مک ےکم کر وجب وودوس ر ےکو وکیل بنا سنا سے اور بجی بات ضار بت یل بھی ہے اس کے خلا کوک ما کی کے پا 
بات ر کے یا کے لور رکا وبا دک نے کے کے د یت کی وک ا کا مو یں اس با تک اجا زت ے۔ 

ا کوچ ہہ ےکہ ای عم کے کام عم اورابیت یس مضار بت س ےک در ہے کے ہیں اس لئے مضار بت میں سب داضل 
ہو جاتے ہیں_ ما سل متلہ یہ ہو اج وکام مضار بت ےکم در چ ہکا مو وہ مقار ہت کے مین میں آجا تا ہے۔ مخلاف تقر د نے کے 
ین اکر مضار ب مال مضا بت س ےکی دوسر ےک قرش کے طور ہد یناچاے فو اسے ا لکااخقیارنہ م وگ اکر چ ال کے مالک نے 
اس مضمار بکواپٹی بپند اور را س ےکا مکر نےکااغخیار دے رکھاہہو کی وکل ضار ہت شی عام اخقیار دہ ےکا مطلب صرف وی 
اقیار ہو جاہے جو اہی ےکاموں میس جاجروں ک ےکا موں یں سے ہو۔ جب اپنامال ق رخ د ینا ا کےکام میس ضر و ری یں ہے بل 
ىہ رس عکماایمادی ہو جاے تی ےک یکوپ ھب کرد ینای صد ت کرد یاکہ ا کا مول سے احا نکر یناد اجب ہو جاتڑے توف رض 
دی سے بھی اس ضار بک مد ااس مال سے لع ماک لک تاد م وکا بلک انس کے سا تھے احما نکر نا ہوگاکی و مہ فرح د ےک بے 
نف حا صل لکر یا ڑھانا چائ نیل ے الہ اسے اتااختیار م وکاک ہار اسے ماک نے ا کی صواب دید یاپہنلد کے طابر عات د ہے 
7 ص ر ےک بھی اپنامال مضا یت بردے کے گا ۔کیو رہ عام تا ےول ے کا مول مل ے دو مم ےک 
مضارب پرد بنا ی ای ککام ہے۔ اک طط رح دوسر ےک اہی ےکام یی ش ری یکر ہل کا ا خقیاد اور اس ما کو اپ مال یس ملا لی کا 
بھی اخقیار ہوگاک کک ہ ےکام عام اجازت کے عم میں شال موکد( ف )۔ یہا ںکتک اق مضار ب تک بیان تاور اب خصو س 

شای تایآ ام ۱ 
تو :ایی مضمار ب تکاما لک نکن ل وگو ںکواستعالی کے لئ دے سکتا سے؟ اس کے لئے 
۱ 7 اعد : منظرروہ ما لک یتفحییل+د تل 

قال. وان خص له رب المال التصرف فی بلد بعینه او فی سلعة بعینها لم یجز له ان یتجاوزھا لانه ت وکیل 
وفی التخصیص فائدة فيتخصص وكذا لیس له ان يدفعه بضاعة الى من یخرجھا من تلك البلدة لا يملك 
الاخراج بنفسه فلا يملك تفويضه الى غيره. قال: فان خر ج الى غير تلك البلدة فاشترى ضمن وكان ذلك له 
وله ربحه لانه تصرف بغیر امرہ وان لم یشتر حتی رده الى الكوفة وهى التى عينها برئى من الطمان كالمودع 
اذا خالف فی الوديعة ثم ترك ورجع المال مضاربة على حاله لبقائه فى يده بالعقد السابقء وکذا اذا رد بعضه 
واشترى ببعضه فى المصر كان المردود والمشترى فى المصر على المضاربة لما قلناء ثم شرط الشرى.ههنا 
وهو روایة الجامع الصغير وفى کتاب المضاربة ضمنه بنفس الاخراج» والصحيح ان بالشراء یتقرر الضمان 
لزوال احتمال الرد الى المصر الذى عينه اما الضمان فوجوبه بنفس الامحراج وانما شرط الشراء للتقرر لا 
لاصل الوجوب» وهذا بخلاف ما اذا قال على ان تشترى فى سوق الكوفة حيث لا يصح التقییدء لان المصر مع 


وس ْ ۳ ہل شم 


تباین اطرافه كبقعة واحدة فلا يفيد التقييد الا اذا صرح بالنهى بان قال اعمل فی السوق ولا تعمل فل غير 
السوق» لانه صرح بالحجر والولاية اليه» ومعنی التخصیص ان يقول على ان تعمل كذاء او فى مکان كذا 
و کذاء اذا قال خذ هذا المال تعمل به فى الكوفة لانه تفسیر له او قال فاعمل به فى الکوفةء لان الفاء للوصل او 
قال خذہ بالنصف بالكوفة لان الباء للالصاقء اما اذا قال خذ هذا المال واعمل به بالكوفة فله ان يعمل فيها 
وفى غيرهاء لان الواو للعطف فيصير بمنزلة المشورةء ولؤ قال على ان تشتری من فلان وتبيع منه صح التقييد 
لانه مفيد لزيادة الثقة به فى المعاملة بخلاف ما اذا قال على ان تشرى بها من اهل الكوفة او دفع مالا فی 
الصرف على ان تشترى به من الصيارفة وتبيع منهم فباع بالكوفة من غير اهلها او من غير الصيارفة جازء لان 
. فائدة الأول التقييد بالمكان وفائدة الثانى التقييد بالنو ع هذا هو المراد عرفا لا فیما وراء ذلك. 

ت چم :۔ فقدود کا نے فرمایا ےک ہ اک مال کے ماکک نے سے مضار بکوکا مکرنے کے ےکی مخصوص ری خصو س م 
کی تھا ست کے ل ےکہا ہو فو اس مضا بکواس کے خلا کر لن ےکی اجاز تن و 99٦‏ 0 کر ےگا نو 
دو ودا کاذمہ دار ہوگا) کی وکل مضار بکا مل دوس ر ےگ وکیل بنانا ہو جا ے اور جب ضار پر یکو صو کر نے میں فا تہ 
ے نو اسے صو نس بی رکا ہا گا لاف۔ اس کے فا رول بی سے ایک مہ ھی ہے ضار ب ج ب کک اس شر ر متا ہے 
جب تک ا لکو ا نکھانے ہے کے لے خر کے مطالہ ہکات یں مو تا یں سے مال کے :ان کک خر جا ا ہے۔ ای ط رحاس 
کے مال کو مال کے ڈو ہی اور خطرہ سے کی ینان ہو جا ہے اک ر ںا شر یل چیو ں کا بھائے علوم ہو جا سے ضس سے 
مضار بکواس بیں خیام کر ےکا بھی مو تح نیس ملا سے مین دور سے شر وں میں چززوں کے پھا لف ہو نے کی وچ سے 
خا تکاا شال ر بتاے_ ۱ ۱ 

یں جب ضار ہہ کو صو کر و سے می مال کے مال کا فا کد ہے فو ا کوخ لکنا بھی چا تد م وکا اس چک شر مین 

` کے کے ےا کہا ےکآ ہر کے ائ ری پازا رکوہ می کر سے تاکر ہے ج نکر ناس کے کلام سے دلا ھا جات ہو 
یی :ایس نے کل لکر ین کیا موا ے مخصو کرت خی سکہاجا ےکا کی وک ا اکرنے سکوی فا دہ ٹنیس ے۔ ای لے وہ 
اس شر کے کی پازار س تیار کر نا اس ےکر سک گا۔ لیکن ار وہ شر کے سا تی کی پازا رکو بھی خصو م سکرو ے من اس 
رن ےک ای پازار یل ر وک رکاروہا رکر واو دوسرے پازار بش کار وہارت ہکر و ناس کے کے کے معان اس کے کا ہار کے 
لئے وہ پازار بھی خصو ہو جات گا۔ من :۔ اس ہازار کے علاوہ دوسرے پازا یش اس ےکار دبا ره ن ےکی اجازت نہ ہو گیا۔ 
جیراکہ (التہایہ) ٹل ے۔ اس کے علادہاور بھی بہت کی ای تی تی ہوکی ہیں جو خصو کر نے سے بی حاصل ہوئی 
یں۔ ٰ 

ہے وکذالیس لہ الخ:. ای طرش رکو صو یکرو ےکی صورت میں اس ضار بکویہ کی اتا نہ م وکاک اس مال ش 
سے ہے مال دوس رے مع سکودے تاک وود ور سے شمر اک رکا وہا رک کے ا صل لکرے ۔کی وکل جب دہ مضار ب خودجی ال 
ال لیکو باہر نے جان ےکا مالک کل سے توودوس ر ےکو بھی ا کاماکک یں اکتا ے۔( ف کوک یہ محال ‏ ےکک و یکواگر 
کسی چ نکی لیت حا عمل نہ ہو پر کیک کی د وسر س ےکو ال لکامانک بنادے )اس کے پاوجوداگر مضیار ب اس ما لکول ےکر اس ین 
شر کے سوادوسرے شر س چلا جائۓ۔(ف۔ سین دہ شر جس میس حجار کر نے کے لے مالک نے مر ط کا دی ہو شلا :باک نے 
کہہ دیا کہ تم ابال س ےکوفہ شر میس تار یکرو کین وہای شر لے لکر دو سے شمر تر چلا جاۓ نے بغر اس دو 
مور ہیں ہیں ایک ےکہ دہ تجرہ چلا ہاسے )اور وہای ہے خر ید وروخ کر نے فدہ مضار ب ایا کل لو ی کاضا کن م وگااو روہال رہ 
کر وچو ہے بھی خر ہر وفروضش یکر ےکا سب ا کاڈافی مو گااور ا لکاذمہ دار م وگااوراکر ال ے ہے ع مو جائے وای ےکا دہ 


ین البد اے جد یھ ۵ کہ جلدم 
ماک بھی ہوگا کی وک ہے سب ام مالک کے گم کے ایر ہواے۔ ۔ 
(ف۔ بل مالک کے م کے پالئل بر خلا فکیاے۔اس لے ہے وکیل کے اتد ضا کن وکا )اور دوس رک عصورت ہے ےک 
مشار ب مال ل ےکر دوسرے شر یس چلا جا اور ہے ر یر وفروخت کے !خی ر اپنامال اپنے رکو ف ٹیل وای نے آئے۔اور ہے 
کوفہ ہی دو شر سے نجس میس ایک کار وبا رک ن ےکی ش رط کی کی اور اے می نکیا تھا تق مال واب لے کن ےکی وجہ ے دہ تاوان 
سے برک جا گا۔ کالمودع الخ: نووم مضار ب تادان سے ایے بی برک ہوک کے وان ہں کے پاس ات 
ری کی ان شر ط امامت نیل بے خیام تکی پچلراس نے خیات کہ وک ۔(ف۔ تا لکی خاش یکر ن ےکی وجہ سے اس پر جو ان 
لازم آیا تاا خخالفت کے چھوڑ د سے سے وہ م م وگیا۔ )ای طر ہے مضا ب کی اا یکی شر کی خالض کر کے مس تاوا کا 
مہ دار ہو اتھاء اب ا لکی مد افص کر نے سے تادان سے برک موی اور دومال بد ستور ال اہی چگ مار بت پر آجا ےک کی وک 
پل کی مضا ب ت کہ ج سے ا ب کک مال اس مضارب کے تہ س وا 
وکذاذازد الخ:. اک ط رح الہ وہ مضارب دوسرے شر سے اپنا تھوڈامال دای ےکر آیاعا لاہ با مال سے اس مین 
ہے رار یکر ی کی نو مال دددائیل لابا اور بال سے الس نے اسینے معن شہر سے خر یراد کی سب مضار ہہ کال موک ۱ 
ای دسل سے جا کی یا نک یگئی ہے۔(ف ن ہے مضا ب ال کے مآ کک تالف تک کے اب اک مواقف م وکیا تی مب ال 
یم مضاد ی تک وجہ سے ای کے پل کی طرںح تہ ٹس با ر گیا اور شس باق مال سے ای نے اپ ال کے مالک کے بتائے 
ہہ" ۓ شہرسے رار یی گی اب وو سب کے سب ایک موافت تکی وجہ سے مشار ب ن یکابال م وگ )یمر معلوم ہونا جا ے 
کہ مضمارب ,ال کے ماک کے مقر کے ہو سے شر سے ما کو باہر ٹ ےکیااکہ اس مال سے الس دوس رے شمر یں خر یدارک کر ےکا تو 
و مشار یت سے لکل چا ےک اورا ما ل کاضا من ہوگا۔ اس کے خی تن خی رت بل ا کی کے دوضا من یں ہوگا۔ 
ٹم شرط الشری الخ:. ن مصنف نے اس جگ جوشرط کاس کہ اکر الک نے دوصرے شمش نے جانے کے بعد 
یداد یکی ہو تب وو ضا کک ہوگا۔ یہ عبارت ہا مح س ر کی ے کی کاب المضار بت می لککھھا ‏ ےک ال شر سے باہر ے جانے 
سے بی ضا کن ہو جا ۓگا۔ لاف سن بسو رک لتاب المضار بت یں س ےکہ مال باہر لے جاک خی ناشرط کیل ہے بلک دوصرے 
شر یں نے جانے سے فیا ضا من ہو جا ےکاخ اود ہا خر یدارک کی ہو یان ہک مو سے ہہ ھا اتا ےک دوفول روایتول س 
اختلاف ہے عالالمہ ایک بات نیل ے-) ولصحیح ان الخ اور گی بات یہ ےک دومرے شر کے چاکرخریدنے 
سے اک پر ما کا ہنا ینہ ہو جانا ےکی وک مالک مال نے اس کے کار ویار کے لئے جس شی رکو می نکیا تھا اب اس ما لیکو اسی 
شر می وائییں نے آن کااخال بھی م م ویا۔لذف کی وکل خھ یداد کی وج سے پہلا ال باق خی ر ا )و ہے ضمان نو ما کو باہر 
نے جانے سے گی اذ مآجاتاے۔ ۱ 
وانماشرط الخ:. خر ید ار یک شرط فو صرف عا نکو پچ کر نے کے کے ےکی وکل ا کل مان کے داجب ہو نے کے لے 
یہ شرط یں سے۔(ف۔ مس ےکاخلاصہ ہے م واک مال کے مالک نے مقار ب تکا معامطہ ےکر ے دق کار وہار کے ے جس شی کو 
مضصتی نکیاتھ جیے بی اس ما کو مضار ب اس شر سے باہر نے جا ےگاوہ اس ما لکا ضا ن ہو ہا ےگا جییہ اک سوط کی ردابیت جو 
۱ مضمار بج کی بک ث میں ے۔ مان اس ونت کک اس پر ان پختد یل م واج بت کہ ا دوصرے شمر س اس مال سے مد ایی 
نکر نے.اسی بتاع یراک وو کش کی مکی خ یری کے خی راس ما لیکووائیں نے جاک ےگا وداس کے مان سے برک ہو جات گا 
اور اکر خر بدا رگ یکر ےکا تا پر عضا ن کالاز م آنا پیتہ ہو جا ےکا ی لہ عورت سے کا کر نے سے کی م رد برا کا رواجب 
ہو جاجاے لان خت نیس ہو جاہے۔ اک یناء راک ست ر کے پک اسے طلاق دے دے وای پر صرف ی واج بآ ےگااور 
وو مب رواجب ہیں ہوگااوراگ بست ری بھی ہو ہے فدہ مب ربضتہ ہو جا ےگا اک رح اس چگ خر یا کی سے ان چختد ہو جا تاے , 


اا ۱ ٦‏ جلر 2 


وھذا بخلاف الخ:. ہے ستل اس کے بر فلاف ے جب مال کے مالک نے کہا کے س نے ت مکو مضار ہت پر ہے الا 

شرط کے سا تھ دیا کہ مکوفہ کے بازار ھی یس رید وکوک ىہ قی اناج نیس ے۔(ف۔ ممن خوا مکو م کی ایک پاڑادیا 
کی باز ارول میس سے کی خا پازا رک تید کال ہو۔ بر صورت اہک قید کے سے بی نہ گی )کی وک اکر شمر مس لف بازار 
ہوتے ہیں لین دوسب ای ی پازا کے عم یس ہیں اس لے الن س ےکی ای کک قید کان مفید نیس ہے۔(ف۔ یراہ ہی 
جات ےکک ان کے کک کا کی خخاص پازا رکا م لیا شور ہ کے طور ہے سے الو ہی بول پال مس انا لوز سے پازا رکالف کہ دیاے 
اور اک کے علادودوسرے بازااروں می جانے سے مع کہ ںکیاے۔)الاذا صرح الخ:. گر ج بکہ راجا عمانع کروی 
ہو ےک ہک تم پازار ی کار وپ رکرو ہازار چھو ڑک ہیں او رکاردبار ھکر( چکگ ہے م راح عمالحعت سے اس ے ا کا 
اعتہار م وگا۔ )کی وک اس نے قد آاور اہین اخقیار سے انع ت کی قر تک ہے۔(ف۔ ی پازار کے سوام کو ہیں او رکار وار 
کر کا حم کی س )اور ضار بک وکار وبا رکاج ھن ملا ے اک مال کے اتک سے سلاہے۔لاف۔ لپ اجب ای نے پازار کے 
مالک اور چک کار وبا رکا ہن نیل دیا کی وک ضراحیڈائش سے حکردیاے تاب اس مضار بکوبازار کے سو اکیں بھی ا کا یار 
نہ ہوگا۔ ای ط راک شیر کے تلف پازار ون یش سے ای ےکی ایی پازا رکو نکر دیا مو اور پا پازاروں شکار وہارے بح 

کر وا ہو ٹوا سک بھی یی تع ے۔)۔ 7 
ومعنی التخصیص الخ ا بر ی کون ا لک نے کے کن مہ ہی ںکہ ما کا مالک اس سے اس رم ک ہک س مک 
۱ کر ط ال دےءہاہوں f‏ 2 ی سے فلاں ما ل کار دبا دک ویافلال چلہ ړکار وہ رکرو۔ا یزم اگ لو نکیا ہو 7- تم مال نے 
لواور اک س ےکوفہ اک کار وہا رکرو ہک وکلہ ال مقو لے میں دوہ راحص بم ےکی تفبیر ہے (ف۔ لہناکوفہ ہی ٹل مضار ہت 
او رکار وپار رککرنا نک( اوقال فعمل الخ: .باك شال طر ا (خذ هذا المال فاعمل به فى الكوفه) 
نی ت ہے ال نےکر اس سےکوفہ می ںکار وبا کر ہک وکمہ ای تکل یل ت ف فادوسرے چم کو پیل سے ملا نے کے لے لا یاکیاہے۔ 
گیا یکی شیر ہے ہو ییاو ں کہا خذہ بالنصف بالکوفہ س کون یش ج کار و ہار ہوا ی کے لف بیس سے نمف مرلو ی :۔ 
ایہاکاروہار :کا اق رز سے مو کی ھکید اس ٹیل جو رف باء سے وہ الصا اور ملانے E IE‏ توان تام صور توں 
میس مار بت کاکا مکوفہ یں روک کر اضرو رک م وگیااو رکوذ کی قید ین ہوگئی۔ ۱ ۱ 

اما اذا قال الخ :. اک مال کے مالک نے لو کاک تم ہے مال لد اود اس کے ذد بیج سےکوفہ می کار وبا رکرو فا صورت 

۱ ٹس اس مار بکو اس با تکااتیار ہوگاکہ د کو فہ تی کار وہا کے نایا بھی دوسرے شر می ںکیار وبا دک ےکی وک اس یل 
طف واو عطف کے لے ے۔ جم سک وجہ سے ہے جمملہ شور د سے کے قائم متام م وگا۔( ف ۔گوباااس نے پم و مضار ہت ک6 
معاملہ ٹ ےکمیاادر بال دے دیااور اس پر عط کر کے ہہ بل کہ اک کو کار وہا رکرو اس کے نے ہوۓ ماربت لے 
کر نے کے بحرا کو مخورو ویک مکوفہ یں ار وپا رکرو کی سل معام کر تے دق تکوفہ م کار دبا رک ےکی تیر س کا ) 
ولوقال علی ان یشتریٰ الخ:. سی اکر الک نے لو ںکہاک ےم مضار ب ت کا مال اس ش رط ړل وک تم ای سے فلا ی کے 
سا تھ خریدوفر وش کر کہ ا ٹل ای تید انا س ےک وکلہ جملہ اس مفبوم کے لے فا کہ عند س ےک کہ مالک نے ای فلا 
E,‏ موا کر سے یس بھروس ہکیاہے اور ری عم اس وق سے جلہ ای ےکی مین عفن کا نام میا ہو۔ اس کے 
بر خلا ف اکر لو ں کہاکہ ہے مال اس ش رط بر دک تما مالی کے ذر یی ہکوہ والوں کے سیا تھ خر ید وف روخ یکر دمیاال نے ایبابال دیا 
ہو ٹس سے صرف کی وناور جا ند یکاکار دبا چو ای شر کیم تج رک ای مال سے صمرافوں کے سا تی بی صر کاکار دبا رکرو 
کرای مار ب تن ےکوفہ ہی میں ایوصرے شر کے مراف ےکا ر وبا رکہای ا ص رال کے علادو دور ےل وگول سے کار وپ رکر لیا 


تین البد اے جد یڑ ے٦ ١‏ ملم 
فو جائز ہوگا کی وکل اس مک میں اا لکو ف کی قید لگانے میس فا ہے تاک ہکوفہ ھی یں خر یر وفروخت ہو اور صرافو لکی تیر کے 
یش فا ہبہ اک کار وبا ری مم ئن :۔ صر ف کاکاروپار مون محلو م ہو اور خرف میں بی موم مراد ہو ناے۔ اس کے علا مکو 
دوس ری پچ نیش موی ہے۔(ف۔ ن ل میس الیک تی راا کو ف ہکا ہو ناے مت یکو فہ کے عاو ہ کو دوس کی چلہ ا سکی مراد یں 
ہے اور دوس رک قیر صراثوں کے سا کے معام کر ہے اور ال سے صر ف کار وبا کی م ھی صر فکو شی نکر ناے او رسک یکو 
کیں)۔ ۱ 
تو :اکر ر ب الال نے ابنامال مضا بکوکسی خصو ص خر صو م ش مکی تجارت کے 
لے وی ےا یکی رعایت رو ری ے پا ڑیں» او رکں جد کک اور اکر میا سے خو و کی 
دور ےکو دوصرے شر میں کاروپار 22 لے و ینا پا اکر مضمارب ال مضار ہت 
فلاف شرط دوسرے شر نے جائۓ بر وہای سے چ خ بد نے کے بعد اس کے بی ہی 
وابیں آجاۓ۔ خلاف ورز ی رگن صور ؤوں س مضارب ر9 لازم ۲٦‏ ے۔ جات 
۱ س راور بسو لک روایتوں میں اشتاف اور ا6ا کل اکر ایک شخ رکار وہار کے لئ مین 
کیا فو اس کے ام بازاروں کار دبا رکا O‏ ہو جا ہے یا کی ء مضا بہت کے لے مخصوص 
انان خصو س شی کی شر ان یل م انل ءا قو ال ام ول ی ۳“ 
قال. وكذلك ان وقت للمضاربة وقتا بعینه یبطل العقد بمضیه» لانه ت وکیل فیتوقت بما وفته والتوقیت 
مفيد فانه تقييد بالزمان فصار كالتقييد بالنوع والمکان. قال. ولیس للمضارب ان یشتری من یعتق على رب 
المال لقرابة او غيرهاء لان العقد وضع لتحضيل الربحء وذلك بالتصرف مرة بعد اخحرى ولا يتحقق فيه لعتقه 
وهذا لا یدخل فى المضاربة شری ما لا يملك بالقبض کشری الخمر والشرى بالميتة بخلاف البيع الفاسد لانه 
يمكنه بيغه بعد قبضه فيتحقق المقصود. قال: ولو فعل صار مشتريا لنفسه دون المضاربة لان الشری متی وجد 
نفاذا على المشتری نفذ عليه کال وكيل بالشرى اذا خالف. : 
ت7 جمہ:۔ قد ودک نے فرماا ےک اکم مال کے مالک نے مضارب کے ےکوی ونت می نکر وی ہو قذ اس وقت ےھ ۱ 
ہو نے کے بعد تی ىہ محاہدہخوددی حم ہو جاث ےگا کی مہ ہے مفمادابت نام کی دوصر ےکو وکل بنانےکا۔ لیف اجس وقت تک 
کی قد کا یگئی ہو ای وقت کک اس ہر گل ہوگا۔ ای ے الپ محابرہ می وق کو عقر رک ربا بھی مفید ہوا ہے اور مفید با کی قیر 
ایج ہے کی وتک وق کی قیدکامطلب سی وف تک کد وداور صا نکر نا ہے یہ قی وت ای طرں ہو گا جی ےکاروبا کو م 
اور چگ ہکی قد سے ”ج نکرنا ہج ے۔قال وليس للمضارب الخ:. قدو ری نے فرملیا کہ ضار بکوىہ اخقیاد کد کہ 
دوہی ا ہے فلا مکو خر بیدرے جو اک ال کے O‏ می اس کے تیر شت دارکی ای دوس رک وچ سے بعد جس آزاد ہو ہاے۔(ف 
خلا اس مال کے مال ککاباپ کک دور ے شی سکا مل ہاور ال کے مقار ب ای کے آقاسے ۶ید نے فو بہ غلام باپ ال کے 
وو و ود وو س ہی ہت 
نے جس کے متلق مال کے ماک نے مبھی مت مکھائی یک اکر یں بھی تمہارا ماک مین جال تو تم آزاد ہو اس بناء ا 
مقار ب اب اسے نر یړ گان مال کے مالک کے تق میس آزاد ہو جا ۓگا۔ ای لے اس ضار بکویہ اخخقیار کیل کہ د اییے 
ل وگو لکوخر یدے جو مال کے مالک کے صن میس آززاد ہو پا یں خو اوہ ایک خودا سے آزا رک ےیا ھکر ے)۔ ٰ 


o 


ین البد اے جد یر ) 4 ٰ جل م 
لان العقد الخ:. کوک مضار ب تکامحالمہ اک لے وخ 2 اک ار ی 
صورت میں ما سل ہو سک اے جب اس میس بے در پے تصرف ہویااس یں متوات لین دنہ ہار ہے۔جب کہ لے غلام کے ڑا 


0 صص ن ن لاف ای لے اییاغلام مضار بت مس داش یت ہوگا ۔) ولھذا لایدخل: .ور 
“ی وجہ ےک تصرن ن کن ہے مضارہت میں ایی چس سر داحل نہیں ہوق جو 


تتش کر لے کے بعد بھی :ا یکی لیت میں نہ آے۔ کے شرا ب کو یرتا( فک ھکلہ شر ا بکونر بی لین کے بعر بھی و کسی 
مارا نکی عابت میں داخل یں ہو کے )اورم نے بک ون اچ کو ړا( ف کو ایی یع گل ہو ےہا 
''ورے+تو ا٤‏ ۶خ رلک ہاور تب روز وط ضرا لسر 
بخلاف البیع الفاسد الخ یی ىہ ستل تق اد کے خلاف ہے ۔کی کک بی فاسد مارت کے عم میں راغ ہو ہا سے 

اس س کہ ج نز بت فاسد کے ذر لے نیرک جائے اس یر ت کر لیے کے بعد وو نی بھی ہاگن ے۔ اپ امار ب کاجو مقر 
ابی ےن بی ما صل کرنا ود حا صل ہو جات گا ۔قال ولوفعل الخ تزور نے فرباا ےک اکر چہ خلام ےک رکو مضارب کے 
لے یرامائ یں ہے پھر کیا کو مار ب الیے غلا کو خر یلد نے جو مال کے اک کے جن میں بعد میں آزاد ہو جا ےگ و 
02-71 تم اا اس فلا مکی خر یداد یی مضار ہت 0 ٹیس مول سے بلمہ اس مضارب نے فا ذات کے ے 
اسے خر ید اے کی کہ ابی جو زج یکو خر کی کے جن میس خریداریی کے بعد تاذ ہونا ان ہو توا شز کی کے تن میں نافز ہو 
جائی سے یے اگ رکی وکیل نے سے موکل کے گم کے خلا کول چ ز خر یری و توا کی خر یدارک خودامی خر یداد وکیل کے کن ۔ 
تافز ہو جا ے۔ 


ے و اال سے انت کے ےکوی ونت می نکر و ہو کیا 
کرت ے7 وھ او ضالص ‏ ی اف ض نت ور 
پرا ری کے بعر کی قض ٹہ i‏ ار نے تفیل سل رل ان 
قال فان کان فی المال ربح لم یجز له ان یشتری من یعتق علیه» لانه یعتق عليه نصیبه ویفسد نصیب رب 
المال او یعتق على الاختلاف المعروف فيمتنع التصرف فلا يحصل المقصودء وان اشتراهم ضمن مال 
المضاربة لانه يصير مشتريا للعبد فيضمن بالنقد من مال المضاربة وان لم يكن فى المال ربح جاز ان يشتريهم 
لانه لا مائع من التصرف اذ لا شر كة له فيه ليعتق عليه» فان زادت قيمتهم بعد الشری عتق نصيبه منهم لملكه 
بعض قریبه ولم يضمن لرب المال شیئاء لانه لا صنع من جهته فی زيادة القيمة ولا فى ملكه الزيادة لان هذا 
شىء یثبت من طریق الحکمء فصار كما اذا ورثه مع غيره ویسعی العبد فی قیمة نصیبه منه» لانه احتبست ماليته 
عنده فیسعی فيه كما فی الوراثة. 
لت TS‏ تال ات سر 
جائزنہ وکاک وہک لے سکوخرید نے جوخوداس مضارب کے عق میس آزاد ہو جا کوک اس مضارب کے ہن می اس 
کو خریدتے ہی ا یناجم آزاد ہو جات ےگا لان مال کے پان ککا و یں آزاد ہو جا گا 
اتا فک بناء پر ج محرو ف و مور ہے اس متا ء پر اس مال یش اس مضار ب کا ترو فکرنا کن نز ہوگااور جو ا سل متصورے e‏ 
نی ص لک ر اوو نہ ہو گا ل وت ای مات ے نوف تی رال ے کے 
ال مشار بک بھی حصہ ہو تا ہے لیں جب مضا ب اپنے باپ یاس وخ وذگا تم حر مکو غ ید ےگا وہ مضا بک طرف سے 
آزاد ہو چا ےگا نین اتا یح نس میں اس مار بکااپنا تصہ سے اس بناء یر صا کی کے ر یک اس فلا بال حصہ ھی آزار 


م البد اے جد یه 19 ۱ چلر 2 
ہو جا ےگا کی لہ الن کے زد یک آزادگی کے جے او ر کیک یں ہو تے۔ لیکن امام ابو نیف کے نز دی چ وکل آ زار ی کے بھی حت 
ہے ہیں اس ے ال کے مال کفکواس با تکااغقشیار م واک وہ ا سے مے سے اس فلا م کے بای ج ےکوی و آزا رکرو ےا غلا م سے 
آی نی ما لکرائ یا مضارب سے توان و صو لکرے بش رطیلہ وہ مال دار مو۔ ر حال دہ غلام ال ولا باے ی 
جاک اک وجہ سے مال کے مال کا حص بر پاد ہوگاا نکی وجہ می ہ وگ یکہ مضارب نے اسے ت بد لیا ہے ای لے م ہکہا جات ےکک 
اے غلا مکو تر ید ناچائۂ ہیں ے۔ 

وان اشتراهم الخ: اوراگر مضارب نے مضار ہت کے بال سے اپ ےلوگو ںکو خر یر لی نوو خود اس ما لکاضا کک م وکوک 
اب یو کہاچاس ےکک اک نے ىہ غلا م خود ا سے لے یڑا ے او راک ای مضا ہت کے مال سے اس غلا مکی تمت اد اکر ےگا ٹوو ۔ 
اس آم تکاضامعن مگ( ف تفیل اس صو رت شل ے ج بک مار یت کے مال میس ےک ش رک ہو۔ )وان لم یکن 
الخ: : اوراگر مال س نہ ہو فو مضار بکو ہے احقیار موک وہ کی اہے ڈک ر م خر مکو یر ےکی وتک ان بیس ےکی میس 
تر فکرنے سےا کول چ زرو کے والی نیل ےک وک مال یس مار بک یی مض مکی ش کت نکیل ہے جن کیا وچ ے وہ 
لوگ اس مضارب ےے مس آزاد ہو جائیں۔(ے ال وتک ےج بک زیادہ تمت خ بد نے کے وقت بی ہواوراگر خر یر لئے 
کے عدا نکی تمت زیادہ مو جا توق طور سے ہے مضارب کیان یس ش ریک ہو جا ےگ ۰ 

فان زادت الخ:. سی اکر مضارب کے کی سے ڈور م محر مکو خر ید لے کے بع رای فلا مکی تبت زیادہ م وی نواس فلا م 
ٹیش ے مضارب کے کا جقنا حصہ اب سے گان آزاد ہو جات ےکی کہ وا ڈو آم حرم ٹس سے بج ع ےکا مالک م رگیاے۔ 
(ف اس لئ وہ تن جس ےکا الک ہوااتنای حصہ آزاد م وگااور کلاپ رس ےکر صا ین کے تول کے مطاِق اس غلا مک باٹی حص جو رب 
الال ن ہل کے مال ککاے آزاد ہو جا ےگا لن لام ا 2 کے ادیک و« اب یی کے لان یں ںاور اب ہے سوال پیر امو تا 
ےک کیا مغارب اس صو رت ٹیل کی ما لکا ضا معن ہوگایا یں ؟ مصنف نے ا ںکاجو اب دیاکہ )ولم یضمن الخ:.اوروہ 
مضمارب مال کے مال ککاضاعسن نہ م وکاک ھککمہ ال لک تمت یڈہ چا ےکی صو رت ئل اس ضار بک ط ر ف ےکوی کت یں 
اک یکئی ہے+اوراس فلا مکی تیت زیاد بھی ای کےکسی گل سے نمس ہو لے مشفی :ج ہک یا فی اس مم اس مضمارب 
کاکوگی انار نیل ےک وک جو کچھ زیادنی موی مضار ہمت کا معاملہ ےکر رل کے بعد شر عآ ایک گم خابت ہو اس اسیو جہ سے ای 
کی کککیت مایت م وگئی ہے۔ انر ای معا ےکی مثال ایک وگئی ے جیسے وہک خی کے سا تھ ای کسی ذد م رم کادارث م گیا 
x‏ 1 

رف اوروز ات پ وک اتاد چ ر خیش مون بللہ باو ر است اللہ ج رک تعالی کے کم سے خاہت مون سے شل :کی عورت : 
( )نے ا شوہر(ج رک با لیم خر یړ لیا مو ج سکی صو ر ت مہ موک کہ ال کے شوہ( جن میا ہے میں ایک مرد 
(ز یں )کی باندیی سے نیا کیا تھا جس سے ایک ڑکا( تیم )پیر انہوااور وہ لڑکا مل اتی بال کے زی کا غلام ہو ائچراس شوہر بر نے 
ایو یکواں کے مالک سے یړ لیاادراس سے کا حکیا۔ اب اک گا تہ رکم نے زیر سے اپنے شور کے کے کو خی لانو 
وو لکی ماللہ موی یھر اس عور تکااتقالی م وگیااور مرتے وقت اس نے این شوہ راو ایک پھا یکو سچھوڑااس صورت میں عورت 
کے نکہ کے دوفو پرابر برابر کے من :۔ نمی صف کے وارث ہو گے اس ط رحاس کے شوہ رکا با آدہااس کے با یک 
لیت میں آیااور آدھااس کے شوہ رک لیت می آیا۔ اور چ کہ ہے بنا ای شوہ رکااپنابیاے اس ےا سے با پکی کیت یں آتے 
بی ازخود آزاد ہوگیا اکر پاپ ال ونت اپٹی یوی کے اس بھا یکا ضا کک نہ ہوگا۔ کوک ای ےکی آزاد یں اس کے اپے ا 
تح لکودخل نی ہے شی :۔ اس نے اپنے افخقیار سے آزاد ہی ںکیا ے بک الد تھا نے می را ثکاجھ کم ریا ای مکی بناء 
یھر اہے ےکا مارک م گیا ے اور لیت ایت ہو تے بی دو سکم آزاد م وگیا ہے اس رح یہ شس رونوں پاتوں میں ے ضور 


سل البد اے جد یر »4ے ملام 
ہے اک طرں ےکور وسل RATT‏ ا قر ی ر شی راروں و خر دا حکہ ا کے با لکا اک انا وگوں 
اوخ کے کک راھاق ان غل مو ںکی ق کت کی ن نت ال ا بھی نادوو ااوراکی ضار بکو کی اع ہیں 
حص لاد 

ىہ معلوم ہواکہ اس تمت کے بو نے بی مضار بکاکوگی اخقیار نیس ہے اود ال کی ی رکت اس خلام یس پائ یکن اتی 
حص الن غلا مو لکا آزاد ہو ااور ہے کی خی اخقیار کے مو اج وکل اس نے ایی کو کت ین کی یت بای کے الیکا فا وو 
ای لے وہای قصا نکاضاشن ین ہو کا کے زارات ون ا یں ب ‏ ہے۔ اس بنا ت ام الو یڑ کے 
ال کے مال کفکو ںہ اخار یں ہوگاک راس مضارب سے اپنے جے کے تمصا کا تادان اب دوہی صور تس پال رہ ی کہ چاے تووہ 
بھی اج ج ےکو آزا رکرو ےک و ہعمل 1 ازا بھ جا ےا فلا نے کے ی مم ال حاحص یک کے فارا ی ادا کے 
آزاد ہو چاای اء پر معتقفٌ نے ری ویسعی العبد الخ:. سن مضارب کے قر سی رشتہ وار خلام مال کے مایک کے تع ےکی 
تبت اداکرنے کے واسلے کت مز وور یکر ی یکیو کہ ال کے ان کک مالیت اود تیت اک لام کے ایروک ہے۔اس لے ا کی 
تس کم اکر اداکر دیا جہاکہ وار کی صو رت یس ہو جا ہے۔(ف جع اک ہگ شنہ شال بل میا نکیاگیاج ب کہ عورت کے شوہ رکا 
تصہ اپ ےل سے ا کامالک ہو جائےےکیادجہ سے وراشت کے طور پہآزادہوگیااوروولڑکاج کہ ف الال اپ مان ککاسالا بھی 
ہے اس کے مال کاضا کن گی نہ ہواچنا مہ وداپنے ہبندئی کے لڑ کے سے سے کے ہک تمتا یک ا ان ےوصول 0 


و :مال مار یت ےکار دبا کر سے کے احا 91 ا ان 2 
ل ال ا خی و وس پوت 
از خو نیا ے؟ اور اکر ایا ہو جائے ترک اکر ہوگا؟ اکر اسل مال سے ی 2 و 
رز کے ادان یت ی کی ن ےد ا کل 
ماگل گم اختلاف اع »د لکل 


قال فان كان مع المضارب الف بالنصف فاشترى بها جارية قيمتها الف فوطيها فجاء ت بولد یساوی الفا 
فادعاه ثم بلغت قيمة الغلام الفا وخحمسمائة والمدعی موسر فان شاء رب المال استسعی الغلام فى الف ومائتين 
وخمسين وان شاء اعتق» ووجه ذلك ان الدعوة صحيحة فى الظاهر حملا على فراش النکاح لكنه لم ينفذ لفقد 
شرطہ وهو الملك لعدم ظھور الربح لان کل واحد منهما اعنی الام والولد مستحق برأس المال كمال 
المضاربة اذا صار اعیانا كل عين منها یساوی راس المال لا يظهر الربحء كذا هذا فاذا زادت قيمة الغلام الآن 
ظھر الربحء فنفذت الدعوة السابقة بخلاف ما اذا اعتق الولد ثم ازدادت القيمة لان ذلك انشاء العتق فاذا بطل 
لعدم الملك لا ینفذ بعد ذلك بحدوث الملك اما هذا اخبار فجاز ان ينفذا عند حدوث الملك کما اذا اقر بحرية 
عبد غیرہ ثم اشتراه. 

رج: اام نے فرمایا ےک اکر مضارب کے پاس ضار مت کے رار در مار ہے کی شر طب ادرا ی ےا چرار 
در ہم کے عو راردر ہم تھ تک ایک با ند کی غ ییاور ای سے بھ.ست رک رلی بس سے ال کوای بچ ابا یھدول کے 
بعد وہ یہ بھی باد در ہم قب تک م وکیا پھر اک مضا ب نے خودکواس سے کے باپ ہو نے کاد کو کیا ات میس اس فلا مکی تمت 
0 ھٰ .709 ۔(اس وقت اک مارب کے باپ ہو نےکاد عو بھی یمان ل ای اور ارب مال دار بھی 


۱ نین ابد اے جد ید ۱ 0س ملام : 
ہے اواس مال کے ماک تن رب البا لکواس با تکااخقیار وکاک اکر چاہے فو اس غلا م سے کک کہ تم کے ایک زارد ووی ی 
اوه یں سے ابد نکر کے د ےدواور آنزاد ہو چاؤاوراگر ہو کے یاچاے لا کلام کو مفمت بی میں آزارکررے_( ف سنا 54 : 
موئ بے وہ رب المال اپنے ائن مضارب سے تاوا وصول نی ںکر سنا ے ییہاں ہے معلوم ہونا پا کہ ال مضارب نے" 
مضار بت کے ال سے جو باند کی خر کی می اس مضرار بکو اس ے بسر یکر نا ارہ تھاکی وک ال و قت کک دہ با نکی می کے 
کک ککیت ہے کرای سے جو بے پیداہوا کی تبت مھ ارد ہم ولد کیاکی ب الما لکی لیت سے اورا بھی تک اس 
مفارب کے لئ اس پچ سے نس بکاد موی 07 شس نہ توا ےکا ایک ہے اورت تی ا کی ما کا کک سے 

لپ اا سے دجو کی نب خابت نہ گا بللہ اس بست ر یکر ن ےکی وجہ سے عقر( بست ر یکا جر مان. کا ضامن م وگاالتد ایل پر 
زنای ع راک بتاع پر غابت نہ مو کہ ال یش ٹناکا شبہ ہے اک ے مضارب اس با تکاانخقیار “کاب کہ وہ ابچ اورا کی ما 
ونو لکوفروخ کرو ےک وکل ا کی کی ہے دوتوں اس کے مال ضار ب کے ۶وش ہیں ن ہے وونوں ہی ا یکی مضا م تکی مال 
یں کن جب فلا مکی تست یڈ ھکر ڈیھ پرا رک تمت کے برابر موی تپ اس غلام س کا حص ظاہر ہوگیا۔ ای راس 
مار بکاااس سے ت بکاد وک کی تلاپ ہوگمیا پت ااب اس کے صے میں سے فلا مک خصے آزاد ہو جا ۓےگا۔ کان صا ی کے 
فزد یک اس مال کے مال ک کا حص بھی آزاد ہو جا ۓگا۔ امام ابد طف کے نزد یک ای ر ب الما لکو ٹین ط رع کے اخخقیارات شش ے 
مرف دوط رج کااتیار ہوگا تق ہر ایک اکر چاچ توا خلا مکو آزادکردے اور مر ودار چا سے توا کل ما کے ایک چ ادد رم ۱ 
ادر ی کے پاچ سودر ہم میں سے تصف مجن و وسوپی اک در تم تتن کو عو پار ہ سوپ ی در مآد یکر نے کے ےا خلا مکو بور 
کرے۔ لین تی رک با تک ن وہای مضارب سے اصل ےکا توان صو ل کر ن ےکااخقیار کٹ رکتا ےار چہ مضا ب مال 
وارنی مو)_ ا 0 اٹ e‏ 
ووجہ ذالك الخ:. اور ا شیارب پر ای کے مال دار ہو نے کے پاوجود صان ماقم نہ ہو نے کوج ایے کہ ظاہرش 
اس کے لے سے نس بکاد کو یکر نا ہے۔ائس طور کہ اباد کے تل قکواس ے پیل نوا پر امو رکم لیاجائۓ لان 
ان یکی آزادی کے کار ۶وی ی یں ہو اک وکلہ آزا دک ےکی ش رط یشک ا کا ایک بنا ا کی کک نیس پایاگمیاک وکلہ ٹف ظاہ رنہ 
ہون ےکی وجہ سے اس مضار بک کیت ابت نہ موک وکل یہ یہ ا کی کیک الم کے سا ھ مال کے ماکک کے اسختقاق شل سے 
یسے :ای صو رت سکہ مضا ب تکامال من :. قز خر یداد کی و تیر مکی غل ے مال کن ہو جائے الاک الن شش سے ہر ایک 
تست کے اعقپار سے اصل مال کے برای ے۔ ملا : راس المال ی بو گی لیک چ زار کے عو دودو غلا م خر یر نے جس یں سے ہر 
ای ککی تمت بر اردد ہم ہو جس سے کے طاہز یں ہو جا ہے۔اسی رح اس با ند اود الس کے ےکی وج سے کی نت اہر نہ ہوگا ۱ 
ین جب اس غلام گی تمت ایک ب رار ور ہم ئن :۔ اصل راس ایال سے بڈ کر ڈیڈ زارد رہم ہو گی تب ا کا ظاہر مرگ . 
اک وج سے اس مضارب نے اس بچ سے ابے نس بکاجو پیل و کو کیا تھااب ناف ہو جا ےگا لن ىہ د عو گی صرف شب کے 
معاملہ یل نزو کیو نے آزا دی میں لے 1 2 ۱ 

اک ینا باک اس مضارب نے اہینے نس ب کاو عوئ یکر نے سے چیہ اسے آنزا دکردیا ہو ڑا یکی تمت بڑھ جانے کے بعد 
آزادینافزن مول وکلہ آزا دک نے کے ی ہو گے (اۓ طور برای میس از اد یکو اہ کر نا عا کک ا سکا اک نہ ہو ن ےکی 
وجہ سے ہہ بات با کل مدکی ای لے اس فلا م کے مالک جو جانے کے بدا کا آزا دکرناناف نہ ہوگا۔ ہے بات کن :۔ نس بکاد وی 
کر نے کے ہے یں ہی ںکہ ای نے بھی بھی ان سے نس بک متا مکیاے بک ا کا مطلب ی کہ اس سے مر انب تات 
ہے ای لے ال کامانک ہو ےی اس کے نس بکاد عو نافز ہو سک سے جیے :اگ کی سے دوسرے کے لام کے پارے می یہ اقرار 
کیک یہ تو آزاد سے کن ا لک ماک نہ ہو ےکی وج سے ا کایے اقزا با گل ہے الہ اکر بعد بیس اس خلا مکو اس کے مالک سے 


کال ہد اے جد ید r‏ بلر نشم 
ییا سے فا پرمکیتپاۓ جا ےکی وچ سے اس کا پہلا ا ترا رتاف ہو جا ےگا( کی کک یہاں پر اقرار کے ن کرک نے 
کے ہیں )یجن یگ ز شت زمانے مس جو بات خابت ہو چگی ے ا کی خمردیناگواال نے ہکہاکہ ے تلام لے تی آزاد ہو کا سے اور اس 
میس حن خابت ہو کا ے لان چوک وہ غلا م فی الال خی کی لیت ں ہے اک لئ ا کیہ اقرارنافنہ موا لین جیے :ی ا کے 
وا ےکی علیت می وو خلا م ےگا ال کاگکز خت اقرار اس پر ل بن جا گااور دہ آزاد ہو جا ۓگا۔ اک رح جب مضارب نے 
بیہکہاکہ ال فلا کا سب گے سے خابت ہو چکا سے ن عطال طر لے سے کھ سے پیا ہو اس ننس جب کی اس مضا بک علیت 
ای پر ایت نہ گیا وق ت کک ا کااترار لخو تھا کان جب کی قد ار ب کی فو یہ خود بھی اس ان میس ش ریک م وکیااو ر بے عد 
کک اک ل کےکاباکک مو اورا کا رآناد وک ب خاہت اور E‏ ا 

3۔ایک م کے پاک مضار بت کے بنرار در م تھے ای ےا سے بان ی خی رکر 

کب ت کر ی اور ال سے ایک بے ہیرام وگیء یھر اک وت جبکہ بچ کی تمت بھی ہنراد ددجم 

ییابع یس جب ڈیڑھ ہنرار مو کی ا یکی طرف اپنی الا تکی ند تکی۔ مل ےکی پو کی 

00 

فاذا صحت الدعوة وثبت النسب عتق الولد لقيام ملكه فى بعضه ولا يضمن لرب المال شیئا من قيمة 
الولد لان عتقه ثبت بالنسب والملك والملك آخرهما فیضاف اليه ولا صنع له فيه وهذا ضمان اعتاق فلابد 
من التعدی ولم یوجدء وله ان یستسعی الغلام لانه احتبست مالیته عنده وله ان يعتق المستسعی کالمکاتب عند 
لاحنیفة ويستسعيه فی الف ومائتین وخمسين لان الالف مستحق برأس المال والخمس مائة ربح والربح بينهما 

فلهذا یسعی له فى هذا المقدارء ثم اذا قبض رب المال الالف له ان يضمن المدعى نصف قيمة الام لان الالف 
الماخوذ لما استحق برأس المال لكونه مقدما فى الاستیفاء ظهر ان الجارية كلها ربح فتكون بينهما وقد 
تقدمت دعوة صحيحة لاحتمال الفراش الثابت بالنكاح وتوقف نفاذها لفقد الملك فاذا ظهر الملك نفذت 
تلك الدعوۃء وصارت الجارية ام ولد له ويضمن نصیب رب المال لان هذا ضمان تملك وضمان التملك لا 
یستدعی صنعا كما اذا استولد جارية بالنكاح ثم ملكها هر وغیرہ وراثة يضمن نصيب شريكه كذا هذا بخلاف 
ضمان الولد على مامر . ۱ 
ترجہ : مرجب مضار ب کاو ۶وی جاور ا کاب خابت مو گیا ووو فلا من سکوا ب کک اپنا بی اکہتار ہا آزاد م وگی اک کہ 
یہ مضارب کی اک غلا م کے کھوڑے سے ےکا مالک م وگیاے۔ سا کر تیادہ اس فلا مکی تمت ٹیس سے اینے رب الما کا یھی بھی 
ضا کن موک اک وکل ا کا آغاز ہونا نب اور لیت کے ثابت ہو ےکی وج سے مواے۔ من :ا یکی ازا یکا سیب ووب یں 
ہو یں برای نب برد و کیت ان یل سے آفخ ری بات اور سبب کیت ے۔ یں آز او یکا کم ای کی تکی طرف مفسوب 
ہوگا من کہا جا ےکک ہگویادہ ای کے مالک ہو ن ےکی وجہ سے آزاد ہوا ے پھر اس کے ماکک نے میں اس مضا ب کا ا ناکوگی 
ایارک ل یں ےک وکل اس خلا مکی قمت خود نووا تن بو گئی ننس کے می یہ بھی شر یک م وکیا مج سک وج سے اکر 
ات یکی کات یو کاو زی آزاد کک تاوا ے نواس تاوا کے ےا کا E‏ نر ییاز یا ونیک بون ضر وری٤ے‏ یی اۓ 
اققیار ےکوی نا عی7 رکم تک ناج کہ یہاں نیل پا کیا لئ ہے مضا ب ا یکی آزاوی کے سے می کی تاوا کاضا من بھی 
نہ موا (ف۔ بلنہ ا مال کے مال ککاد کوک صرف کی غلا م سے ہوک یں کے ملق ہے ہو ےکا عو ٹیک امیا سے اور چ وک اس 
فلا مکا بے تصہ اب فی الال آزاد ہوگیا ہے اس لے وہ فر و خت مو نے کے تقائل تہ رہا۔ ۱ 


کالہ د اے جد یھ ar‏ لر “م ٰ 
والہ ان یستھی الخ:. اور اب اس مال کے مال کفکومہ اخقیار م وگ اکہ غلا م سے ا یکی تھ کاک لان کوک ےکی کک اا کی 
: مالیت خلام کے پا اس سے آزاد ہو جا ےکیا وج سے بن لر( ر کک )ر کی ے اور ابال کے مال ککوے بھی اخقیاد م وکاک دہ 
بنا صز کی آزا کر در ےکی کہ اییاغلا م ں بے باک کن تمت اداکر نے کے لے آ ورلیکرنااو رکو کر تا واچ ہو ووامام 
ابوعفیفہ کے نمزدیک مکاہب کے حم یس جا ےکن آزاد کی نے کے قائل ہو جاتا ہے اس کے بع اکر وہای سے مخت ا 
کے لئے کے وہ بگوع ایک براردوسو پاش در ہم عکر نے کے ےک کاک کیہ اس میں سے ب رار ور م توا کل بال کے مانیک 
ےک وچ سے تج ے اور بعد میں چوک اس میں پا سود رم کیاد مرگ سے ج کہ مال کے مالک اور عضمارب کے 
در میا تصف ضف نے ہہو چچکاہے اس لے اس بے شندہ معاپرہ کے معان ان یس سے صف ن ڈھائی سوک بھی نت یا آم لی 
کے لے کیپ کاو رت لآ ید نی ای مقار ہوکی۔ ۱ 
تم اذا قبض الخ: : شی جب رب امال نے اس غلا م سے ایک زارد رم وصو کر لج فو ا کو اخیار م وگیالہ 
وہ مقمارب جوا فلا مکا پاپ ہو نےکائل گیا ہے ال سے اس غلا مکی مال ]شی اس بات کی سے کی تصفب تبت واب یکر ن ےکا مطالبہ 
کر ےکی وتک جب اصل وی ہن ہنراردر تم وصو کر لج بلک اس سے زار دوسو پیا بھی فع کے طور روصو کر لے کین 
بھی تو پیل کان کی ی کی وک ا یکا لہ ہو نالازم ے اواپ رار کے وصول ہو جانے کے بعد ہے ظاہر ہو 1یہ اب ہے لوا کی باندگیا 
ی اع میس ما ل مو ہے لپ اہے کی دونوں کے مواپرہ اور شرط کے مطابقی نصف نصف موی کر رک کے اعپار کے لقیر 
آ گی تبت اس ہے وصو کر ےگاکہ ضار ب نے ی سے می نس بکا و عو کیا تھاک وک اس وقت بھی ہے اتال باق اک 
اس مضا بکااس باندکیاسے نکال رہ ےکی دجہ سے اس سے تر ہوا[ :۔ جن بان یکو ا نے ا رب الال کے ال سے 
خر یداہ شای وہ پیل سے ىیا اس کے کا می ہو ننس کے پیر کے تاق باپ ہو نے اد عوئ یکر جا ہے اور وود عو ی گی سے 
ناس کے ناف ہو نے می ا بھی قف ہ ےکی وکل اس با ا یر ال کی عبت نیس پائی اد ی ہے کان جیے ہیاس پر ضار بک 
الک ہو نا ظا ہر م کیااک ط رس ےک یی ےکی تمت بازاد ٹل زیادہ ہو چا ےکی و چ سے اس کے نیس دو بھی تم دار م وکیا تو باپ 
کد ۶وک ناف ہو ہا ےگااو راا سکیا وجہ سے ا لکی مال ی دہ باند کا لک ام الولد ہو جام ےگیا۔ اک :ناء پردداینے رب الال 
۱ کاا سام الول دی آ وگ تم تکاضا ن م وکوک ہے ان اک ب مالک ہو جان ےکی دجہ سے لاز می ہے ادریے ات ای ےکی 
ف کو یں جا تی ے مجن :۔ جن سکس یک وی مال شی نکی عککیت ورات وغی رہہ کے !خر مت یں ما صل ہو جاۓ نذوواصل 
ال ککاضامن ہو جا تا ےار چہ ال تن ےکوئ یکام ن ہکیا ہو جیسے اپنے باپ یاس دخ ہکا با نکی سے مک کر کے اس یکوام اللہ ینادیا 
ا ( ن ایس ےکو ل یہ دا گیا ہو اور پھر ےک ورات کے ور ری دوسرےوارٹ کے سا تد اس باند کیکامانک ہو اہو تووم 
اپنے شیک کے ج ےکا ضا کن ہوگا)اییے بی ہا بھی ہے لاف نے کے ضا کک ہونے کے تی کہ کی پل ان ہو چا ہے۔ 
(ف ن اپنے یی ےکی تمت میس سے کی مقدا رکا ضا کن نہ ہوگاکیوکہ آزا کر ےکا ضا کن ہو نے می سکس اہین نل کاہونا 
ضرو ری ے چون ہونا چپ یۓ لیف کسی نل نا کا ہو نا لا زی ہے جھ یہاں نی پا گیا ے۔ 1 ۱ 
تو :۔ مضار بکا مال مضا ہت کے ذر یہ ایک لڑکا ہو جانے کے بعر اکر اس پر اپ 
ض بکد وی کے ونب خابت ہوگای یں ؟ اور رب الال کے یا يککاذ مہ دا رکون م وگء 
ا نکی ارا یک کیا صو ریت ہ وگ ؟ ار رب الال ام لے سے لوری تمت وصو ل کر 


نے وکیا ںکی ما لکی تب تکا بھی وہ مطالہ کر سکتا سے مات یکی خصییلء گم اقوال 


ان الہد اے ہدیے . 2 بل "م 
اع و ا٠ل‏ ۱ 
باب المضارب يضارب 

قال. واذا دفع المضارب المال الى غيره مضاربة ولم يأذن له رب المال لم يضمن بالدفع ولا بتصرف 
المضارب الثانى حتی يربح فاذا ربح ضمن الأول لرب المالء وهذا رواية الحسن عن ابی حنیفةء وقالا اذا عمل . 
به ضمن ربح او لم يربح» وهذا ظاهر الرواية وقال زفر يضمن بالدفع عمل او لم يعمل وهو رواية عن ابی _ 
. وسی لات المملوک لے الد فح على وجه الایداع رھذاالدفع على وجه المضاربة وهماان الد تع ١ےہ۸("‏ ع 
حقبقة » وانما يتقرر كونه,للمضاربة بالعمل فكان الحال مراعى قبله: ولابى حنيفة ان الدفع قبل العمل ايداع 
وبعده ابضاع» والفعلان يملكهما الضارب فلا يضمن بهما الا انه اذا ربح فقد ثبت له شر كة فى المال فيضمن 
كما لو خحلطه بغيره» وهذا اذا كانت المضاربة صحیحة فان كانت فاسدة لا يضمنه الاولء وان عمل الثانى لانه 
اجیر فيه وله اجر مثلهء فلا یثبت الشركة به ثم ذ کر فی الکتاب يضمن الاول ولم یذ کر الثانیء وقیل ینبغی ان لا 
يضمن الثانى عند ابی حنیفة وعندھ۔ا يضمن بناء على اختلافهم فی مود ع المودع. : ۱ 

ترجمہ :قال واذادفع الخ:. نوی نے فر ایا ےک اکر ایی مضار ب اکۓ اس ما کو جو اسے مضنار بت ٹیس ملا سے خود 
کی ڈور بے نکو مار ہت نے ماک رت الال سے ا کو با کی اجات ںوی شی ور لے ےلوہ 
مال د ےد سے یادوصرے مضمارب کے تصرف ے وہ پہلا مضا ب ضا کن یں ہوگا یہا لک ککہ دوس ا ی اس ما کو 
کاو ہار ٹس لگاۓ اور پھر اس سے ا کو ع بھی مل جائے۔ اس صدرت یں جب دوس امضار ب اس مال ے لف حا ص لک ےک 
تب پہلا مفمارب مال کے اصکی مال ککاضان بکن جات ۓگا۔ ہے وات نے امام ابو یف سے با نکی ے۔وقالا اذاعمل الخ 
صا کن نے خر مایا ےکلہ کے می دوس امضار ب الک کے مال پر قب ہک کے اپناکار وبار شر و )کہ ےگا تو پ لا مضارب اکل مال 
کے مال ککا ضا کن ہو جا ےگا خواو دوسرے مضار بکو فا کہ ہو ینہ ہھ۔ اور ہے اہر الر وایبی سے اور امام ٹر نے فرمایا کہ 
قور سے مضار بکومال دی بی پہلا مضا ب ضا ن ہو جا گا خواددوصرے نے چگ خر یرو فر وخ تک ہو بات ہکی ہو اور ہے ایام 
وو س فکی ایک رر دایت ہے ڑب ہامام ابو و سف نے ای ر وای تکی طرف ر جو کاچ جلیماکہ عنام ٹس ہے ا کید یل ىہ ہے 
کہ اکر لے مضار بکومال دی ےکااغقیار سے لودو سر ےکوود لیت کے طور بر دی ےکااخقیار ے مین ہے دینامضار ہت کے طور پر 
نے (اورانجائزٹ کے اف ردینے سے تاشت لازم لی ہے ان ے ضا من و )اوسا ن کو لی س ےکر وومر ے مشا بل 
بال د ینا تقیقت یں اس کے قض یں ابات رکھناے الہت ہہ مضمار ب تکاکام اک ونت ہوگاج بکہ وہ اک مال سے مضار ب تکاکام ۔ 
شرو کر ےگااورکام شرو کر نے سے پھلے مرف ا لک تاشت موی ۔ 

( ای لجاک رکو ئی کار وبا کر نے سے مال دای نہ دیا تو اک پر پک لاز م یں ہوک کی ن کا مک نے کے بحد یہلا مضا ب ضا من 
وگ )اور اام ابو حنی کی د سک ىہ ےک کام شروک نے سے پل مال د نات رک کے کن میس سے می کا مک نے کے بعد 
وی ما کار وبا رک بو گیا ھا جا ےگااور یل مضار بکودوتوں باققول سکن اس ما کو دو سر سے کے پاس بطور ابات ر کین اور 
کا روپارد س ےکااختیار ے۔اس کے النادوٹول صو ر فو یل سی ئل ضا من نہ ہوگا کر جب دوسرے ضار بے 20 
ال یں ا کی ش کت خابت م وگ اور یہلا مار ب ضا کن ب گیا جیے اک پیل مضار ب نے اپنے مار یت کے ما لکودوسرے 
کے مال نےد لو ضا مع جانا ےن یا ان رت ان سآ رد قات کک کے اد ری 
مضار ہت فاد مو و یہلا مضار ب ما لکاضا من نہ ہوگاکہ چہ دوصر امضمار ب اس مال س ےکام شر و کرد ےکی وک اس صصورت مل 
اس دوسرے مضار بک حقیت ایک مز دو رکی مو کی اس کے اا کو اپ ےکا مکی پازا کی اجمزت لگ اور اس سے کام شر وع 


الد اے جد یر ۵ے 2 لر نشم 
۱ کرنے سے یا ف کمانے ےکوی کت اور تان ابت نہ موک چ رکماب بل بیا نکیا کہ پہلا ضار ب ضامن ہوگالجن 
دوسرے ضار ب یکو زکر ی کیاکی وک اس شس اختلا ف ے۔_ 0 ۱ 
حش فتہانے ریاس کہ امام ابو ینہ کے نزدیک دوسرے مضمار بکو ضا ن نیس ہو ناچا ے اور صا شن کے نز دک 
شا ل وک دک دوٹوی کے در میالن اشن کے پارے میس اختلاف ہے۔اف۔ جیار ایی ہنس نے زید کے پا کون چ کان 
7 لن زید نے وی 2ر بر کے پا لمات کی رک راس کر نے انس مال امام یکو ضا )کر دیا و امام ابو عن کے نزو ین جج 
ضا کہ ہوگااور صا ین کے خزدیک بیلے امات ر کے وانے کو ہے اتید ہوگاکیہ چاے فو اس ما کا توان اس پیل کن سی 
' نے اور چاے فو ال دوسرے و سے ے۔ ای گم پر قا لکرتے ہو ے مضارب کے مھا ےے یں بال کے مان ککواخیار سے 
اورادائما م کے نز دیک دور مضا ب ضا من نہ م وگااور ہے تیاس لن مشا کاے۔ ) 
او :پاب : مار بکادوصر ےکو مضارب :نانااگر رب امال نے دوس ر ےکو مضارب 
بنان ےکی اجازت یں دی ء برای اکر نے : صمل تاقوالا ےکر امو اتل 
مضااب کے سای میا نک نے کے بعد اب مضا ب المضارب کے اام بیان کے جار ہے ہیں تک رب المالی نے جس 
سے مفضمار تکام بل ہکیادوازخوددوصر ےکواپنا مطمارب بنانے کے لے رب امال سد ٹم دیدے۔. 
وقیل رب المال بالخیار ان شاء ضمّن الاول وان شاء ضمن الثانى بالاجماع وهو المشهور وهذا عندھما 
ظاهر وکذا عنده» ووجه الفرق له بين هذه وبين مودع المودع ان المودع الثانى يقبضه لمنفعة الاولء فلا : 
يكون ضامنا اما المضارب الثانى يعمل فيه لنفع نفسه»ء فجاز ان يكون ضامناء ثم ان ضمَن الاول صحت 
المضاربة بين الأول وبين الثانى» و كان الربح بينهما على ما شرطا لانه ظهر انه ملكه بالضمان من حيث خالف 
بالدفع الى غيره لا على الوجه الذى رضى به فصار كما اذاءدفع مال نفسه وان ضمن الثانى رجع على الاول 
بالعقد لانه عامل له كما فى المودع» ولانه مغرور من جهته فی ضمن العقد وتصح المضاربة والربح بينهما على 
ما شرظاء لان اقرار الضمان على الاول فكانه ضمنه ابتداء ویطیب الربح للثانیء ولا يطيب للاعلى لان الاسفل 
يستحقه بعمله ولا خبث فى العمل والاعلی يستحقه بملكه المستند باداء الضمان فلا یُعری عن نو ع خبث. 
تج :۔ اور تش مشار نے فر مایا ے ہک تخو ںات ی ایام م اور صا کین کے ن دیک بالا ماع ب الما لک اقتا ے 
کہ دو چاے تو پیل کی مضا ب سے تادان لے یا اس دوسرے مضا ب ے تاوا لے بی قول مشمپور بھی سے اور صا ین کے 
نزدیک عم اہر سے اک زم امام اض کے وی بھی نھاہر لاف لی اس صورت می ںکہ ایک من نے دوسرے 
کے پا کول چ زات کی تو مانا اباتت ر کے وا ےکودونوں نصوں سے مضمان لی ےکااضتیار د نے ہیں اک طرح 
مار ہت کی صورت بی بھی مال وا کو اغتیار ے۔ اور امام ابد یش کے نزدیک امات کی جورت ٹیل امات کے مال ککو 
دوسرے اشن ے فان لین ےکا انار یں ے الہ مضمار ب کی صورت ٹیل دوسرے مضارب سے فان لین کا اخیارے۔ 
ووجە‌الفرق الخ :. امام اعم کے نز دک اشن کے امین اور مضمارب کے ضار ب کے دز میا فر کر ےگا وجہ یہ ےکہ 
دوس ااشان اس ما لکو لے اش نکو فائتدہ نچا نے کے لے لتا ے ن :اس میس اسے ایی ذا کو نا رہ پان قصور نیس ہو جا سے 
ند ادوس راان ضا کک ت ہوگا لیکن دوس امضارب لوا سے زاف ىف کے واس ےکا م کر جاسے اس ے دوضامن ہو سکتاے_ 
ٹم ان ضمن الاول الخ:. پچ راگ مال کے مالک نے بپھلے مضارب ے تاوان و صو لکر لیا وای کے بعد سے اور دور سے 
دولوں مضار ہوں س ینس طرں کی مار ہک معایلے پا ےگا دہ سج ہوگااور شر 2 مطا لن ان رونوں کے در مان ن 


من الد اے جد یر ٦ے‏ جلرم 
شت رک ہوک کی کہ یہ بات اہر ہو کہ پیل مشار ب نے مال کے ان کوج وانادیا ےا لک وج سے پہ مر با کا 
مالک 6 گیا سے اور ا یکو یہ کیت کی ای ونت سے ما سل ہوکی ےک شس ونت سے یل مضارب نے دور ےکواس رخ 
مال داگ ٹس ےا لکا مالک راضی نیس بواتھایہا لک ککہ ا لک عخالش یکر ےکی وج سے ال کا کک بھی م وگیا۔ یں جب 
یل مضارب پک کلیت ای وقت سے ما ل موی وی ایا وگیاکہ ال نے دوسر ےکواناخاص ذائی مال دیاتھا۔ او راک بال کے 
۱ 020 ے مضارب سے تاوان لے لیا ہو نوہ دوس را مضار ب اک ما کو عق دک بناء یر لے مضا ر ب سے والیں لے لگا 
کی وتک دوس رامضار ب فو ای کے وا سٹ ےکا مک تا ہے۔ 

یک ی ال سخ کرٹ ا ان وت مال کو کی کے پا امات کے طور پر رکھااوداص٥لی‏ ماک نے ال 
اکر کی نے کات ےکی واپ لاف رم ازن ما یکا می سے دن کے لا ےون لے کی ر 
دوس را مضمارب عقد مضا بج کی بناء یر لے مار ب کی طرف سے دع وک ہکھاگیاے اپ اوہ ا سمال لان مز وط جن 
لے از وان ادر مر اریت کیا رکز کے لان ٹف ان دونوں ےد رمان تیم ہ کوک 
اوا کااقرار ت تقیاقت میس پیل ضار ب بر ے و کن E‏ دای سے تاوالن اک سے لیا سے اور اس ے م کل 
شدہمال دوسرے مضااب کے لئے علال ہوگا لن پیل مضارب کے کے ای کو لینااچھا یں کہاجاے کک کک دومرا 
مضارب ال کان محن تک وج سے عفن ہداے اور نت میں وی خبافت نی مون ے۔ جب بے مار بکو ا کی ابی 
کی کی وج سے اکان حا سل ہواتھااور اس کے مالک ہو ےک تست واناد اک نے پر ہے وہ جن ایک شع مکی برائی سے نال 
یں ے۔(ف کہ اک نے ایکا توان قیقت می ایک ز ماشہ کے بعد اد اکیا سے اور ان د ہی ےکا اض ےک ا کی کات 
شر وی ے خا ب تک جاۓ اس طر ایک اقبار سے تقیقت ٹس ا سک ایت ہیں تی کان جاوا ن کات ا از ےکیٹ 
ات ہو کی سے اور می بات ایک ط رکا خبت ے۔ )۔ 

سی 0 ہر 
اشن تاا ر ب الما لکی اچاز ت کے بحد ہو ا پیر از ترونو کے گم کے در مین امہ 


فتہاء کے اقوال ءتفیل مور 27 

قال واذا 0 ۹۶یی ا ی ا 
وربح فان کان رب المال قال له على ان ما رزق الله فهو بيننا نصفان فلرب المال النصف وللمضارب الثانى 
الثلث وللمضارب الاول السدس لان الدفع الى الثانى مضاربة قد صح لوجود الامر به من جهة المالك ورب 
المال شرط لنفسه نصف جميع ما رزق فلم يبق للاول الا النصف فينصرف تصرفه الى نصيبه وقد جعل من ذلك 
بقدر ثلث الجمیع للثانى فيكون له فلم يبق للاول الا النصف فينصرف تصرفہ الى نصيبه وقد جعل من ذلك 
بقدر ثلث الجميع للثانى» فيكون له فلم يبق الا السدس ويطيب لهما ذلك لان فعل الثانى واقع للاول کمن 

استوجر على خياطة ثوب بدرهم فاستاجر غیرہ عليه بنصف درهم. 
ترجہ :قدو ری نے فر ےک لگ مال کے مالک نے مضیار بکو آر سے نکی بات پر مضار ب تکامالی دادر ا سے اس بات 
رہ 4س پال دے کاچ اور کرای مضمارب نے دوصرے مضارب 
کو ایک تپا کی ش رط بر مضا ہت کا مال دیا تی دوسرے مضار بکوایک تبان ےگا ئل راس دوضرے ضار ب نےکارو با کر 
کے نف عکایااب اکر بال کے مالک نے پیل ضار ب سے ای طم ات یکر ر کی م وک اتی ا کار وبار ٹیش جو پت د ےگادہ 


الپداےچدیړ ` ` 2 مرم ٠‏ 
تم دوفول بیس تصف تصف ہوگا تاب اس مال کے مال کو خلا :پارو سو آم سے نصف چو سواوردوصرے مضار بکو ایک تال 
پار سواور یل مضار بکوچھٹا حص سن وسو یل ک ےکپ وتک دوسرے مضار کو چیک کی پار سذاور یہ ضار بتک ھٹا <صہ 
ا ےپ ر کا ت وال ارت ر ای ے اا چک ال ےکک طرف سے اس بات 
گیا و رکیاجازت با ی ہے اور ال کے مالکف نے بے ذات کے ےکی س صل 1 آدحادینا ہے ےکی تاقاب بائی تفت پیل 
مقار ب کے لئے روگیااور ہے ہلا ضار ب چ وہای ھی ر کہ ےگوہ ای کے اہپنے کے یں سے ہوگااور اس جہ میس سے 
0 ل نکی ایک تما ما لی شر مدکی اس ط رای دوسرے مارب کے ے نکی ایک ابن رمک 
اورا کے کے بحد ایک لے صے کے علاد ہے بھی بائی یں ر ااب مجمو ی ظفح یس سے ان رونوا ضرا ریو کو جا کہ ملاوواان 
کے واسطے علا س ےک کک دوسرے مضارب نے ج پچ ھکا مکیادہ اک نے پیل ضمارب کے ےکیاہے پل ا یکی صور ت الا 
کی کے ی ےک ماک و رع کے وش ی ورزر ی لے کے لے ون و کی ومر ددزی ےآ ارے 
در بھم کے عو سلو نو ان دوول ورزوں ایا ای مز 00 

او :رب الال نے فص ف لی ی شر برای یکو مضار بکامالی دیائچلراس نے دوصرے 

کرای تپا کی شر پرومیل دیدیہ :راس مضاربت س ےک پار سورتم یں 

آۓ توا نکی تی کن طر ہوگی اور دہ ماح علال ہوں کے پا ہیں مستل ہک یا 

صو ر توں یس سے بی صو ر ںک یتفضحیل یول 


وان کان قال له على ان ما رزقك الله فهو بيننا نصفان فللمضارب الثانى الثلث والباقی بین المضارب 
الاول ورب المال نصفانء لانه فوّض اليه التصرف وجعل لنفسه نصف ما رزق الاول وقد ززق الثلئین فيكون 
بینهما بخلاف الاول لانه جعل لنفسه نصف جمیغ الربح فافترقا. ولو کان قال له فما ربحت هن شیء فبینی 
وبينك نصفا وقد دفع الى غيره بالنصف فللثانى النصف والباقی بين الاول ورب المالء لان الاول شرط للٹانی 
نصف:الربحء وذلك مفوّض اليه من جهة رب المال فيستحقه وقد جعل رب المال لنفسه نصف فا ربح الأول 
ولم يربح الا النصف فيكون بينهما. 
تم :او اکر مال کے مالک نے پل مقار ب سے اس ط ررح معابلہ ٹ ےکی وک ا ںکاروہار م اولد تیان ت کوب اح 
۱ د ےگوہ ہم دونوں کے ور میا تصف نمف ہوگا تاس دو تال ر سو ٹف کے بحل مضارب اور بال کے ماک کے ور میان 
نمف نمف یں پار پار سو ہوں گ ےک وکر نال کے کک نے بے مضارب کل رااقتیا رد ےا اادد يک مل مضا بکوجھ بے 
بھی ونس شس سے آدھااپینے لئے ہے اتاج بک بطل ضارب کو تح ےتال ین 0-0 سے مضارب 
او مال کے مالک کے در مان نمف ضف ی چار چا ر سو کے حاب سے تیم ہوں گے لاف 009 ےک اس می 
ال کے مالک نے خد کے لے لغم کے نمف 1 وک اس مر جع رونوں صو ر فو میں فرق ہوگیا۔(ف جن بی صو رر 
می مال کے مالک ن کل فی کا اپنے لئے آند ےک شر کی ادوس کی صورت میں پل ارب کے جے می جو پھر بی 
آ اس مس سے آد ھھےکی شر گی قی_ ۱ 
. ولوکان قال له الخ: 9 مقار ب سے ا طر کہا وک )کار وبا کر واک ش رط ہک جو یھ تم 
کو لع و جازے او ز7 ہار ے ور میا ن ضف صف ہو گاج پکہ مم مضارب نے دومر ے کو آرے ا اکاشرط املد تما لو 
دوسرے مقار بکو آدھا لع یی ارہ سو میں سے چ سو یں اال نر لی کے دن کے لے ارب ور 


مین البد ا جدیر 4۸ 7۳ 
ضارب کے لئ نصف نکی شر طکی ی ج بک مال کے مان ککی طرف سے پیل مضمار بکوا یکر ن ےکا خقیار بھی تھا اس لے 
ووسر امضمارب اک نصف کا تعن ہوا اد مال کے باک نے اپنے لے اس لٹ کے کو ےکی شر ط ای ی جو یہ مضار بکو 
سن گاج بکہ ال پیل مضارب نے فو ٹیا نف میں بے س وکھائے اس لئ مکی مھ سوج ھک ہک ل کا نصف ہے ان دوفول کے در میان 
برا شی ان ٹین سو کے حاب سے نیم ہوگا۔ : 
تو :ستل روو کی اور تی ری صورت, مگ لک ی تخل , مو اتل 

ولو کان قال له علی ان ما رزق الله تعالی فلی نصفه او قال له فما کان من فضل فبینی وبینك نصفان» وقد 
دفع .الى آخر مضاربة بالنصف فلرب المال النصف وللمضارب الثانى النصف ولا شىء للمضارب الاولء لانه 
جعل لنفسه نصف مطلق الفضل فينصرف شرط الاول النصف للثانى الى جميع نصيبه فيكون للثانى بالشرط 
ویخر ج الاول بغیر شی کمن استوجر لیخیط ٹوبا بدرهم فاستاجر غیرہ لیخیطە بمثله. 

تر مم :او راگ مال کے ماک نے لے مضارب سے اس طر کہا وک الد تدای ا ںار وبا یش جو ہے کی ر وزی د ےا یک 
نمف مب راہوگا او کہ اک جو پگ بڑ ھے دہ میرے اور ہار ے در میان نصف آصف ہوگا۔ج بک پیل مضا بک وآ دحا لٹ لے 
گا اور پیل مضار بکو ہے بھی نیس ےٹاک کہ مال کے کک نے مطلق جو پئ بڑھے ا کا نصف اپنے کے ےکیا تھا و پیل 
مار بکاد و ر ے مضارب کے لئ 1دت ےکی ش کر ےکا مطلب مل مضا بکا لو راحص مراد گالپ ادوسرے ضار بکو 
شربا کے معان آدھا نأ سے ےگااور پہلا مضا ب خالی اھ رجا ےگا۔ کی ےکی نے ایک درز یکوای ککپٹرایک در م کے عو 
نے کے لئے داور ای درزی نے کی دوسرے درز ی ک ولور ے ایک د ر عم کے ۶وش یی نے کے لے دیا۔(ف۔ توا یش پیل 
ورز یکی مز دور کی لور کی لو دک دوسرے درز یکو ئل جا ےگ اور ہلا در زک در میا سے نال جا ےگا ن نال با تھ رہ جائۓ 
۴ ۱ ۲ 7 
وان شرط للمضارب الخ:. اور اکر بال کے کک نے سے لئے 1ے کی شر کی اور یہ مضارب نے دور بے 
مضا بکو کد وتا یکی شر ط وتال کے ماک کک و آدھا ع سق ہے سومییش کے اوردوسرے مضا بکوباقی آد ھا ی چا ےک 
یز پہلا مضمارب دوسرے مضمار بکو اپ مال سے اک می کیک چطاحصہ د ےکک وتک الک نے دوسرے مضارب کے لے ایی 
چک شر کی جس کا ت ما یکا ایک ے لزا اس مال کے ماک کے می میس ا کی ش رط تافز مو یکوک ا اکر نے سے مالی کے 
اک ے یکو مکرالاز مآ تا ہے عالاکمہ اس کے نے دوتھائی کے نف کی ش رط ایی جک بے ہ ےک دکلہ ایک ابی ےکار وبارش 
چو معلوم سے ہم س کالہ دہ خود مالک ہے ایک ن مقد ارک تیر انا پیا جار پاے اور مال ىہ کے مفارب نے دومرے 
مضا ب کے لے اس با کی ماخ کر فس کہ ای شرط کے مطا لق ا ںکودیا سپا ۓےگابفر اس عضا یکولو راکنا اس بر لاز م ہوگا۔ 
اورال وچ ے 07 یہ مضا ب نے دوسرے مضمار بکو محال ےکر ے ہو سے ایک دج کہ دیاسے عالالکہ ہے سی ہو ن ےکا 
بب ٤و‏ اہے۔ اپ ادوس امضار ب ال سے ایک ھٹا حصہ ےکا یہ مستا اس مت کی تیر ےک ایک کی نے ایک دزی سے 
ایک در یم کے عو ایک ڑا سی ےکا معابطہ ٹٹ کیا ال نے دور سے درز یکووت یکپٹراڈیڑھ در ہم کے عو سے کے لی دے ٠‏ ۔ 
دیا۔( کہ ال مورت س یہ درز یکو اججر ت کا صرف ایک در عم لگا مین وہ خوددوسرے درز یکو ضف ور عم اتی . 
رف ےلاک کل ڈیا در ےگل ۰ 

او :ستل ہک چو گی اوریا نمس صو رت نیل , عم و ممل 


فصل. قال واذا شرط المضارب لرب المال ثلث الربح ولعبد ارب المال ثلث الربح على ان يعمل معهء 


.کاپد اے جد یړ ۱ 4۹ے ۱ جا رٹم ۱ 
ولنفسه ثلث الربح فهو جائزء لان للعبد يدا معتبرة خصوصا اذا كان ماذونا له واشتراط العمل اذن له ولهذا لا ° 
يكون للمولی ولاية اخذ ما اودعه العبد وان کان محجورا عليهء ولھذا يجوز بیع المولی من عبده الماذون واذا 
كان كذلك لم يكن مانعا من التسلیم والتخلیة بين المال والمضارب بخلاف اشتراط العمل على رب المال 
لانه مانع من التسليم على مامرء واذا صحت المضاربة يكون الٹلث للمضاربة بالشرطء والثلثان للمولى لان 
كسب العبد للمولی اذا لم یکن عليه دين وان كان عليه دینء فهو للغرماء هذا اذا كان العاقد هو المولیء ولو 
عقد العبد الماذون عقد المضاربة مع اجنبی وشرط العمل على المولى لا يصح ان لم يكن عليه دینء لان هذا 
اشتراط العمل على المالك وان كان على العبد دين صح عند ابی حنیفةء لان المولى بمنزلة الاجنبى عندہ على 
ماعرفے۔ 1¿ 

ترج :فصل ار مضارب نے نہ شر دک کہ مال کے مایک کے لے ع سے ایک تھائی مل ےگااور ای کے فلا مکو بھی لع سے 
ایک تھا لگاااس شرط کے سا کک وہ مییرے سا تھ کا مر ےگااور ایک ھائ ایح خود کے لگا تو ای طر کا متعاللہ لے 
کرت جات سے خواواس کے غلا م بک کار وپار کے ے ال کی ف سے اجازت ہو یانہ ہو ای رح یہ خلام سیکا مقرو بویانہ ہو 
وہ غلا مکامای سر نض کر نامحر ہو نے باغو اس صورت یں ج بک مالک کی مرف سے ا کواجازت ہو اور جب غلام 
ک ےکا مکر ن ےکی شرط ای ھکویا ال کے مانک نے ا یک وکاروہا ہکن ےکی اجازت دے دی اس ط رح دہ غلا م اجازتیاف ( ی 

اذو ٢‏ گیا )اور چ کہ ای کے قب ہکااتبار پچ یکیاچا تا ای لے اس کے مو کواس با تکااغخقیاد نیش ہو جاک دغلا م اکر 7 
کے مس کے ابا ر کے وا اموا ی اماات f‏ بس سے لے ےگ چ وەقلام مور مو( سی اے ,کار دپارے 2 اکر دیاگیاہو)۔ 
ای لئ اکر مول نے اي ےکا وباد کی غلا م کے با تھ بتھ سامالن قرو کیا توا کا ہے روخ کر ناچا مو تا سے جب مہ بات ثابمت 
۳ گئی نوا موجودوصورت یل اس فلا مکواپتی مدد کے ے لے ہک شر ط انا مضار بکومالی حوال کر نے اور ر وک ٹوک دور ہو نے 
سے مم کر نے والانہ وگ ہک وکمہ فلا مک کد وہ مت ہو جا ہے ال کے نر خلا ف اگ ر مشار ہت کے موا بین ال کے مال فک 
بھی کار ویار مھا ےل می کا مرن ےکی شرط کاو کی ہو او یہ شرط فاسد ہو کی کمہ پیل ہی ہے بات بای جانچی ہ کے ایبا 

کر نے سے مال بر مضمار بکائورالور اؤہ کی پایاجا ےگااور خی ررکاوٹ کے اس کے تن مس اکوئی مال نمی ںآ ے گا۔ 

خلاصہ ىہ ہمہ ال کے لام کے ےکا کر ن ےکی اش رط انا سے اور جب یہ مضا ب تکامحابلہ جن گیا توا ی شر طط کے ' 

مطا لق ایک تا ٹف اس مضار بکا ہوگااور اس کے موی کے لے دو تپاکی ہوگاکی وکل فلا مک کمائی انس کے مولیکی ہو ے 
بش ی غلا م کی ووسر ےکاکوگی قر بای نہ واو رآکر غلا مکس یکامق روش ہو فو ہکمائی اس کے ترش خواہوں کے لے ہوگی۔ 
ت ۴ ورت کل ے جب ہک مضمار ی تکامعاملہ ےکر ے والاخود مو لی ہو . "٠‏ 

ولوعقد العبد الخاد رال رک اییے فلام نے یھ ےکار وبا رک نے ہک اجازت ہ وکا جننی کن کے اتی مشار کامعال 

ٹ ےکیاادر اس نے اس مال میں ىہ بھی ش رط رک یک عیب را مو لی کی ا کار و ہار می شیک م وکا سکن میارب کے سنا ہے ال کا 
مول کک یکا مر ےگا اس دقت بی د یھنا چا ےک اس ماذولن غلا م رس یکا قرضہ با ہے با ںآ بای نویس ہے توا سکیا ىہ شرط 
سح نہیں ہدک یکیوکلہ ال صوزت میس خود اپ مال کے مالک پر ادت ےکا مک کو شر کر تالاز م تا ہے۔ او اکر لام 
مرروض ہو نواس صورت می امام ابو عذیفہ کے نزد یک مو یکو بھی ش ری ےکن کے کوک اس ے لکتماب الماذو نکی بحٹ 
میں ىہ بات معلوم ہو یکی ےک ام م کے نزک مقر رو فلا م سے ا کا مو ای کے عم میں ہے 

و :ل ارم شارب ےی شی م وک مل کے مال کک ئل سے ایک تھا حر 


الد اے جدی لر "م 


اور اس کے غلا مک بھی ایی تھائی حصہ ہوگا بر لیگ وہ بھی ال کار وباد یس ش یں 
رہ اور ایک تپا حصہ مرا ہوگا۔ اکر عبدماڈون نمی ا کی کے سا ہے مقمار م تک 
معالہ کیاادر ای یں اپنے موک کے لے می شر رکم کو بھی لوز مکیاء میا لکی یل 


ا 

فصل: فی العزل والقسمة. قال ؤاذا مات رب المال او المضارب بطلت المضاربةء لانه ت وكيل على ما 
تقدم وموت الم وکل يبطل الو كالة وكذا موت الو كيل ولا تورث الو کالة وقد مر من قبل. وان ارتد رب المال 
عن الاسلام والعياذ بالله ولحق بدار الحرب بطلت المضاربةء لان اللحوق بمنزلة الموت الا تری انه یقسم ماله 
. بین ورلته وقبل لحوقه یتوقف تصرف مضاربه عند ابی حنیفةٌء لانه يتصرف له فصار کتصرفه بنفسه» ولو کان 
المضارب هر المرتد فالمضاربة على حالهاء لان له عبارة صحيحةء ولا توقف فى ملك رب المال فبقيت 
المضاربة. , 8 
رل :رب ال مال با ضار ب کے حزول ہو نے اور ال کی کیم کے میان میں۔قال واذامات الخ:ف ورک نے 
ریاس ےک اک ما ل کاماکک یاحضار ب مر جائے فو مضمار بہت ب مل م وگ کی وک مضار ہکا کل دوس رو کو وکیل بنانے کے می ٹیس 
ے۔ بی ےکہ پیل یا نکیا جاچکا سپ اور ہے بھی معلوم ہو کا ےکہ موکل کے مر چاسے سے وکال بال ہو جا ہے۔اکی رت 
وکل کے مرجانے سے کی وکالت بال ہو جانی ے اور وکالت ارک چ یں ے جو موزوٹی ہن ہو جیی اک پیل یا نکیا با 
ے۔ وان ارتد الخ:. اکر رب امال نہ جب اسلام سے بر جاۓ یار تہ ہو جائے( حو باللہ صن ذایک ) پھر باکر 
دارالح رب ج جاۓے تو ی ںی مضاربت پا گل ہو جائی س ےکی کلہ دار رب کج جانا موت کے م میں ہے کے شس 
دی ےکہ وا برا کا ال اس کے اہ وارفول میں سی کیا جات ہے ؟ اور جب کک عا مکی طرف سے اس کے بارے میں 
دارا رب میں * کی جانے کے فرمالن جار کی نیش و تاج ب کک انام ابو یق کے نز د یک اس کے مضار بکا تصرف مو توف ر ےک 
؟ لی راکہ خود ا کا انا تصرف مو قوف ربتا کی وک مضارب جو پٹ ےکا مک تا سے سب اک رب امال کے ےک تا ے پا 
ضار بکاپکھ ضر فک نااییاہوگا یی خودرب الما لکاچھ تحرف کر٤ے۔ ٠‏ 

ولو كان المضارب الخاد اکر صرف مضا ب تی مر تز ہو توا کل مضا بت اپن حال یبا رہ ےگاک وک مضارب 
ج بات ییا نک تاے وہ 1 مو ے اور بال کے مال ککی کیت کول و قف ی فرق ہیں ہو ای لے مضارہت باتی دہ چا 
ہے۔(ف حا صلی متلہ مہ ہواکہ مار ب مھ مل ہونے کے بعد الیہا آ دی ر بت اہے جوا ہو واک ےک مک تا ہے اسیا مناء یہ 
ay‏ ا ےا یک مضا بت بالانفاتی ہے گی چنا یہ اس کے یرہ 
فروخت کے بعد لٹا نقصان اکر پچ رم مر ہو ہا ےکی صورت بیس وہ کر دیاجاۓ ادا اھ رب ی جاۓ وجو پک اہ ےکیا 
وو سب چا ہے اور اگر مع ایا ہو تو معاہرہ کے مطا لی وونوں میں تیم ہوک وکر ىہ تس اس مضار ہت کے مال می ناب ہو تا 
ہے اور مال کے ماک ککا تصرف ایام ابو عپیفہ کے ادیک مو توف ر ہتاے ا سکیا وجہ یر س کہ ای کے مال سے اس کے وار و کا 
حن متعلقی ہو جا تا ےلان یہ بات مضار بت یس مضا بک طرف سے نی بای حائی ہے۔(مک-) 

و یں مضارب کے ممرول ہو ۓے اور الک مک اکن اگر رت الال 
مضا ب مر جاے یاالنادو ٹول شی س ےکوی ایک مر ت ہو ہا ےسا کی تفصیلں عم" 


کد الد اے جد یر N‏ ۱ لر“ م 
27 ۱ 

قال۔ اھ اوہ AR‏ اشتری وباع فتصرفه جائز لانه وکیل من جھتەء 
وعزل ال وكيل قصذا یتوقف على علمہء وان علم بعزله والمال عروض فله ان يبيعها ولا يمنغه العزل من ذلك 
لان حقه قد ثبت فی الربح وانما يظهر بالقسمة وهى تبتنى على رأس المالء وانما ينض بالبیع. قال ثم لا یجوز 
ان یشتری بشمنها شيئا آخرء لان العزل انما لم يعمل ضرورة معرفة رأس المالء وقد اندفعت حيث ضار نقدا 
فیعمل العزلء وان عزج مر أس المال دراهم او دنانیر قد نضّت لم یجز له ان يتصرف فیھاء لانه لیس فی اغمال 
عزله ابطال حقه فی ار ج فلا ضرورة قال رضی الله عنه وهذا الذی ذ کرہ اذا کان من جنس رأس المالء فان لم 
یکن بان کان دراهم ورأس المال دنانير او على القلب له ان يبيعها بجنس رأس المال استحسانا لان الربح لا 
يظهر الا به وصار كالعروض وعلى هذا موت رب المال فى بيع العروض ونحوها. 

ترجہ :۔ دو ری نے فرماا ےک اہ ما لکا مالک ابنے مضارب وت کرو ے لیکن ا کے مزول مو ےکی 
رنہ ہو اس یتاء ر وو تر پیلفڈروشت بھی اکر نے فا کا تصرف جائز موک ٢‏ لور رھاب ان الب فر نے کل 
بوخ اور و کل کو قاع وکر ےکسلے قر ور ی ےکا کے ان با کی خر بھی ہدیا ہو لاف ی جب کا کات عو 
ون ےکی خر ٹیل ہوک وہ صب ساب وکیل اور ضار ب ہی ےک شن محرو نی ہکا ۔اس چگ قد امزول ہو ےکی تر 
اس نے ا کنیب کاک اک تنس نے دوسر ےکواناظلام یک کے لئے وکیل بویا رم کل نے خوددی اس فر وخ کر وتوہ 
وکیل معزول ہو جا ئگ خواواسے اس با تک ضر د یکی ہوا ٹھیں۔ پچ رجب مضار پک قصر معزو لکر دیااور اسے ا کی خر موی 
تب ددحال سے ای ںیا فڈ اس کے پاس ضار ت کاکار وبا کیاسامانا مو جود م وکایاا ی نے سب کوفروشت کر کے نقدد رع نالیا 
ہوگااسی ے مصنفٗ اب رونوں صور تو ںک یآ یل بیان فرمار ہے ہیں )۔ 

وان علم بعزله الخ: گر کیل اپ حرو ہونے سے پاش ہو الہ اس کےا کاروباکاسباب موجود ہو اس 
کواتقار م وکاک اسباب بی ڈانے ا کے معنرول ہو ہا ےکی وجہ سے اس فر وخ کر ے می کو رکاوٹ تہ موک یکوک س 
و ا ی مکر نے کے بعد ہی معلوم ہوگااور ہے تی مکاکام اس اصل ما لکو مکح ءکرنے پر مو قوف ہے 
نی اس وقت ج بک کل مال نق بن جاے اور نظ نااسی وقت معلوم ہوگاجب اسباب فر وخر یکرو ہے پاد ( ف ای لے 
اما لکوفروش کر کے قز حا ص٥‏ کر ل کا خقیار ے۔ )قال ٹم لایجوز الخ:. ندر نے فرمایاہ کہ سامالن ت ڈالے کے 
بعر اس کے داموں ےکوکی دوس رک چ ز۶ بی نا جائز یں ےکی وککہ اس سے یل تک ا کو محرو لک دہیے کے باوجودااس یں 
اس معزد یکا ای لے ہواکہ اسباب کے کے مس اصمل ما لک بی ےک ضر درت ہے اور اب چ و سے ۔ کے بعد نظ پا تھ میں 
آجانے کے بعد ہے رورت بھی پوری م کی سے ار اب اسے حو لکرنا پاش رکلا ۓےگا۔ رف لئ 7 وا کے لے ال 
دوپار خر ید ناجا مان وگا)- ۱ 

وان عزلہ الخ:. او اکر بال کے اک نے اپنے مضارب لے کیام وک اسبا بکو کرس بکو نظ بنالیا ہو م 
اب ا کل مال نف ہے سامان ہیں ے توا یوت مضارب وا میں کسی مم ےر فکااخیار یں ےگا وگ محرو 
رت ان کا شار واا میدن ین ال کر کی ہو جا ہے فا ال سکیا 0 ورت کیں ے مصنف 
نے فرمایاے :کہ ا ب کک جو صور خی بیا نکی اتو کی ن جک ال تھی و زک مین مرد بارا سل ال ا 
سے م وکوک اکر اہیانہ ہو خلا .ال بی قود ینار تھ لین اب ا لک کہ در ہم موجود ہیں یا کے رحس میں مین لہ راس 


جن الد اے جد یر ۱ ۸۲ : بل نشم 
الال در عم تھے اور اب الن کے و ویار موجود ہیں و مضارب وا تس ابا با تکاا یا ےکہ وو موجودوف کو راس اکمالی کے 
ٹس کے عو فروش تکرے کی ھککہ اک صورت سے مع اہر ہوگااوراس عم می می نظ بھی اسباب کے تام مق نو یا۔ایا 
طرحاگر اصل کک مر جا اور مضار بت کے ما یل اساب اور ای طر عک یکو دوس ری جز موجود ہو تو بھی بی عم ہوک 
مشار ب کے مخز ہو چانے کے بادجوداسے اسیا بکوظ فر وش یکر نے یاموجو وق کواصمل پ ری کے کل کے سا بد نے 
کاانقیار بال ر گا 
ر7 :ار ر پال مال م جا یا این مضا بکو بر ططر فکردے: پرا ے ا سک خر 
ہوئی ہو یا فیس مول ہو ءانا تصرف بائی رک ےکا کن ہے ا نیں۔ اکر مقمار بکذاس وت 
بر طم فکیا ہو جب راس المال اصل حاات میس موجود ہو پا اے دوس ی کل مل بدل دیا 
ہوسا کی تفیل عم مکل ٠...‏ 
قال. واذا افترقا وفی المال دیون وقد ربح المضارب فيه اجبره الحاكم على اقتضاء الدیونء لانه بمنزلة 
الاجیر والربح کالاجر لەء وان لم یکن له ربح لم يلزمه الاقتضاءء لانه و كيل محض والمتبرع لا يجبر على ایفاء 
ما تبرع به ویقال له وکل رب المال فی الاقتضاء لان حقوق العقد ترجع الی العاقد فلابد من تو کیله وتو کله 
کیلا یضیع حقهء قال فى الجامع الصغیر يقال له احل مکان قوله وکل والمراد منه الوکالةء وعلی هذا سائر 
الوکالاتء والبیاع والسمسار یُجبران على التقاضى لانھما یعملان باجرة عادة. 
رجہ ۔ قدو ری نے فرمایا ےک اکر مضا ب اور مال ےکک دونوں یی ایی مضار بت کے معا کو مک کے کید ہو گے 
مالاکک مضا بہت کے زہمانے کے لوگوں بے قر با ہیں اور مضارب نے اس میں یع کک یکی ے فو اکم اس ضار بکوان 
قرضون کے تھے اور ولم چو کر ےگا کرک مضارف ایک فو یماج اون سے اض شر سی 
زور یکی مار ہے۔اوراگر شار کال شار بت مین ان ہواہ اس پر وگول سے خر ہکانقاضاک ازم نویل ہ کوک 
وواک صورت ئل اخْی مز و وت E‏ گی حقیت سے سے اور تاعەس کہ( لحان کے طور پر 
می کوک یکا مکرے فواسے ا کا مکی راک نے کے لے بر نمی ںکیاجاسکناہے )۔ 
ویقال له الخ لت ال مضارپ کو حا مکی طرف سے ہے عم دیاجاےگاکہ مقردضول سے تقاضا کے لئے ےر ب الما یکو 
کیل :از کوک جو کی اول تھا ی کے بات کر ےا ما کے سارے رق انا ان کے کی 
طرف او ے ہیں اپ زااسے وکیل ہناناادکالت قو کر ضر ورک ے جاکہ ماک کک ہن ضا نہ : .اور یع سیر میں ( وکیل منا 
E E‏ 
تام دوس رک وکاتوں میں کے جب ےکا وکیل تقاض کے سے ال رکردے تڑاسے تفاضا کر نے مر مجبور کیا جاے۔ لبت دہ 
وکیل ات موک کو اک بات کا وکیل یناد ےکہ اس کے ری ارول سے تھا غ ےکرے نحن اپپا ن وصو لکر کے . الہ ولال اور 
سار دونو لیکو ا بات پر بجو کیا ہا ےکک وہ مرو ضول ے تا ٹن ےک ری کی کہ موی ارت ہے س ےک ہے دونول آ اوی ات _ 
کمک ے ہیں اف ییالال سے دوس مراد چ سک وا ساب کے اک نے اماب فردش کر سے کے ےد سے دا 
ہو اور سار سے وو مراد ست ےکہ بن کے پاس مال نہ دیا وکر وہ زہافی طور پر اس کے لے خر یار لا یکر کے لا ئے۔ شا 
مر ےا ھکال نکی شر کا ہے تما کے لئے کول خریدارلا2۔ محال ے ہو چانے پر تم کد وپ ار روپے ٹل ا ا 


الد اے جد یر ۱ ۸۳ لر “م 
وع :اکر ر ب ال مال اور مشار ب دو نول بی مضرار ہت کے مواہر مکو کر 2 فان 7 
تفصییلں عم رو یل ولال اور سار کے ور میان رتی؟ 

قال وما هلك من مال المضاربة فهو من الربح دون رأس المالء لان الربح تابع وصرف الهلاك الى ما هو 
التبع اولى كما یصرف الهلاك الى العفو فى ال زكوةء فان زاد الهالك على الربح فلا ضمان على المضارب لانه 
امين» وان كانا يقتسمان الربح زالمضاربة بحالها ثم هلك المال بعضه او كله ترادا الربح حتی يستوفى رب 
المال راس المال لان قسمة الربح لا تصح قبل استيفاء راس المالء لانه هو الاصل وهذا بناء عليه وتبع لهء فاذا 
هلك ما فى يد المضارب امانة تبين ان ما استوفياه من راس المال فيضمن المضارب ما استوفاه لانه اخذہ لنفسه 
وما اخذه رب المال محسوب من راس ماله» واذا استوفی راس المال قان فضل شیء کان بینهما لانه ربح وان 
نقض فلا ضمان على المضارب لما بينا فلو اقتسما الربح وفسخا المضاربة ثم عقداها فهلك المال لم یترادا 
الربح الاولء لان المضاربة الاولی قد انتهت رالئانية عقد جدید فهلاك المال فى الٹانی لا يوجب انتقاض 
الاولء کمااذا دفع اليه مالا آخر. ٠‏ : 

ترجہ :قدو ری نے فرمایا کہ مضاربت کے مال میش سے اکر بھی بھ ضا ہو تو وہ ٹف مس سے صا بکیا ہا ے کان 
اص راس الال سے حساب نہ موک وکل الع ج یح اور راس المال ال ہو تا ے اس لئے ضائع ہو ن کو ای چ شش سے شا رکرن 
بترے جو تاع ہو جع اکہ زکو ا کے نصاب می کی ضا ہو ن ےکواس صے میں سے شا رکیا جا اے جو عفو ہو تی جن سکاشمار ہیں 
ہو اے۔ فان زاد الخ: .اور اگ تضاح ہواہو جو حاصل شرہ ف سے بھی زیادہ ہو نوزدل کے لے مضارب پر ہے تاوا کی 
یں ہکا کی کی لات دای ود ۱ 

وان کانا الخ:. او رار رب ال مال اور مقار ب دونو لک ہے عادت م کہ جقنا کی J‏ یتو الین مین سرپ 
کے ہو ںگگراصل مضا ر بت ای عالت بہار ٣‏ ہو اسک صورت ٹیل موجو روہال یل سے پیا سب ضائ گیا توا ی ونت 
تک وای کر ناہوگا یہا لت کہ رب اللا ل ای اصل پو گی ااس یں سے و صو ل کر ےک وک راس الما لکو یو را کے میں آنے سے 
پل ج کلف کو تی مک اج یں ہو جا ےکی کہ ران المالی ہے اور نے راس الما لکی ید پا کے تال ہو ہے اس لے جب 
وہمال مضارب کے پا لمات کے طور بر تھااور وو ضا ہ گیا و اس ونت ہے ظاہ رہوالہ اب رب تل کے پا ابات ےچ 
طور ےر تھااور وہ ضا م وگیا توا ی ونت یہ اہر داکہ ا ب تک رب الال اور ضار ب نے جو جج بھی وصو لکیاہے دواصل مال مل 
سے تھا لف امضار ب نے جو کے بھی و صو کیا ے وواب ال سکاذ مہ داراور ضا من ہہ وکاک وک ای نے رای اما لام حص ابی ذات 
س خر کیا اور ر ب الال نے ا بتک جو یھ و صو ليکیاتھادد سب ا :کے راس الال شی ار م وگ 

واذاستو فی الخ اورجب ب المال! لور یو ی وصول ار بھی یھ پر سے نوووان دونوںکا ضز زک حص ہو گا 
کی وکلہ ہے ٹف یش سے م وکا او راک اس ونت پو رک بو گی کے بو رامو نے یں پک ےکی ہو جائے فا کا ضار ب بے تادان لاز من ہ گا 
کوک اتن تھا فلو اقتیسما الخ اوراگردونوں نے ایح بھی آ یں یں بانٹ لیااور مار بت کے معاپرہکو رخ کک یکر دیا ای کے 
بعد دونوں نے دوپارہ مقار یت کا محاہد کیا بی رکا وبا رک کے ہو ے مال ضاخ ہ گیا قذ اب پل ٹف خکودائیں ئ سکیا ہا ےکا ن 
ل سے موجودءکی ری 21 کہ پہلا معاپرہ لو را ہد چک ے اور دوس امعاہر ایی تیا عامل ہے ال لے اس 
دوسرے مواہرے میں ما ل کاضاح ہو نا ا با کا تفاضا کر تا ےک پل موا رہ کے ساس میس جو یھ بال م +واتھااے فاد 
کے کے اا ضا کوک دو ال دا فی پک مال کے علادہکار ہار کے ےکوکی ووسر امال دیاہو تو سے معاہرہ 


یدای 3 27 
کا ارہ کی ٹوٹ گا۔ 
و :ار مضار بت کے مال یل سے ہے ضا ہو جا ار ایا ضا ہو اجو حا ل شدہ 
سے می زیادہ ہوء! رب المال اور مضار ب دونوں میں جال شرہ ا ا 
تی مکر لیخ ہوں اس صو ر رت ٹیل موجودومال ٹیس سے ٹہ یا سب ضا م گیا ہو ءاگمر رب 
مال اتی بو ری بو کی وصو لکر نے پھر بھی پتھ بی رے اکر دونوں مل طور سے اپا 
معاہرہ خ کر کے دوپارہ معا بر وکر > سیل ما ل بولا 5 4 
فصل فیما يفعله المضارب. قال ویجوز للمضارب ان یبیع ویشتری بالنقد واللسيئةء لان كل ذلك من 
صنيع التجارء فينتظمه اطلاق العقد» الا اذا باع الى اجل لا یبیع التجار اليه» لان له الامر العام المعروف بين 
الناس»ء ولهذا کان له ان یشتری دابة للرکوب ولیس له ان یشعری سفینة للرکوب وله ان یستکریھا اعتبارا 
لعادة التجارء وله ان يأذت لعبد المضاربة فى التجارة فى الرواية المشهورة لانه من صنیع التجار ولو باع بالنقد 
ثم اخر الٹمن جاز بالاجماع اما عندهما فلان الو كيل يملك ذلك فالمضارب اولى الا ان المضارب لا يضمن 
لان له ان یقایل ثم يبيع نسيئة ولا كذلك الو كيل لانه لا يملك ذلك واما عند ابی یوسف فلانه يملك الاقالة ثم 
البيع بالنسا بخلاف الو كيل لانه لا يملك الاقالة. 
ترج :ل ۔ ایسا کام جو مضار بک وکر ناجاتڑے۔ 
قال ویجوز الخ: دور ی نے فرمایا ےکہ مضا بک ہر رز نق اور ادھار خر یناور بین جا س ےکی لہ ہے سب تاجرول 
گی عاد ون شی سے ہیں ا لک اکر عق عفلق ہو تس میں ىہ اریپ س داح مو نکی ال اکر خضاررن نے بھی اھا کے 
کاروہار می تم سی جاتر تیو لک یی عمو اکا وہاری لوگ اتی ماخ یہ یں یج ہوں نواس کے لے مہ جائز نی موک کیرک 
ضار بکوا ی افو ںکااقیار ہو جاسے چول وگوں اور عام جاجروں میں مشہورومتروف مو لاک بناء یر مضا بکواپی سوا کیکاجانور 
خریدناجائز ہو گا لیا نکی خر دنا جائز فی ے۔ الہ ضرور ت پڑنے سے ںیک وکر سے پر لی کی از ت ہوک یکوک جار و کی 
عاات کہ وو پوت ضرور لفن یکراۓ پر لے ہیں اور شور روایت کے مطابن مضار بکز مہ اغتار ہو تا ےکلہ ضار ہت 
کے فلا مو یل سے مکی فلا مکو تار کہ ن ےکی اجاز ت دے د ےکی وک ىہ بھی جاج وکا طروت اور مول ہے ای ط رح اکر وہ 
یالکو یج وت تسمال کر کے پیا رک وا یکی ادا گی کے لے وقت دے دے لو ال جما چاے۔ ۱ 
اس صورت میں ر ن( ن ١ا‏ افو اور ایام ی کے نذد یک اجات ہو ےکا دجہ یے ب کہ .0 
اخقیار ہو تا ےمال نق کر نر ید رکوای رت یا بیشن مز ےو ارب لرپ ری ادل وا او کن مقار اور 
وکیل بیس انا فرقی ہو جا ےکہ مضارب ضا من نمی ہو کوک ضار بکوی اخقزار ہو تا ےکہ این کا ال ہک کے ویدار کے 
ا کے ارحار رے لین بج کے وکی لکواس با تکااخقیار کی ہو جا سے اورامام الولو سف کے نز ویک کے کے جا ہو نے وط 
77 ضار ب اقا کر کا ے اور دوہارہخر بدرار کے پا تجھ ادھار بی سک سے اس بناء مر مکی ادا گی میس بلت و ینا بھی چات 
ہوگامخلاف وکیل کےکہ دواقالہ می کر کے ۱ ۱ 
تو :۔ فعمل: مضار بکیاکا مکر سکتا ہے ؟ او رکیا ہی ںکرسکتا ے ؟ عيبل اقوال اش ء 
07 ۱ ۱ ۱ 


ین البد اے جد یھ ۵ چلر 


ولو احتال بالشمٰن على الایسر او الاعسر جازء لان الحوالة من عادة التجارء بخلاف الوصی يحتال بمال 
الیتیم حیث یعتبر فيه الانظر لان تصرفه مقید بشرط النظرء والاصل ان ما يفعله المضارب ثلائة انواعء نوع 
يملكه بمطلق المضاربة وهو ما يكون من باب المضاربة وتوابعها وهو ما ذكرنا ومن جملته الت وكيل بالبیع 
والشراء للحاجة اليه والارتهان والرهن لانه ايفاء واستيفاء والاجارۃ والاستیجار والايداع والابضاع 
والمسافرة على ما ذكرناه من قبلء ونو ع لا يملكه بمطلق العقد ويملكه اذا قيل له اعمل برأيك وهو ما يحتمل 
ان یلحق به فيلحق عند وجود الدلالة وذلك مثل دفع المال مضاربة او شركة الى غیرہء وخلط مال المضاربة 
بماله او بمال غيره لان رب المال رضى بشركته لا بشركة غيره وهو امر عارض لا يتوقف عليه التجارة فلا 
یدخل تحت مطلق العقدء ولكنه جهة فى التدمير فمن هذا الوجه يوافقه فيدخل فيه عند وجود الدالة وقوله اعمل 
برأيك دلالة على ذلكء ونو ع لا يملكه لا بمطلق العقد ولا بقوله اعمل برأيك الا ان ينص عليه رب المال وهو 
الاستدانة وهو ان يشترى بالدراهم والدنانير بعد ما اشتری برأس المال السلعة وما اشبه ذلك لانه يصير المال 
زائدا على ما انعقد عليه المضاربة فلا یرضی به ولا يشغل ذمته بالدين ولو اذن له رب المال بالاستدانة صار 
المشترى بينهما نصفين بمنزلة شركة الوجوہء واخذ السفاتج» لانه نوع من الاستدانة وكذا اعطاؤها لانه 
اقراض والعتق بمال وبغير مال والكتابة لانه ليس بتجارۃ والاقراض والهبة والصدقة لانه تبر ع محض. 
ترجمہ :او اکر ضار ب نے اپ مالی کے ن (دام )کوک غر یب یاک مالا کے ذمہ (حوالہ )کرو ےی کو قبو کر لی تو 
چائز موک کوک اپ حوال ہکوقبو لکر نا کی کار وہا رلو لکی عاذت می سے ہے۔ ملاف و می کےکہ اگ کسی و ی ےکی کم کے 
مال کے حوالہکوقو لکیاہ توا ی میں دیکھا چا ےک ای اکر نا یم کے مق میں بتر کے نہیں ؟ ن :روہ تنس چو مقرو ہو 
۱ اس کے متا لے یس وہ شع زیادووال دار ہو یں کے ذمہ قر ہوا ےکیاگمیاہو فدہ چا کر م وگ اک کہ وی کی ولا یت اور اخقیار س 
ایک شر ط ہے س کہ دوج اھ کک یکر سے دہ پت ری کے سا ت ہو۔ والاصل ان الخ: .ال چلہ ایک تاعدہکلیہ ےکہ مضا ب کا م 
کر تا وو تن عم کے ہو تے ہیں بر ایک دوکام ج کا کک ہو جا ہے( ”ت مضاربت سے ر کے سے )یکم ایے بہوتے 
ہیں جو مضا ب تکی حم سے اور اس کے ج ہو تے ہیں اور ما کا مو ںکو یل بیان کک یکر کے ہیں ملا نظ بنا ادھار ینا اس 
طر مضارہت کے فلا مک وکار وبا رکی از ت د یناور ر مکی وصول میس ہلت د یناد ر کو صو یکودوصرے کے حوال کرد یناور ۱ 
اٹ می سے نریدوفردشت کے ےک یکو کیل ینان بھی س ےکی وکل ا یکی ضرورے ہو ی ے۔ ای طر کی ما لکور ہکن پنیا 
ر ہن د ین اک وک ہے دوٹوں پا س اواکر نے اور و صو کر نے کے می بی ہیں اک طر 20 رکا جا رہ اور اجار مر د ناء امامت 
رکا کار ہار کے لے ماما د تادر بال کے سا تھے سف رکر ناء یہ س بکام ا لیے ہیں ج کی ضر ورت ہو نیز جتی سے ای فصییل سے 
سا تھ جم نے پیل ال نکر دک اہے۔ کت 
ونوع لایملکه الخ:.اوردوس کی کم میس وہافعال یں نک ملق عقد سے مالک کی ہو جا سے بک اس وقت مالک ہو ج 
س کہ جب ی کہ دا جا ےک ایی مر ی س ےکا مکرواوراس م میس ووافوال ہیں جو موی مم کے سا تح مل کے ہیں۔ لاک 
کو لی ولا لت وہل موجود ہو توان افیا لیکو بی سم میں خا م کر دیا ہا ےگا لا : رب الال وی ک ہک تم انی مر سی س ےکا مکرو۔ 
ان انوا ل کی مال ىہ ےک کی دو سے کو مضار بت یش رکت ب مال د مایا مضمار ہت کے ما لکو اپ مال یاد وسرے کے بال 
سے مان کیو تک ما یکا ماانک ایک کے سا تھے ش رکم نکر نے بر رای وکیا تھا نان دوصرے کے سا تد رای نیش م وگااور چ وک ہے 
ایک ڑا کد بات سے اس ط رح سے اص پر مضمار ب یک تھا رت مو قوف یں ہو لی ے اس لئ اہی ےکام ملق مضاربت کے من 
یش واغ لت ہو گے۔ مین مال بڑھانے کے ط ر لتوں یس سے ایک طر یہ ہے بھی ے اس لی مہ کی عقر مضا ہت ہے موان 


کالہ اے جد یڑ ۸۲ لر نشم 
ہے۔ اس ناء یرگ کول و لا لت ال چک موجودہوگی اوی کام کی اس عقر یس را قل ہو جاٹیں کےا و لالت کے لئ رتبا مال 
کا ےکہناکان ےکہ این می ےکا کرو ۱ ۱ 

ونوع لایملک الخ اور تی رکی کم یس ارےے افعال ہیں جن نکانہ تو ن عقر سے مالک ہو جا ہے اور تی رب امال کے اس 
نے ےک تم ایم ی س ےکا مک رلو۔ الہ اس صو د ت میں ماک ہو جا اے چ بک رب البال ا کا مو کو ص راح کے سا تج 
انکر دے۔النکا مول سے ای ےکا ادھار لیناے۔ کی صو رت یہ موک کہ اصل بو کی کے بد نے مال داسباب نر یر لیے 
کے بعد ید در م ود ینار یاان کے کی ےم کیدزن چ کے عو خر یرے۔ ق نف یں یکلہ اداد اس مم کی خ یداد یکاکام 
رب الما لکی تر کے !خی ہا مل س ےکی وک یت مال سے مضار ب یکا معا مل ہے بہواتااس سے اب راد مو رپا ے اس لے 
بہت ن ہے رب امال اس ذیادی پرا ینہ ہو اور انا ھے زار قر بڑھانے مر کی رایت ہاو راک رب المالی نے اسے 
ااعار مال لن کی اجازت د ےدک مو تج زا ی وت ادہار خر ید یی دہ مضار ہت کے مال سے نیس بل رت الوجوہ کے گم 
یس ہے شی د مال با ال کی آ لی رب الال اور ای مضا ب کے در میان لصف تصف گی اور ایک عم سے تہ یلاک کہ 
ای رع سے تھی ایک عر ادھار لین ہو جا ہے اک طر چ دہ ناک وک ہے کی قر دی ےکی یک صورت ے۔ تس رک چ 
الک عو ض با پیر مال کے فلا مکو آزادکر نا ہے ]شی مضمار بت کے لا مو میں ےکی خلا مکو اس سے مال لیر ابی مال کے مف 
یس آزادکرد یناہے۔ چو یج فلا مکومکانب بنانا ےکی کہ ام ےکا مکاردبار ک ےکا مول یں غار نی ہوتے ہیں۔ مب بانچ رض 
دیا ہر چ چب کنا ہر سات صد ےک کی وتک مہ سار ےکام مک یکر نے کے ہیں۔لاف۔ اس م کے سار ےکام ایی ہیں جک 
۱ ضار بک وکر تارب الما لکی تقر بجی کے بی ہا یں سے )۔ : ۱ 
قح :۔اگر مضارب اپ مالی کے دا مک وکیا دوسرے کے ذمہ کاو کو قبو لکر لے۔ 
لے مو کے وور ہنم اصصول ج ہاں بیان کے گے ا نکی نیل مع منالل مسا لیک 


تسیل تم ,ریل 

(سفاع۔ چ کی ہج ے۔ ایک نا مکی کا نام ے۔ سک صورت ہے ن ےک زیر وکر جودوٹول ایی شر میں موجود 
یں ان مس سے زی کول سامالن کد ر ے خر ہے۔ زیداس سام کوان لہ پر سے ہو ےکر کے پا کے فروخ کر تا ہے 
اور بر اس کے عو اپٹا ابا اے نقد ا کی ونت دید یتاے۔ ای ط ر ے کرک او و کہ ای شر س اس اا نکی 
لے رورت ی او ووا کی د کی فال ریہ ی لگ اوت ھل کے ی عت ازز ے کی د چ زی کو 
ا کی ضرور تک چڑ بوتت ل ا ے(انوار ان ت ک) 

قال ولا يزوج عبدا ولا امة من مال المضاربة وعن ابی يوسف انه يزوج الامة لانه من باب الاکتساب الا : 
تری انه يستفيد به المهر وسقوط النفقة. ولهما انه ليس بتجارة والعقد لا يتضمن الا التو كيل بالتجارةء وصار 
كالكتابة والاعتاق على مال لانه اکستاب وما لا يكون تجارة لا يدخل تحت المضاربة فكذا هذا. قال فان دفع 
شيئا من مال المضاربة الى رب المال بضاعة فاشترى رب المال فباع فهو على المضاربة وقال زفر فسد 
المضاربة لان رب المال متصرف فی مال نفسه فلا يصلح وكيلا فيه فيصير مستردا ولهذا لایصح اذا شرط 
العمل عليه ابتداءء ولنا ان التخلية فيه قد تمت وصار التصرف حقا للمضارب» فیصلح رب المال و كيلا عنه فی 
التصرف والابضاع توكيل منه فلا يكون استرداد بخلاف شرط العمل عليه فى الابتداء لانه يمنع التخلية 
وبخلاف ما اذا دفع المال الى رب المال مضاربة حيث لا يصح لان المضاربة ينعقد شر كة على مال رب المال 


مین البد اب جدیھ N ٠‏ جلد ہنم 
وعمل المضارب ولا مال ههنا للمضارب فلو جوزناه يؤدى الى قلب الموضوع واذا لم يصح بقی عمل رب 
المال بامر المضارب فلا یبطل به المضاربة الاولی. ٠‏ 
برجم :۔ فدور نے ریا ے :کہ اور مضار بکو یہ اظتار نیں ‏ کے مضاربت کے مال سے یړ ے ہو ےکی فلا میا 

٦‏ کیک نار ںحفک۷رائۓے۔ یلام کاک نے یا اجازت دے اورا سس بان گا اودوصر ے کے نیا یں دے۔ اور امام ا اواو سے 
(نوادرٹش ایک ردایت س کہ با نک یکو مہ کے عو دوسرے کے کاب یں دے سکم ےکی وکل ہے کی آآعدٹ یک ایک صورت 
سے کیا م ہے یں وب کہ ایی اکر نے سے مضمار ب کو اس سے رما ل ہوگا؟ اور ا کو فق دی سے ئل چا ۓےگا؟اور ایام 
ابو نیف و کی د کل ہے ےکہ ہے سب مقیقت می کاروبار نیل ے البتہ ہے زی مان ی ہیں اور مضار ب تکامعامل ہک یکو وکیل 
بنانے کے سواکار پاد ک ےکی بھی ط ریت یس شائل نیس ہے اس ےکی بان یکا کا نکر لیا وگا کے مقار ہت یفام 
کو مکاتب بنانایا ا لکومالی کے بد نے میں ازا کر تاس ےکی وک ای ط رح سے بھی فو مال جال مو جا ہے مین یہ طب کار وبارش 
ے یں تھے اس لئ ا کو مضراربت میں داشل نی ںکیامگیا۔ ای طر سی بان یکا ہیا حکر نا بھی مضا یت کے ام یں سے 
یں ے۔ ۱ 
قال فان دفع الخ: .امام نے فرمایا ےک اکر مضارہت کے ال می ےکی بال مر مضارب ےا ےرب لاا لکواں 
نز کے کاردہار کے لئے ویاو رای نے انس مال سے یج ماما نکو خر بیدااور ففروخ کیا تو ىہ بھی ضار مت کے جم یں وک اور ام 
زر فرملیاے :کہ ایی اک نے سے مضارہت فاد ہو ہا ےکی ای لئ اکر معاےے کے ابتدا ہی ٹس رب الال کے ڈے اہےے 
کا مک ےک شر اوک جاے فو مضار بتک نمی ہوکی ہے۔ اور ہد یلیل ہے س کہ رب المال نے مل طر ہے سے ابناای 
مغارب کے جوا ےکر دیاسہے اس میں تصر فک رن ےکا مضاد بکو بو را تن حاصل ہوگیاے لب ارب المال کے مارب کی 
طرف سے اس مال میں تر فکر ن ےکا وکیل ہو کے اور ای طر مال د ینا کی اس مضار بکی رف سے وکیل ہنانا ہوااس 
لئے ایی ےککاروبار کے لے مال د سے سے مہ بات لازم فیس کیا ہ کہ دب امال نے ا د سے ہو سے مال ٹس سے بک مال وای 
نے لیا و۔اس کے بر فلا فار مضارب نے شر وی شی رب الال کے ڈ ےکا مک ےکی رط لادک ہو وودمضید ہہ ےکیوکلہ 
ایم مال لے طور یر مضارب کے اخحتیارٹش یں 1ر ل 
1 لن بعد یں کاروہار کے ےد ینا جاتڑہے۔ ای کے ب فلا فاگ رھ مال ر ب الما لکو مشار ہت کے لے دبا تج کس ہوگا 
کی وک اکر ہے مضار بت جح ہو جائے توا یکی سورت ش رکم تک ہ وگ یکہ مال وا ےکی طرف سے مال ے اور مضار بک طرف 
سکام سے عالاکلہ موجودہ صو ر رٹ بیل مضا ب کی دی ہے جو رب امال سے یہ یہی مضار بکی طرف سے مال یج بھی 
ٹٹیں جا بآ رای مضار ب کو ہم چا یں وہ لاز مآ ےکک مضا ہ کو کی مع کے لئے دض کیاکی ہے دوالٹ جائے 
عالاککہ ای ےکر نا جع نیل ہے۔اورجب ہے مضار بت تج کی ہو گی تور ب الما کاب ہکا مک ناحضار ہت کے طور پر یں ہبہ 
مضارب کے عم سے ہ وگواوراس طرع بی مضا ہت ہا نہ ہوگی۔ 

و : کیا مضار بکویہ فی س کہ مضار بت کے مال میں سے این لام با با یکا کاں 

کن ار مضمارب کے ال الا الا لک ھی کاروپار کے لے دے 

کا ی کل ۴ توال فا ےکر امم ءد لا تل 

قال. واذا عمل المضارب فى المصر فلیست نفقته فى المالء وان سافر فطعامه وشرابه وكسوته وركوبه 

ومعناه شراء وکراء فى المال. ووجه الفرق ان النفقة تجب بازاء الاحتباس كنفقة القاضى ونفقة المرأة 


ما ن‌البد اے ہیر ` یی لر بش 
والمضارب فى المصر ساكن بالسکنی الاصلى واذا سافر صار محبوسا بالمضاربة فيستحق النفقة فيه وهذا 
بخلاف الاجیر لانه یستحق البدل لا محالة فلا یتضرر بالافاق من مالهء اما المضارب فليس له الا الربح وهو فی 

حيز التردد فلو انفق من ماله يتضرر به وبخلاف المضاربة الفاسدة لانه اجیر وبخلاف البضاعة لانه متبرع. 

7 جمہ :۔امام سے فرمایا کہ اکر مضا ب نے اپنے شمر کا مکیا نذا کا( غر ری کھاے پیٹ د تیر ہکا) مضا بت کے مال 
یس سے نی ہوک اور اکر اس نے رب الما لکی اجازت سے س رکیا تو اس کے ضرو ری لوازمات لڑیکھان تا کپٹرااور سوا ری 
مار بت کے بان سے مول گے خواہ خی ھکر ہو اکر ائۓ سے موان دو ول میں فرق ے7 آدہی کا حر لفق اس کے رو کے 
جانے کے ۶و ہو سے کے :کہ ایک تا ی چ وک او وگول ےکا موں میس مشخول ہو ج ے اس لے ا کا ففقہ ہہت الال ے دی 
جا جاے اور یی : یوک ای شو ہر کے 7 یں اور اک کے تہ میس ہوٹی ے توا ںکاخرچہ کیا کے شوہر کے مہ ہت ے۔ 
اک طزرںع مضار ب چ بک اینے شیر شل ر چتاے ڈوو صلی الت اور سکوی کے ا ےو ر ا ارت 
ےکام یس مخفو لر بتاہے اس لئے دہ مضا ب کے مال سے نخق کا تن مواد ی اھر( طا )کے خلاف ہ کی وکلہ دواییے 
نفتوں کا ن نہیں ہوجے اکر چ دوس کر ےکی وکمہ ابر وای حت کے عوض بھی خنوا وکا و ا لے اال 
سے نف نکر نے میں مخقصاان یل یر بت اہے ہلان مضمارب کے لئے اس کے ہے ھا سل خد نع کے سوا یھ یں ہو او بھی 
ایا بھی ہو کاس ےک نف لکل نہ م وکوک یہ ایک اخالی یز ے اس لئ اکر دوذائی بال سے خر کر ےکا ھا یل در ےکا ہے 
سیل مایت مہ کے پاز نے مین سے لاف مار بت فاسد ہک ےک ان شارب کی صرف ای کے عم یس ہو جا 
نی دای من ت کا بدرلہ تھی یا ۓگا ادو سر سے لوگ اس چپ کے ہیں ن اج شل اس میں اے وان ہو اور خلاف 
بضاعت ک ےک ای اک نوالا احا ار تاے۔ 

وج ۵ ن ان 
کیا تقو ہو سے ہیںء مضار بت کی اور فاسدہ کے حقو سکیا فر ہو جا ہے مسا کی 


تقعبیل, عم ,اتل 


قال: ولو بقی شیء فی يده بعد ما قدم مصره رده فى للضاربة لانتهاء الاستحقاق ولو کان خروجه دون 
السفر ان, كان بحيث يغدو ثم يروح فيبيت باهله فهو بمنزلة السوقی فی المصر وان کان بحيث لا یبیت باهله 
فنفقته فی مال المضاربةء لان خروجه للمضاربة والنفقة هى ما یصرف الى الحاجة الراتبة وهو ما ذكرناء ومن 
جملة ذلك غسل ثيابه واجرة اجیر يخدمه وعلف دابة ير كبها والدهن فى موضع یحتاج اليه عادة كالحجاز 
وانما يُطلق فى جميع ذلك بالمعروف حتى يضمن الفضل ان جاوزہ اعتبارا للمتعارف فيما بين التجار» واما 
الدواء ففى ماله فى ظاهر الروایة وعن ابی حنيفة انه یدخل فى النفقة لانه لاصلاح بدنه» ولا يتمكن من التجارة 
الا به فصار كالنفقةء > وجه الظاهر ان الحاجة الى النفقة معلومة الوقوع والى الدواء بعارض المرضء ولهذا 
كانت نفقة المرأة على الزوج ودواؤها فى مالها. 

ظا اور اکر ہے شر دن ےس ت ا ات2 :وراک تو اب ا یکو 
فالغ ا ےک ار کے ال ین غل ےک ا ای وکیا او از وی ےکم داز 
گی مسافت گیا ہو ی ن رات اور تن داع س ےک سفر ہو دید یھ جا ےک اکر وہس کوک کر شا مکوا سی کر یں وای کر 
اتا سے فذ ىہ سفرایائی ھا جا ےگا جیما :کہ ابنے شب کے باارول می ہو ہا ہے او راک رایام وک کو کک لکر رات کے وت 


اداي دير ٠.‏ ۸9 جل اخ 
وائیں اکر اپ کرس ہیں رہ کا ے نوا یکا نفقہ مضا ہت کے مال سے م وگ کی وت ا کے سر اور باہ رر ہنا مضمار بت اك 
واسلے ےا چ تفت سے م رادو تام میں ہیں جور وز مر ہک عام ضر ور تڑں میں استعا لکی ا ہی اور می دہ چرس ہیں ج ہم 
نے لوب ییا نکر دک ہیں اود انی ول یش ےکی ڑو کید ھا کی اور خر مم کر نے وانے ملا مکی مز دور کی اور سوا ری کے چانو رکا 
دائ پار ہاور جن علا توں شی تل ہن یس گان ےکا ا متا ل کیا جا اہ وہا لک تل کے :مک چا کہ دا سراد بدلنئیس تل کے 
کی ضرورت ہوک ے تہ سب چ زی ای کے نفقہ یں دا فل ہوںگی_ ۱ 0" 
ران تام چ وں یش یج کے ے مضا بکو اتی ی اجازت موی تا عمومااستعا کیا جات ہو سن امراف کے !ر 
صب ضرورت خر جکر سے۱ اک بنا اکر ماج و کی موی مارت ے بڑ ھکر اور زیادہ خر کیا تون شل خر کاو +ضاشین 
ہوگاءاور لایخ کے ے دو اکا ۶ ر نو وہ اہر الر وای J‏ مضار ب کے مال می سے م رگا یکن امام ابو ع سے روایت ے 
کہ دوا لکی تمت بھی ففقہ مٹش سے شار ہگ یک وکل ہے دوااور علاع بد کی طفاظت کے لے سے ج بکہ بد نکیا حناظت اور 
اصلاع کے !خی وو تارت خی ںکر سکیا ے تو ہے دوا بھی فت کے کم میں ہ گی اس چ اہر الروای کیا کہ بن کہ دی 
ضرور کا ہون ام اور معلوم بات سے لین دواکی شرو کا ونام ملک کی وچ سے ہے میق یر کی بی مون سے اور بھی 
ٹیس ہولی ہے بجی دج ےکہ یو یکا تفق اکر چ رای کے وہر کے مہ ہما ہے کن ا لکاعلاعاوردواکاخر اس کے اپنے مال 
یش سے ہو تاسے۔ 
و :۔ مضارب اپنے س رکی بدت یں فقہ اور ضر ور کی سامان خر کر نے کے بعد بھی 
جب اپنے شمر وای نے آی نوا ے کیا اکر ناچا سے »ار ایک فیس سر میں اح دور چاتا 
کہ در انت کے وشت ا ےگ میں بی تیا مک کت موہ کر کا مو تو مضار بک وکس انداز 
اور یاب سے تفت استعال میں لای ہے تفحھیل مکل گم اختاف اض برعل ` ٠‏ 
قال: واذا ربح اخذ رب المال ما انفق من رأس المال فان باع المتاع مرابحة حسب ما انفق على المتاع 
من الحملان ونحوه ولا يحتسب ما انفق على نفسه لان العرف جار بالحاق الاول دون الٹانی ولان الاول 
يوجب زيادة فى المالية بزيادة القيمة والثانى لا يوجبها. قال: فان كان معه الف فاشترى بها ثيابا فقصرھا او ٠‏ 
حملها بمائة من عنده وقد قيل له اعمل برأيك فهو متطوع لانه استدانة على رب المال فلا ينتظمه هذا المقال 
على مامرء وان صبغها احمر فهو شریك بما زاد الصبغ فیھا ولا يضمن لانه عین مال قائم به حتی اذا بیع کان له 
حصة الصبغ وحصة الثوب الابيض على المضاربة بخلاف القصارة والحمل لانه ليس بعين مال قائم به ولهذا 
اذا فعله الغاصب ضاع عمله ولا يضيع اذا صبغ المغصوب واذا صار شريكا بالصبغ انتظمه قوله اعمل برايك 
انتظامه الخلط فلا يضميه. 
تر جمہ :امام نے رمیا کہ جب مضا ب نے مال مضار بت می لٹ کال توا نے راس الال شی سے اپ تفقہ یس 
جو یھ خر کیاسے رب المال اا کو مضارب سے ےکر پیل اپے راس الما لکو پور اھر ے کاب ا کو ی کے کد اکر 
مفارب نے این ففقہ یش خر کر نے کے بعد اا کو م ر اہک بر روخ تک نا پاب وای نے اس سامان کے ل و کت اور ان 
یی ضرور یکا موں میس جو بھی خر جکیا ہو وہ ا ل ر م میس شا یکر نے کن ل وکو لے ہے کک کہ کے ہے چ ڑاۓے م ڑکیا سے 
کن جو انی ذات میں خری کیا سے ا کو ای اب میس شائل کر س ےکی کہ عام د داجیا کہ سامان بر چک خر کیا ہا 
ہے وو سب اصل خر کیاجا تاے لین جھبھھ انی ذات پر خر کیاجا تا ہے ء دوشائل کی سلکیاجاتا سے اور ایک دل ہے بھی ےکہ 


لن البد اے جد یر 8۰ ۱ بلر تشم 
اما نکا خر مان سے چ رک ایت اھ جال کناچا غر لانے ےالیت نہیں بڑ ق ے۔ 
قال : فان کان اللخ امام مر نےفر مایا کہ اکر مضا ب کے پاک راد در ہم مول ان در مول سے اس تن ےکیٹ ےکا تا 
ی ھک اپنے پا سے ودر ہم دے کاک ب کڈ حا ی اکا مکیایی ر ف سے مر کر کے تایا اوا یس تھے نے آیاج بکہ اب 
امال نے اس سے کہ دیاتھاکہ تم فی م میا ےکم کرو تووہ تن اپنے سودر ہم کے خر کر نے مس اح نکر نے والاے 
عق اس خر خکووورب المال سے وای یں نے سک سے ا رن اث الال 2 عار کر نالاوم تا ہے ای 
ای سے پیل ربا مال نے یمم یا جاز ت دی تی اس شی یہ خر شال نہ ہوگاا لکواب کر سے کے لے ض ری تھا 
کہ رب الال ا لک تھ اکر دیتاکہ تم یہ سب کا م یکر کے ہو جیما :کہ لے میا نکیاگیا۔ 
وان صبغها احمر الخ اورا ضار نے 7 رل ر ےک وتان ون مت س 
ی زی دن ہو اس میس مضارب اب رب الما لکاش ریک ہوگاادر ضا کن تہ م وکاک وتک رنک ایی مال کی ہے الیامال کد ہے ج 
کپپڑے کے سا تھ موجود سپ کی نل برای گی ہیرس ےکو یی سے مضار بکورنک کے جح کی کی ر ت اا ہے اور سفی ہکپڑے 
کے دا کیا حصہ بھی مضاریت ب ہوگا لاف کا ےکم ا کے ادر ادر لانے نے جانے کے ی کے 
E‏ ستل ما لک حت ے یر چتااسی ےا اک کوک ی نامب ایام کے تو ا لکاکام بر پاد جات ےگاء 
کک ےکپ ےکو لال ریک رگن سے اکا کام ضا یں م وگااور جب مضا ب نے ا یڑ ےکور گوایی لی تو 
ال دیک کے ا ت ہے ماد ب 1ے دب الما ل کاش یی م وکیا کی وک رب الما کا مہ بل ہک اب ت ابی می س ےکا مکر وای 
کے ملانے کے اتام کوشا ل ہوگا نوو مضمر بت کے با لیکواپ مال سے ما سکتا ہے ای لے وو ضا کی یں ہوگا۔ 
او :۔ مضارب ابی ضار ہت سے کا کے کارب امال ال کے ایا سر فق 
وره کے اخراجا تکواصل ر تم میں شا رکرسکنا سے یا غہیں۔ اکر مضا ب اپنے ساا کو 
مراک ینا اے فو اس میس س ےک کن اغ اہا تکو بھی شا لکر سکم ہے ؟ یہار مضا ہت 
یکل ر م سے سامان ری کرس میں جیب سے مھ ی کچھ زا کر خر کر ڈانے با لال رگ 
سے نگ دے اکپٹڑے پر زر روز یکاک مکرالے اگل رٹم یش اے شا لک رسکماے یا 


یں ما لک ی تفصیل ,عم ربیل 

فصل آخر: قال: فان کان معه الف بالنصف فاشتری بها برا فباعه بالفین واشتری بالالفین عبدا فلم 
ينقدهما حتى ضاعا یغرم رب المال الفا وخمسمائة والمضارب خمسمائة ويكون ربع العبد للمضارب وثلاثة 
ارباعه على المضاربةء قال هذا الذى ذکرہ حاصل الجواب» لان الثمن كله على المضارب اذ هو العاقد الا ان 
له حق الرجوع على رب المال بالف وخمسمائة على ما نبين فيكون عليه فى الآخرةء ووجهه انه لما نضٗ المال 
ا ظهر الربحء وهو خمسمائة فاذا اشترى بالالفين عبدا صار مشتريا ربعه لنفسه وثلاثة ارباعه للمضاربة على 
حسب انقسام الالفین واذا ضاعت الالفان وجب:عليه الئمن لما بيناه وله الرجوع بغلائة ارباع الثمن على رب 
المال لانه وكيل من جهته فيه ویخرج نصیب المضارب وهو الربع من المضاربة لانه مضمون عليه ومال 
المضاربة امانة وبينهما منافاة ويبقى ثلاثة اربع العبد على المضاربة لانة لیس فيه ما ینافی المضاربةء ویکون 
رأس المال الفين وخحمسمائة لانه دفعه مرة الفا ومرة الفا وخمس مائة ولا يبيعه مرابحة الا على الالفين لانه 


کل الداے جدیر ۹ : ۱ جلر 2 


اشتراه بالفين ويظهر ذلك فيما اذا بيع العبد باربعة آلاف فحصة المضاربة ثلاثة آلاف يرفع رأس المال ويبقئ 
خمسمائة ربحا بينهما. . ۱ 


دور ی ل مضارت کے فرت سال 

تمہ :۔امام نے فرمایاہ ےک اکر مضا ب کے پاس مضاربت کے لے نصف کی شرط پ رار در ہم تے اور ای نے 
بوک لو ھی سے کپ ےکی و ہکا کودو پ رازو ر عم یل روخ تکردیا۔ل(جٹس سے اسے ایگ بنا ر ىف ما اور ا یکا 
نمف ی با مود ر ہم نا اس مضا ب کے جے کے ہد سے ) راک نے سے دوہراد در ہم سے ایک غلام خر پرا کان بھی 
تک ی در ا یں یں دے ‏ کا تھا ا ووب ا ےا یلج رب المال ڈیڑھ چ رار اور یہ خود مضار ب ات پا سوان ٹل 
لاک غلا م کے ایک می با واد اکر ےگااور وہ غلا م ان دونوں بیس شت رک ہوگا اس ط رع سس ےکہ ای کے ٹن سے تارب الال 
اور ایی چو تھا یکابہ مضا ب مالک ہ وگال مصنف نے فر مایا کہ ایام نے جائ صن رمیا عم جو بیان فرمیاے وو خلاصہ جواب ۱ 
کی کہ ال سکیا لو رر رکذم دار یقت می وہ مضارب بی ےکی وک وی شف موایلہ ن فلا مکو خر یر نے والا سے لین 
مار بوا سے رب امال سے الناڈ یڑ پر ار در ہم تک والٹیس لی ےکا بھی لے ے ہم با نکر دی کے اہن آخر میں ا سک رٹم 
رب الال ی کے ذمہ تین چو تال وجب ہوگی۔ _ ٰ : ۲ 

ال کو چہ بن چکلہ جب إو ر اماما ند سے جانے کے بعد نفد در م سے بد ل گیا توا ںیک ٹف اہر م وھاش رح سے اس 
ممل سے پا پا سودد ہم دوفو کے ہیں بی جب اس نے دوفو ب رار گے عو ایک غلام خر یراگدای نے غلا مکاایی چو تیا 
حصہ تو خوداجے لے اور ین چو تاق مغاربت کے لے ہوا جا ال دوٹول کے در مان ال ظاہر وااورجب دوتول 
نارود تم ضا ہو گے توا مضارب کے ذمہ ا کی ر آم لام آک یک کہ معالم کر نے والا تو می ہے کین اس کے رب الال 
ےاے ین وتال ر م وای لیے کا بھی من ہواکی وکل تین چو تا ٹس اب اپنے رب الما لکی طرف سے و ے اور 
ضار ب کا حص جوا سکااپناہو ان چو تھا فلا م مضار بت کے معاللہ سے ار ہو گا مہ وہای مضار بت کے ذمہ مات کے 
طور پر ہے اور ضار بت کا مال الس کے پا الات کے طور پر سے ج بک مال مات اور امات میں منافات سے ن بت بڑافری 
ے اور لن چو تیا فلم دونول کے دضیان مضار ہت کے طور بر ھگ کی وکلہ ان تین چو تھاکی ر تم وای لین ےکا کی ن ہو اک کہ 
تمن چ تھائی مل اب اپنے رب الما لکی رف سے وکیل ہے اور ضار ب تکاحصہ جوا کاپ موان چو تھا فلا م ضار بت کے 
موایلہ سے خیاررح کک وک وواک مضارب کے مہ ضیانت کے طور ہے اور مضار ب کا مال اس کے پا ی امات کے طوربرے 
ج بک بال یات اور ابات مل متا نات ے۔ 4 

یی بت بذافرقی ے اور تین چو ھائی لام دونوں کے در میان مضمار بہت کے طور یر وگ یاکی وکمہ ان تن چو تیا کے پارے 
یش مضار یت کے غلا کول بات نمی پا ی اور اب راس امال ایک برا کے جا ڈیڈ پاد م وگ اک وکل رب الما نے 
کر چ کی مر یہ ایک راد در ہم د سے کر دوس رک مر یہ ڈ یھ زار در م د سے پچ راہ مضا ب اس غلا مکو مرانہ تی پر 
فروض تک نا چڑے ووو دوہ زار در ہم پر روخ یکر سکم ےکی وکل اس نے دوہ رار سے بی خر ید اے۔ اس نفصبیل کے سا ت بیان 
کر ےکا غاد وای وقت ظاہر م وگاج بک ہے غلا ماحد یل چاد ہر ارد د جم سے فروخ تکیاجاۓ تا کاچ تا تصہ یں ایک زار 
در ہم ا مضارب کے اور بات یراد در تم مضار بت کے با ر ہیں گے ہن یش سے دو ہز اد پاچ سودر م راس الال کے نا یکر 
پا ودد جم النادوفوں میں لٹ کے وب برابر ش کیک ہوگا۔ ۱ 

و :ار مضارب کے پاس مفمارہت کے لے صف کش کی شرط میں رار در م ے۔ 


کم المد اي جد یڑ .۰ 7۔ 
رت ےت میں دے کا تھا ْ 
کہ سب چو رک ہو کے ستل ےکی لور ینیل ء عم ءا قوال اہ ول کل 


قال: وان کان معه الف فاشتری رب المال عبدا بخمس مائة وباعه اياه بالف فانه يبيعه مرابحة على 
خمسمائة لان هذا البیع مقضی بجوازه لتغاير المقاصد دفعا للحاجةء وان كان بيع ملكه بملكه الا ان فيه شبهة 
العدم ومبنى المرابحة على الامانة والاحتراز عن شبهة الخيانة فاعتبر اقل الٹمئینء ولو اشتری المضارب عبدا 
بالف وباعه من رب المال بالف ومائتین باعه مرابحة بالف ومائة لانه اعتبر عدما فى حق نصف الربح وهو 
نصیب رب المال وقد مر فى البيوءع. 
رھ : a E OEE E‏ اہ صن 
سے ایِک فلام فرب دک اس مضارب کے اتھ ایک بنراردر ہم سے فروخ تک دیل عضا ب ال غلا کہ پر یچ ہو سے فق 
پاچ سودر مش ڈ فر وخ ت کر ےگا۔(ف ن ا سک ل تمت ہز اد دد ہمہ ےکی کک ا نے چ زار دد م سے بی نے یلد اہے جن 
گر فرش کیا جال کہ سو ٹیل دس درک راو اس رے بر اردد جم بر حاب میں یں لابا جا ےک بک صرف باب سو 
در پمیر صا بکیاجاۓےگااس طر دس تید کے حاب سے ہار کے پیا لد ہم نف کے ہو ئے ہیدہ ایک جار اور اس 
در ہم کے صاب سے فروخت ہوا )لان ھذالبیع الخ: .کی وتک رب الما لکاابنامضارب کے پا تج یں پیناکر چ ابی صلی تکو 
ا سے بی مال کے ۶وش چنا لازم آ لیے کے ل وت کے ا کاک ےک کرت کیک 
جاے۔ لیکن اس میں بجی ایک شبہ ہو تاک ات با باج کے اور کے مز لی ابات ل پء ےک ایض خا 
کاشیہہ بھی نہ موای لئے کی ر پا ودر تم ادووس کر زار در ہی سے جوسب س ےک ہے ا یکام را کے لا کیا 
کیا نشی کا صاب مر ض پا سودر کیا جا ےگا۔ 
ولو اشعریٰ الخ: اراک ارب نے ایک لام ایک رار کے حون خری رب الال کے ہ تھ باروسودرہم سے 
فو کیا نر بال مالا کی فلا مکوگیاروسودد ہم ے مرا کہ یں روخ کر ےکی کہ لٹ کے دو سور ہم میں سے لصف جو رب 
اما لکا حص ہے اس یل ہے کے شارت گی اور ہی بیا کاب لوٹ ذک کیا جاچا ہے۔(ف ی باروسویس سے دوسودر ہم مح 
سے میں جس میں صف ا وشار بے ادرف ی اسیک سو رب المالی کے ہیں اک لے مرابحنہ کے بارے میں رب 
مال انا ص وع بیں سے کا لک با یگیاروسو یر مر دک سے فروش کر ے)۔ 
۳ :اکر مفارب کیا کچ زارد ر م موں ہاور رب ا مالیا سو کے عو ایک غلا م 
. ی ھکر اپنے ای مضارب کے پا کے راا در ہم سے فروض کر دیا تمہ مقار ب اس غلا مار 
راک رو وا سو وت 
لامغری رک اپنے رب الال کے پاتھ پارہ سو س ي یچ تق یہ ر لے راک ی ہوۓے 


کت ہیں فر وش ےکر ےگا تفیل کل کم ولل _ 
قال: فان كان معه الف بالنصف فاشترى بها عبدا قيمته الفان فقتل العبد رجلا خطأ فثلاثة ارباع الفداء 
على رب المالء وربعه على المضاربء» لان الفداء مؤنة الملك فيتقدر بقدر الملكء وقد كان الملك بينهما 
ارباعا لانه لما صار المال عينا واحدا قيمته الفان ظهر الربح وهو الف بينهما والف لرب المال برأس ماله لان 


کد الد اے ہیر ۳ لر “م 
قيمته الفانء واذا فديا خر ج العبد عن المضاربةء اما نصیب المضارب فلما بیناہء واما نصیب رب المال لقضاء 
القاضی بانقسام الفداء عليهما لما انه يتضمن قسمة العبد بينهما والمضاربة تنتهى بالقسمة بخلاف ما تقدم لان 
جمیع الثمن فيه على المضارب» وان كان له حق الرجوع فلا حاجة الى القسمةء ولان العبد کالزائل عن 
ملکھما بالجناية ودفع الفداء کابتداء الشراء فيكون العبد بينهما ارباعا لا على المضاربة يخدم المضارب یوما 
ورب المال ثلاثة ایام بخلاف ما تقدم. ۱ ۱ 
ترجہ :ام مھ نے فرماا ہک اکر آو ھھ کی شرط بے مضارب کے بای زار درم مول اور ان کے عو ای 
ارب نے اییافلام تھ یراج کی مت دوہنرارد م ہوں پھر ای غلام نے ایی کو م کر ڈالا تس فلا م کے فی کا سن 
چو تھا حص ر ب المال پر لاز م آجاےگاور صرف ایی چو تھا اس ضار ب پر لازم ہوگاء لان الفداء الخ:۔ کوک قرے کیت ٠‏ 
کا چ ے ای لج کلت کے ائ داز سے اک ند ےکا اب م وگااور کی تکا ماب ان دو نول یل ار ع ےکر کےکی گی ترا ای 
رر کہ مضار ب6 حص یک چو تھائی اور ر ب الما لکا ین چو تھا ےکی وک جب سار امال ایک تہ نکی حت سے م وکیا 
2 بت دد رارے نوا ںک ٹن ظاہر ہوگیااور ودک ہرازدرنعم وونوں ٹل باب دپااور بای ایک ہنرار صرف رپ المال 
کار آ یالما لکاے »کوک ا سک تمت دوپ زار درم گی 
واذا فدیا الخ: اور جب رولو نے غلا م کا ف ہے دے دیا مہ غلا م آزاد م گیا توا یل سے مضار بکا حصہ اک دچ سے 
ال داگ کہ ددابانت میں کیل ہے بلک عطمانت مس ہے اور رب الما لکا حص ا بناء یہ کل چا ۓاہ ت ی نے ال دونوں ر 
تین کے یم ہو ےکا عم دے دیا سے کی وک اس عم میں ہے بات پا چان س کہ دہ غلا م النادونول ٹس پاٹ د گیا ے اور 7 
۱ کے وت بی مضمارہت حم مو ہا ۓےگیاء قلاف دوصرے کل ک ےکی کہ اس عصورت بی پور اد ٹم مضارب کی بر 
ذے واجب ہو گی ی اکر ج ال مار بکورب المالی ے واب لی کا اخقیار ہا ل ے اس لئے فی القور ہن ار اکر ن ےک کوٹ 
ضرورت لے اور ای وجہ سے کیک خلا مگوباان ونو لک کیت سے یج رم ہو ےکی وناء رک گیا ے ن جب اس نے 
لی ے ایی جح سک وت کر وباق عم ہو اکہ اس کے عو امیا فلا مکودے دی اجا سے یااسے فد یہ دیاجاے اس ط رح یکر نے 
س ےگویادوان دو نو لک یکلیت ے نگ لگیا- ۱ 
اور فر ہے د ۓ کا مطلپ کویااب از ص نوخ یدناہے اس ریہ خلام الن‌ادوٹولی کے در مان چار کے ہو :کرش رک ہوگا جن 
مضار بت کے طور پر یں ہوگااسی لے ہے غلا م ایک دن مضار بک خد م کر ےکااور تین دن ای رب الما لکی خر م کے ۔ 
ما لاف مل سک کے(ف۔ او گی صو رت میس رب الما لکا ن چو تھا حص مضا ب بر ےگااور ایک چو تیا تصہ مضارب 
کا کازائی تجارت کے حاب سے ہوگا ۔اور وا کر تی ریہ یس ایک فرق ہے بھی بیا نکیامیا ےکہ یل کے جس فو تیار نی تما 
لازم موی گی جو مضاربت کے خلاف نی سے ین یہاں ج ج مانہ واجب گیا ے دہ ارت یس سے یں سے اس لے 
مضاییت با یں گی ۔(ک) ۱ ۲ 
قوج ۔:اک رص ف ب ےک ش رط بے مضاربت کے یا ایگ زار در م موں »اور ان رونوں 
کے عو مضارب نے ایک اییاغلا م ۶یا کی تمت دوپ رار در ہم ہو پھر غلام نے 
بک س کو کر ڈالاء توا کا فد یٹس یر اواکیا ہا ۓگگا؟ ستل ےکی او ری تفصیل 
و م 


قال: وان کان معه الف فاشتری بها عبدافلم ینقدھا حتى هلكت الالف يدفع رب المال ذلك الْشمن ثم وثم 


مین الد اہ جد یھ ۳ ٣‏ لر" م 


ورأس المال جمیع ما يدفع اليه رب المالء لان المال امانة فى يده والاستیفاء انما یکون بقبض مضموت وحکم 
الامانة ينافيه فيرجع مرة بعد اخحرى بخلاف الوکیل بالشراء اذا كان الٹمن مدفوعا اليه قبل الشراء وهلك بعغذ 
الشراء حيث لا يرجع الا مرةء لانه امكن جعله مستوفيا لان الو كالة تجامع الضمان كالغاصب اذا تو كل ببيع 
المغصوب» ثم فى الو كالة فى هذه الصورةيرجع مرة وفيما اذا اشتری ثم دفع الم و كل اليه المال فهلك لا یرجع 
لانه ثبت له حق الرجوع بنفس الشریء فجعل مستوفیا بالقبض بعده» اما المدفوع اليه قبل الشراء امانة فى يده 
وهو قائم على الامانة بعدہء فلم يضر مستوفیا فاذا هلك رجع عليه مرة ثم لا يرجع لوقو ع الاستیفاء على مامر. 

تر ہمہ :امام مھ نے رمیا ےک ہا اکر مفارب کے پا ر ارورم مول اور وا کے عو ایک فلام خر یر لے کن ر مارا 
E‏ ا مضارب تزا یوقت رب المال ہے د اراک ےگا > وہ اسۓ مضمار بکو 
دوپار ایک ٹراردر م دس ےگا »کہ وہای غلا کیا رق اداکردے اس کے بعد بھی مضمارب کے اداکرنے سے بعل پیل دو تم بھی 
ضائح ہو جائۓے E‏ پھر او اکر ےگا سن رب المائی مضار بکو اس طرع تی رم دیارے گا سارک بلا وکر راس الال 
و جائکا -(ف۔ تحن خلا اس طرںح اکر مضار بکورب الال چا مرح دے تو سا ری ر تم یکر را الال کے پاد بز ادد رم 
ہو جائیں ےکر مضضارب ایک در عمکا بھی ضا مکن نہ ہوگااود ی مرد و ر ت الال ےر م ےکوی مض می تہ کے 
طور بر لازم یں ہوگا)۔ 

لان المال الیخ :کیو کہ مضارب کے تی می جو بھی مال م وگادداما یکاہ وگ ای سک کے ا کا تش اش کاب تا سے اور 
نرد اک وات لاذ مہ ہے ج بک کک تپ نہ عفان تکاہوج بک مان ت کا عم انت کے خلاف ہے اس لے جب بھی 
ارب کے پا سے مال ضا ہو تا جا ےگا تذفوڑادہلپنے رب الال سے ا ر مکووائیں لت جا ےگا ۔ لاف تر یداری ے 
ر 007 یل اس ار ےدک یا خی زور م ضا ہو جا تذوہ وکیل ایک مرح شی گے 
نی می کے ی ےک کے نے ر کا اا کک وو کے 
مات ات بھی شع ہوک سے ی ےکی اص بکو مال مفصوب کے مالک نے اس مخصو کو ڑا ےکا وکیل باد ہو ب( ف 
ال کک اس مک میس یہ نامب مخصوب ما لکاضا من بھی سے اور وکیل بھی سے )۔ 

ثم فى الو كالة الخ: رولت ی ان ممکوزوض وت می ی جک ر وا کی ری رار کے لے رقمردے دی 
فی ہو ین خر یداری کے بعد وو رگم ضا یہو فو کیل اپنے مکل سے صرف ایک باد رٹ وائیں لن ےگا 0 70000 
26 7 نے تر اال کے بعر موکل ابو سن یر کا ا ات دروو کے پا ضا گیا ق وکیل اسر کا سے 
مکل سے وائیں یں نے سکتا س ےکی دک اسے غر یھ لی ےکی دجہ سے ابے مکل سے والیس لی اح ما سل ہوا تاس لئے 
خر دای کے إحدر تا لیے سے اسے اپناپورا تی پانے وال انال یاگیااود تہ رارک سے مکیل جو مال م ول نے اسے دی وہای کے 
پاک امات کے طور بر ے اور خر یرا رک کے بعد کی الات ی پ با ے لپ اا ی سے وواپا و ران نے والا نہ ہوگا چنا ارال 
وکل کے پا ضائع ہو جائۓے ے دو اپ مکل سے صرف ایک ہار وائیں ن ےگااوددوبارووائپش نیش نے ککتا کیو کہ اس نے 
ورای لپ لیے جیا کہ بے ہیا نکیاجاجکاے۔ 

(ن۔غلاصے ہوا - شلام کل اپ وکیل کوچ مال د یا دو ا تاا ہو تا ےی وکیل کا ,ھ2 ین وکلک 1 
اک ونت و و و0 وکلک ہن لازم و جات ہے اور ا ما لکا الک ہو جانے 
!جد ری د یکنا اہ ےکہ مکل نے وکی لکوجو مال دیا چ دوخرید نے سے بے دیا چیا یی نے کے بد ویائے اپ اگ رخ یرارق 
کے بعد دیا مو لو کہا ےگا الہ نے اپا پا اتا گر ضا ہاے کیک اپ موی سے الال ارددبار 


ان ابد اے چدری ۵ ۱ لر تم 
یں نے کے ء اور ETT‏ پیل دا تما ل امات ےکی وک بھی کی لکا ہن اس مال ے متحلق نہیں 
لو وا و وھ تو جو ھت 
مکل سے لے گااور کہ مال یرای کے بعد ضائح ہوا بھی امامت ہی میس ضائح ہواء اس لے دی اکواخقیار م واک دواپناض 
کل سے سو کے کین ایک اد وک لیے دا راپ ی واا ای لگ راب ال ضا و جاے ر 
اےدوپارہ یں نے سک ہے۔ ۱ 

و رم ات 7 تد E DE‏ 

قب تک اوا کی سے پیل ی ودر ہم ضا مو کے اس لے رب المال نے وو رتماداکردی 

ہو تن پار بار رٹم ہو یگئی ٤و‏ دب الما کا اور مضمار ب کا اس می سکس طرب حصہ 

گا کر سی ورت ای ےول ا ل ا 


تقیل, عم برت 

فصل فى الاختلاف. قال: واذا كان مع المضارب الفان فقال دفعت الى الفا وربحت الفاء وقال: رب 
المال لا بل دفعت اليك الفين فالقول قول المضاربء وکان ابو حنيفة یقول اولا القول قول رب المالء وهو 
قول زفرء لان المضارب'یدعی علیه الش رکة فی الربح وھو ینکر والقول قول المنکر ٹم رجع الی ما ذکرہ فی 
الكتاب» لان الاختلاف فى الحقيقة فى مقدار المقبوض» وفى مثله القول قول القابض ضمینا كان او امينا لانه 
اعرف بمقدار المقبوضء ولو اختلفا مع ذلك فى مقدار الربح فالقول فيه لرب المالء لان الربح یستحق 
بالشرط وهو يستفاد من جھتاء وايهما اقام البینة على ما ادعى من فضل قبلت لان البینات للاثبات. قال ومن . 
كان معه الف درهم فقال هى مضاربة لفلان بالنصف وقد ربح الفاء وقال فلان هى بضاعة فالقول قول رب 
المالء لان المضارب يدعى عليه تقویم عمله او شرطا من جهته او يدعى الشركة وهو ینکر . 

رم :رب المال اور مضمارب کے در میان اتتلاف وائ ہون)۔اام نے فرایا کار مضا ب کے پا دو پار 
در عم ہیں اور ال نے رب الال س ےکہاکہ تم نے کے مرف ایک راد در عم د سے کے اور یں نے اس سے کادوہا کر کے اک 
زارد رم کالیااےء اس مر ایک زار ہار ے اس الال کے اور ایک چ زار فی کے ہیں ۔اود رپ المال ن گہاکہ 
کے نیس ہیں بللہ یش نے ہیس لے دوچزار کی دے دہے تھے اس صورت میں ا اام الو 
یف پیل بے فرلاکرتے ت ےک رب اما لک بات قول موی چنا : :امام زف رکا بھی سی قول ہے »کوک مضارب رب الال کے 
خلا ف ع می ش رک کاوعوی اک سے اور ر ب الال ا کا مر ے اور کر یک پات ان چا ے۔ من ابو نے برش اس 
قول ےرہ /0 0 کی ہیں کر کیاکیاے ہک کہ یہ اتلاف عقیقت می اس مال اک مقلرار بیس ہے 
مس پر مضار بکا تحضر ےج بک تی وانے ما لک مق رار اشنا فی صورت میں ت بک قول ی تو ل کہا چا 

خاو وو تا صب کے فر لے امت دےے والا ہدیا مفارب کے ط ر ےے سے امات دار ہو کوک می ال بات ے 
ہت زیادہباخجرہو تا کہ ا کے غ سکتابالی ےء پچ راک راصل ما کی مقدار کے اشتلاف کے بعد دونوں نے نکی مقدار 
یس کی اتا فکا ان نمف ات نتاف کی بت ہو ی ترک مقر ارس رب الما لک بات ای جا ےک اکی کہ 0 
داد ون شر کک سوو تد طکایاك رب الال ۵ھ ف ے ہو تہ اس لے دی خی 


تین البد اہ جد یر ۱ 1 ۱ e‏ نشم 
سح سس سحست سس ا ا ل ل شس تس ٹس ۱١ش‏ :٦ک‏ سسٹ ل ا کے 
مقار کے بارے ین زیادوواقف ہو تا ہے۔ پھر النادونول ن رب الال اور مضارب میس ےج وکو انی زیادلی کے و جکیپ اپنا 
گواہ ٹن کر ےگا اسی کےگواہقبول مول ک ےکی وک کو ایا د کو یکو اب یکر نے کے لے ہو کی ہیں۔ ۱ 
. قال ومن کان معه الخ ام مھ نے قرملا کال ری کے اسر اردر عم مول اور وہہ کی کہ ہے مال فلال ضس ہرے 
کش رط کے ساتھ مضادیت کے لئے سے لین اس دوسرے مخ ن کہا ہما لکاردبار ی (بضاعتۂ کے لے ہے )تو ال 
کے مان کا قول قبول موک یوک مقار ب اس کے خلاف د عوئ یکر جا ہک مراکم ےک مق دار کے اطبار سے کت ہے :یا اس 
کی طرف سے شش رما کاد عوئ کر جا ہے کن دودوم راا کا کر تا ے۔(ف۔ ئن ضار ہت فاسدہ ہو نے میں اج کی کار ۶وی 
کہ جا ہے امضاربت کے مل کد کو یکر جاہے بامضار بت تم ہد نے ب انال شس ش رک تاد ۶و کر تاج بکہ ا کارب 
مال ہر حال میں ا کاا ئ کر جا ہے ای مگ رکاىہ تول قول ہوگااوردوس ران ج ضار ب کاو مو یکر جا ے اس پہگواو ٹپ یکر 
امم ۱ 
صلاخلا ف کیان 

ور ماب رت الال نے باک یر ے ال دو زار د ر مول میں سے رای 

الال یک چراد اور ای سے ما ل شدہ مع کی ایک پار ےءاور رب امال کہ اک 

می راہ دولول پت رار ٹن نے راس الال کے طور ردے ےار رب امال اور مضارب 

کے در میان می مقار کے پارے س اخلاف ہو چا ےک وہ نصف پر ے یا لث ر 

ےکک کے پان ہفراددد ہم مول اور دہ ک کہ ہے مال فلا کا ہے اس نے صف لم 

ا ضار یت کے ے ہے ہیں ۔اور دوسرے ن ےکپ اکہ وہ لو اعت کے گے 

یں :سک لکی تنعل کم وروک ٠‏ 

ولو قال المضارب اقرضتنى وقال رب المال هى بضاعة او وديعة او مضاربة فالقول لرب المال والبینة ' 
بينة المضارب» لان المضارب يدعى عليه التملك وهو ینکر ولو ادعى رب المال المضاربة فى نوع وقال 
الآخر ما سميت لى تجارة بعينها فالقول للمضارب لان الاصل فيه العموم والاطلاق والتخصیص بعارض 
الشرط بخلاف الو كالة لان الاصل فيه الخصوص٠‏ ولو ادعى كل واحد منھما نوعا فالقول لرب المالء لانهما 
اتفقا على التخصیص والاڈن يستفاد من جهته فيكون القول له» ولو اقاما البينة فالبينة بينة المضارب لحاجته 
, الى نفى الضمان وعدم حاجة الآخر الى البينة ولو وقتت البینتان وقتا فصاحب الوقت الاخير اولى لان آخر 
الشرطین ينقض الاول: ١‏ ۱ 
ترجہ :او راک اس شف نے جو مضار ہت کاد و یکر تا ہوم ہکہاہ کہ تم نے کے ہے ال قرغ کے طور دیات کر ر ب الال 

ا یں رش نے فو مہ ما کرو ہار( ضا عت ) کے طور پر یاامانت کے طورپریامضاردیبت کے طور پر دیاتھا ان تام صور نوں 
س ربالمال کے قو لکااتقبار وکا کا اکر ضار بگواہ خی کر و ے فواسی کے قو لکوت کموک یکوک مضا ب ایال پر اپ 
27 کی کی کا و یکر تا ہے ج بکہ مضارب ا ںکاانیا رک تاے ء(ف ۔کی وکل مضارب ای ے قرش لانو بعر شس 
اس سے جو پک دہ کما ےکا لککامایک ضار ب بی ہہ وا ال مناء پر جب مضا ب نے لو لکہاکہ تم نے یھ ہے مال قرش کے طور 


ین البد ای جي __ ا ۱ ۱ 2 

پدیاہے کیاکی نے ےد عو یکیاکہ اس مالی کے سسارے لایس ھی مالک ہو )ولو اداعی الخ ادراگر رب المالٰ نے ہے د ۶وی 
کیاکہ یں نے اس مال کے عو ایک اص م کے ککاد وبا رک بات لی ےکی شی لان مضا ب کہاکہ اک بات نمی تم نے 
مر سے ےکی کار وبا رکو خصو ص خی ںکیا تھ مضارب سے عم لیے کے بحرا کاقول قیول ہ وی وکل مضاربت کے مر مم 
اص انون ہہ ے_ وو عام اور اق ہو ٹن اس می کی مکی خصو میں یا تیر ہو ادر خصو صیر کی نا وجہ ے ہو کں 
سے ن عار ی شرطے م وکر صو م ہو ہا ے نواس دعوک کو ایر کر نا لازم جو جا تاے خلا ف وکالت کے سل کے کی وکلہ 
وکالت کے مل میں اصل ہے ےکہ ووکام صو م ہو یپ 


ولوادعی کل الخ:. اور اکر مضمارب اور رپ امال بیس سے ہر ایک نے اک اک اور انیا ۶و یکاش مضار بن گیا 


ک کڑس ےکی جار تک بات می اور رب الما ن ےکہاکہ کی بلک غل کی تار کی بات گی تو ایی ورت می رب الما لکی 
بات قبول م وک یک وک ان رونوں ی رب المال اور مضا ب نے ال با کا قرا کیا ےک وہ مضا ہت خصو ص کی پھراجازت 
چ وکل رب الما لکی طرف ے ما سل مول ے تا یکی با تکااعقبار ہوگا ۔ولو اقاما الخ:. او رار دولوں تی نے اپ سے 
و وی رگواہ بھی بی کر و ےے و مضارب ک ےگوہ تول مول کے ےکی وککہ مضا بک اپ ذات سے مات کے مرن ےکی 
ضر ورت ے ج پک دب الما لکوال سک یکوکی ضر ورت اور پر داہ یں سے ولو وقتت الخ: .او راک دوفو ںگوایمول نے اچۓ 
اپ انا ہہ جار تھی یا کی ہو تو آخر کی جار ندال ےکی گواتی زیادہ تا قبول ہوک یکی رک دوش طول میں ے جآ ی شرط ۱ 
م سے وی اول مول ے۔ ۱ 

وم :اکر مضار ہتپ مال کاو و یکر نے وانے نے رب ا مال س ےکہاک نے کے 
یہ ال قرغ کے طور پر دی تیار رب امال ےکہاکہ ہیں یکلہ شش نے بی مال اضاعت یا 

ات با مضاربت کے لے ت مکودیاتھاءاگم رب المالی نا عو یکیاکنہ یش نے ایال سے ٠‏ 

ایک صو عم کےکاروبا رک ےک کہاتاہ مان مضمارب ا لا نیا کر جا مو گر رب 
الال ےد کو یکی اکہ ل سے کے کارد ہار کے لے رم دی می جب مضارب نے 
کہاک تم نے غلہ ےکا روپار کے لے وی تھی مگ دوٹوں بی نے ای اپینے د کوک گواہ 
بھی چ یکر و ےکر وونوں پاب ک ےگواہ وین ےگذاہی کے سا تج محال کی جار بھی 
ی نکر وک ہوہ فا تا کی مر رع ر ن حعکیاجاۓ ,مات کی تفیل ر مل_ 


JAXX 


ین البد اے جد یہ ۱ 9۸ بلر م 


ظکتاب الرذیعة4 


قال: الو ديعة امانة فى ید المودع اذا هلكت لم يضمنها لقوله عليه السلام( لیس على المستعير غير المغل 
ضمان ولا على المستودع غير المُغل ضمان) ولان بالناس حاجة الى الاستیداع فلو ضمناه يمتنع الناس عن 
قبول الودائع فيتعطل مصالحهم. قال: وللمودع ان یحفظھا بنفسه وبمَن فی عیاله لان الظاهر انه يلتزم حفظ 
مال غیرہ على الو جه الذی یحفظ مال نفسه ولانه لايجد بدأ من الدفع الى عياله لانه لا یمکنە ملازمة بیته ولا 
استصحاب الو ديعة فى خرو جه فكان المالك راضیا به. 
کناب ود لج تکایان 
ترجمہ :. قال: الودیعة الخ تد و رک نے ریاس کہ ولع تکامال توو من ابات لکن وانے کے پا ایک ات 
ہولی ءا رح س ےک اکر وہ ضا مو جاے توا کو اپنے پا ی کے والاا کا ضا نیل ہو تا سے کیو عد یت می 
روایت ہ کہ عاد یت پر لے دالا ج بکہ وہ شیا کر نے والاتہ مو تاس پ ےکوی ان نیس ہے اور امام تکو اسےے پاک ر کے والا 
توو ںی کہ نا نہ ہو ای پر کی اشت یں سے ا سک روات دار ی ےکی ہے اود ای شی ردایت ابن ماجہ نے مگ یکی 
ہے الہ ہے دو وی بی ضوف ہیں اور اس د حل سے کی نات لازم نیس آلی کل وگو ںکودوصرے کے پا ابات رت ےکی 
ضرورت پڑلی ری ےا باگر ہم اسے توور عکوا یکا ضا ن اور مہ دار کرای فو لوگ دور ےکی امام لکا ےیک 
گے سے الا کی کے اور ا نکی ضرور یں اور الن کے کاردہار سب بند ہو جا کے لاف۔ حال اکلہ ال کے بنا ہو نے سے 
لگوں میس کی اور خت پر با یی بات بوگی سے شر لت نے دو رکر دیا اس سے ہہ بات معلوم ہوک یکہ انت مس نات ہیں 
ے)۔ ۱ 
قال: ولا المودع الخ:. تروک نے فرمایا ےکہ اسک امات ر کے دا ےکواس با تکااخقتیار ہو تا کہ دو خو دای ذات 
سے اس ءا لک تفاش تکرمے بای شف کے ذدییہ صقا تکر وائۓ جو اس کے اعمال اور ا کی گی اش ٹیس ے جن ای شف 
جوا کے مہا تک کوت رکا کی کہ بظاہر اس نے تر کے ما لکی فا تکو ای اوسر اک ط رع لاز مکیا سے ننس رح اپے 
زانیا لکی حقاظ کر جا ہے( تی اہ ما لکو بھی لود کی حفاظت سے رکئے کے لے ای ےگھردالوں کے پاس کے دبا ہے ای لئے 
خی رک لمات میں بھی ىہ بات چان مو ی) دوس راد یل ىہ س ےک آو یکو ما لکی حفاظت کے لے اپ مرواو ںکی حفاظت یں 
۱ رن کے مض رکوئی ارہ بھی یں س ےکی وک کی کے لے یہ بات من خی ںکہ اس م کے ما کوپ روت اہن نا کرے میں 
رکھتا نچ رے اک رم ہر دقت باہرجانے مل ابام تفکوسا تھے ےکر چلزااور رکھنا کن نیس ے اس لے ما ل کاب کک کک یکویای ہی 
طفاظت پر رای کی ہے ف خاصہ ہے ماک مال کے مال ککویہ بات ا کی طرخ معلوم مو س ےک بس ں کے پا امات 
رک رپا ھول اس کے لے می بات نا کن س کہ وپ روف انی ذات سے اس ما لک ططاط یکر ے ؛اس جات کے جا ہے کے پاوچوو 


کان یدای جدید ۹9۹ لر “م 
جب اٹ نے کی ےک الات ر کی توا س کا مطلپ ہے ہوا اہ ددا بات رای و چا کہ سے ETE‏ 12 
2 اپ الو نکی حفاظت کر جا ہے انس رخ مر ےاک بھی تفاظت ا اکر اب ےگ والو ںکی تفاظت س بھی 
ہش کی رکٹ دااضا کد 6 وہ اپ ود پا نے ابال ی اعت مل 7 َ کو تادی 
کیل کے)۔ 

ری اھ6 اك _وولجت» ر و 2 روک 


نرف وت وتو وا 

مووخ وداج کے وا نے تب سیت ۱ 
مر ی سےمیادوسر ےک ود لیت رکید کی ہو تد یوون جو مستود نے مال الات میں ود لیت کے خلا فکیاہو معلوم ہو 
اہی ےکہ شر لت یش ود لت کے کن مہ ہیں ۔ تی کو اہین ما لکی تفاظت بر مس کنا خو وو ہکوگ کی بال ہو ۔ بش ریہ ووا ٠‏ 
ان تال موک ال بے قضہ خابت ہو گے ای بء ہہھا گے سے خلا مآ جد درا لک کی ہدوجو ٹہ اجان اڑا ہو۔ 
ورلصت رکم 1 یں ے ۔ود یع کا 02 خاو مرا ویاو لال ہو چا 91 ےت کک نے اک 
ڑا رک دیااور مضہ سے کہا یھر وووونوں تی لے گے زرو ا ا ٹیس ا سکاضامین ہی ی 0س0 
یر اراری کی ہو جا سے چا :ا رسیکاای ککیڈاہوانے اڑاکر دوصرے ک کرش ڈال دیا اپار ووا ںکی تفاظت کز ہے 
گان ضامن ہو جا گا ای ط ارال دانے نے اک می اپنم کپ اڳہلرکوں اوروو سے کہاگ مارک پر ڑا 
دال ےپور یہ وکیا نو ضا 222706 ۱ 

فان حفظھا بغيرهم او اودعھا غيرهم ضمن» لان المالك رضی بيده لابید غیرہ والایدی تختلف فی 
الامانةء ولان الشىء لا يتضمن مثله كال وكيل لا ی ؤگل غيره والوضع فی حرز غیرہ ايداع الا اذا استاجر الحرز 
فیکون حافظا بحرز نفسة. قال: الا ان یقع فی دازہ خریق فيسلمها الى جاره او يكون فی سفینة فخاف الغرق 
فيلقيها الى سفينة اخریء لانه تعین طریقا للحفظ فی هذه الحالة فيرتضيه المالكء ولا يصذق على ذلك الا ببينة 
لانه يدعى ضرورة مسقِطة للضمان بعد تحقق السبب فصار کما اذا ادعی الاذن فى الایداع. قال: فان طلبها 
فاا تنا مہو س سے لالہ متعد بالمنع وهذا و a‏ وت 
بعده فیضمنھا بحبسه عنه. 

رجہ و کر ت را کا ی رن 
پا رکه دیا مو توووضا من ہو جا ےک( ف۔ ناکر اس ط رح رک کے بحد ددمال ضا مو ہے تو اعت رک دالا ضا کن ہوگا) 
لان المالك الخ: کیو کہ مال انت کا الک تزا ی پات بر راع اور کن تھاکہ ی مامت ای کے تت مل ر ےکی دوصرے کے 
گے مس میں جا ےک د( فا ےا لودو ےک ات کن تا می ما کک رای ک2 ہوا ءا بار کیا 
جا ےک پا تھ یے ال کے خوداپنے ہیں اک طرع دوس ز ےکی و ت موتا ہے کک یکول ہوم تی قوسب کے بابر ہیں ای 
رح ططاظت تھی ہر ای کک برابر ہوگی ۰اس میں فرق نیس ہنا ای ؛ ا جاب ىہ س ےک الک بات کی سے بک لوگو نکی 
طفاطت کے ط ر ےے یں بہت فرق ے )۔والا یدی الخ اور ابات شنإ تف ہو ے ںاو راس وچ سے کیک ایک ہز ای 
6 ان نے ا می وی ہوۓ 
یں بک وومر سے خائ کر درتے ہیں ا ااا کے کے میا یس ل رکون کے ا تھوں میس فرق ہو جاسے دوس ری 


یکن البد اے جدی ۱ ۰٠‏ جلر 2 
بات یے س ےک ابات کے وا ےکودوصرے فیس کے پاس ااخت رک ےکا تار خی ہو کک ےکی وک کک نے ا ںکووذکت ری 
ہے اور ودلعت اپ بی یی جات ٹس لوگوں کے سائے ذمہ دار کیل ٢ون‏ ہے بللہ ایت س ےکر کے سا زم دار بو 
ج( ۱ : 
کالو کیل الخ : کے وک لکوبہ اخقیار نیس ہو اک دوسر ےکو وکیل بنادۓے۔(ف۔ من جیسے مضار بکوىہ اخقیار یں 
س ےکہ د اک الما ل می دوعر ےکو مار ہت پر دے دے ۔الہت مضار ہت ےکھت رمعامطات سی بضاعت و یرہ کے لئے د ےکا 
اخیار ہو تاے ۔اکی رع اانت رک وانے لج مستوو مکو ىہ اخقیار نیش ہو ناک کی دوص رس ےکوامات زگ ےکووۓ اگ 
ہاب سوا ل کیا چا ےکہ وہ ود لت مجن ابات نیس ر کے بلک د وسر سے کے فا تی کان یا عتفو ظا لہ یس رک دے وکیا عم ہوک 
ا کاجواب ہے کہ ) والوضع الخ ی روس ری فوط چک یس رکا کی ایام رکا ہو جا ہے (ف۔ اک لے جب دوسرے 
کی فو کہ یس اپنامال ابات رکھ دی وگو إا یکو ابات ر نے کے لئ دے دیا یں ی طر دوس ر ےکو راح امات د سے سے 
ایک این ضا ہو تا سے اک طر وواشن دوسرےکیاز جن یل خود سے رک دنینے سے کی ضا ہوگا)۔ 

الا اذا ٹراہ وور سے کے اس فو مکا نکوای ےکراۓ پر لے میا ہو۔اف۔ اس یں رک سے دوصرسے کے 
پاش امامت رکا خی پایا جا ۓگا) بک ایی تفاطت شی ر کے دالا ہ وگال( فک وکل ایی حفاظ تکی جک خواوذائی ہو یاکراے پر ہوم 
برابر لزا رکرائۓ کے مکالن سے امات ضا ہو ہا سے قد ٹس ا ںکاضا ن یں ہوگا ۔ پر معلوم ہونا جات کہ سے 
گھردالوں کے سواد سے یک حاتت مس دینااس وقت جاتر نیس ہے جب اپنے ارادے اور اخقتیاررے ات 
اور بورگ کے خر ہو ای صو رت میں ضا ی موگا)_قال الا ان الخ دو رک نے فرمایا کے کرای صورت ٹل ج بکہ 
انچائی جور ہو ملا :اس کے اس ےگس گن کی اور اس کے ےہ کے ڈد سے ا نے اپنے امت کے ما لمکوپڑ وی کے" 
وال کر دیا یو یاودامان تکامالی نےکر یں واز راتفا من ان می نت جا ےکا خر وو زیت کی حافت 
کے لئ اسے دور 1 کش مس بتک دیا(ف۔ ‏ ایی صورت ٹل ووا من ۶گا)۔ ۰ 

لانه تعین الی مکی کہ ایک بور ی کی حال میس حقاش تکا صرف کی ایک ط ریہ ر گیا تھا لن اا کا ماک بھی اس بات ر 
رای ہوگ۔ (ف ق لا الہ مال ککو اس بات پر رای ہو جانا مان لیا جا ۓگا یراہ امات نے دائے ن کہ اک یس نے ای 
بور کی بنا بے کا مکیاتھا پھر کی دواماخت ضا موی ان مال کے کک نے اس سے اکا رکی تو کک قول اہر ے اور ابات پر 
ین دا ےک قول خلاف فلار ) ولا یصدق الخ اور امات پر لیے وا ےکا تول قبول ہی سںکیاجاۓ گ رگواہی کے سا تد (ف۔ 
' ن ج بکہ وہا خد ۶وی ب گواہ یکر دے )لان یدعی الخ کرک وواماعت پر لے والا ی مان یکا سبب پا سے جانے کے بحر 
ایک ضرور کار کوک یکرت ے جو ا کو مکردینے والی ہے۔(ف۔ من ابات پر لے دا ےکی رف ےک ذو رم کو 
بات پرد بنا پایاگپااورا ہی گل سے تان لاز م آجاٹی ای کے بعد ومد کو یکر اہ ےکہ یس نے بور یکی عالت می ہے لات 
دوسر ےکوی گی لپن اضمان نس ہو نی چا ے ای ے اس پ ہگواو پٹ کر اضر و ری ہوگا)۔ اور ا یکی مقا لاسکی ہو جال ےگ کے : 
الات پہ بے والے نے ایی صورت یی و عو یکی اکہ مال کے مالک نے دوصرے کے پا بھی امامت رک کی اجازت دک 
گی ۔(ف۔ توا کااس طر حکہناس یگواہی کے خیم ول نہ ہوگاکی رک جب ال نے خی رکودہی ےکا قرا ہک لیا اس بر مان لاز م 
آگیااور دما لکوت مکر نے کے کے اد عو یکوکوائی کے سا تح ای کر نے ہر یور موا ۱ ۱ 

قال فان طلبھا الخ تد ور ی سے فر ہیاس ےکہ اکر مال کے مالک نے اس ابات رک وانے سے ارٹی ابات وائیں رل ےکا مطالبہ 
کیاشن اس ےا کے دس ےکی طاقت ر گے کے باوجو دو ین سے اکا کر دی توا کا ضا کن موک کی کہ ہے امات کے والا مر 
وتک نہ دی اور روک ےکی ؤج سے زاوف یکر ے والا موان مد ے بڑھ ا ےوالا موا کہ م ے ا کا مطلب ىہ موا جب 


ان الد اے چد یا ۱ ۱ ا١١‏ ا لر“ م ۱ 
الک نے اپکی ماق تک ای سے طالب کیا گیا آ تندہاس کے پا ابات ر ھن پر رای و ءلپز۱٢ nT‏ ےک 
ضا ٢و‏ جا ےگ 
لو وج :گر اکر ستودرنے مال امانت ت2 ۸82 AS‏ پا کہ دیا 
کن صور تڑں ٹل مال ابا تکودو مر ول کے پاس کی کہ دیا ہوجا ہے مار مود اور 
توور کے در میا ادوسرے کے پا کتک صورت یل اجازت د ۓ ٹل اختلاف 
وگ گر دد سایلا تک واک کا ہک کر مستودنانے د ےا نکا دکردیاء 
ما یکی نیل مب ولاک 
قال: ان لھا الموڈع بال جی لا ہمیز متها م لا سیل لودع علیها عند نی حةً الا انا 
خلطها بجنسھا شر كه ان شاء مثل ان یخلط الدراهم البیض بالبیض والسُود بالسود والحنطة بالحنطة والشعير 
بالشعیرء لھما انه لا يمكنه الؤصول الى عين حقه صورة وامكنه معنى بالقسمة معه فكان استهلاكا من وجه 
دون وجہء فیمیل فیمیل الی ایھما شاءء وله انه استهلاك من کل وجه لانه فعل یتعذر معه الوصول الی عین حقه ولا 
مر باتسمة لاتها من موجبات الشركة فلا تصلح موجیة لھا لو ہر لالط لا سیل له على المخلوط عند 
ابی حنيفة لانه لا حق له ألا فى الدینء وقد سقط وعندھما بالابراء یسقط خِيّرة الضمانء فيتعين فیتعین الشركة فی 
المخلوطء وخلط الحَل بالزيت وكل مائع بغير جدسه يوجب انقطاع حق المالك الى الضمان وهذا بالاجماع 
لانه استهلاك صورةء وكذا معنی لتعذر القسمة باعتبار اختلاف الجنس» ومن هذا القبيل خلط الحنطة بالشعیر 
فى الصحیح لان احدهّما لا یخلو عن حبات الآخرء فتعذر التمييز والقسمة ولو خلط المائع بجنسه فعند ابی 
حنيفة ينقطع حق المالك الى الضمان لما ذكرناء وعند ابی یوسف یجعل الاقل تابعا للاکٹر اعتبارا للغالب 
: یمم ہپ ری پ سو یپ سر عاو لی سس نت ء ونظیرہ خلط 
الدر اهم بمٹلھا اذابة لانه يصير مائعا بالاذابة. 
تج :قدو رک نے فرمایا ےک اکر ستتوورع نے ود بجعت کے ما کو اپنے بال می اس ط رب ملادیاکہ دوٹوں یں یرنہ ہو 
کے ضا ن م وگ جن ا کا جادان اد اکر ےمگااس کے یی تاوا اداکر نے کے دام الو فی کے خزد یک ووت کے وانے 
شف سکواپنی ولھ کا سل مال وائیں یی کوکوگی جن نیس ہوگا ؛ لیکن صا خی نے فرایا ےک ہاگ بال ود می کا یکی جن میں 
لاد گیا ہو نومالی کے ماک کو تن موو حکودو اتل یل سے ای ککااغخقیار م وک اکر وھ چاے واپنے ما لکاتاواان سے ےا ارا 
اس نے ہو کے مال میس ربک ہوجاۓ لا : مو نک شس اود نمو کون ون یں کر 
گول می باج وکوج وم مادیاتھالذف۔ ت اس ط رع سے ایک بی کس میں ملا نپا یگیالہنرااس یس لی کے اک ککو اس با تکااخقیار 
موک وہای یں شش رکیک ہہو جائے اک ناء ا ات ےلین اور ر گے بل کچ ورون لو ول و درون زا ے: 
شی ہو جائیں کے یار وہ جا فذدہ مستودرع ن انت لین وانے سے جاوالن وسو کر نے لیکن جاوان نے لیے کے بعد ووکل 
الاک ممتود کاو جا ےگا)۔ پیھما ان الخ :. صا کی وکل ہے ےک جو صورت بیان یگ اس می ابال کے الک حن 
موو رکو تواپناا سل مال بای من نیس ریا ین ا سکی سورت ے لن ہو مکی ےکہ اس کے نی توور کے سا تج تم 07 
اس کے بعد اس مال لاک حالمت یہ ہگ یک ا کرو گیا لیکن دوسر ے انار سے ضاع ہیں ہو ابللہ 


لد ید 7 2 
موچ ور ہے انس لج النادوفول صور اڑل بی سے ے چاے اختیا رک ے۔ ولھ انه استهلاك الخ: .امام ابو عفی کی د کک ىہ ےک 
الکو طلادی کا مطلب عنامت کے ما لکو لور ے طور پر ا کرد ینا ےکی کہ ما یکو طاد ینا ایک اییا ل ے سک وچایے 
مود وا نال مال سلتا حال سے پھر ا کی مکو اخقبار خی سک وکلہ تیم فو ش رت کے اجام شل سے ہے اس لے مہ اس 
لاان ہیں ہوک کہ اس می ش رت پال ہاے(ف۔ ن )کت ہونے کے بعد بھی یی عم ہو ا ےک ما لکو شی مکیاجائےلکن 
شی ایی نز نیس ہے ج سک وجہ سے ش کت بھی لازم ہو جائے۔ 

رولو ابراء الخالط الخ )اس کان تیو ں ایا موں یجن امام ا مم اور صا ین کے اخطلا ف کا ی یہ م وکاک اکر مود نے 
مات کے ماد ہے دا کو پر کیال خ ہک دیا ایام ابو نی کے فزدیک اس ملا سے ہو سے مال کے سی مکی ا بکوکی صورت ہیں 
سے کوک امام ا نیم کے زۃ ویک اس مود کو صرف تاوان لی ےکا تار تھا ج ھکہ تدع کے ذم لاز م ہواتھاجھ ماف اور بر کی 
کرد ےک وہ سے تم م وکیا سے ۔ مین صا شی کے نزدیک بر یکر نے سے تاوالنکااخار جا تار بااور اب اس وط مال میں 
ش رکم تکرنلازم ہوگیا ۔وخلط الحل بالزیت الخ:. اور اکر تک تی ل کسی نے" امت رکھا تھا شے ز ون کے تل می ملاد کی 
اک رر پر سیال اور گیب کو کی دوصرے ٹس میس لاد کی ہو تو بال تفا ال سے مان کک ہن م دکمزاس پر تاوا لاز م ہو پا 
ہ ےکی کہ دوسرے سے لاد سے کے بععد یں طرں ا یکی صورت حم ہو ہا ہے اک رح اس کے مع بھی م ہو جات ہیں 
ھتہ نشین کے کت و ان ےکی و ےا ا کی نین کن کن ری( ت ای ضرف این وت لن عات ای 
ارگ . ۱ 

ومن هذا القبیل الخ: :ای رحاس عم می یہو ںکوجھ سے ملاذ نا بھی ے اور یی کے قول س کوک یہو اور جم 
سے ہر ایک بی دوسرے کے دانے لے ہوتے ہیں اپ ١ا‏ سل امام یکو یر ابات سے علبع ہکن کن ہیں ے اور تیم بھی خمکن 
یں ہے ء(ف۔ لزا الا تھا اصل مان ککا کن ع ہو جا ۓےگااوراس کے ۶وت تاوا لاز م ےٹاک وک اکر ناص جو ین س 
گی ہوں لبور ابات ہو تو بھی ا نکی تیم کن نیس سے مالک جو م مہو کے دانے ٹے مو کے ہیں ای طر کہہوں میں جو 
کے دانے لے مو کے ہہیں ای رئا کل امام تکودوس نے سے لیر مک کن بھی نیں سے پچھردو جس ہون کی وجہ ے تقیم 
بھی مان نہیں ے اس لے می طور یر ادان لاز م کان کی ا کی انت م وکیا کی مک تاوا ل ےگا)۔ ْ 

. ولو خلط المائع الخ :او راگ گی کواسی کے نس میں لادی شلا ات میس زو نک تل تھا اسے ز تون بی کے تیل سے 

ساد یا امام ابو علیقہ کے دی ال کک O‏ تم ہ کر دوس رے بے تادان لاذ م آجا کی و کہ اس رح ہر اختبار سے اکل امام یکو 
کرد یناہد تا سے کان ابام الولو سف کے ند ی کک مکوزیادہ کے ما مک بی گے تن جن سکادا لکم راودو مر سے کے ال کے لح 
کر دیا جا گال لئ کے اکشراجتزا مکااخقبا کیا جا تا ے اود امام ع کے نز یک مود پر حال یس ابات لن وا ےکا ش ریک ہوک 
کی و کیہ امام کے نز یک ایک ٹس ایی ہی کی پر الب نیس موف جیہ اک کاب ال ضا س گر چکاےء(ف۔ مجن اکر دو 
کور فو ںکادودتھ ملاک ایک سے کو پلایاگیا فو ال ےکی دوفوں گور اڑل سے ر ضا عت خابت ہو جالی ے اور وہل اس با تکااعتپار ۔ 
ون یا ا مس کادودتھ زیادہ ہو اک ےر ضا عت ٹایت م وک وکل دوفو ایک بی تس ے اور تم ٹس ہونے میں نالب لی 
اکشرکااختبار خی ہو اے۔ ۱ ۱ ۱ 

ای رح بات ر کی موی کی می اور سال چ زکو ا یکی کش میں ملادیا جا ے تو اس کااختبار ہی ںکیا جا اک ہک کی مقر ار 
زیادہ سے بک ہر عال ش لک ہو بازیادوش رکت ہو ہا سے کی اور امام الولو ست کے نز دک کک کی مق دار الب سے وبی اس تر مکو 
اپے یف می نے لے ملا :امام کی مق د ار زیادہ ہو وای لے ہو سے ما لکووہ مود ]شی ات پد سے دالا اپنے پا رکھ نے اور 
توور می ابارت لن وا ےکو ا سکاتاوالن دے دےءاسی ط رح اکر مسقود رم کا مال زیادہ ہو و سار ایال خود رک نے اور موو کو 


هن الہ داے جد یر ۱ ۳۰ا ۱ ۱ لر 
واناد سے دسے۔ اور ابام الو یف کے خزدیک ہر حال یس تاوالت ہے۔و ف الخ: TEE RT‏ 
این درعموں کے ساتھ ملاک لادی تو کی ان موی امک کے زی اییاتی اشتلاف نے جاک ابات میں رکی موی نیچ 
ایی مس میں طاد سی میں اختلاف ہ کی کک درھمکوبھلادضنے سے درم بھی چک اور یچ دال چیہ لاف بہاں سمارے 
مہ اکل اس صورت ٹیں میں ج بک توو ن ابات لیے وانے نے قصدآلایاہو۔ ۔ 

تو شیج .گر مستودغ نے مال اام کا نے مال یل اس طر بلاک دونوں میں تیر کن 

زی اگنود نے تکوش کے ال کو اپنے مال یل ملاو ےۓے پیر تاوا سے بک 

کروی ہو تل کے تل 9۳ھ 7و" یل میس لار 


اکر اوران کو یکی جن میں ملا دا تام ست لک یتیل عم توا لاع و اتی 

قال :وان اختلطت بماله من غير فعله فهو شريك لصاحبھاء كما اذا انشق الكيسان فاختلطا لانه لا يضمنها 
لعدم الصنع فيشتر كان وهذا بالاتفاق. قال: فان انفق المود ع بعضها ثم رد مثله فخلطه بالباقی ضمن الجميع 
لانه خلط مال غیرہ بماله فیکون استهلاكا على الوجه الذى تقدم. قال: واذا تعدى المودع فی الوديعة بان ٠‏ 
کانت دابة فر کبها او ثوبا فلبسه او عبدا فاستخدمه او اودعھا عند غیرہ ڈ ثم ازال التعدى فردها الى يده زال 
الضمانء وقال الشافعی لا يبرا عن الضمان لان عقد الودیعة ارتفع حين صار ضامنا للمنافاة فلا يبرا الا بالرد ' 
على المالكء ولنا ان الامر باق لاطلاقه وارتفاع حكم العقد ضرورة ثبوت نقيضه فاذا ارتفع عاد حكم العقد 
كما اذا استاجره للحفظ شهرا فترك الحفظ فى بعضه ثم حفظ فى الباقى فحصل الرد الى نائب المالك. 

چ نی ترود ی نے فیا ےگ اکر صتوورع( اہ کو لن وائنے) کے اہ ےکی وای ل اور قد یاراوو کے بخی را لکنا 
سی رع سے مال لات شع ہ لکا و ووک لات یں ش رک ہوگا یی کہ دلج تک خی کے در ہم او رات نے 
وا نے متوو کے ما یی یی دونو یی کی رع و کہ سار در ہم ایک دوسرے می مل کے ہے مصتوررحاں وقت 
ضا وک کوک ا سکی طرف ےکن کت نی پا یف ہے کک مود ار تود ولول تی سے جل در جموں میں 
شیک مول کے تام ا ہکرام کا اتات ے۔ 

قال: فان انفق الخ اور ہے کی تد ور نے فر ایا کہ SE‏ نت ےک ڈالد برای بے 
کپ اس میں ماد کے اور سار ابال ملا جلا ہ و٣‏ میا نا ضا ہا کا صن گا کی وہای وقت ال نے دوسرے کے ا لکواےے 
ال سے ماد ے+ ای بناء پ ہے مکچھا جا ۓےگاکہ ا نے ققصد ضا کیا سے تفع کی ہنم ج بل کر کی ہے ن ناس طرب 
زان ےکآ ا ک6( م کے اورا موی نے ان دت کے مان ن سے ال خر کر نے کے گے الا 
پھر خرن ٤ئ‏ خر بھی ال بیس اسے ملادیاقذاب ووضا من نہ و٤(‏ )اور ہے معلوم ہونا چا ےکآ ار ای مستودع نے وذلعت کے 
ا لک ئا کراپ تےکام مس خر کر دیاتب دوضاعکن ہو جا ۓگا- 

. قال: واذا تعدی الخ:. تور نے فرمایا کہ کو نے ےت وکام کیا شلا :اس 
نے یگھوڑ ےکوابات رکھااود پرا سے سوا ری کاکام لیا یی کو کی رااات رکھا نچ ا کو جن لیای کو غلا م اباشت رکھااور 
اس سے خد مت لیا توور نے دور س ےکی ای کی جیا ا خی کے پاک ابات کے طور پر رکھ دی رج ہا لات کے 
خلا فکام کیا قااں نے ا سکام کے ا کو تم کر دیا اور دہ ما لک پل ہکی رح اانت یں نے آیا تاب اس کی کو ضبان 
لازم نیس آ ےگ کن ہضاقت ساقط ہو جائۓے کی اس ل ۓےکہاک رات شب خا یک پھر خی یکو کر کے صبدستو راس 


جن الہر اے جد یر ۱ le‏ : سك 
ETT‏ ا TET GT‏ ا و جات گی اور اام شا نے 
فرما یا ےکہ ایا ٹن ات سے رید ٤‏ اک وک نس ونت وہ ضا ن می نمیا تھا ای ونت اس سے امام تکا عامل م مو گی تی 
کوک ےت یرت ان زاین ںہو کا 
ایز ایا تن تات ے اک صورت مس راکذت ان اک ودای کردے تن ایک مر واب 
کے ا ی ر اک بھی باق سے کوک 
اط کر نے کا عم طق تا ی ط رح ےک مقالفت سے بے ہدیا عخالشت کے بعد ہواور اب تالش تکی وج سے الات کے م 
کاٹ ہو جانا مجبوری سے تھاکہ اس کے رس ]شی ضا کن ہوناخابت ب وگیا تادر جب دہ یور کی اور نٹ دور ہوک پیل گم 
یی مان ت کا عم لوٹ آ ےگا کی صو ر ت ایک ہوگی بی کسی خی کو کی سے اسب اک ایک مین کک حافت کر کر رکی کین 
ای ی نے ای بے س ہے دن طفاظتکاکام چو ڑ ریا پھر چتر ولول کے بعد ططاظت کي بھی حفاظت می غار موف ہے 
اس طط رب مالک کے نایب کے پا واج يک نپ گیا( ف نی مستوو رارت لے وال خودمال ود لیعت کے ان ککانائب ےا لئے 
ا کے پا وائہ کرو ےکا مطلب بی مالک کے پاک والی ںکردینا ہے۔ ما سل ستل ىہ جاک جب اشن نے اش کی تو وہ 
ی اض امن نع ا ےکا کے کن اق تک ضرف شا ر ا پرا ںکی اعت اک ی صورت میں م ہو 
کیج بکہ دوبان تکابال اس ےا کل ماک کیا کک کے نات بکودائی کر دے اود چ وک ھال اشن خو دوو یعت کے مال ککانائب بھی 
ےک جب ا نے تالت کر کے حفاظت کے خیال سے مال امانت یں کاو واپنے پا کے لیا گویا ا ےکک کے 
اب کے پا ای کر دی رادان بن کوک انت کے اک سے اک تاتا مقار فصو دقت کے ۱ 
لئ کیس تھابلہ روت کے ے تھا۔)۔ ۱ 
وج :اکر مستودع کے ب ما لاماخت اس کے اس ارادواور اخ کے اغی ر وہای کے 
ای ین گی ضا ST E E‏ 
ای جیمااتقای مال اس میں ملاو یر سار ابال ات ب کل گیا اکر مستووع نے ال بات 
کی ضفاظت میس خیات س ےکام اعد مس اس خیانت کے آجا رکو )کر کے پپورے طور ید 


ا کی فا یکر نے اگاءتفحھیل ستل عم ءا قوالی امہ بو لای ۱ 

قال : فان طلبها صاحبها فجحدها ضمنها لانه لما طالبه بالرد فقد عزله عن الحفظ فبعد ذلك هو بالامساك 
غاصب مانع منه فيضمنها فان عاد الى الاعتراف لم یبرأ عن الضمان لارتفا ع العقد اذ المطالبة بالرد رفع من 
٠‏ جهته والجحود فسخ من جهة المودع كجحود ال وكيل الوکالة وجحود احد المتعاقدین البيع فتم الرفع او لان 
المودع يتفرد بعزل نفسه بمحضر من المستودع كال وكيل يملك عزل نفسه بحضرة الموکل واذا ارتفع لا 
يعود الا بالتخديد فلم يوجد الرد الى نائب المالك بخلاف الخلاف ثم العود الى الوفاق ولو جحدها عند غير 
صاحبها لا يضمنها عند ابی يوسفء خلافا لزفر لان الجحود عند غيره من باب الحفظء لان فيه قطع طمع 
الطامعینء » ولانه لا یملك عزل نفسه بغیر محضر منه او طلبه فبقی الامر بخلاف ما اذا کان بحضرته. 

رجہ :۔ فد ود ی نے فرمایا ےک اکر اک نے توور سے انی بات طل بک اورا نے د سے سے صاف الا رکرو لکن 
یہد دیاکہ یر سے پا سک یکوکی ود بیت نیس ہے فوبہ مستود ئا لکاضامن ہوگا۔(ف اکر اس ایر کے بعر ولائ ضا 


کالپ داے جد یړ ۵ ۱ 2ھ 
ہو جاۓے وای ص نی مستوو رع یا ابا کا تاوا ا واک لاز م ہ وگا نش ط یے س کہ بعد یل خو وای نے اقرا رکر لیا کہ 
میہرے پالات شش گر مطالہہ کے بد واشت ضا e‏ یی اگواہولاسے ا کاو ناثابت ہو جاۓ حب بھی وہ تاوالن اداککرے 
گا م .کی وک جب ایک نے اس سے اہی لاج تک وای یکا مطالہ کی ووی ا یکو اتی ابام کی حفاظ کاچ اسے ذمہ دار بنا ای 
سے ا کو محرو کر دیااس کے بعد ا کور و کر رک می ایام کا وہ اب اور دہینے سے الا کر نے والا م وگا ا بتاع ےوہ ۰ 
ور لص تکاضا لن ۶ گیا کے بح اکر اس نے اقرا رک لیا وجب کل ای کے جو انے تہ ہک د ےوہ لات سے بر کت م وگاخ واوا 
کہ وولع تکامعاملہ حم ہو چکا ےکی وک ماک ککی طرف ے واج یکا مطالہ کنا بھی اس عق دک و مخ مک نا ہوااور اس مستود عکی 
طرف سے کیا کا کرم ات :کسی کی کاوکالت سے اکا رکر نا وکال کور کنا ہو جا ےب بای شت ر یکا سے 
اا رکرناچ کو مکر ہو جا ہے ء اسی ط رحاس مستود کاک کرنا بھی عقد ود اج تک وت مک رن ہد یں عقر وداج تک مکر نادونوں ۱ 
طرف سے پایاگیایااس دمل س ےکہ ولت یس مستودر )کو اخقیار ہو تا ہے او مووک وا قفیت یل جب چاے اپنے آ پکو ۱ 
زو لکروے جیسے :کہ وکیل کو موک لکی موجو دی یں ا ےآ پکو محزو لکر ےکا اتتیار ہو جا ہے اور جب ایک مرجب عقر 
وولچیت ونا فذاز سر فو معاپ و کے !خر نیل لو ےگا( فا کے بح راک اس نے الا کا ا رار ک یکر یاجب کی اشن نہ ہوگا۔ 
` مک ککمہ مالک کے ما لکوحوال کرت نیل پا یاگیا۔ 
( فک وکل ودلیعت کے کرو سے کے بعذاب دونائب پاق یل رہ م )خلا فگز شیر ستل کے جہاں لمات ر کن دانے 
نے ایک مر تہ تالف تک بعد مواختت بھ یکربی۔( ف نطلا یکا پڑافاظت کے لئ رکھاتھاکہ جب کک دو رک والااسے 
فو نار ےگگان ب کیک موافنت ہوک لین جب ا کو بین نے پایھ اور تضصر کر نے جک ات سے عاق نہیں ہے تو مخالفت 
ہ ویر لیکن ماک نے ا کی تک عقر ودج تک و مم تی کیااور تہ تی اانت رک والے (مستووں)) نے کیا۔ پان یج 
مستووع ا کی کی ا سکانائب سےا ےار وہ الت مک کے موافق کر نے نو ص دستور وو ان اور مود مو ہا ےگ ۔ 
اور وت وس یو ہو یں ر بال م یک اترا رکر لے سے ھی وان نہیں ہو جا ۓگا)۔ 
ولوجحدها الخ : .اود گر مستود نے مالک کے سو انی دور سے کے سان اکا کیا ہو فو امام زفر کے نز د یک وو ضا مین ہو جاۓے 
گام اہ داسف کے خزد یک ضا کک نہ ہوگا۔ اور امام ابو حفیفہ ام مرکا بھی بجی قول ےکی وتک مالیک کے علادددوسرے کے سان 
اڈگا کر نا بھی حفاظم یکر ےکا ایک سر تہ ےکی کہ اس انار یں اس امام یکو ے بن ےک خوا خش سم جو ای ہے۔ ای لے ایک 
کی موجودگی کے اضرا کے چا نے کے لخر وہ مستود راان خودکومنزول کی ںکر بک ےکی وکر ووا جج تک متوو )با رہ ےگا 
بخلاف اک ےکر مالیک کے ماخ اکا رکردے تو محابلہ رمو جا ےگا۔ ا 
و :ا الک نے اپنے مستودع سے ابی ابات والیس ماگ ہراس نے دنن سے صاف 
اکر روما گر متورعغ ہے انج موو( الک ایا ) اا کد ات 
اک کیا ہو سک لکی نیل :ا لاف اع ےکر ام رلا ل 
قال: وللمود ع ان يسافر بالوديعة وان كان لها جمل ومؤنة عند ابی حنيفة وقالا لیس له ذلك اذا كان لها 
حمل ومؤنة وقال الشافعیٌ لیس له ذلك فى الوجهين» لابى حنيفة اطلاق الامر والمفازة محل للحفظ اذا كان 
الطریق آمناء ولهذا يملكه الاب والوصی فى مال الصبىء ولهما انه يلزمه مؤنة الرد فيما له حمل ومؤنةء فالظاهر 
انه لا يرضى به فيقيد به» والشافعیٗ يقيده بالحفظ المتعارف وهو الحفظ فى الامصار وصار كالاستحفاظ باجرء 
قلنا مؤنة الرد يلزمه فى ملكه ضرورة امتثال امره فلا يبالى بەء والمعتاد كونهم فی المصرء لا حفظهم» ومن 


صیلن ابد اے جد یه 5 لر "م 
یکون فى المفازة یحفظ ماله فيها بخلاف الاسعحفاظ باجر لانه عقد معاوضة فيقتضى التسليم فی مكان العقدء 
واذا نهاه المودع ان یخرج بالوديعة فخرج بها ضمن» لان التقييد مفيد اذ الحفظ فى المصر ابلغ فكان 
ترجمہ:۔ ققدود گی نے فرمیا ےک ای کو ای با تکااغتیار ہو تا ےکہ مال امام کو یکر سر کے اہ چہ امات اسک تچ ہو 
جن سکونے جانے کے لے سوا ری اور خر کی ضر ور ت بف ہواوردقت ہونی (ف۔ خواو ن دک س رہ٭یازیادہکا (i-8‏ 
تول امام ابو حفیذ ہکا ہے۔ صا شین نے فرمایا کہ جب امانت اہک چچ مو کو سیا تھ نے جانے یں سوا ری کی ضر ورت ہو اور 
آکلینف موف ہو اوا کی اباش تکوسفر میں سا ت نے جا ےکااغقیار نیس ہے اور امام شای نے فرمایا ےک اسکودوٹوں صور تڑں میں 
ےک کن کی افا نے( کی ےم چ ایی مو جو نے یا ے کے لئ وار کی رور ہر کے کن 
ونر ھا وار ی کی رور ت نہ ہو کے میک او رکاٹور ورو نوووتوں صوز تڑں ٹیل اں نس کواٹی امات سے سا کر سفرمیں لے 
ہا کااختیار کیل ے۔)۔ ۱ 
لابی حنیفة الخ :.امام ابو حفی کید کل ىہ ےکہ ال نے حفاظ کا مطلتق عم دیاے لج اج کو صو مکی لکیاےء 
راست اور میدران کی اکر فو مو تووم بھی تفاط کی مہ ہے اک بتاء پر تو کے ہچےکامال یھر باپ کوہاو ص یکو سف کر ےکااخیار 
کک ہو تاےء(ف۔ عا لالہ چھو لے سے کے مال می با پکویاو ص یکو ای سم کے تفر فکااختیار ہے جوا کے کن یں بتر موی 
اس ہی کی مم کے نقصا نکاخطرہنہ ہو۔ اس یناد گر سر کے رات میں خطرہ ہو تافو با پکویاو یکو بھی سفر میس نے چان کا 
اخحضیارنہ ہوگاادر جب ر استہ می حافت کن ہے و ایک امین کو ھی اپنے سا کے امات نے جا ےکااختیارے)۔ 
ولھماانہ الخ :اور صاخ نکی د مل ىہ ےکہ مالک کے زرے وا لچ یکا خر رخ لا زی ہوگگاااس صو رت میس ج بکہ ات الک 
نز ہو جس کے لانے اور نے جانے کے لے موا رک اور کی ضردرت پڑکی ے اود ظاہر یہ ےک مالک اس بات بر رای نیل 
ہوگااور وہ فاظت مطل ہیں ہے با ال میں ایک نا تی دکااختبارکیاگیاے ء(ف۔ ی اس طور بر حقاش کر ےک مالک کے 
ذمہ ا لک وای کا۶ لاز نہ آائے۔ معلوم مو نا چا ےکہ اصل یل واج یکا ری شر ماما کک کے مہ لاذ م ےار چہ وو مستورع 
انی مبربالاود شر اف تکی بنیاد یہ خر کا مطالبہ کہ سے یخی خرن کے ایی لے آ٤‏ )۔ والشا فی ود عت میس مطلتا تفاظ ت کا مم 
کی دتے بک ای نظت سے مقی دک دی ہیں کار وار ہو اور وہ شرول میں حفاظت ے۔(ف۔ مشیر کے وا ل ےکی مراد 
یہ ہو ےکہ جس ط رع وگوں میس اپ ما لکی تفاظ تکاد ستور س کہ دو شس تفا تکرتے ہیں ای رح ہے بھی تفاطت 
کہ سے۔ ما کی مال ای م کی جی ےکی کو لاز م ناک تفاظت کے لے رکھا ہو۔ ک۵ ١‏ 
(فب۔ اپ اوہ ستتوو رعا ما لکول ےکر نہ سفر یٹس جا ےکااورنہ دوضا٠ن‏ ہوگاء حا سل ستل ہے ہو اکہ صا ی تو وار ی اور 
سر خرس دی ینہ ے جا ےکی ہہ ول و سے ہی ںکہ ای طر مالک پر وا لچ یکا خرن بڑتاہے لپ اا کی احجازت می ىہ نز شی 
یں ہے۔م )او رہ ما لکاجواب ہے د سے می کہ ا کی کیت میں اس خر نک ضر ور ت اس وجہ سے لاذ م آک یکہ ا یکی تفاطت 
کی فرماضرداد یک یگئی ہے۔ اہن ان یت یڈ ہک یکوکی پر واہ نیس ہوگی۔(ف۔ امام شاف طاطت کے می معن لی ہ ںک حفاطت ۔ 
ایک ہو کا شر مس روا جاور د ستور ہو اس لئ اس مستود کو مال شر ہی می ناشت کے لے رک ےکا عم سے نیشن جم اس کا 
جاب یہ دی ہی ںکہ وا طر یت فو یی کہ مود اور توور دو ٹول بی شر بیس ر ے ہیں مین عام دستور یل جنات 
لے شر میس رر ہنابی تفاظت کے ے ضر ور ی یں ے اک ےج تی جل میں ر ہتا مو جل میس موجودہووہ جل بی مس ا ۓ 
ا لکی تاق تک تا ہے ابا تفاظت کم مس دا غل ہے اس کے بر خلاف اب ت کے سا کے تفاظت رک یکومامو رکر ن کا تلق 
اس عم سے نیس ےکی وکمہ ووتو عقد معاوضہ ہو ماتا سے لپ ابجہاں معاللہ ب وکا ہیں سپ ردکرناہوگاں - 


ا سو ۱ ھا ۓ ۰ بل نشم 

واذانهاه الخ: E OE LN NS‏ 
م دار م وکاک وک فاظت شی باہرنہ نے جا ےکی قید لگانا عفید ےکی کک شر کے اند رکی تفات ا مکی او رلور کی طفاظت ے ء اس 
ےمد اہ نے ہکات ا لق اک غ گر دب دا ےک رات کی اھت ے لے 
اس صندو قکواخیار کر و یی اس میس نہ رکھ وتوہ ہے فا کہ قیدے جیا فی شس ے_ 

تو :کا متوو مال اباش تکوسفر میں 3)8 0+0 
۱ شر بکا مودو رکا ء اور مال ایام کہ ال کے TTT‏ 
۱ مون ہویانہ موی ہو ار ای نے سر میں سا تر نے چان ےکی ص رای الت دی ون 


ا و ص صن رو میں رک ے کیلع ج ےکی کیاکی سا لک یتیل , کم و مل _ ) 
قال: واذا اودع رجلان عند رجل وديعة فحضر احدھما يطلب نصيبه لم یدفع اليه نصيبه حتی يحضر 
الآخر عند ابی حنيفةء وقالا يدفع اليه نصيبه» وفى الجامع الصغیر ثلاثة استودعوا رجلا الفا فغاب اثنان فليس 
للحاضر ان يأخذ نصيه عنده» وقالا له ذلك» والخلاف فى المكيل والموزونء وهو المراد بالمدكور فی 
المختصرء + لھما انه طالبه بدفع نصيبه فیؤمر بالدفع اليهء كما فى الدین المشترك وھذا لا يطالبه ہتسلیم ما سّلم 
اليه وهو النصف ولهذا كان له ان يأخذه فكذا یؤمر هو بالدفع اليه ولابى حنيفة انه طالبه بدفع نصیب الغائب . 
لانه يطالبه بالمفرز وحقه فى المشاع والمفرز المعين يشتمل على الحقين ولا يتميز حقه الا بالقسمة ولیس 
للمود عولاية القسمة ولهذا لا يقع دفعه قسمة بالاجماع بخلاف الدين المشترك لانه يطالبه بتسليم حقهء لان 
الدیون تقتضی بامثالهاء وقوله له ان ياخذه قلنا لیس من ضرورته ان يجبر المودع على الدفع كما اذا كانت له 
الف درهم وديعة عند انسان وعليه الف لغیرہ فلغريمه ان يأخذه اذا ظفر به ولیس للمود ع ان يدفعه اليه. 
رجہ ترد سے فرلاہ ےک کرد عو ےک شس کے اس آوچ لات کیک دو شی ے ایی 
ےد پال مار ہو کرس میں سے اپیے ج ےکا مطالبہ کیا نو امام الو تفہ 5 بک ج بک کک دودوم را ن ھی حاض نہ ہوا یکو 
ا کا حص نیس دیاچا ۓگااور صا نین نے فرمایاے کال وا کا حص دے دیا ہا ےگا حا مین سے ان شی ین کو 
ای و ارد رب مکی گل ہآ ئے اراس کے پا امات کے طور پر رک وک لن چو افرا اب ہو گے و ۱ 
۱ ای مکل میس ابو یف سے نز ریک وہ س جو موہودنۓے ا کے اخیار نی وکاک وواناحصہ انگ نے کین صا مین کے ری 
ہے م کہا کو حص د ےدیاہا ےگ اختلافا کاک ےک 2 0803 ینیج تو لک یانا پکردی جا 
ہو اور کی چو ست با نکی کیا ا یکی بھی بجی مراد ےے۔ صا ین کے خزدیک نکل ےکا و ان رن ے 
_ صرف ایا حصہ دی ےک کہا سے ہنا اص کی طرف سے اسے ہے م ذیاچاے کاک ا کو ا یکا حص دے دیا جائے۔ یسا :کے 
مش رک قرضہ می ہوجاے لجن ا :دو مول نے اس مشت رک فلا مکو روخ کی ران ئل سے جو موجو و ہے اس شی سے 
جو مق روش ے اسب ےکا مطالہ کر کا ےا کی دج ہے س کہ اس موجودش کیک نے صرف اک حص ہکا مطالہ ہکیاہے جو انس 
کے نز دک کہ نی سے بحن ضف حص ءاسی لئ اس موجو دس ا ناحصہ ویک بی ہکات ا کل ہے۔ اہی طر بے اس صتووع 
کک یا از اک ا او ووت . . : 
ادرالا مالو یق کی د یل مہ س ےک ای ش یک نے غاب کے ح کو ہی ےکا مطالہ کیا ےکی نک دای اما کے 
سک مکی 


بالات !بھی مش کے ...من ا کاخ ا کی اس مال !مات مم ےج تیم ہیں کی گیا ے جب 
کہ ووا ہے جیھ ےکا مطالہ کر جاے جن سکو شی کرو ڑکیا ے اورا کی کک دومال جو مش رک سے نجس ےکن جم یم کیااک ےگا 
اس بی وولو ں کا تن شال ے اور صرف مطالہ کر نے وا ےکا عق اک ونت ظا ہر ہ واج بک ا سے شی مکردیاجائۓےء عالاللہ 
مات پر لیے وانے ن توور عکو ی مکاا تیار ٹیس ہو تا سے اسی بنا بر اس متوو کا ی مکرن بالا تاقی ی مکرنا ی ںکہلا تا 
ےہ برغلاف شت رک تر ضہ کے اس میں قر خواوصرف ایغ عق کے دی ےکا مطالب کر جا ےکی وک قر ضوں کی ادا گی سل 
ال سے نیس مون بل اس می چ ے ہو اک کی سے جو ای نے یی کے کی سے ن تر وار پر ج قرغ باق ہے وہای ما لیکو 
یں دتا ےجا لا ہو اتھھابلہ اس قرضہ کے جلیسامالی دبتا سے پھر دو نول یل پرآبد کی کے سا کے حص ہو جا اے اور صا جن 
ا کی بات رک والا ہو دہ جہال ہے حصہ پا نے کے اور ہے تی می ںکہ یہ بات اور چان 
سے گرا کے سا تھ مہ بات لازم نیل کا توور )کو و ےے بر مجبو رکیاجاۓ چنائیے :ایک می کے پار دد م زیر کے 
اس ابات کے طور بر موجود ہو اور اس ایت رکٹ وانے بر 02 ے کے راد در م پاق ہوں وای کے قرش خوا ہکوای 
بات کاافقیاد ےک ال لکامال ہل یا اس سے لے ےکر مستوورع ی ابات لے دا ےکوی اضتیار ٹنیس ےک ابات ا کو 
دےدے۔(ف۔اورا بی جلا ی سیل یں شو ے ل مستود کو ینا جائزےیا یں( 
وج :۔اگروو خصوں نے اکے م وکر ایک م کے پاس انی اک چ رات رکی بحر شس 
انیس سے ایک شس تھا اکر ای سے اپناحصہ والیں ماگ اکر دو شخنصوں نے م لکر ہے 
ال بور تر ض ایک س کوویا رھ ولول بعد ان یس سے صرف ایک تعنص مقر وض 
کے پا چاکر ان حص ہکا مطال کے ؛تفحییل مسا تہ ع۷ا قوال اخ ولا کی 
قال: وان اودع رجل عند رجلین شیئا مما یقسم لم یجز ان يدفعه احدھما الى الآخر ولکنھما يقتسمانه 
فیحفظ کل واحد منهما نصفه وان کان مما لا یقسم جاز ان يحفظه احدھما باذن الآخرء وهذا عند ابی حنيفة . 
وكذلك الجواب عنده فى المرتهنين والوكيلين بالشراء اذا سلّم احدھما الى الآخرء وقالا لاحدھما ان یحفظ 
باذن الآخر فى الوجهين» لهما انه رضی بامانتهما فكان لكل واجدِ منهما ان یسلّم الى الآخر ولا يضمنه كما فی 
ما لا یقسمء وله انه رضی بحفظهما ولم يرض بحفظ احدهما كله» لان الفعل متی اضيف الى ما يقبل الوصفت 
بالتجزى يتناول البعض دون الكل فوقع التسلیم الى الآخر من غير رضاء المالك فیضمن الدافع ولا يضمن 
القابض لان مود ع المودّع عنده لا يضمن» وهذا بخلاف ما لا يقسم لانه لما اودعهما ولا يمكنهما الاجتماع 
عليه آناء الليل والنهار وامكنهما المهاياة كان المالك راضيا بدفع الكل الى احدھما فى بعض الاحوال 
تمہ :قدو ری نے ربا ےک اکر ایک ی نے دو خصوں کے سام ایک اہک چ امت کے طور بر ر کی جو آم سے 
پانے کے تال ہے توان ادوخول ٹیس ےک ای ککوبہ جائز کل س کہ د ادوس سے ش ری کود سے دے حن ایک ہی یکی 
اظ ت اور مہ دار گی میں د ےدک جاۓ پلگہ ان د ونولپ ىہ لاذ م کہ لے سے رین را ی ےر کر ارو 
گی اظ کر ےاو رار وہر ایک مو چھ تیم نہکی چاسکی و ب ہے جا وک کاک کی اچاز ت سے اس لور ے ما لک دوص را 
اط کر ہے اور ہے قول امام الو یکا ہے ۔(ف شلا ایک شع نے بج ھک ہوں دونوں کے سا یئ ملاک کے اور ےہاک ہے 
مہو تم دوفو کے در میالن'امات کے طور پر میں فوان دوفو لکوبہ جا ےکہ دہ کسلہ ا سکوخرف نصف ی مک ٹیس بعد یس ا کی 
تاق تکرمیں۔ یہ ایک ای ابات کی چو م کے تال کی اراک الات جو م کے تقائل نہ ہو دہ مشلا :ایک غلا م ےک اکر 


ان الہد ا ہدید مو ے بار م 


الا مر ۹ ۱ ہے جلر 2+ 
ایک فلام دو آدمیوں کے در میا ابات کے طور پر رکھاگیا ت2( چ وک )ہے غلام تیم کے لاک ہیں ہے اس لے ان دونوں می 
بے کو ایک دور ے ہک اچازت ےا 21 اکا حافت رجف ان 
وكذالك الجواب الخ :بی م ام اعم کے خزد یک دوم نول اور خر بد کے دو وکیلوں کے بارے مل سے ج یک 
وولول ٹیل سے ایک دوسرے کے ذمہ لگادے۔(ف۔ر مل نکی مثال یہ ےک زیر نے دو خصوں کے در مان ایک چ زر جن رکھی 
چو میم کے تقایل ہے بک ران دونوں یش سے ایک نے یہ یڑ دوصرے کے وا ےکر دی تو امام اعم کے دی وو انس جص کا 
ضا ہوگااور خر یار کے وکی لک مال بیس ےکہ زیدنے ایک کی نیړا ری کے لئ دو آدمیو ںکو و یل بناااوردونوں کے : 
در میا ن ا ایمامال رکھاجو یم کے تا تین ایک وکیل نے کل ال دوسر ےکی حطاطت شس دے دی اور دوضال ہگ وہ 
آدھے تی ےکاضا من گا“ ا 7 
ہت وقالا لاحد ہما الخ :اور صا شن نے فرمایاےکہ دوامانت تم کے لا ہو یانہ ہو دوٹو کو اس با کااغتیار ہ ےکہ وہ 
ےنیس کی اجازت سے اما کی اظ کے ان رات کد بل ہے ہ کہ اات رک والاجب اس بات رای تھا 
ک وونوں ا لک طاظت کم ادلات رگج اس لے ان وونوں ٹیس سے ہر ایک مات میس لیے وانے سن مستود )کے اغقیار 
واک دوسرے کے جو ال ےکردے اور جس ط رن قائل م مال یس ضا کن نیس ہو جا ہے ای طرں ایل یم مال میس بھی 
زامن نہ مو (ف۔ ن جو چ تیم کے لاک دہ موا سکو اکر اپنے سای کے جوا ےکروے تو وہ الا تھاتی ضا ن نیس ہو تا 
ے۔خلاصہ مہ مراک صا یی نے مم کے لاکن ما لکون تال م مال پر تی سکیاسے اور اس تیا کر ےکی ییاور عل چام 
نے مورح نے ان دونول خصو لکی امت دا رک پر اعت کیا ہے اس لئے اس بات پر دلا تی کہ ووم رای کے وا 
کر نے پر رای ےس ۱ ۱ 
وله انه رضی الخ ابام الو یف کی د کل ہے کہ ما کا کک لین مودرع دوفو ںکی حطاظت می لات ر کے پر رای ہو اے 
اذز وواس بات پر رای ہیں ہوا ےکہ دوٹوں یل سے ایک می یں پو ری اا فکی صقا تکر ےک کہ اط تکرن ےکاکام 
ج بی ایک چ رک طرف شوب ہوجو تیل شیم ہووما ی کے ج ےکوشائل م وگااور کل کوشا ینہ م وکا ےا سے ج ےک و بھی 
دوسرے کے جوا ےکرد ینا مال ک کر ضامنلد گی کے خی ر وکاپ احوال ہک نے والاضا کن م وکا کین قیضے یس لے والاضا معن نہ ہوگا 
کی وہ مود اپٹی طرف ے جس ہی کے پا س ابات رک دے توو ابام او عطق کے مزدک ضا کان ہوگا۔(ف۔ ہے قاعره ۱ 
صرف اس صصورت کے لئے سے جس میں حفا طس یکر ےکا علق اہی ے ما لکی طرف ہوجو تیم کے قائل ہو۔ ک 
وہذامخلاف الخ اور نہ عم ایک اانت کے برخلاف ے جو تیل شیم دہ وکوک اس میں پر کال دوسرے کے 
حا ےکردیناجائز ہے اور طفاظت صرف ایک ےک متیر دل ر ے گ یک وک جب ای نے د وآ و میوں کے در میالن ات رگ 
سے اور ہے علوم ےکہ چو ہیں گن ادن اور رات ٹیل پروقت الع دوفو ںکو جع ر ہن کن بی نیس سے ال ہت ہے بات معن سک ایک 
ای کر کے ابا رک بای دوتوں ا کی تفاظ تک میں فو اس پات بد مل کہ مالک اس چزبر رای م وکلک حش حالقول میں ہو 
اک توو ہل ابات ودوسم ےو و ۱ ۱ 
قوش ایی ٹس نے اٹ ایک چ دو آدمیو ںکو مات ر نے کے ے دی جو تقایل 
شیم ہوبانہ ہو اکر وو م توں ای چ رک يړا ری کے وو وکیلوں ٹس سے ایک نان 
مہ دار یاس شر AEs‏ کی و ےہار ے میں جو ال م گی بیان 


بی 


کی اکوکی ایی چ رج ی م مون مو وو آومہوں کے در مان اماضت' طور پر 


انالد اے چد یر e‏ 27 : 
رکم رک براك میں سے ایک نے دوصرے کے حوالہ اس ےکر دیاء ما کی ایل , 
اقوال ات »ولاک "0.0 ۱ ۱ 
٠‏ واذا قال صاحب الوديعة المودع لا تسلمها الى زوجتك فسلّمها اليها لا يضمن وفى الجامع الصغير اذا . 
نهاه ان يدفعها الى احد من غیاله فدفعها الى من لابد منه لا يضمن كما اذا كانت الوديعة دابة فنهاه عن الدفع 
الى غلامه و كما اذا كانت شينا یحفظ على يد الدساء فنهاه عن الدفع الى امرأته وهو محمل الاول لا یمکن اقامة 
العمل مع مراعاة هذا الشرط› وان كان مفیدا فيلغوا وان كان له منه بد ضمن لان الشرط مفيد فان من العيال من 
لا يؤتمن على المال» وقد امكن العمل به مع مراعاة هذا الشرط فاعتبر وان قال احفظها فى هذا البيت فحفظها 
فی بيت آخر من الدار لم يضمن لان الشرط غير مفيد فان البيتين فی دار واحدة لا يتفاوتان فى الحرزء وان 
حفظها فی دار احری ضمن» لان الدارین تتفاوتان فی الحرز فکان مقيدا فیصح التقیید ولو کان التفاوت بین 
البیتین ظاھرا بان كانت الدار التى فيها البيتان عظيمة والبيت الذى نهاه عن الحفظ فيه عورة ظاهرة صح 
الشرط. 
ترجمہ :اکر مال کے مالک یی مود نے تود ےکہاکہ ہے امات ای یوی کے ہو ا نے ن کر نا یکن ال نے واا 
. ای کی کے ہو ال ےکر وی ذووضامین نہ ہوگا۔ چائ صخیر میں یا کیا گیا ےکہ اکر مود نے مال لمات د کے مو کے دوصرے 
کو کہ دراکہ اا کو ا ےگھردالول مل س ےکس کی ابات میں تہ د ینااس کے باوجو ای نے اپ تع سکورے وی ج کو 
دہے لقی ارہ نیل ہے تن ا نے تاشت کے لے اس ما لکواریے ی کے جوا ےکر وی سکود ےے ب مجیور ہے نو دوضامن 
تہ وک خلا :کو یکھوڑایا ایا جاور ے جو سوارعی کے ا گن تھ اس کے مت اس کے ایک مودر نے م کہ یتاک اسے ا خلا م 
کوتہ د ینا۔(ھالا تہ وو اک بات سز ور تھاکنہ اس کے دانے او رای کے ے غلا م بی کے جوالے کرے۔) یا خلا مات ای جج کے ٠‏ 
چو گور تول کے پا تقر میں گنوت رکھی ہا ہے اور نل مود نے اک سے م ےکہہ دیاکہ اسے ان ییو یکو تہ دنا ھا لکیہ ا یکی 
طفاظت کے لے وہای ییو کور پر یور ے۔)۔ : ٠‏ 
ال طرح مامح مغر سے معلوم ہو جا ےک اگمرالن کے جوا ےکر ناض رو ری موب ممسقودع ضا صن نہ ہوگا ای لے مق نکی 
لا ٹ ‏ رر BS‏ سی نت 
وک کہاگ چہ مود نے اس با کی شر زک گی ای کے باوجود چوک مستود از خوداس ما لکی تفاظت نمی ںکر کے ہنا 
ىہ شر طاگرچہ مودع کے خیال مس ضروری اور مفید ہو پھر بھی لو ہو جا شی ءالہت اکر مسقودع کے لے اس پا تک یکنیائش ہ وک 
ج سکودیے سے مود سے خر دیا ہے ا کو سے !خر تفاق تک کے تب ای کے پا د سے سے ہے توو ضا من ہو 
جا ۓگ اکی کہ ہے شر ط ایک ے ج کے مود کے لئ مفیہ ہے ا ںی وجہ بی ےکہ آدی کے اپ لوگوں میس یھ ایپ بھی افراد 
ہوتے می ںکہ مجن کے پاس عفاظطت کے لے مال اما دہ مس اتاد یں ہو پا ماج بک مستودع کے لے اس مفید شر رک 
موچ دی بیس اس ایام کی حفاظ یکرم من ہو وش رط کااختبا رکا جائ (ف۔ ای طر مت ےکا ھا کل بے ہو اک ہاگ ر مووحاتے 
مسقودر ]کو ای لمات یو اگم کے لام و رہ کے سپ ردکرنے سے حکردیاہو اس کے باوجو ر ستو ور نے امات ا ےا وکوں کے 
حا کروی وا یوقت ہے د یکنا اہ کہ ا نکود سے خی امام کی حفاظت ممکن نہ ہو اود ہین سے دو ی ضا من شہ ہوگااو رگاس 
سے بغیر بھی طفاطت ممکن شی جب ضا وجا ےک ٠‏ ۱ 
وان قال احفظھا الخ :اوراگر مود نے مستود مس ےکہ اک تم می رک اس امان تک تفاظت ا سکھرے میں رک ہک کر وشن 


090 ۱ ۱ 11 لر نشم 
7 موم زین ای کر کے کی وو ےکھرے میں رک ھکر ا کیا حفاظ تک تب تھی اس اا کے ضا ہونے سے وو مست وع 

شا کوک موک کے ےی فص کر ےکوعاطت کے لے می نکر ےل رمق نی کیک ایک یکر 
کے د کروی لی ایک مس حفاظت کے اقبارسے فرق نیس ہو تا ہے (لیان ہے عم اسان کے طور ہ ےک وکر تاک 
قاضاب ہ کہ دہ ضا کن ہو جا ےک دککہ ایک گے د وکروں می جفاطت کے خیال سے بھی فرق ہوسا ہے مل ای کی 
دلوا رگ کی طرف ہے ادرو ہکناروٹش ہے جم سک وجہ سے چور کے لے قب ڈا لک کھرے ں واش وناور ای سے مالی نےکر 
کل جانا آسالن ہو جاے جن پک دور اکر گے بی ون کی وجہ س لی چور کے لئ اس میں داخلی ہو آہان خی ہو 
ا یناء پرا یس طفاظت زیادہ ہو کن ہے اک ہے اک مفید شر ورک تالف مر نے سے متوو کو ضا ن ہو نا جاگۓ پھر بھی 
اتاو ضا کن ہوگا چ وکل اہیے فر کا اتا کی ہو جبیہاکمہ بو کہا ہ وکہ ال کے کے اا یکو نے بے ال کی حفاظ یکر دیا 
اس صندوق بیں رکو توے ش ہیں مفید میں مون ہیں۔ 

۱ اور یں( یمم ہکا ہو کہ اس یک اک تیا ی پ عم لک نازیادہ ہت ہے واللر اعم کی کہ مار سے علاقول شل مکانات لے 
چوڑۓ ہوتے ہیں ای لئے شرط مفید ہوی جیماکہ اس کا مان آ ے۔ وان حفظھافی دار الخ: او اکر ای صورت میں 
مستودرع نے ا گم کے علادددوصر ےگ رک ےکھرے می ال کی تفاظ تک وو لے ضا ہو جان ےکی صورت میں ہے س 
اکن ہو جا ۓگ اک کہ حفاظت کے محالے می دوگھروں کے ور میالن فرت ہو جا ہے اس لئ مود کی لگائی ہو کی ش رط مفیر موی ۱ 
اور ابات ین ا کی قید کان کی کچ سے او راگ ایک دی اکم کے دوکر ے اہی مول جع کے دوکروں کے در میان حفاظت کے 
اط سے فر واج ہو خا :و مکمک میں دوفو لکھرے ہیں ہت بڈاہد ای مودںئ نے سکھرے میس اپتا ال ر کے سے fes‏ 
سے تام رک ور بر رای ہو خلا :ای کے دروازے او رکم ےکی بندنہ ہوکی ہو توا کے عی بکا ہو نا ظاہر ہے اک لے ش رط کان بھی 
شس پ ٰ کے کی 
(ف جلیاکہ بند0(مت رم )نے پل تی میا نکر دیاہے ء اب ىہ با تک اکر ای متوو رع نے مات کے ما کو اپیے مود کی 
اجازت کے !خی ر ا سے نما سگھردالوں کے علادہ شی جن کے جوا ےکر نے بے ماک مکالن بور ہو تا سے اپنی طرف سے اکے علاوہ 
کی اور کے پا اس مال ای رک دیااور وو بال اک جکر سے ضار ہ گیا تا مستود کا اس ما کا ضا کک ہنا ظا ہر سے ء اور اب 
ایس تور نے میس تن کے پا مال انا رکھا ے جو متوو امستووںع ہوا کیاوہ بھی ضا ہو کا سے یا یں ن اس . 
ودلعت کے مال فک کیااک با تکااغتیا ہو تاس کہ اک سے فان ے نے یا میں ہو ما سے فو اس کل میس ا ہکااختلاف سے 
چنا خی اام م کے دیک دە ضا من نہ ہوگا لین صا کیل کے نز ریک ضا کن م گا کیا بات آ کے یا نکیا جار یے۔ 

۰ و :د اکر مالک نے اپ مستتودع ےکہاکہ تم یر ے اس ما کو تفاللت ے انی 

یاس ےگھ کے افراد بیس ےکی کو یا لال شع سکونرد ینا اسیک کے فلا ںکرہ یل 
رکو اور فلا يکمرہ شی نہ رکھوء یا فلاں صندوق مین رکھوبافال صنروق می نہ رکھو۔ لان 
اں مستود مغ نے ان شر طوں کے خلا فکیا ‏ پر وہ ضا م گیا ما لکی یل اقرا 
ا کے ءولا ان ۱ : 0 
قال: ومن اودع رجلا ودیعة فاودعھا آخر فھلکت فله ان یضمّن الاول:ولیس له ان يضمن الآخر وعند 


۱ )0 اس لے 7 مس ے جوز نکوپھاتا من کیان ہےءای لئ سوارو لکی تعدادکااقرا رکیا ا ے۔ 


جن البد اے ہد یڑ r‏ لر نم 
ابی حنیفةء وقالا له ان یضمّن ايهما شاء فان ضمّن الاول لا یرجع على الآخر وان ضمَّن الآخر رجع على الاولء 
لهما انه قبض المال من ید ضمين فيضمنه کموذع الغاصب وهذا لان المالك لم يرض بامانة غيره فيكون 
. الأول متعديا بالتسلیم والثانى بالقبض فيخير بينهما غير انه ان ضمن الاول لم يرجع على الثانى لانه ملكه 
بالضمان فظهر انه اودع ملك نفسه وان ضمن الثانی رجع على الاول لانه عامل له فيرجع عليه بما لحقه من 
العهدة» وله انه قبض المال من يد امين لانه بالدفع لا پضمن مالم يفارقه لحضور رائه فلا تعدی منھما فاذا فارقه 
فقد ترك الحفظ الملتزم فيضمنه بذلك واما الثانى فمستمر على الخالة الاولی ولم یوجد منه صنع فلا يضمنه 
کالریح اذا القت فی حجره ثوب غیرہ. 1 ۱ 

کو رہ ,7 08 شس ے۱ پنیا ایک امات فاضت کے لئ ایک کور ی اوراس تنس نے ای 
کودوصرے کے پا کہ دیا یکر دوامانت اس دوصرے مسقووغ کے پاس سے ضا موی مات کے مال واتار ہوگاکہ دای 
پل مستوع سے ا کا تاوا و صو لک ے کان ا لکو مہ اخقیار نیش ےکہ دوسرے مستودع سے ا کا تاوالن و صو یکر ہے 
ول مام ابو عیڈاے۔(ف۔ شلا :زیر ےکر کے پا کو ابات رک ی بر بر نے ا امام کو الع کے پا اما رکھ دیاعا کہ 
مالک نے ا لک اجازت نیس دی کیاکی طرع ىہ الد اس کے گھ کے فاص افراو یں بھی یں س ےک جم سکود کے بخ رب کو 
ارہ یں ے یھر دو امات الد کے پا کے شال موی الا شاق بک ا کا ضا کن ہوگا کن اام ابو نیف کے خزدیک انس کے 
بال ککو صر ف بر ے مان ل کا یا ہوگااور دہ الد سے تان نیس نے سنا سے اور صا شین کے تر دی مال ککو بی اخقیار ہوگا 
کہ پاس بر سے عنالنالے یا اہ خالد سے مان نے مین کی سے بھی عضوان لے سک ہے۔ائی لے می نکی عیار تو ہے۔ 

وقالاللہ الخ : صا ین نے فزماا سے ود لجت کے مال فکواس با تکااخقیار س کہ ال د ولول یش سے جس سے چا تاوا 
وصو کر نے ا ب اگ اس نے بط مستورغ ے ناوا ن وصو ل کر لیاے وووەاں تاوا نکودوسرے مستورع ے وصول یں 
کر کت سے اور اکر موو نے دوصرے مستقودع مین مستودع کے مستودخع ے ماوان و صو لکیا او اس دوسرے مستودر عکو ای 
با تک اغتار موک کہ مل مستودرع سے ہے تاوا ن و صو لکر نے ٰ۱ ۱ 

لهما انه قبض الخ: ساخ کی دل یہ ےکہ دوصرے مستودرخنے اس ا کو اییے یں کے ا تھ سے لیا ے جو خود 
ضا کی ہو چکاے اہنراىہ دوس راچھی ضا ہکن ہوگا۔ ا بھی ہم نے جوم با کی س کہ ای سے ضا کی کے م تم سے ا قیضے می لیا 
ہے ال کیا وچ ےس کے مالک تودوصرے تن سکوانت دیے برای نی ہوا چ اس لئ ىہ پہلا تن دوصرے ملس کے با 
جوا ےکر نے می ذیاد یکر نے والا ہوااوردوضر ا مستو دع بھی اس ما لکوا ےپ ی ر کے میس یاد یکر نے والا ہوا ای لے ماک کو 
ال با تکااغتیار ےک د ولول ے مامت ے ککتاے لبت ات بات ہ کہ اکر اک مودع نے پھلے مستودع سے اون لن ےلم و 
ومد ور ے ستوو ر ے واب یں نے سے کیو کیہ دہ پہلا توو ما لکا توان د ےد سے کے بحرا کسی ال کا کک مو لاا 
بات اہ رہوگ یکہ سے مستودع نے اہن ؤا اور ھی ما لیکو اپٹی مکی سے اےۓ مسقووع کے پاک ابات رکھودایاے اپ اوا 
مستودرع ے اواك ہیں لے کے او اکر اس ہورع نے ممل توور سے جاوالن لی و دوصر ۱ تنس اس وان کو یی تور 
ےو صو لکر ےکا کوت دوسرے مستووغع نے پیل توو کے ےکا مکیا ہے اک لے اس رجو ہے کی اون لازم آیاسے 
کو مل مستورع ےو صو لکر ےکا 

وله انه قبض الخ :امام ابو یذ کی ول ہے س کہ اس دوسرے مستودرع نے اا تکامال ایک ای ی کے ا تھے سے لیا 

سے جو اھ یمک اصمل مان ککا این ہن ےکی وکلہ پہلا مستووع دوصرے مستوو عکو صصرف دسینے سے ضا ن کی ہو ہاگ جب 
کی ککہ اس کے حو ال ےکر کے وہال سے محعدہ نہ ہو جا ےکی وکلہ جب کک وہای سے لوہ ٹنیس ہوا کک ممل مستود عکی 


یبدا پر 7- 7 
طفالت اور زمہ داد یبا ہے اپ اا ی وف کک النادوفول بی ےک یکی طرف سے زیا تی ںی یگئی۔ پر جب پہلا توو 
اسے دپال یر رک ھکر دور م وگیاتب اس نے ا کی حقاظت کر وی جس کاااسں نے ظا مکیا تھا۔ اک وجہ سے اب پہلا مستووع 
ضا کن ہو جا ۓےگا۔ کان دو مرا ستتوو رع انیا کی عالت پر بای سے اور ا یکی رف سے ایی کو یکام خیش پا کیا ی سے اسے 
تعد یکہاجا گے ءاس لے د ضا کن بھی نہیں ہوگاجییے :کہ ایک کک یکو و می دوس راف سکاکیٹراہوائیس ا زک رگ کیا چو و صرف 
ای کےکود یس آ جانے سے بی دو ضا کن کیل ہو جا تاے_ ۱ ۱ 

و :ایک ت اح نے اپنی رامات رک کو زی رکو وک پھر زی نازخ دوہ چ رخال رکو 

ام دی دی او رای کے پاک سے دماعت ضاح موی توا ایی امانت کے ضائح ہو جانے بر 

مس ے تاوا نوصو ل کر ےک اک کی فصل ا قوال اخ ۔ و کل ) 

قال: ومن کان فی یدہ الف فادعاها رجلان کل واحد منھما انها له اودعھا ایاہ وابی ان یحلف لھما 

فالالف بينهما وغليه الف اخرى بينهماء وشرح ذلك ان دعوی كل واحد صحیحة لاحتمالها الصدق فیستحق 
الحلف على المنكر بالحديث ويُحلّف لکل واحد على الانفراد لتغاير الحقين وبايهما بدأ القاضى جاز لتعذر . 
الجمع بينهما وعدم الاولویةء ولو تشاجًا اقرع بينهما تطيببا لقلبھما ونفیا لتهمة المیل ثم ان حلف لاحدهما 
یحلّف للٹانی فان حلف فلا شىء لهما لعدم الحجة وان نكل اعنى للٹانی یقضی له لوجود الحجة وان نكل 
للاول پحلف للٹانی ولا یقضی بالنكول بخلاف ما اذا اقر لاحدھما لان الاقرار حجة موجبة بنفسه فیقضی به 
اما النكول انما يصير حجة عند القضاء فجاز ان يؤخره لیحلف للثانی فینکشف وجه القضاء ولو نكل للثانى ' 
ايضا یقضی بينهما نصفین على ما ذ كر فى الكتاب لاستوائھما فى الحجة كما اذا اقاما البينة. ويغرم الفا اخرى 
بينهما لانه اوجب الحق لكل واحد منهما ببذله او باقراره وذلك حجة فى حقه وبالصرف اليهما صار قاضيا 
نصف حق كل واحد منهما بنصف الآخر فيغرمه. 

ج یائ فو ریس مام یر نے فیایا ےک ال ای کے لے دی زارو رھم ہوں جن پوو خموں ےد یکی 
اس رس ےکا یس سے م رای مع کنا کہ ان تتام در تمو ں کاش اک ہو شی نے ای تی ےپ امت کے طور 
پر کے ےکن جس کے قیضے ننس ہے ال ای نے ان دونوں کے د کوک کے باوجو و مکھانے سے ائ کروی لپ امہ ہنراد درم 
دوٹوں یں مشت رک ہوں گے اس کے علاوہ ای تات پر ان دونوں کے مشت کہ طور پر ایک ہترار در ہم اور کی لازم مول گے_ 
( ف اک رہ مد گیا کے ایک ایی دد ہم ہو جائیں گے )۔ 

وشرح ذلك الخ :اس ع مکی شرع مہ کہ النادوفول مد کی سے ہ رای کار وی جع ے اور نے کے لاکن ےک وک 
ہرایگ کے د وی یس سیا یکا حال ہے۔ "شی ہیدہ دہ ہر ایک میں ہے احخال کہ ہواور یی علیہ مگ ہو اپا بور حد یٹ : 
کے عم کے مطابق ب ایی مت کے ہن ما کل م واک اپ دوسرے ف ران جو پر گی علیہ اور مر سے اس سے نم نے اور چ ھکل ہر 
ایک کا اور ے کے تالف ہے اہاہر ایک کے لے مد گی الیہ سے جد ہم کی جان ےکی اور اص کو اضتیار ہوگاکہ دووں شش ۔ 
سے جس سے چاہے م لیناش رو کر ےکی کہ دوٹوں سے بیک وت م لینادر ست یں ے اوردونوں میں ےکوی بھی کشر 
اور قائل تر ی کیں ہے اک ہناء اکر دونوں پر ییول میں سے ہر ایک لے مکھانا پا ے تو قا کی الن دونول کے در میان قرع 
انراز کر واد ے اک وودوٹوں خو شر میں اور تا شی کے خلاف ایبات کی ست نہ لگ کک ہک دوالنادووں بیس ےکی ای کک 
طرف انل ے۔الیا صل جب مد مجیوں کے پا ںگواہ یں ہیں فدہ ہگ علیہ سے عم نے کح ہیں یراک رگ علیہ نے دونوں میں 


کد الہد اب جد یر lr‏ بل 
ایت کے ے حم بھائی فااس سے دوس رے کے لے بھی می جات ےکی اور اکر وہ دوصرے کے ے کی کھا ہے او 
0 9 7 وی ا کے پاسل اس کے د جو کی پر ب بھی جت یں سے اور اکر اس نے 
دوصرے کے لے مس مکھانے سے ائ رک دیا دو صرے کے نام فیصلہ سادا جا ےکا رار ای نے پل ہی ےھ کے 
سے انیا رکیاتب فور کی طور سے یل نویس دیا جات ۓےگابلمہ دوسرے مد می کے لے مکی جا گی ۱ 
ال کے بر خلا ف ار مد گی علیہ نے دونوں مد عیوں بیس سے ہر یک کے لے اقرا رکر لیا تاس کے لے گم تادا جات ۓگا 

کوک اقرا ر ایی چت ے جو خودجی گ مکو واج بکر جا ہے ء اس لے ارا رکر نے کے سا تھ بی ىہ کم بھی دے دیانجا ‏ ےگااور م 
سے السا کا کرای مکووانب خی سکر چ ہے شی صرف اس چک ایا کر دینے سے بھی م ایت نیس موتا بک ای وت 
گا کر نا بجت با سے جب اض کی تاس میس الک کے اس سے مہ بات خابت مو یکہ پل ٹیہ یس ہی تا ن رکرے تاک 
دور سے د گی کے لے کم نے کے اور تا تی کے ٹیچ ہکا طروت خا بت جو جا ءاد اکر اس نے دوسرمے بد گی کے واسطلے بھی عم 
کھانے سے انکا کر دی وی الیک ب زار ور ہم نصف تصف د ر پان ےکا فیصلہ سنادیا جا ےگ کی وکر دحل کے اب سے دونوں ہی 
برابر یں جیے :کہ گر دوفوں ی گواہ بی کر دےۓ تو بھی بچی عم ہو تااور دو رگ علیہ بن کے قیضے ٹیس ایک ہراددد ہم ہیں ا خود 
ایک پاد در م اور بھی در ےگا کہ ہے کی ان دونوں میں برای شی مکروے جاک لک کہ مد گیا علیہ نے النادوٹول ہر عیول یں 
سے ایی کے لئے مک یکمانے اور ما لکی خیرات د سے کے لے اترا رک لی ےکا ن لاز مک لیا ےکی وک خو داقر کر نے اس ےکی 
ذات اس اترا رک د کل ہے اور جب اک نے وودر تم دوٹول مل کرد سے دہ ہر ایک کے نصف فر یک وگویاد در سے کے نصف 
فرت کے ہے اد اک نے والا م وکیا اپ اوہ صف فر ںکاضا من ہوگا۔ 

و :ار ایک تفص کے پاک ہرد ردپے ہیں جن کے پارے میں دو تصوں نے اس 

رد و یکاک ہے تام درد پے مرف مر ہے ہیں ء شی نے ای کے پا ا یش انار کے 

جھےء مل کی و ری سبل ماق ال اح کرام ولا کل 

ولو قضی القاضی للاول حين نكل ذكر الامام البزدوى فى شرح الجامع الصغیر انه یحلّف للثانى فاذا نكل 

يقضى بينهما لان القضاء للاول لا يبطل حق الثانى لانه يقدمه اما بنفسه او بالقرعة وكل ذلك لا يبطل حق الثانى 
وذكر الخصاف انه نفذ قضاؤه للاول ووضع المسألة فى العبد وانما نفذ لمصادفته محل الاجتهاد لان من 
العلماء مُن قال يقضى للاول ولا بنتظر لكونه اقرار ادلالة ٹم لا یحلف للثانى ما هذا العبد لی لان نکولە لا یفید 
بعدما صار للاولء وهل يحلفه باللّه ما لهذا عليك هذا العبد ولا قیمته وهو کذا وکذا ولا اقل منه قال ینبغی ان 
یحلفه عند محمد خلافا لابی یوسف بناءٗ على ان المودع اذا اقر بالوديعة ودفع بالقضاء غيره یضمنه عند 
٠‏ محمد خلافا له وهذه فُریعة تلك المسألة وقد وقع فيه بعض الاطناب» والله اعلم. 
: تمہ :داور یے ی بد کی علیہ نے پیل بد کی کے لے مس مکھانے سے اکا رک دیااسی ونت ت ی نے کیل مد کی کے کن مس 
عم دے دبا چب دو نے جائع سن رکی شرع میں ذک کیا کہ دوسرے می کے لئے بھی م ی امیا باکر اس نے 
دوسرے کے واسٹطے کی مکھانے سے ایارک دیا ووچ رار دد م جن کے بارے ٹیل تا ی نے پیل مد کی کے تبون میں فیصلہ دے 
دتا توو گم برل جا ےگاادرب ہکہاجا ۓگاکہ ہے پار در تم دونوں کے ور مان ش رک ےکی وک پیل مد گی کے ہن میں م 
دی ےکی وچ سے دوسرے ند یکا خی ب گل کیا جا تا ےکی وکلہ بی مد یکوی او ت ی نے اپنے اغقیار سے اول بای تایا ر ے 
انراز ی س ا ی کانام یل لا تماء اکر ایا ہو جاو د وسر ےکا کن با ل ہو الا الہ ییہاں پر ان دونوں انون یل ے اہی کول بات 


گن الہد اے جدی۸ ۔ ۵ لر “م ٍ 
بھی ہیں ہوجو دوسرے کے نکو اخ کر ےن عم سے انتا رک وج سے کے : پیل مع کے لے موجودد پور نے رہ 
در ہ مکا گم دای طم سےا فک ری وجہ سے دوسرے مل گیا کے کن بیس کیا لو ےپ ارورمو ںکا مد ےگاااس طر 2 
یلو سے ہراردد تمان وونول ید عیوں کے در میان خت رک ہول گے_ ۱ ۱ 
وذ کر الخصاف الخ :ام خصاف نے اس صورت میں فرمایا کہ قاض یکا عم پیل مھ گا کے من یس ناف ہو جا ے کان 
موجودہبراردر ہم دوس ر ےکی ش کت کے اشی ری پیل کو ل جائیں گے کین خصاف نے اس سے میس در تمو کی لہ پر ملا مکا 
مضب ف رح کیا ے ی دو بد میں نے ایک می غلام اپنے پا رسک کاد کوک یکیاجب م کی علیہ نے ایک مد گی کے کن میس کم 
کھانے سے الا کیا اور تا ی نے اس بد گی کے من ہیں فلا مکی عککی ت کا نیل سنادیا ت تا یکا فیصلہ فوری ناف ہو جا ےگا اور 
دوسرے گی کے اسل کم نے تک ار تی ںکیاجا ےگ اک کہ پیل گی کے مم سے م گیا علی ہکا ڈکا کر نادلا لع اقرا کر نا 
سے مت یکو باااس نے اس با تکااقرا رک لیاکہ ہے فلام اک مگ کی ات ے لاتق ی ی اتظار کے !خر رامل ناف ذکرد ےگا 
اور اس چ تا یکا عم اس لئ ناف م وکیا کہ اس نے ام مون بر عم دیاسے جس میں اجتہار ہو کا کوک ہے صم 
اتبا دی ہے اس سک بک علا کاىہ قول ہ ےکہ پل مد گی کے لے تقاضی عم ناف کہ دے اور دوس ر سے مد گی کے سے م لین کک 
انارت کر ےکی کک پل مد گی کے لے م سے انگ رک ناد لالط ا قرار ہے اورجب خا شی نے کسلے پر گی کے لے گم دے وا 4 
دوسرے مد گی کے لے مگ علیہ سے قایس طر نکی م فیس ےکک ہہ غلام اس مد گی گنیس ےکی وہ سح سے انار 
کر نے س ےکوی فادونہ ہوگاج بکہ ہے فلا م لے مد یکا ہو چکاے۔ل(ف۔ نی مکھانے یس اس بات کے سک کاک فا کرو نیس 
ےکہ یہ تلام اس مگ یکا یس ہے ہلک با کل بے فا کو سے ےکی وک اکر دو مکھوانے سے اکا رکردے ریہ لام وص رے یگ یکو 
یں ی کنا ےکی وتک دہ تو لے مد کی کا ہو کا ے بلک عم شی اب تمت بھی با کرد ین چا سے کین اس کے ٹس اختطلاف ے۔ 
ای ناء پر بعد لول فراے۔ 
وہل یحلفہ باللہ الخ او رکیااس ے اس طرح مھ ماجا گی کہ داد ا دومر ےگ یکا ہار ےم تہ فو یہ فلا م بای 

ہے اوزہ بی ال لک اتی تمت ہے؛اورتہااس سے کی کم تت ے وای کے بارے میس خصاف نے فر ایل ےک امام مھ کے نز کیک 
تم یی جا ین امام ابویوس فکا قول اس کے الف سے جس ا کے و ا 0 
ودای ت اترا رکر لیا حال اکلہ تتا شی کے گم سے دوود لت وؤ ہے اکودے دب یگئی ے ابام مھ کے یی مستودم ا ہے 
I‏ 
نل وو لیت کے ابی وال کے پارے ٹیل ہے کی کے پارے میں پھر مفصیبل اور تطویل ہو کی : وایئہ تال اعلم (ف۔ ستل کی 
وضناحت ال رر ےک جب انل مستودرع سے جو مد گی علیہ ہے دوسرے بر گی کے کے یگئی اور ایس نے مکھانے سے 
انا کیا نواس نے یہ اترا ہکیاکہ ہے غلا م ال مج یکی امات سے عالاکمہ کا کی نے پیل کی گیا علیہ کے مم سے اکا رک وجہ سے 
ری کے عق می فیضلہ سنادیاے فذاس وت صورت ایک ہوک کہ مستوذع نے دوصرے بد کی کے لئے ودج کا اترا رکر لیا 
مال اکر ی ی کے کم سے وو ود اعت کل بر کو ولا یکی ہے ای مناء > امام م کے ادیک دوسرے بی کے لئے مستقوورع 
ضا کن ٢وک‏ اپ اال سے اس ط رح سے م ی جا کہ نہ یہ غلا م بائی ہے اور د یا کی تبت باق ہے جاک دہ تج تکا 
و :اک گماعلیہ نے پل ب کی کے لے یىی مکھانے سے انا کار آ6 نے پیل ر کی کے کت شس 

م دے دیا وکیا بعد لوو رے بد ی کے لے بھی م ی ہا کیہ مت میں ن بزدوی اور مام خا کے - 

قو ول تفحیل مس اتل :و اتل ۱ "0+ دج 


7 aT “2 اص‎ 


ظا کتاب العارية ي 


قال: العاریة جائزة لانه نوع احسان وقد ابتعار النبی عليه السلام دروعا من صفوان وھی تمليك المنافع 
بغیر عوض» وکان الکرخی یقول هى اباحة الانتفاع بملك الغیر لانها تنعقد بلفظة الاباحة ولا يشترط فيه 
ضرب المدة و مع الجھالة لا يصح التمليك وكذلك يعمل فيه النهى ولا يملك الاجارة من غیرہء ونحن نقول انه 
ينبىء عن التمليك فان العاریة من العرية وهى العطية ولهذا ينعقد بلفظة التمليك والمنافع قابلة للملك كالاعيان 
والتمليك نوعان بعوض وبغير عوض» ثم الاعيان تقبل النوعين فكذا المنافع والجامع بينهما دفع الحاجةء 
ولفظة الاباحة استعيرت للتمليك كما فى الاجارة فانها تنعقد بلفظة الاباحة وهى تمليك» والجهالة لا تفضی 
الى المنازعة لعدم اللزوم فلا تكون ضائرة ولان الملك انما یثبت بالقبض وهو الانتفاغ وعند ذلك لا جهالةء 
والنهى منع عن التحصيل فلا يتحصل المنافع على ملکەء ء ولا يملك الاجارۃ لدفع زيادة الضرر على ما نذكره ان 
شاء الله تعالى. . 

5 کناب :عار حی تکابیالنا . 

رج :۔وقال: العار ية الخ فد ور نے فرمایا کہ مال عار یت بد بنا جات ہے۔(ف اور ا کا چا ہو نا مروف و مور 
ہے )کوک ی ایک شمکااصالن ے۔( فک اس رح د سے می لزاب ہے اور ای کے نی کو عیب بھی یں ہے۔) 
وقداستعارال خک وک خود ضور حا نے بھی حضرت مولع سے عارپیازر ںی یں ۔(ف چنا یہ حطر ت عمفوان بین ا می سے 
راید ےک تی نکی لڑائی کے دنر سول لیے کے سے نین مفوان بین ام سے عار یز ر ہیں چا ہیں تمفوالخ نے 
کہاکہ جنا بکیا اپ ىہ زر ہیں جھھ سے لور فصب تی یر اور برد سی کے سا تھ لین اج ہیں و آپ نے قرا یں کہ ای 
رن ل مات کے سا جس پر مان کی لازی ہو ء سن میں ایگ کر لیاچاپتاہول اس لل رس ےک نہد ہی ےکی صورت م کے 
یراکادا لاز م ہو۔ا یکی روات الوداؤد ا اور الا ن ےکی ے.اور حضرت ان عمائ نکی صد یت مم س کے رسول الد نے 
صفوان کن ام سے غزدہ نین کے لے ذد ہیں ادرد ومر سے میا کے تو فوا کاک اپ ےی ان ان ر 2 
لیے ہیں جو بعد می بے وای کر دیاجاگ و آپ نے رہل کک بال وای کیا جائےگا۔ عالم نے ا یکی روا کی ۔ک ناب 
تر ےت دہ ۱ 
مو دوس رکیادوعار یت کک یں مضمالن لاز م نہ ہواور صد یٹ ٹل ہے رداحیت کی س کہ عاد یت بے بے ولا ایامک نے عار یت کے ال 
سکول خات نہ نکی ہوااس پر یھ بھی تادان لازم یں آتاے۔اور عبرالر زا نے ی فو نک کی الاد سےروای تکس کے 
ر سول اش سے مغو ا سے دد مکی عار یل ہیں ایک و ی می تاران لازم یاچ اور دد مید شل جاوان لازم یں آیا 


ےن 


گی الد اے چد یر : ا n4‏ : 2 

وھی تملیك الخ : عار یت کے ”ن ہیں اپ کسی یز کے منا کوک بد لے کے بی ر خی کو ماک باد ینا۔ ایا مک ی فر ے 
کہ دوس ر ےکی کیت سے جات ہو کو عاد کے ہی ںک ھکلہ لفت ابا حت سے عار یت نعقر موی ے جیما :کہ عار ہت 
و ےکی نے و ںکہاش نے تمہارے لے ہے چ میا کی ان لے تم ایک ہے کے بعد کے وای کرد بنا لے عار بیت مون 
ہے۔ عاد یت شل مر کو ا کر تاش رط ی ہے مال اکلہ برت تیر معلوم ہو ےکی صو رت میں الک تاتا ی یں ہو جا لپنرا 
ایے عم لکوت یں ہیں بللہ اباح کہا جا ۓگا۔ اور ای ط رح عار بہت انگار اور یکر ےکا ا بایا جا جا ہے۔ (ف ی اکر 
عار تک ی ما کے مالک بنادہینے کے ہووت نے پچ رائ رکا حقکرنا 5 یں ہو بللہ دوابااحت ہے اک جناء راک رکو 
عار یت بے د سے دالا ای ط ررح ب کرو ےک مآ تند ہ عار یت کی یز ےکا م نہ لین ن فا تمن اٹھانا نو ےہار کے کے گے مر 
ہو سے اور عار یت پر لگن دا کو ہے اخقیار کیل ہو جا کے الا چ ڑکووہ خو وک دوسر ےک کرای یااجادہ یر دے دےء یی ار 
عار ہت تملیک مون ووودوسر ہے ہکراچار ہے (E‏ ھا۔ 

ا ے معلوم ہوالہ عارمت کے ن مباب ہناد نے کے ہیں اور م ہ ےکی ہی ںکہ لفط عار یت ایی کن مالک :ناد سے کے 
ہی سک وکل لفظ عار بت ع۶ (بہرے شقن ے جس سے مت علیہ ے ہیں اسی لے ملک کے لفن ے عار یت ہا ے اور متاح 
ایی زی م ونی ہیں جواعیاں یجن شی مین اورا س کی طرعحکیت یس آنے کے تال مون ہیں بر مالک یناد ی ےکی دو صو ر یں 
ہو ہیں ایک بد نے کے ساتھ دوس سے بی بد لے کے پچ راصصل مال نشی یں میں وونوں قموں کے ہو ےکااشمال ہے اوران 

می دونوں یی طریقے جع ھی ہیں ای لے ان کے متا بھی وونوں عم کے قائل ہو تے ہیں نی بھ یکس یکو ۶وش کے ساجھ 
ایک بتاور کی یکو عوضض کے بفی مالک بتاور ضرورت بور یکرن۔ ان روون صور قول می چابحع ن رونو کے چات ہو نے 
کوج ے ےکہ اک سے دوسر ےکی ضر ور ت بو رک ہوءاور لف اباحت ے عار ہت مراد دنا الس بناء پر چا مواکہ اباحض یکو پازا 
تححلیک کے کن میس لیے تی ےکہ اجار ہل ہو تا ہے ء اک مناء پیر افظااباحت سے اچارہ عقر ہو پاتا ے مالا کہ اماد ہ شس ما کا 
لک :ابو تا ہے اس بش رت کے پول ہو نے سے بانامعلوم بہونے سے ایی می ں کو ھا نہیں ہو کاس ےکی کہ عار کوک 
لا زی یز نیس ہے ای لئے ونت اور یرٹ کے مجبول ہونے ےکوی نقتصمان نیس ہے اورا سکی ایک وجہ ىہ بھی کہ کیت 
اک ونت خابت ہو لی ے ج بل بزبر قضہ ہو جا فیضہ ہو ہا ےکی صو ر ت ی ےکہ اس سے لف ی سل لکیا جا کے اور اح 
اھا ے وق کول جہالت با یل ر ہق ہے ادد ہے با کہ اس یس ھمافعت مفید مون ہے وہای ل کے اس سے عار یت پر لے 
ہوۓ ال سے لع ل کی اعت ہو لی :اس طر اس کے بول ہونے ےکوی قصان یل ہوااور میا ا سکی کیت س 
ما ل نی ہو ے۔ پچ رمنعحیر (عار یت پر لیے والا اس لے اہارہ پر نیٹ دے سکتا ےک دی سے اکل ماک حن می رکو 
ضرورت سے زار نقصان ہو تا ہے چنا نہ انشاء اد تی ماس بات کو ضاحت بحر کر وی گے۔(ف اس کے علاذواجار ہپ 
د نایا عقد ہو تاے جو لاز م ہو جا تا پچ رر نے دوسر ےک و کی سے لا زی عق دک نے کااے اخقیار یں دیاہے اور مالک ہیں 
ہبہ صرف اس جتیز سے لٹ حا ص٥‏ لک یکا اسے مالک مایاے۔ ۱ 
EE o‏ مار یت کا بیائنہ عاد یت کی تر بف لغوی اور ر ی خموت, عم اقوال ۰ 
فقہا کرام اصطلا کی الفاظ۔ 

العار یت آلا عار 3ء عار ینےد یناءماگے د ییا کی عو کے !خرو یناءاس ارہ عار یڈ اکا ع ےکی عوض کے خر( کے )ہے 
والاء تتحیر کے والاء ٹس نے امو ستتوار دو چ ڑج عار ید ی ای ہواور " ا یکوعار یت کہہے ہیں ء کے :کہ محاورہ 
یش بولا جانا ےکہ میرک عار یت وای کر وء او رای کے شر گی کن میں ءاپناصلن"ما لکوما گے کے طور کی کے بر وکنا کہ وہ 


“ل الہداے جد یڑ ۸ 1 مل ر" م 
یٹس ١س‏ سے فا اص لکرے :یٹ ی ا سل لی سے وا ےکی کیت کی شن بان رہ :ای ناو ا لے دالا ا 
سا تھ زیاد نی اخلاف وعد هکو یکا مکر کے اسے تقصان پچادے نذدواس ما لکاضا من م وگ 

قال: وتصح بقوله اعرتك لانه صریح فيه واطعمتك هذه الارض لانه مستعمل فيهء ومنحتك لهذا الثوب 
وحملتك على هذه الدابة اذا لم يرد به الهبة لانھما لتمليك العين وعند عدم ارادته الهبة يحمل على تمليك 
المنافع تجوزا. قال: واخدمتك هذا العبد لانه اذن له فی استخدامه وداری لك سُکنی لان معناه سكناها لك 
وداری لك عُمردی سکنی لانه جعل سکناها له مدة عمره وجعل قوله سکنی تفسیرا لقوله لك لانه یحتمل 
تمليك المنافع فحمل عليه بدلالة آخرہ. قال: وللمعیر ان يرجع فى العارية متی شاء لقوله عليه السلام (المنحة 
مردودة والعارية مؤداة) ولان المنافع تملك شيئا فشيئا على حسب حدوثها فالتمليك فيما لم يوجد لم یتصل به 
القبض فصح الرجوع عنه. 

جم :۔ قدو کے فرملیا ےک ہگ ردرعایت پر دنیے والے نے رفز بالن مل لو کاک اع کک ( ن میس نے میں عار 
دی سے )تو ے عادیت ب موک کی کہ مارت بے دی مس بے لف کے ( تن طاراخت اا ںکا کر ے) واطعمتك الخ :ای . 
طر اکر رفش کہااطعمتك ہذہ الارض :( ی غ نے تم کے زی نکھان ےکوی )تو بھی عار یت وک یکوک یہ افظاسی 

ںی میں سمل ے۔ و منحتك الخ :]اکر ےکہاک س نے ت کو ےکی زاب دیلیال ںکہاو حملحك الخ :ی نے تھمکو انور یر 

سوا رکیا ناس سے بھی عار یت مراد ہ گی بش ریہ اک سے سب ہکرنام رادت م وکوک ححیقت میں تو ے لوط عین مے مجن اصل خے 
کے مالک :ناد سی کے واسٹے ہے کمن جب ہبہ مرادنہ ہو فو از یہ سے کے مناخ کے ماک کک نے پر مول ہوک کی وک اس میں ایا 
استمال ہو تار بتاے۔ ۱ ۱ 

قال: واخدمتك الخ :اوراگر ہو ںکہاکہ یں نے ت مکو تہارک خد مت کے لئ مہ لام دیا فو یہ ھی عاد یت ہ ےکی وک ال 
سر اس غلا م سے اسے خد مت لی ےک اہازت دی ی۔ وداری الخ او راک بو ںکہ اک مر اک تھا ی ر اکا ہے یا تمہازے 
ےک سے کی اریت کے کوک ای کے کی مول ےک ھن ے اوی داراو ایی عونت کے رج دی اا 
و ہاگ مرا کر ہار لے ری کی نے قو کی بے مارت ےکک ای ر ن نے ایک ت عم تک کے لئے 
اس کرک کوت وک ]شی جب کک تار سے جب کک اس میس سلوخت ای کے سے س ےکی وک اس میں کک ہنا( تھے واسے ) 
کی تیر ے اس مل کہ اس لفت سے جس ط رح ہکن کااالی ہے ای رع متا کا مالک کہ ےک بھی اتال ے اس لئے 
آنخ یکلہ ن معن کید لات سے اسے اک کن پر مو لکیاگیاہے ملف کی وک ہار اصل ما یکا مالک بنانام رادت ہو وکا کم اناو 
ضرور ہ وگ کہ اس کے منا کا الک بنایا اے۔ )قال : وللمعير الخ: دور ی کہ اکہ محر سکن عار ت بے وا ےکواختیار 
تاس کہ دوجب کی چا ے ابی عاد یت سے رجو حر نے اوی محدرددوفقت کے لے عار یت پر دیا ہوک وک ر سول اللہ 
نے مایا ےکہ جو زر دی جا ددوائیں دی چان ہے اور جھ جن کے دک جا دہوالیل کنیا چا ےا کی ر وای اود او 
تر می اوران ضبالن اور ترا نے حر ت امام ےکی ہے ای ط ر ںا لکاردایت بزار نے حخرت این رک صد یٹ ےکا ے٭ 
اورا یل سے کیک عنائحع لے زیادہ پیداہوتے جات ہیں ای انداز ے تھوڑے تھوڑے اور اھ ہت لیے یس آتے 
ہیں اپاج ماپ ا بھی نی پا سے کے ان یس کک بنان ےکا قبضہ نویل ہو جا ہےر عض ہونے سے پیل کک اس سے رج مک رنج 
سے۔(ف۔ اس ط ریہ معلوم ہو الہ می روا با تاقار ہو تا ےک دوجس دن جاہے اٹ بات سے ”نے ہوئے O‏ سے 
رج کر نے اکر چہ دیاغاوعدے میں مین کے ہو ۓ دفت سے یل رجو عکر نار دو ےکی وککنہ اس طرح معاہر ےکی وفا ہیں 
ہول)۔ 


لالد اے جد یر 114 یلد “م 
و : کن الفاظے عار یت پرد ET‏ ۲ے 
ےواج نلیا جا تا ےی کو سا سی فصل 2 E‏ 


قال: والعاریة امانة ان هلكت من غير تعد لم يضمن وقال الشافعی يضمن لانه قبض مال غیرہ لنفسه لا عن 
استحقاق فيضمنه والاذن ثبت ضرورة الانتفا ع فلا يظهر فيما ورائه ولهذا كان واجب الرد وصار كالمقبوض 
على سوم الشراءء ولنا ان اللفظ لا ينبىء عن التزام الضمان لانه لتمليك المنافع بغیر عوض او لاباحتها والقبض 
لم يقع تعديا لكونه ماذونا فيه والاذن وان ثبت لاجل الانتفاع فهو ما قبضه الا للانتفا ع فلم يقع تعدیاء وانما 
وجب الرد مؤنة كنفقة المسععار فانها على المستعير لا لنقض القبض» والقبض على سوم الشراء مضمون 
بالعقد لان الاخذ فى العقد له حكم العقد على ما عرف فى موضعه. قال: ولپس للمستعير ان يواجر ما استعاره 
فان آجرہ فعطب ضمن لان الاعارة دون الاجارة والشىء لا يتضمن ما هو فوقه ولانا لو صححنا لا يصح الا 
لازما لانه حينئذ يكون بتسلیط من المعير وفى وقوعه لازما زيادة ضرر بالمعير لس باب الاستر داد الى انقضاء 
مدة الاجارة فابطلناه فان آجره ضمبه حين سلمه لانه اذا لم يتناوله العارية کان غصباء وان شاء المعير ضمّن 
المستاجر لانه قبضه بغير اذن المالك لنفسه ثم ان ضمَن المستعير لا يرجع على المستاجر لانه ظهر انه آجر 
ملك نفسه وان ضمّن المستاجر يرجع على المواجر اذا لم يعلم انه کان عاریة فی يده دفعا لضرر رور 
بخلاف ما اذا علم. 

مر ۔ قدو ری نے فرایا ےکہ مار ے ناویک عار بیت امانت ےء تی اکر ایی چ ےکی 7 یری اور زیو 00 
باد جائے قذا کی وچ سے عاد یت پر سے دالاضا کن د وگ( فی ول رات علی ا بن سور سن بم ری 'ابن ی 
اوز کی اوور ی اور مر بن عبر الحز ر ہزاو رش یاوراوزاگی چو قال الشافعی الخ کن اام شای نے لے 
کہ تخ رک اور زاوف کے ایر بھی عا ی تکی پیز ضا ہونے سے دو تن ضا ہکن وگ کی کک اس نے یر کے ما لک وک تاور 
2 کے خر این قیحضہ میں لیا ے لہ ۃ ادہ ضا ن گار مان ککی اجازت صرف ضرورت ے خابت ہو گی سے وہ ےک ہے تیر 
اس سے عاش ذاضرت شض رت وق ا ر u‏ لہ ہم وگا اک بناء 
ے عاریت کے ما کو وای د یناداجب ہو ا؟ اور عا یت اسک کے ماضند ہو 7 سکو خی رکا کا تن اد اکر کے ہے قبضہ میس لی 1 
و ۹1۷ھ ا وس ےکر اود ا مکی اجا زت سے اس قیضے میں نے لی مو ای لے اس کے ضا ہو جانے 
سے دو تر پارا کاضا کک ہو تا سے )۔ 

ولناان الخ اور Ek‏ 2 عار یت کے لاساو ات لاز مک ا اشارمیاعلامت کیل ے 
02 مار یت کے کن مشت می منا لع کا کک بنااا نا کو را کر سے اور اس چ کو تر می لیے می کوئی زاون اور تھی 
یں ہوک وکل طض کی نواجاز کی نان سے کون ا ے۶۳ ی ی برا کوان ضر 
نے نو ای لے لئے ت کیا تھاکہ اس سے ففع اص لکرے ہیں معلوم ہوا از ق کے کوئی زیادق ران نین برل U‏ 
مصتحیر پ اس پچ زکووائی یکر ناج واج بکیاگیا ہے دواس وجہ سے س کہ دای نکر نے میں پر ای بھی ہو کی ہے اور خر بھی ہوا 
سے کے عار یت پل ہو گی ج ن تھا رکا فققہ اس پر داجب ہو تا ہے )و یے اس نے اسے قضے میس لی تیاو ہے بھی اسے والیں 
02 بے چک تر لے اور دوچ جو خر ید ےکی اے قے میٹ یگئی ہواس کے ضا 
ہونے سے مان اس لئے لازم ٣‏ تاس کہ عق کے رد کر سے سے بھی تک م ہو جا تا ئن سی ماس ےکی ات یس بھی 


یئن الد یہ جد یڑ r‏ 2 
اس معا ےکا عم جار کی ہو جانا سے ججیراکہ اس سے لے ای جگ ی معلوم ہو چچکاہے۔(ف ن ج چ زغ یرا ری کے طور زیر س 
گنی ہو ا یکو صرف قیضے میس لم ےکی وجہ سے بی دہ نز ان کے تقائل نیس ہو انی بک قیضہ کے سا ہے خر بیدا بھی ہو جاے نی 
یراک کے غ سے اس پر قضہ واو اک ینا پر ای جن اد ام تھے ہو جانا گی ایک شش رط ہے نیل جب دام سے پا جانے کے بعد 
تم کیا نو خر یار یکا عقداور ال سکاکام شر وکر دیاش کے کی ت بی ا یی کے ہیں اس ےا ی تادان داجب ہوگا)۔ 

قال: ولیس للمستعیر الخ : قدور کن کہا ےک ست رکویہ اخقیا یں س کہ جو زاس نے مستتعار سن عار ہیل ہو 
اس ےکراے پر دے اک سے اکر ای نے دوچ درا بے دی اور وو ضا ہو ی توا سکامان لازم آۓگا_لان الاعارة الخ ` 
کی وکمہ عاد یت دیناعکماجازت پر د سے سے کم ے اور تقاعدہ ‏ ےک کول کی چ ڑا سے سے اوہگی یا یری چ رکو کن ہیں موی 
اوردوس رگید کل ے ےکہ عار یت دک ہو گی چ کواجارہ پر دینا کی مان لیس و اجارہ بھی ازم ہو جا ےگ اک وک اجارە لاز م تی ہوا 
کر جا ہ ےکی کہ یہ اجادہ ی اک عار یت پر دہینے دال ےکی رف سے مسلط اور لاز مکرنے سے ہہوگا عالاککہ اس کے لان مر نے 
مس اس محر بر زیادہ قصال لاز مک ناب تاس ا کیو ج ہے س کہ احجارہ س دق کی کین ضر و ری ہو کی سے اورج بکک اجار وک ۱ 
رت نہ ہو جا گی اس دقت کک اس عار یت پر دک ہو گی کووالیل لی کادروازہبند ہو ہا ےگا لے م نے ای مستوار 
چ ڑکواجار وید یناب ی کردیاسے۔ - 

فان آجرہ الخ ن سیر کے ے ابا لکواجادہ یرد ناکر چہ درست نیل تھا پچ ر کی الس نے اپار ہ بر دے دیا تزا یکی 
دجہ سے عیے نی ما لکوابجرت پر لیے وا کو وال کر ےکا و تت اس ما ل کادەضا کن ہو ہا ےک کی وکل جب عار یت پد نے 
یں ا کواچار رد ہی ےکااغتیار یش مو تا ے اس کے باوجوداجازت پرد باص بک نام وکا یں ہے مچھاجاۓ کاک ہگویا ی تیر 
نے اس ی کو غص بک لیا ہز اضا کن ہو ہا ےکا٭ اک کے بح د متیر کن عار یت برد سے وا کوان دوب و ل کااغتیار م وک اکر 
وچا ہے لوا کا ضمالن ںاج ت پر لے وا سے سے ل ےکی وتک اک نے ما لیکو اس کے اصمل مار ک کی اجا زت کے !را ہے ے اپینے 
قینے یس لیا ے با چاے فو تیر سے تادان نے اکر ای معیر نے اس تر سے تادان نے لیا تاب ووا اچ رت پر لین لے میتی 
مصطحیر سے والیل یں نے تاس کوک سٹیر کے تادان د سے سے بے بات خظاہ موک یک ال نے انی نا س کی تکی چ کو 
کراے دیا تھا کن الہ مانک نے اس اجقرت پر لیے وانے سے مدان لیا تد د اپ مسطعبر ممن اچار ہد ہے وانے سے وای لے 
گا۔ یش رطیلہ اجار ہی گے کے وقت اس اجارہ پر لے دا کو ہے بات معلوم نہ پ کہ ہر تر الس کے پا عار یت بل ہو کی سے کہ 
ا کی طرف سے دوک دج یککالزام تم ہوء بخلاف اس کے اکر متا رکو ہہ معلوم م کہ دبال ال کے پا عار یت بر ے وو 
واپہں نیل سے سنا ےکی وک اس صو ر ت میں اس تر نے اج ت پر لن وا ل کور ھوکا یں را 

و :اہ عاد یی مول جز ضا ہو جاۓ ء اکر مستت ر کی توا رکواجارہ برد بناجاےء 
اکراچار ہے ا ےد یری ماک لک یتفحیل عم ماق ال امہ بولک 

قال. وله ان يعيره اذا كان لا يختلف باختلاف المستعملء وقال الشافعی ليس له ان يعيره لانه اباحة 
المنافع على ما بيناه من قبلء والمباح له لا يملك الاباحةء وهذا لان المنافع غير قابلة للملك لكونها معدومةء 
وانما جعلناها موجودة فى الاجارۃ للضرورة وقد اندفعت بالاباحة ههناء ونحن نقول هو تمليك المنافع على ما 
ذكرنا فيملك الاعارة كالموصى له بالخدمةء والمنافع اعتبرت قابلة للملك فی الاجأرةء فتجعل كذلك فى 
الاعارة دفعا للحاجةء وانما لا يجوز فیما يختلف باختلاف المستعمل دفعا لمزيد الضرر عن المعير لانه رضى 
باستعماله لا باستعمال غیرہء قال رضی اللّه عنه: وھذا اذا صدرت الاعارة مطلقة. 


یکن ابد اے چد یا rı‏ لر "م 

رم : ۶ قدو رئ بے غرمیس کہ اس سی رکواس با تک جاز توکس ےکہ ودوس سے لکوعار یاد ےد سے لن 
اس شرط کے سا تح رک وہ چ زاستعال نے نے کے اکا فی نے ان کے تمالم ز3 1 آجاۓے۔وقال الشافعی الخ لام 
شاا نے فر مایا ےک ست رکو پا تک اٹ کل سپ کے دوعر سے سے لیاہوامال مسیتوا شی دوس رے کو عار بت ر 
کے کے کے ا مر ےا ارات رخ کو 
کے کو مبا نکی ہواسے ہے کیل ہ ےکہ اس ب ردغ د دورول کے لے مہا یادے یہ ماس لئے ہ ےک رش چ 
کے نای می الغو راون افعل یت کے قال نہیں ہوت ےکیوککہ نحل دہ متا نیس ہائے ہے ا 
28ي می یی رو ورت عاریت لن ما کے کے سا ہی تم ہو جات ے۔ 

ونحن نقول الخ: اور ٦م‏ ہے کے ٹر کہ عقد عار بیت منائ کو مالک بنان ےکا نام سے جب اکہ ہم نے اکتا ب العار ےگ 
شرو چٹ یں بیا نکر دیاےہ نل جب وہ خ مزا نع کا مالک وگیا فا سکواغقیار ےک اکر چاے دہ بھی دہ چچ دوسر ےکو 
عار یت پردیدے کے کے اپنے لام کے بادے ہے وی تک کہ دزی کی قدص کیک سے توس زی ہکواس با کا بھی 
اخیار ہوگاکہ دہ ىہ خلا مکی او رکو عار یت بم ر دے اور کے امار ۃ کے ستل یس متاح کیت 8 ان ما نے گن ہین ای طرں 
عار یت کے مہ مس بھی مزافح اس تقائل مان لے جاک دہ دور س ےکی لیت میں د سے کے قائل ہو ے ہیں کے ضرورت 
ہو ال مسر اک صورت مس ماگ ہذکی پچ دوصر ےکوعار یت پر کی دے کاس کہ دوس ر سے کے استما لک ےس 
اختاف ہو کال مالک ن معی رکوزیادد نتصالننہ اور ضرورت ے زا“ نر تقصاك ا کے دور ہو جا ےگ وک مار چہ ال 
مستحیر سے استعال برای ہواتھا ینا کے علاد یوور ے کے استعال پر ورای نیش ہو اے۔ 

زفن ٹل ار کرنے عار یت پر لیا ہواکھوڑاخال کوعار یٹ دیالذ( یھاجا ےکآ اکر خال کوا کی طر سے سوار کی آلیٰ ے 
توا ںکومار پت ء دیا جا ہوگا 7227 بجر نے استعا لکیاے خالد بھی اسے ای رح استجا لک ےگااوراگر ال کو 
سوار یی مار تن ہو قو پھر ا کو عاد ید اجا وک کیرک ئک انیا ہار تن ہون ےکی وج سےکھوڑ ےکو ضر ورت 
سے زا مکلیف موی عالا کہ اکل مالک ز بد ای رراشی نی ہواے )۔قال رضی اللہ عنه الخ مصنفحدابہ نے فرمایا کہ 

ماس رنت مس سے جب کہ عار یت مطلفاد گنی ہو اف یش عار یت مر لیے واس ےکوعار یت کے مال سے م مک نع 
ی لکر نے کااخقیار اس صورت ٹیل ے ج بکہ مار یت مطلتقانہو یی وت ا لے ےا ی ْ2 
کرک تیت مو باک جب کک اا مر ا نت تام کت 
)7 :ےک تیر کی پال ستعاردوسرےکوعار یناد ےسکتاہے اور کی شر کا 
ےم ہک تخل ,حم اختلاف امہ بو کی 

0 یی ی۶۶۰۹ والانتفاع فللمستعیر فیه ان ینتفع به ای نوع شاء 
فی ای وقت شاء عملا بالاطلاقء والثانی ان تکون مقیدة فیهما فلیس له ان یجاوز فیه ما سماه عملاً بالتقیید الا 
اذا كان خلافا الى مثل ذلك او خير منه والحنطة مغل الحنطةء والثالث ان تكون مقيدة فی حق الوقت مطلقة فی 
حق الانتفا عء والرابع عکسه لیس له ان یتعدی ما سماه» فلو استعار دابة ولم یسم شیا له ان یحمل ویعیر غیرہ 
للحمل, لان الحمل لا یتفاوت وله ان یر کب ویر کب غیرہ وان کان ال رکوب مختلفاء لانه لما اطلق فيه فله ان 
يعن حتی لو رکب بنفسه لیس له ان یرکب یره انه تن ر کو ولو ار کټا غیره این لہ اناورک جي و 
فعله ضمن لانه تعین الا ر كاب. 


تن الہد اہ چد بر irr‏ لر نشم 


جم :۔ عاریت پر دمی گی چار صور "یں ہیں وو ےھ وہ ٹن میں وہ 
ملق ی رت کی کا اھا ےکی قیدنہ ہو نواس صو رت میس ال مستعی رکواتقیار ہ وکاک ا سکو ملق اہازت ہو نے 
گی وجہ سے اس سے جس عم کا چا نٹ اٹھاے اور نس وقت بھی چا سے نع ما س لکر نے۔و الغانی الخ اور دو رک مورت ہے 
کہ عار یت بی ونت اور لف اٹھانے کے سر ہے ن عار مت پر دی دانے سے جووقت اور ع ما س لک رن ےکا طر یہ بیا نکیا 
ے ای کے خلا فکرے تاک ا لکی قید لیے پر کل ہو کے الہ اکر خالفت تو ہو لیکن اسی ط رڈ ف سک ا ابات ہے ` 
00 بھی بتر ہو او تالت جائۂ سے اورگیہوں یہو ںکی مل ہو ہے۔(ف مثا ایی تش ےکی سے اس 
REL‏ با کاگھوڑالیاکہ می مرج ہیاس بر دس مم نکیہوں زا ھکر تی کوس (کلو میٹ )یئ گااو کل ہی اسے خی 
تر این ای کاو کی اس بر سوا ری کی ںکر کک ہے لین اس کے لئ اس بے مادنا جاتز ہے اوردہ بھی صر فک ہی 
کے دن اک وناء ےار ہے ا کے آ تم ول لاد ےگا ود ضا لن ہوگاجیے : کے تن کلو میشرسے راد لے جانے مس ضامن 
2 اور اکر ال نے اپ ےگیہوں کے علاودا تج : LO‏ نین کے لاو لی جا مک دقن U‏ 
ہیں۔ اوراگ کان تن چھو ناغل خلا :باب ہو خر وللادے نے چک ہگیہوں کے متنا لے میں اس میں فصا نکم سے اس لئے ا کا لاد 
پر رجہ اول گنت رہوگ سا راگ ریو ںکی بیانے ا زان کاو لاد ہا یس ہواکیکہلوہے س ےکھوڑ ےک بے کی ہو کت 
ے)۔ 
والتالث الخاور ور کرت es‏ اھا کے من میں ملق ہو( خم 
ا ںاد تما سکھوڑے سے باج دنوں بک تع رصیق کرو وای صورت میں اسے ار دنوں 
سے تیادہ رکنا جا ئز نہیں ہکان اسے موا رک لیے اور ہر مک ری لادنےکاا کد حاصل لکنا ائز م وکاک بناء یراک رکھوڑ اک 
2 یز لاد سے سے بلاک ہو جاۓ فو یہ تیر ا سکھوڑ ےکاضامن نی ہوگالمتہ اس ش رط کے سا ہے کہ اس کے او بی اتتازیادہ 
لاد دی وکہ ال سے مر جانے ہ یکاگیان غااب و)۔ والراہ بع الخ اور چو شی صورت اس کے ریس ے لق" تافو ے 
بار ے میں مقید مو اور ونت کے ہار ے مل ا کواس با تکااخیار فی م وکاک محر نے جووقت 
اکم الناکی ہواس سے تھا زک ے۔ 
فلو استعار الخ اب اگ ایک ی نے ایک شف ے اب کفگھوڑاعار ین لیا لیکن ( ٢کک‏ )مر فی و سب 
وت کے بارے میں یہ بیان تی ںکیا و انس ست رکو یافقیارہوگاکہ اک ی خوداٹی لاد ےیک دوسر ےکولادنے کے گے 
عاد ینے دے د ےکی کہ لاد ن کاکام الیباے جس میں خود اک کے اپنے اود دوسرے کے در میا نکی فرقی نیس پیا جات ۓگااسی 
رح اس تت رکواغخزیار ہ وکاک اس بر خودسوار ہہویاسوارکی کے لج نی آزبار پت دو ار وای ار رر ان 
و فان اف ما ل۔ لین مالک نے چھکمہ اسے مطلظاا جات دے دی ہے اس ہے عار یت پر لیے وانے(مصععیر )کو 
ا لمات ا کے لا من ریخ شی نکی نون ےا وو جا ےکا 0 و 0+ 
وزارت ھی RL‏ نے سلا کان لے ری تن رت او راگ ای کے کی 
دور س ےکو سوا رک دا مر ودای پر سواز نہیں ہو ککتا سے ۔ نان ؟ گر ای نے ایب اکر لیا و ام یوما ن ا کک دو کنا 
ھی نین ہو کیاہے۔ 
و ۔کوکی جن عاریت د ہے کش صور تی ہو ئی ہیں ءا نک کنل اور ا ن کا م ا 
یک ہت ا بن ای کگھوڑالیا کیاوہ ا لکھوڑ ےکوخود بھی عار بیو دے سلتا ےہ 


نایدا دی rr‏ لر "م 


میں ول 
قال: وعارية الدراهم والدنانير والمکیل والموزون والمعدود قرض» لان الاعارة تمليك المنافعء ولا 
يمكن الانتفا ع بها الا باستهلاك عينهاء فاقتضى تمليك العين ضرورة وذلك بالهبة او القرض والقرض ادناهماء 
فیثبت اؤ لان من قضية الاأعارة الانتفاع ورد العين فاقيم رد المٹل مقامهء قالوا: هذا اذا اطلق الاعارقء اما اذا . 
عين الجهة بان استعار الدراهم ليعير بها ميزانا او يزين بها د كانا لم تكن قرضا ولا يكون له الا المنفعة المسماة 
. فصار كما اذا استعار آنية يتحمل بها او سیفا محلى یعقلدھا. 
تم : . تزور نے فرلا س کے رولو ں اشر فول او دوس ر کی وزد عرد چو لکرھار یڈ یا کی قرش ی ہے 
کی وککمہ عار ہد دہ کے ان کے کا نکو ماک بنا ہو جا ے ن ال کے ایت می نین دی چان سے الا کن ان اص 
2 وںے ا نکو اتال میں لا ے بے انع ی ص لکرم کن یی میں ے ن ان چز و اویل اورا نضا کے ےق 
ان ے لف ھا ل ہوجا ہے لپ ڑا مجیوزاانسی عاد ی کا تقاضا ےکہ بو کہا چا ۓےکہ ال چو کو الن کے اول نے د ے وت 
ست رکوا کک ناداہے اور بے بات دوطریقول سے کان ہے ایک کہ اسے ہی کردا سے ق الک ادے داچ دوسرے ہے 
کہ ری کے طور بر دیاے ال دو طم یقوں ین ے 0" ر نے یکا ےلہذااس مو ہروس سے ری 
تھا جاۓےگاصلل یہ ےک اس مو تع ید اہی گنن جو وکا کم تر بید یناہ وگال وراس د یل سے کت وت 
کانقاضا نیہ ےک وی ہو گا شے میتی مستعار سے لع اکر دوچ اس کے مان کووای یکر دک جائے۔ اور چوک ہہ ن نہیں 
ان ایک ی یز وائی یکر ےکواصل سے کے مھا ے واب د ےد یناما لیا ہے۔(ف اور ای طر لے ےکانام ر سے )۔ 
٠‏ قالواھٰذا الخ غار نے فرایا ےک در ہم اورد ینار و ٹیر وج عار یت پر دی ی ب وکو قر ہو جان ےکا عم ایس وقت ہے جب 
کہ عاری تک ایک سم ملق ہوکیۃک ہاگرد ہے وانے نے ہے وت فا کروی ص کر ےکوی ر پت کی کرو ہو مش : 
و ماپ ترازوکیاوزن و رست رکھویالن چز و کو اپٹی دکانوں بی زک ہکم ایی کانو لکی ز سینت بڑھادیاما کی زیادکی دکھا 
ان چو ل کاد ینا قرضہ نیس ہوگاادر لیے دا کو اک طر یق سے ان سے لع اص کر ےکا تن ما سل ہو گاج طر یقہہتااگیا 
ہے۔ ذدوس ری صورت ایک موی جیسے پگ ای اور خوش نما بر تن ل ےکم ان سے دکال کی ساو کر ےا جا لوار نےکر سے 
کے کے کے( نی کل دن ا انی سے لفن فاص لکر ےکی ر ت ایی با نکر وی ہو ٹس میں اصل ا کو 
ےک رورت نہ اورا ل چ پان رہ جا ٹوا طر کار ہا رض نیس م وگالہز ١ای‏ چ کو وای یکر کی واج 
ہہوگا۔ 


و:روے' o‏ قصل 
کن یل 
قال: واذا استعار ارضا لیبنی فيهاء او لیغرس جازء وللمعیر ان رر و ويكلفه قلع البناء والغرسء اما 
الرجوع فلما بيناء واما الجواز فلانها منفعة معلومة تملك بالاجارۃء فكذا بالاعارةء واذا صح الرجوع بقی 
المستعير شاغلا ارض المعیرء فيكلف تفريغهاء ثم ان لم يكن وقّت العاریة فلا ضمان عليهء لا المستعیر مغتر 
غير مغرور حيث اعتمد اطلاق العقد من غير ان يسبق منه الوعدء وان كان وقّت العارية ورجع قبل الوقت صح 
رجوعه لما ذكرنا ولكنه يكره لما فيه من خلف الوعد» وضمن المعير ما نقص البناء والغرس بالقلع لانه مغرور 
من جهته حيث وقت له» فالظاهر هو الوفاء بالعهد فيرجع عليه دفعا للضرر عن نفسه كذا ذكره القدورى فى 


جن الہد اے چد بھ ۷۳ : بل دہشم ۱ 
المختصرء ؤذكر الحاكم الشھیڈ انه يضمن رب الارض للمستعير قيمة غرسه وبنائه ویکونان له ال ان یشاء 
المستعیر ان یرفعھماء ولا يضمَنه قیمتھا فیکون له ذلك لانه ملکه» قالوا اذا کان فی القلع ضرر بالارض فالخیار 
الى رب الارض لانه صاحب الاضل والمستعير صاحب تبعء والترجيح بالاصلء ولو استعارها لیزرعھا لم يؤخذ 
منه حتی پُحصد الزرع وقت او لم يوقت» لان له نهاية معلومة وفی الترك بالاجر مراعاة الحقین بخلاف الغرسء 
لانه لیس له نهاية معلومة فیقلع دفعا للضرر عن المالك. 

حیرت وی تم ےک رک کی کی ل ر ی ر و کت 6 کے از و 
جائزے یکن مر سکن اص مال ککوبہ اخقیار م وکاک ووجب ب جیا چا سے اپنی زین دای باتک نے اور اس مشیر کون کپ دن ےگ تم 
ارت و کر نے جو رر ت کواکیٹرلو۔اما الر جو ع الخ: ال می زی نکووایکں یل ےکا عق اک ہنا بر ہے ج ہم پیل 
اك نکر گے ہی ںکہ عاد ت کا معالہ لای کی ہو تا ہے اور عار بی تکواس لئے چا دک مایا ےک حا س لکن ےکامہ ماگ 
مو زط قہ ےج اجار ورت رارغ نے 9ای ظز ے مازمت E TS‏ نس 
کہ باک کک جس نے عاد یت بے مال دےر وھ" کو اپنی چ بعد می وای لین ےا بست کوا ی کی ز ین یل اٹی کارت 
ناکرا میں در خت کر ا یک ز می کور و کے اور ہا نے والا ہوا اسے عم دیاجا ےگاکہ کیک یڑ خا کر کے اہ کووای 

ras) 
مان لم یکن ا :بج رار محر و کو عار یت کے طور یر رجے کے ے یش رو‎ 

۶0 ۶ھ "×× 
نے خود تی و جو کاکھایا ےکہ ای نے مالک متیر س ےکوی وت لئ بغر اس پر اع دک لیا ےا رار محر نے عار یڈ دی وق یکو 
وت با نکردیاہو ا یوقت سے پیل بھی وائیں لے لیا ہوگاکی کہ مان کوچ روت اس با تکااغتیار ‏ ےآ وجب ما ے 
ا زوا نے نے کن اس طر حا ایک نے انار ددہ ےکیوکہ ا شس وعدہ خلا لازم آل ہے اور یار تکوگرانے سے 
اور ور خو ں کاکی ر لیے ے ج چ نتان مستت رکو ہو ای کے نتصان یں توان لاز م آ ےکا و ککمہ ال نے دتے ہو ئے وت 
یا کر کے یت وکود ت وکادی کی وتک بظاہر ا ںکواپنادعد ملو ر اکر نا چا سے تلذ ای عحیر این قصا نکا وان ےکا کہ ی 
ن لای واو ر کایف وور ہو۔ تد ور ی ےا یکناب قر تہ ورک میس ایای میان ا ا 

وذکر الحاكم الخ اور عام شی نے ک کیا ےکہ ن کا کک تھی رکوز مرن می ا سے ہو سے در خت اور ئی موی 
ا تبت تادان کے طور زراواکردے اوی چڑ ی تی مکان اور مار ت زان کے ماک کک ہو ہا کی کی او راک وو تیر ہے 
اہ کہ ز من کے کک سے تادان و صو ل ن ہک سے بک اس مار ت اور در خ تکوز ین س کو رک ے چا 7 تب کیا ے اغتار 
وی کک انز و ںکاوی الک ے۔قالوا: : اذا کان الخ :غار نے فربایا ےک اکر عمار تبود نے یار خت اکھیٹر نے میں 
زی ن کا نتصان ہو زین کے ان ککواخقیار موک اس پچ ڑ گی تمت دے ZE EA‏ 
ال ائک بجی ہے اور عار یت پر لے دالا جوا نکا تی الک ہے یور خت اور تمار تکا ماک ہو اہے ھا اکلہ تر کال یز من 
کےذر یچ دی جای ے۔ 

ولواستعار ھا الخ : اوراگرز می کوان غر سے عار یت پ لیاہھکہ ایس ھی یکرے تو زین کا مالک ابی ز می نکودائیں 


روا قرب پچ رآ ا یکی مک یکو الث پل ٹک تا ینشنیھا:۔ شئ ۔ دوبارہ بل چلانا۔ یا یکو الٹ پیٹ 
راد یسر تھا 'السرقعی خر ن ز ین می سر خی نمچ یکو ریا کھارڈالنا۔ 


نال رو ۲۵ 227 
یں نے سکیا یہاں کک اک کت اتل جاے اگ چہ اس کے لئے ونت مقر رکیا موی کیا ہو یوک عیتی کک ما 
کاو بت ل کو کو معلوم ہو تاس اس صورت میں مر اور مس نین خرن کے عق یس بجر یہ ےک اک وقت ای بدت کے 
لئ الک زمی کا موا کرای ہوسا ہوودمستحیر این مع رکودے دے ای اکر سے سے مستت رک یی ضا ہونے سے ےگا اور 
مح رکو بھی ابی زین سے بائ فا دو حاصل ہو جا ۓےگا *اوراکر ھا ےکن کے در خت کے گے ہوں فو اس وق کم اس کے 
الف ہ وگ یدک در و کی مرو ںک انتا یں ہے لس ےا کی ےک عم دیاجاےگا۔ کہ لن کے مال ککو نقصان دہ ہو۔ 
و :ا کسی س نکی سے زم ن کاا ی کڑارر خت کا نے کی کر نے ااس میس 
تیر کے ے عار یت ب لاور ای می در خت ایی کی یکر یی ارت بناڈالی وکیا ایز من 
کا مک اسے اتی ضرورت بے فی الغو وای نے سن ہے سا“ یل مل 0 
ا ولا گل 
واجرة رد العارية على المستعیرء ء لان الرد 0۰000 والاجرة مؤنة الرد 
فتكون عليهء واجرة رد العين المستاجرة على المواجرء لان الواجب على المستاجر التمكين والتخلية دون 
الرد» فان منفعة قبضه سالمة للمواجر معنى» فلا يكون عليه مؤنة ردہء واجرة رد العین للمغصوبة على الغاصب» 
لان الواجب عليه الرد والاعادة الى يد المالك دفعا للضرر عنه فیکون مؤنته عليه.قال: واذا استعار دابة فردها 
الى اصطبل مالكها فھلکت لمْ یضمن, وهذا استحسان» وفى القیاس يضمن لانه ما ردها الى مالكها بل ضيعهاء 
وجه الاستحسان انه اتی بالتسليم المتعارف لأن رد العواری الى دار المالك متعاد کآلة البیت تُعار ثم ترد الى 
الدارء ولو ردھا الى المالك فالمالك يردها الى المربطء فصح رده وان استعار عبدا فرده الى دار المالك ولم ' 
يسلمه اليه لم يضمن لما بينا ولو رد المغصوب او الوديعة الى دار المالك ولم یسلم اليه ضمنء لان الواجب 
على الغاصب فسخ فعله وذلك بالرد الى المالك دون غيره والوديعة لا يرضى المالك بردها الى الدار ولا الى 
يذامن قى لیا لات لو انا له ود ھا الاو ات الع رى 00 فوا عرفا جى ار كانت الغارید عد مجر 
لم يردها الا الى المعير لعدم ما ذكرنا من العرف فيه . 
ترجہ :۔ قدو ری نے فرمایا ےکہ مال عاد تکو ای کے مالک کے پاک واب یکر نے اق غات م کے 
ول وال ئ0 کرای مستت رکی ذس دا گیا ےکی وک ای نے ا مال ےڈا ی ص لکنے سے لئے 
انابطہ کیاتھااور واچہی کے خر ےکانام ات ے لہا بی ای مسمطمیر پر لاذ م ہے اور جھ چز کرائے لی ی ہوا سک واک یکا چ 
مو جر یش اس جن کے مالک کے ذمتہ موی سے اس لے کہ جر ںی را داد پر صرف تالا م ہو جا کہ اسے ضاف ار گے 
انآ کے قش ےا کے مان ادان گی چک تک ما لکو بیان تیر پر لازم کی ہو تاس ےکی وک اس 
سر کے تج میں مال کے جا ےک نے عقیقت یس موج کن کے مان فکوہو جا ھک کہ یر کے کرنے کے وت سے 
کی اس مو اک اہ اک پر لام آجا تا ہے اک لئ اس کا اکراے موہ کے مہہ نیش ہو جاے اور غض بک ہوک یچ کی وا بج یکاخ رج 
امب کے زم ہو تا ےکی وک طاصب پر اس ما لکووائیی را واجب ہو تا ہے جاکہ مان کک وکو نیف اور نقصال نہ ولپ اا 
کواب یکا خر ناصب کے ذم ہوگا۔ 
قال: واذا استعار الخ: :درگ ری نے ای یعاد یت بر ڈیر اسے اس کے الک کے اصمطبل می ی دادر وال دہ 
لاک ؟ گیا تاب ہے ضا من نہ ہوگا کان ہے ماقم انا او ا کا تقاضام تھاکہ دەضا کن بن جائۓے ےکی کیہ اس نے مال کک وکو 


ین البد اہ جد ید r‏ بر نشم 
واپیں ا مھ یک نی سکیابکنہ اس ضائع اور ہلا کک دیا۔(ل ) یہاں ا ا نکی وج ہے کاک نے عام وستور کے مطا خا ہکیا 
ےکی کہ عا کی چیو لک کک کے مکان یس نای دستور سے جج اک ہگھ ریا اتا لک چ یں عار یت پر ےکر ضر ور رت 
ری ہو جانے کے بعد ماک ک ےگ پچچادی ہا ہیں۔ او اکر اس نے ا سکھوڑ ےکو مان ک کک کی ی کک راجن طبر ےنا 
رئاتس تی اہ نت ارتو کےا رمک ےک ہدیا ور کیک ا نکی اق ابا کیل کے معان دە ضا نہ ہوا َكِ 
ولور دالمغصوب الخ اور اکر مخصوب باودیع کو ال کے مایک کے کی واب یکر دیا کان مایک کے حوانے خی سکیا ووو 
ضا کک وک کی وک اییے ضا کن بے ہے داجب س کہ ات کا مکو مكکردے جن سکی صورت می س کہ مال کفکو وائی ںکردے۔ 
وو اعت وای لک نے یی ماک اک بات پر را کک ت م وکاک ال اک کک کاچھادیا ہا ےکی ام تھ کے ماس پچیادیاجاۓ کک 
اس کے گھروالوں میس تار ہ وہک وک اکر مالک ایی اکر نے ہہ کی اس کر کے کی فرد کے جوا ےکر نے برای مو قذااعت لے 
والے کے پاک امات نہ رکتا لاف عاد یت کی زول کے کہ اہی چیزوں یں ہے وستور چا ری سے ای ےار عاریت شس 
جواپ را تک کوک لی ہو توا کو مانک کے سواکہیں اوروابہ سکر ناج نہیں ہے۔ 
فو :اد یت ی کہایے کے ما لکو اس کے مال ککک بہہنچانے کے خر کون ذمہ دار 
و ا عار یت پر لج مو سے مو ڑ ےکوی فصب بادوست کے ما کو :الیک کے بات بیل 
نہد ےکر براوراست ال کےگھر بہمنیادیا؟اور و پال ضا م وکیا تو جادان لاز مآ ےکی 
لا ر 
فال ومن اا دابة فردها مع عبده او اجيره لم يضمن» والمراد بالاجیر ان يكون مسانهة او مشاهرة 
لانها امانة فله ان يحفظها بيد من فى عياله كما فى الوديعة بخلاف الاجير مياومة لانه لیس فى عيالهء وكذا اذا 
ردها مع عبد رب الدابة او اجيره» لان المالك یرضی به لا تری انه لو رده اليه فهو یردہ الى عبدہء وقیل هذا فى 
العبد الذى یقوم على الدوابء وقیل فيه وفى غیرہء وهو الاصح لانه ان كان لا يدفع اليه دائما يدفع اليه احیاناء 
وان کان ردھا مع اجنبى ضمن» ودلت المسالة على ان المستعير لا يملك الایداع قصدا كما قاله بعض 
المشائخ وقال بعضهم يملكه لانه دون الاعارةء واوٴلوا هذه المسألة بانتهاء الاعارة لانقضاء المدة. 
جم :الام مم نے زایا کاک ایک ی ےکی سے ای ککھوڑاعار یتیاور اس کے اپنے غلا ہی الا م کے ذر ہے 
وای کر دیا تو ضا مع نہ ہوگا ہا پر اس نوکر سے م رادو تی سے کی م ردو ری مین کے یا ال کے ساپ سے موا یکی 
و کہ واا کے پا کی ابات سے ای لئ اس تر رواش جا تکااختیار م وکاک ا یکی تفاظت ا ہے ی کے ذر ےے 
کے جو ای ےگ کے افراد میس شثائل ہو۔ کے ولیت کے کے بیس ہو تا ے برخلاف اییے مز دور کے جو روزات کی 
مز دور ی ٹیس ہوک وک ایا کک کے افراو س شای یں ہو جاے۔ وکذا اذا ردھا الخ :ای راگ رگھوڑ ےکو خور ای 
کے ماک کے لام یا وکر کے ذر بیج وائی کیا تو بھی ضا نہ م وکاک وتک ا لک ماکک ا بات سے رای ر جتاے ۔کیارہ یں 
وہک اکر ای مصمطیر نے گھوڈڑراائس کے ا ان ککووائی کیا توا کا مالک خود خی اہپنے اس غلا مکو د ےد ےگا اور ضمغا 
رماس ےکہ ےم اس غلام کے بارے میں ے ج وکھوڑو ںکی وک بھا لکر تامو کان دوسرے مشار نے فرایاس کہ ےکم تام 
فلا مول کے لے عام ے خواووہ صر فکھوڑ ےکی کے عا لکر جاو یں ۔ یہ قول اس ےک ھکل اکر چ کک اہےے فلا مکو پیش 
یں دتا ے جوا یک کے بعال کر تام وکر بھی ا ۱ 
وان کان ردھا الخ :اوراگر مصطحیر نے ےڑا کیا کی کے ذر بیج وائی کیا تو ضا کک ہوگا۔ ہے ستل اس بات مو کے“ 


صن الھد اے چہ یھ 7 لر لم 
کہ ست رکوہ اغتار جا ہہ E‏ :ر سض ما نے فر ےکن دوصروں کے 
نزک سے اقتا وچک دوقصدا کید دمر سے کے پا لات رک کا کک اھا یت دپے سے ودی کا رج ہم 
سے ن جب ای سکوعار یت پ رد ےکا تار ہے فو ولیت دہ ےکا بھی اتی گا (اوراسی پر فک کی سے .)اس ملہ 
کی اوم لاك ٹا کے ند دیک ےس ہک ایک صورت میں کہ کی شل عار یت دی ےکاایک وقت مقر تزا س لئ اس وتک کے . 
تم ہو جان ےک دج سے عار ت کاوقت شت ہو چا تد( ف پور ےکلا مکاعا کل ہے ےکہ اس کے یس جب اتی کے ذرلچ 
وای کر نے میس ست رکو ضا ن جا اکا لو یھ مشار نے ىہ ستل اخ کہ اک ست رکو اخقیار فی ہو اک وہ قصد!ا اچقا ک 
لا ی و ورت تی کی اک ا رر 

نی مستعیر ای ماع تکودوسرے کے پا کی عار یڈ دے سکم ہے اہے می امام تکہاجا تا سے لیکن قص االات د نا منوعے۔ 
کی وکل موجو دو سل میں اس مر لاا ای کو اس لے ابا دک ہے اکہ وہای کے ال مان کف کک باہیادرے کارا 
راس ست رکوزمہ وار کہ راوی تو ان ے معلوم ماک اس کے ذر ہے ووت دینا چا فی تاد اوردوسرے مشا نے فا 
ل عم ای لے وکاک جب عار کاو قت شخ ہ گیا تو اب اس مستت رکو عار یت د بنایاوو لعت د بنا چھ کی چا تو نیس راک 
لئے فضا ٢و‏ ارچ ودجت د 0 کے ا ےا کے اریت اا کے 
سا تھے بی اس سے نف اٹھان ےکی یا بات ہے اہی چا دق مرف لات د ابر جرادٹ ہاو کی کہ بی عاد یت ے 
خررتے فا مم مم 


وش کیااک ٹا پا لانت وڈ ےکواپ لم طا ماشو دک کے فام 
N‏ کے پا تھ مالک کے پااس دائی کر نے سے ضا ہوجا ے؟ تفھبیل 
سائل مدکی 


قال: ومن اعار ارضا بيضاء للزراعة يكتب انك اطعمتنى عند ابی حنيفة وقالا يكتب انك اعرتنیء لان 
لفظة الاعارة موضوعة له والكتابة بالموضو ع اولى كما فى اعارة الدارء وله ان لفظة الاطعام ادل على المراد 
لانها تختص بالزراعة والاعارة ينتظمها وغيرها كالبناء ونحوہء فكانت الکتابة بها اولی بخلاف الدار لانها لا 
تعار الا للسكنى» والله اعلم بالصواب. 
ھت . اود فیا ےک اگ رکسی شف نے خالی مین دوعر ےکک کے کے لے وی او تیر عار یت ناے میں 
عار ت اس طر کے کہ انك اطعمتنی) ن ّنے بے ز من نکھانے کے لے دک ہے امام او ضیف کا تول ہے۔اور صا شین 
نے لول قرملا ےک وہای طز کک ےک کے ر زب یوی ےا( ی ارول نے ےکوی رخ 
عار یے لے تا یکو ایت ےکہ ا کی رتاو ےک وقت اس طر کے (انك اطعمتنی )ىہ قول اام الو فی کاہے اور صا ے ۔ 
زر وہ تن ایا ہا زی تتا کے کے سراح عار کالفٹا کے ) لان نفظة الخ :کی وک لفظااعازاسی ن کے ے موضوع 
سے اور لقت مو ضوع کے سا تک ر کر نا بتر ے جیا :ک ہکوکی مکالنایا لہ عا راد نے ٹس ہو تا ہے۔(ف۔ ی ایک صورت مل 
نام علاء کے نزد یک بالا اق بجی عبار ت کی ہا سک تم نے کے بے مکلنعار یداہ اور جملہ یں کک کہ ترنے کے 
بای ےا کوت دی ے۔ اک رب زی نکی عادیت ٹل بھی صراح ۂککھناچایۓ )۔ 
٠‏ وله ان لفظة الخ اام الو ی کید ل ہہ ےکہ لفطاطحاى اس مطلب پر زیادہ ص راح کے سا تھے دلا ل یکر تا ےکی ھکل 
ا خصو ےا کہ طعا“ ین یکھازادینے کے می ن میں کہ اس کی کر کے نز حاص٥ل‏ کرے وکا 


کالہ د اے جد یړ ۸ : 7 جار نشم 
نے بی ل ا ری وا تب اور عار یت اور تاز اور وداج سب تھے شال ٤ے‏ پت نکی لفظا مارت بنانا و تمہ ہل جو لفت کہ 
زراعت کے سا تر صو س ے اىیکالکھنا بتر ہوگاء قلاف مکالن دای صورت کے اس ٹیل عار تلکھناکائی ہے کی کہ مکان تو 
نشی کے تلاو ہک دو سرس ےکم کے ے عار ہت نیٹ دیا جا تاہے۔ وال اعم بالصواب ا راف ای ط ر اکر وو یی ںکے 
کہ تم نے کے مہ زان ز داعت کے لئ کے ال تفاقی چا ہوا وکل ابس صو رت میں زر اعت کے لے عار کی خحصوصیات 
اہر ہو : اور مار ت بنانابادر خت لگانے وخ روکاشیہ تج م گیا )۔ کے ۱ 
و :ا رکو ت انی خالی زی نس یک وھیتی کے لے دے فو تیر انی دستا یکن 
فا ےکھے افصییل س کی عم ءا قوال ا و ل گی 
کاب الت 

الهبة عقد مشروع لقوله عليه السلام:( تھادوا تحابوا)» وعلى ذلك انعقد الاجماعء وتصح بللایجاب 
والقبول والقبض» اما الایجاب والقبول فلانه عقد والعقد ینعقد بالایجاب والقبولء والقبض لابد منه لثبوت . 
الملك وقال .مالك یثبت الملك فيه قبل القبض اعتباراً بالبیعء وعلی هذا الخلاف الصدقةء ولنا قوله عليه 
السلام:( لا يجوز الهبة الا مقبوضق)ء والمراد نفى الملك لان الجواز بدونه ثابت» ولانه عقد تبر ع وفى اثبات 
الملك قبل القبض الزام المتبرع شیئا لم یتبرع به وهو التسليم» فلا يصح بخلاف الوصيةء لان اوان ثبوت ٠‏ 
الملك فيها بعد الموت ولا الزام على المتبر ع لعدم اهلية اللزوم وحق الوارث متاخر عن الو صية فلم يملكها. 

7و کات اپ کے ما کنب : 

ہبہ ایک الما عقا ے جو ہا اور شرو ےکی کہ رسول اللہ نے فرملیا کہ تم آنییں میس ہلریہلیادیاکر وای کی روایہت 
بار ی نے آداب مس اور نای اور الو ی نے جج کی ہے یا اک بے اجماع ہے۔اوڑ ہبہ ا یجاب و قبول اور تفہ سے جع ہو جاڑے۔ 
اماالایجاب الخ اس کے لئ ا یجاب وبول بی سے عقر ہو جاے :اور فقبحضہ اس لج ض رو رکا کہ اس سے مکی تکا جورت ہو تا 
ے ن عقد تو قبضہ کے افر بھی ہو جا ےگا لان ج سکودہ یز دک جا ےکی ن مو موب لہا سکوکلیت ای ونت ما ل موی 
ج بکہ اک پر قضہ ہو جاے۔ ادر امام مالک نے فر مایا کہ قیضے سے پیل بھی کیت مابت ہو انی ہے بے کے یش مشٹر یکو نہ 
سے پیل یئ نکی کلہت ما ل ہو جا ے۔ ۱ 

وعلی ہذا الخ : کی اختلاف صد تے کے معالمہ مج بھی ہے۔(ف شی ہمارے مز ونیک صد تہ بر اہ سے پیل فق کی 
لیت خابت نیں ہوٹی ہے کان امام ماک کے نر ریک لیت ثابت ہو ہا ہے۔ مارک د یل ىہ کہ ر سول ال نے رای کہ ہبہ 
ا نہیں ےگھراس صورت شی ج بک اک پر تہ ہوگیاہو ال صد یٹ سے مر اد ےکہ ہہ کی لیت ارت نیس م وگ کی وک 
عق ہہ ےکاجا ڈو ناڈ کے !خر بھی خابت ہے۔(ف لیکن جو حد ت لک گنی ہے دہ نیس پائیگئی سے بک عبد ال زاق نے اراتم 
کی جا یکا تول لکیاے)۔ 

ولانہ عقد الخ: اور اک ول سے کیک ہی کر نا اسا کا معاملہ ہو جا سے اور قیضے سے بے مو ہو بکی لیت ظاہر 
کر نے کے لے احا نکر نے وانے کے ذمہ اڑکی چزلاز مک ناب تا ہے من سکوائس نے ا بتک خود پر لازم کی ںکیاے ن سرد 
کرنالہذاا کی کواب تکرنا ی کال اف یار م ےکی کہ ہب ہکرنے وانے کے ہب کے سے پیل نجس کون ےکی 
گئی ہے اس کی عکیت دی ہوک زس بت موی تود ےی دانے پر مازم سے کاک فوزااس کے جوا کرد ےک وک زج کو 
وک ای سے ووا یکی کیت ے عالا امہ دی دانے نے خود یر ا ںکود یناور حوال گرنالاڈم کین کیا ہے اس رح اس کے لازم گے , 


"لن البد اے جد یھ : ۲ لر نشم 
یر بات لاز م کر دی کی مالا کک ای پ رکوک جن داجب نیل ہے اریہ بات اس وچ سے لازم آ کہ قض سے پیل ی سکووہ 
ید یگئی ہے ا کی کیت خا کر و یلہا ب ہکہنا اشک سے )۔ 
بخلاف الوصيته الخ ار ریت کے قرت ےوک در کات شور کاو و صیر کر نے وا نے 

کی موت کے بعد ہے میتی جب اس نے وصیبت قبو لک لی فذوصی یکر نے وانے کے مرتے بی ال سکیا و صیت شاہت مہا ےگا 
اکچ اکا نہ واو اور یہال پر احا کے امیت ب کوک چزلازم خی کی ےکی کہ اس کے مر جانے 
سے ال یں ہے صلاحبت کی کیل ر ی اورا کی وار ثکا کن اس سے نہیں وال وک وار کا کن ا نووعیت کے بعد ے ال 
لئے وارتث وصیت کے ما کا ماک یں موا ٠‏ 

وج ارات اس ہبہ کی تحریف۔ وت رکن۔ شر کم رلیل۔ اصطزا ی 

الفاظ۔واہب ہ کر نے والا موہوب لہ وہ تفص مج کو یز جب کی گئی۔ انس کا رگن 


ایجیاب اور قبول ے ؛ش رط تہ ے۔ 

فان قبضه الموهوب له فى المجلس بغیز امر الواهب جاز استحساناء افص اراي لم یجز الا ان 
يأذن له الواهب فى القبض والقیاس ان لا يجوز فى الوجھینء > وهو قول الشافعی, لان القبض تصرف فی ملك 
۱ الواهب اذ ملكه قبل القبض باق فلا يصح بدون اذنه» ولنا ان القبض بمنزلة القبول فى الهبة من حیث انه يتوقف 
عليه ثبوت حكمه وهو الملك والمقصود منه اثبات الملك فیکون الایجاب منه تسلیطا له على القبض بخلاف 
ما اذا قبض بعد الافتراق لانا انما البتنا التسليط فيه الحاقا له بالقبول والقبول يتقيد بالمجلس فكذا ما يلحق به 
بخلاف ما اذا نهاه عن القبض فى المجلس لان الدلالة لا تعمل فى مقابلة الصريح. 

تم : ۔ پچ رار موہوب نی تے ہب ہکیا گیا اک نے جب ہکی می یس ہبہ کے ہے ال پا خد ن م ےکر نے 
والے کے گم کے ایر ےکر لیا نذا انا چات ہوگا وان ٹل فیس مورک تن سے او ے بعد گی خی کو مک امیا 
تھا ( تن موہوب لل)نے اس ءال پر از خود ت کر لیا و یہ چائز ٹیس ہوگاالہ گر و ےۓ دالا ال کو کر ےکی ا جات دے 
دے جب جات ہوگا۔ اور اک یہ چاچتاس ےکر ہکورزودوٰوں صور قول میں قضہ چائزنہ ہو لٹ خواہ شس میں اہازت کے !خر تہ 
کیا ہدیا چا سے بعداجازت کے اضر زی کیا ہو چنا خی امام شاک سی تول سے کی وکر مال بر ت کر نامال دانے ن وام یکی 
لیت میں فص ر فک نا کیرک قیضے سے پیل کک ا کی ایت با ےہ ادام بک اجازت کے !خر اس EA‏ 
نیس ہہ گا لاف لیکن اس مس یہ اقترا ےک اپازت زوم کول ے اک رات یہاں ‏ پل گی دومر ىاجازت 
اہو ہے سشداد ‏ دالے نے بن ہکرنے سے یں رووا انت یہ پا لے یہار جد دلا سح کال 
(e‏ 

ولا ان القبض الخ ادد اید کل ہے س کہ کے کے مب تیو ل کر تایا جانا ہے اک ط رر ہبہ بی بھی قبضہ ک ایبات سے 
اس انقبار س ےکہ ہ اعم یی کی تکاطابت ہونا فیض کر سے پر موتوف سے حال اک واہ کا قصو رکا کی ل ۱ 
جن کو ہز ہب کی ے ا کی لی کو غاب کر دے۔ لہ اداہ پک رف سے اییا بک ناگویااسں موہوب کا چز کی 
ت پر مہا اکر امول خلا ف اس صورت کے ےسا ےس ای یل رض ض ہکیاہو تو جائز ہیں 
کک ۔کرنے می قت ےکر نے پر مسل رکاج مم نے اب کیا دو ہکو کے تو کر نے کے ساتھ ملانے کے طور يہ 
ہے عالاکمہ کچ کو تو لکرم جس یی تی کک متیدے توج چر یں قول کے ساتھ کے نی ہبہ بر جج کر نادہکھی انی گل یی 


ین البد اہے جد ہر Ir.‏ 27ے 
ی متیر ے مان جس ططر کک اس میں قبو لکر گے سے کیت خابت ہو جا ہے اک ط ر ہبہ یس بھی تضہ سے کیت شاہت 
مہا ے۔ ین تو لکر ےکا تقار چ وکر صرف میلس کی کل ہو جا ہے اس لے ہبہ بر قض ہکااغقیار بھی ہب کی لس مین بی 
م واو ر اس سے جلاکی کے بحرت ہوگا_ 

مین اس ق کو تو لیت کے سا تھ اناد لال ےی داہب کے گل سے مہ رمل کن ےک اس نے ت کی اہازت 
دے دک ہے اس کے بر خلا فاگر وہب نے ہب کی ماس ہی بیس جے ہب ہکیاگیاے ن مو ہو ب ہکو قیض سے ص راحو ن کر دیا ہو 
اس کے پاوجود وہ ت کر نے فو قبضہ جائز ہیں ہوک کی وک صصراحجت کے متا لے میس ولا لت کم ھی ںکرکی۔(زف معلوم ہونا 
جا ۓےکہ افظ خلہ لفظا ہبہ کے معن میس آ تا ے چنا حضرت تمان بن بت سے دوایت کہ میرے والد نے رسول ال کی 
خد مت میں مار وکر ر کیا کے یل نے اپ ال بی کو اپنا ایک خلا کیہ دیا “فی دید یا ال بات پآ پگواور یں ۔ تب ر سول 
لئے ری کیا م نے ا یکی رب رلڑ کوک ہدیا ے اہول نے ۶ر کیاکہ یں حب نے فرمایاکہ پھر کے م گواہ 
مت بنا اور نعل ر ولیات یں س کہ آپ نے فرمایاکہ تم اسے وائیں کے لوا یکی رداحیت کا ت کے )۔ 

وب ےا ا یا E‏ 
ےم ہونے کے بعر و کر ل ”نیال سے کل عم ءاقوال انت ہکرام ولگ 

قال: وينعقد الهبة بقوله وهبت ونحلت واعطیت لان الاول صريخ فيه والثانى مستعمل فيه قال عليه 
السلام: اكل أولادك نحلت مغل هذا وكذا الثالث يقال اعطاك الله ووهبك الله بمعنى واحدء و كذا ينعقد بقوله 
اطعمتك هذا الطعام وجعلت هذا الثوب لك واعمرتك هذا الشىء وحملتك على هذه الدابة اذا نوى بالحمل 
الهبةء اما الاول فلان الاطعام اذا اضیف الى ما يطعم عينه یراد به تمليك العین بخلاف ما اذا قال اطعمتك هذه 
الارض حيث يكون عارية لان عينها لا يطعم فيكون المراد اكل غلتھاء واما الثانى فلان حرف اللام للتمليك 
واما الثالث فلقوله عليه السلام: (فمن اعمر عمری فھی للمعْمَر له ولورثته من بعده)» و کذا اذا قال جعلت هذه 
الدار لك عمرى لما قلناء واما الرابع فلان الحمل هو الا ركاب حقيقة فيكون عارية لكنه يحتمل الهبة يقال 
حمل الامیر فلانا على فرس ویراد به التمليك فيحمل عليه عند نيته. 

ےت تد ورک نۓ رای ےکہ ین الفاطظاے ہہ عق ہو تا ے دو ہے یی ء شیل نے کے جب ہکیا۔ یں نے کے لہ دا۔ 
یس نے جھے عطظاکیاءکی وک ہلا لفت ہبہ کے معن میس صراتأسے اور ووسر القت اس کن میں یڑا مل سے چناغیہ ر سول اٹہ 
ی اٹہ علیہ و سلم ن مایا ک ہکیاا یکی را دوصرے پچو کو بھی کالہ دیاے شی ہی کیا سے اک طرع تس الف کی ای می 
میں مل ہے اس ے اعطاك الله ما وهبکه اللددونول الفاظ ایک مع جس بے جات ہیں۔(ف مثا کی کے ب ہو نے بر 
ال کے دوست احباب کے ہی ںکہ الد نے کے ہہ ہب ہکیا ہے۔ اود ای معن می ہے بھی کے می ںکہ الد تعالی نے تھے او لاد عطاکی 
ہے اس سے معلوم م واک لفط عطااور ہبہ دوفول یی ایک کن شس بے جات ہیں۔)۔ 

وکذا انعقد بقولہ الخ :ای طر ان الفاظ سے بھی ہبہ عق ہو جانا ےکک لو ںکباکہ یل نے کے ہے طعا مکھلابایائش نے 
کپڑر ہار ےنا مک دیایا ری یل لو ںکہاک اعمر تك هذا الشی ن یں نے کے نز مہا ریز ن گی بر کے ے دیلو ں کہا 
کہ می نے خ مکوا سیگھوڑے مر ھا شی سوا کیا نشم لہ لاد نے یاسوا رکر نے ے ”قصور ہہ ہکرناہو۔ ۱ 

اما الاول الخ :اس تمہ اور شی فت اطعام سے پہہ مرادلیزاال لے چات ےک اطعام یکلا ہی جب نبت ایی چچ زکی 
مر فک جاری ہوجو خودکھائی انی ہو ی ےگہہوں دی رذ اس سے مراد ہے ٥و‏ ف س کہ یہ صن سے (بچی چنز) تار یعکیت میس 


تین الد اے جد یڑ ۱ ۱۳ ۱ ۱ ہن 
ی ینا عتا ی کاک ٹس نے ت کے زان اطعا مک وای سے مراد عار یت مو یکی وک کیں ز مین نمی سکھائی 
مان اوا یکا مطلب ہے ہوا کہ زین سے جو پک حاصل ہو ووش نے خ مک وکلایا۔ ( ف تن بیس نے ت مکویے ز م۳ن اس لے د یک 
ماس می سے زراع تکر کے فل ماک کر وجو تھہنار ےکھانے می سآ اس کے مہ ہی یں ہی ںکہ تم اس زی نا لان حا کل 
کر کی وکل مستت رک ھکر ا ړو ےےکااغتیار نیل ے لہ اا لے سے صرف ا نایار دیاگیاکہ اس میں خو دک کر کے فر ےم سل 
کرو ال کل جب لو ںکہاکہ می نے کے زم نکھانے کے لے دی فوز ین ایی یز نیس ےک خودکھاکی جا ے لہز اا ی ج 
اطعام کے مع عار یت کے ہیں او راگ ایک چڑ کی طرف اطعا مکی نہ تک جو خودکھائی ای ہو کے لو کہ اک سے یں 
قل یا ميادو ن د یر «اطحام نکیا کو و یکلا تو تلا پر ےک ہکھانے سے مہ چزی خود ت ہو پاک یکی ہز ااسے عار بیت 
یں کہاجا سکتا ے بک اصصل ت کو مانک :نان ہے اور اک کانام ہبہ ے۔ 

واما الثانی الخ اور اب دوس الف تڑوہ ا لے ہبہ کہ اس یش حرف لام موجود سے فو تملیک یڑ ماک :نانے کے لے 
آتاہے۔(ف۔ مت جب ع ری می دو ںکہاکہ ھا الوب لک اس سے ہبہ اس لے مرادلیاجا تا کہ ا میس لف کک شں ج لام 
ہےاس کے معن ہار ے لے تن تمہاریعککیت میں ہیں اس کے کی ےکوا کی کیت مل د ینای ہہ ے۔ اما الشالث الخ 
اور تیر القت ]نی می نے مکوہ زم رکید کس فوا کو ہی کن کی ىہ دج کہ رسول اللہ صلی الد علیہ و کم نے فر ایا کے 
جن تھے ذو اکل ری دی نہ ری ان خی نکی نکی کے کے تو کے عدا کے داژن کے 
لئے ہے۔(ف۔ ا سک روات بغار کی کے علدو کم اور ین ار بح ن ےکا ے۔ اعد یٹ ٹیل کی جب مہ ری اس کے کے 
ہو نے کافیضلہ دے دیا تو یہ لفظ بھی دوسرے لفظ کے ہی می ہوا ن ا سکی ایت ٹیل ہے۔ اب جب سس نے کہ اک ٹیش نے 
ی بز مو ری دی فو اس کے ایے مو ےک ےآ یکی ککییی م وکیا یک ہہ اکر اکہاجااے۔ 

لو کذا اذا الخ: ای رع اگ ر ول 08271 و ہار ے لے عر یکر وی نو کی او یا نکی موو مل کوچ ے 
بی ہبہ ہے۔ل(اف۔ من تمہارے لے (یاع بی بیس ( لک )لام میک کے لئ ہے بک عم رک خو وی پیش کی عکیت کے لئ سے جیما 
کہ صد یٹ سے خابت ۴وا)۔ واما الراب الخ : ادراب چو تالف مق یکھوڑے پر نھان نواس کے لغ وی مع سوا رکرنے کے ہیں لہذا 
یہ عاد یت ہوگاسا تھے ہی اس ٹل بب ہکا کی اضمال ے چنا نہ حاو ے یں ہو لے ہی ںکہ سر وار نے فلال شف سک وکھوڑے میں مٹھایا 
اس سے قد ہے ہو تا ےکہ سردار نے ا کو سکھوڑ ےکا مالیک بنادیا ب اکر ای کے کے ونت مب کی نیت ہو ہبہ کے معن بر 
یا کو مو لکیاجا ےگا ۱ 
و :م ہک نکن الفا ے عقر ہو اے :او رکیوں ع مال 

ولو قال كسوتك هذا الوب یکون هبة لانه یراد به التمليك قال الله تعالی او کسوتهم ویقال کسی الامیر 
فلانا ثوبا اى ملّكه منه» ولو قال مِنحك هذه الجارية كانت عارية لما روينا من قبل ولو قال دارى لك هبة . 
سكنى او سكنى هبة فهى عارية لان العارية محكمة فى تمليك المنفعة والهبة تحتملها وتحتمل تمليك العين 
فيحمل المحتمل على المحکمء وکذا اذا قال عما ی سکنی ونل سۆ سكنى صر اومىزقةغار ية إوعاسةهية لماند اء 
ولو قال هبة تسكنها فهى هبة لان قوله تسكنها مشورة وليس بتفسير له وهو تنبيه على المقصود بخلاف قوله 
هبة سکنیٰ لانه تفسیر له. ۱ ۱ 

ترجہ :۔ او راک لو لکہاکہ بیس نے کو ہکپٹرا پہنایاے لیے کک ہہ ےکی وک ای سے مالک ہو نام راد لیا جاتا ہے جلیاکہ 


پل 


اٹہ چا رک وتال نے م دکغارے کے بار ےک فرمایاے او کسوتھم یارس فقیرو ںکالیا ںای رم ماو ہے مل ہو لا 


زی الہ د اے جد یڑ rr‏ جلر “2 


جات ےکہ مر دار نے فلال شف سکوخلحت پہناا شی ا ںکامالک بنادیا۔ (ف۔ لتق مر وار تقیقت میں و ہک ڑا س شنن کے ران میں 
نکی پہناتا بل اس وت ای کے م ےکوکی بھی ا سے پہناد تا سے صرف ود فلحت اس کے سا ت ھک دیاجا ا سے تن ناس اس 
کی لیت شل دے دبا اتا سے لکن مواورے میں ای ط رح کت ہی ںکہ عت پہنابااس سے معلوم ہو اک ہکپٹراینانایاضاحت پہناا 
اک بنانا اور ہہ کر نے کے کن یس ہو جا سے انس وتک ج بلول یول کک شا نے مکو یکپ اچہنایاے۔ 
ولو قال منحتك الخ :اور ار و لکہاکہ یش نے ت کے بائ ا مخ دی وای کے مع عاد یت کے ہیں ا کی ول ود 
حر یت ل ا ہے لے ر وای تک سے سی ر سول الث ہکاہے فرمان المنحة مر دو دۂ سن عار ی یکو وای کر ناض روری 
سے اکم یکہاجان ےک مم کک ہب ہرنے کے مم میس آ تا ہے ا کاجو اب مہ ےک اول لو ئ تقیقت یں عار یت کے 
مع میس سے اگ رجہ مھازاہبہ کے می یس بھی ے۔ لہ ذ از غیس لمیاجاتۓگادوس کی چ زک نس لفط س دوٹوں ہاو کا شال ہو 
تاک یس ہب ہکا مر جج ایی ہےلہذ حا ہت کاھر مک تر ہے اس لئ بی نی کن مول کے اور ھکل ہبہ کے ی جس کک ہواہزا 
اس براسے مول نکی سکیاجا ۓگا۔ ۱ 
ولو قال داری الخ: او رار رل ز باك شس لول کہا (دار ی لك هبة سکنی) سن مرا گھ تمہارے لئ لھا یہ ہے 
گنی( کش) ق ی میس سے اور ہبہ می دوبان ںکااشمال س کہ شای ےکا ایک نایا ہو بااس نے ےکا مانک بنا ہو اس لئے 
اال مم یکو چو ڑکر لی مت لئ جائیسں کے۔(ف۔ لین اس تام می دبا تق کال ے ایک کہ کی ن رش ےنا 
الک تا ہوک وکر لفظط کی صرف کی عکیت کے ے ی ے اورا سے اصل ےکی مکی تکااحقال یں ہے اور اس کے 
سا تھ جو لفط ( ہبہ )ملایاہے اس کے ہے معن بھی لے جاسکنے ہی ںکہ یں نے ت مکو ال کا ٹف ہہ کیا ہے اور اس با تکا کی اتال 
و تا ےکہ میں نے کے ا سل مکالنا ہہہ کیاے۔ تن تاس میں رکش کات دہ بھی م ص ل کرو یں اکر ہم اتا( کی )کا یتر 
کر نوہ صصرفعاریت کے می مس ے اور اکم لف( ہبہ )ایائ اکر یں فو اس میں ا کا حال ہو تا کہ ہے ہبہ ہے باعار یت سے 
ای لے بھرنے اکم مت یکو چو ڑکر نی می بر مو لکیا۔ الیا کی جب ہب کر نے والے نے اہ کلام ٹس اریے دو لفت لاد سے 
جن یں سے ایک عار یت ہواوردوسرے سے ہب ہکااشمال ہو عار یہت پر سے گول کر تالا زی موک کہ مار یت ےکم کول چ 
ٹیس ے ا باکر ایی در ج شی ہبہ عراونہ مو وکا کم مہ مراد تو ضرور ہوک کہ عادیت ہے ہز امیا شف ہو جات ےگا۔ 
وکذا اذا قال الخ اور اک ط رم گر اس کہ اک میرا کر ہار ے ےر ی کن ے پا نعل معن ی ےگ م د 
چیا صد ت عا ی ے یعاد ن ہبہ سے تان تلام صو ر تول شں کور دبالا دچ ہک ناب عار یت مراد ہ وگی۔ولوقال هبة الخ: اور 
اک یو کاک یر ایے ل ےہار سے لے ہبہ سے ناس میں رپا کد ہے چیہ س کی کک اس می مہ لف کیناکم ای یس راش 
اظتیا رکرو مور ے کے طور بر ے اور ہے لفظاس ہہ ےکی تفیی ہیں ے با اصل مقر برتنبی ہک نا ے یی می رک غر کر نے 
: سے ی س ےکہ تما میں د ہناش و حکرو تم ا یکو ضا مم کر دبللہ ای سے فا کد أُٹھا اور ر ہے ےلکوہ بخلاف اس قول کےکہ مہہ 
ق کوک اس عورت میں ففظ می قدا کے ۔ ) 
کت : او :ال الفاظا ‏ ےکیا مارلا ہاتاے 
كسوتك هذا الو ب. منحتك هذه الجارية. دارى لك هبة سكنى. سکنی هبنة. عمری سکنی. نحلی 


قال : ولا يجوز الهبة فیما یقسم الا مَحُورَة مقسومة وهبة المشاع فيما لا یقسم جائزء وقال الشافعى يجوز 


بن البد اے جد یر ار کس بل م 
بى الوجھینء لانه عقد تمليك فيصح فى المشاع وغيره كالبيع بانواعه وهذا لان المشاع قابل لحكمه وهو 
لملك فيكون محلا لەء وكونه تبرعا لا يبطله الشيوع كالقرض والوصيةء ولنا ان القبض منصوص عليه فى 
لهبة فیشترط كماله والمشاع لا يقبله الا بضم غيره اليه وذلك غیر موهوب» ولان فی تجویزہ الزامه شیئا لم 
لترمه وهو القسمة ولهذا امتنع جوازه قبل القبض كيلا يلزمه التسليم بخلاف ما لا یقسم لان القبض القاصر 
نو الممكن فيكتفى به ولانه لا يلزمه مؤنة القسمة. 1 یت 
تجمہ:۔ قدو رئ نے فرلا کہ جو ہن م مکرنے کے تقائل ہداس کر مہ کر ناما ہیں ےکگر ای صور ت مل جب 
لہ شی مکر سے لیر و بعد ,کرد یگئی ہوء اور جو یز شی م کر ے کے تقائل دہ موا یکو م کے اضر مکنا جات ے۔(ف۔ 
معلوم ہونا جا کے کے جو چیز م کے تاک ی ہے اس مشش مہہ جائزنہ ہو نے کے کی بی ہی ںک اس سے کیت ثابت نکی مون ہے 
لر چ س ہبہ جا ہو جاہے اس می مللیت اک ونت اتم وک جب ا کو ی کر کے الک ال کدی ہے اور گوز موی ہو تین 
ہی ہک نے وا ےکاااس چیز کے سات ھکوکی ن بال باہو اس لے اکر ہہ ہک نے دانے نے اییے مان ایی ز ین جو م کے 
جو ورودکھو چو ہد کو پ و ور و1 مم 
ر کے اس کے حال کرد ےگانب ہبہ وراہد جا ۓےگا۔اور اکر دہج تم کے تقائل تہ مو تھے : غلا ای مو او غير ود نواس کے 
اد ھے کا مہ کر ناچا کی کہ اسے تیم تی ں کیا جا سکتا ے۔ پھر ہے معلوم ہو ناچا کہ مقائل نے مراد ےآ 2 
کے بعد وہای فا کہا کی سے حاصل ہو کے جیما فا تد وا سکی میم سے لے ہو تا تھا کی کک اکر ہی مانا کد وای سے ما سل 
ہو کے کے ایک ھون کر میا سچھو ٹا حمام اور غلا م اور کی و تیر میا یکی تیم کن یی نہ ہو۔ کے :ایک فلام ای کگھوڑا اوے سب. 
تیم کے قائل نی ہیں اس لئ ان چروں میں لر م کے بھی ہہ جاڑے۔ ۱ . ۱ 
وقال الشافعی الخ :ادرامام شاف نے فرمایا ےکہ مال ہبہ یم کے تقایل و بانہ ہو دونوں صور توں میں لیت خاہت 
ہو جا ےگا کی و ککمہ ہبہ ایک الک تاد ۓکانا ہےاس لئ وہ مشت رک اور یرش رک دوفوں قموں میں جع ہے جیے :کہ نکی 
تام یں دونوں صور قوں میں مون یں سز خواووم تی مکو تو لکرے پان کر ےا کو ہنا ہو جا ہے ا کیو ج ی سے 
لہ مہہ میں تیر وم می ایے ا یکا ھی یہ ہو سکماے جو تیم کے قائل نہ مواور قبو لکر نے کے مع مانک نے کے یں لہ زا 
یر تقوم مال بھی اس لاک ہواکہ ا یکو ی کیا ہا کے اور ہ ہک ناایک ای ے احا نکی بات ےکہ دوش رکم کی وجہ سے غ ہیں 
ہوفی جیے تر اور وعیت جس سے (ف چنا مج ہاگ رکوگی شک یکو ایک ہنزاد در ہم اس ش رط یھ د ےک اس جس ے صف 
تھہارے ذے تر ر میں گے اور بای نصف بضاغت کے لئ ے۔ وی رض جو ش رک سے ہا ہو ے اور قرش میں 
لیت خابت ہو جا ےاگر چ مکی شش مان ہو یی صورت صر کے میں بھی ہے اور جس طرح ر اور صد تہ ایک احا 
رن کا معالطہ سے عالاککہ مشت رک ہونے سے ا کی لیت میں نتصان بھی نیس ہو ای طرع ہہ میں بھی م سے یی 
کیت خابت و جالی ا سے )_ ۱ ٰ" 
ولناان القبضتة الخ : ا رکد کل ہے س کہ ہہ ہکی صو رت میں قض ہکا ہون نعو م علیہ سے ن ہبہ میں زی ےکا ہون ت 
سے ثابت ہے۔ اس لئ اک ب لے قت ےکا مو ناش رط کے سا تھ ہوگا۔ اورجو چو تمم ہی سک یکئی ے دولیورے قت ےکو تول یں 
زی ےا ا صضورت .6 ےج دور چ کیا ناوعا مک یں کک ے۔(ف' 
معلوم ہونا ماپ ےکہ اس چ صو ی علیہ سے مر ادوه ر دایت ے جو اور عا یٹ کے لفظ س ےگ کا کہ ہبہ جع نہیں ےکر 
اک صورت س کن کہ اس بے تہ کی ہو کا مو اک پاب ٹس دوسرے آجار بھی مجد ہیں چنا چ ہے روامت ے قال عبد 
الرزاق اخبرنا سفیان الٹوری عن منضور .عن ابراهيم النخعى قال لا تجوز الهبه حتى تقبض والصدقة تجوز قبل 


"لن البد اے جدیر ۔ rr‏ ۱ لا شم 
ان تقبض ابرا م ی تال نے فرمایاہے کے ہبہ جائز کش ہو تاہے ج بک ککہ ا پر تہ کیاہاے کن نوکر نے سے 
یی بھی صد تہ جانا ہو جا تا ہے امام مال نے موطاش ١‏ ما ومن حضرت عا نغ سے ایک طو مل اٹ روا کیا ےج 
بس صرت ا ھجم نے اپٹی بی عائ کو ہے ہیں وس تچھوارے جوا کی کیک فوڑے نیس گے ے کان نذڑے جانے وانے کے 
ہبہ کے تے اسم میں حر ابو جک کی وفا تکادقت آگیا وآ نے راک ار تم نے ان پر قح کر لیا ہو تا ؤووسپ تمہارے 
ہو جات لین اب تز فرائش خداوندکی کے تانون کے مطابی تام وار ٹول میں ا کو شی مکردو۔ اور اک کی رواییت اور 
عبدالرزائیٰنے ک یکی ہے۔اسی طرح حر ڑے بھی ر کی شر کو عبار زان نے سر کے سا ت روا کی سے اور 
رہن عبد الز بے تھی جید سند کے سا تھ مکی ر وای تکیاے۔ 

یں ىہ ردایت ا د گے ںکائی کہ ہہ یش فی ہک ناش رط ے اور یٹ کے خی رکایت ما ل نی ہو کی ے اور جن 
میں اکر کیت حا ل ہو جالی سے لو اس ےک دہ عقر مبادلہ سے “لاف ہبہ کے وہ صرف احا نکانام سے اس ےار ہہ کر نے 
وائ نے کر یم شدومال ہہ کیا تم کیل ت سکومال ہب کیاکی تھا قر ا ںکی لیت ابت م وکیا لک صورت یہ موک یک 
مو موب ل کی ملکیت سے واپ بکی مایت ش رک ہے بذ اہہ کر نے واے ہے چز لازم آ یکہ ت مک دے۔ اس راس پہ 
ہہ کرنافذواججب نیل تھا کین اب ی مک نااس کے ذتے لا م e‏ گیا در ہے بات احا کے خلاف ہے۔ ای بزاء بر مصتزف ن کیعا 
کہ )ولان فی تجوزہ الخ: اورا ںوچ ے کیک مفا ]اور مخت رک مش مو ہو ب ل ہکی عکلیت جات کر نے میں دایم یکذ 
ای اکم لاذ م آجاتاے سے ال نے خد بر لازم نی ںکیاے۔( ف مہ اس نے صرف احا نکر ےکاار اد کیا تھااو رکون دوس کی 
یر اپنےاد یر لام نی سکی کی )۔ دج جن ہار ے۔(ف سین ت مک ناا ی کے مہ لاز م وکاعا اکلہ اس نے تم کے کا مکو 
۱ اپنےادب لازم نی لکیاتھا)۔ 

ولھذا امتنع الخ: ای وجہ سے تہ سے پیل ہبہ جا ہو کو کرد یاگیاتاکمہ ہب کر نے وائے کے ذ مہ پر دک ےکا 
کم لاذ من آے ن یر ا سک ر ضامن دی کے لازم نہ ہو جاتئے لاف اہک یز کے جو م کے تقائل نہیں ےکی وکل اس میں 
می مک رن ےکی ش رما یں کوک اس میں فو تس زیی بی کن ہے اس لئ ای پر اکن اکیا جات ۓےگااور اس وچ سے کیک 
واہب کے ذمہ می کا خر لازم نیس آتۓگا۔( گر ع اٹھانے کے ے ہہایات لام آ ےگ ہایات کے مع ہیں بای 
اکا اھا : : 7 
و :تیل تیم ما لک پ ےکر اکب جج ہوک مال مشا کو کر ےکا عم فصل 

ماگل م ءاقو ای اش کر امو لا کی 

والمهاياة تلزمه فیما لم يتبر ع به وهو المنفعة والهبة لاقت العين» والوصیة ليس من شرطها القبض٠‏ وكذا 
البيع الصحيح والبیع الفاسد والصرف والسلم فالقبض فیھا غير منصوص عليهء ولانها عقود ضمان فتناسب 
لزوم مؤنة القسمةءوالقرض تبرع من وجه وعقد ضمان من وجهء فشرطا القبض القاصر دون القسمة عملا 
بالشبهين على ان القبض غير منصوص عليه فيه» ولو وهب من شريكه لا یجوزء لان الحكم يدار على نفس 
الشيوع. قال: ومن وهب شقصا مشاعا فالهبة فاسدة لما ذكرنا فان قسّمه وسلّمه جازء لان تمامه بالقبض 
وعنده لا شیوع. قال: ولو وهب دقیقا فى حنطة او دهنا فى سمسم فالهبة فاسدةء فان طحن وسلمه لم یجزء 
وكذا السمن فى اللبن» لان الموهوب معدومء ولهذا لو استخرجه الغاصب يملكه والمعدوم لیس بمحل 
للملكء فوقع العقد باطلاء فلا ينعقد الا بالتجدید بخلاف ما تقدم لان المشاع محل للتمليكء وهبة اللبن فى 


من البد اے جد یھ ro‏ بل رٹم 
الضرع والصوف على ظهر الغٹم والزرع والنخل فی الارض والتمر فی النخیل بمنزلة المشاع» لان امتناع 
الجواز للاتصال وذلك یمنع القبض کالمشاع. : 
ہا اور مہایات ( ن ہہ کی موی چ شا لام سے دو ماککو ںکا باک پا دک کے سا تح من اٹھانا )اور ہایات ایک چیز 
میس لانزم آل ہے نس کے سا تھ امس نے تر ٹکیا ی( ای غلام سے ) منضحعت ج بک ہب ہکا تاق عین مال کے سا تج ہو تا 
ہے۔(ف۔ ی رہہ سپ اور ہہ ہکا تل اس مال یں ھن شا :خلام کے سا ت موا ےج بک اس می سکوگی مم رازم 
کی آئی ےاو راگ ہایات لاذ م آئی توا ی فلام کے لع کے سا تھ لام کیک میں تر نیس ہوا۔ انس من ےکا خلا صہ یہ م واک 
بن چ زی ب لازم آیادہ مہہ کل ہے اور جو ہے سے اس می یھ لازم کی ںآیا)۔ امو صیة الخ اس ج وی تکااعتر ا اس 
وجہ سے یں ہو سا ےکہ وعیت کے لئ شرط قبضہ ہوا یں ہے۔ ای طر کن 7 وئ فاسد وت صرف وک تل مکا بھی حال ۱ 
سے ن اڑل توان میس ےکی میس قیضہ شط کیل ے اور دوسرے اس کہ ىہ سب اہیے عقو دکی شی ہیں جن میس ات ۱ 
لام آجان ہیں ہذا مک ۶ چہ لازم ہونے کے ے یہ عقودزیادہمناسب ہیں۔ل(ف۔ انی ىہ سب کش احمان ہیں سے بل 
عق ے دوٹوں فر قکوحوض اور حا کل ہو اہ ےلب ا ای کے تر کو بھی بر داش کر نالا م امہ 

والقرض تبر ع الخ ادر رخ کاعال یہ ہ کہ دہایک دج سے شرع سے اسی بتاع رس یکو تر دبالا م نی تا سے کر 
دوسرے اخقبار سے ہے عقر فان سے ن جو اھ دیا سے اتا ھی نھان لاز م آ ےک ن جو دیا ے ای کے مل نان م وگ اس لئے 
تر می م نے مکی شرط یں لگاکی ے بک نا س قبضہ ہوناشرطدکیاسے اک دونوں اتتپار ہر ل ہو کے اس کے علادہ 
ترضہ میں تہ کے ہون ےک یکوکی تص جع ہیں ے۔مف۔ اس میس ق ےک ش رط بھی یں ے )ولو وهب من شریکه الخ: 
او ئن تیم کے قائل چزاڑسی ہوجو دو خصو میں مش رک ہو اور انیس سے ایک نے اپ اس کک ےکوجوا کیک بی میں 
ہواے دوسر ےکو ہہ کر دیات ہبہ چائ یں ےکی وکمہ ا مع مکی بنیاد او عر ف شرکت بر ے۔( ف ن مش رک اور قر قوم 
ہد نے سے ہبہ نا ھا امو تاسے)۔ ' 

قال: ومن وهب الخ : تددر نے فرایا ےک اگ ری نے بر یم شدای کاپ کیا او ہبہ فاسد ہوگااسی و یل سے 
ھک او یا نک ی ی ے اس صورت میں ج بکہ ہے نز (ہیہ ) م کے تقایل ہو باکر ا کو ق مک کے جوا ےکر دا قو ہے 
جا ہو جا ۓےگاکی وکنہ ہبہ وض کے اعد بی لور اہو تاج عالاکنہ اس تہ کے وقت ا کے می ںکوگ یش کت ہا یں ری کی 
و کا جا سا ےک ای نے جب ہب ہکیاتھااسی ونت اس یس ش رت نیس تھی۔ قال: ولو وہب دقیقا الخ : ا ری نے ای 
کو جوا بھ یگہ ہو ںکی کل مین ے ہب کیاااس تی لکوجو ا کی کی لول اور وانوں ٹیس ے ہب کیا وی ہبہ فاد ہو گا اس کے بح داگر 
ا کیہ کو شی ںکر ع ہناد یلاک کو ںکو شی ںکر تین شین میں ڈا لکر یل خکال لیو کی جائزنہ م وگ ای ط رع اکر دودھ کے 
اندر جوا کی کی معن ہوجو و ےوہ ہکیاف ا کا بھی وی عم ے۔ 

لان الموهوب الخ کیوکمہ ج نز ہب ہک یگئی سے وہ ا کی تک اید ے ای ای کن ی اون ف 
اسے آنا ناڈانے پاگیہوں غص کر کے آم کال ےم ی ER‏ و مہہ نال نے ووم 
نا صب ان غص بک مون چ زو ںکاضامن م وکر الناچیزو کا ایک ہو جانا سے یکن جو چ نایر ہداس پر لیت خابت نہیں ہو عق . 
ہے اس لئ ہب ہکا محاطہ یہاں ہا گل وگ او راگ اس نے الت چو نکو کال ویو بھی ہبہ بج نیش م وگاجب کم کے دوپار مان 
چو کد ہہت ہکرےء خلا ف ز ین وش رہ کے ایک کے کے ہہ کر سے کے کی ابی مک ےکوجو م کی کیام کی کہ ا کا 
ہبہ درست ہو جا سے الہ اس بے لیت خابت کیں مون ےکی وک جو یز ضترک اور موجود ہو دہ یز ایک بنانے کے لال 
ہے۔(ف ای لئے اہی چرس صرف تی م کرو ےکی ضرورت موی ے)۔ 


کا الد اے جد یڑ ir‏ بلاغ 
وهبة اللن الخ اور تول یں وود کا ہہ کر ناو رج رک یکی بے بے ای کے او کوپ ےکر ناور ز مین ب ےکی وی ازن 
کے گے ہوۓ درخ تکوہب ہکرنااجور وی روس گے ہو سے کک کو کرنا مشترک مال کے ہب ہکرنے کے کم میں ہے 
امل یس ہبہ فذ جع ہو جا ےلین اس کے جات ہو ن ےکا م نمی وگ کی رک ان چزوں یس انا ل کی وجہ سے چائز ہوناممنورع 
ہے بی کہ خت رک ال مس ہو جا ہے اوراتصا ل کی دجہ سے اس پر قحضہ ہونا بھی وب چیہ اک شت رک مال میں بد اکر تا ہے۔ 


ہی تی لی سی ا ر ج 
کر نے کے حر کاڈ مہ دا رکون ہو گا سا ت کے ی اورا نکی ورت :اک لی نے آ0 
ا یم ککیہو کے اندر ہے پا تیل جودانول یش موجود ہے یارودے جو تین می ہے پان 


تورورونو ھی ہے بب کا تفیل ال مب وای 

المهاياة لغة التهياة ا ےا ورن ر ی رتا ات ر ا ہاو ہاب تھا گل سے ے سن 
رقن می ے ایک زان OE‏ ڈیاے تر ا کی ای رای ہوجاے۔ ن ہر فردایک تی عالت اور ایک ہی 
پاٹ پر داش و اوز ےک یکھامیا ےکہ ہے کف اھا نا کے ون ہے لی انت پر جن ب کک ھون : 
ہو جاۓ ودومر ای ےا ر ےگ ۔القحت اور الاپ یش فرق ہے سے قم تکی صورت میس دوفوں ف ران ایک بی وت 
ٹس ان اۓ حصہ ے فا دواٹھا ‏ ہے۔اور الالو ایک فان جب اپ صا این ہار کے فا تد واا ماک فار ہو جا تا جب 
دوس رااس سے قا داشا ا ہے۔ او رای کے شر کی کن میں تسمی اتام( براہ۔ از ہی الا جھ ر١‏ ۔ 

المهاياة. عبارة عن تة تقسيم المنافع كا عطاء القرار على انتفاع احد الشريكين سنته ولأخر كذلك. قال السيد ”هى قسمة المنافع 
على التعاقب والتناوب“ (قواعد الفقه) انوارالحق قاسمی. 

قال: واذا كانت العين فى يد الموهوب له ملكها بالهبة وان يجدّد فيه قبضاء لان العين فى قبضه والقبض 
هو الشرط بخلاف ما اذا باعه منه لان القبض فى البيع مضمون فلا ينوب عنه قبض الامانة اما قبض الهبة غير 
مضمون فینوب عنه» واذا وهب الاب لابنه الصغير هبة ملکھا الابن بالعقد لانه فى قبض الاب فينوب عن قبض 
الهبةء ولا فرق بین ما اذا کان فی یدہ او فی ید مودعاء لان یدہ کیده بخلاف ما اذا کان مرهونا او مغصوباً او 
مبیعا بیعا فاسداء لانه فى يد غيره او فى ملك غیرہء والصدقة فى هذا مثل الھبةء وکذا اذا وهبت له امه وهو فی 
عپالها والاب میت ولا وصی لەء وكذلك کل من یعوله وان وهب له اجنبی هبة تمت بقبض الاب» لانه يملك 
عليه الدائر بين النافع والضارء فاولى ان يملك النافع. 

تج : ۔ ترو ری نے ف رای ےک اکرو واقس مال چے ہہ کیا ے لے سے بی ای کی کے تیر می ہو ج کو کی ہی کیا 
ک0 تے یاک ج کا کک بن جا ےار چ اس پر از نہکیاہو۔ لان العین الخ :کی کیہ ج چز ہب ہک یکئی سے وہ 
ا اب کی اک کے تہ میس موجود ے اور قبضہ وناک یہ مالک ہو نے کے لے شر ط تاک لئ اب وہ مہ وراو گیا تخلاف ای 
کر نے وہای کے تھ یں بے ڈال ہو تو بن رت اہ کے وہ ٠نس‏ چوا کی کک اشن ے اس بر تالش یں موک 
کی وکل کا بض اکل عمانت مو جا ے لہ اامان تکا فبضہ ا کانانب نہ ہہ ےگاادر ہب ہکا قیضہ قال تات نڑیں ہو تا ے اس لئے 
آمانت ر دض ال کاناب نہ بن ےگااور ہب ہکا قضہ قا کی ضعمات نہیں ہو جاے اس لئ انت ر فیضہ ا کان ہو جا ۓگا۔(اف۔ 
ل ہے ہے جب دو نے اک جن کے ہو بر ایک دمر سے اکب ہو کاچ اور جنپ دووں دو مم کے ہول ون یس سے 
نیس ےکن دزا ہت ا ےکر موو وال یس نان کات اع ے من 


شین البد اے ہدید ۱ ۱ ك۳ بلر م 
اياتض ے* 92 کوج سے ضات لازم ۱ آجالٰے راا کا ادناے۔ 
لی یں کرو یکچ رپوا باعقد فاس د کے ذر بی ےکوی جر قغے لی پچ راس چزز کے 
81 ط ر لے سے أسی کے تھ وہ چ ر فروضش یکر وی تذاب ای ( ۶یا )وای چزپ دوبارہ ٹن کی ضرورت یں 
مو کک کک نمی سے پر ایک ی مات کے قائل ے ہز ادونوں ق ایک ہش کے ہو ئے۔ ای طر ماگ ماک نے اس 
فاص بکواپتی خو شی سے اب دہ چ ہب کروی تو بھی اس کے نے ق ےک ضرورت ہیں موی کوک غص کا تع ایی سے اس 
ےکی قضہ ہبہ کے تی ضےکانائب ہو جات ۓگا۔ اک ط را کرو چزا ا تحت این ات کے خر یآعار ین ہو پچ راس کے 
ال کک ےا یکووہ یز ہہ کروی نو کی ای پر تہ Ll‏ کک وک اس صورت میں بھی رونوں آغے شی عار مت اور ہے 
کے ایک می اس کے میں اوراگ را زیر تہ لمات کے طور بر ہویاعایغاہو بعد س اس کے مالک نے وچ سی کے )تر 
روخ کر وی نوو تر یر اراس چ زکاأی دقت مال :گاج بکہ وہای چ زیر تا ہک ےکی کک کت تقال ات ہو سے 
اس لن ا سکاناب الات ر قضہ نیس ہو کے )۔ 
واذا وهب الاب لاگ ری باپ نے اپ دس سکول ہیک یکر سے تید لا چک کک ہو جاے 
کک وک ایس چے کر فے ا ںکایاپ ی ال چ ر تہ رن گاوروو چ ۶ پیل ای سے اس باپ کے قض میں موجورے ہز 
موجودو تش ہی ہب کے ت ےکانائب و جا ےگاخواددہچز واقعط انی بھی ساپ سے 5 نے ں موجود ہو با پاپ نے ھی کے ا 
ات ر کار ی و ا کو کی رن ا جن نیس کے اس دچ موجووے “ ینی ستوو کا باپ کے ت کے 
عم می ہےاس کے بر خلا فآ ال کی کے باپ نے وہ چر کےا ر کی وای ےآ چ رکو فصب کل باپ نے 
سی و رت و وت تت0 
کی وہ دہ نز فی الال باپ کے قش کے علاوورو شس کے تن میس چیا اک دوسر ےکی ککیت مل ہے اور ص 3ک گم ان 
تام صور نول ل ہہ ےک رف حر ےھت کے طور روک لو وا صرت 
FE‏ ووا ا لکامالک ہو جا ےکاخ اموچ ا کے قلے میس ا کے ایانت ار کے مات ہی خلا ا کے ل 
چ ی کے ار جن کے و اہ کسی نے اس فص یکر رک ہو قا خر یدارک کے اخ را کے گے میں ہو ووم 
ابا نس ال الک ت وگ( 
وکذا اذا وھبٹ الخ ای راگ رمیا کو یک مال کول چ ہبہ کی اور اس ونت دہ پچ انی ال مال کے سر ہك 
یس مو اورا ںکاباپ مرکا ہو ادر با پکاکوگی ی ad‏ ی ج ی اس ونت ایس ےک سرب ق 
کہ ہد ا کا ھی بی م ے۔ اور کی ی شی نے ےکوکوکی چ ہکا ا کے باپ کے ت ےکر لین سے دوہ پورا 
ہو جا ۓگاکبوکلہ با پکوجب اپنے کو کے ہے پر ایی ےکا مکی ولات جا سل ہے جس مس اس تچھوٹے ہے کے تن ہیں ع اور 
نتان دونوں باتو کااشال ہو کے تو کام یس رام ا OTA‏ او کا گی 
۱ ہوک ےن سے تک سے سے اس ےک ۱ 
7 مول چپ ف کر کان ما ل ہو جانا )۔ 


و ٢ھ‏ ات جو لہ سے بی اس کے فبضہ میں موجود ہو او ۱ 
وواک چ راکب مالک م وکا اہ باپ نے یا انان اپنے ہو ےب کو جو ا کے پا ی سے 
91/7 کب اور کس ط رحا کا مالک م وگ ام۷ لک یتیل کم ولل 


نا و ۱ ۳۸ بلر نت 

وان وهب للیتیم هبة فقبضھا له وليه وهو وصی الاب او جد اليتيم او وصيه جازء لان لھؤلاء ولايةعليه 
لقيامهم مقام الابء وان کان فی حجر امه فقبضها له جائزء لان لها الولایة فيما يرجع الى حفظه وحفظ ماله 
وهذا من بابه لانه لا یبقی الا بالمال فلابد من ولایة تحصیل النافعء و کذا اذا کان فی حجر اجنبی یربّیہ لان له 
عليه يدا معتبرة الا تری انه لا یتمکن اجنبی آخر ان ينزعه من يده فيملك ما یتمحض نفعا فی حقه» وان قبض 
الصبى الهبة بنفسه جازء معناه اذا كان عاقلا لانه نافع فى حقه وهو من اهله وفیما وهب للصغيرة يجوز قبض 
زوجها لها بعد الزفاف لتفویض الاب امورها اليه دلالةء بخلاف ما قبل الزفاف ويملكه مع حضرة الاب بخلاف 
الام وکل من يعولها غيرها حيث لا يملكونها الا بعد موت الاب او غيبته غيبة منقطعة فى الصحيح» لان تصرف 

هؤلاء للضرورة لا بتفویض الاب ومع حضوره لا ضرورة. 

ترجہ :۔ اکر تاباغ شی مکوکوئی چز ہیک کی اور اس ست مکی طرف سے اس کے ول نے اا چ ڑ ن مو موب لہ رق کر لیا 
اور دول ال ۓے کے با پکا و کیااک کے کے یم کاداداہے یاداد اکا کی ے آڑہے ج جات وکا یکلہ لن لیکو کو م ولا یت 
ما ل ہے ای کرو اس کے باپ کے قائم متام ہیں۔ وان کان فی الخ :اور اکر دہ تم ایی ما کی برو رش میں ہو تڑاں 
کے ہج ےکی طر ف سے ا لک ما ںکا فض ہکرنا جات ےکی وکمہ اس شی مکی انی تفاظت بای حفاظت کے لیل می اس کے ہے جو 
ا درک میں ان ا لک ما ںکوو ایت ما سل مول ہے ادر ہبہ بر قوف کرنا بھی ا سکی فاق تک ایک عم ےکی کہ !خر 
ال کے تم کین یبای س روم ہے اس لے جو چئ کی اس سے ن می فی ہن کی ا سکوحاص لکرنےکیادلایت بھی 
موی 

وکذا اذا کان الخ ای طرر اکر سم کی اہ( یک یکود می پرورش با تا ہو توا کا کی چائز ہے ای صورت می ابر 
کے با کے کے اولاء جس س ےکوی موجودنہ وکوک اج یکو بھی ای موتح میں پ یم یہ اب انار ولا ین ما سل ہے کیام ۱ 

یں در ےک کی دور ےا یکو ہے اقیار ما لی نی ہو تا کہ اس ےکواس کے قیضے سے کال ے لہ ااا یکوایی 
نام یں کااخقیار ہوگاجو م کے می میں رار زی وان قبض الصبی الخ: : اراک کوٹ ہے نے ہبہ بر فور زف 
کر لیا بھی جائز ہوگااس سک کے مع مہ ہی ںکہ دوب اکر چ بالغ فیس م وگ اسنا یتام کہ ہبہ سے بال ما کل ہو جات سے وا کا“ 
اناقضہ بھی ہا ےکی وک ہے ھی اس کے من میں مفیرے اور اسے وی بض کرت ےکی صلا حیت ما گل ے۔ 

وفی ماوهب الخ اورا کی نبال بیو یکو پچ جب ہک یاگیااور دو وکا کے خوپ ر ےکی وک کی ہو توا کی طرف 
سے اس کے شوہ رکا قب ہکم نا کی ا سے کی کہ اس نابالفہ کے باپ نے الس بی ک ےکا مو کی ولا یڈ ای ب یکو ای کے وہر 
کے وال کر دیاے۔(ف نی اس :ابا کا متو یآ اکر چ ال کا اپ ے ین ناپ کا خر کے یاک درخصت کرد یتااسل با تک ول 
ےک ای نے اس تابالق کےکامو ںکواس کے وہر کے خا ےکر دیا ے)۔ غلاق ای کے گر وہ کاس ہر ےگ یں 
شی یکئی ہو فذاس صورت شی الہ ہی پر شوہ راخف جائز فیس ہ وگاک کا کی تک اس کے متولی ہو ےکی وسل موچوو یں ے 
کن یں لت شا کی خی سارہ کی موم ہوا ا ےکہ اپ کے ( مہو نے کا جو وروی کک طرف 
سے ا لکامال بر قب کر نےکااخار ہو تاہے۔ 

لاف :ان کے اور پرا ی ےش کے جو الو کیپ دش کر اہ وک ا کوان چول کے ہبہ ر ٹیضے کااقتیار ای وت 
ےب ا ی کاباپ ‏ مکی ہو بای ط رم ناب م وک ا کی خیو ہت ”قمع ے لشنی وہ پا کل لا یی ہوکہ اک کیک جانا بہت دشوار ہو 
جی ول ےک کر ال وزور ے ور لکرنے ولون تمرف ترو رڈ چا ۶ موا ے وزات ج کوو رایت م کل چ 
ال کے پر دکرنے سے کی بو چا ا پک مودک یی ای کی رورت بیو ریف با پ ہز ریم 


لن الہد بے جد یر "لم ملام 
ےکی دلا تک تت باپ ن یکو ہو سے اب اکر باپ م رمیا و اس کے و س یکاک و می نہ ہو توا لکی باو خی روج ا کی ورش 
کر نے وانے ہیں ا کو ہو جا سے لہ دابا پک زت دی شی مالیا کی دوسرے برو ر کر نے والو ں کا تن یں ہو جا ہے۔او راگ پاپ 
نے ابیز ت گی ہی می ںی کے حواب کروی ہو توا کو زت ےکی ولا یت عاصل ہو جال ےگ ہے گم اس دقت ہے ج بکہ باپ نے 
صراحیۂ یر دکیاہواوراگر ولا لتا ”پر وکیا سا یکو ای کے شو ر ےک دیا توا شوہ رکو بھی اس کے مال ےتک تن 
اکل ہہ جا ےگا 
تو :گر شی مک وکو یز ہہ ہک یگئی اور اس خی مکی طرف سے اس کے وٹ یا ال یکی مایا 
توو یہ نے اس مال پر تعض ہیا یا بالغہ ییو یک وکو نز ہب ہک گنی اور ا کی طرف سے اس 
کے شوہ ر نے ی کر لی ما لک یتیل ٠‏ عم ءا قوال امک ولاک ) 
قال: واذا وهب انان فن واحد دارا جازء لانهما سلماها جملة وهو قد قبضها جملة فلا شيو عء وان وهبها 
واحد من اثنين لا يجوز عند ابی حنيفة وقالا يصح لان هذه هبة ال:ۂمللة منهما اذ التمليك واحد فلا يتحقق 
الشیوعء كما اذا رهن من رجلين دارا وله ان هذه هبة النصف من كل واحد منهماء ولهذا لو كانت الهبة فيما لا 
يقسم فقبل احدهما صح» ولان الملك يثبت لکل واحد منهما فی النصف فيكون التمليك كذلك لانه حكمهء 
وعلى هذا الاعتبار يتحقق الشيو ع بخلاف الرهن» لان حكمه الحبس ويثبت لكل منهما كمَلاً فلا شيوع ولهذا 
لو قضى دين احدھما لا یسترد شیئا من الرهن» وفى الجامع الصغير اذا تصدق على محتاجين بعشرة دراهم او 
وهبها لهما جازء ولو تصدق بها على غنيين او وهبها لهما لم یجزء وقالا يجوز للغنيين ايضاً جعل كل واحد 
منھما مجازا عن الآخر والصلاحية ثابتة لان کل واحد منهما تمليك بغير بدل وفرق بين الهبة والصدقة فى 
الحكم فی الجامع وفی الّاصل سوّى فقال» وكذلك الصدقة لان الشيوع مانع فى الفصلین لتوقفهما على 
القبضء ووجه الفرق على هذه الرواية ان الصدقة يراد بها وجه الله تعالى» وهو واحد والهبة يراد بها وجه الغنى 
وهما اثنان» وقيل هذا هو الصحيح والمراد بالمذكور فی الاصل الصدقة على غنيين. 
ھڈٹ تور نے فرہیا ےک اکر دو آومیوں ن اپنامشت کہ مکان ایک بی کو مب کیا تو ہا تز و اتن ای صورت 
س مرکا نکو ی مک ےکی ضردرت یں ےک مہ الت دونوں نے اس مکا کو ایک سا تھ اس کے جو ال کیاے اور اس نے 
بھی ایک سا تھ بی لو رے مکان ےر ت ہک لیا ہے اس لے اس مکان ٹس ش رک تک بات با کیل ری ے۔وان وھبھا واحد 
الخاد اکر ایک مرکا نکویک ہی ت نے دو محصوں کے نام ہہ کیا تو ےکا م امم ابو یق کے مزدیک چات نیس ہے۔ مین صاخ 
ن ےکا کہہے جے۔لان ہذہ الخ: سای کر کل ہے ےک یہاں بھی ان دونو نکوایک سا تھ ہہ ہکیاگیا ےک کک الک 
جانا بھی ایک سا تھ بی ہے اس لے اس میں ش رکت پیر انیس موی کے :کہ لیک مکالن دو نول کے پاس دجن رکھا اس در ہکن 
میں ک یکوگی ش ریت یں ہے ای رع یہی کی ےک و مہ ہب ہک نے وا نے نے ایک سا تیم بھی ا کو مایک بتایا سے اور کیک م 
لد د مالک بنانا نیل پایاگیاے جس سے ش رت ہو جال اہے۔ ٠.‏ ۱ 
وله ان الخ: اور ابام الو ینہ کد کل مہ ےکہ یال ان دونوں یش سے م رای ککونصف مکا نک ہبہ سے اک ےار یہ ہبہ 
ایی چرس ہوح صے تشیم ہی ںکیا ہا کا پچھردوفوں می ے ایک کس ا سکوقجو لکر ج وہ ہبہ ع ہو جا جا ںیشن اس منے سے ہے 
معلوم م واک ہگویاہ رای کو نمف آصف بب کیا ے۔اور اد کل ے کہ ان دونوں یش سے ہر ایک کے لے صف میں ایت 
ثابت ہو فی ے اس لے الیک بنانا کی ای ط رح نمف نص فکاہ وکاک وک یت تو ایی یک م ےن اس تی یکا ے اور 


۱ ین الد اہے جد بر r.‏ بل نشم 
ہب ہکااختبا رکر کے ش رکت نابت ہو جال ےکی مخلاف ر جن ر کے کے کوک رین )یر ے روز ارگ کی وہ 
رو ککر ری جاے اور روک ےکا عق دوول ر ہکن ر کے والول میس سے پر ای یکو راپ راہو جا ہےلہذااس می کول کت نہیں 
پک یکئی ے۔ اک وج سے اکر ای نے دوفو یل سے ای یکا تر ضہ اد اکم دا وا ر ہن کے مال یں سے پاھ بھی وا یں نمی نے سا 
ہے۔(ف جب ک کک دونو ں کال ر الور اقرضہ ادائ ہکردے)۔ ۱ 

وفی الجامعلصغير الخ: اور ہا ئح سرش کور سب کہ اکر دک در تم دہ تاج ول کے در میا صد تہ کے یہہ سے ہار 
ہوگااو راگ دوا ل دارو کو دی در ہم صد ہے می ا ہبہ شی د سے و چائ نی ے اور صا شین نے قرمایاکہ ماللد ارول یں بھی اتر 
ے۔جعل کل واحد الخ: اام ابو یف نے مہہ اور صدقہ ل سے ہر ای ککودوس رن ےکا از قراردیاے اور صلا حت ہوجو رے 
کی وہ وولو یس سے رای ےکی عو کے !خی ایک مال جانا ہے۔(ف ی جب فق رکوہ ہک یاگیا تو دہ مل اصد قہ ے اور صد ے 
میس م م وکر زم کر ناش رط یں ے اس ے دو قرو پااس ے زیاد هکوخ رک ہبہ بھی جا لے »کی کک ىہ صد سے کے می 
ٹش اور جب الہ ارو کو ش رک صد تہ د گیا کی ا نیل ہ کوک ہے صدقہ مہہ کے ق م ے)۔ 

وفرق بین الهبة والصدقه الخ: اور چائ جر یں ہہ اور صد قہ کے درمیان عم میں فر قکیاے یں مسوم س 
وونو لکو سا رکھاے۔ ای بفاء بے ہبہ کے لے کے بعد فرمایا ےک اک رر صدقہ بھی جائز کل ےکی کہ ہبہ اور صد تہ 

۱ دونول میں شخ رک ہونا ہن ےکی کہ دوفو کال ر امون قیضے پر مو قوف ے۔اور جائمع ن رک ر وای تکیمطاإق فر یکا وج یہ ے 

کہ صد سے سے اش کی ر ضا مقصود ہو نی ے اس لئ دو فقی رو ںکو دی یس بھی اد تال ی کی ایک تی رضامت کی ہو کی سے مین دو 
الد ارول کو و ے میں ان دونوکی خو شی مقصود موی ے اور ىہ دو اشقا ی ہیں۔ حش ما نے فرز ےکک جات من رک بی 
روایت ا مبسوطا یں ننس صد ےکا زک ہے اس سے دورالمد ارول پر صد ت ھکر نام راد ے اور ال صد تے سے مراد اڑا 

ہبہ ہے۔ل ی ان دومالہ ارو کو ےکرن لقصو ر ے)_ : 

و :ار دواو میوں نے ایتا مخ کہ مکالن ای سا تھ ایک کو ہہ ےکی او رار وی 
مرکا ن اک تنس نے دو آدمیو ںکو ہب ہکیاء اکر وو نقبرولیادومالدارو کو ر در تم مہ با 
ضر کے طور یر و جج :تفیل م اتل ہمعم ءا قوال ا ول کی ۱ 
ولو وهب لرجلین دارا لاحدھما ٹلٹاھا وللآخر ٹلٹھا لم یجز عند ابی حنيفة وابی یوسفء وقال محمد 
یجوزء ولو قال لاحدهما نصفها وللآخر نصفها عن ابی یوس فیه روایتان» فابوحنيفة مر علی اصلهء وکذا 
محمد والفرق لاہی زف اف بالتتصيص على الابعاض يظهر ان قصدہ ثبوت الملك فى البعض» فيتحقق 

الشيو ع» ولهذا لا يجوز اذا رهن من رجلین ونص على الابعاض. 

رت اوراگ ری نے ایک مکالن وو مضو کے نام اس طر ہب ہکیاکہ ایک کے ہے دو تایاور دوسرے کے ے ایی 
تھا ے فو امام ابو یق الولو ست کے ا ویک ہے ہبہ چا فیس سے ؛ کان امام مر نے فرمایا ےکہ ہے مہہ چائز ے اورک یا نکیا ہو 
کہ ایک کے لے نصف اور دوصرے کے ے بھی نف ے لاک میس الولو سے دور واس ہیں اور امام ابو طا کے ال بے 
قا ر ے اور امام مر بھی اپے اکل پر قا یں ]شی ابو عفیفہ نے فر مایا کہ اس صو رت میس کی ہبہ چا یں سے اور امام تم 
نے ریاس کہ جا نے اور اام الولو ست کے تاع ے کے مطا بی اسے جاک یں ہو نا ہے ۔ کنا نکی دوس رک روات مس ے 

کہ ہے جاتڑے۔ ۱ 

والفرق لابی یوسف الخ اک چک دونوں صور توں میں ابولو س نے جو فر کیا ے اس کیو جہ بی ےکہ مرکا نک وگکڑوں 


- 


کل الد ای جد یڑ : . ٠‏ 27 
یس صراحیۂ شی م کر دی سے یہ بات ظا ہر مو کک وں دی میں لیت خابت ہواس ط رح دونوں میں ش رک می ہو جا گیا۔ 
اک مناء یرک ہگ کی نے ایک چیوو خصوں کے اسر ہن رک یمر جرایک کے پاس ان کے حصو ںک ی تفص لکر وی توبن جانا 
س ہوتا۔( فلا :یو ںکماکہ میش نے ہے چ خ دونوں کے اس اس فصل سے ر جن رکھی س ےک نص فکورن ر ان ری اور 
شف لوو ن ر کی اس طر ن کا ذو تا یکو ادرک تھائ کروم ر کی ر کی فاا ر کک ی وہ سے رن چا یں ر 
ہوگا۔ ای طرں ہے ٹیس کک ہار یں ے خو اواك دوتو ر ی ارول ل سے ہر ایک کے با تم نصف آصف فر و خت کے اگ 
شی کے اتم فروخ ت کرے۔ کے )۔ 
وای بے ات ہکان دو خصوں میں اس مر پا ا ود وان اور 
ووسر ےکو ایی تھائی ےہاگ ری ای پیز دو آومیوں ےا رگ اور پرا کوان 
سے حصو ںکی انیب اوی تنصیمل مال عم ءا قوال امہ ولا 
۱ باب ما يصح رجوعه وما لا يصح 

قال واذا وهب هبة لاجنبی فله الرجوع فيهاء وقال الشافعى لا رجوع فيهاء لقوله عليه السلام: لا یرجع 
الواهب فى هبة الا الوالد فيما يهب لولده» ولان الرجو ع يضاد التمليك» والعقد لا یقتضی ما یضادہء بخلاف 
هبة الوالد لولدہ على اصلهء لانه لم يتم التمليك لكونه جزء لەء ولنا قوله عليه السلام: الواهب احق بهبته مالم 
يشب منهاء اى لم يعوض» ولان المقصود بالعقد هو التعويض للعادة فثبت ولاية الفسخ عند فواته اذ العقد یقبلهء 
والمراد بما روى نفى استبداد الرجوعء واثباته للواحد فانه يتملكه للحاجة وذلك یسمی رجوعاء وقوله فی 
الكتاب فله الرجوع لبيان الحكم» اما الكراهة فلازمة لقوله عليه السلام: العائد فى هبته كالعائد فى قيئه» وهذا 
لاستقباحه. ۱ : 

کے اتا 2 6 2 نے تی تین ان واذاوهب الخ: 
ندور ی نے فرمایاے ہر کی ےکی اک یک وکوکی چر ہب کی اوا لکواپنے ہبہ سے رجو کر لک کااغتار ے۔( ف ای ج 
ایی ےا یم اد سے جشس کے سا تھ تر مت والی قرابت نہ ہد گر چہ ر محرم قرایت ہو کے : پا زاد بھی دخ رہ ہو سے ہیں 
ا رابت تونہ م وکر وہ کرم ہو جیے ر ضا کی بعال بن اپ رایے سب اجکی کے عم میس ہی ںکہ الناسے د سیه د ے ہی ہکووائیں لی ےکا 
اخقیارہے۔ئ۔ ادر امام شا ق نے فرملیا کہ مہہ د ےک ای سے رجو کنا جائ کدں ےکی کہ ر سول الڈد نے فرمایا کہ ہے 
کے دالا سے ہب کی جز یں جورع کی کر ےگا سوا ےا مہہ کے ج کی باپ نے اسۓ س ےکوکیاہو۔ اور دوس رکد مل بے سے 
کہ رج غک نام الک :ناد ےکی ضد سے ج بکہ عق ہہ کے ددر ےکو ایک بناد یغ کے ہیں او رکوئی عق بھی اپٹی ض رکاتقاضا 
ھی سکر جا ے )۔ لاف وال کے جو اس نے ابيے فرز ن ھک وکو چیز ہب ےکی ہ ھکی کہ امام شا کی اصل کے مطای ہے ہبہ ی نیس 
ےکی وک اس یں پور یہکلیت نی ر ہقی ہے اس مناءپ کہ ناا سے با پک چو ہا ہے۔(ف جو صد یت امام شاف کے اتد رال 
میس می یک یگئی سے ا سے ظط ران ووار ی ومام دا والو ود وابین باج ونای وت نکی اور ابن حبالن رصم اللہ نے ر وای تکیاے۔ 
> برت کان ےکما کہ ہے عد یٹ ہن کے اورا کے الفاظ ی ں۔ : 
وی تح ات SE E DL‏ نت و کے 
سوا ای واللد کے ای پیش جو اےۓ بی کو عطاککرے اور جھ کو ا رت ۱ 

کہ یے :کماکھا تا ے اور جب پیٹ کک ر جا تا سے لو کرد تتاے پھردودوبادواکی ت ےکواپینے پیٹ ٹس مھ لیا ہے۔اور ر7 وس نکی 


کڈیاپدے بد ۔ ۴۳ لر “م 
ادایت شل ےکہ ہی ہکر کے رج )کے والا ایا ک ےک وکا ےکر کے پاٹ لیتاہے۔ اور او نے جو ای ماف ریا 
ےا م ہے بات یں جات ےکہ تے بے ام کے علاوواو کوکی م کاب گیا ہو( ی تے رار رام ے)۔ پھر معلوم مون 
پاس ےکہ بب کر کے اکل سے اجر کر سے کے مکل می اختلاف ے کان دیان تک بات ىہ کہ اک کےکرودہ کی ہو نے 
کول اختلاف نیس ہے بل نیاوی عم یس جبہ کے ہو مال شل رجو کے سے رو ہوگا یا ہیں ۔ اس سل میں اام 
امام مالک وار اور جمپور علماء کے دی ہبہ بے افش ہو جانے کے اح دای سے رجور کنا ات ے بش رطیلہ دہ شف زک ر تم 
حم نہ مو اور ای کے علادہکوکی دور کچ زر جو سے مال نہ ہو)۔ ۱ 
ولنا قولہ عليہ السلام الخ : اور مارک کل میس رسول ال ہکاہے فررمالن مپا دگ س کہ ہب ہک نے والا ای ہہ ےکازیادہ 
تاا ہے ج بک کہ ہبہ لن وا ےکی رف سے ا کی طرف ماب نہ ہو نشی ا کاب ل لیا ہوانہ ہو۔ اوراس وبل سے بھی 
کہ عموماعاد ہہ کر ےکا قود ہے ہو ما کے اا کاپ لہ کے جیا ےے۔ اور جب اک کاپ ل نہ ہلا لود ہے وا کوک ہس کے کا 
اختیار ما سل م وگ اک وکل ایا عقر ٹا کے قائل ہو تا ہے۔(ف بے حد یٹ اك محد من روات کیا ہے۔ این ماج ودار وت 
ال شبہ اورا یئ کی سنہ یں ابرا م این ا مل بن گی بن جارس تیف ے نان امام بار کےا کی ر وات سے اش کیا ے 
اور عط را نے اا ںکواین عا کی عد یٹ سے مر فوظاردای کیا کہ می کو چ ہب ہک فدہ ا ہے بب ےکی موی چ کازیادہ 
تقرار سے پچ راک اس نے رج کر لی توو مایا ے جیسے وو ج وکو ےک کے اسے دوہار و کھانے۔ اس روای تکی اسنا می بھی ۱ 
کلام ہے۔اور ای عد بی ٹکو عام نے مت رک میں اور وار ی نے انی سط اور ت نے محرفت بی ر وای کیاے۔ لیکن خی 
ھاس ےکہ جا بات ہہ سب کہ ے روات ححخررتہ مر کاذائی قول سے اورا ی ر مو قوف ہے اوراس کے مرف کر نے میں نی 
ر سول ارک طرف شو بک نے میں عبیدالڈ بن موی ن ی اکے۔ ین ائین ر ےکہاکہ عبید اق بین مو ی تق میں اور 
ان کے تام داو تہ ہیں۔ پ تھی کر ہے صد یٹ 2 بھی ہو و ی صد بث سے پور نے اتر لا ل کیا ے۔ اس میں اول لکر یی 
پا( : ۱ ۱ 
والمرادیماروی ال اور جو جد یٹ امام شا کی نے روات یا اس سے مر لاہ کہ ا کو صرف اقم کے رج 
رن کاانقیار یں ر ہتاے مان وال کو اختیارد تا ےکی وک واللد ای ضر ورت کے وفت ا کا مالک ہو جاتاسے اورا سک و بھی 
رجوں کج ہیں۔(ف بللہ اس عدیت نل خوداس بات بے دلا لت س کہ دجو کر نے سے مالک ہو جا تا ےکی کے ا یکو کے سے 
مال دی ے جو دوبارہاٹی ےک وکھاجا تا سے اس لئے وہر وو ا 
گر چہ یرجھ کھردودی ہو اور مار یکو یال پہ اھک صو ر ت ل س ےک ال نے جو کیام و اکر چ ےکر و سے )۔ 
وقوله فی الكتاب الخ :او کاب می جو فر مایا ےکر ب کور جو ]کر نا اختیار ہے ال سے کیان ہے ء باق ای 
می سکراہتکاہذیا تاس میں وہ کا ہت لا زی ہو یک وکل ر سول اللہ نے فرمایا ےک پیر جکر نے والاالیاے جیے :کو س 
ےکر کے دوبارہ ا کو اٹ ے۔ یہ تہ رج ےکا مکی خر اپ یکو اہ رک نے ٹیل سے۔لاف یال صصورت بیل ےک س 
عد بیٹ سے امام شا ضف نے استند لا کیا ے ا کی تاو ب یکی جاۓ یوکار ای سے مہ ہکن لے ماک یک جب موہوب ل سن 
ےد گیا ے اور ای ړل وگول کے تر بائی مول اورا کید ہے دا ےک پئ ا کاب لہ بھی تہ ملا ہو فو اے اخقیار م وکاک اپ مہہ 
کو کر دے میا ن ای اک نے یل اپنے ہبہ سے اسے دج کنا بھی لاذ م ٦‏ ہ ےار چ ےکر دہ کی ہے کان ہے تاو بل بعر ے۔ 
قتج:۔جاب۔ایعا ہبہ ٹس سے رجں ]کنا ہج ہو نہ ہوہ ہے کے ما لکووالیں لی کا 


تم کیاکی کے لئ اسے وا ینا از ےتیل م اتل :حم ءاقوال امہ مو لا کید 


r 0 125‏ لر“ 
معلوم ہوناجا کہ ہبہ سے رجو عکنا .مین واییں نے ینادیم دنر وواور ممنوع ہے الہتد تا ی کے عم سے ہے چائز رکھا 
۱ جا سکیا سے کی ھی رجو عکری کی فیس ہو ے۔ خولودو ملحت اس موہوب ل ہکا وج سے جو ج کو ہہ کیاکی جو خلا دہ 
تد ہی رش دار ہو جن سکی نبلاو یا نک جاک ے۔یااک وجہ س ےک مو ہو ب ل جوا شی بھی سے اس 
بل ہہ ہکا عو اداکردیا ہو۔یاخود موہوب(مال ی )سے رج کی ہنی ون نکی نت ےر د 
ب کک معلو ہوا چا ےک ہاگ ہہ کے ویک کرس ےکی وچ سے اک با شس شالت آجائے تود الا تھاق مان خی ے۔ لہ دی ۱ 
7 شر اکت ماع ہے جو ابقر اع تی میں جو اور نا تال تیم ہو۔ سی لے گر ۷0ھ70۸ : انچ راس کے نصف سے رج اکر یا 
اکچ ال ط راس مال اب ش راکت ہگ کرابت زاء شی نہ ہو ےک دچ سے یہ ہبہ جا س ےگا فا شیہم واللد اعم م۔ 
ثم للرجوع موانع ذكر بعضها فقال: الا ان يعوضه عنها لحصول المقصود او يزيد زيادة متصلةء > لانه لا 
۱ وجه الى الرجوع فيها دون الزيادة لعدم الامکانء ولا مع الزيادة لعدم دخولها تحت العقد. قال او يموت احد 
المتعاقدين لان بموت الموهوب له ينتقل الملك الى الورثةء فصار كما اذا انتقل فى حال حياته واذا مات 
الواهب فوارثه اجنبی عن العقد اذ هو ما اوجبه او يخر ج الهبة عن ملك الموهوب لهء لانه حصل بتسليطه فلا 
- ينقضه ولانه يتجدد الملك بتجدد سببه. قال: وان وهب لآخر ارضا بيضاء فانبت فى ناحية منها نخلا او بنی بيتا 
او دکانا او آریا وکان ذلك زیادۃ فیھا فلیس له ان یرجع فی شىء منهاء لان هذه زيادة متصلة وقوله وکان ذلك 
زيادة فيها اشارة الى ان الدكان قد یکون صغيرا حقیرا لا يعد زيادة اصلاء وقد تكون الارض عظيمة يعد ذلك 
زيادة فى قطعة منھا فلا يمتنع الرجوع فى غيرها٠‏ 
ترجے: ا کے و و ی کے ا 
ے۔ چنا مجر فرایا فقال الا ان الخ ن ہب کر نے کے بععد اس سے اجر )کناچا سے سواۓ ند صور تذل کے ۔ ین میں سے 
بی حصورت ہے سے کہ موب لہ نے دا بکو اک مہب ےکا کول دے دی ہو تب وہ وا ہب اسےۓ ہبہ سے رجوع ہی کر کا ے 
کی کک اس سے واہ کا مقصد حا ل ہ وگیا۔ اویزید الخ :دوس رک صورت ہہ ہ ےک ا دک موک یڑ ن موہوب میں اصل ہبہ 
س ےکوئی جززیادہ کیک کی ہو ب رجو فی ںکر سنا ےکیدکمہ ہبہ سے جک زیاددال وے ایر اسے وای لیے یکو کیش 
مین زم ن ہے کن ہی نڑیں ہے اور زیادثی کے سا تھ وا یل کی ک یکن نیس س کی وک ہیک سے وقت اس معالمہ 
کےنائتز نکی ذاش یی جار 
قال: اویموت الخ: اور ہے کی فرمایا کہ تب رک صورت یہ کہ واہب اود مو ہوب لہ بش س ےکوی الیک مر جائۓے 
و بھی رجوں میں ہو کے 007 SSE‏ کی لیت اس سے ل م وکر ای کے واروں 
کی رہ as‏ ھی ہے۔ لپزااب ہے کہا جا ےگا اکویااں کی زن گی ی می ا سک کات شل ہو ئیہو ناب رج کات با 
س رہ ای طرئ اکر وہب مر گا ہو فو اس کے ور کو اس معاممہ ہہ اور ال موہوب ےکوی تلق باقی یں ر کرک ان 
اوگوں نے معا رکیاتی نی تھا۔ 
اویخر ج الھب الخ( ٣‏ )چ گی صورت ہے سب کہ دہ کی مو موب مو موب ل کی لیت سے تکل جاے اس لے وا ہب 
۱ یت سر عا ارز رپ کات نا یرترب جات نے اسے(زی دکو) 
ال جب کیا تاس نے ممن م گر این مال توکر ف ا کیا وجہ سے می موا ای ے واہب اے 
ال یس کر کی کت ان ول و و ی کی ھی ل ت ی جت مز کے رون 
کیا رق گے ال خ یدارک کیت ا صلی موی ےی اہب ل یں کر کنا ے۔قال وان وهب لاخر الخ اام ر 


کل الہد اے جد یر rr‏ لر نشم 
نے فرلا ی ورت ے سے )کی نے اٹ تایز من چ راع کے جل یت یکو ہہک برا ۔ وای زین 
025 کے در خت [گاد بے کو ی کرای کو دک ی چیو تیلیا جانوروں کے جاردرۓے کے لے ال 
الاک ہے سب با تل از ین ٹیش زیاد یکر ےکی ہیں توان صور تڑں یس اس دینے وا لے ون ین سے کسی ج ےک و بھی وائیں 
نے کااخقیار یں ہے یدلہ ہے یاو ال زین کے سا تھے کل ے۔اور مص نے جوم فرمایا کہ ”عالاککہ ہی سب ال 
زین زی د ے' اس ساس جا تک ر ف اشارد ےکہ ےنید عر فش بھی شار مون سے یہاںک ای کک دکان 7 گی 
چون اور تیر مون ےک ا سکوکی طر بھی شا یی ںکرتے اور بھی زین اتی بی چوڑی موک می زیادق ا کے اک 
کے میں غار مدن ہے تو بائیز ھن سے ہب ہکوواپس لیا مور نہ وکا( ف اس کے بح رار مو ہوب لہ نی جے زین وی ای 
ا لے نے رک ا ن کال ناشن کی کی ری نویس رر مین کے 
وان ےکواس کے واپ لی کاا یا کیرک جس زیو یکیو چ سے اسے وای لیا نع تھاووزیادثی اب با تر دی 0 


رو ہبہ سے جو کر کے کے ہوا سیا نے ای قائل زر اعت ز می نگ یکوہ کی 
اوا ا کار ول شل ور خت اکا ےید وکا :ناوک کول چو تر وال ل وکیاایی 


زین سے ر جو ں کا کے مسا کی یل و ا 

قال: فان باع نصفھا غیر مقسوم رجع فی الباقیء لان الامتناع بقدر المائعء وان لم یبع شیا منھا له ان 
یرجع فی نصفها لان له ان یرجع فی کلھا فکذا فی نصفها بالطریق الاولیٰء وان وهب هبة لذی رحم محرم منه 
لم یرجع فيها لقوله . عليه السلام: اذا كانت الهبة لذى رحم محرم لم يرجع فيهاء ولان المقصود صلة 
الرحم وقد حصل وكذلك ما وهب احد الزوجين للآخر لان المقصود فيها الصلة كما فى القرابة وانما بُنظر 
الى هذا امو وقت العقد حتى لو تزوجھا بعدما .وهب لها فله الرجوع فيها ولو ابانها بعدما وهب فلا 
رجوع. 
رجہ : 2 تیم سے بن سی او رکوہ ےکر دی ۶ 
اس بل واہب کے لے اس باقی زم نکر کے کاتتیا وکاک وک ہا پ رجور ے جو بات ال ہو ے دواریے جے میں 
رے ل تک ماع موجود ہو اور اکر ای مووب لہ نے ای اک ہبہ گی ہوک زین شی کے کے ر وکت ف و ںو 
وا ےکواس بات کااتیار وکاک فقظ آ و ی ز مین ایک نے ل ےکی وکل جب اسے ہب ےکی ہو گی بو ریز می نکووالیسں ی ےکااخترارے 
توف ہب کو بدر چہاوٹی وائیں نے سکتاے۔وان وهب هبته الخ: : ی صورت ہہ ہ ےک ہا کک لے اپ ذی رت خر مک 
جن کیو ای سن و کین 0007 کیک ابی ہبہ سے قصور صل ر ی ہو فی ے جوا چ وام بکو 
اض و دی ے۔(ف اور جس عت ری تصورم ل ہو جا اہے اسے ر کرت چائز نیل جو جاے۔اس چگ جو مد یٹ کر فرمائی ہے 
ان ال نا اور خی نے رن چ سے مر ون رای ے۔ حاکن کہا کہ امم بقار یکی شرا ےا 
جو ز ی ےکا ےکہ ا کی استاد میس کالہ بن فر ضیف ہیں صاحب سن ےکا ےک وو شیف نہیں بک ووتو کین کے 
راولوں بیس سے ت ہیں ہہ درا کل پراش بن حفر ارق ن ہیں اور جو ضوف ہیں دہ می ین المد تی کے والہ عپراللڈ بن می 
م بی ہیں جوالر تی سے لے یگزر کے ہیں ورای جد یٹ کے عت راو ہیں سب ٹہ ہیں کان ہے حد سیت شگر ےار وار 
کہا ےکہ عمبدالڈہ بین ”حفر ا کی رواییت مس اا چات ےلم 7۳ ب- ,0و0 
از مع رک ےک اول وج ٹا ےکی ود تہ راووں کے تالف نیس ہی ں کک ہی سے رجو کا طال ت ہو بد دیق 


ل الد اے جدیر mei‏ ا لر تشم 
ے ن رکتاے جیا اکہ ۴ نے یی بیا نک دیاے۔اور خو دای صد بیث یل کی اک با تکی طرف اشارہ موجود ہے اس طرح 
ےھ کہ ہبہ سے ا ]کر نے والے 00 شال 1 ہے جا تے دوبارہ اٹ لتا 
اس سے ہے بات صاف طابر مو ےل رھ ىر ےکا عم ایت جو جاجاے و a‏ اکر رجو ثابت بین ہو اتو شال ى 

رع مواقی نہ مول یی جب جد یٹ کے ی جع ور یہ ہو ےک ہی سے رج )کر نادیتباعلال ہیں ہے پھر لن ری گر ۔ 
رز کر نے7 تم بت ہوا ےگا EEE‏ 02 پھر کی ر جور ےکر نے وا ےکی متال ای کے کی کچ این 
تے ماٹ لیے جمب یپاک کک بات ثابت موک قو حر مرو رت کک وت ےک کلت و 
ےا ر اجا ےکہ اا لک اتاو یں حر ت ن لھر نے رہ بن جناب سے روات کے عالا EI‏ 
حزن صن ھ مر نے کمرہ بن جنا بک پایاے یا کیل پایا۔ ا ںکاجو اب ىہ ہےکہ ور کے نو یک ا نکا انا سے اغات سے 
ہا ں کی کہ ہار نے ال یکو جت ہے ہیاک تن سط نکاس اب می کرد ہے داش تالم 
ااجیاب )_ . 
وکذا لك ماوھب الخ اوی ”وات ی ےکہ 0 a‏ زین نے دوسر ےکو کچھ ہب کیا تو ای سے 
ن لر ےکی دک امم کا متسو اور دی ھون سے جن ےک قرابداری یش مون ے شی کرت بی مقصور 
حعاصل بوجاجاہے۔اس ٹس ہہ وضو تیر ہک ضرورت ہیں ر ہتی۔ پا ہہ تقصوداسی وق تکادیکھا جا ےک وقت ہب ےکامعاللہ 
ہے باپاے انی ہناء بر اکر مرد نے یک عور تک ےھ ہہ بابدس کی عورت سے کا ک یک لیا تا کولس ہبہ سے رجو کا 
بے ادرا 1 پیا کے بعد ہبہ کیا ر اے طلا پاک دک واب اس سے رج یں کر کے( فک کہ مہ کے 
وت وہ ورت ا یک یوی نشیس طر کیک سل وک جو مقصود ترام کل ہ وگ اور ای مقصود کے ا گر 
وونوں س ہر ال دا ہو ی کل نتصا نک بات یںرے)۔ 

و :ار ایی اے س نے ج ےکو ل زین ر کک یا ای اس ز ین کے نمف حمر 

ا تیم سے بن کیا رکوہ ہکردیءاگ کی سے ای زم ن کک اسیک دج محر مکوہبہکاء 

رز یی ےتا نے ےکوی کا سالک تفحیل یو کی 


قال: واذا قال الموهوب له للواهب خذ هذا عوضا عن هبتك او بدلا عنها او فی مقابلتھا فقبضه الواهب 
سقط الرجو ع لحصول المقصودء وهذه العبارات تؤدی معنى واحداء وان عوّضه اجنبی عن الموهوب له 
متبرعا فقبض الواهب العوض بطل الرجوع» لان العوض لاسقاط الحق فيصح من الاجنبی كبدل الخلع 
والصلح» واذا استحق نصف الهبة رجع بنصف العوضء» لانه لم يسلم له ما يقابل نصفه» وان استحق نصف 
العوض لم یرجع فى الهبة الا ان یرد ما بقی ثم يرجع وقال زفر یرجع بالنصف اعتبارا بالعوض الآخرء ولنا انه 
یصلح عوضا للكل فی الابتداع وبالاستحقاق ظهر انه لا عوض الا هو الا انه یتخیر لانه ما اسقط حقه فى 
۱ الرجو ع الا لیسلم له کل العوض فلم یسلم له فله ان یردہ.قال وان وهب دارا فعوضه من نصفها رجع الواهب 
فی النصف الذی لم یعوض لان المان خص النصف. 

رم ۔ دور نے رلا ےکا لے اوت ےکی بی سے فوفس لایس کے 
برنے نے ادا کے قاس او اروا ہب نے ا پر کیا جو کا ساط ہیا کہ بدد بنا تق ساق رک کے 
لئ و جا ےا کل وام بک تصورم اک٢‏ اوران س بکامطلب ایک ی ہے۔ و ا غو ضه اجنبی الخ: :اکر موہوب لہ 


نایدا دی ْ کے برش ٠‏ 
کی طرف سے اس پر احا نکرتے مو ےی نے وام بکو ان کا کوش دے دیاقذاب دامپ سے رجو ںکرن ‏ ےکا تق یتم ہوگیا- 
کی وکل عو دہ ےکا تنص ر خی ر جور کے یکو کراب تا جن بک ىہ عوت کک ن رکی طرف سے بھی تج ہو ہے مک 
لع کے مسل میں ۶وت و ار لقان کے در میا کا کوش ہو تا ہے۔لاف مایا کی کے ایک عورت کے مو مر کاک تم 
اس عور کو ضیح دے دو اک ش رط کہ ا کے عو کے پر رار در چم لازم ہو گے۔ فویہ جائتزے۔ ای طز ں ری جڑ یت 
نے متتل کے وٹی سے کاک ناس ت ت کو قماصتا لن کر ویلک مھا کر دواس شر طا کہ ای ی دت نام اکامال جو بھی ہو جھ 
پر لازم ہوگا۔ یہ ضس بھی ہاو ے)۔ ۱ ۱ 
۱ واذا استحق الخ: وار تن ہے تن ای کو ہبہ کے ہو سے مال کل سے اس کے لصف ع اپات 
خابر کر کے اس فص کو قیضے میس ے مرا و وولو رامال چوک یکو ہب ہک یاگیا تھا ا کا کوش چو ای نے خوددیاتھایاااس کے بد ے میں 
کیا ھی نے د تیا ی شس ے مف کے کروم تن وا سپ سے ویش نے ل ےگا کیو کہ ال ہو ھ ۶و کے متقابلہ یٹ جوا یں 
واب نے نصف ال م ہکیاتواودا بن کے پاش تخوظا نہر )۔ وان استحق الخ :اور اگ ہبہ کے ۶و می جو مال و گیا تھا ای 
یش سے صف حصہ پیا نے اپنا عفن اب کر کے ے لیا اب وا ہب اپنے صے مس ہے پھ والیں نڑیں نے سکت ہے الہتہ اس 
صورت میں لے کنا ےک جو حصہ باق ر گیا ے ا کووای لک دے تب اذا مہہ وای نے سکتاے۔ ۱ 
وقال ژفر ال ازم راا ےک یی مو ہوب لہ ا سے عون لکانصف دائیں لیا ہے اک ط رح واہب بھی اپنے ہبہ س 
سے صف دائیں لے تا ہے۔اس بیس مما رید کل ىہ ےکہ عو میس سے تاباق ر ہابت اش بھی لے ہب ہکا عو مین کک 
ے اور آدھ پر قح خابت ہوکر لے جانے کے بعد یہ بات معلوم موک اب جو یھ بای رہام یکل ہکا کول ہے۔ الہتہ اسنا 
رن ہوگاکہ وام بکواتقیار دبا جا ےکک اکر دو ڑے نو بائی عو وای کرد ےک وک ال نے ا ے تی ر ج وکوا ی امیر کیا 
تاک ہے اورا عو اسے مل ہا ے۴ لیکن جب اسے نیس ملا نوا ںکواختیار ہوگاکہ با یکو وای لکردے۔(ف اور جب پا اٹہ 
واب ںکردا تو دوہ ہعسی عوشض کے لخر رگیاا کی لے دوانا ہبہ وا نے کے بقال: وان وہب دارا الخ :اگ رنیک تس نے 
ووسر ے ت نکواپناای کہ کر دیا یرای مو موب لہ نے اس کے و ےک کوش دے دیا ووا ہب اک صف کو کا ءوض 
نی دیڑے وائپیں نے سک اہے کی وککہ رج کے رکا وٹ ڈالے والی چنا 4 کر ضف کے ما تج خصو کت 
و :اکر مو وب لہ نے اپ دامپ س ےکہاکہ تم اپنے ہبہ کے عوض بے سے اتنا مال 
ےلو اور واب ےا ب اض کر لیا اکر مو ہوب ل ہکی طرف ے کیاکی نے 
ام لان ےل ال اا ی کے ا 
ہہ لے ہو سے مال یل سے صف حصہ پر اپنا ن ابر کر کے ای سر کر لیا اکر ہے کے 
وش کے نمف کے اپا ی تکر کے نے میا ا یک یل کم رد لا تل 
قال: ولا يصح الرجوع الا بتراضيهما او بحكم الحاکمء لانه مختلف بين العلماء وفى اصله وھاءء وفی 
حصول المقصود وعدمه خفاءء فلابد من الفصل بالرضاء او بالقضاء حتی لو كانت الهبة عبدا فاعتقه قبل 
القضاء نفذ ولو منعه فهلك لا يضمن لقيام ملكه فيه و کذا اذا هلك فى يده بعد القضاء لان اول القبض غير 
مضمون وهذا دوام عليه الا ان یمنعه بعد طلبه لانه تعد واذار جع بالقضاء او بالتراضی يكون فسخا من الاصل 
حتی لا يشترط قبض الواهب ویصح فى الشائع لان العقد وقع جائزا موجبا حق الفسخ من الاصل فكان بالفسخ 


الب داي جدیے_ 4" E‏ مل“ م 
مستوفيا حقا ثابتا له فيظهر على الاطلاق بخلاف الرد بالعیب بعد القبض لان الحق هناك فى وصف السلامة لا 
فی الفسخ فافترقا. ۱ و وو 

رت تددر نے ریاس ےک ہہ سے رجو غکرنا جع یں ہو جا سے سوائۓ اس صوزت ےک وونوں می آآئیں میں 
ایک دومر ر ہولیاحام نیما رکرو ے مطل بی ے کہ صرف واہب رج کے ے 0 کت 
کہ جے د گیا مو وہ کی ر این ہو جاۓ باواہب کے چاسے پر ھا ی ال کا عم دے دے۔ ا لکیادجہہ س ےکہ مہہ دجو کے چائز 
ہونے یس عاماع ریس اختلاف ے اور رجو کی اصلیت ثابت ہو نے میس شیف ہے اس کے پاوجوویے معلوم نویس ہو اک وا یکا 
مقصورا بکیک ما سل بوایا یں ن کی بات فو یہ ہے رجور کے جائز ہونے ہی لھنرددی ے مہا ک کہ ور کے 
رر پا ہیں سے اگر مار ےپ اں چات مو ک یکی تو وہای وقت جا تا ے جب ب کہ وام بکا ہے ے مقصود حا لل ن ہو 
ا جل موچو وم سور ت ٹیل یہ بات بی ی ےکہ اسک قصوو ما کل ہو اسے پا ہیں سی شای رک اسک صو وی سل ہوگی 
ہو واىی صو رت یں رجور جائزنہ م وکا لپ زا بات ضر و رک موک دو باقول بی ے ایک بات پر فیصلہ ہو رونوں ہی آ یں بل 
رای مو جائیں یا قا ی ی فیصل کر دے یہا یب یک اک کی نے اپنا ایک غلا مس کو ہی کیااور اک کے بعد واہب نے ای سے 
رجو کر یا ین تی کے کم سے پیل بی مو ہوب لہ نے اس غلا مکو آزا کر دی توا کا آزا کر د ینا ناف ہو جا ۓگا۔ اور اکر 
مو وپ لہ نے واہب کے رجور کر کے اور ماگ کے بح را سکودہیے سے اکا رکیا ذو ضا کن ہیں م وکاک وک کی کک واب 
کی کیت اس پر قائم ہے۔اسی طر حآر اض یکا عم ہو جانے کے !عد وام بکو د سے سے پلیہ مہہ ضا م وکیا تو بھی مو موب لہ 
ضا نہ ہوگا اش لہ ای نے دی سے اکا ہکیا ہو کی کہ پہلا فبحضہ ای کے ذمہ اعت کے سل ہکانہ تھ قذوہ بد لکر بھی 
مان تکاقبضہ نیس م وکاک وک موجو دو زع پہلای ع ہے ال تاکر تی کے لے کے بحر وا ہب مطالہ کر ے اور وودوس ا : 
سے سے اکا کے تب اقیاضاصن ہو ہا ےک کی وکل اسو تت ا کی حرف سے زی دنپ یی ۔ 

واذا رجع بالقضاء الخ :اور ج بک واب نے ت ی کے عم کے بعد یآ لکیار ضا مند کے رجو ]کر لے پورے 
طوریر غار ہوگامطلب ہے کہ ہہ ہکاجواصل محاللہ ماتا وی رہ وکیا اک مناء بر واہ ب کا کر ناش رطانہ وکا تق قیضہ کے 
ایر کی وام یکی لیت ابت ہو جات ۓگی۔ اورا کے رجو رتاش رک ہبہ میں ہوگا لا : مو ہب لہ نے مہو بکاز مین 
کو چو تصرف ے ا کو تی سے بر 7 کو ہی کر دیاہو توش رک مال کے با نصف مال ے واہ بکارجو کر موک لک کہ 
لے محاپزے یں ددہا شس ا نو کہ دہبیہ چاتڑواڑح ہو اتھااوردو م ا کل ابنرااور جڑے ہی 81 من کا سب بناتھل 
سن وام بکو قانوفا ہے ن ما سل تھاکہ اپنے مووب ل کی د ضا من کی کے ساتھ یا ی سے عم جار یک راک ات ہب کو سح 
` کرانے۔ اور ج پک موجورہ صورت مل از خود رح ابت وگیا تو ای نے ایتا کن لور اپ ایاج اسے خابت تھا اپ اے ب مطلقا ر 
صورت یل اہر م وگیا۔ ن وہ ہبہ خواہ پر ستو ر اب بھی موجود ہویااس یں رکت کی ہو ای طرں اس ب ایتا کر ے یانہ 
بخلاف الرد الخ : لای صور تکہ ج بکہ کی صو رت یں شت زی نے اۓ مال بر ق ہک لیا بعد مٹش ایس ٹیل عیب 
نک رآ چا ےکی وچ سے اسے وای یکر ویاو ےک ہگ راس میں تہ سے پل ج ہو فو بے تک ہے اہی موکد اک ط ر گر زیر 
لرا کے لیے یع راوگ الہ ہآ نکی رکا کت رح وا کنا کن تی ریخ : 
کیوکلہ اس وفت مشنتیکاحن صرف انتا تہ اسے تنج سالم ٹل جاے۔ جواسے نہیں می ان اسے می ہن نیل تاک جب ٠‏ 
چا کرد ے۔ اس طط رم بال ہکووال کر نے اود حی بکیادجہ سے ودای کر نے کے در مان فرق ظاہ رہ وگیا۔ 


الد اے چدیر ۴۸ بلا" م ۱ 
و :ہہ کے بح دای ےکس ط ررح ر جور کیا جا کے اور رجور حکرنا جات کی ے یا 


کل ہبہ سے ر جور کرای صو رت میں ب شار ہوک صیل ےکی کم ولوک 

قال: واذا تلفت العين الموهوبة فاستحقها مستحق وضمن الموهوب له لم يرجع على الواهب بشىء لانه 
عقد تبرع فلا یستحق فيه السلامة وهو غير عامل لەء والغرور فى ضمن عقد المعاوضة سبب للرجوع لا فی 
ضمن غيره. قال واذا وهب بشرط العوض اعتبر التقابض فى المجلس فى العوضین ويبطل بالشیوعء لانه هبة 
ابتداء فان تقابضا صح العقد وصار فی حكم البيع يرد بالعیب وخيار الرؤية ویستحق فيه الشفعة لانه بيع انتھاءء 
وقال زفر والشافعى هو بیع ابنداء وانتھاءء لان فيه معنی البيع وهو التمليك بعوض والعبرة فى العقود للمعانی 
ولهذا كان بيع العبد من نفسه اعتاقاء ولنا انه اشتمل على جهتين فيجمع بينهما ما امكن عملا بالشبھینء وقد 
امکن لان الھیة من حكمها تأخر الملك الى القبض» وقد يتراخى عن البیع الفاسد والبيع من حكمه اللزوم وقد 
تنقلب الهبة لازمة بالتعویض فجمعنا بينهما بخلاف بيع نفس العبد منه لانه لا یمکن اعتبار البیع فيه اذ هو لا 
یصلح مالکا لنفسه. ۱ ۰ 

7 جمہ:۔ قور گا نے فرماا کہ اگ جب ہکیا موا یال ضا ہو جا اس کے بح دکوکی اس بر انا ن ابر تکردے مکی ہے 
کہد ےکہ دہ ٹیر کی لیت مگ اور مو ہو ب لہ سے الس ہب کا تادان ے اقب مو ہوب لہ اپنے داہب سے پگ وای یں لے 
سنا ےکی وک ہکس یکو مال بی کر ا پ ایک احا نکر ےکا عامل ہو تا ہے اس لئ اس یم اس بات کا جن یں رہ کا ےک ج 
جا کے پا د یگئی ہے ودای کے پا یش فو ظا رہ ےگی۔ پل راس ہب کو تیو لکر نے یں وہ مو ہو ب لہ اس داہب کے لئے 
کوک ای اکام بھی تی کر کہ ا کی وچ سے وام ب ا لکاضا من ہہ ےکی وکل مو ہو ب لہ نے جو پھ جج یکیاہے خود ایی ذات کے 
نے کیاکی کا کیا ےک ی ےکی رور کال ان وچو پل کے لیے ا رک دا ای کے 
ضا ن ٢وتاچا‏ سے ال ںکاجو اب ہے س کہ الیباد وک جو بے کے اندر مو ن یں میں بل ایا ماپا مو وہ یقوغ اڑل پان ےکا سبب 
نآ ے لین اییاہہہ جس می کسی عم کے ۶وک اپار ہک گیا ہوا یں وائیں پان ےکاکوگی سبب کی ہو ہے 

قال: و اذا وهب الخ :فقرور نے فرمایاےکہاگر ھن نے دک ےکی شر کے ضا یک کین 
کاک می ت مکواپنا می غلا م اس شرط بے ہی کر تامو کے تم بج ھکواپناووخلام ہہ کردو ایی صورت میں ای ملس یس رونوں عو ے 
رای کا قحضہ ہو جاناشرط ے او رار ووال مضت رک ہو توا ی وجہ ے دوہبہ اگل ہوگا ی اکر ودک ہو گی نزیس کے بدلہ دوٹوں 
می ےکوی بھی ایا شت رک ہوجوا بکک یکیکیاو وہ ہبہ با ل م وکاک وککہ ایماجیہ شروک شس ہیر ےار چہ آخر یل 
ا سکی ل بد لک بے ہوگئی ہو ۔ اش کے ب رار وونوں اتی ا ضا ہی ے ای پر قب کر لان معاطہ کی ہو جاےگااورے 
ہبہ ا کے عم مس جو جا ےا اس دجہ سے اس مال شس عیب اور خیار ریت ن دیک کے ت نکی دجہ سے اسے والی کیا ہا سک ےگا 
اور ا یں کن شفعہ ثابت ہو جا اک ھتہ ہے ہبہ اغ می کی کی کل اتارک لیت ے۔ اور امام ز فر وشا لف نے خرملا کہ یہ 
معاملہ ڈابتڑا اور انا دوٹوں ہی صور تول میں ع ےکی وک اس میں کے کی تح ریف پائی ان ے ]ین کسی چ کو عوض ےکر 
دوس ر ےکو مالک بناد ینا اور معاملات میں معن ت یکا تیار ہو جا ہے اک وج سے اپنے غلا مکواسی کے ہاتھ فروضشتکرنا آزا رک نے 
جک تی بی و ارت ‫ ۱ 

ولنا انه الخ :اس ستل س ہمار کد کل ہے س ےکہ الیماجبہ جن شی معاوض کیش رط ہواس میس دو صور میں پائی ہا ہیں شی 


ابس دوا تال اہر ہو سے ہیں اور چہا لک کن چو وونوں بی اخالات مگ لکرناواجب ہو جامے برا بھی گم لکرم مان سے 


گن الد اے چدیر 1 mq sS‏ لر “م 
اور بھم نے یہ بات الس ےک کہ احا م ٹل سے ایک بات ہے س کہ عکیت ہا کل ہونے بی ف پان ےکک ما خر مون ے مج 
جب تہ ہو اس ر کیت مون اور ہی بی انا بھی ہو جا جا ے ای لے ع فاس یس کی تہ ہو نے مک لیت میں ار 
من ےاوز کک کی کے مععم میس سے ایک سے ہے مکہ محاططہ ہک ےک دولازم ہو جانا ہے مہ بات * ہبہ لن بھی پاکی ان ےی 
لے ہبہ کے لحد اکا یدلہ دد سے سے ہبہ گی لاز م مو چا تا سے اس لے م نے الیباہہہ یں جو بد ےکی ش رط کے سا تح ہو 
رونوں تو ں کو )کر لیاے مق ہبہ ہک ےو ت لھا کی می مب کای شر یزرا 21 ماس میں دونوں فر لاپ اپنال 
پر ت ا لیے کے بح دآ یی اس معا کو ہد یاہے اور ہے بات ار بی ہبہ یں کن ہے جس کے ے عو کا ہو نار طط ۔ 
لا ف اس کےکہ ایک غلا مکو ان می دوس ر ے فلام کے پت ین اکہ اس یسب کاا را رکرن کان ٹنیس ہ ےکی کہ ا ںکااپاغلا م 
خودای ذا تک مالک ہیں بین کے( فکی دک آ وی خوداپنی ذاتکا مالک نی ہو جا ب اکر م یکی ںکہ خلا مکو خو لام کے 
پاتھ ینا فوااس سے لاذ مآ ےکک موی نے بد لے لیے اور خلا مکو غلا مکی عبت ٹیل دے دیا ہے حال اککہ یہ بات حاط 
ہے صرف بی ہوا ےک موی نے ال س ےکر اس سک و آزا رک دیاے۔ . ؛ 
ات ف :اگ موہوب ضائع ہو جااۓ اس کے بع رکو اس بے اپنا ن شاب تککردے اور 
مووب لہ سےا کا تاوالن بھی و صو کر ےا کی ےکی کوب د لہ دی ےکیاش رط بے 
ہی کیا ماک لک یتیل عم اتلاف امم اتل 

فصل: قال ومن وهب جارية الا حملها صحت الهبة وبطل الاستشاءء لان الاسٹثناء لا يعمل الا فى محل 
يعمل فيه العقد والهبة لا تعمل فى الحمل لكونه وصفا على ما بيناه فى البیوعء فانقلب شرطا فاسداء والهبة لا 
تبطل بالشروط الفاسدةء وهذا هو الحكم فی النكاح والخلع والصلح عن دم العغمدہ لانها لا تبطل بالشروط 
الفاسدة بخلاف البيع والاجارة والرهن لانها تبطل بها ولو اعتق ما فى بطنها ثم وهبها-جازء لانه لم يبق الجنین 
علی ملکه فاشبه الاستثناءء ولو دبر ما فی بطنھا ٹم وفبھا لم یجزء لان الحمل بقی على ملکە فلم یکن شبيه 
الاستشناءء ولا یمکن تنفیذ الهبة فيه لمكان التدبير فبقى هبة المشاع او هبة شىء هو مشغول بملك المالكء 
فان وهبها له علی ان یردھا عليه او ان یعتقھا او یتخذھا ام ولد او وهب له دارا او تصدق عليه بدار على ان یرد 
عليه شيئا منها او يعوّضه شيئا منها فالهبة جائزةء والشرط باطلء لان هذه الشروط تخالف مقتضی العقد فكانت 
فاسدةء والهبة لا تبطل بها الا ترى ان النبى عليه السلام اجاز العمرى وابظل شرطا لِمُعْمِر بخلاف البيع لانه 
عليه السلام نهى عن بيع وشرط ولان الشرط الفاسد فى معنى الربواء وهو يعمل فى المعاوضات دون 
التبرعات. 

ج :۔ تدوز نے فرملیا ےک ای نے ایک ہاند یکو اس کے عمل کے ای ہب کیا نے ہہ وکا کن ہے اسشزام 
گل م وگ (ف می وہ باند می اپنے صلی کے تھ ہے ہو جاے کی )۔ لان الاستٹناء الخ :کوک اتشاء ای جل و سے 
جہاںاصل عقر ہو سا ہو سجن شلا :ینس چ کو ہ ۔کرناجانئز مو اا سکوا تا مکر نا بھی جائز ہوگا حا اکلہ موجو وہ ستل ہیں م کو ہبہ 

کرنا مفید یں ےک وک یل اس ونت اس عاملہ بان یکا الیک و صف ہے ججیراکہ جم نے اس سے یھ کاب ال وم ٹیس با نکر دیا 
۱ سے ج بک کہ دہ یہ پیر اہ وکر بال سے جدانہ ہو جب کک وہای مال سن ال ایل کے دوسرے اعضاء ا تھ ال کے اتر 
ایک وصف ے لبفرا ا سکااسشاء تو ی نہیں ہوگاالبتہ ا کی چک شر فاسد ہو جات ےگی۔ کان جیہ ایک ایا محال ہے جو فاسد 
شر طوں ہے ب گل یں ہو جا ہے اپ ایے ہبہ سے الہتہ ووش رط فاسد م وکی اور کی تم نا و خاو رخو ع ہے یک ےکا 


0000پ] ۰ ا 2 
کی وتک ىہ محاطات بھی فاس ر شر طول ے بای نیس ہوتے ہیں خلا ف تع داجارواورز ین ک ےک ہے محالہ قاس شر طول سے خور 
ہی گل / جاۓ ہیں-(ف لزا موچو رہ سے میں ج بکہ پاٹ یکو ہب کیا اور اس کے مک اسشا کیا نوا یک نیہ ہے موک 
انل کی اس واہب(مانک )کی لیت ے تکل کی اور موہوب ل کی کابت میں پت یکی اور جوک عم لکاا سا مکرنا بی نہیں ہو اس 
لے وو تمل کی ا واجہ بک یت ے تک لکر مو ہو ب ل ہکی کیت یں وا غل م وکیا )_ 

ولواعتق الخ: اوراگر پیٹ یں جو کی تک مل موجود سے پیل اسے آنرا دکیااس کے بعد باندکیادوسر ےگوو ےوک لے 
ہا وکاک وتک وہ تل اب اہ بکی لیت بیس کی ر ہااہفرایہ اشنا تل کے مشاہ ہوگیا۔و لو دبر الخ :اور اگ بائ دک کے پیٹ 
٠‏ کے کو یل مد جر منیا بر با نک یکو م کیا بے جا جال موک و کہ بی بچ ا کی تک اس وام بک کیت میس موجودے اپ ایر 
اششماء کے مشاہ نیس ہوااوریہ بات کان یں ےکہ مل پر بھی ہب ہکا ناف کیاجاے :کوک دہ یہہ ف الال مد بر سے اب وو 
کیت میں ر سے کے تقائل نہ راس لے اییا ہہ دوحال سے خالی نیس ہوگایا مضت رک ہہ ہے یا الک کا ہبہ سے جس سے مالک 
یی وام بک مکی ت کا بھی تک ات باقی ہے۔(ف اور ال دونو صور فو یس ےکی کا بھی ہبہ چا نیل ہو جا ہے اسی بار ۱ 
ا کی سے امک شی ہیک جس مس اس داہ بکا لہ جزاہواہد قد ہبہ ہیس ہو جاہے۔ اوراہامابو یڈ نے فرلا ےک اکر 
باپ نے اپنے کچھ وٹ چےکو ایز ین ہب ہکیا مس میں اس کے با پک فی لھا بھی یھی ہی ے یاک ہی ےکو الا مکان ہ یٹس 
یں وہ خودر تا وہ ہبہ چان نی ہوگا کان عاو نے اس سور ت مین جات ہو اککیداے ایت کرای کو کر ایے دار ر تا ہو 
بپ با گل کد( | 

فان وہبہ لہ الخاگ رسی نے دور ےکو اپ باند یا ال ش رط بے ہب کک دہ مو موب ل اک داہہ بکو ہے باند کی پر والیں 
لواد ےگای اک شرط بے ہب ہک یکہ وہ مو ہوب لہا کو آزادکردےگایاام ولھ ہناد ےگا یا ی کو پناک مب ےکیایا صد تے کے طور پر دیا 
ال شط کہ دد و ہو ب ل ا گم یں س ےکوی حصہ اا کواب کر د ےکای ای یں ےکوی حصہ کوش میں لواو ےگا اوی 
ہا ۶ے لیکن شر طب مل ہو ہا ےک ۔ ل( ف ن باندی اک سے ہبہ یا صد ق کیا گیا ے و ہا کاب اکک جن جا ےکور بعر شی وای 
` دیے یا آزادکر یام ول بنانے ویر مکی ش یں گل ہو ںگی) لان ہذہ الشروط الخ کی وک ایی ش ریس اس معاللے کے 
ققاتے کے تالف ہیں لپ ایے شر میں فاد ہو لک الہ ہبہ ای شر طول ے باعل نیس ہو خا سے ۔کیا نیس دبک م وک ر سول اا 
سے عم رک کی جاز ت دک ہے اور عم راد سے دا ےکی شر کوب م لکہاہے۔ مخلاف تن ک ےکہ دناسر شر طول نے فاسد ہو جائی ے 
کی کہ ر سول ال ےک کے سا تھے شط کے سے من فرمایاسے ا یکی رایت اط ر انی دی ہن ےکی ے۔اوراسل وجہ سے کیک 
لق فاد غر یں باج (سود) کے ہن میس ہیں لیکن ا سکااث وال ہو ما سے جہاں وش بھی ہو اہو چوک بی عوض کے لجن 
ترعات مل نیل ے۔( ف ی ہبہ اور صد قہ و ر وج جح اسان کےکام ہیں الن یش ماع کے ہے ”ی ننس ہیں چوک میا نکی 
وات ایک آبیں کے لین دین می کول جزدایاہو جو اس کے متا ےے میں وش تہ مو اور پو تہ ہے اور صد و یرہ 
احا ن کےکام ہیں ان میس و ہو ای ہیں ای لئ ان میس میا کی نہیں ہو سے )۔ : 

و :ا کی نے ا باندی تی کن ینان اح لوان ےکر 
ان گی کے تم لکو پیل آزا رکیای پل مد ب نایا بعد یش دوباخد یس یکو ہب کیاکی نے ابی 


انگ کو جب ہک ای شر ٤ھ‏ وھ کو پچ رہہ با ند کیلونادرےگاءیا آزا درد ےگایا 
ام ولد ینا ےگا تفحبیل م کل کم ول کی ۱ 


قال ومن کان له على آخر الف درهم فقال اذا جاء غد فهى لك إو انت برىء منها او قال اذا اديت الیٗ 


صن الہداے جدیر ا۵ ٤ ٠‏ بل “م 
النصف فلك النصف او انت برىء من النصف الباقى فهو باطلء لان الابراء تمليك من وجه اسقاط من وجلا 
وهبة الدين ممن عليه ابراء وهذا لان الدين مال من وجه ومن هذا الوجه کان تملیکا ووصف من وجه ومن هذا 
الوجه كان اسقاطا ولهذا قلا انه يرتد بالرد» ولا يتوقف على القبول والتعليق بالشرط يختص بالاسقاطات 
:المحضة التى یحلف بها کالطلاق والعتاق فلا يتعداها. 5 ۰ 

ترجہ :.. .ایام مر نے فرمیاس کہ اکر ایک تنس کے چ رار دد ہم دوسرے پر با ( قر ض) ہوں اور اس قرش خواو نے 
دوسرے س ےکم اک ہک لکادن نے سے ہے سب در ہم ہار سے میں یام ادر مول ے بھ کیا ہو یا ےکہاکہ تم کے آد ھے دے دو نو 
ا آدے ہار ے ہیں باباقی آد ھے سے تم بر ہو نان الفاظ سے دوس ر ےکو ماک بانایا بد یکر نبال ے۔ لان الابراء لك 
کوک بر یکرنا ھی ایک ط رج سے دوسر ےکو ایک ناتاو تا ے لان دوسرے اتپا ر سے دوسرے کے دسے سے ماق اک مہو تا 
ے اور شس تفص پر قرض باقی مو اے قرضہ ہہ ہکرن ےکا مطلب ا لکو بر یکر نا ہو تا ہے کمن ایک طرح سے ماک بانا 

اور ایک ط رح سے ال کے ذڈے سے سا ق اک رامو جا ےکی وک قر الیک اتقبار سے مال سے وای لحاظ سے ا کا کر نے 

کا مطلب دوسر ےکو مایک نان سے اور دوسرے اتقبار سے وہ پا یئل و صف ے ال اظ سے ال کا ہہ کر ناس ا ق طکر ناے سن قر ض د ار 
کے سے سے سا و طکر و یناور ان بی وونوں با فو ں کا لھا اک ے ہو ے ب ہکا ےک دہ قر ضد ار کے اکا رک دی ےکی وج 
ہے روہ جاجاے۔ ہے تک ا ۱ 

. شی گر دہ کہہ د ےک یل آ پک رف سے بر یکر کو بول نمی ںکر اہول توا ی ا ڑکا ری وجہ ے اس ق رض خوادکی 
کش رد ہو جا ےکی اور ہے تملی کک علامت ہے اور ہم نے مہ کک کہا ےک ہے بات تر وار کے قبو لکرنے مر مو قوف یں 
سے ی استقاط ہو ےکی وج سے جب ق ر خواہ نے ابناع رش کہ دیا دوہ تن تم ہو جا ےگا ی کے بعد مقر وض کے تقو لکر نے 
کی کو ضرورت نیل ے جب ہے بات معلوم ہوگئی تو ہے بھی معلوم ہونا چا ےک شرط بر ہا یکر نا ای چچیزوں کے سا ہے 
خصوص ےجو مض ساق کر ن ےکی ہی مہ جن کے سے ٢ح‏ مکھای جا ے جیسے طلاق دیناادر آزا رک دیناالن کے علاودے بات - 
دوس یی ل نہیں ہوگی۔(ف خلاصہ یہ ہو اک ہگ شت ستل یس جب کنیا کیک نا ایک خا ص ش رما بر مو توف ے ممن جج بک یکا 
د نآ یار تم کے نصف اداکر دواغ۔ تڑے ہک نا ایر یک ناف الغو یں ے بلک ای ش رما بر مو قوف ہے لان قرضہ کے ہبہ 
کر نے پااس نے بر یکرو کو ای ش رما یر مع کر تاجات فیس سے لپ ایے ہی ہکم نا ور بر یکر نا کی چائز ہیں مول ا سکیا وج ہے 
ےک ش رط بر مع یکر نا صرف اییے معا ات یں چا ہو جا سے جن کو صرف صتخم باساق کرد باہو جیسے طلاق و عتا کوک طلا یکا 
مطلب صرف ے ہو تا کہ ورت کے زے ہے این کے شومر نے تن میت وزوجہت ساق کر دی سے ای طر آزار 
کرو سے می خلا مک یگردن سے کی کا ن ساق کرد یناسے ان نول مس شط معن کنا ہی سے اس ط رح س ےک اکر تم فلا 
کا مکروف ےت مکو طلاتی ےت آزاد ہو اور سا ق ھکر نے کے سوا کی دوس رک چک اس طرع مت کر نا از خی ہے اور اب ت مہ 
خاب کر سے می کہ تر ض کو ہہ ہک ایا یکو یر کرد بنا بھی تل ساق کرد ینا یس ے بہ ایک اخقبار سے اسے رانک بنانا بھی سے 
ااردوسرے اخقبار ے نکو ساق کر نا کی ے جب راک مصنضح نے ا سکاب می وا کیا میں جب ہے کش ساقط کر نا ہیں 
ہو نذا سکوشر ما ىر ا یکرن بھی پات ہیں ہوااور چ کہ الور تہ ہبہ سے او رنہ یکنا ہے بلک جب دوش رط بای جات ۓےگیاتب دہ 
اق پائی ہا لک اودیہ بات ابت موک ییک ش طبر معل کر نج یں ے تہ کر نیا یکر بھی باطل م وکیا یی طر مج 

قوج .گر ایی فص کے دوسرے پر راد درم بای ہول- اورا نے اہن شر دار : 


ن البد اہے جد یر lar‏ جلر مم 


ےہاک ک لکادلن آنے سے ہے سب ہار ے یں یا م الناسے بک ہو ءياالن کے صف 
کے وے وولو صف کے تم خود مالک ہو پان سے تم بی موء ما لکی میں ۶ , 
0 ا 

والعمری جائزة للمعمر له حال حیاته ولورثته من بعده لما رویناہء ومعناه ان یجعل داره له مدة عمره واذا 
مات ترد عليه فيصح التمليك ويبطل الشرط لما روينا وقد بيدا ان الهبة لا تبطل بالشروط الفاسدةء والرقبى 
باطلة عند ابى. حنيفة ومحمد وقال ابويومنف جائزة» لان قوله داری لك تمليك وقوله رقبی شرط فاسد 
كالعمرى» ولهما انه عليه السلام اجاز العمرى ورد الرقبى» ولان معنی الرقبى عندهما ان مت قبلك فهو لك 
واللفظ من المراقبة كانه یراقب موته» وهذا تعليق التمليك بالخطر فيبطل واذا لم تصح تكون عارية عندھما 
لانه يتضمن اطلاق الانتفاع به ۱ 

تمہ :۔ قدو ری نے فرملیا کہ عم رگد جناجاتے میتی چر یش سکودبیگئی وما ںکیز ندگی کر کے لے موی اور ای کے 
مرنے کے بعداس کے وار فو کے لے ہو جال ےکی ا یکی د یل وی صد بیث ےجو تم نے یی بی نکر دی ۔ ا لکیاددایت بفازی 
و سم دابپوداؤو اماک ی رمعم اللہ ن ےکی سے اس مت کی تفیل ىہ کہ ری دی دانے نے شلا ا اک دو ےکو ا یکی 
زن دگی بجر کے ”للع اس شط بر دیاکہ دو جب مر جا ےگ یھ وای مل ہا ےکا ط رد ینا اکر چہ کے لکن دای یکی 
رط حد بی کی د کل سے باعل س ۔ ادد یہ بات ہم پیل کہ گے می کہ الما ہہ اما کا معاللہ تاس جو فاس ر شر طول ے 
اٹل نکی مو ہے۔ : 

ورد الرقبی الخ :اور ابا مالو ضیف امام ر ر تحعمااللہ نے فر مایا ےکہ رٹک ال ہے او رایام اود س کے خذد یک چا کے 
یی اکر یو ںکہاکہ می راکھ تہارے لے د کے فو مہ جا س ےکی کک اس عبات یش تر ے واسٹ ےکا لفظط کے سے لیت حا مل 
ہو گیا میس ر کی شر ط لکنا عم رب یکی شر ط کے نل فاس ے اورادام الو یہ وامام کید لیے ےکہ رسو ال نے مر یکو تو 
م تا رکھاے نھرر 1 )کور کر دیاے۔(ف کروپ ریغ سپ ےت ۔اورا 2 رل »کہ اليف و 
ام کے دیک ر شی کے کی مہ ہیں کہ میس (د ین دالا )اک سے پل گیا گم کہ سارہو جا ےگا۔ ر اقبت سے ر تی ختن 
ہے اس می سکویا لن اور د سے دالا ہر ایک دوسر ےکی موسا ظا رک جا ہے (اس رحس کہ دوس رام جائۓ فیس ال کا مانک ین 
اڑل )اس می مالک نان ایک ش رط بے مو توف ے حا کہ مو توف رکھنا چا کی ہو جا سے الف ایا ل ہوا اور جب تی سج نہیں 
مو الو امام ابو عیفہ ادد ایام عم کے دیک جو کان اس طرں رک وکیا مو وہای تھی ےا زیت کے فور وکا ری 
مارت یں می کر تیر موک وک ر ی د ہے کے معفیاس سے مطاتن لف حا ص لکرنے کے ہیں۔ “ 

و :ر ی اور ری کے لغو ی اور ش ری ی عم اختلاف اب و ل کی 

قال: والصدقة كالهبة لا تصح الا بالقبضء» لانه تبر ع كالهبة فلا تجوز فى مشاع يحتمل القسمة لما بينا 
فى الهبةء ولا رجوع فی الصدقةء لان المقصود هو الثواب وقد حصل وكذلك اذا تصدق على غنى استحساناء 
لانه قد يقصد بالصدقة على الغنى الثواب وقد حصلء وكذا اذا وهب لفقير لان المقصود هو الثواب وقد 
حصل. قال: ومن نذر ان یعصدق بماله بجنس ما يجب فيه الز كوة ومن نذر ان یتصدق بملکه لزمه ان یتصدق 


مین البد لیے چدیر ہت ' جل رش 
بالجمیع ويروى انه والاول سواء وقد ذ کرنا الفرقء ووجه الروايتين فی مسائل القضاء ویقال له امسك ما تنفقه 
على نفسنك وعیالك الی ان تکتسب مالا فاذا اکتسب يتصدق بمثل ما انفق وقد ذ کرناہ من قبل۔ 
ترجہ :۔ کل صدقہ کے یا نائل:۔ 
تزور ی نے لا ےک صد ھی رک ط رح قضہ کے ا ی یں ہو جا کوک صدقہ بھی بب ہکی طر ایک اسان 
کاکام ہے اس بناء روہال شت رک ج تقایل یم ہوا سکاصد کر نا جائزنہ ہوگاا کی بھی وید کل سے جو ہم نے پک ہبہ کے 
کے میں انا کروی ہے۔(ف دع لکاعا یر ےلاکن ن مر ڈرۓے کاارادہ ڑکیا نال 7 تیم خورپ لازم یں 
کی ء ھا اکلہ اکر شت رک مال کے صد کار جع مان لیاچاۓ و کو صد تہ دیاجا ےگوہ ای س شیک ہو جا ۓگااور تقاعدہ 
کہ جب ایک ش یک مش رک الک مچب تاک پر یہ لا م ہو تا کہ ا منظو رکر نے اس ط رحاس صد ت ہک نے 
ال پر ایک اسک بات لازم آگی ج کاایں نے التزام کی سکیا تھااسی بناء بر مشت رک ما لکا صر 3 ب گی ہے۔ پھر ہے علوم ہونا 
چا کہ ہبہ اود صدقہ یل بے ففرق بھی ہے وہب کہ مو دالا سے ہبہ سے رجو کر تا ے)۔ ولا رجوع لع ین 
صد ت دہیے کے ازا ے رجوغ یں ہو کے ۔کی وکلہ صد تہ دہ ےکا مقصد صرف تاب ما ص لکر نا تھاجو حا ل ہو چکا۔ 
وکذا الك اذا الخ ای طر ئ اگ رکیل مالدا رکو صد ت3 دےدیا ماع اس سے کی رتو ہی کر کنا ےکی وک ا سمال 
وار سکو بھی صد ق د ے سے ی فا بک بیت ہو ے جواسے ما ل ہو کا شف بالا رکو صد قہ د سے سے بھی واب مل کا 
ہے اس ے مقر ما سل وچا ن صد قہکاٹذ اب پایاگیا۔قال و شن قد الخ : قدو رین فرمایا ےک ہار ایک س نے ااال 
صد کر کی ىر تد ہا یک ان ہک ر ضام ہی کے گے مہ ر نز ر ےک اپنامال تیرو ںکو صر کر وں توایی سکامال 
صر کرنا ام ےکہ جس مس زکو+واجب مو چ اورا رک یتنس نے مہ نذد ما یہ مب ری کیت صد ت ہے نواس ےا 
کےکل مال کو صد ےک رن لازم سے یجن اس کل میس صرف ایے مال یی کو صرق میں ریا خصو ص یں سے جس مر ولام 
1 ہو اور ایک روات ہہ کی ےک ان دونوں صور تو لکا م بر ابر ے۔ م نے فضاء ج2 مال میس ان رونوں مکل کت 
در میا ن فر آواو ران وول ردان لک وچہ یا نکر دکے۔ 
( ف ن جہای ہے متلہ بیا نکیا ےک می رابا مصکیفوں کے ہن یس صد تہ ہے۔ اب ج بک اس پر اپ کل ما لکو صد ق 
کر نالا م گیا نووواپی باق ماندوز کیا بکس طر گار ےگا کی وک اب خالی تج ھ ہو جان ےکی وجہ سے شاا کو ق رض بھی 
زرل کے پا ق رض مل جا ےکک را سکوادا سے اخ رمرجاۓ فذاس پر تت وبال اور عذ اب م وگا۔ ای ے فقیہ اس کے پار سے سکیا 
رد ےگا ناس سوا یکاجو اب لو کا ےک ) ویقال لە الخ: نورس گل مال کے ند رکرنے وانے ے ‏ ےکہاجا ۓگ اہ جب 
کک ت کو اور مال نہ مل جاے اس دق ت کک کے لے اپنے انس ءال میس سے اتفاال می اکر ا ےپ ای رک لوج ت مکو اتی زات اور اپنے بال 
جے پر ۶ی ہو کے۔ بم جب ت مکو نیا مال مل جا اس ونت جقنامال ا پرانے مال سے درو کک کیا تھا اتمای اور اک رح 
صدق اداکر و ےا مت ےک و بھی ہم نے پل کاب التمناء کے فتضاء ہوا یت کے باب ٹس ییا نک دیا 
تو :ل صد ہکا بیان صد ت کے ے تہ ضرو ری سے با یں مال مشتر ک کا 
صرق صرق کے بعر جو لدا رآو ضرق دیا نژر صورری» م فصل »ول 


صن البدایہ ہے ۱ 0 “٣‏ کک م 


ٹل کتاب الاجارات 4 
الاجارة عقد یرد على المنافع بعوض لان الاجارة فی اللغة بيع المنافع والقیاس يابى جوازہ لان المعقود 
عليه المنفعة وهى معدومة واضافة التمليك الى ما سیوجد لا يصح الا انا جوزناہ لحاجة الناس الیەء وقد شهدت 
بصحتها الآثار وهى قوله عليه السلام:( اعطوا الاجیر اجره قبل ان يجف عرقه)» وقوله عليه السلام من استاجر 
اجیرا فلیعلمه اجره. 
جم :۔ الاجارة عقد الخ اجار وایک اییاعقرے جس کا تل کی مال کے صرف ماع ے فوش کے ساتھ ہو ے 
کیو کہ لخت میں منا ئ کے فرو خت کر ن ےکوی اجار کے ہیں ا راس ستل می ش اعت بھی لفت کے موان ے۔ لیکن 
اک تقاضامیہ کہ عق ارہ جا نہ م کی وک اس عق میں جس چ کا معام ہکیاکیاے( ممقود علیہ ) ع ے اور وہ ع الال 
اید ے اور جھ چڑ ایی ہو جوا بھی نہیں پک ۲ مندہ ای جا سے ا لک طرف کی تک فب تکرن ہے ہیں مو ے لیکن ہم نے اس 
تا یکو چھوڑدیااور ات انا عقد اجار ہکو جائ کیا باک وکر ر س کو ایل اجار ہک مخت ضر ور ت مو ے یی اکر اکونا ہا کیا 
70 ھ0" الاک الد تال نے ت7 ناور مڈ مشق تکودوراو شک دیڑے اس سے معلوم ہوا 
کہ اچارہکاعقدممنوع نیل ہے بل چا کے اور کے مج ہو نے کے لے ھار بھی موجود ہیں چنائے ا آ غارس سے رسول ال 
کا رملا کہ مر دو رکاپیینہ شلگ ہونے سے پیل تیا گی عردو ی دےدو۔ ال یکی رایت این ماجہ ن ےکاے۔ اور ر سول 
ال کا فربان بھی ےک اگ رکوئی تن کس یکوا سے پال ای ر(ملازم کر کے واا کوان کی مز دور ی سے پل بی خر کردو۔ ا کی 
رات ا ےک ارش کی ے۔ 
ل(ف ای طرں ران یرس کی اللہ تیال نے ضرت موک کا تھ اس طر ںین فرمایا کہ شیپ نے حفضرت موک 
علیہ السلا م کوان ریا آ کے بر کک جج انے کے لے طلا م 
ر لان ع امار ی کے کر ا انا فنخا یہ روا کی س ےک اللدعمز وج نے فر مایا کہ س قیامت 
کے دن تن تخفوں سے ت ۷ کے اہو لک برای دو سکہ ی نے یر امموس ےکر وعد کیان اسے پرا کا 
اور دوم رادو سکہ ج نے کی آراد ہاو یکو چک راس کے بی کیا ہے اور یس راو وف جس ن ےکس یکواپنے یمر راز 
ال سے پور اکام لے لیا ین ا کی چو ری مز دوری نی ری ۔ بغار یو کم نے ےت 
٠‏ عد یٹ نعظرت عبد الیل بن ععما سے مر لو امقول س کہ بس چیپ تم نے اجر للع شی سب سے نیا اراش کاب 
ے رواوا یار کی_ 
اور ا بی ٹس سے ایک عد ی زت ثابت بن الاک سے روایت ےک ر سول الد نے ق ہا ڈ ی ےکر نے سے مخ 
زایا اور مز دور ی کےکام کا عم دیاہے۔ مسعلم ےا کی روا کی ہے۔اس مک میتی پاڑکی کےکام سے مراد بطائی ےک یکر 
ےق ا یکن یکو کیا ے لیکن ردو رک کھت یکرن ےکا جات دی ے۔ اور ھور علا ج کی یکر ےکو چا کے ہیں واس . 
عد ی کی ای رج اوہ لک سے ہی ںکہ زمانہ جچہالت مس بٹا ن کایے د ستور تھاکہ زم نکامانک دوسر ےکواتی زی نھیتی کے لے رجا 
شس میں وہ کا شیا تق شی سر E‏ ۱ 


گنا لے چدیر ` ڑا ّ رھ 
یں جوک یراہ اذا کاش کاب وکا مال اکلہ اک زاو قات اس گکڑے ٹیل ا سںکاشیککار کے لئے ےھ بی پیا اہ 
yh‏ می ا کس nyt ug‏ 
حضو ر نے من فرمایے۔اوریہ ریاس کہ ایی ےکا شکار سے ز مین ار اج ت رکا م نے لن ےک ال کی عردو کا لکودے دے ب بے 
بجھ یکیتی تیار موو س بک سب از عیندارگی موی م الو عطي وم شا ج م کر کو چائز یں کے ہیں دو ا عد یکو 
کو یئ یی ای اف ے مطل کھتی سے راتحت : اہر مو فی سے اور اکا عام ہو ابی معت رمو ا ے۔_والشہ تیل 
اعم بائعواب۔ م- 

رر امت اس نم تھا کن لوا اور ا جا موا 
حزد ےک ر ہوا + پاک دا کی دا رید سکم دم ررقم گے 
ایگ اور عا ور تالا ہر يار فو قول کے اللہ تیل¿ مج کی کر کو اا نے کبیا نرا ہے نکر 
اب ہکرام نے آپ سے کو ماک کیا آپ نے بھی بھی رب ریاں تہ ائی میں ؟ و 2پ نے فر یاک ہاں ای نے بھی چن قیراطوں کے 
وو کر 7 کیا تج ائی ہیں رواوالفارمی۔ اوران احاد یث یل سے ایک حر ت امامو ن عات سے بھی قول ےک 
ولاو کہ نے کرت تب تر تر کے دی پر تھا ت بے لام رکھا۔ جاک 
دونوں حرا کی سوارل راہن اقول کے بعد ار فور ہ یاد سے جب اکہ بغار ی شس ہے اور الن یل سے ایک حد یٹ ضر 
سوب بن شی کی ےکہ می اور گر الح ری کر ے ےک کیپ لا ےا وق رو لال بھی ہمارے پا شر یف ے اور 
ايرا اول نپ اپا کی تمت اداکإو رپ کے پاس ایک فو لے دالا شا اوور و 

آپ نے ان ےر ک ما کی تمت کے در ہم تول لواور ہی اکر تولو ا کی روایت این جا نے اپ 7 جج می کے 
ای یش نے اتک مد فرت عم ہے ھول کہ ای وف یرت نا سکیا ےک یکول چ فیس ی ارا وت رعول 
الد کے ہاب کیا ےک یکوکی نز مون تو یی سکھالتا ۔ ورا کی تم کے و ری 
کے لئ ای ککھا لکو کر بیس سے با کر کے میس ڈال دیااور ایک ن سے اس کے دوفو ںکو نے بل اکر اپ یک ر سک اور 
یبودی کے پا کی طرف چلا چ لاگیاج ا سڈ با مس پان ڈال رپ تااس نے ولوار ے الور کے رک ےکر کاک اے اع الیکا م 
ایک خورمہ کے عو ایک ڈول پائی الو گے ؟ بات کہاہاں۔ چان ٹس ایک ایک ڈول پان تار پ اور دہ کے ایک ایک خور مہ 
وتار ۔ جب می ری مال بج رکنیں توم ےکہاکہ ا میرے لے اتی کان ے۔ پھر می نےائنکوکھاپادر ال ییاور ال 
ےر سول الہک خدمت میں حاضر موا تھ کیو خی ونے ای کی وای کی ے۔اعاد ی ٹل اس با تکی بہت کی دنشیں قول 
ہیں۔ اور اجار دبالا مان چا کے ۔ اس لے یہس یہ یھ تیا ںکرنےکوراسقسا نک یکول ضر وت یں ے۔ مصنف نے اس جک لفظ 
ق ہے تائ کے لے ذکگ کیا کہ ظاہر تاس سے ا کاناچائز ہونا معلوم ہو ا تھا اس بتاع ےکہ اچارہ یس فی الغور متاح موچور 
ٹیس ہو تے اس لئ ان کے محاوضےکامعال :سے جات مو ا؟اسی لے ای شوہ کو اک لفظ ے میا کیا ے۔ دائلاعکم پالصواب_ 

رج :تاب اچار ہکا بیان اجار ات کے لفت اور شر ی می وت گم اختلاف 
ات :لم ءاصطلایالفاظاء سبب »ا رکان 

الا جارات :۔ اجار ہکی ی ہے اور چ وککہ اجار +کئی رکا ہو تا ہے اک لے بیہاں کا لفط لاب گیا ےکی وک انس نیش مکان۔ 
ہاور اوی بھی نوک ری اورمدوری کے عو ہکراہہ می دائل ہو جا تا سے ۔ اک لئے دعولی۔پائی چا سے والا مل شیب وخیرہ بھی 
دا ہوتے ہیں۔ای ر ںان ایک 2 کے ل جس یش مرت کے اناز سے ال کا تع معلوم ہوا ہے۔ بے ا 


تن الہد اے چر یر ۹۷ لر ٹم 


تش کے کو یکھ لین رر ور وہہ ٠‏ 
ےت ایی کی سے ج سکو می نکر ر سے یا اشار کے سے ی اک ع 
معلوم ہوج ہے۔ ی ےکی دوریا ات کواس لئے رکناکہ دومہ شل ال چ سے فلال پ۲ تک ہنچادے۔ الھا کل اجار کے ہے : 
ہو ۓےک کسی یز کے متا کو سی وص برد یا الک میس د نے وا لن کوخ کہا اتا سے اکر ا نے اپنا کان یاظام ویر ہک چز 
اپار ہے دی ہو۔اورا اکرو ر زوء کہہے سی کام کے لئے خو وا ادہیردیادہاتیر ے۔اور جم نے اسے اجارہ پر لیادوشتات ے۔ 
اور جو کوش تھے پایااسے اج تککہاجا تا ے۔ ۱ 
پگ من وت ک لے ون ا ضر ار ری تی ا 
ایجاب و قبول ہے۔اور چ وک مناخ اجارہکی چبرے اور وہ بروشت ظاہرش موجود ٹج مول ہے ای کے ے با کی جال ےک 
لے کے نانع اہر ہوتے ا گے ان بی کے حاب ے آہتہآہت اچارہ بھی نے ہوجار چتاے۔ شرا فلا مکش مت 
کرنے کے لل ےکمرامہ بے کی ایا ا اس ےگویالو کہاگ کہ ایک ہی کک ا فلا م سے کے یے م سل ہو جار ہیاس فلام سے 
نفعت قد مت پیدا ہو آی ری س ا لکواچار ہپ تارم ۔ ا یکوایباب و قبول جو ایت اء کی یس کے بای تھا اسے ایک مہ ینہ تک کے 
ےک نک گی کو کہ ہر ہر منظہ یجاب و قبو لکرتے دجن حال بات ے۔ پھر اجار وجب جیا ہو جاۓ ووو ایی لاز عق ہو چاج 
اال ر ووت وم واج تک لیت عاصل ہو ا ہے۔ ا کا اواب فلمتاں E‏ اک انثاء ال 
تیال بحر یں بیان کے یاک گے اور ےکک ایی انس نکوا تی رش کے لے زت کی میں مشلا ایی میا نکی ضر درت ہو ے۔ 
اس کے باوجو کان مشتی نکی کیت ں ہوپائی س کہ ای یس یی الک ر ہکر ای ے منائع حاص کر کے اس لئے 2 
ارہ کے طور ہے ےکر ر کو اک راز و گیا ہے۔ اکا سبب ہے م وکہ اک عقد اجار ہ کے ر لوہ ایز گی اپنی ند کے مطاان 
گار کے۔ ا امامو ۲ اک یدد عد یٹ داجمالا مت سے ثابت ہے۔ ججی کہ ا یکی تفیل او ےکر کی ے۔ 
وينعقد ساعة فساعة على حسب حدوث المنفعة والدار أقيمت مقام المنفعة فى حق اضافة العقد اليها 
ليرتبط الایجاب بالقبولء ثم عمله يظهر فى حق المنفعة تملكا واستحقاقا حال وجود المنفعةء ولا يصح حتى 
تكون المنافع مغلومة والاجرة معلومة لما روينا ولان الجهالة فى المعقود عليه وفی بدله تفضى الى المنازعة 
كجهالة الشمن والمٹمن فى البیعء وما جاز ان يكون ثمنا فى البيع جاز ان يكون اجرة فى الاجارةء لان الاجرة 
ثمن المنفعة فيعتبر بٹمن المبيع وما لا یصلح ثمنا یصلح اجرة ايضا كالاعيان فهذا اللفظ لا ينفى صلاحیة غيره 
لانه عوض مالى» والمنافع تارة تصير معلومة بالمدة كاستيجار الدور للسكنى والارضین للزراعة فيصح العقد 
على مدة مغلومة اى مدة كانت» لان المدة اذا كانت معلومة كان قدر المنفعة فيها معلوما اذا كانت المنفعة لا 
تتفاوتء وقوله اى مدة كانت اشارة الى انه يجوز طالت المدة او قصرت لكونها معلومة ولتحقق الحاجة اليها 
عسی الا ان فى الاوقاف لا يجوز الاجارۃ الطويلة كيلا یدعی المستاجر ملكها وهى ما زاد على ثلاث سنين وهو 
۔ اجارہ آہتہ آہتہ عقر ہو تاے۔ اکان ازے کے چ م ما کل ہو کے ر سے ہیں۔ یں مرکا نکواچارہ 
د تا متام ہوتے ہی کوک تر اپار کیاکی مکا نکی طرف ہت ہو ہے تاک قولیت کے 
سان جات ب کی ایا جاتار ہے۔ پھر عقد اجار کا ل منفعت کے می می کک نے اور مقار ہو نے کے اقبار سے ما ےب سے 
پان ےکی صورت س اہر ہو ہے .اف لی جب لف حاصل موک توا یوقت اجرت پر لیے وانے ی مت ج کو یکی کیت اور 
اس اتا ما سل ہوگا)۔ولایصح الخ: اچارہال وق ت کک 3 یں ہو تا یہاں کہا کے ہنا اورا یکی ات بھی 


ین البد اے جدی ا ے٥‏ ہے ی 
محلو م ہو۔ ا کی و مل ویک عد یٹ ہے ج نے ادپ بیا کر دک سے ن اچ کو ا سک اہر ت بتادوادراس ولیل سے کیک مود 
علیہ ن نافع اور ای کے عوض مشقی اج ت میں ججبالت ہو نے سے اکشردونوں میں کے کی نوبت آجائی ے جاک کے س 
بت اور مال سی( )کے نا معلوم ہو نے میں ہو تاے۔ ۱ 
وما جاز الخ: اور ج بھی تر یر وفرو خت میں عوض من کن ے وی چر محا لہ اجاروٹیل اجرت بھی بین کت ےک وکر 
ارت کی تن نکی تمت اوردام سے ج اکہ کے یس ین ٢و‏ تاسے۔ ای ے اجارہ اج تکو بی کے ر یا ںکیاہا ےگا۔ 
ومالایصلح الخ: کان جو چ زر نے کے لال یں ہے بھی دو بھی اجر ت بن مق ہے ے اعیان سن تز کے سوا شل :لام 
او رکچ ڑاو یرہ کی اج ت مین ےد ابا صت نے جو لفظ یا نکیاے اس سے خی رم نکاا مار نکی ہو جا ہ ےکی لہ ودای قوش ٠‏ 
۶ اے والمنافع الخ: پر من کا معلوم ہو بھی برت تتاو ہے سے معلوم ہو جا سے بے کرو ںکور ی کے ےکر ائے پر لین 
إکیتو ںک یی کے ل ۓےکراے پر ینا ای صورت میں اہار ہکا معام ہو جا ۓگاخواواس کے لے فی بھی ورت وکوک 
جب مرت معلوم وی توا یرت کے اتد ر اس کے ےکی مقار بھی معلوم ہوک برطي ال کے نم میس فرق ہو۔ رف 
کوک ہاگ لف میں فرق ہو بی زی نک وک کے ل جےکرائۓے بر ینہ فذاس میں وی معلوم ہونے کے اتر سا تھ ہے بھی بتانا 
ضروری واک ا نکھیوں می سک نکن چ زو ںک یک کر ےگا وقولہ ای مدة الخ: صف نے جو فرمایا ےک خواءکوگی بھی 
ت ہو اس می اس با تکی طرف ارہ ےکہ رت طو بل ہو اک ہو ے صو ر ت اجارد چا موک کی وک دو نول صور تول مم م ر 
معلوم ہ کی ۔ اورا لئے کیک بھی وم مد تک ضرورت مون ہے۔ اس لے اسے کی جائز ہو نا جاےالہت وق فک چزوں 
ٹس طوہیل مر تکااجارہ چائز نیس ہے۔ اس خیالی ےک الیمانہ ہ وک ہکرایہ داد اس چیپ اپٹی لیب تکار عوک یکر نے کے ۔ اس چک 
طو بل ت ے وو مد ت مر اد ۓے جو تن سال ےزیادہہو۔ یی قول ٹتارے-_ ۱ : 
) :انار مک عوزت: اجارو کے ہو ےکی شش راہ اون دلیل کو نلو ی جر 
اقت بن کے ایی چ ڑج ن ج کے لان نہ م وکیا وہ کی اچ رت اق کی ت 
مزا ع کا ع مکس طرح ہو کت ہےء اجار ہ تی بہت کک کے لے ذیا جا سنا سے تفصییل 
الول تل 5 
قال: وتارة تصير معلوفة بنفسه کمن استاجر رجلا على صبغ ثوبه او خياطة او استاجر دابة ليحمل عليها 
مقدرا معلوما او يركبها مسافة سماهاء لانه اذا بين الثوبء ولون الصبغ وقدره وجنس الخياظةء والقدر 
المحمول وجنسه والمسافة صارت المنفعة معلومةء فصح العقدء وربما يقال الاجارة قد یکون عقدا على 
العمل كاستيجار القصار والخیّاط ولابد ان یکون العمل معلوما وذلك فی الاجیر المشترك وقد يكون عقدا 
على المتفعة كما فى اجير الوحد ولابد من بيان الوقت. قال: وتارة تصیر المنفعة معلومة بالتعيين والاشارة 
کمن استاجر رجلا بان ینقل له هذا الطعام الى موضع معلومء لانه اذ أراه ما ينقله والموضع الذى يحمل اليه 
کانت المنفعة معلومة فیصح العقد. . ت7 
7جمہ:۔ فدو دی نے فرمایاس کہ اور بھی متا کا معلوم ہو :از خرو ہو جانا ہے۔ جیے :کسی نے دو ےکواپناکپٹرار گے یا 
سے کے نے ار مقر رکی ایا ے کی جانور اس لے کرات پل یاککہ ای پر اس مین وز تک ال لاد ےگا کی خاس فاع جک 
اس پر سوا ہو گا یی ای نے یا نکر دی لک وک جب اک نے اپاپ اور ال کا ریک اور ا یکی مقلرار با نکر کیا سلا یکی جن بیان 
کرو یک دقار کی سب کہ کیا ہے باج جاک پہ لاد ےگا کی مقار اور کٹ اور نے جانے کے فاص کو بھی اجار ہک ےی 


الہ د اہ جد بے 2 لر “م 
ںی اجاجا نے از می 2 لوا ہو جاے کے کی دعو ٹیا ورز کاچار هي لاء نواس صو رت میں کمک معلوم 
موناضرو رک ہے ایور الما اج کی ای ککا نی بللہ عوام میں شت رک ہو اکر جاے اور نی ار شع بر ہو جاے کے : ص وع ار 
نی ناص نوکر اس میں وق تکا یا کر ناض رو ری ے۔ قال و تارة الخ اور سے بھی دو رگ نے فربایا ےکہ اچارہ شش بھی ا 
موی نکرنے سے پاش ءکر نے سے معلوم ہو پاتا سے لاکسی شی سکواس کے مر دور یلک ووا غ کو بای سے اٹھاکر فلال چ 
2 یادے ۔کی وکلہ جب اک عزوو رکو وہ و چے اور مال ےے تھ لکرن ضرو ری تھا دکھاا دی چھر چہال تک انا چا رتا تھادہ چک کی 
تاد تاس رح ا کا نح معلوم ہ وکیا لے اچازمکاہے معاللہ و جا گا | 
وج :_ منائع معلوم ہو ےکی صصورتء اجار مکی ٹیل 
۱ باب الاجر متی يستحق 
قال: الاجرة لا تجب بالعقدء وتستحق باحدی معانی ثلاثة اما بشرط التعجیل او بالتعجیل من غير شرط او 
باستیفاء المعقود عليهء وقال الشافعى تملك بنفس العقدء لان المنافع المعدومة صارت موجودة حکما ضرورة 
تصحیح العقدء فثبت الحکم فیما یقابله من البدلء ولنا ان العقد ینعقد شیئا فشیئا على حسب حدوث المنافع :" 
على ما بيناء والعقد معاوضة ومن قضيتها المساواة فمن ضرورة التراخحی فی جانب المنفعة التراخى فی البدل 
الآخرء واذا استوفی المنفعة يثبت الملك فی الاجرة لتحقق التسویة وكذا اذا شرط التعجیل او عجل من غير 
شرط لان المساواةيثبت حقا له وقد ابطله. 
7ھ پاپداڑ تاپ tr‏ ۱ 
تددر نے فرمایا کہ صرف اجار ہکا عاب ہکر لیے سے کی اج متدداجب نیس ہو جانی ہے بک تن باتقول یش سے اک 
بات ہونے سے اج رکا تقال ہو تا ہے( فک وکل علق احبارہ ٹیس ا کی کک مرف ا یجاب وق ل ییاور متا ج نے اھ یج فلح 
یں س س کیاے ہنا یکا ۶وش شی اجرت کیا پر واجب نہ مکی ۔ اس کے بعد اکر ین اق بیس س ےکوی ایک اپل - 
جا ےکی تب موجر ایاج تکامالک اور ن وجا گا)۔ امابشرط التعجیل الخ )١(:‏ خواواچار تکو یی اداکر نے کیش رط 
ہو (TDL‏ ط کے بی از خود متتاج ی اوا کرو ے( ۳ )مستا نے مود علیہ ( تن مناع )لور ے ما ص ل۷ لئ ہوں۔ 
نی ان نول اقوں یں ے جو بات کی پان جا تب موجر کے ےاج تکی کی تک تن ما کل ذ جا ۓگا۔امام شا نے مرا 
سپ ہک صرف معامل ہک لیے سے دی دواجر تکا مالک ہو جا تا ےکی وک دہ مزا جوا چھ کیک امیس نیس ہائۓ کے دو عام فی الفور 
موجودمان ے گے ہی ںوک ای طرع محا کو کا جاسکناے تن اجارہ جح وکیا ےک ہگویااس رح کرای القور مزانح 
موجود ہیں۔ ای ے اس کے متقائل عو کن اجر ت میس بھی کیت ثابہت وک اور ما ری وکل ہے ےکہ عق اجارہ آہتۓ 
آہتہ منائع ما کک کر نے کے طا عقر ہو جا ہے مجن ات منائع تھوڈڑے تھوڑے پبیدا ہو تے جاتے ہیں جلی کہ م نے ای 
سے پا بیال نک دیاے۔ پھر اجارہ ایک محاوض ہکا معالہ ہو تاے اور محاو کا عق ا باتک قاض اکر ع ےل ووول طرق 
مساوات ہو۔اس لے نان کے ما کک لکرنے می جا مر ہو نے سے رورت اس پا تک تقاض اکر ےکہ اج ت شس بھی خر 
ہو اور جب منفعت حا ص لکرلی جا ۓےگی تب اجر رت می بھی علکیت حا صمل ہو جا ےکی کہ النادوٹول مل پپورے طور ب برای ری 
ای جائے۔ائی راک اجر ت بی لن کی شر کی ہو باشرط کے بی ہی مستاجر نے مکی اداکردی ہو تو بھی لیت م ل 
ہو جال ۓگ اکر چہ تانح ۱ کی میک حا صل نہ مو سے مول کی وک دوفوں طرف سے برای یکا ہونااکی مستا ج کے ف نکی وجہ سے 
ایت ہوافھااور اسی نے اپٹا ن اض لکردیا۔(ف اس طر بنیر سردات کے بھی موم کو چ ت عبت ما یں ہو جا ۓگی)۔ 


کل الہاے جدیر ےس ۱ ہے 
:پاب انان اعت کا کن ہو ےتیل ور کی 
واذا قبض المستاجر الذار فعليه الاجر وان لم يسكنهاء لان تسليم عين المنفعة لا یتصور فاقمنا تسليم 
المحل مقامه اذ التمكن من الانتفا ع يثبت بهء فان غصبها غاصب من يده ہقطت الاجرةء لان تسليم المحل 
انما اقيم مقام تسلیم المنفعة للتمكن من الانتفا ع فاذا فات التمكن فات التسلیم وانفسخ العقد فيسقط الاجرء 
وان وجد الغصب فى بعض المدة سقط بقدرہء اذ الانفساخ فى بعضها ومن استاجر دارا فللمواجر ان يطالبه 
باجر کل يوم لانه استوفی منفعة مقصودةء.الا ان يبين وقت الاستحقاق فى العقدء لانه بمنزلة التاجیلء وكذلك 
اجارة الاراضی لما بينا. ۱ ۱ ۱ 
تمہ :۔ اور جب متا بجر نے اجارہ کے طور پے کی 811 رک لیا اس پر اجقرت واجب ہو گئی۔ ارچ اک نے ای کرش 
را اخ یارنہکی ہ ھک و کہ یں کو معا کے ہوا ےکنا موجہ کے لئے مات یں ہے۔اسی لے جھم نے فک چک کے حوالے 
کر ےکوی لع حوال کر نے کے تام متام باك ایا کی وتک کی کہ کے جوا ےکر نے سے می اح ما لکن ےکا خقیار خابت 
ہو جات ہے (ف ی مل کو حوالکرناہ یگو الف حا ص لکنا ہوا فان غضبھا الخ اب اکر اس اجار ہکی چ کو متا ج کے پا 
ےکی ناص نے قصب لیا نواس مستاج کے ذمہ سے ا لک ابت م ہو جا ےگا کی وکل اس چک کو ایک جا حال 
کر ےکواسی وچہ سے تقائم مقا م کہ کیا کہ وواس سے عم س کر ہاور جب ہے چک اس کے تابو شس نہ ری وای کے حوالہ 
کین بھی کار ٹابت مول اک لے عقد اجارہ رت +و جات ۓےگااور ا کی اجر ت بھی مم ہو جات ۓےگی۔لاف الم اک ل وگو کی رو اور 
مایت سے اکنا صب کے نہ سے اس پگ ہکو ال د ینااس کے لے کن موب ا سک اج ت سا قطانہ موی اکر چہ خوو متا ج راس 
اص بکوا تہ سے نہ کال ےکی کہ نی الال اس ط رع متا رکو اس جل ت ما کل ہے تد - 
وان وجد الخ او راک اچارہکی یرت کے در میا نی وق بھی فصب پایاگیا تاس فصنب کی رت کے اندازو سے ا کی 
ات تم ہو جا ےک یکیوکلہ مرت کے ےکی صھ میس بھی عق رکا دن بایاگیا ہے۔(ف اپا یی مد ت کک فص این ہی 
مت کک عقد رت ہوگالبطرااکیااندازوے ال سک ابت EEO‏ ا من استاجر الخ: نا ری می نے ایک 
مرکا نمی سےکراۓ مر لیات اس مو کوان با کااختیار م وکاک اس مناج سے ہرد وز ایگ ایک دو نکی اج ت طل بک جارے_ 
ک کیہ اس دع متا نے لود ےد کا بج متقصور تھا ےا س لک رمیا ال ان یبین الخ : لن اکر متا ج نے عق اجار ہ مکو 
ونت ا خختقاق کاک ابی دی ےکاوقت یا نکر دیا ہو و مطالبہ صرف اک مقررہ وت یا نکر دیاہو تو مطالہہ صرف اک مق ررم ونت ب 
کک ےکک دک ہے وقت مقر رکرنے کے قا مقام ے۔(ف ن کے قرضہ میں ہر دنت مطالہ کا اغتیار ہو جا ے الب ہاگ کی 
رض خاو تقر دا رکو ہل و ےک رکون وفت مقر رکرو مو تا وت کے لے سے مطالہ کاختار ہیں رہتا 
ای رح یہاں بھی ہے۔ وکذا لك الخ یع مکھیتو ںکوکرائے پردینا جس کی اک بی کی ولو مل کے مطابق۔ 
و :ار متا ج کر اے کے عرکالنا یححیت ب فی ہکم لیا تو ای پر اہر کب واجب 
ہوگیءاگ کی نامب تن کیہ کے مکالن بر ت کر لیا یی ہت اجارہ کے اند ر کی وق ٠‏ 
بھی فصب پایاگیا الک مکا ن ای کا کالب معطا کر مک ے؟ ٰ ٣‏ 
ومن استاجر بعیرا الى مكة فللجمال ان يطالبه باجرة کل مرحلةء لان سیر كل مرحلة مقصودةء وکان 
الوحنيفة يقول اولا لا يجب الاجرۃ الا بعد انقضاء المدة وانتهاء السفر وهو قول زفرء لان المعقود عليه جملة 


پراي رید i‏ 7 7 


المنافع فى المدةء فلا يتوزع الاجر على اجزائها كما اذا كان المعقود عليه العمل ووجه القول المرجوع اليه ان 
القیاس استحقاق الاجر ساغة فساعة لتحقق المساواة الا ان المطالبة فى كل ساعة يفضى الى ان لا يتفر غ لغیرہ 
. فیتضرر به فقدرناہ بما ذکرنا. ` 
ا نگ لی تنس نے شلا کے بک کے ے ایک او کراۓ پر لیا فو اونٹ وا ےکو ىہ اخقیار ہوگاکہ را تے کے مر 
ر علہ اور پر زل پر اس کے حاب سے اجر تک مطال ہکرے۔ لان سیر کل الخ :کیو کہ ہرایک مز لک رار تتصورے_ 
امابو ع پیل فرماتے تھے کے اج ت اک ونت واجب م ویج بک موت اورم رکآ کی حدکک کی ہا ے ی جب زرا 
ہو جا او کراس ےکی عدت لوی ہو جائۓ کی ا کی اج ت پو ری ہ گی اور اام ز رک بھی کی قول کی وک جو معابلہ لے 
ہو اہ وا کت کے إو سے کے بو سے متاح ہیں۔ من اک بدت کے اندر جانور سے سوا ر یکا ع جتنای سل ہو وداصل مل 
حقو علیہ سے کن و اجار واکی پر تا مو اے لپ اا کیج ت مدت سم رکااتزا کو ی مکرنے د موی( اپ اہ رر عل ین لے 
کے تقایل میس ات مر عل گی ابحرتپانےکادہ تی دار یں ہوگا)۔ کے اکر 9 یی ےکا مکامحابلہ ہے پیاہو۔(ف خلا :کک 
ر وی ےواے کوا کام کے ےا بت بر رکھا الہ دہ وی ل آنے کک ر وٹ یں ہے توجب تک دواپتا ےکا اور | a‏ رر ےگا 
وواہجر تک نہ ہوگاکیوکلہ ہے ارہ اکل می اس رون ہے وانے کے ا یکام بر دانع ہو اہے۔ اک رم اکر ورز یک وکو 
۱ شیر دای تباین بر مقر رکیاگیانودہ بھی ا سکام کے لو اکر ے سے کے اہی ابر تک 5 نیس ہو کی کہ ال اجار ہکا محابلہ ای 
کام پر ہواہے اک لے دوہ درز کہ ہمہ شی روا کی ایک گی الیک تین س یکر اس کے مناسب اتی اہر تک مطالبہ 
کرے۔اىی ط ررح موجو دو سے می اجار کا معاملہ ال بات پر لے پایا کے دومکہ مع کک ہیا ےگااسی لے وہ یی طور ہر ہر 
مر علہپ انی اججر تک گن نہ ہوگا۔ لین اام نے اپنے اس قول سے رجور کر لیااد ‏ یکہاکہ ال سے جانے وا کو پر فا لے 
پراترت کا مطال ہک نے کاخظیارے)۔ ٠‏ 

ووجه القول الخ: اماما ۱٠‏ نے جس تو لک طرف رجھ کیا ےا کوج ہے س کہ اچم تکاجقراد ہو ناو ققہ و تفہ سے 
اور لے ہہ لہ وکاک وہ مساوا تکا می تقاضاہے۔(ف ن یی ہی ای نے اتا لٹ نہ ادیا د ہے کی وہای کے متا سے س اتی 


په هه مہ 


اتک ن م وکیا ی طر کلم اک اکر ناپ ہر محہ ہو جاجا تاہے۔ فو ای کے مقا ےے بیں وہ آ ہت آہستہ اجر تکا ی ی 
ہو تاجاتاے۔ یں یاج تیا کادو حق زار ہو اا یکو ۓے کے مطالہ ہکااخقیار بھی ہوا ا طرں تیا می چابتا ےکہ دہ ہر 
ہرحظہ تو ڑ ی تو ڑ یاج ت کا مطالہہ مھ یکر ے)۔ 

الا ان المطالبه ال خ گرا ی بات کہ رولت طالب کر سے رے سے وو مستا ج م ںی کر ایے دار پچ رکو دوس ایام ہکر 
کارا کے ر سید ل کی 00 با۶ اس صان ہو جا ۓگا۔( فک وکل دہ مو جر می ایک کے پر وت 
ہے مطالہ ہکواداکر جار ےگااور اس کے سواکوکی دوس اکام بھی وہ خی ںکر سک ےکا ی سے خت مقصان ہوگااو ریف ےگ( 
اس ے ہم نے !تی مقدا رکااندازہ مقر رک دیا ے۔(ف می بی ٹکہہ دیا ےک دہ ایک مزل پور یکر نے کے بعر اپٹی ابر تک 
مطالہ کر کنا ہے ججی اک ہکرایہ کے د ہا یا مان بل ایک ایک دن کے بعد الس دو نکی اججر تکامایک مکان طا کر سکتاہے۔ پچھر 
معلوم ہو ناچا ےکہ اس زمانے یں اکر مو جر نے کہ رل کل پچ اکر چچھوڑدیا یتین تع ہوگا۔ اکر ج فقہاء نے ہے کہا ےک 
موجراریے جنل یس نے اکر یں مچھوڑ کنا ہے جہاں ا کر ایی دا رکو را اکر ای پر ر کی ترت دہ ہو ین اک کی ہے خر س 
ھی جار چو ڑ دیک چہا لکیہ بر سوا ری نے سکتا سے تو بھی لا حال اس بحبو ر یکی بنا پا کر ای دا رکوزیاد کہہے د ےکر سوا ری 
25 اور زیاد ھکر اہے بر داش تک نا پڑ ےگا جن سے لیف مو کی لپفر ا اس زملشہ میں زیادہ مناسب اام کک رایت کے 
معان فی ہوگا۔ ہلل ىہ فی اس رع دیا جا کہ امام ا کے قول ہدید کے مطااق موج ہر زرل پاپ اہر تکا مطالبہ 


یئن الد ہے جد یر ۱ ا٦‏ ہے تلم 
کر سکم ہے مین ال بے بات لام ۴و 1 کہ اپنے اقرا کے مطاجی زل مقصودکک بپہچیادے اور در مان بیس نہ بچھوڑے اگ ر سے 
راقص بی الت اس صورت میں بچھوڑ سلتا ے ج بک متا جر خوو رای ہو وا تھی اعم پا لصو اب مک 
و :ایی نے ایک سوا ری صو شب رک جانے کے ل ےکرایہ بی تو سواری 
والاا ییا کہا اد رکب انگ کا سے مل کی او ری سیل قوال فقا ءکر ام فوی» 
وزاگلٰ 

قال: ولیس للقصار والخیاط ان يطالب بالاجرة حتی يتفرغ من العمل» لان العمل فى البعض غير منتفع به 
فلا یستوجب الاجر بهء وکذا اذا عمل فى بيت المستاجر لا یستوجب الاجر قبل الفراغ لما بینا. قال: الا ان 
يشترط التعجیل لما مر ان الشرط فيه لازمء قال: ومن استاجر خبازا لیخبز فی بيته قفیزا من دقيق بدرهم لم 
یستحق الاجر حتی يخر ج الخبز من التنور» لان تمام العمل بالاخراج فلو احترق او سقط من يده قبل الاخراج 
فلا اجر له للهلاك قبل التسلیمء فان اخرجه ثم احترق من غير فعله فله الاجرة» لانه صار مسلّما بالوضع فی بیته 
ولا ضمان عليه لانه لم يوجدمنه الجناية قال( رضى الله عنه) ولهذا عند ابی حنيفة لانه امانة فى يده وعندهما 
يضمن مثل دقيقه ولا اجر له لأنه مضمون عليه فلا يبرا الا بعد حقيقة التسلیم وان شاء ضمن الخبز واعطاہ 
الاجر۔ ۱ 
مر کی قد ودک نے فر ملاس ےک وعو اور در زئ یکو راخار یں سک ابناکام عم لکرنے سے کم ابی ار تکامطالبیہ 
کرے۔(ف ی دوجب اپناکام لو اک د ےگا اجر تک مع ہوگااورددیہ نی کر لتا ےک ملا قب ع کی ای کی یا تین ی 
کریاد ت وکر اپٹی اجقر کا مطالہ کر ے)۔ لان العمل الخ :دک ہے کے یش کا م کر و سے سے بھی وہ لٹ اٹھانے کے لا ان ہیں 
موا ای لے وہای اججر ت کا تن نیس ہوگا۔ ( فک وک تہاء س صرف دا نکی سلا یکر و ےۓ س ےکوی فا رہ یں سے )۔ 
وکذا اذا عمل الخ ای طر اکر درزی یاد حول نے تاکر کے گھ میں ب ہک رکا مکردیاتب بھ یکام عم لکرنے سے لے وہ 
از ت کا ن نیس ہذگاگز شت و لک ہنا پر (ف کہ نف تحت می کا م کرد سے سے جک خاش فا دہ کیل ہے۔ او رگھ یش 
ی ھک رکا کر کو معنف نے ھال اک وجہ سے بیالنکیاکہ جب مستا کے کرش بی ھک رکا مکی تذبظاہ ےکا کر سے ہد لہ 
متا ج کے حوالہ کک یکر تار ای یں اس بات کااضمال تھ اک جب دہ مو ج اہے مستا ج کے حوال کا م کر تار پا توو اچ را لک اجحرت 
کا سخ بھی ہو تار لیکن دواس وجہ سے ییاج ت کامطالہے یں کر کا ےک ہکام مل ہونے سے کلک کم یکا مکا یں ہے۔ 
اک لے د حول اور درز کک وکام سے فاد ہو نے سے پیل اپ اج ت کے مطالییےکااختیار یں ہے )۔ ۱ 

قال الاان اللخ تور نے فرمایا س ےک کک کہ مو ج نے ا کی پیل می شر کر ی م وکی کہ ابت اتی ٹس مہ جات بد یکی 
ےک لے ستل میں جو کی شر کل جائے گی دہ لام ہوگی۔قال ومن استاجر الخ: 2 تھی نے اسیک باور تی انی لج 
ا گار بلاک میر ےگھرٹں یٹ کر ایک قغیز (ی شلا لیک من ) آٹا یک در ہم کے بد ےر وی باد ے نو دہ باور ہی ابی حن تکا 
ای وت ا م وکاک جب تورے روٹیاں کال کر ہو ال ےکرد ےکی کہ وکالے کے بعد تکام لور ام وگ( ف یں صرف تور 
رون لگاد سے سے کام لور اہ وکر ودای اج کا شی یں ہوگابللہ جب زا لکر و ےگا او رامول پھر جب روٹیاں کال 
د یی تب کام بو رامو ااور اک وتک متا ا ت لازم ہوگئی۔ شر طیلہ ر وٹیاں تورے 223 )` 
نہ فلو احترق الخ اورآکر جنور میس روٹیاں ل یں ی کے سے کل باد تی کے پا کے سے ہگ می کر موی تدوبادر اہ 
اج تکا ت مو کک کہ حا کر نے سے پل دو ضا وک ہیں( ف اس ط رما لکاکام بر اد م وگیاے۔ پھر بو میں 


جن الہد اے چد یا ۱ Ir‏ بلر م 
کہ باود تی الما لکاضا کن م وکاک وک یہ ج ای کے پا ھھ سے ہو اہے ر )فان اخرجہ الخ بر اکر بادر تی نے تور سے 
روٹیاں ال دی کان ہاور ری کے اقتا کے لخر اور رج سے روٹیاں ج لمگئیں وہای اتک O‏ ہو جا گا۔ لانه 
صار الخ کی وک الس نے اپناکام ای عستا کے حوال ہک دیاسے۔ اس وچہ س کہ ای نے اپنے مستاجر کےگھ میں بی ھک رکا مکیا 
ہے۔(ف اور چیہ ہیا نکیا جاچکا ہکہ جب متا ے ھن بی دک رکام ہو 9 جن اکام ہو تار ےگا وہ متا ج کے حوالہ ہو تا 
رےگ)۔ ` 

ولا ضمان الخ ادر اور گی پاک صورت میں مدان بھی لازم نیس ہوگا کی وک ا سکی طرف ےکوگی جم نمی پایاگیا 
ےل( فکی کہ بادر ری ےکی گل کے بضیرروٹیاں ضا مول ہیں اور وک خودمتا جک ےگھییش روییاں یں ای لئے اس 
کے حوالہ ہونے کے بعد ی ضا ہو گیں۔ اس بنا بر دہ بادر ری ضا ی نہ موگا۔ قال رحمھم الہ الخ ممن نے فرمایا چک 

اتر ت د ہے اور تان لزغ کر ےکا گم امام ابو نی کے خزد یک ہے کی و کہ سا کی رو ال نی الال اس کے قغے میں ابات کے 

طوربہیں۔وعند ہما الخ : اور صا کل کے فزد یک آٹ ےکا الک ای آٹے کے برا بر اس سے تادان و صو لک ے اور باور ہی 
کو ای یکی حن ت کی اج ت نیس ےک یک وتک باو ری ا کا آ یکا ضا کی ے۔ ال اصر فگھرییشس ہونے سے تادان سے بر ینہ "گا 
EE:‏ 3 متنوں میں حوالد رد( یوت قیقت میس ییا ہو رون حال کر ےگا کی ضان سے برک ہوگا۔ 
خلاصہ ہے ماک ی وت متا ج نے باو کی کے حوال ہ7 کیا نووا کی غات میں گی کی وکل صا حن کے خز وی ایاج ری 
ضا کن ہو اکر جا ہے پچ رجب وہ ر وٹیاں )کر حقیقت بی متا ج کے جوا ےکر ےکا بھی وہ عات سے برک موگااور متا کے 
گھریش رٹ ےکادجہ سے اس کے جوا ےکر ےکاتپارنہ م وگاعالا کہ بیہال ہاور ی نے تور سے روٹیاں ال فی اکر چہ و ضا 
ہو یں الہت اس میں ہاور ری کے تح لکاکوئی و غل نی ے۔ پھر بھی وہ امت سے برک نویس ہو اسی ے مستاج ہکوا تار ہ گا 
مل E E‏ برابر تادان شس وصو لکرنے اور ہاو یک کو گی اجر تد ےکی )۔ ۱ 

وان شاء ضمن الخ او رار وہ مستا جر چا شے ق اس ابر سے تادان جس روٹیاں نے نے اود باوب یکو ا کی چوا دے 
دے۔(ف معلوم ہونا جا ےک در زک اور وعو کے کے میں ج بک اسے اے مکا ن ب رکم کے لے ا یمو ن شی ہے 
مع مکھھاے جب کک وہ اپ ےکام سے فاررغنہ بد واج تکا ن نیس ہے۔ جاک باد ری کے میلے میں سے اور ہاب می ںککھا 
ر ج ھال ییا نکیاگیاے و ہک معت رہ شلا سوط وز رہ وی اور چائ س رک شروحات۔ علامہ تر اللام اور 
قاضی نان اور تمر جا ش یکی عام ر وایتوں میس ہے۔ لیکن اکر ہیر ہے کے مخالف وان ہو اہے۔ چناخیہ سوط کے باب اچ رش ای 
تنس ج ےگ می سکام کے ے مقر رکیاہاسے کے بار سے می و ککھھا ےک اکر کی ے ایی درز کوای لے ا ےگ عدو ری 
پر رکھاکہ دوابنے متا کے ےگ یس بی ےکر م لاخلا مش یکرو ے اور وو کش تھوڑی مش جیب تا ا کک ڑاچو ر کی موی تو 
اس ن سی مش ی کاک اتک تعن ہ وک کی وک ہ رگکڑے سے فا مو نے برد ہکا می کے ایک کے جو انے ہو گیا 
اور لوراکام اور اورا قصوري کل ہو جانے برای ع کاکام متا ج کے جوانے ونام وتوف کا رےگا۔ اور ت ی فاك ےکسا 
کہ ای طر حم اگ کسی درز یک کسی نے اس لے اچ مقر کیک وودر یاک مستا ج کےگھرییش بی ھک ہکپٹ را یکمردے توور زی 
تا کے بھی کا مکرےگادواتتی ہی محن تکی ابت کا تن ہہوگا۔ لیکن تم سر میس اس ست ےکا عم ای ط ربیل نکیا ج جلی اہ میں 
ز رکیاسے اس لے شای رک ممصن نے ای مت ےکی اجکی ے۔ تھی منرت جم اور ینہ مت رتم کے نز د یک فی کے موان 
ہوارےزمانہ رٹ ودی عم ہوگاجوکہ من میں کور ہوا وال'ہ تال اعلم پالصواب۔م_ - 

وم :عام در گید عو فی اباو یبا خا کی و ر یاابادر یت یے متا ج نے ات کبس بلا 


تن الہد ایے ہد یڑ ١۳‏ 27 
کراس ےکم ےسا کیا۔ و ہے لوگ اپتی اجمر تکاس ونت مطال ہب کے ہیں ؟ 
اگ ری رب الناے ال ڑا ا باکھاناضائَ ہو ہا ےی جل جا سے توا مقصا کاڈ مہ دا رکون 
او رس طر ںہ وکا توالا رکا یل نوی: رر ی_ . 


قال ومن استاجر طباخا لیطبخ له طعاما للوليمةفالغرف عليه اعتبارا للعرف. قال ومن اسار انسانا 
ليضرب له لبنا استحق الاجرة اذا اقامھا عند ابی حنيفة وقالا لا یستحقھا حتی يشرجهاء لان التشريج من تمام 
عمله اذ لا يؤمن من الفساد قبله فصار كاخراج الخبز من التٹورء ولان الاجیر هو الذى يتولاه عرفا وهو المعتبر 
فیما لم ينص عليه» ولابى حنيفة ان العمل قد تم بالاقامة والتشریج عمل زائد كالنقل الا ترى انه ينتفع به قبل 
التشریج بالنقل الى موضع العمل بخلاف ما قبل الاقامة لانه طين منتشر وبخلاف الخبز لانه غير منتفع به قبل 
الاخرا 
0 2 8 وی 
کاکھاناکادے ن وکیا کے کو بر تن میں الا بادر بی OD‏ کہ حرف می ے۔( فا1 کرای نے سان پیا ہو دی 
اے کے او راک پلاوغیرہ پا اور پک ی اے کے - خلاصہ ہے س ےک ا نکھالو کو پیانے اور توال مم ا لنا بادر تی یکی 
ذمدداری ےکی وکمہ عام عرف یاو تور یش ولمہ ٹ شکھااپچانے والاپاور یکھانےکو بر ول میس ا لکر دک تہ اور جن کام 
aE SL‏ کک اس کے لے شرط بن جاتاہے اس طر ںگویابادر یی سے می شط موی یک وی یکا اور ' 
بر توں میں ۷۳۳٥‏ ات کی ار م ہو بک س کہ اچارہ کے لے یں جو شرط سے ہو اس پر کل لازم ہو 
ہے۔م۔اوراگ کیان اص ہو مخ کو فی صو مس و بی پلواکی حب اور کی کے فےے ال کو ا لکرد ینا لام نہ ہوک الا ینا ۔ک) 
قال ومن استاجر الخ: کان فیا ےک ی تی ےکی کا کی ا ےر 
وام ابو یہ کے نزو ربک اڑل ےکھڑری اکرو ادیے ےک انو لکوسائچ سے فا ل کر خنک رو 2 ۲ 
E‏ ات)۔_ 

لان التشریج الخ کیوکمہ اخ کو برای او یراد سے تہ ہہ تھ رک دیا ا جج یکام لوراک نے کے لے رور کے کی وک 
2 یک سے سے پل ان کے خراب ہونےکاخطروربتاہے فو کی مال اریہ گی جیے :تور سے روٹی ٹکالزا۔(ف لجن جس طرح 
دی صر ف رول ناک تور میں اد ینے سے اپ اجر تکا شی یب تاہے ج بک کہ دوالنار وٹیو کو تور سے باہ رنہ ال 
دے۔ ای رح صرف بی ایا ناک کہ ر تسشن نیں وکاک وکر اس وق ت کک یہ اخال ہو نا ےک شاید 
یہ تراب ہو جائیں یی ےکہ روف میں ہے خط رہ مو جا ےکہ وو تورمیش کل جائیں)۔ولان الاجير الخ اود یدیل سے کیک عام 
روایت کے مان انیٹ ںکواویر ل رکھ دنا بھی مز دور ی کاکا م ہو سے اور جن باقوں مس شی کی طرف سے صراحیۂ کی 
ات کا کم نہ ایا جا انی دستوردیکااظقبار ہو جا ہے سل(ف اک سے یہ بات لازم ۱ لیک وستور کے موا فی یی مز دور یا کام 
کو راکر ےکی وک دستور ش رط کے قا مقام مو جا ہے۔ الیاصل قیاس اور و ستو رک و لیلوں ے بی بات ایت موک انو ںکو 
ت کرای تہ بے تہ کنا بھی مز دورد ی کڈ مدکی ہے اراس کے بجی داھک خی ہو ہے کت 

ولابی حنیفة الخ :امال ی کید کل بے کا ین کو سا سے میس ڈا لکر ا سک وکھ ےر یکر و سے سے بی عدو رکاکام اورا 
' ہوگیاہے۔( فک وکل متاجہ نے مز دو رکو صرف انٹیں بزانے کے لے قر رکیاتھا )اور ا کو تہ ہہ تہ ہک کے کنا اص لککام سے 
ایک نشل کم چ کے : : لاب سے انو لکو مان کک ایا( فک دک ا ردد رکب مہ دای یں تیک اپ کو 


تن الہد ای جد یر r‏ لر“ م 


اٹھاکم مالک کے مکالن کک بچیادرے۔ اک رح ایخ لکو تہہ ہہ تہ ہکرت کی ا لک ذمہ دا ری کی ہے )۔ الاقری الخ :کیا, تم 
نی وکح ہ وک انیو کون د سے سے یما بھی ان سے فا دہ اھات صن ہے۔ اس ط ررح سے مس چک کا وی رہب راج ان 
یو ںکواٹھواکر وہاں پاديا جا ۔(ف اس راک تق رج کے بعد دہا کک بچیادی جا یا ای سے بے ی اٹھالی جاۓ اس 
رح دوفوں صور یں برابر ہو گی اس سے معلوم ہ وگ کہ ایفٹوں سے لع ٹا جو ا سل مقصود تیاو تر سے پل بھی س سل 
ہوگیا۔ اس لے عردورکاکام لور ام وگیااوردہاجر تک گن ہوگیا مک ۱ 
بخلاف ما قبل الخ: ی اس کے کے برخلاف اش کی یکر دہ سے سے یہ عم نیس ہے کی لہ اس وق ت کک دہ 

یی ہو یی ی سے (ف جس ے تفع شان کن نیس ے ای لے ان انو ںک وک اکر اضروری ہوا)۔ وبخلاف الخبز 
الخ اور خلا ف رون نے ےکی وکل روف بھی تور سے پطے کا کر و ینا مق باود یکی ذمہ دارکی موی اور انس کل پر او ںکا 
قیاس یں ہو سکنا ےکی وک انی ہہ ہہ تہہ رکنے سے بل بھی لع ما م کر نے کے تقائل موی ہیں۔ یں ( مت جم تا 
ہو کہ اس مل میس صا ی نکی دوس کی م ل کاجواب یں رگید سق ےک دستور یس تش رآ کر نا میں تہ ہے تہ کنا بھی 
مزدور کی زمہ دار ی مون ے۔ اور اظ (وایل تعا ی۱ مم مہ بات سے نہ جس علاقہ یں ىہ دستور م وک ونی مزدور انایو کو تہ 
کر کے رکھ کی و )کر ے وہال وہ اک کے بعد انی اج تک تعن ہوگا کی کلہ عام دستور بھی ش رط کے ا متام مو اکر تا سے اور 
بس علاقہ می ایا ستو رنہ موو ال ابینٹ سا کے میں ڈھال کر صر فکھڑی یکر د ےے سے بی ابی ابر تک سن ہو جا ےک ار چ 
تقر کہ نے ے اس مستا کواییٹوں کے شف لکرانے میس فا کہ ہو ما ہو۔ اس لئ ا بھی ط رج غو رک ٹیش ک۔ سیل کہ بس چ 
مز دو اپناکام لو راک دے پھر کی ال سکی اج ت میں جا خ رہ ںہال دیامیاییاکرنا فک ے۔اس ےی ضروری سے ہکام ے فار 
ہو نے کے فو بعد ا کی مردور ییادے دکیاجاۓ اک ا سکالینہ خنگ نہ ہو نے ہائے۔ اب ایک بات ہے ےک جس چ سکوی 
مز وور ای ی کار تیر کر ے او رکام بنائۓے وکیادداپنی مر دو رک وصو لکرنے کے لے اس چ کو اپنے پا رو کک ہک کا ہے یا 
یں توا سکاچھ اپ آتاے۔ ۱ ) ۱ 

و :۔ وی ہککھانا پکانے کے لے مج سک وگ رپ بل یاو ایی ابر تکاکب ن موگااوز 

ا کی ذمہ دار کب تم ہوگیء اور اینٹ بنانے یا وی بدوٹی پکانے کے لے جس 

مز وور ی پر رکھاگیا ہو ال سک ذمہ دار یکی ت ہ گی تخل ءراقوال ا ود وگل ٠‏ 

قال: وکل صانع لعمله اثر فى العين كالقصتًار والصبّاغ فله ان یحبس العين بعد الفراغ من عمله حتی 

یستوفی الاجرء لان المعقود عليه وصف قائم فى الثوب» فله حق الحبس لاستيفاء البدل كما فی المبيع» ولو 
حبسه فضاع فی يده لا ضمان عليه عند ابی حنيفة لانه غير متعد فى الحبس فبقى امانة كما کان عندہ ولا اجر 
له لهلاك المعقو د عليه قبل التسليم» وعند ابی يوسف ومحمد العين كانت مضمونة قبل الحبس فكذا بعدہ لكنه 
بالخیار ان شاء ضمنه قیمته غیر معمول ولا اجر له وان شاء ضمنه معمولا وله الاجر وسنبین من بعد ان شاء الله 
تعالی۔ 
2-227 تور نے فرما ا ےکہ ہر دخ ج کوٹ یککام اج ت پ کر نے الا مو اورا ی کے کا م کا پئ اشرادر شان اس رش 
شس می کا مک یاگیا سے بان ر بتاہو کے وول کی ڑے پر اتب یک نے دالا ہو اور یس رنگریز۔ تو ا کو ہہ اخقیار م وکاک ای ےکام ۱ 
سے فار ہو نے کے بح دای ما لکو اپ نے اد وک نے یہا یک کہ وہای اج تپ رکو صو لک ے۔( ف اورک وماج اشن ہو 
اور ال نے مالک کے مطاےے کے باوجود انی اجر وصول ار نے کے لے روک لیا فو دد ضا من نہ وگ بیہال یم کک ہاگ راس کے 


تن الہد اے چد یر ۵ لر نم 
رو کے کے اع روہال مال ضا ہو جاۓ و بھی ضا من نہ ہوگا۔ لہ اوہ جب کک اپی لاجر تن پانے۔ا یکا ےی ی روک 
کر ر کے )۔ لان المعقود عليه الخ: :کی وکمہ جس زیر عقد اجار ہوانادداس تا جرک ےکپٹڑے میس ایک الیاوصف ے جو موجوو 
ہے۔ انس لے ا کا بدلہانے کے ے ات رکا کووہپٹراا نپا روک کر رک کااتیار ہوگا۔لاف ملا رک کار ککٹڑے میں 
وش کے طورب موچو ر ےاذر ای )کور و یناتی اگل ضور شا لی اس گر ہک کوائس پا تکاا تیار ہوگاکہ ابٹی حن کا عو 
ا 27 کور و کک ر کے )۔ جج اک مال تب یس عم سے۔(ف ای ے با کو یاخقیاد ‏ ےک دواناعوضل 
نی ا سکی قبت نظ وصو لکرنے کے سے اس بی کو رو کر رگے۔ یہاں کی کے معاہدہ کے عطال اپ پورگ رتم وصول 
کے نک 
فلوحبسه الخ: اب ار ایے ایر ہے ا کا ضان لاز E‏ نی کی ے۔ 
ق رٹ ئیہو )ای طرح صب و ستور ہے مالی ا کے قے اا 
کے طور پر تا( اور ات ضا ہو جانے سے اشن ال کا ضامن نیل ہو تا سے )۔ سا تجح ھی اس اچ کو عحن تکی اجر ت بھی نین لے 
گ یک کہ ما یکو حو ال ہکر نے سے پل یا مال ضا گیا (( ف ای سے مہ بات معلوم ہوک کہاگ کسی درز یکواپنے کان مس ٹیا 
کر ایت یڑا سلوا فو ا لکپڑ ےکور و کر ای مز وور ی وصول نی سکر سنا ےک وہل ہگ میں یھکر وکام ہو تا ہے وو سا تھی 
اھ تاج کے حوالہ ہو جاسے توا کے ب سی طر باآاے ین ا یھر بوط ویر مکی ر واییت کے مطا نآ اكم 
تام ہونے سے پل ال ضا واوا کی م ردو ری ساط نہ ہی لکن ت نکی رایت کے مطا لن مز دو ری ساقط ہو جات ےکی جیما 
کہ او گزرچکاے۔ نا تم سم اودیہ امام ابد نیہ کے زیی ہے )۔ 
1 و عند ابی یوسف الخ: اور صاع کے ناد یی میس یز می لکام جانا سے پیا تھا کو رو کے سے پیل وہاچ کے ت 
س غات کے طور ہے شی لف ای لے ووا کو کک کے تی نے میس پان ےکاذمہ دار تھا)_ فکذا بعده الخ :ںوہ 
زو کے پیل شعن تان ر ادو کے کے بعد بھی ضا کک ےکا کن سے کے مال ککواختار م وکاک دعا سے و ایر 2 
ہو اور یر استری کے ہو ےکپ ےکی ت نون کے عو وضو یکر جاوزا قورت و 
مز دور ی نیس سے کاو اکر چا سے توا کک سے د کے ہو ے ياست کی کے ہو ےکیٹ ےکی تت تا واان یس نے ے مین ا یک رگ 
ای یت ی ا انشاء ا تیال اس بج کو۲ آ ند ہ ہم پھر ییا نک بی کے( ف مہا سیک ایی ےکا رم رکا ان یں 
۱ کا مک رامش ہق سچاد ریا ت کرلک سے کے لے لور کاچ 
EES‏ نی چا تاس کہ اپٹی مز دور بی و صو لکر نے کے لے 
E ۷‏ 
و زت دا رکون ادر ی سورت ہے ال ار اکا ےک ل سا نل ءاقول 
اک تلم ول“ 5 
قال . وكل صانع ليس لعمله اثر فى العین فليس له ان یحبس العين للاجر كالحمًال والملاًح لان المعقود 
عليه نفس العمل وهو غير قائم فى العين فلا يتصور حبسه فليس له ولاية الحبس»ء وغسل الثوب نظير الحملء 
وهذا بخلاف الآبق حيث يكون للراد حق حبسه لاستیفاء الجعل ولا اثر لعمله لانه كان على شرف الهلاك وقد 
احیاہ فكانه باعه منه فله حق الحبس وهذا الذى ذكرناه مذهب علمائنا الثلاثةء وقال زفر لیس له حق الحبس فى 
الوجهين» لانه وقع التسليم باتصال المبيع بملكه فيسقط حق الحبس» ولنا ان الاتصال بالمحل ضرورة اقامة 


وو : 7 


العمل فلم يكن هو راضیا به من حيث انه تسلیم فلا یسقط الحبس كما اذا قبض المشتری بغیر رضاء البائع. 
قال: واذا شرط على الصانع ان يعمل بنفسه فليس له ان يستعمل غیرہء لان المعقود عليه اتصال العمل فى 
محل بعینه فیستحق عینه کالمنفعة فی محل بعینه» وان اطلق له العمل فله ان یستاجر من يعمله لان المستحق 
عمل فى ذمته ویمکن ايفائه بنفسه وبالاستعانة بغيره بمنزلة ايفاء الدين. 

7 قد ود نے ف رما کہ پر اییاکا رر نس کے کے ہو ۓےکا مکاکو ی اش اسل مال میں باقی یں ر ہا ے تا یکو 
ایاج ت ما گے کے لے اس ما کور وک ککاکوکی ہن نیس ر بتاے۔ جسے بو ج اٹرانے والا مز دور اور 4 چلا ے وا( 1۷رع۔(ف 
کر سا :ا اس مر وور نے اتی یھ پیا جاور ہلا دکرمال الا للاح نے مسق بے لا کر مال پہچییاقان کے پان ککوگ اث اس 
ال بای میں رجاے)۔ ٰ 

لان المعقود عليه الخ :کیوکمہ بس چ زی اجارہکامعاللہ سے ہو اہے دوس راس رکام ہے اور اس سک ےکی مال یس اکم 
وجو نیس رتا ے۔ اس لے ىہ بات تصور میس نے کے لا ن یں س کہ متا ج نے اا ںکاکام ان پا ردک لیا ااج رکو ' 
بھی ال مال روک لی ےکااخقیار نیس ہوگااو رکپٹڑ ےکو صرف د حون بھی ای حا لکی نظیرہے۔(ف مین اکر وعو نے صرف 
کس کو ووی ہو نوووا تی اجمرت ما گننے کے لے اا کڑس ےکور و کر میں رکھ سنا سے ی ےک بو چھاٹھانے والاحرآل ما لیکو ہے 
اس دو کک ر خی رو کنا لیکن اکر د حو ن ےکپ ےکود ھکر اس پک کلف ڈالا پچ راس پہ اس کی فو پڑ ےکور وک کنا 
ےک وک ہکپیٹڑے ب کلف اور است ر یکا بای ر ہتاے)۔ ۱ 

وهذا بخلاف الخ: ‏ اچارہ کے سے بس ے عم ھا کے ہہو سے غلا م کے بر خلاف ہے کی وکلہ اس رح سے 
ا کو چ کر مال کک پچیانے میس اکر اس لا نے وا ےکا یھ مال خر مو اہو و اسے ہے عق ہوگاکہ غلا م کاپ پا اس وق ت تک 
روک رک ےک ا کا و صو ہو جائے۔ جالاککہ خلا مکووالیں پچیانے می بھی اس تن سکاغلام کے اند کوٹ اث با س چا ٠‏ 
ہے۔ اس فر قکی وچ سب کہ الیماظلا موی ہلا اک ہونے کے قرب تچ کا تاجن اواب لا نے وانے گیا کو ٹر وکر دیا 
قد اب ایی صو رت و وک یک ہگویادداس غلا مکواس کے اپنے مالک کے پا تھ فر وخ تک ر سب اکی لے اس فلا کور دک ےکا ن 
ما سل ہوگا۔(ف اور والیں لا ےکا خر رج مشلا :جو ا یں در ہ مکاہ وکوا کا کوش اور ن ہے۔اس لے کے یی وا نےکو این 
الک عوض و صو کر نے کے کے ئ کور وک ےکا تن ہو ما ہے۔ اک رح وائیل لا نے وا ےکو بھی اس کے خرن کے مو ے ما لک 
وصو لکر نے کے لے غلا مکور و کر رک ےکا تن ہے )۔ 

وهذا الذى الخ ہے سای ج م نے دک کے ہے مار ے تو ات ہکا ہب ے۔( ف یں ہے تا تد مکی ہکہ اجار ہکی صورت 
س کا ری کے کا مکااشراصل مال ٹس با ہو وہای اج ت و صو لک نے کے لے ما کور وک سکتا سے ورنہ نکیل اور ہے مل ۔ 
اھات اام ابو نی ویو ست وامام مرکا قول ے). وقال زفر الخ اور اام زر نے فرمایا س کہ ا یکا مک نے وان ےکوی 
عالت یل بھی ما کور و کر رک ےکا ہن حاصصل یں ےکی وکل ا کار یر کی طرف سے اپتی حتت مستاج رکو حوال کر ےکی 
صو رت تی ہو ےک جس جزپر اچارہ ہے ہو اتوہ متا ج کی کیت ےلت یگئی. اپ اا کور و کا ہن م م گیا ے۔(ف 
شلا : رگ ہکا ریک متنا ج کے کے میں کے ہی اس کے حوانے م وکیا اور قاعدو کے حوالہ ہو جانے کے بعد روک ےکا تن 
21 
ولنا ان الخ : جار ید لی ىہ ےکہ کل کے ساتھ مل جانا کا مکو ی کر ن ےکی بور ی گی ۔ اپا ےکا رر اس انتبار سے 
ات ےکا مکو اس علیہ کے سا تج ملانے مر اس اتہر سے راصی کی ہہ اتاک اس طر کم متا ج کے حوال کیا اراچ لپ اا 
کے روک ےکا جن ت نیس وک کی ےک ال کسی خ یار نے یی وا کی ر ضا من کی کے اخ رای کے مال برق ہک لیا ہو۔لاف توا 


الد اے جد یر I‏ جو رٹم 
کو ول پر اس با تک اختیار مو تا ےکہ ا خ یداد سے ایفامال وای ےکر ای ر م و صو لک نے کے ے مال دوک نے۔ ای 
ط رع بیہاں کی کا رمک رکواس با تکااغقیار ما کل س کے شل :اکر رک بے اپنے متاجہ ک ےکپٹرے یس رک اگادیا وای موج نے 
ا ارادے سے ریک نیس لگا کہ ہے رت کے کے ق یج سے اس متنا بے کے حوال ےکر وول بل اس وچہ سے لگایا ےک یل 
ا سک اجر تک عفن ہو ںگا۔ااس ط ر ںا ت کے بارے می پر دک نالاڈم خنی ںآیا۲۔ ۱ 
قال: واذا شرط الخ: فور نے فرماا کے اکر مستا ےکا یکر کے سا تج ہے رط لگائی ہ وک ہے مطاو ہکم وہ خود 
کر ےگا اس کے بح دا کار ت رکوس با ت کا تیار یں ہوگاکمہ ےکا دوسرے سے نے ۔کی وکل نل بات پر اجار ہکا عامل ہے پیا 
90 ,یی و و تلق ہوگا۔اس لے ودای دعدرے کے پور ےکر ےکا عفن ہے۔ جی ےکی ناص چ 
ہے لنن می ار ےکا اجارہ کیا ہو۔ (ف سن اکر متا جج نے خائ کرک رک زات سے ا لکام کے سے بر امار کیا نای 
خصو بی کا یکو ن ما کل ہے تی ےکی چاو رکو نا مکی سوا رک کے لے ارہ کے طور بر یی ناس فع کی عم سے اک 
ا ہوگا۔ چنا ہار انور کے ماک نے ابا جانوردیاجولادنے کے ےکا مآ کتاے۔ تا یے تاج کی یکو چ لاز مد 
ہو یکیوکلہ وو سوا رکا خی ہواتھا۔ اس لے جس رع کو ناکرا ی ہو ا ہے اسی طرںح اس علا ےی کل سے میلع 
ہا سل وکا سکی تی بھی کے ۱ ۱ 
وان اطلق لہ الخ او راک مستاجر نے ا ںکوکام کے لے مطاظااچارہ بر لیا شلا :بو کہ اک مرا ہکیڑرایک ور کے وی 
کر دون اک کے وقت ہے خی ں کہ اک خوداپنے پا تھ سے یکر دو نوا کا ر رکو کی با تکااغقیار ہ وکاک ےکا م دور ے 
یس سے پوراکر واک وکمہ ا کا یکر کے ذتۓ صر فکام کو لو راک نالاز مک گیا سے۔ اور ا یکولو راک ےکی دوہی صور یں 
کن ہیں ایک ےک کام وہ ی ودا ےتہر سےکرےاوردوسرے ی ےک ک ادو سر سے سے ب ےکم نے فذ اس صورت یل اییے 
اچ کو اس با کا جن ہا کل ہوک کہ جس ط رح ا ےکام اور اکروانے۔ نو ہر ط رع مائ م وگ کے :کیک قرض اداکرنا۔اف 
ین اکر وچا ے توخو دا چیہ ھول سے اوکردے پاپ می وکیل کے محر فت ادکردے۔اس کے لے ہ رط رخ جائز ہے )۔ 
و 6 : ۔کیاحمآل اور ملا اور و عوفی -ے اب رو کو یز تن ےک اا ت و صمو لک نے 
کے لے اسےۓ مالو کو اپنے پا دو کر رکھ فی ؟اگ کی کے بھاگے ہو سے غلا مک کوئی 
بل کے اس کے تا کے پاس کر اس سلسلہ میس جو ہے خر مواوہ اس سے زیرد سی 
وصو کر کنا ےار مستا چ نے اپنے اجر سے ابت ا نگ میں ہے شر رک ری م وک دوخوددی 
ہمار اکا مک ےک واچ دوسرے ے بھی ا سکا مک وکر اکتا ےم یکی یل, اتال 
اث کرام مب ولاک 
فصل: ومن استاجر رجلا ليذهب الى البصرة فیجیء بعياله فد تب ووجد بعضهم قد مات فجاء بمن بقی 
فله الاجر بحسابهء لانه اوفى بعض المعقود عليه فيستحق العوض بقدره» ومراده اذا كانوا معلومين وان 
استاجر لیذھب بکتابه الی فلان بالبصرة ویجیء بجوابه فذهب فوجد فلانا میتا فر ده فلا اجر له» وهذا عند ابی 
حنیفة وابى يوسفء وقال محمد له الاجر فى الذهاب لانه اوفى بعض المعقود عليه وهو قطع المسافة وهذا لان 
الاجر مقابل به لما فيه من المشقة دون حمل الكتاب لخفة مؤنتهء ولهما ان المعقود عليه نقل الکتاب لانه هو 
المقصود او وسيلة اليه وهو العلم بما فى الكتاب لکن الحكم معلّق به وقد نقضه فيسقط الاجر كما فى الطعام 


گن الہر اے جدیړ 11۸ لر“ م 
وهى المسألة التى تلى هذه المسألة. 
رچ : تل cas OEE‏ رت 
سوک مز دور ی ٹیش یال لے آ ے۔اور وجب وپال ٹیا تاے معلوم اک افر ارتا ھل سے چعد خلا دو(۶)وفات ا ٠‏ 
اس لئ بقایے افرادکونے آیا۔ فدہ صرف اک صاب سے ہوجو رہ ہے افراد کے صرف مہ سورونے بی کا ن ہوگا کوک حت 
ار کول ےکی ا اک یت روس کات ای ا تکس ات کات ون وا استاجر الخ: اوراگر 
کک ا کام کے لے ار نا کہ میم رای خط لال شر کے فلال شش کو بای اکر ای سے ا کاچ اب ےک آ2 ذوخط ےکر وہاں 
پہخیاگر معلوم ہوامہ ووکتوب الیو گے کی مر چاچ اس لے دوجواب کے بضیروائیں ہگیا۔ قذاسے ھھ بھی اجرت نہیں لے 
کی قول لانیف دام لووف ر ا کے۔ 
وقال محمد الخ ادر امام ر نے ریاس کے خط لے جانے وا ےکواہ کی ردوری ےکی وک جم ںککام ا 

ہو گی کی اس میس سے ب کام اس ےکر لیے ن و ال کک ی جائ ہے ای ل کیاکی اک اا لک اج ت راستہ ع کر نے کے 
نود وک او E‏ 
ہے اس ںکونلے ہے لکوئی نت نمی ہو کی ہے۔ ولھما ان للخ :اور شی کیو کل ہے س کا یکو بی ےکی خر خیا نےکر 
FY‏ عور ہے کما زم خا کے اندر جو مولن ہے ا سکواس ی کک پان ےکاؤر یجہ سے لین ا کی 
اج ت وبا کک بہچیاد سے بر مو توف یج پک ا نے ول کک یں ایی توا کی اجر ت کی م وی چ ےک خلہ دا کک 
نے کے مسل میس سے چوک ا بھی تمو ڑ ی دم بعد زک رکیاجاۓگا۔لاف اور اکر خط مل جواب لا ےکی ش رط تہ ہو اور مز ووراک 
خی وو ہیں چو کر چا آ ینوا کی صورت ٹیل ووا بی لو ری مز دور یکا معن ہو جا ےک چئ ےک اکر ا سکوخا کے اغیرىی بھیاگیااورود 
وہوں نی کان جس کی کے ر بھی اکیاتھااے نیل پااو ری کے ذر ےج پام بھی نیس پاچ لوٹ ف آیا تو بالا شان ا یکو 
ص9 ۔اور اکر جواب لا ےکی بھی شا مو اور اس صورت یس وپاں کر خط وای نے آیا تا کا م اتی 
اویہ ن می با نکیا چاچکاسب ہک ”ن کے مزد یک دوکتھ بھی م ردو ری نیل پان ےگا)۔ : 

ی ی کیک اورم ےد aa‏ 

چک ٦‏ اھ ہیں آ کے سو کے کو نے آئے برجب مہ اجر وال نیا نو اکن مل وو افر ار 

دفات پا کے سے اس کے بقبہ چ افرا کون ےکر کیا ا کاک 

می راہ خی فلا شر کے فلال ی تک صرف پہضیادوہ یا ںکاجواب نے آو کر اسے 

وال کے بر معلوم ہواک توب الیہ مر چک ہے اس سے کو لے ہو سے وای کیہ 


ما ٠‏ لک ینف لک اقوال ا مرل" 


وان ترك الكتاب فی ذلك المكان وعاد یستحق الاجر بالذهاب بالاجماع» لان الحمل لم ينتقض وان 
استاجره لیذھب بطعام الى فلان بالبصرة فذهب فوجد فلانا میتا فر ده فلا اجر له فی قولهم جمیعاء لانه نقض 
تسلیم المعقود عليه وهو حمل الطعام بخلاف مسئلة الكتاب على قول محمد لان المعقود عليه هناك قطع على 
مامر » والله اعلم بالصواب. 

7 اگ ہہ تس ےر ےت سی ق اپ اج تیاےگا۔ 


گن الہد اب ہچر یر 19 بل نتم 
کی کک خط نے جا ےکاکام اس نے نیل چھوڑ ایک خط دا کک گیا( ف اجم ت پان کد چہ بی س کہ اام ر کے نز دی جیا 
وای لا ےکی صورت میس کی انی مز دور یکا ن ہو ج تیاور موچو دو صورت میں تو خط بھی وپل چو ڑک آیاے لف اہب رجہ 
*اولی اجر تک معن ہوگا۔ اور ن کے ری چوک وہ خیا نی لا بے اور خی پچانا ھی مقصود تھا ا لے وواک O‏ 
گیا وان امتاچ الاوراک ری شف سکوکی خفصصس شر میں فصو نخس کے اس لہ لے جانے کے لے دور 
بر موایل ےے کیا پھر وشن خصو س شیم س توگ کین اس خصو س سکوز نرہ یں پیا کی وکل دہ پیل کی مر چا تھا ای کے لہ 
وائییں نے آیا وا یکو پچھ بھی مور وور ی یں ل ےگی۔ 
فی قولهم جميعا الخ: گم کور ول ام کے ری بالا قات ے کی وکل ال سے چو بات لے بای یاک پر اس نے 
کل ی ںکیا۔ اور اس ستل میس خلہ نے اناد اصل متصود تھا. قلاف خوط وانے ستل کہ اس میس صل مقصدددام مھ سے 
تول کے ماب راستہ ٹ ےکنا تھا جیراکہ اوپہ ہیا ك کیا چاچ ے۔ الہ تال اعلم بااصواب۔لاف من ےکا خلاصہ ہے مو اک غل وا ی 
سورت می بالا تان خلہ نے ان تی مقصود اور جب وونہلا بالا قان دواجر کا سج ہیں ہوگا۔ مخلاف خیا وانے کے کے 
کہ اس می اختلاف ہے اس رس ےکہ ین کے نز ویک واں بھی اصل مقصودخط نے جانا تھا ای لئ وداج تک خی ہیں 
ہوا ین دا مر کے زوس اصل مقصود ر اتر ہے ےکنا سے ای کے اکر چ دوخ وای کی لے آیا دوہ جا ےک اج تپ ےگا۔ 
داشر تمالا عم ب لصواب)- ۱ ۱ | 
او ت :۔ گر ےکور و صورت میں اچ اس خ اکو چو ڑکر وای گیا اکر کی تس سے ای 
صودت می ہجاۓ خط لے جانے کے فلہ لے جانے بے معامطہ ع کیا کر ننس کے پا 
اسے کی گیا تادہ لے نی مر ہکا تھا ای لئ اس غل کو وہ وای لے آیاء مہات کی سیل 
م اوا لاہ خط نے جانے اور غل کے نے جانے کے در میان وچہ فرق :ول کی 

باب ما يجوز من الاجارة وما يكون خلافا فیھا۔ 

قال: ويجوز استيجار الدور والحوانيت للسكنى وان لم يبين ما يعمل فيهاء لان العمل المتعارف فيها 
السکنی فینصرف اليه وانه لا یتفاوت فصح العقد وله ان یعمل کل شىء للاطلاق الا انه لا سکن حدادا ولا 
قصاراولا طحاناء. لان فيه ضررا ظاهرا لانه يوهن البناء فيتقيد العقد بما ورائها دلالةء قال ويجوز استيجار 
الاراضی للزراعة لانها منفعة مقصودة معهودة فيها. 

ا ا با بکو کون سے اہارے بالا تاق ہا ہیں او رکنش اختلاف ے۔ قال : ویجوز الخ: نرو ری نے را 
کہ مکانوں اوردکانو کور پا کی خر س ےکراے پر دنا انز ے اکر چ اس یس می نہ بنا کہ اس میں دوک ہک یاکیاکا مک ےگا 
کیو کہ عمو لاس میں رماش نی کاک م ہو تا ہے۔ اس لے اس موا کور ہاش کے نام ہر ٹ کیا جات ےگا اور اس لے کیک راش 
س وال وگوں کے در میا نکوگی اص فرق نیس ہو ج ہے۔ اک لے ہے محال تج ہو جا ےکا وله ان یعمل الخ: اور ای 

کرائۓے پر لن وا ےکوااس با تکال ور ااتتیار وکاک اس میں جس طرعکاکام ا ےکرے اور خودر ہے یکی او رکو ر کے الہ اس 
مکالنیادکان مل لو ہار یا آ ےکی ییاد مول ہے دھو نےکاپ کیا موگر بی دخ رو رک ھک رکام کی کر سک سے اور تہ بسا سا ےکی کہ 
ان کا مون سے بظاہر اصل عمار کو قان ہو تاس ےکی کک ےکا م عمار تکی یا دک وکرو رکر د ےت ہیں۔اس لے معا اہ چ یہاں 
ملق ےکر دلا ات کے اعقبار سے او مھا جات کہ ا کا مول کے ماسوا کے سا ہے متیر ے۔ل۔ ۔ 

( ف کن ایک مان جب اس بات ب رایت م وک ال کی عمارت شل نتصان پت ا ییے اجار ہس ا کا ہو لک اچاز ت نہ 


تیانع البد اے جد ہر ٍ ا لر تشم 
او ا پا او کن ہگ کی کےکیامم سے نتصان ماق ظاہ بی سے کن رےے ‏ ے ےت 
کان میس بٹڑی یوی چلیں کر عام لوکوں کے لے 7 پیتار ہے ادد بج یکا مک جارس ےکیدککہ ای رول سے عمار تک بہت زیادہ 
نقصان مجنا ے_ اس جل سے ہے خر میں ہے نو کرای ارال ضزوزت کے ے ک کوک گی نہ لااو آنا بے جیما 
کہ اک گھروں مس ایی چا کی مون ہیں )۔ قال: وو الخ تزور نے فرایا ےک کی کر ۓ کے لئے کیتو ںکواور 
ز ینو ںکوکراۓ پر لیا جات کی وک ایی مزا کو ما س کر ناز مینوں ے مرو اور مقصود بھی ہے ۔(ف ممن زمینوں سے 
ای کا ا انت ر وج کیا جائے اور ہے فا کرو خو یی ”قصور ہو جا ہے مخلاف اس کے اکر 
تی زی نکوا سکام کے ل کہا سے برک یاکہ اس یس بی ھکر جل کے حالا تکانظار ہکرول تا چارہہعل وگ اکی دہز میتوں سے 
ا مرکا نح ی ص لکرم نتصور یں ہوا انڑل سے وسیل معلوم ہوا کہ جو چ کون انعم م لکر نے کے لن کرای پل . 
ہا سے نع تقصور بھی ہو۔ نے زمین ہے کیک نی ص لکرم لصوو ےچ )_ 


و :باب کن اچاروں کے چوا ٹیس انقاق ے او رکن مس اشتلاف ہے۔ مکاٹوں اور 
زمینو ںکور ل کے لے لیا یرای می خوداپنیادوسر کو اتا او کے کی ےکا موں 


ک وکر نایا نکر نا یکی پاڑ یکر ناء ما کک لصيل و عمەدل انل 
قصار دعو یکن یگر۔ سی اور یزو کودھونے والا اد چلاد یے الا ۔ یا 6د دالا ری 007 
د ول ا ے پر کو بے ادر کات ہیں۔ 
وللمستاجر الشرب والطریق وان لم يشترط لان الاجارة تعقد للانتفاع ولا انتفاع الا بهما فیدخلان فی 
مطلق العقد بخلاف البیعء لان المقصود منه ملك الرقبة لا الانتفاع فی الحال حتی يجوز بيع الجحش والارض 
السٌبخة دون الاجارة فلا یدخلان فيه من غير ذكر الحقوقء وقد مر فى البیوع. ولا يصح العقد حتی یسمی ما 
یزرع فيها لانھا قد تستاجر للزراعة ولغيرها وما یُزرع فيها متفاوت فلابد من التعیین كيلايقع المنازعةء او یقول 
على ان یزرع فيها ما شاءء لانه لما فض الخيرة اليه ارتفعت الجهالة المفضیة الى المنازعةء ویجوز ان یستاجر 
الساحة لیبنی فيها او لیغرس فيها نخلا او شجراء لانها منفعة تقصد بالاراضیء ثم اذا انقضت مدة الاجارۃ لزمه 
ان يقلع البناء والغرس ویسلمھا فارغةء لانه لا نهاية لها ففی ابقائها اضرارٌ بصاحب الارض بخلاف ما اذا 
انقضته المدة والزرع بقل حيث تترك باجر المثل الى زمان الادراك لان لها نھایة معلومة فامكن رعاية 
: اور ای ےکر اے دا رکو ابیز مین را نے اون ےل اوراس مین 7آ اپرورٹت کے ےرات لک ال 
نا ۵٣‏ ا ھا ص٥‏ لکرناہو جاے ج پک اک ئل ال نہ 
سرت و کے ا نی ہیں ے۔ گنز لق معا ہو نے کے پاوجودیہ دوٹوں بات داشل 
ہو جائی ںی( ف تخلاف ز بین فروخ یکر نے کے یدلہ فروش کی صو رت شی اندو تول پان لک زک کے !خر ون 
نہ ہو لگ یک وک خر راد ی سے مقصوداس زک کک بنا ہو ا ے لیکن نالفو را سے انع بھی :ٹین قصور خی ہو جا سے اسی بناء یر 
کھوڑے کے مچھوٹے ‏ کو او رکھا رکیز نکو بھی ینا ہام ے کین ا نکا اجار ٤‏ ہار نہیں ے۔ اس لے بی کے معا مہ می موق 
کے ڈگ ر کے فی انی ان کاحصہ او رآجرود شتکاراست وال د ہوگا۔ مہ بج کاب امو شی ذکر ہو گی ہے )۔ 
ولا یصح العقد الخ اور کک یکر نے کے لے زی نک وکر اے بے لیناای وشت چائز ہوگا لوان اف 


الد اہ جدی ۱ او بل 
تر ت )کرد ےک ںای پر کی کر ن ےک وک خال یز من بج میتی کے ے اور بھی دور ےکا کے لے کیل جالی ہے۔ پھر 
جس چ کی کھت کی جائی ےہ اکشراس ٹیس ایی دوس ر ے ےہ فرق ہو تا E‏ 
میں ا سی یکو مشتی نکر دیا بھی ضرو ری ہے۔اویقول الخ یا اک ز لن اس رر ہی ےک تمہار اج دی چاہے اس ز من شس 
کٹ یکر وک کی جب زمین کے ماک نے خود اپٹااختیا کرای دار کے حوال کر ویاو بعد یش جس ہے کے پیر امو ےکا خطرہ تاد 
دور ہوگیا_ ۱ : 
ویجوز ان یستاجر الخ: اور ہے بھی چائز ہ ےک کوگی شف خالی زی کو ای لےکرائے بے لے اک ا می ای یکول 
کارت جنانے یا خر مہ کو گی اور چلدار در خت لگا ے کی وکل ہے بھی الیبا ع ہے جو زمیتوں سے ما سکیا جات ے۔ ٹم اذا 
انقضت الخ برجب ین شدہ بر تکرا ۓےک یگز رگئی توا یکر اے داد پر ىہ لام کہ ایز لن سے ابی بزائی ہو کی کارت 
اور کے مو ۓ در خی تکو ال نے اور اس ز می کوان تنام وی سے خا یکر کے اس کے مالک کے جوا کرد ےکی کک میا 
اورد ر خت کے رت ےک کو رت اور انا معلوم نیس ے لپا اجار ہک با رسکی ےکی صورت میں ز مین کے باک کک نتصان 
ہوگا۔اس کے بر خلا ف اکر ز مین میں کی یکی ہو کی بد اور اجار ہک ت گز رگئی ہو ووو ز من اک طرح مل کے یک جا کک چغوڑ 
دک جا ۓگ لیکن اتی فا شل مرت کے لے جھحموز کرای ہو کے وواسے دیا جا ۓےگاکی کک ےکی ےہ ہا ےکی ایک انا سے 
چول وگو ںکو معلوم مو نی ےاس رح فرلیقین ے کی ر مایت کن ے۔( ف ن ز ین کے مال کا فا شل یر کرای 
مل جا سے اورا ںکرایے دا رکو گی ہیکت ئل جات ےکی ۔ 
۲ .اگ رز جن لت ونت پان اورراسرد یۓے بات 1 7 وا و لے 
وق گن پان کی تر بے ضرو ر کی ےزین سے مر ت اچاد ہد جانے کے بعر بھی اکر ۱ 
اس میس کا کک ہوء در خت گے مول سیر کی ہاہار تی ہوہ مان کی فصل عحم, 
087 
قال: الا ان يختار صاحب الارض ان یغرم له قيمة ذلك مقلوعا ويتملكه فله ذلك وهذا برضاء صاحب 
الغرس والشجر الا ان ینقص الارض بقلعھا فحینئذ یعملکھا بغیر رضاہء قال: او یرضی بتر که على حاله فیکون 
البناء لهذا والارض لهذا لان الحق له فله ان لا يستوفيه. قال: وفى الجامع الصغیر اذا انقضت مدة الاجارة وفی 
الارض رطبة فانھا تقلع لان الرطاب لا نهاية لھا فاشبه الشجر. قال: يجوز استیجار الدوآب للر كوب والحملء 
لانه منفعة معلومة معھودةء فان اطلق الر کوب جاز له ان بر کب مُن شاء عملا بالاطلاق ولکن اذا رکب بنفسه 
او ارکب واحدا لیس له ان ی رکب غیرہ لانه تعین مرادا من الاصل والناس متفاوتون فی ال ر کوب» فصار کانه 
نص على ر كوبه» و كذلك اذا استاجر ثوبا للبس واطلق فيما ذكرنا لاطلاق اللفظ وتفاوت الناس فى اللبس» 
وان قال علی ان یر کبها فلان او یلبس الثوب فلان فار كبها غیرہ او البسه غیرہ فعطب کان ضامناء لان الناس 
یتفاوتون فى الر كوب واللبس» فصح التعيين وليس له ان يتعداه» وكذلك كل ما يختلف باختلاف المستعمل 
لما ذكرنا فاما العقار وما لا يختلف باختلاف المستعمل اذا شرط سکنی واحد فله ان یُسکن غيره لان التقييد 
غیر۔مفید لعدم التفاوت والذی یضر بالبناء حار ج على ما ذ کرناہ . 7 
جم :۔ فد وی نے فرمایا کہ زک کا مالک اگ اس با تکو پئ رک ےکہ مار کو او ے اور ور خ کو اکر ے بغیر 
ایی عالت شش ر سے ہو کے لگانے وا کرای دا رکوٹوٹ ہوے مکالن یا کی ے ہو سے درخ تکی تت اواکر و ے اوران چرول 


ین الآبد اے جد یر ۲ے ۱ جل رگم 
کا خود مالک بن جا او رکر اہے دار کی اس بے رای ہوجائے فا یکو ہے اخقیار م وگ مین اکر ان چو کو اکھیٹرنے سے ٹزی یکو 
نقصان تا ہو تا یکر ایے دا رکی ر ضا مند کی کے !خر بھی ز شی نکا مالک ا کی تمت د ےک ان چ زو کا مالک کن جا ۓےگا۔ قال 
اویرضی الخ : ند دد ریاس ک کرات ےکی مدت سم ہو نے کے بعد بھی فی نکا ایک اس مان یاد خ تکواسی حالت پر سچھوڑ 
وغ برراشی ہ جا فو ارت اس کراب دا رکیپ گیا کیان زین اس کے مان کک موی کوک ال تق نوز ین کے مال ککاے 
ای لئے ا مال کفکواس با تکااختیار م وک کہ ا یکر اہے دار سے اپنا ن ہے بھی وصول کے خی کراىہ دا رک اک حالات یں ر ےے 
دے-قال وفی الجامع الخ: بائ سم یس کہ ار اجار ہکی ن برت ت ہ گئی پر بھی ز مین ٹیس رطبہ سے فذوواکھیٹر لہ 
جات ے کوک زین یل گے رہ ےک یکوکی مین عرت یٹس ہے (اس لے می بھی ایک در خت کے عم یں بومگیااورجٹس طرح 
درخ تکواھیٹ د سے کے ل ےکا جا ہے اک ط رح سے اسے کیزن سے اکھیٹر د ب جو کیا جاف ےگا 

قال ویجوز الخ قد ورک نے فربایا کہ سوا ری کے جانورو کو سامان لئے کے لے ھی اجادہ پر لیا انز ےکی وہ ہے 
کی ےک اور یرت معلوم ہکاکا وبار سے ۔ اک بتاع پاک سوا ری مطلغال یکی توا یک وکر اے پر ینہ دا کواضتیار م وکاک اس مر 
ج سکس یکو چا ے سوا رر ےک وکل ا ہنذن کا تاضا بی ے۔ چ اکر ای پرایک مرح خو و وار م وکیایاا ی نے سی دوصر ےکو 
سوا رکرویا وای کے بعد او رصسی دوسر ےکوسوار کی ںکر کک س ےکی وکر مق ہو ےکا ل مقر میں ےک اس طر حا سکی 
راو ن ہوگئیں ق ىہ افط ق ےکر مام یں سے الہنہ سوار ہو ےکی کیت میس وگو لکاحال تلف ہو جا ہے اس لئ ہے 
کہاجا کو با ال نے سوا ری کے محامہ یش اک سوا رکو لے بی ص راڈ یا نکیا تھا۔ 7 

وکذا لك اذا الخ ای راگ رک یکر ای دار ےکوئ یکی زاین کے ےکر ایہ پر یا کان ہے نیس ایک کون کس رین کا 
یی لیے وا ےکو لق رکھ نواس لفط کے ت ہو ن ‏ کی وجہ سے ا سکوافقیار م واک ے چاہے یہنا ے الت جب ایی رجہ 
رین لیا دور ےکوپہنادیا تو وی بے والا اب اس کے ے مین م وگ اک وک اتال کے ط ر بی میں ل کو کتاعال شف 
ہو تاہے۔وان قال علی الخ او رار جانوراس ش رای کرایہ بر لیاکہ اس ب فلاں شف سوار موگایا یکپڑرا فلال تن ین گا بچھراس 
ال کین تٹ سے مہا ے یا او رکوا بس چافو ری سوا رک لیا کی دسر ےکوو کیٹ اپہنادیا۔ بعد میں جب دو جانو رم ممگیایادہ 
ڑا چم ٹگیات بک ایے پر ین دالا جانو رکا ضا کن ےگا ک لہ سواد ہو نے او رکپڑے کے نے می ل وگول کے در میالن ہت 
فرق ہو جاے۔ اس لئ ابنقرا میں ا یکو تی نکر د یا کو گنی لئے ای کے بحرا کرای دا کزان سے یاز sg EE‏ 
ہوگا۔ اک طر ہر دہز جولوگوں کے استعال کے اختلاف ے مخف ہو بان ہو ا کا بھی بی گم ہوگااسی بتائی ہو کی لی لکی بناء 
>ر۔ لیکن جا مرا من ز لن و مکالن اور ہر دہ زج استعا لکرنے وانلے کے حخلف ہونے سے تلف نیس ہوکی سے اس می بی حم 
یں ہے اک ےار ای ممیان میس امیا ذف ہے ا وی جیا رای دا کون انز ا کے یا ال 
ین یو ےک اید ےکی نٹ نکی انا ی ل کن کرت ےکوی فا ین ان لے ایک کی 
کہ پر دوس رےکو رک می ںکوئی فرق ٹیس ے اور ہر وکام چ کی کارت کے ہے نصا دہ ہو دالت اس سے ارح ے- جیما 
کہ جم نے بل بھی میا نک دیاے۔(ف ن م نے یا نکر دیا ےک ہمد یکر امت یکیو کود عو نے والا )اور لو ہار او رگیہوں نے 
والی ھی سےگھ کے کام میس نقصان آ ا ہے اس لے اہیے وگو ںک کی کان یل انا ےک مار کو صان سے جائزنہ 
وک( 
و :مت اچارہ ت ہو جانے کے بعد ز ن کا باک گے ہو سے در خت یا مکا کو ای 
حاالت ب سے د ےگ ٹوٹ بااکٹڑے مو سے ما یاد رخ ت کل تمت اد اکر رے اور خور 


'گلوابد لے ہدید ۳ے پلر "م 
الک ہاج EES A‏ کاٹ ا راہ ر لیدفاء اور ےکر 
a AN‏ رو کی ا 
موس جس کے تو کے جو دککرلی پل ےکردوسرے کے اتال شی دید ۱ 
ماک تفیل مو انل 


کرک موکری جس سے دو کو ںک کو کرد ر س کے ہیں لتر یکرنا۔ م وکر ی سے دع وے مو ےکی ڑو کو 
کور کر سلو یں یلزا 

وان سمى نوعا وقدرا معلوما يحمله على الدابة مثل ان يقول خمسة اقفزة حنطة فله ان يحمل ما هو مثل 
الحنطة فی الضرر او اقل كالشعير والسمسم لانه دخل تحت الاذن لعدم التفاوت او لكونه خيرا من الاولء 
وليس له ان يحمل ما هو اضر من الحنطة كالملح والحديد لانعدام الرضاء به» وان استاجرها لیحمل عليها قطنا 
سماه فلیس له ان يحمل علیها مثل وزنه حدیدا لانه رہما یکون اضر بالدابة فان الحدید یجتمع فى موّضع من 
ظهره والقطن ینبسط على ظهره» قال وان استاجرها لیر کبها فاردف معه رجلا فعطبت ضمن نصف قیمتھا ولا 
معتبر بالٹقلء لان الدابة قد يعقرها جھل الراکب الخفیف ویخف عليها ركوب الثقیل لعلمه بالفروسيةء ولان 
الآدمى غير موزون فلا یمکن معرفة الوزن فاعتبر عدد الراکب کعدد الجناة فى الجنايات. ' ٠'‏ 

تر جمہ:۔ قدو ری نے فرمایا ےک اور اکر ا کراہے وار نے معاطہ ع ےکرتے وتک لاد نے کے ل ےکوی خصو س چ اور 
کسوس مقار بیان کردی جو شل پاک با تر 7 شا ہن گیہوں لا نکر نے ہاو لگا فوا کو اعتیار م وک ا ےگیہوں کے 
بابر ایکون بی تیاغل جا کہوں کے ری الو کے کے برا ہوا س ےک مو یے کیال ورو می سب اس ی لاد کاچ 
کیک اچار ہش بھی داشل سے ای کہ جرابر ہون ےکی صورت می سکوکی فرقی یں چیا لے کہ ہے تووگ اموچ 
سے وزك س تر ا اک نقصا ن کم ے۔ الت ا یکر ایے دا رکو ىہ اختیار یں موک دیک کوک جر للادے جو زیادہ 
1 نتصان و ماف ذو ہو ےکہ ٹک اور لواو یر ۔کیدکمہ ان چو کی ز امت یاک سے ما سل نیس ہو لے( کرک 
جس رن مس یں نا نے گے کر اس میس شھک الا رک رک نپا جا فا کابو چ رگیہوں کے مقن اسب می بہت زیاددہوگا ای گے ہے 
گیا س ےکہ اک کوان کے پا با ےکا کہ ہجائۓ پیا نے کے اس کے وزان کے برا چو لادی چائیں فو چا یش ہوگا کیو نہ 
اکر وزك کے اظ ےکی نول اورک اوران برابر ہوگا کن جو اہۓے یلا وٹ اہول سے زیادہ ہوا جا ے کاک لے کہ گیا کے 
قیاس کے مطالقی مہ ہا یں ےمان تی الا ملا نے کہا ےکہ اس ساقاجائ سے او ری ول١‏ را 

وان استاجر ھا الخ اوراگر جافدراس سل کر سے پہلیاکہ اس پہ محدودوز نک رو لاد ےگا( شل مع )وا ںکوے 
افتیار نیس م واک اتتاتی لوہ اک بر لادے کوک بسااو قات لوپالادنے سے بہت زیاد لیف نے یک کہ لد وھ بر ایک بی 
کک پاد جا اور تھا چتاہے۔ کین اس کے کیا سے رول یہ بے کل ہا س( اور وز لادنے کے کم( عم م 
فی )نت بات ناب وی ےک اک جر کاو مھ کے دای جر کے مقاٹے میں زیادہ ٤و‏ تا ے)۔ قال: وان استجرھا الخ 
اوراکر چاو رکو موا ری کے ل ۓےکرایہ پر لیا پھر اہ سا مدکی کسی اور سکو بھی ر بٹھالیا بعد مس وہ جاور تی کک رگا و لوے لرا دار 
اس الورک آ ری تبت کا ضا مین ہو گا ای صورت می وز ن کا اعتزار میں ہوگا وکل 2 ی ل ا ا 
الورک پٹ ھکوزش کرد ی ہے اوقت ج بک دو سوا ری نہ جانا ہو انس کے بس جو سوا کی جات ہو ا کو چانور بر بڑھنا 
اور جانو رکا اسے ابی پیٹھ پر نے جانا آ سان ہو ےا اکر چہ ودوزن شی زیادہہو۔ال 2 ید 2 ےکا کہ وما آو یکاوزن 


لن البد اي جد یر r‏ ملام 
جچے9۔'۔ ے۔۔ م۔١ے۔-- ‏ ت 
نی کیا جا تاہے ٹن ا ںکاستالمہ اس کے وزان کے اقتا سے خی ںکیاجا ہے |جی ےک ہی مو کوز یب ا لکر یکی 
صورت یں ر مو ںی ندرا رکااغتپار ہو € ے۔(ف - رم نے یور تہ چٹ ا ا مار ای ا سکااعبار یں ےا 
طرج موچورو ستل میں“ دو آدمیو کی تعدادکا اقب رکیاگیاے ادر جرایک پآ ھی آو یر تم لاز مک یی اور ے معلوم ہو 
جا کار بے بن دالا پوراجوااننہ ہو بک بے ہو تاکر ووو ے میں پیٹ کے ایک بوچ کے عم میس ہے۔ ای 
لے اس کے وھ کے اندازے سے جج ان ہکا ضامین کد اس مہ لی بے خا نکی تراس لئ لا یگئی ےک اکر ا کرای 
دار نے اسے اپ نےکند ھے پاص رپ نٹھالیا چو تو جال رک پو ری گج ت کاضا ہک ہوگاءاگکر چہ یہ جافورالنادوخول کے وز نکواٹا ٣‏ ہو ٠‏ 
کک دن کے ایک تن ہدج ےل ےپ ےکی دل بویا ے نے الو لیف ارپ اک رک کے می کسی نے 
کیو کی مہ اد الادلیاہو۔م۔)۔ 

و ار ی ے دو رز ا با تم نکیا ےس کے لبر 

. س ای وز کا جو مک یلو لا دک گیا ا 
اج سا 2 ا موٹا یا بی ہکووی شما لیایا خود ا کنر سے یاس مر نٹھا 


لی _ بحر س وہ چا و رم مگیا سات لکیتفحصیل, م وکل : 

وان استاجرها لیحمل عليها مقدارا من الحنطة فحمل عليها اكثر منه فعطبت ضمن ما زاد الثقلء لانها 
عطبت بما هو ماذون فيأالمو غير ماذون فيه والسبب الثقل فانقسم عليهما الا اذا كرن جملا لا يطيقه مثل تلك 
الدابة فحينئذ يضمن كل قيمتها لعدم الاذن فيها اصلا لخحروجه عن العادة وان كبح الدابة بلجامها او ضربھا 
فعطبت ضمن عند ابی حنيفة وقالا لا يضمن "ذا فعل فعلا متعارفاء لان المتعارف مما یدخل تحت مطلق العقد 
فکان حاصلا باذنه فلا یضمنه ولابی حنيفة ان مس نو تہ دو اس سم ا 
فیقید بوصف السلامة کالمرور فی الطریق. 

ترجہ :۔ او راک کی چان رکوااس لے اار ہب یاک اس یہو لک ایک من عقدار( شلاپ من )لاد ای ال 
نے زیادولاددیاور دہ چافور لاک م وگیا ت نا زان بڑھایاے ای حاب سے دوضا من ہوگا۔(ہش ر طیلہ ووا تاوزن ا ٹھان ےکی طاقت 
ھی رکا ہو ) کی وک ہے جاور لیے اور ا بوچ سے لاک ماحل می ہچ یکی اچازت گی اور پچ ےکی اجازت نہ ی اور لاک 
ہو ن کی وج بوچ ےکی زیادٹی کی سے لپا سکاضمان دوفو ں قموں کے بو چے رر تم م وکا( ف مل بای نکیہو ں کر اے بے لیااور 
بے نکیہول لادد ہے نذا جس سے پا کی نذا جات تیاور اک م نک اجات د تی نر اس چان ری کل نے ےپ کے 
سے ہا کے ہن میں سے و ایک ع ےکا ضا کن ہوگااور با بای صو ں کا ضا ی نہ موگا)۔ الااذا کان الخ لبق اکر تابو 
لاددیا+ کہ ا لںکوایباچاور پاک نہیں ٹم سکم سے لوا زی صورت یں ا کیا لو ری ق ت کاضا من ہوگا اک وہ عادت سے ناضل 
مک سے ای بوجو لود ت ےکی جات اکل نیس پاک یی 

وان کبح الخ ااا ا کلام زور ےمان کے چا رگم و وا 
کے نز د یک یک امہ داراس چاو ہکی تم تکاضامکن م وگاور صا یلع کہا ےکآ راس نے عام دستور کے ہیا ان ایام اود 
وہ چاو رکاضا ن نہیں م وکاک وکل ا کے بر فور وت ونا ہوا الل نے انتا شی داف 
مون ہے لی لای اکر امش لگا نھن او را ںکومار :لی کی اجازت سے پایاگیا۔ اپا ںکاضا من نہ ہوگا۔ ہا ابام ال نیک دمل 
ےک ال کک طرف نے اجاز تکاودنا افو رک می کے شر کے ساتھ ہو تیر چ ]نی دہ جانور سے اب اکام لےگایااں 


یلہد اہے چد یر : ۵ے ہد تلم 
کے سا تھے ای اسلو کک ےگا جس سے جانور بھی کنو ظا ر ہے ۔ک وتک ایز برست ماراورز بر دس تکھھا کے اغیر بھی چلانا کن 
تھا اور اب اسے مار نایا کی گام چنا نوتیز چلا ےک غر ہو تاہے۔ اپ اا کا مو لکی اجا زت اس قیر کے سا تر مشیر ےک دہ 
تفوظطا رو جاۓ یی راستہ لے یس ہو جا ہے( ف شن تلام راستوں میں چلنا ہا تا ہے بش ریہ چلنا ملا تی کے سا تیم ہو اسی بنا پر 
کیک پگ نقصا نکرتے ہو سے کا ذددضامن ہو جا ےا)۔ ۱ - 
و :کی نے ایی چا کرای پلا اک اس پر شلا کول لادےء کرای پر جھ 
م نگیہوں (ادلیا۔ اور وہ چافور ھ رگیاءیا سوا رک کے لے چاو رکرایے پر لیا اور اس پر سوار. 
م وکراں 1 E‏ ا مم توالا بولا کی 
وان استاجرها الى الحيرة فجاوز بها الى القادسية ثم ردها الى الحيرة ثم نفقت فهو ضامن وكذلك 
العاريةء وقيل تاویل هذه المسألة اذا استاجرها ذاهبا لا جائیا لينتهى العقد بالوصول الى الحيرةء فلا يصير 
بالعود مردودا الى يد المالك معنی اما اذا استاجرها ذاهبا وجائيا يكون بمنزلة المودّع اذا خالف ثم عاد الى 
الوفاق وقیل الجواب مجرى على الاطلاقء والفرق ان المودع مامور بالحفظ مقصودا فبقی الامر بالحفظ بعد 
العود الى الوفاقء فحصل الرد الى يد نائب المالكء وفى الاجارۃ والعارية یصیر الحفظ مامورا به تبعا 
للاستعمال لا مقصودا فاذا انقطع الاستعمال لم يبق هو نائبا فلا يبرا بالعودء وهذا اصح. 
مہ ا او اکر رک ن ےکوفہ سے جر کک جانے کے کی انو رک ہکراۓ بے لیا کان تبرہ سے آ کے بڈ ھکر تمادسی تک 
چلاگیااور پھر دال سے تج رووائں نے آیااس کے بد دو چانو رع میا تو وماس جانو کاضا ”کن ہوگا۔ بی عم عار ید کے ستل میں بھی 
ہے۔(ف نا رکوہ سے تر کک جانے کے لئے انور عار یت پلا لان دہ رہ سے بڈ کر قاد سے کک چلاگیااور بچھرد ال سے 
تہ وایں آگیااور یہاں کر مکی ووہ ناس چاو رکاضامن ہ گا اگ وگنہ تر ہیک نے جانے کے ے ومان تاجن جب وہاں 
سے آ کے بڑ گیا تا نے ایک دک مو گی اجاد ماعا بی تک ال کیاکی لے دوطاصب اور ضا ہک ب کیا نان جب تر ود الیل 
چلا ی تاکر چہ خالفت م گنی ان وہ غات سے باہ نس ہوا ج بک ککہ باک کو چافور دائل ن ہککردے اور جب وای کر نے 
سے پیل جاندر م جاے ووو شف ا کا ضامن ہوگا۔ د 
وقیل تاویل الخ نف فقہا نے ہے رمیا کہ اس مل کی تاو بل ہے ےکہ اا یکراہے دار نے اس چا رکو مرف جا ےکک 
کے ےکر ایے پر لیا تادر نے کے لئ یں لیا تاا ی رت رو کک کک کر اس کے اچار وکا محاطہ ت م وکیا کن قاد ہہ سے ترہ 
لوٹ آنےۓ پر عکمآاور ”ی مال ککو جافور وای یکر نے والاۓ توا اپ اوہ ضا کی رہگیا۔ اور اکر ال نے نے اور چاے دوثوں 
راستوں کے ے جا فو ارہ پر لیا نودم ایی انتا رک حیثیت سے وکاک جب اس نے ات رککئے واےلے کے مع مکی تالف تک پر 
ا لکی موافقت پر آگیاتذاب وہ ات سے برک م گیا 0 
وقیل الجواب الخ ادر لچ فقہاء ن کہا کہ ىہ عم اطلاق پہ ہا ہے۔ ن ہر مال میس بی عم بان ےکک خواہ 
صرف جانے کے ےک امہ پر لیا ہویا آنے جانے دوفول کے ل ۓےکرابہ بر لیا ہو اور عار یت پر لیے وال ےکس پر تا کر ی 
یں ےا ذوتوں مسکوں بس فر کرک وج ہے س کہ عاد یت پر لے دالا قصدۂااور ص رات ]اس چان کی تفانل یکر نے بر 
امو داور مجپور ہے۔اں لے اس چک تک آجانے کے لخد جہاں پر یی کی بات کی ای کی تفاقت کا عم بان ر ےگا۔ اپ اا 
ایائ کا کے ماکک کے ناب کے پاک واب لوٹاد باب گیا اور اک وجہ سے وہ عنامت سے بک جو چات ے اور اچارواور عار ےکی 
صورت میں ا لکی تفاظت کا گم طبخااستعا ل کی وہ سے بائی رہ کان قصدۂا ہیں ر ی جب ا س کااستعال ت م وکیا وہک ککا 


گان الہر اے جد یڑ ٦ےا‏ ۱ جلر ۶2 


ناب نہر اک لئے رواپ ںآ ست ےک صصورت می بھی انت سے بکد ہوا بی ولا ے۔ 
قدا دترا ےکر باعار ین لیا 


کر ا پر تین زل کیک سوار م وکیا * کر وال سے دوس رک زل بر لاٹ آباء اور پال وه 
الور مگیا :اک لک یتفصیلءاقوال از ول یل 
ومن اکتری حمارا بسرج فنزع ذلك السرج واسرجه بسرج يسرج بمثله الحمر فلا ضمان عليهء لانه اذا 
کان يماثل الاول يتناوله اذن المالك» اذ لا فائدة فی التقييد بغیرہ الا اذا كان زائدا عليه فى الوزن فحینئذ يضمن 
الزيادة وان كان لا يسرج بمثله الحمر يضمن لانه لم يتناوله الاذن من جهته فصار مخالفا وان او كفه باکاف لا 
ي وكف بمثله الحمر يضمن لما قلنا فى السرجء وهذا اولیء > وان او كفه بائكاف يو كف بمثله الحمر ضمن عند 
ابی حنیفة وقالا يضمن بحسابه» لانه اذا كان يو كف بمثله الحمر كان هو والسرج سواءء فيكون المالك راضیا 
به الا اذا كان زائدا على السرج فى الوزنء فيضمن الزيادة لانه لم يرض بالزيادةء فصار كالزيادة فى الحمل 
المسمی اذا كانت من جنسہء ولابى حنيفة ان الاکاف لیس من جنس السرج لانه للحمل والسرج لل ركوب 


GS GEE E‏ سد مت 


له الحنطة. 

ترجہ :۔ اگ رکسی س نے ای گر ھا ز یں می یک را ے ر لی بر اسز نکو ا یکر ا سک چ کو السی زین کا کے 
07 ,و تب کی وچ سے اس پہ تان لازم ہیں HÎ‏ 
دوس رک ژر بھی تی زین کی ط رح ے۔اس لئ ىہ مھا جا اک اس تبد کی کی اجات ان کک طرف سے ما سل ے اس 
ےک کپ زین کے مات مق رک نے می کوقی فا ور لن تا ال در یرن کے نول وکس 
زیاد فی کاضا کک ٢وک‏ او اکر دوس زین ایک م وک ال یک دجو پر نیل ال چان ہے حب کرای دارا ںگد جھےکی پو ری تیت 


ضا وک کی کہ مال کک طرف سے اسے جس با تک اہازت ی اس میس ای زم شال ہیں ے۔ اس لئ اس تبد کی ا 


سے ال کک اجاز تک مخالفت ازم آت ۓےگی۔وان ا وکفہ الخ اور اگ رکرایے دار نے کی زین اتار لیے کے بعد الات لگا جیما 
گر ھوں ر کی لگایا جا تاذ اس کے پلاک ہو چا کیا رن ود اذا ا نکی قب تکاضاصن ہوگا۔ ای و لیل کی جطاء ج ہم 
پیل یا نکر گے ہیں دودیہ ہ کان زی نک 02 ۶ٰ0 
ای ضا کک ا کہ پالاك زین کے خلا ف ایک دو میں ے۔ 

"ات اوک الخ اور اکر ای نے کی زین اتا رک رگد ھے پ اییا لان لیا جیہ اک ےگ د عوں بے لایاجاتاے تز اہو یڈ ے 
ریک و ہمد ےکی پو ری تم ت کا ضا کے ہوگا ا وشن از دا ای رت و 
فا ا ( نض ناء کے ول کے سان بلاک جو ڑائی سی زیادہ می ہے ای چوڈا یک زیو خا 
امن ہوگا۔ اورپ دوسرے فقباء کے قول کے مطای الا لن مس وز بقنازیادہ ہو اہے اس اپار سے ضا کک مگ سب“( 28 
جب ہے پالات اییا ج ج وکر عوں یی بھی لیا اتا سے تو ے پالات ادد بی زین عم می دوٹول پر ابر ہو گے لپ ای کے مان ککو اس 
EEE‏ اک یی پالات ای زین سے وز ٹل زیادہ مو و ی زیادتی موی اک حاب سے ضا ہوگا 
کیو کہ الک اس زیادثی رای ٹیس ہو جا ہے۔ ا سکی مشال ایک موی کے لے ایک مقر وزن یا نکیا تھا لکن بور س ای ښک 


.٭ه وپ 


0 ۷ کے اعقبارے ضا کک م واک وک الاك ال زی نکی جٹل 


لن البد اے جد یڑ ۱ ےےا ۱ بل تشم 
کے غخلاف ے۔اوراام او یف کی د کل ىہ س ےک پالات کی طرح بھی زی نکی مج کی چ ےکی کہ پالات بد چھ لاد نے کے 
لے ایا جا سے کان زین آو یکو سوا رک نے کے ے مو ہے اس لے ٹس برل جان ےکا وجہ سے ضا کک م وکاک ط رخ مہ 
وج بھی ےکہ چاو رک پیٹ بر پالان ات سلتا کر زین اتی یں سکقی۔ لپا ےکر ایے داد زین برل د ےکی وج سے مال کک 
قالش کر نے وا ہو جا ےکا تی ےکو یکول لاد ےکی شر اکر نے کے اح د اس پر ادالاد دے۔(ف اس ط رح شر کی خخالشت 
ہ وگی۔ الا کہ ایی تاشت نتصالن دہ ہو کی ے جس سے جاو رکرلکایف ہو لی ے- ْ 
ارک نے ای کگمدھازبین سی کر ایے پر لیا۔ بعد شش ا کی زر نکی دوس رک ذبن 
اس پر اکر سوار مواد یازی نک جک پالات رک دیا ی کی وج ہے جافور پلاک ہوگیا۔ ما ی 
کی ایل مورک ۔ ) 
وان استاجر حمًالا لیحمل له طعاما فی طریق کذا فاخذ فی طريق غيره يسلكه الناس فهلك المتاع فلا 
ضمان عليه وان بلغ فله الاجرء وهذا اذا لم يكن بين الطريقين تفاوت لان عند ذلك التقييد غير مفيد اما اذا كان 
تفاوت يضمن لصحة التقييد فانه تقييد مفيد الا ان الظاهر عدم التفاوت اذا كان طريقا يسلكه الناس فلم يفصل 
وان كان طریقا لا يسلكه الناس فهلك ضمن لانه صح التقييد فصار مخالفا وان بلغ فله الاجر لانه ارتفع 
الخلاف معنی وان بقى صورة وان حمله فی البحر فيما يحمله الناس فى البر ضمن لفحش التفاوت بين البر 
والبحرء وان بلغ فله الاجر لحصول المقصود وارتفاع الخلاف معنی. 
ترجہ :۔ اگ ری نے ایی مال ن بوچھاٹھانے وا ےکواس ے مز دو رک بے کیک دہ می راریہ غل فلا رات ے فلاں 
مقام کک بپہچیادے کین ہے مال اس ن رات کے واک دوسرے ایی راتتے بے گی کے ال رات سے بھی لوگ 
آ ورش یکر ے ہیں لیکن یہ غل ضام وگیا تور اتکی تیر ب کی دجہ سے اس پر ضا لاذ م نی لآ ےک او رار مر دور نے امان 
اد ومز دور انی عردو ر یکا ن ہو ہا ۓگا۔ ہے عم اس صو رت شل ہے ج بکہ بیان کے ہو سے اور بد نے ہو ے دونول 
راستول کے ور میان آ یړ ور فت کے اققبار س ےکوکی فر نہ ہ وکوک ایک صو رت میس راست رکو می نکر دسینے ےکوی فا کہ کیل 
ہے ابتار اسک صو رت م وک ان دوفو ر استوں میں فرق ہو شلا: جن زا ایت ا یواک ہو کن ا 
سے د گیا وہ خط رک ہو فذ اس حالت یں مال ضا ہو جانے سے دہ ضا من ہو جات گا ا کہ ہے مھا جات گاکیہ ا کا قید کان 3 
ہے۔ اس ل کہ ایک قید کے سے مستاج کان کرہ متظور ے۔ الت اس صو رت ٹیل ج بک راستہ سے لوگو لکی یہ ہار ہو تو 
تام سکول فرق نہیں ے۔ ای لے عم میں مص ےکوی تفیل بیان ہیں رہ ہے( فتفصیل اس ریچ ےک 
رات خوت اک ویاځ ق اک نہ موب صرف یہ با تک یکہ الیار استہ سے جس میس ل وگو کی آ ور فت ا ے)۔ 
وان کان طریقًا الخ اور کس را ےے ے وہ مز دور گیا ے وہ الیباراستہ ہو چول وگول کے آ و ورف کار اتر ہو 
دوضا کن و جا ےگا کیو ایک صورت میں راس کو ی نکر جج معلوم ہوگا اس طرح یہ مدو رم کے الف م وکیا (ف 
یز دور ےا ہے متا کے عم کے خلا ف کا مکیالذ ادوضاصن ہوگا۔ ای لاگ مال ضا ہ گیا ہو فو اس پر تادان لازم آے 
کہ وان بلغ الیخاو رار مز دور نے خصو اور ن متا میک مال پچیادیالشنی ددمال ضا ہونے سے ایاتب وہای اجک 
کی ت وکیا ۔ کوک اب سکول اتلاف باق نہر اکر چ صو ر ا ختلاف بال سے۔( فک وکر مقص را سی میس یہ تاک ىہ غل 
اما کراب دار کک چک تک انا جا بت اے دہا ل کک ی جا اور کام اس مز دور ےکر وی ن مال پیادیا۔ اکر چہظاہر انس نے 
اخا کاک کہ ای کے با ہو ےرا سے سے ہیں ےک رگیابللہ دوسرے راتتے سے ےک رگیا)۔ وان حمله فی البحر 


> لالد اے جرب ۸ےا لا تشم 
الخ اور اکر ای ما کووہ نھ ریاد ریا کے راتے سے لایاحال کک لوگ عموماوڑی چ کو یی کے راےے لے یں کے 
ہلا اک ہو نے سے ضا ہو جا ےگا L1‏ کہ نگ اور تر ی کے ووراستوں میں بہت نیادہ فرت ے۔ وان بلغ الخ اورا 1 ل٣ک‏ 
نپ دیا وای صورت میں بھی دہع دور ایی ار تکا جن ہو جا ےکی وک ووا سے مقص کک ۶ تک کیا ور ا ل مقصر سکول 
اختلاف باق ۷ں را رف ازع ورت بھی اہر اانتلاف باق ر گیا ے کوک ستل ہے فر لک امیا تھاکہ ماک نے اس 
الکو خی کے راتتے سے ان کا گم دیاتھا ینا نے اس کے خلاف 0 709 ب( 

و :ا کک نے ایک مز دور ا لے مز دوریم لباک ووا کات وص راستہ سے 

خصو کیشر :و :لے کر وومر رورا ال ورور ہے این نت کیا 7 وال 

پلاک ہہ گیا 7ب با دبا 2.0 ص000 


لےگیاء ریا قمال بلاک م وکیا بسلا مت تیاده مات یتیل م ول حل_ . 
ومن استاجر ارضا ليزرعها حنطة فزرعها رطبة ضمن ما نقصها لان الرطاب اضر بالارض من الحنطة 
لانتشار عروقها فيها و كثرة الحاجة الى سقيها فكان خلافا الى شر فيضمن ما نقصهاء ولا اجر له لانه غاصب 
للارض على ما قررناه. 
ترجہ :۔ اورا ری نے زین گرا ب لیف دقت ‏ ےکہہ دیاتھاکہ اس می لگہہو ں کی کی یکر ےک لیکن اس ز مین می سگیہوں 
یھی کے ہجاۓ پک مو نے وٹ ور خت او کے د تب اس ز می نکوجو ہے نقصان ےگا دہا ںکاضا کن ہوگا۔ اف رط 
گندن۔ اور شای نے اقل کیا کہ رطبہ سے مرا دک را گگڑی بمکن وٹیر ہیں ن ا 5 گی تکار لوں اد رکھان ےک چر لا 
رط کے ہیں۔ اب کر معالہ ے رق تو( رھ الوم ںوت وی ے تتصا نک ضا ن ہو گا نی جو 
ارت ٹے پا ی پی تی وود اک ےگا کن ای ط رح ا سک یکاشت ۓ بس نقصا نکااند از کیا جا ۓےگاودا تاد اگ ےگا)۔ 
لان الرطاب الخ کی وک جو چ زیی ر طب ہلان ہیں د ہو سے (یادوز شی نکو نقصان انی ہی ں کی وکمہالن جن و نکی جڑیی 
کچھ دور سی کیل انی یں اور ا نکوزیادہ جا( سیر اب )کر ےک ضرورت مول ہے۔(ف اس لے تر کی زیر کی وج ے 
زی نکی قو تک ہو جا ہے ادرا نکی یں ی کر ہر طرف سے زم نکی قوت چو لتق ہیں بیس جب اس نے کیہوں ہو ےکی 
شراک تی کیہوں کے ماس واکوئی نز بھی اس ٹس ہونے سے اس کی تاشت موی - ید یکنا پا کہ بظاہر الت ہونے کے 
پاوجودااس سے زک نآو قادو ہے با قان ےک وک دوعالتول سے خالی یں یا لے چ یہو کے مقا لے میس زین کے ےکم 
ادلاد شان اب اکر ایک چو جس س ےکیہوں کے ماب یں مان کی ز۴ نک ہکم تمان ہو تن کے 
اک کک وکوکی نقصان ٹنیس بک فا دوہی ے۔ اس ےکاخ رلک چ کاضامن نی ہوگا ۔اوراکر ایک یز مو جس ےگ ہوں کے 
متالے میں زیادہ صاع ہو۔ تو ز من کے اک کی ملف یکر نے سے دوضا من موی کی کہ اا کی وجہ ے زک نکوزیادہ نتصان 
واج( 
فکان خلاف الخ لھڈا اس تاشت سے برال اور صن پیا ہار اہے۔(ف ی ایی تالت سے ز جن کے مال کک ااور 
نتصان ہو اے۔ لب اا نے جتنا بے بھی زی کو نتصان E‏ پک کر اہ نیل لگا 
لان غاصب ال مک کک ےکرایے ارال صورت شی زی نکاناصب ہو کیا یی ےک ہم پیل دا ت کر کے ہیں اف نتن ایی ہیں 
از کی عق ۓ متصالنادہ تال تکرنے سے اجار ہ کے معام پولا ٹنیس پاب کے صرف خاصب ب گیا ا موا کے 
دق تکیہوں لان ےک بات ی ۔ اور نامب پراججرت یس پک وان لازم ۹ے ٠‏ 


ین البد اہ جد یڑ ۹ےا _ بل اش ۱ 
:ا کی نے اسیک زی نکایہ پر سے ہو سے ی کہ یا تھاکہ ای لکیہ کی میتی 
کرو لگا کر ین وقت پر ہجام ۓگیہو کہ رطبہ ( ن سو نے چا ے با دے لگاد یئک 
بعد میں زی نکو پھے فمتصان ہ ومگیاء مال 27 انیل وں ا کرام +د لال ءرطبہ 
٠‏ ومن دقع الى خیّاط ثوبا ليخيطه قمیصا بدرهم فخاطۂ قباء فان شاء ضمنه قيمة الثوب وان شاء اخذ القباء 
واعطاہ اجر مثله ولا يجاوز به درھماء قیل معناه القرطق الذى هو ذو طاق واحد لانه یستعمل استعمال القباءء 
وقیل هو مجرى على اطلاقه لانهما یتقاربان فى المنفعة وعن ابی حنيفة انه يضمّن من غير خيار ولان القباء 
خلاف جنس القميص ووجه الظاهر انه قميض من وجه لانه يشد وسطه وینتفع به انتفاع القمیصء فجاء ت ` 
الموافقة والمخالفة فيميل الى اى الجهتين شاء الا انه يجب اجر المثل لقصور جهة الموافقة ولا يجاوز به 
الدرهم المسمى كما هو الحكم فی سائر الاجارات الفاسدة على ما نبينه فی بابه ان شاء الله تعالل. ولو خاطبه 
سراویل وقد امر بالقباء قیل يضمن من غير خیارء للتفاوت فى المنفعةء والاصح انه يخير للاتحاد فى اصل 
المنفعة وصار کما اذا امر بضرب طست من شبه فضرب منه کوزا فانه يخير کذا هذا. ۱ 
ry‏ نے درز ی لراک ادا وواک درم کے ایی ممیت لس یکر نے لقن لاس نے ا کی ےکا ۱ 
کش کے ہجاۓ قبا ی دی توک ککواخقیار ہوک الہ دہ چا ے تود رذ کے اپ نے پٹڑ ےک قبت وصو لک نے۔(ف کین اس 
تہ تک وصول ے بعرورڑی با کا مالک ہو جا ےگا ۔ اود اکر اے تود ر زک سے تام لے نے اور ا یکی قا مکی سلا جو بازار 
میں ہو کن ہو کر ایک ور تم سے زیادہ نہ مووا ےد ےوے_ جم مشا نے رمیا ےک ای جک فا ے مرادایباگر ع ے 
ج ایک تج ہکاہو جا ےک کلہم یکر قب کی ج ہے استھا لکیاچاجاہے۔ او تح مشا نے فرایاس ےکہ ہے لفظ تام کا بی رہ ےکا 
کی وک قب اور بیش ىف کے لیاط سے دوفو ہی ترک تریب ںاور اام ابو علیہ ردایت ہ کہ ماک ککو تاوان لے کے سوااور 
کوئی دوس رااخقیار یں ےکی وک قب مکی می کی تالف جٹس ہے۔(ف اور ای یم ہو کی خاش کی وچ سے اسے فاب ۔ 
کہاجات ےگا لغ امن کک اس سے صرف وان :ی وصول کر کاانخیار ہوگا۔ معلوم ہو نا چا ےکہ عوام یس فا دو ہہ لے 
اور بھی ْ وولول کے در میا کی اور چ کا بج راو بھی ہو جاے اور ارس وو یل کے تالف ہے ۔ اتی ے واد ری اس ردا یت 
یں قا کو بی کے خخالف ٹس قراردیاے۔او رکتاب می جو تلاپ رالر وا یی زک کی سے اس میں خلاف مس ہوا نیس بے ورنہ 
تادان کے سوا ےکوئی دوس ااخیارنہ ہو جاای لئے نف مشا نے ہا پر قباس ےکر حدم راد لیا ےکی ھکل ہاگ کر نہ کے مہا 
گے ج ےکو ورای ا کک دیاہاے اوہ بور اتیاء ہو پاتا ے۔ او رض فتہا ےکا ےک فی اور قاع نع ہے با ے دونوں ہی 
ایک گنس کے ہیں کی وک نبا اور ونی شن یں او ری اور دا ہو جاے۔ کر ل اروت نین مان ری 
فراعم او یناب کل غلاف ٹس یں ے )۔ ۱ 
_. ووجه ظاهر الخ از ار اوا کوچ ےا ا اھ ے کک کے ال کی کے کن وور یر ت 
بھی فی شی ےکی کہ ال کے در میا ع ےکو اثر ہگ راس ے یں کی طرح ٹن انٹھاتے ہیں۔ اس لے تہاء بتار ےے سے در زی 
سے ال کک م رص یک مر افعت اور خالفت دوتو لپا ی ہیں۔ ای لے ےکپٹڑے کے مال فکوبیہ اقیارہہوگاکہ ا کی دونوں صور تول 
میں ے جس صور تکوچاے تو لکر نے سن حخالفت بے توا سک قب تکاتاوان نے نے او اکر ان گم سے موا فی کے تو 
ال سے تاع نےکر ا واچ ت دے دے۔ لیکن واج ل کا عفن ہ ماک وک موافققت کے لیاط سے اس کے گم می کو جیپ 


کالہ اے جد یھ ۸۰ لر “م 
کی ین ا سکی لو ری مواقت یں یکی اور اج ل ایک در تم ے زیادەنہ ہو خیماکہ ییا نگیاگیاے۔اور جیما اد ور ے 
اس اپار وں یش کم بھی ے۔ ای لے م انشاءالشر اجار فاسدہ کے پاب مس شق ریب یا نکر یں ے۔( ف ا سکام صل کے 
کہ جواجرت لے سے لے ہوچی ہے اور وہ تپا کے اج شی ےکم ہو و مقررواجرت سے بڑھ اکر دیا جا ۓےگاار اکر مرو 
اوتا رن ہار ونار گل بازیت ے0 توان دووں صور ول میں زیادواجمت ہیں ےکی بن 
ابی اجرت ےی ج لے وی تھی پک وکل دو خود اک عق ارہ پھلے رای ہو چکاتھا)۔ 
ولوخاطه الخ راکرد ری نے ا ںکپڑڑ ےکای اجام کی دی ھان کک مالک ئے سے تا سے کے کہا تھا و امیا کہ 
: الک اس درز ی سے تاوالت نے سکماے او رکپڑرا ےکر مر دو کے کااسے افقیار ٹنیس موک کی وک ق بپاء۶اوریاچامہ کے استمال اور 
می بہت فرق ہے۔والاصح الخ ادرا میں عم ىہ سپ کہ مالک کوان دونوں پاتڑں کا خیال ہوگا تشن اکر اے تود رز سے 
اپ نے پٹ ےکا اوا نے نے ای س ےڑا ےکر اس کی سلا یکا اہ لیکو اچ مل دے دے۔ کیو یں صلی ےکی ون 
ری متحد ہیں ]شی رونوں ہی چ ری لہا ی ہیں اور دو ٹول ہی سے ایک ط رح ے مت اوی موی ہے۔ ا سک مثال ایی ہو جات ےک 
یی اک ہی نے کا رم رکوانا تہ دس ےکر اسے طشت بنان ےکا عم دی تا ن ا کا کر نے الس تاس ےک رکوہ( پال )اوی ای 
صورت میل مالک نی شیا زگ کہ دہ تاوا نے نے با کہ پال ےکر ا کو اس کا مم دے دے۔ اک راس ستل می 
بھی ان ککواختار ہوگا۔ فک او راگ راجرت 2 لے اپھی واوا اواس کے اج مل اس کے مق رر ہے زیادہ نیس دیاجا گا 


£ :اگ کی نے درز کو ای راد کہ ایک درم کے عو اس کے لے ایک 
تسین اک ےی کنا کے می کے خباءیاپاجامہ تی رک کے دیاہ مال 


فصل عحم ۸ا قوال ا بولک _ 
الق رط :ہے ( ایی ہی )کر کامعرب ے۔ جے کی یسک جل کے ہیں۔ 
باب الاجارة الفاسدة ۱ 
قال الاجارة ت تفسدها الشروط كما تفنسد البیع لانه بمنزلته الا تری انه عقد يقال ويفسخ والواجب فى 
الاجارۃ الفاسندة اجرة المثل لا يجاوز به المسمى» وقال زفر والشافعى: يجب بالغا ما بلغ اعتبارا ببيع الاعیانء 
ولنا ان المنافع لا تتقوم بنفسها بل بالعقد لحاجة الناس» فيكتفى بالضرورة فى الصحيح منها الا ان الفاسد تبع له 
فيعتبر ما یجعل بدلا فى الصحيح عاذة لكنهما اذا اتفقا على مقدار فى الفاسد فقد اسقطا الزيادة واذا نقص اجر 
aS‏ الموجب الاصلی فان 
صحت التسمية انتقل عنە والا فلا. 
رھ باب۔اجارہذاہدہکایانا 
قال الاجارة الخ فر در نے فرماا ےک اجارواییامعالمہ ے ` 0 اشر ہیں فا دکرد تی ہیں تی ےک کو فاد 
کن ہیں کوک اجارہ بھی تن کے عم میں کے ۶ نہیں کے ہ وک اجار ہکا بھی اقالہ اور کیا جاتا ے۔والواجب فی 
الاجارة الخ اجارہقاسد وش اجر لی داجب ہو۲ سے ج ان کول مقدار سے زیارہ یں دیاجاڑے۔امام ای وز کے 
فبا یا ےک اج شل سے کو حد ہیں ےکیوکلہ بقتا بھی اج تل ہو کے دہ سب واب ہو جاجاہے کی بھی جن کے کر 
تا کے ہوے۔(ف لن جی کسی عین سے کے قروشت می چو بھی ا کادام ہو کے دو سب داجب ہو جا سے لا کرس 


جن البد اے جد یا ۸ جار شم 
EEE‏ اکر چہ دہ ئ فاس دی واک طر اکر مکالن کے مناخ فروشت کے مایا 
یکو مکان کراب پردیاجائے اوا کاپ راک ریہ اجب ہوا اک چ دہاچارہ فاد تی )_ 

ولنا ان منافع الخ ادر ھار ید ل ىہ ےکر من کا ج ہوناخود متاح کے ذات میس نیس ے بک عظقد اجار و کے ذر ہے 
وگو کی ضرور تک اوج سے ہو ج ے اس کے عقر وشل توضرورت ر اکنا ءکیاہا ےگا لیکن عقد فاسد ہو نے میں ایا 
یں مو تا اور فاسد بھی ی کے ا ہو جاہے۔ اس لئے جو چر اچاروٹش وتاک چ کے برل مال جائی ے۔ وی اہارہ 
اد ویش بھی مت موی الہ اکر فریقین فاسد اجار وش ات ما ئن نکیا پا ان نے این کے 
زیادہ اج کو کروی ے۔ ای لے جو اججرت بیان کا E TS‏ 1 اکی وکر فل بات سے مو ے۔ 
لاف 7 ود دیا یات سے مھت بول سے اور جو چا سل یں واجب ورو بھی تمت سے اب گر وولو کی 

متفقہ بات جع ہو قذ اس صورت میں ب پازارو تمت سے تح نکی ہوئی قبس کی طرف شل ہومگا ور تہیں_' 
۱ تس ہے تت2 ےا 
کا سل مال کن ہو تا ے اور اصلل مال خوداہۓے طور بر مت ہو جا سے لپا صل تی کا تقاضایے کہ می فا ار 
دونولں نے پازار و تست کے علاوہ اور مقار یراتا راودو عقت ہون ےکی صورت می ول اون جم 
واجب ہوجاےگااوراکر عقر کان مون بج قاس ہو تووتی اصل تمت داجب ر ےگ ۔ ا لک وج ہے ےکہ ال مال ودای 
زات ے سادا اہم فرقہادش اسی فر وت نیس ہوثی بک اس کے مزا ڈ ٹروشخت 
وو یں جب کے ناش کی کے ذات کے لیا سے ق بوتے ہیں بللہ ا رکو ںکی ضرور ےھ انقرار ے شر پیت نے موا کو : 
حرتے  E‏ ہار نے رات 6ز 
وجو پھے اہول نے ہے ےکر لیا ہوا سکااختبار نیش ے۔ بک جو تمت ہو وی ام ہو گی جس مق رار بردونوں فن ہو کے 
مول دال پر رضا من رک پیل سے موجود کے گرب عقر وج تو اتی شس پر دونو لکی رضامت ھک پل سے ے۔ اور 
جوک احاروفاسد کو جن اجار و قال کیا جا تاہے اس لے اس صورت یس بھی ا نکی سے شد مق د١‏ ۔ے زیادہا یں نہیں سیر 
ا سے بات خابت موک یک اکا کی ہو ود دی نے گا درنہ سے شدوے یہ یں ےکا 
۲ :ہاب اجارہفاسد+کابیان۔ ا سکی آم فاقوالا مد لا ی 

ومن استاجر دارا كل شهر بدرهم فالعقد صحیح فى شهر واحد فاسد فی بقیة الشھور الا ان يسمى جملة 
الشهور معلومةء لان الاصل ان كلمة کل اذا دخلت فیما لا نهاية له تتصرف الى الواحد لتعذر العمل باليوم 
وکان الشهر الواحد معلوما فصح العقد فيه واذا تم کان لكل واحد منھما ان ينقض الأجارة لانتهاء العقد 
الصحيح فلو سمى جملة شهور معلومة جاز لان المدة صارت معلومة قال فان سكن ساعة من الشهر الثانى 
صح العقد فيه وليس للمواجر ان يُخرجه الى ان ينقضى وكذلك کل شھر سکن فی اولهء لانه تم العقد 
بتراضیھما بالسکنی فی الشهر الٹانیٰ الا ان الذى ذكره فى الکتاب هو القياس وقد مال اليه بعض المشائخ 
وظاهر الرواية ان يبقى الخیار لکل واحد منھما فی الليلة الاولی من الشھر الثانى ويومها لان فى اعتبار الاول 
بعض الحرج 

رھ : E DE TR EE EE‏ 
اور اتی ہینوں کے لے فاسد ہوک لیکن اکر بای می یکو بھی معلوم طریے سے بیا نکردے تو جاک ہوگا۔ لان الاصل الخ يوک 


کل الہد اے چد یھ IAF‏ لر“ م 
لفت( )کی مہب ری میس لفت( گل 1ے بی ج با ایک چنز بر داخل ہو ج سک انچ معلوم نہ ہو ت2ا ںکو صر ایک 
. کے لے ی نکیاچاج ےکی کہ سب پر عم لکرن کن ہیں ہے اس چ ایک ہی او معلوم سے اس لئے اس وت کے لئ و 
موا جنوگ ا مین کے لو رامو جانے کے بعد دو نو بیس سے م رای ککواخقیار م وکاک اجار: کے معامل ہک مکمردے کی وکل 
جح موا مہ (اجارہ)” م وگیا۔ اس کے بعد مر اکر ووبقیہ ھی ہکواس ط رع با کرد ےک بق مین معلوم ہو چائیں تب دہاچارہ 
جات ہو جا ےگا کی وکل اس طر کل برت معلوم ہو جال ۓےگیا۔ 
قال فان سکن الخ ققدودر نے فرمایا کہ اکر پل سک میس ایک مہونہگزرنے کے بعد دوسرے یی سے بھی ایک 
ھی اس مکان یش دادور ے مین سے لق بھی اہارہ E‏ ینیم ایک مکا کے انخقیار نیس ہوک 
گان ف کے مم نے سے لے کن نان نے کال دے۔ اک طط ر بے سے آ یرہ رای مین مس ج ےھ 2 
م کرای دار نے سوہ یکر لی حن تھوڑی و ےر وگیاا کا بھی بچی م سے کک کک دوسرے تیل یش بھی تو یاد ےرہ جانے ب 
رولوں i‏ آ یں کی ر ضا مندکی سے وہ عقد لو رام وگیا کین اس من میں جو اف ای کگکھٹ یکا ذک کی گیا ے وی تی ای سے اور 
شض مشا کاک طز فر نے کن ارال ول کہ دوسرے می کی کی رات ادر پیل دن دوخوں دہش سے ہ راک 
کواجارو کرد ےکااخزیار ہ گا اکلہ ایک ی گی ےی کااتتپا رک نے سے بے راح ۶ رن پیا جا تاے۔ 
رم رایت نے کان کت کے کا مات ا گر 
اک مور ت میں ایک ماد ای مکالن یس ر کر دوس رے اہی میس جیا د سید گیا ا 
وروی یل کی سمال می ل ری ل ذک کر ےک اون اور اعد ہ یک ھکھٹر یکا 
س01 
07 ص/6 0" 
التقسیم فصار كاجارة شهر واحد فانه جائز وان لم يبين قسط کل يوم ثم يعتبر ابتداء المدة مما سمی وان لم 
- يسم ینا فهو من الوقت الذى استاجره لان الاوقات كلها فى حق الاجارة على السواءء فاشبه اليمين بخلاف 
الصوم لان الليالى ليست بمحل لهء ثم ان كان العقد حين يهل الهلال فشهور السنة كلها بالاهلةء لانها هى 
الاصلء وان كان فی اثناء الشهر فالکل بالايام عند ابی حنيفة وهو رواية عن ابی يوسف» وعند محمد وهو رواية 
عن ابی یوسف الاول بالايام والباقی بالاهلة لان الایام يصار اليها ضرورة وهى فى الاول منهاء وله انه متى تم 
الاول بالایام ابتداء الثانى بالايام ضرورة فھکذا الى آخر السنةء ونظيره العدةء وقد مر فی الطلاق. 
رہ . اوراگ کی نے دس در م کے عو ایک ہکان ایک سال کے سل کرای لاق بھی چا اکر چہ ا یں ہر 
مین ےکر ایے با ہر مین کی قط بیان ن کی ہو کی وک کو ورڈ ت معلوم ہو ری سے لو ہے ایہا م وکیا جیسے ہر د نکی 
ا۶ ت بیالن کے ای رایک ہے کے لے اج ت پر لاجا ے۔ ثم یعتبر الخ بر اام تک ابت راک سے شار موی ج سی وووں 
نے تر کر تی اکر ا مون نک ےکوکی رت بان کیا ود پان مر کی ابق رای دقت ‏ شا رہوگ ۔ جب سے اجار ہکا معاملہ 
کیا ےکی ومک ک۱ ہہ کے من میں سمارے او قات باب میں لا بی عم مم کے مشابہ ہوگیا ٤‏ 
وغل نیس ہوئی ہیں۔ (ف یی ملا اک کی نے مس کو یک میس خلا کی سے بات تی ںکروں گا و می کا شر ا اوت ے 
شرور ہو جا ےک ںوت اس نے مکھائی ہے ۔کی کک م کے معام یل سارے می برای ہیں لباوت ای نے م 
ہے دی سر ےک ۔ااس کے بر خلا ف اکر اس نے نذہ ما کہ بے بے ایک تی کے روزے 


تادا جیه ۸۳ ٦‏ بشع 
واجب ہول گے توور اا یوقت سے ہی کاش رو ہو ناض رور ی یں ہے ۔کی وک روزہ کے میا ن او ے اقات با رین 
ہوتے ہیں۔اسی لے رات ٹیس روزہ کیل رکھاجا تام )۔ ۱ 
ٹم ان کان الخ راہ ہہ اجار ہکا معا لہ اس وت ہو اہو ج بکہ چا ند للا ہو شش چا تر را کو معا بل ہے پیا مو تو رال کے 
آ دہ تام یتو ں کا ساب چان ہی سے م وگ ۔کی وککہ مکی اصل ے۔وان کان الخ ن اکر معارلہ نے کے در میانے ونوں میں 
سبلاو شی چاند رات سے نیل بللہ ینہ کے در میا نکسی جار سے مواہو فآ تتو تام ”بیو کا ماب رفول تی کے حاب 
سے وگ اور ہے تم امام ابو ع کے نزو کیک ہے۔او رام الولو ست ے کی کسی روات ے۔ کن اام کے ر یی ج کہ اام 
ایوس تک دوس ر کر دات ہ کہ پہلا ہیی تو نول سے شا رکپاجا ےکا کن بای بے چان سے کی غار ہو ک ےکی وک ونو سے 
صا بکر ناض رور اور وراو جاے ج وک صرف پیل مین یں م مو جانا ہے۔ ْ 
ولھ انه الخ اور الام ابو عنی کی د ل ہے ےکہ جب پہلا پیٹ دفوں کے حماب سے پور امو دوس را ہی بھی لا ھال ونوں 
سے می ش رو ہوگااوراسی ط رح آخرسال تک چلنار گا( ف اور صا شی کے خزدیک مکل می ہک کی تیر ہو یس تیل سے بی ری 
جا گیا اور ور میا نے تہ چا ند سے شار کے ہا یں AA‏ نظيرة العدة الخ اس ستل ہکی تیر مر تک ستل ے ج تاب اطراں 
می ںگزر چا سے( کاب الطوا کی ابتداء یش ج کور ےک اکر طلا جا ندرا تکووائ ہو کی ہو فو گنو لک عد تکاشمار چا سے ۱ 
گ۔اورالر ہین کے در میا کی جار وس طلاق وات مو و کل جدائی ہد نے کے پار ے مل دنو ے عر تکار م وگ پر : 
عات لو رک ہو نے کے بارےامام الو عفیےہ کے زر وی بچی م سے مین صا حن کے دیک یی ہی ہک یکھ یکو آخ سے بو راک 
جاۓگا۔اوردر مال ینو ںکو چا نے شا رکیاجا ےگا۔ 1 
و :ا کی نے وس و رتم کے عو ایی سال کے ے ایی کا نکرامہ لان پر 
ہر کا صاب ہیں بناباء بر ہیک تار ی وف سے او رس وبا جار سے وگ 
ما یکی ضعبل عم ءا قوال اع ور ل ۱ 
قال ويجوز اخذ اجرة الحمام والحجام فاما الحمام فلتعارف الناس ولم يعتبر الجهالة لاجماع 
المسلمینء قال عليه السلام ما رآه المسلمون حسنا فهو عند الله حسن, واما الحجام فلما روى انه عليه السلام 
احتجم واعطى الحجام الاجرةء ولانه استيجار على عمل معلوم باجر معلوم فيقع جائزا. 
ترجہ :۔ قدو ری نے فرمایا ےک حما مکی اج ت یناور یھنا لگا ن ےکی اج ت بناجا کڈ ہے۔حما مکی اج ت تول وگوں کے عام 
تقار فک وجہ سے جا ے اور ای کے چائل ہو ےےکااعتہار یں ےکی وکل ای مر اراو لککااجما بح م وکیا ے۔ اور ر سول ال 
نے فر مایا ےک س کا مکو سلرانوں نے ایا اوہ الہ کے م وی بھی امام وگااور ھن گان نذاس د کل سے چا ےک ر سول 
ا سے روک ےک آپ نے خودپپکچناللوایااورحجا مکو ا کی اجر ست دی اور اید کل سے کیک بنا لان ایک جانا انام ے 
اورا کی اجر ت کی جائی پیا اوراجارہ ہے لہ ذا ےکم جائز ہوگا۔ (ف متلوم موتا جا کہ حمام کے بار ے یں عام کا ا ختلاف 
ے۔ ایک برای یس چت عر یں موجود ہیں اک وج سے ٹن علماءونے حما مکی اج ت رام قرار دک ہے اور امام اعم سے کی 
روایت ‏ کہ ما مکی اجر ت ہا ہیں ے اور تضول نے مردانہ مام اور زنانہ مام کے در مان فر قکیاے۔ لین عام لاء کے 
نزدیک تبات ہے س ےک دونوں تم کے مام بنانے مم يکوکی مضا تہ کد ےک وکل عور نو ںکو بھی نیش ونای و یرہ سے 
ہا ےکی ضرورت بی اور ای کے رام ہون ےکا وچ یہ سب کہ سب کے مراع کیہ وکر ٹھان۔ اور اکر رد ھکر لیا یڑا 
باند “لاق اس ش لکوئی رع ٹیش ے۔ ای رس ےکرایہ ٹیس کی دکالن اد مکا نکی رکو رس لے 


تن الہد ابے جد یر IAT‏ بل ر“ 


نس علاء ن ےکسا کہ ناچا و ےکا دج ىہ ےک عام و نرہ سمس ماپا خر کیاجا تاس ا یکی قر ار ھول ہے اب 
اکر مام نان اہ ہو تو اس می بول ہو ےکی دجہ سے ا لکااحجادہ ھی جائمزنہ ہوگا۔ مصتف نے ا ںکاجو اب دیا ےک قا سی 
ات اے لان چک عام وگو کا سے تارف اورا ی پر گل در آم ہے اورای پ سی ا ار اور چو وچ اکے اش ل ہار کے 
نایا سی وی مرن موک یکی وک عواممکاتعائل اور عمدر آید قا کی پر مقدم ہو تا ےکی کہ تیل ملمانول پر اجار ہو جااے۔ 
پھر مصنف نے ا د تو کی د مل میس رما ےکہ فرمان ر سول س کہ مسلمانوں نے جس چ کو اتر جاناددانل تدای کے نز دک 
ھی مت ہے۔ لان یہاں پر دو ط رح سے نف زے۔ لے تق نک رک جاگے۔اول عد یت دوم می حد یث ( ]شک یہ عد بیث ‏ ےک 
کں۔ ب رار صد یش سے ڑا کا ہو م کیا ے )۔ یمر ہوکی باتک ن ہے ےکہ زک یاو رپ دوسروں ت 
عد یٹ نی گی ے لہ ىہ نو حخرت کر اڈ بین حو یکلام ہے۔ ۲ جح 
ابع بد اباد گی نے فر ایا ےک ہے عد یٹ حطر ت ال سے مر فوطار وای تک گنی سے لسن ا کی اسناد نیس ہے۔ انس ناء ہے 
مر یت مو توف خابت ہو گی الفاظ ہہ ہیں قال احمدٴ جدثنا ابوبکر بن عیاش حدثنا عاصمٴ عن زراعن عبداللہ قال ان 
اللہ نظر الخ۔ ست عبر اٹہ ین وڈ ن فرمایا ےکہ اللہ تیال نے مم کے قلب پر نظ رکے بعد بنروں کے داو ںکی طزف نظر 
ہا تور سول اللہ کے اتاب کے دلو کو ہت یایا۔ اس لئ النال وگو ںکواپنے نہ رکاوز ہے بنا کی کک یہ لوگ النا کے د من بہ چھاد 
کے ں۔ یں بس چ کو لانو نے کر جانا وال تھا کے نز دیک بھی بہت ہے_ اور بس چ رکوا نل وگول نے بر اسجاناوہ الد 
کے نز ویک بھی بی ہے۔(امر)۔ اور کاب ہکرام نے شف ہ وکر حضرت ال وہل کو خلیفہ بنانا بتر جانا( اکم او اہول نے اس 
حر بی ٹکو 30 اکھاے)۔ مرا عد یٹ کوامام الو کر الیز ار نے مرن اور کی نے پش یں او راو شی نے علیہ میں اور الو داد 
اطی ای نے من میں اور طبر ا نے کم ٹس ر وای تکیاہے۔۔اور ا کی اسناد سن کے در چس ےکم تر کے مح۔ 
چرچ کیہ ہے انا ہے معاطلات بیس سے نس میس تیا اوداجما دک کوک ی و غل میں ےک کہ ىہ امر وی کے خر معلوم نہیں 
ہو کے لیا عم مل بے مر فوع کے ہے۔ اب اس مٹس کن کے اط سے دوس رک بت اس رح ےک حضو رکا ہے فربانامار آہ 
المسلمونے۔اور دور کر وات ٹل ےء مار آہ المومنون یں المسلمون یا المومنونے عومایا گل مم لے 
استرات ے یا بود ے۔ اور ان اصول فقبہ میں ہے بات معلوم ہو یکی س کہ مود بقیہ چول پر مقدم ہو جا ہے۔ اپ زا ای 
روایت لے فاص سکاب ہکرام مراد ہو ے اور صد یٹ کی عپار تکاسیاقی کی نی ہے اور دا ری ویر ہک چک روایتوں ٹیل ضرت 
این حو ے صرادیۂ ہے روایت منقول سے اور ای طرںح اران مو معن ہو نے م با کی ر ل الد عزو لکا قول سے اور ہے بات 
ر سول الرے منوس سے۔اس ط رر مد یٹ سے اتد لال فا صحا ہکرام ابعال ہو نے پر تام ے اور دمل میں ہے من یکرنا 
تام لانو لکااتفاقی اور اما )کر ینا جت سے ورا میں ہو سکیا ہے۔ اس کے ملاو ےہاک سمو کا اس پر اما ے ایت 
کیل سے کوک یھ آکا بر سے ا شتلاف ہوجو د ہے۔ اور یہ بات ی نیس س ےک صا ہک اش کے در میائن ابا کر لین ن تا 
کی وک وو تخاو یں کم اور مجر وو ے_ : 
اور اب علم ہون کن یں ے۔ اس ط رن مکورہ اھر حد یٹ میس صرف عیب کرام کا اجماع مراد ہے۔ جن ی 
رآن یرم اولئك هم المومنون حقا اور اولئك هم الصادقون اور اولئك ہم المفلحون آیاے۔ اور سراح بہت 
ی آتو مس یہ بات پالی گنی ےک وو مو مین تے۔ اس طر مو منو کا مما ہو ناپ اگیاے۔ بر غلاق ال کے بعد کے ز مان کے 
کہ وداگر چہ مومنشن ہوئیں پر بھی ےکوی ی و مل نیش ہے ۔کی وک ایا نکا علق توول سے ے۔ کا کم سوائے اللہ تیال 
کے کاو رکو نیس ے۔ الہ آ دی اپ اعتقاد کے مطاق لق نکر جا ےکہ وو سلا سے گر دوہ رگ ہے بات کو کہ سکتا سے 
کہ مر ےول میں جو ایمان ہے ا یکوایٹہ تال نے بن رای ے۔ اک بتاء پر باو قات او لادومال و یر ہک حیبست پڑنے سے اس 


` لالب دای جدیڑ ۱ ۵ لر “م 
کے د لک بات ظاہر ہوثی ہے اور وہب فز کہ کا ہے۔ ہے بث اصول فقہ یس بہت بی وضاحت کے سا تھ یی نک گئی ہے 
اب ری تام ن لے لگانے وا نکی بات۔ توا 921 کاچ ت کے ہارے میں اماد یٹ E‏ اثر رکراہت موجودے۔ جیا الہ 
ر سول ال اہ فر ما نکسبب اام غبیی۔ سکم نے ا لک وای کی ہے اود گی کیا عد یٹ یں ان کے قیام فلا مک یکا کے 
بارے میں ے کہا نہوں ےا چاو رکوکھاا ےے کیا اجازت دک ے۔اور ایک روات یس بے کہ آپ نے آ a‏ اک 
ا سے پا یی دانے اون کواور اہپنے ملا مو ںکوکھادے۔ ا کی ردایت الدداودوترنمھکیادابن ماج وات ےکی ے۔ اور ال یکی 
اتاو تن ہے۔ جیماکہ ھک نے فرمایاے۔اور تام علاء نے فرمایا ےک ہے اج کین بی نکی سے او رکرو سے ودنہ حرام ہیں 
ےی ورے۔ حر ت ارکن عبا کی صد یٹ ے شس میس ےک ر سول اش کے لوا سےا رگلوانے وا نے کو ال یکی اجر ت 
دگی۔ ا ب اگ ہے اب ت مرام ہو فی و آپ نہ دےے۔ ال یکی ددایت بغارو کم ن ےکی ے اور اسی ہک شون ححضرت ان کی 
عد یٹ یش سے سکی روابیت کم ےکی ہے۔ ای ے تتام علاء کے خزدیک کک لوان ےکی اج ت چا ہے موائے اس کے 
کے عفر 2وس ے کے و وچو کر تھ وکنا ا مر ددے۔وال رتعال یا میا اعواب)۔ ۱ 
تو :مام می نان ےکی اور ام سے سن لوان ےکی اجر کا گم جوت ا قوال امہ 
کرام ولا با تفیل ۱ 

قال ولايجوز اخذ اجرة عسب التيس وهو ان يواجر فحلا لينزو على اناث لقوله عليه السلام ان من 
السحت عسب التیس والمراد اخذ الاجرة عليه. 

ہق :۔ تزور نے فر ہیا ےک عب اتس می ہکومادو بر چڑھان ےکی ات ت لین ہا یں ہے۔ حن نسل بڑھانے 
کی خرس ےیک ن افو رک وکر ایے بر نےکر ال کی مادہ پر چڑھانا ی یکر اتا تر ام ےکی وک ر سول الد نے فرلا کے کت 
٠‏ تی غبییٹ اور را مکام بس سے نر سے یکر انا بھی ہے۔ ا ل کا مکا مطلب یہ سب کہ نکی جح کی اجقرت خحبیث اور ام 
ہے۔(ف اس پر امام ابو یق امام ماک وشا و امم سن ار ول ات کیا انی ہے۔ ت ج الفاظا مد بیث خضرت عبر اللہ بن گے 
مر فوغابہ کہ ر سول اللہ نے عب ا گل سے مم فرمایاہے۔ ا لک ردایت بخا کیا داد داد وت نم کو نا ےکی ہے۔اور ای 
باب بل بہت کی روات ہیں جن بل ہے بات ےک ہکا نکانذرانہ خحجبیث ہے۔ من رمال و یرہ رشن سے لوگ آ تند ہکاحال 
لو تے ہیں اور ا کواب ت د ہیں۔ سب خحببیث سے اور نے کا وا لن ےکی اج ت حجبیث ہے۔ ای طرع رنڈ یکی ابجرت 
بث ے۔ ےکی ابت خبیث سے اور ز سے ھت کی اجقرت خحبیت ہے۔ لبڈ اا بات می کو اختاف نیل ےک عب 
تھی یی کن کی ارت تام ے. لین مام ماک کے تز دیک ہے حر مت اس صور تس سک مواملہ س ےکر کے اج ت وی 
گئی مواو راگ اجار ہن اججرت لے کے بخ راز خوددے دیا۔ پھر ج س کے کے یس مادوجانو رجریاں مگامیں یاس موجود ہیں _ 

ان سے ق کے بح رگا بن مو جانے کے بد( ی بویٹ شس بر رہ جانے کے بعد ن کووای یکر دیااوراس کے سا تج ہی کے 
ایک تنس نے رسول ا ے عرب ال کے متحلق چا آپ نے مع رہہ پچ راس س نے ع کیک یارسول ا ہم 
لوگ زک بھوڑ و ے ہیں۔ مم ساوج سے ل بے 2 کے طور پر دیاجاتاے نے آپ نے ای کی اہازت دےدی۔اں کی 
روات تر لم ی وتا ےکا ہے۔ چ رت کان کاک یہ صد یٹ تن خر جب ہے۔ ماک روا تکوابرائیم بین ححید کے سوا یں 
جات ہیں صاحب ٹین ےکسا کے ایرام بن می رکو اادد اب مین اور ابوا م نے نیت ہکہاہے۔اور بقار ی و کم نے ان 
سے روات قو لک ے۔ اہن چ ر ےکسا کہ النا کے سار ےد اوی ٹہ ہیں۔ ت نے اکتڑا اس ط رر ےکی اک مان یک 


گان اپر ای جدیړ ۸۲ لر 


مد یت اہ رس وھ RT‏ ا جح وھ 
ب بے اختلا ف ابقرت مرام ہے۔ لیکن فقہیہ کے لئ اعقیلزاہ بات جائ کہ دہ ئ لیے سے کی کر ےک وک ا وع 
ھا کام می پڑ جان ےکا قوف ہے )۔ 


تو :با تی مطلب م ءا قوال امہ کرام مد بل 
قال ولاالاستيجار على الاذان والحج وكذا الامامة وتعلیم القرآن والفقہء والاصل ان كل طاعة 

يختص بها المسلم لا يجوز الاستيجار عليه عندناء وعند الشافعی يصح فى كل ما لا يتعين على الاجیر لانه 
استرجار علی عمل بقلو عير مین فا فور ولا قولہ علیہ الام اقرء وا القرآن ولا تأکلوا به» وفی آخر 
ما عھد رسول الله عليه السلام الى عثمان بن ابی العاص وان اتُخذت مؤذنا فلا تاخذ على الاذان اجراء ولان 
القربة متى حصلت وقعت عن العاملء ولهذا تعتبر اھلیتہ فلا يجوز له اخذ الاجر من غيره كما فى الصوم 
والصلاةء ولان التعلیم مما لا يقدر المعلم عليه الا بمعنی من قبل المتعلمء فيكون ملتزما ما لا يقدر على تسليمه 
فلا یصحء وبعض مشائخنا استحسنوا الاستیجار على تعليم القرآن الیوم لانه ظهر التوانى فی الامور الدينية ففی 
الامتناع یضیع حفظ القرآن وعليه الفتوی. 

کا . ترو رک نے فرباپا ےک سی طراذان ا اچ ت لیا ہا نہیں سے۔ ای طرئ فا کی مامت اور رآ نکی 
لیم اورو خی کی کم پر مارات یں ہے۔والاصل الخ اس ہاب می ایک اس کت ای عادت جو مسلرانوں 
کے ے خصو م ہو اک اج ت باجا کل ے۔(ف کی کہ اڈالنیاایا متیا انم بی کے ایی ےکم میں شض نکابد ل یانذاب الد 
کے نزدیک تا اس ےا ب اجر ت لوا ہا یں مور ج الہ ماز اور روز سے پر اج ت لین پال تاق چا دل ے۔ ای 
طر رجا ل تل وا اک جوکام ہب الام کے ا۶ صو س ہو ۔ اس پراجارولینا جات کی سے)۔ و عندالشافعیٗ الخاور 
ام شاف کے زدیک پر ای ےکم میس اجر ت لیا چائزسے جاک اجر یلا من جو ہ کیو کہ ار ت لیا بے ا مل بر جن سکاکرنااس 
ا لازم کی ہو دہ جات ہے۔(ف می تول امام مالک وا کا بھی ہے۔اومحضول ن کہا ےکک مور علاء کے نویک سے 
نین امام ار 9 نوز ات او اع کے بر دہ کی ات تن جا یں ے۔ جیا 5 مارا تول سج اور اام ان 
اہن د عوکی یس عدبیٹ سے بی اتد لا لکر تے میں اہ کی یق انشاء ال جل ۓگ .ردام شا نی کے قول کے مطا نارکون 
ری نشنپ کن ود می کہ کک نت خی مات کے ے چو ای طز ےتک ان کے مووا 
کو تس کی امامت کے لا ینہ ہو اب ت لیا چائز یں ہے۔ای رح اگ فوقید نے اور ترآ ون کی م سے ےکر 
تس مین ہو بھی الا تق اج ت لین انز خہیں ہے ان 

ولنا قولٴ الخ اور ما رید مل رمو کے فرمان ےکر ت 7 آلن ادرال ایر دا ۔ ا کا عو مم تکھا2 رف اس 
کی ر واییت امام ات داہن رامو ہے داہن الخ من حد یٹ ععبدالر ہن بن شبل ور واو اہو نیت الط ران و عبدالرزاتی۔ ا سک انار ی 
ے۔ اور این عدئی ےکا ل می اور بقار کی نے ادب مفرد شس ا کو حضرت ال ہرمیک حعدیٹ سے رای تکیاسے ان ا کی 
ار قوف نے اک ا ےا ر ار وان عو فک لیے تن ا کیا ہے ری کی ا 
خطاے اس میس جح عدار مان ابن جل ے اور بیہاں دوس کی احا یٹ تھی ہیں ۔ چاچ حضرت قباد بن الام تک صد یٹ یل 
کم نے مل دول سے ارلا رآ ادراش ےک ما ےو کے ای کان دی تسا کہا 

و کو ںان ان کے ہشن ات ےل ئن سے وشن یاون د راندازی کرو ں گا 8 ےل ےن 


تین الد اے ہدیر ۱ ء۸ جلر ٹم 
کے لق ورف کیا ھپ نے فرمایاک ہاگ ہے جا وک انش تی مک نگ کا وق پپہنائے۔ تو اسے ے اوا یکی رویت 
۱ ابوداؤدواین ماج اور ام ےکی ے)۔ وفی آخر ما عهد الخ ی ر سول ال نے حضرت نبان بن ای العا سے جو ہر لی تھا 
اں کے آخر میں ہے جملہ بھی ےک ت ای متو کو مقر رکر وج اتی ازاك ر اج ت نہ نے۔ا یکی روات اود اود وت نی ونا 
اور این با کی ے اورا اتاد ہے اود ایس و لے کیک ج بکوکی یاکام یی ا توو وکام ا یکر نے وا ےکی 
طرف ےکا رناب ہوگا۔ ای ے ا کا مو کے یف بی الس جا تکا اقب دک نا ہو تا ےکہ اس 2 کو اکم ےکر ےکی 
صلاحیت اور لات بھی ہو تن مشلا :وہ س اذانیالمامت کر نے کے لاک بھی ہو۔ اس لئے ا ںکودوسرے سے اج ت لوا جائانہ 
ہوا جا الہ نمازاورروزوٹل ے۔ ۱ ۱ ٰ۱ 
ولان التعلیم الخ:اوراں دمل ے 12 کم ایی چز ہے کک ترت اور اخقیار س یں ے اور تیم ای وقت 
ہو ہے ج بک شار د کی طرف سے کی ایک لیات ایک بات پائی جاۓ ی دوذ بین ہواور وہ الیم کے تقایل ہو تو لی مکر نے 
والے نے محاط ہکرتے وقت خود بر ایک اہک بات لاز مکی ہے بے پوداکر ناس کے اپپنے اتقیار ٹس نیس ہے۔ ای لے ال یکی 
اجرت لیا کچ نہیں ے۔ لیکن اس زمانے میں شض مشا نے ق لن ڑھانے پر ابت لک کو ا سان چائز تایا ےکی وک دب 
کا موں یس ی اور بے ب وای ظاہر ہو یی ے۔ ای ےراچ لے کو عکیاجائۓ و رآ نکاحز اکر ٹااور اسے فو یا رکھا 
تحم ہو جا ےگ اور ای بر فی ے۔(ف می انتا وی میس اام ر کے قول ف٦‏ کیاکی ےک ا کے مشا ےم بعد والوں کے 
قو لکوپپن کیا کہ ت رآ نکی م اج ت جا نے اس لئ ہم کی ای قول فو ی ر تن ہیں۔ اتی 
ادرو ض وز م وشل س چک امام تان زک کہا ےکہ ہمارے زمانہ می ایام ومتوزن اور کاچ ت ینا ہا ے ۔رع۔ ای 
طرں فک م پر کی اج ت ےکا فک دیا چا ےک ۔کف۔اس ےار ا سکام کے ل ےکوی برت مقر رک ری ہو ولا کے کے 
باپ پر ق رکیاجا ےگوہ ینہ ابقزت مع کواواکر ے۔ او رار ووبرت معلومنہ ہو واج کل دپنے پ مجبو رکیاجا ۓگا۔اسی ط رح 
جو ہا ٹیل تام ر واج میس ہوں شل : عید کو خی ردان کے د کے ے بھی کو رکیاجا ےگا اکر رکا کے سے فلا م ہے لڑ کے 
کوکسیاستاداکا مر کے حول ہکیاکہ دوا سک وکابت پاش وی اد با سلاو تیر هکو ہن رما سے توان س ب ایک بی عم ے۔ 
]شی اکر رت یا کرد کی ہو ای طط رح سے اجار ہکیاکہ ودیک ہی تک ىہ ہن رککھائے وہ اجار چا ہوگااور بد ت ہو کی ہو جا ے 
کے بعد وہ تفع ال ات کا می لجا ےگا جب کہ اتاد نے خودکو ا سکام کے لئے می نکر لیا مو خاو وہ کیا غلا م یہ سیل 
کے بانہ کے کے او راک کول د ت بیان ہک ہو و وہاچارہ فاسد ہوگا_ لین ااگر وو ل ڑکا کے کا فا سکااستتاو اج مت ل کا سن موک 
رنہ گیل رع اور گر یہ شر کی ہوک ہکاکی اس پچ ہکو ا کا اس عم و ہن رٹیل ماہر بناد ےگا ایی اجار فاد سے ۔کب وک ماہر 
ناد ینای کے انقیارریش نیس ہک ۔ : 
خلاصہ ىہ اہ ایےے اجار ہل یہ بات لام س کہ ایک صن بر ت کک سکھصلا نے اور لیم دس بر معام ٹل ےکر ے خواہ 
دہ کک یانہ کڑھے۔ اور سکھاد ییامام ناد نے پر معامهہ ن ہک سے کی کہ ماہر بناد ینای داد ینا ای کے اختیار سے پاہر ہے او رر 
۶و میں ماہواری مین ر م بے محال کیا اہارات کے ا کل مک کی بنیاد ہے معا صرف ایک مین کے لے درست 
کن جب دوسرمے میٹ ےکاایک د نگزد جاۓ تپ دوسرے می کااجارہ ہو جا ےگااور اک ط رح سے تمدہ ہر ہین بی عال 
ہوگا۔ واللہ تا لی اعلم پالصواب۔ اور مام دستور کے مطابی استاد کرای پر نے والے گی رف سے کر ےار دزانہ اخظیار ہوا 
کر جا ہے اوراسی پل بھی ہے۔ الب ہاگ رکو نا ی شر لاد یکئی ہو اس شرط کے مطابی مل ہوگا۔ مہ 
معلوم ہوا چا کہ ائل مین کے تول جو امام شا شی کان ہب تاد س کہ امال تر پر ج بک وہ تین نہ ہو اجارہ ہار 
ہے۔ ای لے مص نے صرف قا یو مل ییا نکی ے۔ مالک اس کے کے وراک نص و مس میس موجود میں اور مص نے جن 


من الہد اىے جد یر ۸۸ 27 
اماد یت سے اتد لا لکیاہے۔ ان شس کی تاو یں ہیں۔ چناخچہ رت عبرال مان این لک حد ی کی تا وی ہے نس ےکہ کے ' 
پودلوں کاب ای عمزوبل کے عوض تھوڑ اسا عو لی تیاور اس ط رح عوا م کوکناب لی کے احا م سے پر شال اور بد اعنقار 
کر دیاتھا ٴا سے من فر مایا کہ قران ید ہاور جت بھی ام و علال کے سجن احکام ہیں ا نکو گم ری کے مطا لی ہی سنا 
اور وولو لکی رخ صرف سنا ےکا کو ت کھاؤ۔ اس فرمان سے ہہ لازم یں اک نعل مک اج ت اید ہو۔ ای طرح 
ححضرت تان دن العا کی صد بی کی تاو بی ہے ہ کہ جو موذلن ا پنی اذا نکی اج ت تہ لے “وہ اوی ے۔ ال کا تر لال اک صد ہٹ 
سے س ےک سول اللرنے صرف ترآ کے اس عم کے بد نے جو ایی ای کے پا تھا ان کا مکاح ایک عورت ےکر دیاتھا۔ 
سکی روات بای و مس لم ن ےکی ہے۔ ]شی ان سیا یکوپ رآ یاد تھا اک کے سا وکا حکردیا۔ یز ایک اور عد یٹ س 
ےک جس چ کی تم نے اج تک اس اج ت میں زیادہ نا کاب ہے۔ ا لک روات تک ےکی ہے او دکھا ےگ ہے ' 
صن جئ ے۔ اور ا دلیل سے بھی چو خضرت ابو سعید خر ے مر وک عدت ےکہد مو لال نے یں ایک چھاد مس ھی 
راتنے یل ہم ایک ایی قوم کے پا س گے جس کے صردارکی یشان پر ایک کچھون کاٹ لیا تھا 'النا کے آ ویول نے سردار 
کیا ہر ر ںی د واک یکن اے بے فا کدونہ ہوا۔ 
با خر سردار نے اپ آدمیول س ےکہاکہ تم لوگ انا گول کے پا ی جاج ہار ے پاک ہے یں شای النا کے پا کول 

مت ریا سجھاڑ چیک ہواس لئے وول وک جار ے پا لآ او رکہاکہ سے مر دا رک و چو کاٹ لیاے۔ اور م نے ہ رط را یکی 
وواک میک کول قا دہ خی ہوا وکا تار پا کوک علا نع ہے ؟ ہم می ےک کالہ ان ہمارے پا علاع ہے۔ لیکن 
وہ س ا کاکوئی اڈ چھ تک نی سکرو ںاج بت ککہ تم می ر سے لئ اس مچھاڑ ھجک کاکوگی عوض مقر کر و کوک م 
تہار سے پا ہما نکی حیفیت ے کے لیکن تم نے مما ری مہمانداری غنی لکی۔ بالات رک یہک یوں بر سم ہد کی مال اک مارگ یہ 
نویس جا کہ ااس تس کے پا ںا کاکوکی علاع ے او کی چھاڑ چک ےب دہش گیااور ای ےا مد لد رب العا کین 
نی مور ذاتہ ب کر بو تناش رو عکیا۔ بیہا لک کہ وہ ا ھا ہک کھٹراہ وگیا۔ ران پول نے و عد ے کے مطابق مارا بدلہ دیا۔ 
تب م نے آ ب میں ےہاک ا یکو فی مکرلو کر جن نے اس یرد مکیا ت اکاک جب کی یک مر سول ا کی ضر مت ٹل حاضر 
وک آپ سے یہ ساد امعامد بیان کر دی اس وف ت کک م کرو برجب م نے آ بے ۶ کیا اپ نے فرمایاکہ م 
نے جو کے کو می پااہے۔اسے پاٹ الو اورا مس را بھی ایک حص پا3۔ جیاکہ جح میں٤‏ ے۔ ری نے مک شرع 
کہا ےک اڈ ویک جات ہو ےکی وجہ سے چم ہے بات مم یکر ےک ترآ نکی لی مکی اجرت بھی چا م وک رک 
عد بیث س و صرف رز ی ا ویک 6 لفظ ے اور شا ت کہ ان لوگوں ےکا ر ال لیا ہو یاشای دکہ اک انار ی۴ تی 
وصو ل کیا ہو ۹ 

و :ااك نما زک امامت م رن مجیدروفقہ اور ر تہ باج ت لی کا کی 

ھا ن می ماہر ہناد ت ےکی شر اک 7 توالا کرام ولا ی 

قال ولایجوز الاستیجار على الغناء والنوح وكذا سائر الملاهى لانه استیجار على المعصية والمعصیة 
لا تستحق بالعقد. قال ولا يجوز اجارة المشاء عند ابی حنيفة الا من الشريك وقالا اجارة المشاع جائزةء 
وصورته ان يوجر نصیبا من داره او نصيبه من دار مشتر كة من غير الشريك لهماء ان للمشاع منفعة ولهذا 
يجب اجر المثلء والتسليم ممکن بالتخلية او بالتھائی فصار کما اذا آجر من شريكه او من رجلين وصار 
کالبیعء ولابی حنیفة انه آجر ما لا یقدر على تسلیمه فلا يجوز وھذا لان تسلیم المشاء وحدہ لا يتصورء 


یئن الد اے جد یڑ ۸۸ لر ہنم 
والتخلية اعتبرت تسلیما لوقوعه تمکینا وهو الفعل الذى یحصل به التمكن ولا تمکن فی المشاع بخلاف البیع 
لحصول التمكن فیهء واما التهائى فانما یستحق حکما للعقد بواسطة الملك وحکم العقد يعقبه والقدرة على 
التسليم شرط العقدء وشرط الشىء يسبقه ولا يعتبر المتراخحی سابقاء واما اذا آجر من شريكه فالکل يحدث 
على ملكه فلا شيو ع والاختلاف فی النسبة لا يضره»ء على انه لا يصح فى رواية الحسن عنهء وبخلاف الشيوع 
الطارى لان القدرة على التسليم لیس بشرط للبقاءء وبخلاف ما اذا آجر من رجلین لان التسليم يقع جملة ثم 
الشيو ع بتفرق الملك فيما بينهما طار. ا 
تھے :۔ تور نے فرمایا ےک گے اود فوحہ(مردے پر دونے) کے ےاج ت لوناچائز نیس ہے اک ط رح دو ری 
بوواب وت م,چزوں شلا :طبلہ. طبور اور باچاوغیر ویزانے کے ےک یکر ایے ہے دنا چائز کیل ےکی وککہ ہے الیماا جار دے ج وگنان 
ےک کے لئ استعال ہو جا ہے۔ ج بک گناہ کےکام اییے نیس ہو ے جی کو اچارہ و یرہ ےکا م سے باضالبلہ تق دیا جائۓے۔ 
(لپن ا سکااجارہ باضل م وگااور ا لکی پک بھی اجر ت لاز م تہ ہگی۔ امام شای واک ایی قول ے۔ اک رگا نام ٹیہ اؤہ 
کین کے ے بھی اج ت ادن ائز یں ہے !عضول کہا کہ امام ابو نیف کے نز دیک چان ے۔ اور الالام اسیا نے 
شر کان مم سککیھا ےک کی اہو و لحب اور شعر خوا یکا اچارہ چات نی ہے۔ اور بالانفاقی ا لک یکو اج ت واججب نہ ہوگا۔ 
ا 
ز۶ ولایجوز الخ ادر قدورکینے فرایا ےک غر تم شد ہ چ زکاجارہ اام ابو نی کے نز دیک چائ نیس ہے۔ الب ای 
چ کے ایغ ری ککود ینا از ج ۔(ف اام زف راودا کابسی قول س ےک مشت رک ما ل کااچارہ جاتر چ خواہ م کے لا ہو 
بے ما م نہ ہو بے فلا م )اود صا کین نے فرمایا کہ ن قال سی کااجارہ جات ہے۔(ف )کی قول امام 
کوشا یکا بھی ہے ع)۔ ا سک سورت ہے کہ ایک مکان شیل سے ایک حصہ ایاج اب کک شیج نہ ہواہو۔ ا ںکواچارہ 
پہدیاجائے۔ یا شت رک مان میس س ےکوئی اپناحص ہکس یکواجادہ پر دے ن ا ےش ریک کے سوا کی دوس ےکواسار ودیاہو فو ارہ 
وگ( فک کہ ش ری کو اجاردد ینا بالا تفا ات ہے مجن ش ریک ھ7 س ےکود ینا صا ن و یرہ کے نزدیک چا 


کک 
1 


ولهما ان للمشاع الخ: صا ی نک د کل ہے ےک ایک چز جو شت رک ہواور تیم نہک یگئی ہو اس ٹ بھی نی سل 
کر ےکا اماك ے۔ ای لئے ا سکااج مل واجب ہو جا ہے لان وال جو شیم ہکیاگیاہو۔ ا سکودوسرے ی کے واے 
کر کیہ صورت کن ےکہ مالک اس سے اپناساد اسا مان کال نے بچھردومر ےش ری ککوذمہ دار بنادے۔ یا کہ اک موجودہ 
عالت می بار کی پا ری مقر رکردے۔ فوا لک مال انی ہو جا ےکی شی ےکی نے اپنے ش ری ککویادو خصو کو ہار ہپ دید ےک 
کے ماد ہوگا۔ ولابی حنیغة الخ اور اام ابو عپی کی دحل ہے ےکہ اجارہ دی دالے نے اک ایک تر اجار بر دید ج سکووہ 
حوالہ خی سکر سکم ہے۔ لی اا لکااجار چات نیل ہوگا۔ آم نے یہ بات ا ےکی ےک ر شیم شر وک ور وکر کے حول کرنا 
کن یں نے اور ا کو ابا سے نما یکر د ہی ےکا اقبار اسی وچہ سے ہو تا ےکہ اس صو رت ٹل تال پانا کن ہو پا ے حن نال 
کر کے الود ےکی صورت بی اجار ہک چ ہک کراب دار پور ے طوز ہا سے استعال میس لا سکتا ےلین ج چ غر مقو م ڑے ا یکو 
خا کر کے دی اور ا لکرنے سے رکاو ٹکو دو رکرنے سے بھی دو اورا فع ی م لکر نے کے ی یں ہوجے۔ 
خلا ف بن ےک اس میں الو ررح من ہو جا ہے۔ مالا عقر منعقر ہو ے ی ا یکا عم ثابت ہو پاتا ے۔ جب کہ حال ` 
کرو ےکی در تکاہونا بھی معال کر ےک ایی شرط ہے۔ج بک شر ط جیی شاا سے پم موق ہے جح سک ش رط لگا یگئی ہو 
(ینی جس جن کے ےک ہا تک ش رلک یگئی ہو الس شر طا کے ہو نے سے پیل بی انس چ رک موجود ہو اض رو رک ہو جاہے)۔ 


کک البد اے جد یړ 14 لر "م 
اہنراای میس پا ری مقر رکرنے سےکوگی فائحد دنہ م وگ کی وک پا رک مقر رکر نا ت بعد یش ہو سے ۔اور جو چز بعد مین حاصل ہوئی 
ا کو پیل ہو نے کا م یں او کا سپ ادد بے با تک اپے ش ری ککولاردد تا جائڑے۔ الس دج س ےکر کل مھا کاو یکی 
ککیت میں آ نے کے بعد تی ہوگااسی ےا وقت مش رک می ں کہا جاک ےکا یں اپنے ش ری کو اجار دد ینااس لے جات کہ اس 
از کی ہے جو ما مکی کیت تو اسے پیل سے کی ماک ہو ےکی حعفیت سے ہے اور چھ منان کراب دار ہو ن ےکی حیثیت 
کے تن لے ور یت کے حالف و ےکرک تتاك یں ہوجا ہے ( فک وکر اصل میں یع اصل 
SANE GO‏ انه لا يصح الخال کے علاوہ ارج 
تض روات میں امام م کے خزد یکم کرایہ جا کے کک ایام ا کے نے و وت چ ے ایام 2 .- کےا یش 
اسے می تاا کہاگیاے۔ 

وبخلاف الشیوع الخ لاف ایے مال شت ر کے چائز ہونے کے جس میں ش رکت بعد س یگئی ہو۔( ف ج ںکی 
صورت ہہ موک س ہک صشل: :ایک گنیس نے اپنامکلن دو آدمیو ںکوا نکی ر ی کے لن کراب پ دیا بح لن شس سے ای 
تنس م مات اہ رار دای نٹ ىہ ز نرہ مس اس شر رک مکا ناکرا دار با دہ چا گار )کی کہ اجار کواب پاق کے کے 
EB‏ سے توالہکی قد تکاہو نار ط یں ہے۔ وبخلاف ما اذا الخ اور بر خلاف اس صورت کے جو صا نے بیان فان 
ےک ایگ نے اپناایک مکالن دو آد میو لیک رک ایے پر دیاکہ مہ اڈ ےکہ ا شس ایک سا تھ می لیر امکان ا کے حا ہک پیا 
گیا ے۔ یجن انس وقت شت راک نیس با اگیا لین بعد اجار ہک علیت ما سل ہو جانے کے بعد اب مال می رک پا گا 
ہے۔( فک ایی ش کرت تذبعدیش لاح ہ گی ہے۔ جوابتطراعنہ ی اوراسی بعدمی لاح ہو جانے وای ش کلت پال اتی چات 
م ے۔ اک لور ے مت ہکاخلاصہ ہی واک (1ب شض وقت اجار ہکا مایا نٹ پاگیااورایک س ےا اکل مکان دوس ر ےکودیدیا 
لے پالا ان چا ہوا ۔(۴)اوراکر بجی مکان ایک پار ہی دو فصو نک وکرایے یس دیا ھی ائ ہوا )اک ایک شش سکوایک 
ما نک آصف الے تی ےلفاق یف دز نے کن کر کرای اوق تن شی شی کک کان ہے 
کوچ سے کرابہ جا نہ موا بخلاف صا یی کے تول کے ( ٣‏ )ار ایک شس کوب رامکان‌یادو خصو ںکوایک سا تھ اچار ہے دیا 
اور اھر می آدھھ مک کاارہ کر دادو سول میں سے ایک م گیا آد ےکاجاد دبا جا ےگا 


27 :گا کے اور نو کر نے یا کے یا ابد لحب وی رہ کے سا و ابا نک کرام بر لیا 
وال پا ترا وک وکراہے پر دیتا۔ وہ تیم کے لاآن ہوبانہ ہو۔ سا یکی شعیل 
عم اقوال ای کرام دل گل 
قال ويجوز استیجار الظٹر باجرة معلومةء لقوله تعالى «إفان ارضعن لكم فاتوهن اجورهن) ولان التعامل 
به کان جاریا على عهد رسول الله صلی الله عليه وآله وسلم وقبله واقرّهم عليه» ثم قيل ان العقد یقع على المنافع 
٠‏ وهى خدمتها للصبى والقیام به واللبن يستحق على طريق التبع بمنزلة الصبغ فى الثوبء وقيل ان العقد یقع على 
اللبن والخدمة تابعة ولهذا لو ارضعته بلبن شاة لا یستحق الاجرء والاول اقرب الى الفقهء لان عقد الاجارۃ لا 
ينعقد على اتلاف الاعیان مقصوداء كما اذا استاجر بقرة لیشرب لبنها وسنبین العذر عن الارضاع بلبن الشاة ان 
شاء الله تعالى» واذا ثبت ما ذكرنا يصح اذا كانت الاجرة معلومة اعتبارا بالاستیجار على الخدمة. 
ترجمہ:۔ قدو ری نے فرمایا ےکہ دودت پلا نے وال عور تکو تھی ابقرت کے سا تھ اجارہ پر لیا چا ے۔ اٹہ عزو ل 
OTE‏ رجہ “گرا درتال سے ئ تہارک طا اوا نے تھا ولا دکددودھ پا 3 ا کوان 


”ان الد اے جد یر ۱ : ۹ ۱ لر “م 
اچترتدےودو)۔ ا کے معلوم واک اچارہجانئڑے۔اورا نول رن بھی کا کک SE‏ نا کے ا 
اور اک سے لے بھی برابد چلا آر پا ے اور ر سول الل ےا کوایی اکر نے دیا۔(ف اس سے معلوم ہو امہ دودح پلا کی اچ ت شرا 
جائڑہے۔ورن ہپ مع فرمادہیے۔ الب تاک عورت سے اکا کا ملق باقی ہو توا حالت میس یو یکواکی اولا دکودودھ پلا نے کے 
ےج اک کے پیٹ سے پی رامو اہو۔ اجرت پر ینا چائز کل سے کی وککمہ الس عالت میس دیاعتۂاس پر دودھ پلانا اجب ے۔ ثم قیل 
الخ ور صاحب الیضاح وتر کہا ےکہ دودھ پلا کے اہار ہش معاللہ درا گل دودھ پ واح یں ہو تا ہے۔ پگ ا دودھ 
ای دائی کے متاح پر ہو جاہے۔ مم ےکی خد م تک نااور بی کی ضرور تو کا خیال رکھنااور ا کو ودے پلا ےکا ووو ضرا 
I‏ ہو تا سے کے کے میں رک ہونا۔ ۱ 

وقیل الخاور سال یز سن وغیر ور کے کہا کہ اجار ہکا محاملہ حقیقت یل دددھ پلا نے کک ب ہو تا سے چھر 
ےک خد مس تک ناو یر ووو تمتا ے۔ ای 00 پلا دال ب ہکوابنادودھ نہ پلاے بلک مر یکادودھ پل اک پانے وومەاں 
بجر کی ن نہیں ہویگی۔ والاول اقرب الخ ن پہلا تول اصول فت کے تول کے تریب تر ہے۔(ف۔ سن ف کے اپار 
۱ سے بی بات ی معلوم مون ےکہ اجارواصل میں خد مت بر ہو تا سے اور دود پلانا ای کے تاف ہے۔ ای ےکن سککھا سے 
کہ بی تول ے)۔ لان عقد الاجارة ال خکی ول لہ اچارہکامعا مہ ھی ناس مال کے خر ار دا یں ہوجے۔ ن 
دور ایک معلوم اور ن نز ے اس کے پلانے ب اجار ووا نیس ہو جاے۔ جیسے مکا کو نے ب اجارہ یں ہو جا سے بک 
ال سے لفن ھا کل ہو نے پراچارہ ہو جا ے۔ لپفرادودھ پلا نے پر اجادہ یں م وگااور ا کی مال اک ہو جا ےکی ی ےکوی 
ای گاے اس لئے اجار ہے کہ اس سے دودہہ پک کان ہہ ماز یں ے۔ اک رع دودتھ پلانے والی دای کا کی اچارہ ہیں 
ہوگا۔ بردو وای جب کر یکا دودح پلا ہے توا کی اج ت کے دہ ہو ےکی وج ایک مزر سے مج ںکوانٹاء اد م نقریب 
یا نار ل گے_(ف معلوم ہونا جات کہ صاحب نہایے اور "ا اس قو لکوردکرداے اوردوصرے قو لکوئی کک کھاے۔ 
نیچ دددھ پلانے پر بھی اجار سج موچ ہے۔ اک لے ہام می کک اک شس الات ضا نے مسو میں فیا ےک لمح 
متا ن نے ہے فرمایا کہ دودھ پان ےکواجار ہی ناش بات پر ہو جاے دودار کل دائ یکی رف سے وک بعال ے اور ا کی 
طرف سے دود پلا انام طبغا سے ۔کیوکلہ دودھ ایک ن څے ہے اوزاجارہ کے معالے سے مین ےکا تان یں ہو جا 
ے بللہ متا ع اتقات ہو تا ہے لین اس قول بے کہ معالمہ دودھ پلائ پر ہی ہو جا ہے کی کہ سے کے جم میں بی مقصور ۱ 
اصی ے اور ا کی بقیہ خر مت اور کے بعال اس کے تا ے اور معا لہ جب گی ہو تا اسی کے قصورا صلی بے ہو ا ہے۔ ایا 
ا ماع امام مھ سے روای تکیاہے۔اتھیا۔ ۱ ےی 

ال کے بعد صاحب ہا ن ےککھا ےکہ ھر کی نے امام مر سے ای ص جن پانے او شس الا کے ری کی کر نے 
کے بعداس وا عد کل سے رجو عکیاے تووہ تقلی رحس کے واو دوس ری وجہ نیس ہے اور مان ےککھا کہ بجی قول فقہ 
کے تریب ترے۔اود دودھ پلا کا اجار ون 2ے خابت ہے۔ال ے یہ بات لازم آ کہ ا یکوامصصل ما نکر ورخوؤں 
کے بل کے لے احارہولیزااو رگا ۓےکواس سے دود ہے کے ے اجار ہبہ لک ےک تیا سکیاجاۓ کی ہے تام کم بھی چان سے۔اور 
ىہ یں ہوسا کہ اس طر کہا جا ےک گا ۓےکودودھ ہے کے لے اچارہ پر ینا چائز یں ہے ای لے دا یکو بھی دود 
پلائ کے لے اجار ہے لا ہا نیل ہے۔ جاک مصنف س ےکھاہے۔ اور امام ماک نے ص راح ہیا نکیا ےک حیوا کو اس وقت 
تک کے لے اجارہ ب ینا ہا ے ج بک کہ دودودھ ویار ے۔ اور ردایت سے ہہ بات ثابت ہو یی ےکہ خضرت ر نے 
خضرت اسید بین رکا باغ تین ہا ل تک گل لکدانے کے لے اجار ہے لیاعا اک اس وقت صا ہک امم کی بڑی تراز موجود ی 
اور کی ےا کا کار ایت ننس ہوا ے۔ اور وود پلا نے والی دال کے اچارہ کے معابلہ شی ال بات سکول شک یں ےک 


کال ہد اے جدیر r‏ ` چلر لم 


اس سے قصو وا کاوودم پلانا ھی ہے اور لقب ای کے کے بعال ےکا ماک کے تاب ہے ہیں ورت ا کا مول کے لے دای 
کو ضرورت نیں کی چان ے۔ 

لہا ےہاک غر مرت | کل مقصودے اورو ود اک کے تاب ہے۔ ا ییات ے کی ےک ننس ل وگول نے ام کے ستل میں 
کہا کہ ا لک اجر ت حمام یش ٹیک کی گی ے اور اک سے پالی ل ےکر تہاتایے کی جا ل ہے عالاکنہ ہے کی الف بات ہے ۔ ای 
لیے عق بات می س کہ دا یکواجارہ یر لیے سے مقصوداص اس کا صرف دود م بلاناے۔ اور چےکواٹ ھکر چھائی اس کے منہ یس 
د ینایانٹھانایا لٹاناد یرہ سار کی با ۲ش اس کے ٣ے‏ ہیں جود ودم پلا کے سے اصل مقصود ہیں ہیں ر وایات ن امن سا بڑے اور 
یک علا کر ا میں سے ہیں ھول نے امام مر اورامام لوست سے روا ای ٹن اوو ہر روزرومو رین نماز ڑھاکرتے 
تے۔ ال نکی ما“ بر کک ٹچ رکی نما کی جماعت سے گب اوی فوت نیس ہوک اور ردایت با نکر نے میں تہ تے۔ کی ےک 
مد شین نے تر کے سا تجح کتھاہے۔ ا نک یکر امتوں میں سے ای فک امت ہے کہ جب پیا کی زیر کی وج سے ا کو 
اشن کی طاقت نہ ہو لی ی نو اہے لوگوں سے کت کہ بجے چپ کر نماز کے س ےکھٹراکردو۔ اس کے بعد وولو ری نماز تئر ر ستو ںکی 
رر اد اکرتے۔ من سی وج ے لوگو لکو بہت جب ہو تات وہ فرمات ےک اللہ عمزو بل ا کوک سار اک 
یں ہو تی ے۔م)واذالیت الخ اور جو بات م نے یا نکی وہ معلوم موی تو ای سے ہے ستل خا ہت ہو یاک جب دای سے 
مقدراراہتثرت سے ہو جائے تزا کواچارہ ب لیا ے۔ جی ےک دوسرےکامو لکی خد مت کے ے اجار ہے ر7 اے۔(ف 
بال سب سے اتر جو اب بی ےکہ غد مت پر ق یا لکر ن ےکی یہا ںکو ای ضر ورت بی ہیں ےکی وکر تعس الق لی کے ور کیہ ایر 
لد رآھدجائزادر ہی ہے۔مس۔ ۱ ۱ 7 ۱ 

۱ نز :مض کو ودود پلانے کے لے خواو وہای مال ہویاخی مر ہواجارہ بر لین یکی 

بش عم۔اقوال امہ و ل کی 

قال و يجوز بطعامها وكسوتها استحسانا عند ابی حنیفة وقالا لایجوز لان الأجرۃ مجهولة فصار كمااذا 
استاجرها للخبز والطبخء وله ان الجھالة لا تفضی الى المنازعة لان فى العادة التوسعة على الأظاز شفقة على 
الاولاد فصار كبيع قفيز من صبرة بخلاف الخبز والطبخء لان الجھالة فيه تفضى الى المنازعةء وقى الجامع 
الصغير فان سمى الطعام دراهم ووضف جنس الكسوة واجلها وذروعها فهو جائز يعنى بالاجماع»ومعنى 
تسمية الطعام دراهم ان:یجعل الأجرة دراهم ثم يدفع الطعام مكانها وهذا لا جهالة فيه ولو سمی الطعام وبين 
قدزه جاز ایضا لما قلناء ولایشترط تاجيلهء لان او صافها اثمانء ویشترط بيان مكان الايفاء عند ابی حنیفة خلافا 
لھما وقد ذکرناہ فى البيو ع وفى الكسوة يشترط بيان الاجل ايضا مع بيان القدر والجنس لانه انما یصیر دينا فی 
الذمة اذا صار مبيعا وانما یصیر مبيعا عند الاجل كما فی السلم. 

ترجہ :۔ قدو ری نے فرمایا ےک دودھھ پلاق دائ یکو اس ک ےکھانے او رکپٹرے کے عو اچارہ پر لیناامام الو زی کے 
نزد یک ا انا جانڑے۔ اور صا نے فر ملا ےکہ چان فیس ےکی وکلہ اس صو ر ت شی ا سک اج ت ول ر وقی ہے۔ ا کی 
مثال امک ہو جا ےکی کی کسی عور کور وٹ او رکھانابچانے کے لئ ابقرت پلیاہو۔لاف ملا :اس سے لو کھاچا ےک ہردوز 
اج ہر آثااد رپا یر گوشت پکاے اورا ETA‏ م رکوکھانااو رک ڑا لےگا۔ ہے جائز یں ہوگا۔ او امام شا 1 ول ے۔ 
ین مام ماک اورا رکا قول اام ابوحیفہ کے قول کے مکل ہے۔ ب رکھازااد کپ ےکاحائل بی نکر دی ہو ای کے مطا بی ا سکودیا 
جا ۓگا۔ او رار تفصیبل بیان ت کی ہو و ددمیانے در ےکا دیا داجب ہوگا۔ اور صا ص کے وی ار ا سکیٹ ےکی ای 


لالد + ۳ جل ر "م 
جس کی تی را کا کین کاو SDE‏ اع BAG‏ ےکا کے کون کے 
کو ںوت مقر رکردیاہو جب چام وگ اور ای ط راگ کیا ے کے معاملہ بیس بھی سیل پیا نکر وی ہو نو جانتڑے۔ 
وله ان الجھالة* الخ: ناماو یی 4 "پل اک کک 
0 0 0/0 چو کی دودھ پلائی او ںکواس شس مک یکھانے پٹ ہکا . 
زی بڑھاکر دی ہیں۔ اس لے ال سے اختلاف یں ہو کنا ے۔ ا کی مشال ایی ہو ہاے کن یے فل کا ایک ڈعری 
۱ س سے ایک قفیز ( مشلا کل )کو یناک اس یں ب یکول اختلاف نیس ہوگا کی وک با اپ مال جس سے ڈعی رک ےی حصہ سے 
۱ کات تک عا تد وف کزان اا رور کے ون یت تل یت نے 2 
ہو کا وفی الجامع الصغیر الخ اور جام غر می اعا ےک اک کیا نے کے ارے میں ا یکی تمت با نکر دیور 
4 8 کک اورادا اکر ےکاوفت او رگ کے حاب ےا کی عق دار لب بالا ما جا ڈے- 
ومعنی تسمینه 2 الخ کھان ےکی بت اور دم کے با نکر نے کے ن ىہ خی کہ دودھ پلا کی ابقرت در ہم سے مقر 
کرنے کے بعد ہچاے درم دہے کے خلہ اکھانادے دے۔ ماس میں حقیقت میں کو جات کس ہے شی اس صورت میں 
اہقزت پول نیس ر ہتی سے اور اکر غل ہیا نکر کے ا سک مقار بھی ییا کہ وی تو بھی چا ےکی وک اس میں کک یکوکی جہاات 
یں رک ہے۔(ف ی ٹس کے دات دصف اود سکی مق راد بھی ی ن کروی نوی ط رع بھی جبالت با کی اتی ے اوز 
ہے معلوم ہو اہ ےک کی کے سوا میں لہ بیشن بن جات سے اور بھی ی بین جانا ے۔ لکن کپڑابمیشہ ‏ ہو جا سے شن 
یں ہو جاے)۔ ۰ 
ولایشترط الخ اور لہ اداگر نے کے ےک مد کیا نکر ناشرط فیس س ےکی دک طعا مکااوصاف ا ہے۔(ف ن 
ووطعام جو مین نہ ہدیا یکی طرف اشارونہ موہ وبکل صرف ا کاو صف جیا نکر کے نے ذمہ لے میا ہد ازوم کن جو جا جا ے۔ 
رق سن و سو و وو سو فا 
اس میں وقت مم نکر نا ضروری ٹل ے)۔ ویشترط الخ ااہتہ ل اد اکر ےکی مک ہکو بیا نکر نا شرط ہے لیکن مہ ش رط لام 
ابوطیفہ کے دیک ہے کوک مات کا میس اشتلاف ہے۔ اور یہ بات تتاب الو مس یکل یا نکر کے ں۔ وفی 
الكسوة لغ او ے ارت بین من اور مزا کے نا ان کے و تک یں کے کیو گیا وی کے 
زمہا یوقت لازم آتاہے جب یہ مین بن جائے۔ اور کے د اک ونت ہوگاکہ اس میں وت مقر کردا گیا ہو جب کہ ا سلم میں 
"و تاے۔ 


ر8 0ئ 9۶ص 9 A‏ 9 او 

ELE OSE CE 

اقوال ات ہکرام ولا تی 

فر و ر سا 
تری ان له ان یفسخ الاجارة اذا لم يعلم به صيانة لحقه الا ان المستاجر يمنعه عن غشيانها فى مبزله لان المنزل 
حقه. فان حبلت كان لهم ان یفسخوا الاجارة اذا خافوا على الصبی من لبنهاء لان لبن الحامل يفسد الصبی 
فلهذا كان لهم الفسخ اذا مرضت ایضاء وعليها ان تصلح طعام الصبى لان العمل عليها والحاصل انه يعتبر فيما 
لا نص عليه العرف فی مثل هذا الباب» فما جرى به العرف من غسل ٹیاب الصبیٰ واصلاح الطعام وغير ذلك 


مین البد اہے جد ہے r‏ بل 


فهو على الظئرء اما الطعام فعلى والد الولدء وما ذكر محمد ان الدهن والريحان على الظئر فذلك من عادة اهل 
الكوفة وان ارضعته فى المدة بلبن شاة فلا اجر لهاء لانها لم تات بعمل مستحق عليها وهو الارضاع فان هذا 
ايجار وليس بارضا ع» فانما لم يجب الاجر لهذا المعنى انه اختلف العمل. 

ر چم ترو ر نے فربایا ےک متا مکو اتاد یں ےک دود پلا مال کے وہ رکوس کے سا تھے بست ر یکر نے 
سے کے کن شوہ کور وک ےکا کن دل ےکی کک اس سے بست ر کرای کے شوہ رکا کن ے۔ اپ ااس مستا ج مکو ہے اخقیار 
کن شور کے ہکوہ لکرے ۔کیا می ا شوہ رکواتناا یا ےک اکر ا لکی ییو ی نے اس سے چک ہے 
مروا رک اورت وکر ی تبو لکی ہو نو ہا ۓ ہن کی حفاظت کے لے بیو کی کے اچار ہاور لاز م کو کر سک ہے الہ اس متا کو 
ىہ احقیار م وکاک اک کے شوہ کو ا ےک میس کر اس سے بست یکر نے سے درو ک ےکی وکل اس کے مکان ړا یکا خی ہے۔ فان 
حبلت الخ باک وہ دود مال بی آودودھ پلاتے ہو سے مال موی تو ےے والو کو یہ اتی وکاک اس کے اچار ہک غکردییں۔ 
ال صورت ٹیل جج بک ال کے دود سے بے کے من یس مقصا نکاخوف ہو ۔کی و مد عابلہ کے دود سے بی کو نقصان یج عا 
ہے۔ ای مل اکر دود مال ییار ہو جاۓ بھی ا ںکوال سے اجادہ کے کا خقیار ہو جاے۔ ْ ۱ 

وعلیھا ان الخ اور اک دودھ مال پر سے لاذ م ہوگاکمہ ا ںکوکھلا نے پلا ےکا پر اخیال د کک ےکی ھکل سام سے بھی بی ہک 
فا دوعا کل ہوا کا ظا مک نااور د ینااس مال پر لاز م ہوگا۔ جا ل یہ ہواکہ جس کام کے لن ےکوکی تس موجو دنہ ہو۔ اس میں 
ا یے تی معاطلا تکاانقبار ہے شس ٹیل عام عرف جا رک ہو کے بچ کے کے ہاو راہ ںک وگلا نے پلا ن کیا شال رکھنااو ران کیے 
دوسرے تھا مکام اک دود مال پر لاز م مول کے الت اس ےکھلا ن ےکا ی نو بچ کے والد لاز م ہوگا۔ اور امام نے جو مہ فرمایا 
س کہ پیر کے لے کیل اور خو شی وکا ظا مکرنا۔ ای دود بال سر از م مو فو ےگوہ والو لکی عادت کے مطابقی ے۔(ف گر 
ار ے پال اییا ۶ف نی ہے بک ہے چ زی پیر والوں پر لازم موف ہیں۔ خلاصد مسل ہے ماک جب می کام کے لے اچارہ۔ے 
پاجاے ادر یھ ایی ےکام ہول جوا کے وای اولاز م میس سے ہوں۔ جج نکی شر اجار ہش لے یس پا ہو توان س عام عرف 
کاتتپار ہو تا ے۔اور کی تول امام شا واوا کاے)۔ وان ار ضعتہ الخ اور اکر رودم بال نے ال مدت کے اندر اے 
دودھ کے بے کر ی کاو ودی پلایا توا لک وکو اجرت نیل ےکی کی وک امار و کے مطاقی ج وکام اس پر زا زم مواتھ ست اسے اپنا 
دودھ پااتا وای نے وہ تی ںکیا ہک وہ بی 2 م ٹیل مارک یکا رورم ڈال دیا دوا پلائ کے گم یس ہے ایک ددا پل نے وای 
عورت دودھ پلائی مال نی فی ہے۔ ای لئ ا ںکاکام بد گیا اور ا کچھ اجر ت نیل موی 

۱ :کیا متا بے مضعم (ماکوائس کے اپنے شوپ ر ے ست ر یکر نے سے روک سکتا 

ے۔ ضع (دودھ ال ) پر کہ ےک کیا فون لا ہہوئے ہیں ؟ ار مرضعہ ع 

دود کی ہجاۓ بی کو جم ی کادودے پلایا تووم ن اجر ت ہوگی ی ہیں تخصییل مسائی۔ 

7ى0 

قال ومن دفع الى حائك غزلا لينسجه بالنصف فله اجر مثله وكذا اذا استاجر حمارا يحمل عليه طعاما: 
بقفیز منه فالاجارة فاسدة لانه جعل الاجر بعض ما یخرج من عمله فيصير فى معنى قفيز الطحان وقد نهى النبی 
عليه السلام عنه وهو ان يستاجر ثورا ليطحن له حنطة بقفیز من دقيقه وهذا اصل کبیر يعرف به فساد کثیر من 
الاجارات لا سيما فى ديارناء والمعنى فيه ان المستاجر عاجز عن تسليم الاجر وهو بعض المنسوج او 
المحمول او حصوله بفعل الاجیر فلا يعد هو قادرا بقدرة غيره وهذا بخلاف ما اذا استاجره ليحمل نصف 


ین البد اي جد یر 1 جل "م 
طعامه بالنصف الآخر حيث لا يجب له الاجر لان المستاجر ملّك الاجر فى الحال بالتعجیل فصار مشت ركا 
بينهما ومن استاجر رجلا لحمل طعام مشترك بينهما لا يجب الاجر لان ما من جزء يحمله الا وهو عامل لافسه 
فيه فلا يتحقق تسلیم المعقود عليهء ولایجاوز بالاجر قفيزا لانه لما فسدت الاجارة فالواجب الاقل مما سمى 
ومن اجر المثلء لانه رضی بحط الزيادة وهذا بخلاف ما اذا اشتر كا فى الاحتطاب حيث يجب الاجر بالغا ما 
بلغ عند محمد لان المسمی هناك غير معلوم فلم يصح الحط. 

ترجہ :۔ اام نے فرملیا ےک ہاگ کی سے ایک ج لا ےکود ھاگ دیا کہ اس سےکپٹرائے اور م نکر ج ےکی ڑاتیار ہو اس میں 
سے مردوریی کے طور بر آدھانے نے۔ اس صو رت یں ای جو لاس ےکو آ اڑا ہیں وی جا ےک بک اس بتائی یس جو عحن ت کی 
ےا کی ردو رک اس دی جا ےکی شی ا کاچ مل لگا ای ط راگ کسی سے ای کد ھار ات بر لیا کہ اک غل لا دکر 
لا ے اور سکومزدوری یس أسی نے ٹس سے شلد وکود ےد ےگا وی اجارہ بھی فاد م اک وکل اس کےکام سے جو چ ل 
ہوک سے اک شی سے ایک جھ کو اس نے ارت کے طور بر کرای ے ىک ط رحاس سک شال ہآ ٹاپنے وا کو اس سے ہو ئئ آٹا 
بش ے ای کک و آم ردو ر کی یس د ینا ے حا اکلہ ر سول اللہ کی اٹہ علیہ و سلم نے ابی عردو ری (تغیز لحان )سے ضئح فرمااے۔ 
ا لک صورت یے ےک ہکوئی تح کی ے ایک تی لکرائے پر نے اک اس تی لک وآ ےک ھی میس جو تکس کے ذز لے سے 

ہیں بے ( می ای تی لکی مدد سے کے پمین ہکی بک یک وگھوماۓ )اور اس سے لے مو سے آٹے سے ایک ققیر ( شرا ای کلو) ٦ع‏ 
سے د ےگا۔ اس جلہ رج تفر الان ایک بویا کل ے ل ے بہت ے اچارو لکا قاس ہون معلوم ہوج ے ا فو : 
جمارے علا کے فر تان وکر د سک اس کے ذر بیج سے ببت سے اجار و کا فاسد ہو نا معلوم ہو جاہے۔ اس کے فاسد ہو ےکا راز بے 
ےک دو نف ج دس یکواجارہپہ کے ہے شی متا جھ ا یوقت ال اجار ےکی اب ت دینے سے عا ےکی کک ای ےج اج ت 
ےکا سے دو نے ہو تےکیٹرے میں سے ایک حصہ ہے باج یھ لا دک لایاہے ا لککا ایک حصہ ہے۔ اور آخر می ہے اج ت اک ار 
سی و کل ع ل رر ۱ 

ایر کے تقادر ہو نے سے مستاج تادر موک کان ہے کم ای صذرت کے بر فلاف ہ ےک ہاگ کی ےک م زد رکواں 
لیے مووک بے رکھاکہ وور کے ہو سے غ کوٹ ماک کی مین ما مک چادے اور پچ راک لے بی سے اھ ز دور کی کے طورے 
آدہمانے نے تاس صصورت بیس أ سے یجھ بھی زورید لے گ یکیو کہ اس مستا نے اس اچ کو ا یک مزدوری کی سی نتر 
جوا ےکردی ے۔ای رح یہ غل دونوں میس مش رک ہوگیا سن وونوں یی ا غا کے مش رک مان ہو ہے۔ پھرج تخس 
اپ ش ری کو شت رک مال اُمٹھانے کے کے ای مال یس سے مردور یا ےکر ے نذا سکی بجر ت اس لازم نیل موک یوک 
تنا تہ وولا دک لا ےگا اس بی دوخ دای ذات کے ے بھی لات ےکا اس طط رح الس نے جو ہے بھی موا س ےکیاے ا کو لور ا 
کرنے می خو دکواس متا ج کے حوالہ خی ںکرےگا۔ ۱ 

(ف۔ا یک مصف نے جس عد بی ثکااشار ہکیاے دوحد یٹ الو ررد کے ر دی سے مج لے يانعدے کہ رسول 
نے عس ب اتل اور تفیز اھان ے منع فرایاے جن سکی روات دار ئی اور ایق اور ابو یی امو مکی ےکی ے علا این تر 
نے فرباپا ےکا صد ی ٹک اناد ضعف ہے نین اع کہا ہک می نے دار یکی تتام روا یتو یں اس طر پیا 
ےک با رھ اکان ے عکیایاے۔( ن حر نے وا ےکا نام نیش زک کیا گیا )او ریا روات میں ال 
طرں ا پایاکیاے کہ رسول ال نے خو مع فرایاے۔ کین عبرا نے ا ام می ای طر مر فوعا نف کیا ے واش تیایی 
ام بالصواب۔ خلاصہ ستل ہے واک کک معا لہ اجاروٹش ا کی اج ت دہز ےکی جاے جواس اچ رک حنت سے ما سل ہو وہ 
اجار فاسد ہوگا۔ پھر مصنفٔ نے اس ستل یس جو صورت بی کی س کہ ن غل یں تے نص کوا اکر ن چک ہک ہنی 


خسن الپر اہے چر ۲" ۱ لام 
ہہ TET‏ ۔ یں اس میس صت نے نص فک تیر اس ے لگاکی کک گر جر 
بد ل کر یول کے کے نصف کے ۶و کل سے ےکا توا ے اس لہ سے بت یں بک اج اش ل ےگا۔ حن اس نے جو اہر کیا نکی 
نے 71 “7,000 شل بھی واجب نہ ہوگا_ 
ير قال الشافی۔ لیکن اپ مٹیا یہ اترا ہو تارب ےک اہ میا نک ہو اجر ت ن کو یں سے تصف فل واجب تہ 
ہو تد بیل کور د ب وک کوک موجووو سرافل یال رونوں یاچ رار تر کے در مان مشت رک م وگیاے۔ ا ےک 
مز دو رجب تصف خل کا کک ہ گیا نیقی ش کت مایت م وی ۔ او ر اکر مالک م وکیا واج ت خابت م وگیا۔ فا ماو رال صو رر 
میں جب گس کو لہ لادنے کے سک کراب پر لیااس ش رط کے سا ت کہ کی غلہ یش سے ایک قفیز ل ا کی اجرت موی >9 
اہارہ اک لے فاسد ہوگاکہ غلہ لاد نے کے بعد ہیر مق رار ئن تغیز ےا سل ہوگی ۔ لپ اا کی صورت قغیز ایا نکی ی ہوگئی۔ 
پا اجار و فاسد م وکا اورا لک اجر ر اجر ا شل موی( تن دوفل د ہوگا)۔ 
ولایجاوز الاجر الخ گرا گر ےکا یت ایک قفیر ے زیاددنہ ہوگی۔ تتن ا ے اجر ا شل میں ے جو یھ اناا کے وہ 
اک تقیرے کم ہویاپوراایک قفیر بی ہو فو مکی دیاجا ےگاور اکر ایک قفیر سے کی زیادواس لت ول 70 ت فا رنے 
یں دک جا ےکی ۔کیوکمہ جب اجار فاصد تی ہ گیا با نکی دک اجرت اور ار ال مس سے ج کم ہو وی داجب ہو جا ے۔ 
کی وک ےگ ےکا مالک خود ہی ا ےگ ع ےکو ایک تی رک ارت رکرا ہے ل د سے کے لے رای ہہو ج تھا اور ای ے زیاد ہکا 
خواہشمندنہ تاد اور یہ عم اس صورت کے بر خلاف سے چیہ دو آدمیوںنے بحل ےککڑیاں یکر کے لئے مرک تکاموابرہ 
کی ۔ ران میں سے ایک ےکک اں م کییں و _ توج یں ت عکیں وی 
ان تا مککڑیوںکامانک موی ۔اوراا نک خاب ته د ہے والااجرالل یا گا اور ور کی کل مل جات ۓگا۔ ول امام مرکا 
ہے کی کہ النا کے در میان یل سےکوگی اچ ت لے س کہ ردو ری یش چ ےکی می سکیا جا ےگی۔ 
(ف ا کاڈ دک رمسا جب ہرگا- کر اام لویوت کے نرو یک دور | س کت تو لکر لے کوج سے نمت 
آ مد برراضی ہوک اپ ایو ر ی تح شدہ کیو ں کی کل تمت میں ے وہ صف تمت پانے پ.. رای ہوگیااس راس ے یدق 
کا اک نے اشگا کر دیا۔ لا نکی ضف تمت سے زیاد ہکاوہ سنہ ہوگاخواوا سکاجر نل بنا بھی ہو۔ پر ہے عم اس وت ہوک 
جب کہ ان دنول مس سے ایک ن ےککڑیاں یکی اوردوسرے نے ا نکوہاندھا ہگ ووفوں نے تی م لک ہیں کی اس 
ر دلول نے یا یں باندھاہو قودوخول اس ٹیل براجر کے رک 0 نع بیس راہ کے EE E‏ 
اه اک کے ا چ کے ا ھا وان کیا کے 
ار لات عفن و ور نے 0 و ل0" 
ای کد اا ی ےکر ای بلاک وہای خلا: و ہو لا رکر مق رر م چگ یہ نے جائۓ 
7 کہ اود ا کیو سے اسے ایک کلوا کی ردو ری کے طور یر د ےگا ۔ تفیز لطا نکی 
تھی وٹ او ای یکا رہ ارون نے جک سے کڑیوں م لک کے پا زین 
لانے پش رک تکی ٠‏ ران میس سے ایک سے کیال جع کیس اور دوسرے نے ا نک کم 
نیا۔یادوفوی نے اسے ش خکیاءاور دوفو نے بی ا نکو با ند ھاء تما ما لک یآ تیل, یم 
اثوال ات 0 ان 


کین الپداے جد یر mM‏ بر 
قال ومن استاجر رجلا ليخبز له هذه العشرة المخاتيم اليوم بدرهم فهو فاسد وهذا عند ابی حنيفة 

وقال ابويوسف ومحمد فى الاجارات هو جائز لانه یجعل المعقود عملا ويجعل ذكر الوقت للاستعجال 
تصحيحا للعقد فترتفع الجهالةء وله ان المعقود عليه مجهول لان ذكر اله قت يوجب کون المنفعة معقودا 
عليهاء وذكر العمل يوجب كونه معقودا عليه ولا ترجيح ونفع المستاجر فی الثانى ونفع الاجیر فى الاول 
فيفضى الى المنازعة وعن ابی حنيفة انه يصح الاجارة اذا قال فى اليوم وقد سمّی عملا لانه للظرف فكان 
المعقود عليه العمل بخلاف قوله الیومء وقد مر مثله فى الطلاق. 

رھ الام کر نے جائ سرس فریا کار یک تع نے ایک( ائی )ر ونی ی نے وا کاس تفیل اور شر 
کے سا تھ ابقرت پر کاک ودای کے ہے آ نی کے دن دس سب رآ کی ر وی الیک در م کے عو ی کر دس ےکا ابام ال حلی کا 
تول کہ ىہ اجارہفاسد ہوک لین مو کی کناب الا جار ا تک بث یل سک امام الولو سف دامام ر کے نزد یک مہ اجار جاتر 
ہوگا۔ (اوراام مالک دایم شا نی وا ر تع اول رکا بھی بجی قول ہے )اس بتاء کہ اخ کے مجع ہونے کے لے مل ہکواس طرح 
ف رخ کیا چاے کاک اس می آر جکیادن نکی ےکا مطلب ہے نیس کہ آج ران بک جلد از جلد اکر دے۔ یں اس محال یل 
اص جات رون کاکر دہ ےکی ذمہ داد ی ے۔اور آ کاو نکہنا مود یں ہے بال ووتو صرف جار یکر نے کے ل ےکہاکیا ہے۔ 
پناس معاطلہ مٹ کول جہاات بات ےگ اور معاممہ صاف م وگا۔(ف ین اس معابلہ یں ہے اشتباہ بای ہیں ےکک 
موا ےکا سل صو ور وی پانا شش کام ے۔یا آں دك کر ہے ر ہنا ن وقت تمو ر ےکی وک م نے اس مہ اصل مقصود 
کا مکو تن رو یا نے ےکا مکو ت مک نابایا ہے۔اود و قت بیا کنات صرف جلد یکر ےکی غر سے ہے کہ وہ جلد از جلد ای 
یون شکام م ۰ 

وله ان المعقود عليه الخ اور ابام الو عی کی د کل یہ کہ اس میس ہے بات مپول اور خر وا س کہ FIA‏ 
شر طکیا ےکی وکل اس میس ونت بیال کہ نے سے ہے لاز آ تا کہ ہے ی کے دن یو رای ا سام یل گار ہے او رکا مکو 
یا کر نے ے ا کار مقصور معلوم ہو تاس کہ و ہکا کر کے ابر کا ن ہو جائے۔ اور ال ونوں سکام اور وف کو 
یا کر نے ےک ای ککودوسرے پ تر ی غیں د کی اق ےک اصل قصو و بجی ے۔ اس می ںکا مکواصل عقوو علیہ مان میں 
متا رکا فا دم ہے اور وق کو اصل مانۓ میں اس تاتا یکا فا کد ہے اس طط رح ف رین اتی این بات بہت مک ل پڑیگے۔ لف اس 
رح سے دن تم ہو تے کی دوناتباکی کی کاک می امعاملہ یک د کاٹ ہوا تھا اس ے کے می رک اج ت ی چاے۔ ج بک دہ 
متا کی گا کہ تمہارے سا تھ پور ی ر وی یاک مکرد یی ےکی بات موی کی ج کہ کی کک باق ہے اس لئ م ابی اج تیا نے 
کے تی وف ٠‏ ۱ 

معلوم ہو نا اس ےک ہاگ اس ناتا سے ایک من آنا کان کو اس ش رط پار بای ہ دک دہ نی ال ںکام سے فار ہو جا سے 
گا الاجا بالا ماع چا ےکی وک ای ش رط می ا صل وف تکی تید ے۔کا مکی نیس ہے۔ او راک کی درز یکو اس غ رط یر 
اجار: بر رکھاکہ مآ تی اک یر کو یکر سے دیدد۔ نو مکو ایک و ینار ےگا او رکل کیک رو کے نونف ر ینار مز دو رک لے ۔ 
گی توامام ابو نیڈ کے زیی اس میں مکی شرط یی کا مم لکرن ہے۔اوراس میس وف تکو یا نکر کہ جب یکام ہو ىہ 
مرف جلد اور کی دک نے کے لئ ہے دو رکش رط یی کے لے ر ہے مد وعن ابی حنيفة الخ اور ایام الو طرف 
سے ایک دات ہہ س ےک گرا نے ال طر ھام کہ رج کے دع میں ا کم ( لا رکھانا ھت یڑا یکردینا وی اجارہ چ٠‏ 
ہوگا کی وک ع ری میس فی الیدم اور ار دو میس آرع کے دن میس رف زاٹی کے لئے م وگیاے۔ اس لے اصل حقو علیہ صر فکام 
باق ر ہگیاے۔ لاف اس کے اگ صرف( 7/ج )کہا ہو ۔ اک جیا ستل تاب الطلاق مھ لگ رگیاہے۔(ف جہال ی کہا ےک تم 


کل الہداے جد یھ 8۸ لر" م 
کل کے دن میس طلاق نے والی ویک وکل طلاقی ہے کہ ان دونوں صور تو ں کا م وہا ںتفصییل کے سا ت ےگ ز ری کے )۔ 
و :اک ایک کس نے ایک ای سے ای ظ رب اجار ہکا متا لہ ےکی اک وہ رج ی 
دس سیر نکی رون ایک در ہم کے وض ب یکرو ےگا تفصییل ستل _ کم اقوال ا 
کرام ولا تی 
قال ومن استاجر ارضا على ان يكربها ويزرعها ويسقيها فهو جائز لان الزراعة مستحقة بالعقدء ولا یتاتی 
الزراعة الا بالسقى والكراب فكان كل واحد منهما مستحقا وكل شرط هذه صفته يكون من مقتضيات العقد 
فذ کره لا یوجب الفسادء فان شرط ان یثنیها او یکری انهارها او بُسرقنها فهو فاسد لانه یبقی اثرہ بعد انقضاء 
المدة وانه ليس من مقتضيات العقدء وفيه منفعة لاحد المتعاقدين وما هذا حاله یوجب الفساد ولان مواجر 
. الارض يصير مستاجرا منافع الاجیر على وجه يبقى بعد المدة فيصير صفقتان فى صفقة وهو منهى عنهء ثم قيل 
المراد بالتثنیة ان يردها مكروبة ولا شبهة فى فساده» وقيل ان يكربها مرتين وهذا فی موضع بُخرج الارض 
الريع بالكراب مرة والمدة سنة واحدة وان كانت ثلث سنين لا يبقى منفعةء ولیس المراد بکری الانهار 
الجداول بل المراد منها الانهار العظام هو الصحيح لانه يبقى منفعسة فى العام القابل. 
تی ام راا ےک ہگ ری نف ےا زع یوق کے ناس شر ط کرای یہ کیہ شش بی اے جو ول 
گا(ئل چلال گا) اس مر دانے ڈالو ںگااوراس میں فی بھی میس بی ڈالو کا تق ای اکم اىہ دنا جائز ےکی وککمہ اجار وکا متام کر نے 
ان یں ی ا ور کی ا ا کی کو جو تا دانہ ڈالنااور پائ سے اسے سیر ا بک نا بھی جائ کل 
رو رک ہو کی دک اس کے فی ری یکر کان ہی یں ہے۔ پھر ریا محاللہ جس می ا مکی شر یں کا یکی ہوں سکن ایی 
ش ہیں چوا معاملہ کے مناسب اور لوا مات یں سے مو ںکہ معام کر ناخو و تیان شر طو لکا تا ض اکر ج ہو فو ان کے بی نکر نے 
ے موایلے فامد یں ہو تا ے فان شرط الخ او راک رکراے لیے وقت ہے ش رط لال کہ ز لن می ددباروخلہ ڈانے یا ال یکی می 
گہ رک یککرے شش نس ضر سے پا آ تا ہے اس ےگ رب کہ ے یا اک لن مگ بداو رکھادڈانے لیے ش رط فاسد ےکی وک یہ شر یں 
اہریں۔ ‏ 5 . a.‏ 
لانه یبقی الخ عقا فاد مو ےکی و چ یہ سے کہ اکال اجار ہک بدت سخ ہو جانے کے !عد بھی باقی د ہتاے اور ہہ عقر کے 
لوازبات اور محنقیات سے کی یں ہیں۔ اوران کی وچ سے لقن مم سے مرف اک یقن کے ماک ککو فار ہون کن 
ہے۔ اور ہر دوش رط سکاحال اییا ہو وو فا وکا سبب نی ہے۔ اور اس د لے بھی زی ن کا ایک الن با تول سے تاج کے منا نع کا 
اجارہ نے وا ہ وگیا کی وککہ اجار ہی رت تم ہو جانے کے بعد بھی اکا اتی ر پتاے نذا یکی صورت اسک مو یک ہمگویااس 
ہے اک فیا نع متا کل کیاے ال اکلہ ال اکر نا عمنوع ے۔ جع اکہ امام ام نے حط رت کی رالنہ بین حو ے مر فوغا ایک 
روا کی ے۔ اس موب بر عبادم تک یتفح لکرتے ہو ےا لک ایک رادمہ تا یگئی ‏ ےک کر ایے داد ز می کو ای کے مانک کے 
پا داب کر نے ہو سے زین میں دوبارہ مل چلاکہ دے تو اس صورت میں اس شرط کے مفید ہو نے سکوگی شیک یں ے 
کی وکل اس میں صراحطۂز لن کے مایک م ی کافا کہ ہے۔ اور لہ وگول نے ہ ہکا کہ عبار کا مطلب ہے س ےک و کیہ دار ال 
کمیت بیس دوباروٹل چلاکر خلہ ڈانے تو اس کے فاسد ہو ےکا عم اس صورت میں ہوگاج بک صر فا مرج مل چلان ےکی 
عاات ہو من ای ے پیر اوا ہا سل ہو چان ہو- ۱ 
روواجارہ کی صرف ایک بی رال کے ے ہو اور اکر اجار کی بدت تین سا لکی ہو وکر اے مر لے وا ےکواس محن ت کا 


مه جب ہم 


جن الد ابہ جد یڑ ۹ 2ے 

فائرہ آئندہسمالوں میس ہوگا۔ اور الک مین کے ے اسک باتی یں رو سکتا اس لے محالمہ فاسدنہ ہوگا۔ محلو م مون چا 
77 سی صا فکرنے او رگ ر یکر نے سے مر ادوم تالیاں ٹل جو چون نیش بک یڈ ی نہ ری ہیں اور بی ہوم ہے۔ 
کوک ا ںکا نکی سا لک اق تاے۔لاف صاحب میا ےکا کہ تار تول ہے ہ کہ اس سے جوف ایال مراد ہیں نین 

ار“ 709707 کی کہ ال کا نف اجار کی مر ت کے بعد بات نہیں رو کے ای لے مصتف نے اس 71 
می اس طر کیہ ےک اا سے بوک نھر مر اروے کی کہ کی ضہ رہد نے سے ا یکا تفع سد دسا لک تک باق د تاے۔ پھر بھی اس 

صورت لا اک راجارودو تن سالوں کے لے ہو توا ے اسر نیس ہو نایا ہے وا تی لی اعلم با لصواب 

:ار ایک فیس ےکک یا زین ای ش رط اجو یک شس بی اس میس پل چلاوں 
گا۔اس بی ف ڈ الو ںگاءاور اس میس نج بھی میس یی الو لگا اکر ماک ز ۲ن نے ا یش رط بر 
زین اواو یک ےکر ایے دار ای می لگو یراو رکھادڈا لےگاپا کی الیاں صاف او رگہ ریکمرے 
گے اور وجی اس میس بل بھی چلا ےگاہ خواہ صرف ایک سال کے لے ز مین ل ہو ید وتن 
سالوں کے کے ی ہوہ مسا کی تفیل عم ءا قوال اخ بول کی 
قال وان استاجرها لیز رعھا بزراعة ارض اخرى فلا خير فيه وقال الشافعی هو جائز وعلى هذا اجارة 
السكنى بالسكنى واللبس باللبس وال ركوب بال ركوب له ان المنافع بمنزلة الاعیان حتی جازت الاجارة باجرة 
- دين ولا يصير دینا بدینء ولنا ان الجنس بانفراده يحرم النساء عندنا فصار كبيع القوهى بالقوهى نسیئةء والى 
هذا اشار محمد ولان الاجارة جوزت بخلاف القياس للحاجة ولا حاجة عند اتحاد الجدس بخلاف ما اذا 
اختلف جنس المنفعة. 

ا . مام سے رملا ےک ہاگ کسی نیس نے دوس ر ےکک یکین ین ایک او رھت یف ین کے عو امار بے فی و ا 
اس سکول ہت ری میس ن ہا نیس ہے۔(ف خلا زید نے مکی ز مین ز داعت کے لے ای ش رط ےکر ایے پل یک مجر اس کے 
۶وش زپ ړک ز ین ٹل زراعت تکرےگا۔ تاش ری نی ے)۔ وقال الشافعی لغ اددام شاف نے فرلا کہ ہہ جات 
ہے۔ ای راگ کس یکا ہکان رش کے ے لیا شر درا کے ا 2 ایی اور مکان می ر پش اتی رک گیا 
ا ےت ۱ 
دوسرے کے جاو رکی سوا گی کے عو اچار ہیر لیا توان تتام صور توں سس ایمای اختلاف ے۔ له ان المنافع الخال جل نام 
اٹ یی ول ىہ ےکہ ان تا مور توں بی مناٹع اعا کے عم می ہیں ای ے اچارہ قر کی اچ ت ملین جا ے نار 
مناخ این لن صل 2 نے کے عم می نہ ہہوتے بللہ دین ہوتے فو تر کا عو دین ہو ہاج مال کہ ارت کے ادہار ہو نے بر 
اچارہ ہو تا سے لیکن دی ن کا عو دبع سے یں ہو تاے ابفرااس کے ناچا ہو نے کی )کوج 0202-2 

٠‏ ولنا ان الخاور مار ی زی ےک ال ورون جیپ جس ون کی دفو نکی کر اک زی پر ماز 
دک ای ککاادھار ہونا رام ہو چا تا سے تی ےک سی نے ڈھالہ کے ڈور کے کے عو ڈھاکہ ی کے ڈور ا یڑ ےکوادھار 
روخ ےکا ا دوناجائز ہو جاے۔لمام تم نے بھی ا یکی طرف اش ہکیاے اور ا سک ایک وبل ہے ہے گیا ےکہ اجار مکو قباس کے 
فلاف ضرورت کے پیٹ اشر ہا نکہاگیاے ج بکہ دونوں کے جم جس ہو ن ےکی صورت م اجار م یکوئی ضر ورت خی پا 
پائ ای کے برظلاف کے ا پچ گر 


جن الہد اے جد یړ ۱ ٢۰‏ مل" م 


ای کن و ےکی ایت ینکر ا کی زی نماض ا نا ال ان سے مال اس پر ابم شی واحب 
ہوگا۔)۔ 
ا ا E‏ ا مان 
دوسرے کے کان کے ۶وش رپا کے کے با ایک سوا ری ووسر ی سواری کے وض 
کرای ےی سا لکی سیل ۷ اکم ءاقوال ا ٢و‏ لاگ 

قال و اذا کان الطعام بین رجلین فاستاجر احدھما صاحبه او حمار صاحبه على ان يحمل نصیبه فحمل 
الطعام كله فلا اجر له وقال الشافعى له المسمى لان المنفعة عين عنده وبيع العين شائعا جائز فصار كما اذا 
استاجر دارا مشت ركة بينه وبين غيره ليضع فيها الطعامء او عبدا مشتر كا ليخيط له الثياب» ولنا انه استاجره 
لعمل لا وجود له لان الحمل فعل حسى لا يتصور فى الشائع بخلاف البيع لانه تصرف حکمی واذا لم يتصور 
. تسليم المعقود عليه لا يجب الاجرء ولان ما من جزء يحمله الا وهو شريك فيه فيكون عاملا لنفسه فلا يتحقق 
التسليم بخلاف الدار المشتركة لان المعقود عليه هنالك المنافع ويتحقق تسليمها بدون وضع الطعام 
وبخلاف العبد لان المعقود عليه انما هو ملك نصيب صاحبه وانه امر حكمى یمکن ايقاعه فى الشائع. 

و ام چا مغر یں فر میا ےک اگر غ رکا تیر وو خصوں میں مشت رک ہو اور ان ل سے ایک شیک نے 
اپ دوسرے ش ری کیاد در سے ش تک کک ےک ھےکواس ل ےکر ایے لیاکہ دہ شف اس ڈعی ریش سے ا کا حصہ اٹھاکزداں 
سے دوس ری کہ بر ہدس ےکر دوس ر سے میس نے پورے بی ڈعی کودراں سے دوس کیہ کک پیا وا سے تھے 
بھی نہیں ےکی ۔ یٹاک کوک اجرت لے مو یکی ہو نوہ بھی نیس اور اکر سے نہ موی ہو تا سکااجر شل بھی اسے نہیں ےکا 
وقال الشافعی الخ اور مام شاف نے فرلا کہ اس شف سکودواجر ت مل جا ےکی جو پیل کے ہو گی کی وک لن کے زیی 
2 کے تن ا نا ا کے کی تھے فان کے سے کن یآ نے کان 
ک وکر ایے پر لاج النادونوں کے در میا مض رک ہے ینایک پڑ نے کے لئے ایے خلا مکواجادہپرر رکھاج وراک کے اور دو سے 
فص کے ور مان ش رک م وک اس یں اس خلا مکی یا مکان کی ارت واحب جو چائ ہے۔لاف۔ اود اام مرکا تول بھی بی 

نے ان 

ولنا انه استاجرہ ال ا فو ات ا مر ضا2 
لے احاد ور لا یں میں دووں شخنصوں کے ور میا کول می افاصلہ موجود کل س ےکی وک لو چھاٹھانا یک کسی ل ے جو صاف 
نظ 1ج ے اور جے کی فل نمی ںکہاجاسکناے ل ایی غر یم شر ہچ کو ئن تصور نو ںکہاجاسلکناے۔ بتلا ف ی ےکی وکر 
6 کی ھر ف سے اور جب اصل متقصو کو جوا کر ناشاپ شردآ ہو نشیا یکا سیر وکر ےکا شور ہو سکناہو توا کی 
اھ ت داجب ن موی EES FU LE E‏ 
توو بھی اس میں ر یک ہو .اس طر ںیھ خودا مال اپن دی لئ ق لکرنے دالا وگااور ا کی رح سپ دک نا ا ہت نہ ہوگا۔ 
ابی ےا سک اٹ یاجب مین کی کارت ا ےگ کے جو خوداس کے اپنے اود دوصرے کے در مان مشت رک ہو تاس 
۱ کو رت تہ 
من ے نوئلہ کے سا ا کان ہوک و سو ھت 
و EE‏ مال چن کی یں نے ترم نتے 


ہد ای چد یر Pet‏ ملد م 
ش رک اکر شر 7 ا / ا داجب ہو چااے)۔ 
و :ایک ی نے فل کے ای ڈعیر و ی 
کاش رک ہودداپے ش ری کویاا کی ک ےمد سے ےکوااکی ےاج ت بلاک اس ڈعی ریس سے 
اس کے اہ حصہ کودوسر اشن یا کا کد ھادو ری ن لہ پر بانیادے ۔گردوس را 
ٹس پورے ڈو کودوس ری یک پر ت لکردے, ات لک یتیل لم اقوال اض ان 
ال 
ومن استاجر ارضّا ولم يذ کر انه یزرعھا او اى شىء يزرعها فالاجارة فاسدةء لان الارض تستاجر للزراعة 
غيرهاء وکذا ما يزر ع فيها مختلف فمنه ما يضر بالارض وما لا يضربها غيره فلم يكن المعقود عليه معلوما 
ن زرعها ومضی الاجل فله المسمیء وهذا استحسان وفی القیاس لا یجوزء وهو قول زفرء لانه وقع فاسدا فلا 
علب جائزاء وجه الاستحسان ان الجهالة ارتفعت قبل تمام العقد فينقلب جائزاء كما اذا ارتفعت فى حالة 
لعقدء وصار كما اذا اسقط الاجل المجهول قبل مضيه والخيار الزائد فى المدة. ومن استاجر حماراالى بغداد 
درھم ولم يسم ما يحمل عليه فحمل ما يحمل الناس فنفق فی بعض الطريق فلا ضمان عليه لان العين 
لمستاجرة امانة فى يد المستاجر وان كانت الاجارة فاسدةء فان بلغ الى بغداد فله الاجر المسمی استحسانا 
على ما ذكرنا فى المسألة الاولیء وان اختصما قبل ا عليه» وفی المسألة الاولی قبل ان یزرع نقضت 
الاجارة دفعا اذ الفساد قائم بعد. 
وھ از کی نے ایک زین اجار ہم لاور ا یوقت ہے نیس تاپاکہ میں اس کی کر و کیا ےکک کر نےکاذک کی 
e e‏ تس چیک کک ک دل اپار ساوک زین بھی کین ےکی ا او دمر ام سے لے 
ل انی ہے شا :در خت لگازایاکوٹی گار ت ہنانا۔ راس میں جو چیر بو جانا ہے وہ بھی تاف ہوکی ہے" ان سے مھ چ زی اہی 
1 ہیں جو ز مین کے 8 نتصان وہہ لی پں مشرا گیا کال اور یھ چس ا کی زیادہ قصال دہ یں ہو ان ظرح 
زره نکر سے سے یہ معلوم نہ ہوگاکہ اجار کا سل مق دکیاہے۔(ف امم شا وا کا یچی قول ہے )۔ 
فان زرعھا الخ برای عم کا اجار ؛کر لین کو راہ دار نے ای مین یں یکی اور ای کے بعد ای اجار کی 
رت بھ یگز کی وجو اچ ت ہے موی ی ۔ اسان وی واجب ہ وی اکر چ تیا لکاتقاضاہ اک یہ اجا پا کل چا نہ جاور اام 
ز کی قول سے کی وک ہے معالمہ فاسد ہو اے اور جھ چ اعد ہو چا ے بعد میس وا ت یں ہو کے بی تول الاما یواح 
رو ور مھ جو ود وی ور کے 
اتا کو علوم ہوک کہ ا سکرا ی داد نے ہزم نکی کے ےی ی اور ی بات بھی موم ہگ کہ وکیا یکر ےکر 
ای معائلہ یش انل زی نکامایک ا موش رہد ہا کک ا کی ت تم وی لپ اوہ معارلہ بد لک بالاخھ چا ہوگمیا۔ اہی ہی 
یی ےک محا مک نے ہے ابقد ہی طرع ہلت ہوک ہوبر دہ جات ہو جائے لوالا ای وو معام جائ ہو ہا ے۔ اب 
کی مال ایی بی جی ےک کسی چٹ کی کے وت اس وق کو گول کی ایا د اور بعد اسے وا کردا ہو۔ ای طرح 
یی ےک ہاگ ریا نے خاش ماش نے زی ایا ھا وگ تناد کاندرد اس ینکر کے نید کروی 
بیددونولں کے جات ہو جات ہیں۔ 


یئن البد اے جد یر rer‏ چلر* 


جہ مس سس و و ا یں نی سی 
ومن استاجر حمار الخ ین اکر ایی خی ن ےس یکاگمدھابفدادکک لے جانے کے لے ایک در ہم کے وت کرای یہ 
رہہ گی بالا کہ اس پ ہکیالا رکہ نے جا ۓےگااور بعد یس ا یکر ایے دار س کے پر ای ہی چز لادی جے لوگ جموم 0اد اکر _ 
ہیں بر انااد هگد ہار اے میس مر اتور س ن کرای دا رگد سے ےکاضا کن نہ وکاک وک ج چ کر اہے لی پا سے ووا اا 
دار کے پاک بطو رابات ہو لی اکر چہ اا کا اجار و فاس دن یکیو ل نہ ہو۔لاف الاک کر ایے داد اپنے عامل ےکی با تکی تا کر _ 
وتاس بکہلاکر ضا کک ہو چا ےگا پھر اہ شی کد سے پر ایی ہی چ لادی ےلوگ گمو الا داکر تے ہیں فذاس طر ار 
گے کے ا ککی م کی کے خلا فکوکی چ کی لاد ی ے۔ اذ ااسے قا صب کٹ ںکہاہا کنا ے۔الہتہ چوک معا ہکی ابتد 
سے لادک چر کے بارے می اس سے پھھ کر کی ںکیا تھا سے اجار فاسد ہو اھا ناء کہ بو جج لاداچانے دالا تھا اک 
گی دضاحت کیل گی اس لئے ہے ارہ فاد ہواتھا بر اک کے لاد لے کے بعد وو چہالت ہو ی اور ہے بات معلوم ہوک یک اس 
کے اجار ہلک کا تیر ہے ہے )۔ فان بلغ الخ ئ4راگرالں نے بدا تک مال اد یا وا ستسمانااس کو وی اج ت لے کج پیل 
با نکی ای گی جیہاکہ تم نے بعل ستل یس بیا نکر دڑاے۔ اور اکر موجودو متلہ می لکرایہ دار نے وھ لاد نے سے لے اور 
پیل ستل میس کا یکر ے سے پیل آئیں میں م لیا فذاس فا دکوش مکر نے کے لے معاملہ ب یکو ش وکر دیا جا ےکی وک ۲ کی 
تک فادہا ے۔ ۰ : ۱ 
:کے ایک زین اجارہ پر گر مقصد نی جایاکہ اس شسکیاکا مکر ےک خا : 
یت کر نایادرخت لگا نا ہے تق رکرنا۔ ای عالت میس ال نے ز مین می کک ری اور 
احجارہکی بدت بھی تخم ہ ی ایک تح نے ای گر ھا کی ن ج کک ںہ سا مان نے 
2 ہے جج 
جانے کے ےکر ایے ہے لیا کرای بے یبای امان لا داجو حمومالاداجاجاے اور اناد ہگ را 
رات میں ہا وت سے رگیاءیا مقام محصود جک اباك لے گیاء تام مال کی 
تفصیل_ م قوال ا کرام ورای 
باب ضمان الاجير 
قال الاجراء على ضربين اجیر مشترك واجیر خاص فالمشترك من لا یستحق الاجرۃ حتى يعمل کالصباغ 
والقصار لان المعقود عليه اذا كان هر العمل او اثرہ كان له ان يعمل للعامةء لان منافعه لم تصر مستحقة لواحد 
فمن هذا الو جه یسمی اجیرا مشتر کا. قال والمتاع امانة فى يده فان هلك لم يضمن شیئا عند ابی حنیفة وهو 
قول زفر ويضمنه عندھما الامن شىء غالب كالحريق الغالب والعدو المکابر لھما ما روی عن عمر وعلى رضى 
الله عنهما انهما كانا يضمَّنان الاجیر المشترك ولان الحفظ مستحق عليه اذ لا يمكنه العمل الا به فاذا هلك 
بسبب يمكن الاحتراز عنه كالغصب والسرقة كان التقصير من جهته فيضمنه كالوديعة اذا كانت باجر بخلاف 
ما لا يمكن الاحتراز عنه کالموت حتف انفه والحريق الغالب وغیرہء لانه لا تقصير من جهته» ولابى حنیفة ان 
العين امانة فى يده» لان القبض حصل باذنه ولهذا لو هلك بسبب لا يمكن الاحتراز عنه لا یضمنہء ولو كان 
مضمونا يضمنه كما فى المغصوب والحفظ مستحق عليه تبعا لا مقصودا ولهذا لا يقابله الاجر بخلاف المودع 
بالاجر لان الحفظ مستحق عليه مقصوداً حتى يقابله الاجر. 
ر ترود ی نے ف رمیا کہ اچ ردو م کے ہوتے ہیں الیک مضت رک د ورانا ی ۔ مشت رک اچ رے ر ادد داچ ر ے 


مین الہداے جد یر rer‏ تب لم 
کہ ج بکک ال کاکام لور ات ہو جاۓ دواجر کا ن ل ہو جا کے رر ببزاور است یکر نے وال اک وکل اجار ہیل جن پا کا 
معایل ہے مواہواکر اک چیز یں ا کا مکااشرر ہتاہو نواس ابق کواس با تکااختیارد بتا کہ دای ککام کے سا تم دوسرے لوگوں 

ےک پک ےکی وکلہ ال ار کے مزا کا حا کوئی ایک یش یں ہو تاے۔ اس اتپا سے اہیے ا رکو اچ رخ ر ککہ 
` جاتاے۔قال و المتاع امانة فی یدہ الخ اور قدو ر نے فربایا کہ الہ شت زک اچ ر کے پا تہ میس جو چھے امان یامال ہو تا 
ہے وہ بور ابات و جا ہے اک بنا راک دومال ضا ہو جائۓ لاام الو پیل کے دیک وہاچ کی با کا ضا کی نیس ہوگااوراام 
ز رکا بھی بجی قول ہے اور صا کیان کے ناد ی وہ ی ضا من م وکا الہتہ اس صو ر ت ٹیل ضا کن کی ہوگا۔ اح ایک ز برو ست 
آفت آہا ےک وچ سے فال ہ۲ جاۓ کے ز برو ست آنگ لک ی پھ و شمنوں اور ت کون نے ط لک رح کرو مو۔ لھما 
ماروی الخ صا ن کد ل حط رات رو یک روابیت ےک ہے دوفو حرات مشت رک اچ رکوضا کک تا ے تھے رف 

قال الشافعی. اخبرنا. ابراهیم بن ابی یحی .عن جعفر ابن محمد. عن ابيه محمد الباقر عن على رضی الله 
عنه انه كان يضمن الصباغ والصائغ و قال لا یصلح للناس الاذالك. 

ن حطرت تل رر اور تار سے بان دلواۓے اور وہ فرماتے ج کہ عوام کے 0 ا ّ 
دوس رک صورت نیس ہے۔ رواہ البیھقی باسنادہ عحنه۔ لین اس اناد انتطاعے مک کہ امام مھ باقر نے حضرت ی کاز مان 
نی پایاادر ان دادا ین این ع کو خی پایا۔ کن ا ے مز کیک اس انقلا سکول حرج یں ےکی کہ امام مھ بار ات میں 
اس ےا کار مال مجت ےم )ولان الحفظہ الخ صا نک ایک د مل ہے کی ےکہ اجر کے ذم ا کی تفاط تکر نا 
اجب ے۔ ای ےکہ ما لکی طفاظت کے بخ رکو یکام ی ںکر کت ہے۔ لبڈ اکر ما لی ایک و چ سے پلاک و۱پ یس سے بین 
کان ہو بے فص بک ییاچ ر یک رلیناوغیر و ناش موت می م کہا ہا ےگاکہ اس اجر نے ما لکی حفاظت کو تاب یکی ے۔ 
اپا وواس ما لکا ضا کن ہوگال بی اگ رکوکی شح سکوکی مال این پا امات کے طور بر ر کے کین ا کی اج ت یا تا ہو تو وہ 2 
ہے مال کے ہلاک ہو ہا ےکی صورت ٹیل ضا کک ہو جاے۔ بر خلاف اس کے اکر مال ایک وجہ سے پلاک ہو سے بیان کن تہ ہو 
تی ےک چ داج کے پاس اا تکی جک از خروم جاۓ بے ز بردست گل ککئی ہویاز برو ست ڈاکہ گیا مو فان صور تڑں 
مال جلاک ہو جانے سے محافظ ضا من نہ ہوگاکیوکہ اس ابس ےکو یکو ابی ںیا یگ اود امام ابد عنی کی دلیل می کہ اجر 
کے پاس اصمل مال بطو رابات کے تھا کی کہ اس متا کی اجا زت سے اس ابر نے ای پر ت ہکیاتھا۔ میں وجہ ‏ ےک اکر ایال 

تی انی وت تے ملاک یوین سے نا ٦‏ کل کن نہ ہو ناس صورت میں دو بھی بالا تقاقی ضا ن نیس ہو تا ے او راگر وہ 
ال اس کے پاس عات کے طور بر ہو جا ودوا یکا ضر ور ضا کک ہو تا کے کہ قصب کے ہو ے مال می ہو ما ےلین فصب 21 
والاہر حال شش اس ما ل کاضا من ہو تا ہے۔ اور چرم ٹکہناکہ ار کے ذم ما لک تفاظت واجب ے نیہ وجب اس پر قصد ا نٹ کیا 
گیاے۔اکی وجہ سے اس تفاظت کے متقا می اس اچ رکو تق اک کی جنات ک اج ت یں EE‏ ۱ 

و :اچ کی تحریف۔ شممیں۔ اور ان س فرقی: م اقوال ام کرام۔ ول تل 

ایق :۔ مرادوہ ی سے جس نے اپے آ پک ویم 2 لے اجارہ پردیا ہو خواہ ایا 

خد سگار کے وکر ہوتۓے ہیں۔ )کو کا رمک ری ہو کے روئی 11 ناای۔ بادر ہی ۱ 

وودر زی واو رہ 

قال و ما تلف بعمله کتخریق الثوب من دق وق الحمّال وانقطا ع الحبل الذى يشد به المكارى الحملء 
وغرق السفینة من مده مضمون عليهء وقال زفر والشافعى لا ضمان عليهء لانه امرۂ بالفعل مطلقاء فينتظمه 


ین البد اے جد یړ ۲۲ ہلا نشم 
بنوعيه المعيب والسلیمء وصار کاجیر الوحد ومعين القصارء ولنا ان الداخل تحت الاذن ما هو الداخل تحت 
العقدء وهو العمل الصالح» لانه هو الوسيلة الى الاثرء وهو المعقود عليه حقيقة حتى لو حصل بفعل الغير يجب 
الاجرء فلم يكن المفسد مأذونا فيه بخلاف المعینء لانه متبر ع فلا يمكن تقييده بالمصلح لانه يمتنع عن التبرع 
وفیما نحن فيه يعمل بالاجرء فامکن تقییدہ وبخلاف الاجیر الوحد على ما نذکره ان شاء الله تعالیء وانقطاع 
الحبل من قلة اهتمامه» فكان من صنيعه. 

تہ :۔ دور ی نے رمیا ےک اکر ش رک اچ رک خلط کرت من براض ی سے اکر مال ہلاک ہوا ہو جیے اس نے 
سے د و ےکی چوٹ س ےکیٹ ےکو پچاڑدایامال لے جانے دالا وگو ں کی بیٹریاد کاکھاۓ اغی رک سل پڑا یجان رک وکر ایے پر لے 
والے نے جس ر کی سے بوچ کو ناوم ر سی ٹوٹ یا اح کے سے ا کی شتی ڈو بگئی لن تام صور تول یس ایر پر 
لن لا م م وکا یہ ہماراقول سے لین امام ز رو شا نے فر ایا ےک ان صور توک یس اس پر مان نی ہو کک ھک الن چیزوں کے 
اککوں نے ےکی تید کے !خیر مطلقآکا مک ےک عم داے لہا اجازت مر طت کےکام کے لئے م وکیا کی مال ایی 
ہوک جیسے مشت رک اج رکاکوئی نا بلا م باد عو یکا کول نا می بلا م ہو ۔( ف ئن ان ل وگول پر مان یں ے اکر ہکم خر اب 
ہو جائے۔ ا سل ستل ے ہواک کی ایر ای برای لے ان لام ننیں جا ےک ا سک و کل اور مطلا بات ٢و‏ ے۔ ای 
طر جب مش رک اچ رکو مطلقاکا مک ےکی اجازت دی کی توا ی می لکام عیب وار ہیا 23- م وونوں کے لے برا ہوگااسی 
ےوہ صا نکاضا ین وگا)۔ 

ولناان الداخل الخ ۲ا ری د کل ىہ ےکہ اسے جواجاز ت دکیگئی ےا یکی اجا ز ت میس ونی چ شا ل موی جو عقداجار مکی 
اء پر داشل مون ہو۔ مین یی ط رع سے کم کنا کی وک اسی ط رکا م کر نے سے اکا مقصد ما سل ہو سلتا سے من مخز 
:سے می کن رک یکی ہو یارنگ اہو ی تال ہو ےکاک و اث ہو اہو اور مکی اش یقت میں ممقود علیہ سحن مقصود ہو جا ہے۔ اک بنا ر 
اکر دوکام اس نے کسی دوسرے کے ذر ع ما ص لک رلاب کی ات ت داجب ھگی۔ جیما کی درز کی سے یار ارا ىسلا 
ار اکم دو سر سے سے لے لتو بھی ا یکی اجر ت واجب ہوک ے۔ اش ریہ محال کے دقت مہ بات ےکن ہک کی م وک وو ود 
ےکا مر ےگا اس سے ہے معلوم ہو اکلہ رڈ پیر اکر نے والاکام اجازت بیس داشل یں ہو جا سے بخلاف ال کے اگ رپڑے 
دو نے دا لن ےکا کوٹ لاز م م کی کیہ دہ اس سے ضا ہکن یں ےکہ اس نےکام بطو داتسا نکیاہے لپ اس کے ارے میں کا مکو 
ر ےکر ن ےکی شر ط غڑیں ہے اس ل ےک ہاگ ال یکی غ رط ہو و ر دوا سان کے طور ب رکام کی سکرےگا۔ اور جو متا 
یا کر ہے میں دہ تایا ے جاج ت کہ ےکاے۔ ای ےکام مس مار یی تید گاج کن ےک دوخیال کر ےار حناظت 
ےکا مکرے۔ اور مخلاف فا اچ ر ےکہ وو ضا کی کیوں یں ہو تا ے اس بن کو تم انشاء اللہ تھی شبات ا 
معلوم ہو نا جات ےک مال لاد ےکی صو رت می ر کی کے ٹوٹ جانے سے جو خر الی پیدراہو کی سے اس غر ا یکاہ شض اس ےزم دار 
ہو تا کہ دوا تنام می کو تائ یکر تاہے۔ اس رر بر باد کاو خود مہ داد ہے۔ ۱ ۱ 

و :شت رک اچ ر سے کی مکی خر ایی ہو ہا ےکی صورت میس وا ںکاذمہ دار ہو تا 
ا ل ما قوال ات ۔ وگل 

قال الا انه لا يضمن به بنى آدم ممن غرق فى السفينة او سقط من الدابة وان كان بسوقه وقوده» لان 
الواجب ضمان الآدمى وانه لا يجب بالعقد وانما يجب بالجناية ولهذا يجب على العاقلة» وضمان العقود لا 
تتحمله العاقلة. 


مین ابد اے جد یھ ۲۰۵ و لر “م 
تجمہ:۔ قدودکینے فراا ےک الت گرا رشت ر کک اپ یکو ہی سے کی کو انان ا سک ی کسی می ڈوب جا ےتوہ 
ا اض ان نین ی نمی ا کی ی بے اول نی دب جا ے با کی ی ی ذادت ھا ےا گرا کے جا ہررے 
ار یگ کر مرجاۓ تووم ایر ضامن نویس ہوگااکر يہ ہے متصالن اور موت ا لک ی چلانے یاجانور کے پا سک کی وچ سے ہو۔ 
(اگر چہ دہ ہت وٹ بیہ ہوجو خود بیٹے نہ سکم ہو۔ اتر تا ی مکی وک اس صو ر ت ٹیل اس م آو یکی غات واجب ےد اور ہے 
انت معاملہ ےک ن ےکی ذاء پر واججب نیس مون ہے بل جر کر ےک دجہ سے داجب ہو لی ےک مزا :وہ تن اراز ی 
کرد ے جب ضا معن ہو تاے۔ اک یتاء ایک امت صرف اک بر فیس پلک عددگار براددکی سر واجنب ہو ہے۔اور جو تات معاملہ 
ےکر ن ےکی بتاء بے لاز م موف ہو دہخوداسی مرم پر لازم آفاے عددگار براد رک پر لازم یں ہو ے_(ف معلوم موناچاے 
کش رک ات ر کے ضا ن ہو نے میس بپڑے بڑے صا اور بر نکا آ یں بی اختلاف ہے۔ من الن ل سے پک کے نز ریک دہ 
ضا کن ہو تاے اور یھ دوس رول کے فزدیک ضا کن خی ہو جا ہے۔ اک لئے اس کے بعد کے فقہا نے ہے فک دیا کہ اچ اور 
مستاج دونوں بی نتصا نکی صورت میں آو ی آ وی تمس کا نقصان براش تک رلییں۔ اس بر ہے اکتا کی گیا س ےک صا کا 
اا کر نای ان د نے پر ہے امام ناندد ہین ے۔ و اک ےک کٹا یا فار کے با ا وا 
اورندہ مت ری تا کہ اقترا کر نے وا ےکا اکتا با گل س ےک کک نے وا ےکا مقصمد ہے ےکہ جب ایک متلہ 
یش یاب کرام کے در میان اختلاف پیر اواب ایک ہی یائ سے تلف روا تی پا کر کے ر 
مشت ر ککو جس ط رر ضا مین :نان ےکی ردایت آل ج و سے کی النا سے ضا کک نہ بنا ےکی بھی روات پا کی ہے۔ اکر چ یہ 
۱ رواییت لام شا نکی جاور دوس ری بظاہر ضیف ے۔ قر ہے س ےک جب اس ستل می سیا ہکرام کے اقوال ملف مم کے 
یا گے توقای کے لئ مہ فیصل ہکر نا مششئل ےک وہمکس قول بر فیصل ہکھرے۔ اس لے ہبتر یہی صورت ےک اچ اور متام 
ای صور فوں میس ۲ یں میس خودتی مین ک لی پچھراس میں ٢و‏ ھی تک ہو کو لاز تیر یں ے بللہ مفصودیہ ےک نس 
طرع وو جا نہیں مک رلیں۔ اکا کل مہ وکاک وواختلاففکر نے کی توان کے سان آئیں می تم کر لی ےکاف وی دیاجائۓے 
گا۔ پچ راک وواس می کے فی کے بد بھی آ یں میں مک کرمں فو رو زا حا مک وکو کم د ینای ہوگا۔ مض علا نے بیہاں ی 
تا کے قول پر فو ی دا ہے القلاصہ ۔ اور می قول اام خا ی و ماک وا ڑکا بھی ے۔ اور حرات ترو لی وخ عم ری اٹہ 
سے ایہای مرد کے فقیہ ابواللیغ نے ذک کیا ےک حطرت امام ابو عفیفہ کے قول ے فوی٤ے۔‏ حا عااش رلیہ۔ تا 
مر تیان اور تا ی نان کی اک پر فک د ےے ےر او راگ موی ہو اکی زیاد فیا پاڈکیگکرسے ی ڈو بک مو وگو کی بر 
سے مز دو ر کل پڈا ت یھر بر با دی شس ان لازم خی ںآ تۓےگا)۔ 
و :اکر اچ رمش ر کک یکو ابی ےکوکی حار ہو جاے_ خلا :امار مہاےا 
رت مات ان تا کاو وت 9 متا ٤ضا‏ ن موک نہیں ۔تفحیل 
سای کم اقوال ا ولک ۔ | 
قال و اذا استاجرمن يحمل له دنا من الفرات فوقع فی بعض الطریق فانکسر فان شاء ضمَنه قيمته فی 
المكان الذى حمله ولا اجر له وان شاء ضمنه قيمته فی الموضع الذى انكسر واعطاه اجره بحسابه» اما 
الضمان فلما قلناء والسقوط بالعثار او بانقطاع الحبلء وكل ذلك من صنيعه» واما الخيار فلانه اذا انكسر فى 
الطريق والحمل شئی واحد تبين انه وقع تعديا من الابتداء من هذا الوجه» وله وجه آخر وهو ان ابتداء الحمل 
حصل باذنه فلم يكن من الابتداء تعديا وانما صار تعديا عند الكسرء فيميل الى اى الوجهين شاءء وفى الوجه 


مین الہد اے جد بر ۲ بل "م 
الثانى له الاجر بقدر ما استوفی وفى الوجه الاول لا اجر لەء لانه ما استوفی اصلا ۔ 
رت اام مم نے فر مایا ےک اکر نیک شی ےکس یکو ا سکام کے ےم دو رک پر رکھماکہ دودریاے فرات سے می کے 
شہ رکا مطکافلال عجل تک پاپیادے اور نے جاتے ہو سے رات می کی چک مرگ کر ماوت جائے فذ ا متا ہکواس با تکااختیار 
کہ ٹس چک سے وہ مذکا ا ٹھوایا ہے وال پر اس دقت اس شہ رک ج تمت می وہای مر دور ے وصو لکر نے اس صو رت مل 
ای مز دو کو یھ بھی مز وور ی یں ےکی یا ےک شس مہ بر دہ ماو ے وبا پر ااس شہ رک جو تبت ہے وہ اس سے نے اور ال 
چ کک ل ےک پیل صاب سے جو مردوری ہو کن ہو وہاے دےدے۔ خلا :اگ رو ےرا ے میں ٹوٹاے و آو یا جرت اور 
تن چو تھا رات میس ٹوٹا سے تو ن چو تھا ت دے دے۔ 
وعلی هذا القیاس اورب طیا تال ز دور باک وج ے لازم ہوگ یک وہ شت رک اچ رتا کی وکت ے مال ضا 

ہواے- یزاوم ضا من ہوگا۔ پچ رمک کک بنا خواواس کے اسل کی وچ سے یاد کی کے ٹوٹ جانے سے ہو ےار ی با قش ا یک 
تکت یں ار ہو ںکی کی وتک اس نے ما سن شہدکی ات میں یر ے امام اوراعقیاط ےکم یس لیاے۔ اور ایال واے 
تی متا ج رکودو ہا نول میں اس لئ اخقیاردیاگیا ےکہ وہر ات یی ٹوٹ ہے حال اتک الس بوچ کو اانا ایک تکام ہے۔ اس سے 
ظاہر واک گوباااس سے شر و ہی یسل بے اعقیا شی اور زیاد کی موی گی او رگویاااس نے انٹھاتے نی اسے تو وی تھا۔ اک جک الیک 
دوس بی وجہ بھی موجود سے دو ےک مگ ےکواشھاناشر ور می اس مستا رک اجازت سے مواتھا وگو ای ونت ا لک طرف ے زیادل 
نہ تھی یک بس وقت وو ٹوٹ ہے اس وقت زیاد تی اک یگئی۔ اس سے معلوم م واک ہے جر مانددو ہا تول کے در میالن ٹل ہو ےک وج سے 
سے تی ابت زاء میس زیی کی اک ٹوٹ کے وقت زیادی ہوگئی۔اس لاس متاج ہکواغقیار م وکاک وونوں صور قوں میں سے جس 
صورر کوچ ےا خقا رک ےکر دوس رک صو رت ٹیل اس مز دو کوا تی اجر ت ےکی کی حت اس مز دور ے اس مستاجر ےپ 
سے من بس ہیل ہ کک مردورنے فک یدیا ے۔ اور یی صو رت یس ا سکو بھی م روو ری یں ل ےک کی وکل اس متا ج نے 
اس عزوو رکاکوگی کی کام نین پایا ہے۔( فک وک چہاں سے متا تایا ے و ںکی تمت کی سے اور اس صور ت می اصل قمت 
ٹس بے بھی زیاد لی نہ موک بخلاف اس کے اکر ٹوس کے چک تمت ل ہو فو یہ تمت یقت جو کی تبت سے کہ زیاددہ گی 
ہو اور قب تکیزیاد ناک مز دور کےکا مکی وج سے پاک کے ای لے ا کی اہر ت ولاز م ہگ )۔ ۱ 

و :اک ایک ی نے ایک مز دور اس لج رکھا کہ جوا کے ہد کے ک کو ایک 

صو س لہ ے دوس ری صو س جل کک یہنیارے۔ پھر نے جات ہو کے راستنہ میں 

ال مز روررے مذکاگ کر ٹوٹ جائے اور شہد ضا موی ے_تفصیل مل _ عم اقوال 

امہ ولال ۱ 

قال و اذا فصدالفصاد او بزغ البزاغ ولم يتجاوز الموضع المعتادء فلا ضمان عليه فینما عطب من 
ذلك» وفى الجامع الصغير بيطار بز غ دابة بدائق فنفقت او حجام حجم غبدا بامر مولاہ فمات لا ضمان عليهء 
وفی کل واحد من العبارتین نوع بیانء ووجهه انه لا يمكنه التحرز عن السراية لانه يبتنى على قوة الطبائع 
وضعفها فى تحمل الالمء فلا يمكن التقیید بالمصلح من العملء ولا كذلك دق الثوب ونحوه مما قد مناهء لان 
قوة الوب ورقته تعرف بالاجتهادء فامكن القول بالتقييد.قال: والاجیر الخاص الذى يستحق الاجرۃ بتسليم 
تفسه فى المدةء وان لم يعمل کمن استوجر شهرا للخدمة او لرعی الغنم» وانما سمى اجير وحد لانه لا يمكنه 
ان يعمل لغيره لان منافعه فی المدة صارت مستحقة له» والاجر مقابل بالمنافع» ولهذا يبقى الاجر مستحقا وان 


ل الہداے مہ 1۰4 لر “م 
رت تور ی نے فرماا ےک اکر جا ےکی کے ز خ مکوکاٹایا مانو رول کے ڈاکٹرنے جانور کے رگ میں شر ای اور 
جہاں شر کیا جات ہے و ہیں فیک مہ بر ہی لگا مجن زم اس سے بڑھایا یں پر بھی کر ہاور مر جا یا آد یکا بے نقصان 
ہو جاۓ نووڈاکٹر ا یکا ضا ن ہیں ہومگااور اح سر یں س کار جافور کے ڈاکٹر نے ایک ایگ کے عو ض چائو رکو شر کا 
اور وو جانور ہلاگ م وگیایا تو چمنالگانے واے نے ایک غلا مکواس کے مولا کے عم کے مطا بس چنا ایانس سے فلام ‏ گیا ت2 اس 
ڈاکٹیااس ام پر ان لازم نیش آ ےگا کور مدو عبار ول ٹس سے ہر ایک سے ایک می رکا مان ظاہر ہو ا ے ن ثقر 
کی عبار ت یش صو س چک ہکا بیالنا ہے اور اجازت د ۓ سے نام گی سے کن ہا می رک بارت ٹل اجاز تک بیالناے اور 
صو ی چ سے نامو گی ہے اک جک ضا کن ون ےکی دجہ یہ ہ ےکہ ز غ مکو اتی چ سے ووسر جک تک جانے سے بیان ن 
ز کاس رای تک ناا ڈاک کیا تد رت سے باہر ہے ۔کی ھکلہ ہے بات توم لی سکی بیع تکی قوت او رکو ری پر ی ے مکی 
ی کے مکی تلی کو بھی 20ھ ہیں او راھ اس مال می ںک رور اور شر مول مول ہیں۔ اپ اور ست اور کی 
کا مکی تیر ان کن ٹن ے خلا ف کے ویر ہک د علا اور سلائی ویر ہک نے کے مھا کے میں جو بات پل با نکی ایی سے 
کہ اس میس ایا کم خییں سے کی کل س کو کے او رکو ہے ی یڑ ےکی توت اود ا لک پا راگزور ی آوی ابی نج سے 
موم کر کا ے۔اسلے ای ےکا موں ہیں یکا مکی تید لا نے 
( ف پل رار جامع سخ کی عبارت یں ن جلہ سے آکے بڈ گیا ہو تب ضا کن ہوگاادر ق کی ارت یش ےک اکر 
اجازت کے !خر ہو تب ضا کن وگ ک۔ اس مہ ایک جیب مستلہ پیداہو نا ےک اکر خت ہر نے وانے نے پیا بگاہ کے اور 
سے جے (حشقہ)کوکاٹ دیا اس کے بعد اکر دوہ ( تخوان )ا چام وکیا توا نکی ن خت کر نے دالے بپ رک جاک دت لازم 
آ گی جییاکہ زبا کاٹ ڈالے میں لامآ ہے اور اکر وہ ون م گیا ذو ری ٹیس بل تصف دیت لازم موی ۔(ج بظاہر 
لاف تا ‌ے)۔ ۱ ۱ ۱ 
قال والاجیر الخاص الخ دو می کم اچ ر خاک سے اس سے مراد دہ اچ ر ے جو ن اور مقرر برست کے لے خودکو 
متا کے حا ہکردے۔اکر چہ اک مرت می دہکوئیکام ن ہکرے تی کسی تخس نے ایک آد یکو ایک مہ ینہ تک انی خد مت 
کے لئے ا کریاں چائ کے ےن وکر رکھاا لیے م زوو رکو ات وحعد جج یکباجا نا کی وکل یی شع اس مدت یم صیادوسرےکاکام ۱ 
کر کے اور اج وعد کے بھی ہی ن ےک ایک فص ایک بی آدبیکامزدور موک وکلہ اس مق رر ت کے اثر را کے 
سارے متاح اس ایک میس کے لے خصو ہو گے اور اہی مزا کے متقائل ٹیس اس کو رح 
اج تکاجقرار باق ربناے۔اکر چہکام ‏ مکرادیے اید( ف بخلاف مضت رک اچ ر ےک اکر متا کے فدہ سے یی کم تم 
کرد گیا وہ شف اجر کا خی نیس ہو ا ے۔ چنائ اام سے وات ےک اکر ایک در زی نے ایک کک یڑ ایی در ہم 
کی عردو کی ب سا ی رکپڑڑے کے مان ککا کے پر تہ ہونے سے بط ہی نے ا سکی سلا یکول دی ووو ورز کا کی اجر کا 
سخ نہیں ہوگااو راک سی درز یکو اپنملاز م دک ہکرام گر کیٹراسلوایا پچ ری نے ال کپ ےکی سلا یکول دی اس نے شود 
ھی ا سکپڑ ےکواد میٹ ڈالا تب کی دوملا م درز ایی وا ہکا سن ہوگا کر پھر ابر خا کو ا ںکام کے مض کی ایی 
اج تکااسی صورت میں معن ہو نا جن بک ال کےکامی بورااخقار ھا ل مواو راگ کی عذ رکیاوجہ سے اس ےکم پر اخقیارنہ 
ہو اوہ امیا تپا ے6 ن یں موک جیہاکہ ذ نرہ مل کور ےک گر ایک شف سکو جل میں نی کاجاراہیانے کے لئے 
ا نای رکھا پھر دارا یککام کے لئے جل میں لااو انفاقی سے اس دن مس پاش ہو یر ہیاس ے وکام کر ہکاوہ 
مر دور اچ رمز دور کک r‏ گا۔ ام تیان بی و گیادیاکرتے تھّر))۔ 


سن الہد اے جد یړ ۲۰۰۸ لر نشم 
و ی ان ر ت ا ان کے کے وا ےر 
یش کچ طر یقہ سے نشت ر کیاکی فلا مکواس کے مول کے سے پر تام نے بنا لگیا۔ 
شس سے وہ انان یا جانور م رگیایا یک خت ہک نے وانے نے پچ ہکا خحقن کرت ہو ے اس کا 
حن کاٹ دیا۔ بعد بیس وہ لکا چھا ہوگیا۔ یا گیا اجر ا کی ت ریف مم شال و م۔ 
تام ما لکی تحیل۔ تر توالا دل 
انگ : جج ر ی کاوز ن یاد ر مکا تیا صہ۔ 
قال ولاضمان على الاجیر الخاص فيما تلف فى يده» ولا ما تلف من عملہء اما الاول فلان العين امانة فى 
يده» لانه قبض باذنهء وهذا ظاهر عنده» وكذا عندھماء لان تضمين الاجیر المشترك نوع استحسان غندھما 
لصيانة اموال الناس» واجير الوحد لاأيتقبل الاعمالء فيكون السلامة غالبا فی خذ فيه بالقیاسء واما الثانى فلان 
المنافع متی صارت مملو کة للمستاجر فاذا امره بالتصرف فى ملكه صح ويصير نائبا منابه فصار فعله منقولا 
اليه كانه فعل بنفسه» فلهذا لا یضمنہء والله اعلم. 
تجمہ:۔ دو رک نے ریاس کہ ایر ضا ی کے قغے میس رخ مو سے کوگی چ ضا مو ا ے یاای س ےکا مکو نقصان 
ہو جاۓ توا ی کول اواك لازم یں آتاے۔(ف خلا اس ےپ ی ےکوگی چرچ رک م ییا م م وی یا ی ےکک نے ہز 
فص بک رل اکا مکرتے ہو سے اس کے ب کے سے ٹبیا یھو ڑا کال )او ممیاباد ول سے دعو تے ہو ےک ڑا چس ٹگیایاکھانا بے 
ہو ےگوشت خر اب م وگیایار ونی ب لگ بای طر کول دوس را کام خر اب م وکیا مہ ایر خا کہا تکاضامن فیس ہوگا۔ بجی 
قول امام مالک وخا کد ام کے لین یاد کہ ہے عم اک دقت کک سے جب کی کہ ای سے قصدا کو خرالی نہ ہو گی ہو۔ 
کی وک ہاگ اس نے قصدۂ ایی ترا یکی فو دوبان ا ری رم لا فلاف ضا کن ہو تا سہے۔رع۔ ما ل مہ ہواکہ ایر خاک چ زکو اہ 
کر نے اککام خرا بکر نے میں بر لہ عحمد کیا ہو تو بالا ہماع ضا ن ہو اے۔ اور !خر اختیار اور عر کے اکر ای س ےکوکی ی 
جا ےیاکام گر جا نوہ الا ما ضا مین یں ہو اے اموچ بر پاد ہو یاکام سے خر اب ہو۔ 
۱ اماالاول الخ تن اس کے قیضے میس مین مال کے ضا ہو جانے سے ضا کن نہ ہو ن کیو ج ہے ےکہ بال ین اس کے قضے 
میں لبور ابات ہو جا ےکی وک وہ ا سے مستا رکی اجات سے اپنے قضے می لتا ہے۔(ف ای ے ایےے این سے جس سے فریاد کی نہ 
ا گنی ہو ددضامن نی ہو اہ )۔ امام ابو ضیف کے قول پ ہے اہر ہے۔(ف اس ل ےک امم الو ضیف کے غز ویک ش رک اھر 
ضا نیس ہوم ہے)۔ وکذاعندہما الخ ای رح صا ضبن کے نز دیک بھی سی م ےکی وکل ان کے نا ریک اچ رش رک 
کو ضا ن ناتا ایک ط رکا تان ے اک اس کے ذر یچ لوگوں کے ابا اور مال تو ار ہیں۔( فک وک دہ ”بیو کی چ ڑ س 
نےکر زیادہ سے ذیادواہجرت ماک لک جاہے اور اکان کے ما ل کی تفاظت می لکو تان یکر جا سے ای لے ا سا ضا بنا گیا کے 
ایک طاظ تکرے)۔ ۱ 
واجیر الوحد الخ اور اجر نا یاچ ر وعد ج 09023( ےکاکام قیول نہیں کر سکتا ہے ای لے اس کے پامس ابات اور مال 
وما فو اور سار پتا ہے اور اہی لئے ای کے بارے میں قیاس کے اصل یړ کل ہو جا ہے۔(ف ن وہ ضا کن نیس ہو ج 
ے)۔واما الٹانی الخ ادراب دوس رک بات ئن ای کےکام ےا رکوگی چڑ ضا م کی ہو فووہ ا کاضا کن ہیں چوگ۔ فلان 
المنافع الخ کوک متاح جب متا کی لیت میں گے اور متا بے نال کواۓ تصرف بی لا ےکا عم دے دیا تہ گم 32 


نالپد اے جد یھ 2 ۱ ۱ لر نشم 
ہو اور وہ مستا ج رکا قا م متقام ‏ گیا لپ ایر خا کاکام مستا ج کی جانب ل ہ گیا وای وت ہ ےکھاجا ےکک ہگویا معا جر نے خود 
کی ےکا مکیاے۔اسی لے ودای ایر سے فاع نیس نے ککتاے۔ واش تال اعلم با اصواب۔ 
و :اہ ایر خاضص کے قحضہ بیس رج مو ۓےکوگی یز ضا ہو جائے۔ یاکا مک نقصان 
ہوجاۓ تو وہ اس نحقصان کا ذمہ دار ہوگا یا یں ۔ سال کی تفصبیل کم اقوال 
ایت 2 - ۱ 
باب الاجارۃ على احد الشرطین 

واذا قال للخیاط ان مخطت هذا الثوب فارسیا فبدرهم» وان خطته رومیا فبدرهمین جاز» وای عمل من 
هذين العملين عمل استحق الاجر به» وكذا اذا قال للصباغ ان صبغته بعصفر فبدرھمء وان صبغت بزعفران 
فبدھمینء و کذا اذا خيره بین شیئاین بان قال: آجرتك هذه الدار شهرا بخمسة»ء او هذه الدار الاخری بعشرةء 
وکذا اذا خيره بین مسافتين مختلفتين بان قال: آجرتك هذه الدابة الى الكوفة بکذا او الى واسط بكذا وکذاء 
اذا خيره بين ثلثة اشياء وان خيره بين اربعة لم یجزء والمعتبر فى جميع ذلك البیعء والجامع دفع الحاجة غير انه 
- لابد من اشتراط الخيار فى البیعء وفى الاجارۃ لا يشترط ذلك لان الاجر انما يجب بالعملء وعند ذلك يصير . 
المعقود عليه معلوما وفى البيع يجب الثمن بنفس العقدء فيتحقق الجهالة على وجه لا یرتفع المنازعة الا 
باثبات ایار۔ : 
ترجہ :۔ جاب۔دویازیاد وش طوں یل سے ایک شط اجار ہک ےکابیالنا۔ 

واذا قال الخاگر 2 ون ا ماک اکر نے می را ےکی ڑافا ر کی ادا زکا سیا ہا ری ابر ت ایک ور تم مو 7 
اوراکر تم نے رو صی اندازکاسما نو ہار کی ارت دودر اہم موی فو :جس“ اہ گا وہ ا سک ات کا من ہوگا۔ وکذا اذا 
قال للصباغ الخ ای طرں ری نے یک رگ ریز کہ اک اکر تم نے ہے پڑا سم سے را تہارک عردو ری ایک در ہم 
ہ وی ۔ اگ ا کو ز عفرا سے ر وکا تو تہارک مز وور ی دودرم ہوگی نذا سکا بھی وی عم موک نی دٹوں رگوں یں ے جرک 
رگ ےگا ا سکی وی جال ولاج ت لازم مو گی۔ وکذا اذا خیرۂ الیغخاسی طر اکر مستا ہکودو ہاو لکااخقیارداگیا لا :یو کہا 
کد کھیاہدار بانچ در سے یادہدوسرا اکھریاہوار رکو رم کے ۶و کرایے پر دیا تا یکا کی بی مم ے۔ دہ 
کرای داجس مکان ٹس ر اك اخقیا رک ےگا ا اک رای اک ےر لاز م ہوگاں ٠‏ 

وکذا اذا یرہ بین مسافتین الخ اک ط رع اکر متا رکو رونا صلوں کی سامالن نے جا ےک خقیار دی خلا :لوا لکہاکہ ٹل 
نے کے جاو رکو ف تک نے جانے کے لے دس درک اور واسط خی رکک نے جا کاپان ددم کےکرایہ پر دیا توا کا کی بجی 
تم ے ھی وو تفص اس جاور یر سوار ہ ھکر ننس مل کک نے جا ےگا و ہیں م کک ارامہ اس پر لازم ہوگا۔ وکذا اذا خیرہ الخ 
ای طر اکر متا رکون چیزوں میس اختیارد گی ملا :یو کاک اکر تم نے ا کے سے فا ری اندازکی سلا یکی ایک ورم 
او اکر ر وی سلا یکی تود ودر او راک کی مسلا یکی فو ین در ہم مر دوک کے میں گے ای مر رنگ اور سوا ری و تیر ہس بھی 
اخقیار ہو سکتا سے فو بھی جائز م وگ اوراگر اس نے مستاج کو چار چیزوں شس اتقیاردیا تہ جائز خی ہوگا ]شی ان تلام صور قول شس 
کے کے م پر تیا یکی گیا ے۔ اس میں قیا کر ےکی وج ضرورت اور ور یکود کر ناے ان ےک ىہ تن چچزوں ے 
OLE:‏ اد مول “در میا اورا در ہے کی ہو کے ے لین واک ضر ورت لو رک ہو جا ے ی ھی 


کالہ ایے جدیڑ ۲٢‏ ۱ جلا شم 
نز جا ےگا۔ نے سک ےگا اور ا یکی رورت لور کی ہو چا ۓےگی۔ ای لے جن سے زیادہکااخقارد ینا ضر ورت ے زیا لے اور 
جائز یں ہے۔ائی ط ر سے اجارو یس بھی یی عم ہے۔البتہ تی یس شرع خیارکاہو اض رود دی ہے جلیماکہ ئک بف م شگز ریا 
ہے۔ من اجار می ال کی ش رط خی ہے کیرک اجار ہش ابت ای دقت لاز م لی ہے جب و ہکا مم ر اہو جاۓ نی مرف 
معالمہ سے ہو نے سے اب ت واجب نیس ہو لی او رکام پور اہو جانے کے بعد خوددی ہے بات معلوم ہو انی ےک" می مقصوداضلی 
ہے۔ جن بکہ ا شیل بات نے مو ےی ال لک عو یا من داجب ہو جا ہے اہن ااس میں اصل قصور کے بول ہو ےکااخال 
ہو تاہے اور ای چیا کی و جہ ےار اس ٹیل خیار شر طا ہکیا مو ایک وقت میس دونوں فرب میں ما کی اہ واج دہ ہوگا۔ 

و :باب چن ر شر طول یل سے ایک پر اجار ہک ن کا بیاناگمر درز کیا ےکہاگیاکہ ال 

کپ ےکی سلاف تم نے فا ری اتا زک یکی ایک در ہم اور روی اند ا زگ کی ودود رم اور 

رتاف اند از کی تو ین در ہم۔ ن چند چیزوں می سے ای ککو اتا رک نے پ ہ رای کک 

اجر ر ستل بای نوکس اجر کا ن ہوگا ما لکیتفصیل۔ کم اقوالی اہ ۔ 

دا 

ولوقال ان خطتہ الیوم فبدرھمء وان خطته غدا فبنصف درھمء فان خاطه الیوم فله درھمء وان خاطه 
غدا فله اجر مثله عند ابی حنیفة لایجاوز به نصف درھمء وفی الجامع الصغیر لا ینقص من نصف درھمء ولا 
یزاد على درھمء وقال ابویوسف ومحمد: الشرطان جائزانء وقال زفر الشرطان فاسدانء لان الخياطة شىء 
واحد ء وقد ذكرنا بمقابلته بدلان على البدلء فيكون مجھولاء وهذا لان ذکر اليوم للتعجیلء وذكر الغد 
للترفیء فیجتمع فى كل يوم تسمیتان.ولھما ان ذکر الیوم للتاقیتء وذكر الغد للتعلیقء فلا یجتمع فی کل يوم 
تسمیتانء ولان التعجیل والتاخير مقصودانء فنزل منزلة اختلاف النوعینء ولابى حنيفة ان ذ کر الغد للتعليق 
حقيقةء ولا یمکن حمل الیوم على التاقیتء لان فيه فساد العقد لاجتماع الوقت والعملء واذا کان كذلك 
یجتمع فی الغد تسميتان دون الیوم فیصح الاول ویجب المسمی ويفسد الثانى ویجب اجر المثل لا یجاوز به ٠‏ 
نصف درهم» لانه هو المسمی فى الثانى» وفی الجامع الصغیر لا یزاد على درهم ولا ينقص من نصف درھمء 
لان التسمية الولى لا تنعدم فى الیوم الثانیء فيعتبر لمنع الزيادة وتعتبر الدسمیة الثانية لمنع النقصانء فان خاطه 
فى الیوم الٹثالٹ لا يجاوز به نصف درھمء عند ابی حنيفة هو الصحیحء لانه اذا لم يرض بالتاخير الى الغد 
فبالزيادة عليه الى ما بعد الغد اولى. 

ت7بمہ:۔ اوراگر وقت کے پارے میس انقیاردیاگیاہو ملا : متاجر نے درز کس ےکاک اکر تم ےا یڑ ےکو کمن خی ی 

کر دیا ویک در ہم مزر دور ہوک اورکر ۓآ کےکل س یکر دیا تو صف در ہم مر دو رک ہوگی۔ اس لئے رطا کے مطاب اکر 
وزی نے کرای وك یکر دے دیا وو ایک در کا ن موگااو راک دوس رے دن یکر دیا ابام ابو نیف کے نز د یک ا سی 
مز دور یاج کل وی کر ضف ور ہے زیادہ O‏ ن رک عبات ال رس کہ نہ فو ضف در ہم ےکم موی 
اورنہ ایک در ہم ے زیادہ۔( کان بی یاردایت یادہا سی ہے )۔ اور اام الولو س ور فرای ےکہ دونوں بی ش یں ہار 
ہیں اور ز فر نے فرمایاس ےکہ ونو ںی ش یں فاسد ہیں۔ امام ز رک د ل ہے ےکہ سلا ی کاکام تو ایک بی سے جو نب کن 
ایی مزدوری رو ت مک جیا نک یکس ہیں لی پودالیک در ہم یا آرعادر ہم اور ایا ہونے سے ہ اج ت پول موک ۔ بے ال 


اپد اے جد ید mM‏ کی جرم 
صورت کل ےج بکہ نف (7ج)جلدی کے لے اور لفت کل ) ہو لر اور آرام کے لے بیا کی گیا مو _ وای طر رع ہرد مل 
دوش مکی اجر ت بیا ن کرو یآ ہیں ھن ( آج)اور (کل )کو جلد ی اور اف کے لئ ییا کی گیا ے۔ اکا مطلب ہے مو اک 
جس موایل کا کل سے ن مو وہ کی آرج ہی سے ثابت ہے یں آجع کے حاب سے ایک معاملہ سی ایک ور م لازم ہوگااور 
وومر اک لکامحاملہ نصف در ہم ہوگا. ای ط ر کل کی بی حال وکا خلاصہ یہ م وکاک پ ردن دو م کی اج ت شع ہو جاے ای 
لم اجار ہ فاسد م وکا 

ولھما ان ذ کر الیوم الخ صا شنک د کل ہے ےکہ (آ رع )کد ت ییا نک نے کے ہے یا نکیاگمیا سے ن جل ر یکر نے 
کے لئ اود (کل کو ملق کے کہ ایاج ایی بتانے کے کہ می جملہ ش رطیہ ہے۔ اس ط رپ رر وزد و مکی ارت کے 
نیس ہو گی اپ زارونوں بی شر یں جا ہو یں اور اس د تکل سے کیک جل ر یکر ناور جا تیر ےکر نادوٹول ٹیل سے ہر ایک ایا 
معا ل ے جو متصود ہو تاے۔ اپ ایے اختلاف نو ی اختلاف کے مکل م وکیا سکوی رو لف شس مکی ن فا ری اور ر وی لای 
کے ماننرے۔اورادام ابو خزی کی د کل ہے ےکہ کل )کا زک کر اتو یقرت میس می کے واسٹے ہے اور لفت( رع )کا زک کر ناوت 
مقر رک نے م ار کو زک کے کے لے کال ہے کی وتک اییامو نے سے عق د فاسد ہو جاتاسے۔ ای کے وقت او رکام دونون 
کے ہو جاتے ہیں ن ار وت کا خی لکیاجاۓ نو وہاچ خا بن جاجاے او اکر اس می کا مرن اتبا رکیا ہاے تودہ اجر 
شخ زک ہو جاے اپا اس سے معلوم ماک وق تکابیا نکر ن عور کل ے۔ اور جب ہے بات ثابت م کی توا میس ( ٦ع‏ )کی 
شرط کا نے میں وو مکی اجر س مم نہ ہو ںکی بلنہ دوصرے دن شع ہو کی ند اآ نکی شرط کا ی ے۔ اور ج اٹ یا نک 
گئی سے وی لازم مو اورک مار ط فاد ہو کد کی اکم ذوسر ےد لو راکرد ے وا کااھ مل واجب ہوگاجونصف 
ددم سے زیادہ یل وک کی وکل دو سر ےد نکی یا نکی ہو ارت نصف درم ی ہے۔(اف اوی رولیت ی بھی ہے 

وفی الجامعإلصغیر ا : اور پائ سر مم لھا ےکہ اجر ت ایگ در ہم سے زیادہاور نف در تم ےک نہ وک جائۓ- 
کیو مل r‏ رتو وھد ہہ ہیک 
قدا دیا نکر نے کے لے ہے ]ین کہ ایس ےکن ہو( ف کان بی رایت ا ہے مک ی راک در زی نے ےکا 
تر ےون ی کردا امام ابو یز کے نزدیک لصف در م ے زیادہا رت کید اجاے گی ۔ یی تول ے۔ کی مل ام لیے 
والاجب دوسرے د کل تاخ رک نے پرراشی نہ تاتا ی کے بعد اور زیادوون ی پر سو سو لکک تاخ رکرنے پر بد ج اوی 
را ین ہوگا۔(ف اور صا ین کے ری قول کے کہ نصف در ہم ےگ مک دیاجائے۔الالیضاک])۔ 

و :الہ اچ رکو وف کے پار ے میں اغقتیار ول گیا مو خلا :اکر ہ ےکی ڑا ارج یکر وی نای 
کی مز دور کی میس ای ور ہم ےل ےگااو راگ کل یکر وی نصف ور م ہہوگا۔ پھر پالنف اکر 


تیسرے “چو تھے دن یکر وی ما لک یتیل م اقوا لات کرام و لا کی 
ولو قال ان اسکنت فی هذا الدكان عطارا فبدرهم فی الشھر وان اسکنته حدادا فبدرھمین جازء وای 
الامرین فعل استحق المسمى فيه عند ابی حنيفة وقالا الاجارۃ فاسدةء وكذا اذا استاجر بيتا على انه ان سكن فيه 
فبدرهم وان اسکن فيه حدادا فبدرھمینء فهو جائز عند ابی حنيفة وقالا لا یجوزء ومن استاجر دابة الى الحيرة 
بدرهم وان جاوز بها الى القادسية فبدرهمين فهو جائز ویحتمل الخلاف» وان استاجرها الى الحيرة على انه ان 
حمل علیھا کر شعیر فبنصف درهم» وان حمل عليها کر حنطة فبدرهم فهو جائز فی قول ابی حنيفة رحمه الله 
وقالا لا يجوزءوجه قولهما ان المعقود عليه مجھولء وكذا الاجر احد الشيئاين وهو مجھولء والجهالة توجب 


کاپد اے چد یر rır‏ لر "م 
الفسادء بخلاف الخیاطة الرومية والفارسیةء لان الاجر يجب بالعمل وعنده ترتفع الجهالةء اما فى هذه 
المسائل يجب الاجر بالتخلیة والتسلیمء فيبقى الجھالةء وهذا الحرف هو الاصل غندھماء ولابى حنيفة انه 
خيره بين عقدين صحیحین مختلفین فیصح كما فى مسألة الرومیة والفارسيةء وهذا لان سكناه بنفسه یخالف 
اسکانه الحدادء الاتری انه لایدخحل ذلك فى مطلق العقدء وكذا فی اخواتهاء والاجارة تعقد للانتفاع وعنده 
ترتفع الجهالةء ولو احتیج الى الایجاب بمجرد التسلیم يجب اقل الاجرین للتيقن به 

ت7 جمہ:۔ اور اگ ماک مان ےکر ایے داد س کہ اک اکر ای وکات یں عط رکا راان کیو یکی عطا رکو ھا توا سک کرای 
اموا ایک در ہم ہوگااو رار کی لوپ رکو ھھاو وکر ایے دودرم ہوگا وای طر کرای ےکا معا ہک نا جائتڑے۔ 4 وو ”ی ران 
کے کاک سے دک کی اب تی جا ےگی۔ ہے قول امام ابو نیف کا ے اور صا خی نے فربایا ےک اییااچارہفاسد ہوگااس لئ 
ے. اس پر ات ھ گل واجب ہوگا- ‏ وکذا اذا استاجر الخ اک ط رآ کو یم یکو ا ےگھ کا ای کر ھکرایے برا شر ط دیاکہ گر وہ 
ورال میں ر ےگا قزیاہوار ایک در ہم لازم آ سے کاو رار اس میں کی لوپ رکورکھا ودودر چم ماہوار لاز م یں کے "مہ امام ابو عید 
کے نز دیک جائز سے مان صاع نے فرمایا کہ ہا کل ہے۔ 

وان استاجرھا ال خآ کی نے اپنالیک چائ کس یکو اس طر حکرابہ بے دیاکہ تر کک جانے سے ایگ ور ہم لاز م ہوگااور 
ال ے زیادەدور قاد سیم تک جانے ے دودر یم لازم موں گے تو صورت کی چا ے۔ یں فتبہ اإواللیٹ کے ول کے 
مطاان شاب بی قول بالا تفا ہو اور ہے بھی ن س ےکہ شاید ر الاسلام وخر کے قول کے مطالقی سل اختالی ہو۔ او رار چ3 
تک جانے کے ل ےکوی چافو ر کرای پر ا کی ش رط کے سات لیک اک بے ایک من و لا وکر نے چا ےکا توا کاک اہے ایک در ہم ہوگا 
ادر اکر اک پر ایک مم نکیہو لاد ےگا توا ی ک ےکر ایے کے دودر کم لاز م مول گے۔ فو ہے قول الام ابو عطق کے دی سے اور چم 
ہے کان صاع نے فربایا کہ ائ کش ہے۔ ۰ 

وجھھ قولھما الخ صاع کر مل ی ےک عقوو علیہ بول ےا بے کیا لک اج ت کی دو چیزوں یس ےکوی 
ایک چڑے۔ اب ااج ت بھی مہو ل ہوکی۔ ممن دواجر ول یس ےکوی ایک اج ت ہو ناجہال تکا بات سے اور پول ہو ےکی وج 
سے اجار فماد لاز م ہو جا ا سے بتخلاف ر وی یافار کی سلا ‏ یکر نے کے کیہ اس کل شاد ا کو ج رے نیس کک ا ںات 
پیش ہکام کے بعد لازم وی ہے۔اور اس کے بعد جہاات ت ہو ہا ے لان جو مال بیہاں ذکر کے کےا نکو صرف وال 
کرد سے بای عالت می کر د سے سے شس ےکوی رکاوٹ ہا ند ے اجرت واجب ہو چا ے۔ اس ے ججہالت با رے 
201 کے ادیک می بات تقاعد ولیہ کے طو ر ے۔ولابی حنيفة الخ ادر ابام ابو یف کی د بل ہے س کہ مالک ےکر ای 
دا رودو تتاف کان جع موایلے مل ے ای کک ےکا فقیاردیاے۔اس لئے ىہ چان ے۔ یاک رو یا فار یکو لک سال 
گمزراے۔ م نے ال کو اف معاملہ اس کہ اک کر اہے دا رکا ا سکرو ٹس خوو ر ہٹایالوہا رکو اتاد ونوں تلف ہا س ہیں می٠‏ 
ودج ےکہ ا کی سے ای ککرہمطلفاکرا ہپ ات اس یس خود فور کنا ے لین اس مس لوہار وخ روکو رک ےکااعقیار یں ہو تاہے۔ : 
ای طرح اجار ہی دوس ری صوز قول می کی ے۔ اور اہارہ و مرف اص۹ لک نے کے ےی جا سے ج بک لفن حا کل 
کر لے کے بعد ا سک اتد روف جہالت عم ہو انی ے۔ او راگ کسی صورت یس صرف وال رکرو سے سے یی اجر ت واجب ہو رای 
ہو ودوخول اج ول یس سے جوھک مدکی وی واجب کی کوک اناب رت فو قنور لا ئی موی : 

و :اہ کک د کان امکالن نے ای چگ یی اکوائس ش رط کمرایہ پو یک تم اگ راس میں 
عط ر اکا ر وپا رکر دیا خو ور ہو نما ہوار ایک ور ہم اور اگ لو ےکاکاروپار سیر ےکو 


سان 0 جلد جم 
رکم وتوہ یوار ووو ر ہم مول گے یا انور ہو ں لا کر نے چاؤیااسے تر ہی جگ جر کک 
نے جات وای در تم اوراکرکو لاوکر ے ایا دوہ لہ ناد سی تک نے جا ودودر مم اذم 
ہوں گے تفحییل م اکل _ تعھم۔اقوال ا کرام و لکل 
باب اجارة العبد 
تر جمہ :باب :- غلا م کے اچارہ کے بیان س 
ومن استاجر عبدا ليخدمه فليس له ان يسافر به الا ان يشترط ذلك لان خدمة السفر اشتملت على زيادة 
مشقة فلا ینتظمھا الاطلاقء ولهذا جعل السفر عذرا فلابد من اشتراطه كاسكان الحداد والقصار فى الدارء 
ولان التفاوت بين الخدمتين ظاھرء فاذا تعينت الخدمة فى الحضر لا يبقى غيره داحلا كما فى ال ركوب.ومن 
استاجر عبدا محجورا عليه شهرا واعطاه الاجر فليس للمستاجر ان يأخذ منه الاجرء واصله ان الاجارة 
صحیحة استحسانا اذا فرع من العمل والقیاس ان لا يجوز لانعدام اذن المولى وقیام الحجرء فصار كما اذا 
هلك العبدء وجه الاستحسان ان التصرف نافع على اعتبار الفراغ سالما ضار على اعتبار هلاك العبد والناقع 
ماذون فيه كقبول الهبةء واذا جاز ذلك لم يكن للمستاجر ان ياخذ منه الاجر. 
ومن استاجر ال خاک سے دوصرے کے فلا مکواپنی خد مت کے ےکر ایے لیا تذل کو ہن نیس ہ وکاک اس خلا مکو 
این سا تھ سفر ٹن نے جاے۔ مال اس صو رت می نے اکتا ےج بک موایل ےکر ے وقت ا با تک کی شر کر ل ہو۔ 
کیو لہ س کی عالت یل ند م کر نے مل زیادہ رنت ہو ے۔ ایز ا مطلت اپار ہک صو ر رت میں ہے پات داخل یں موق 
ے۔ ای لئے سخ رکواجارہ کے ر کر نے کے سے عذر مان لاگیا ے۔ کن شل :انی مال ھن اے علاتے می رجے 
ہو ےاجار ہی لیا۔ پچھراسے س رک فو بت ی ذووا جار مکو ےکر کنا ے اسی لئے عالت سف ریس نے جا ےکی شر کر لاض رور ی 
ےی ےک کی مکا نک وکر ایے یہ لت وقت اس ہا تک شر کر ینا ض رو رک س کہ اس س لوہار ے گاب اکپٹڑے دع نے والا 
دو لی رےگا۔ اور دوس رکد کل ہے س کہ اہ علا سے بیس رس ےکی ( حص ری ) خض مت اور حالت سف رکی خر مت میں بہت فرق 
ہو ہے۔ اس لے جب حعف کی ن ہمت بی لاز م م وی وس ریغد مت اس میں دا غل نہ ہ ویر جبیہاکہ سوا می کے معام یل ہو تا 
ے۔(ف ن ر اب شر ل ر کر سوار ہو نے کے ل ےکمرایہ بر لیا تاس جاور کوشہرے پام لے جانا چات ہوگا۔م۔اور 
ھی اعاس کہ خوداتی سوا ی کے ے جافو رک وکر ایے ب لیا کی دوعر ےکوا ی پر سوار ی کر سنا ہے )۔ 
ومن استاجر عبدا الخاد اکر کی نے ایک کور غلا م کن اسے فلا مکو بے ےکر وبا رک ےکی اچا زت نہ ہھ۔ ایک می کے 
لے اجادہ یر میاا ور ا کی اج ت اک غلام کے پا تج بیس دے دی تا متا کے اغتیار یں م وکاک اس سے اج ت وائیی لے 
نے۔ ا کوج ہے ےکہ ہے اجار ہا تاتا ہا کہا گیا ے۔ ج بکہ د ہکا م سے فاد ہو۔ مال اککہ تیا کا تقاضایے ھا کہ ہے چائزاینہ 
وکوک سے اس کے موی کی اجازت ما ل کل ہے اور لام ور سے بک ہے ظلام ایام گی تھے کیا ہہ ۔(ف من شلا وہ 
فلا م ا کی خد مم تکرتے ہو سے م گیا توا کے مو یکو کی اج ت ہیں ےے ی بلک وتوا یکی پو ری سیکا ن ہوگا۔ ای 
لئے قیاستایے اجار ہ فاد ہے۔ ای ے تیا سکانقاضا کی کہ ہے اجار وفاسد ہو اورا لائ ہکا قول کی کی ے)_ 
وجہ الاستحسان الخ۔ لکن ہمارے نز رک ا سکو ا مان جا ہو کی دجہ یہ ن کہ ا فلا م کے تحرف کے پارے 
میں دواعتباریں اک ل وای ل خزعت نت مج ؤال فد ہے نوا اپار ے ہے تقرف اس کے مول کے تعن میں 


کن الہد اہے جد یڑ a‏ لر "مم 
فی ر ے اور دور ااتیار ىہ کہ وہ فلا م غد م کرتے ہو سے شخم ہو جاے۔ اس اتتپار سے موی کے ن میس قصا ن رر کے زا 
جس صورت میں مول یکا لٹ ہے۔ اس یس ا سک اجا تل ہا ے۔ کے اس خلام کے ل ےکس کی ر ف سے ہبہ کے ما لک 
ل لے کی اجاز تکا ہونا۔ ای اوہ ملاع جب اس ستناب کی خد مت کر کے بھی فوط ر گیا نولو ںکہاچا اک ہگویا مو ٹی نے اس 
کو ا اجار مکی اجازت د ے دی گی اب ج بکہ اچاد و جا ام گیا فو اس ستاب رکو ہہ تیار نہ د پاک ای نے ا یکی خد مت کے ۶وش 
جوا ت فلا مکو دک ہے وواے وای نے لاف سن مہ اچ ت مو یکا جا تک وج سے اس کے ذمہ لازم موی ہے )۔ 
و :باب فلا مکواچار ہپ دینا۔ اکا سے دوصرے کے فلا مکواپی د مت کے لئے 
اجار ہیر لیا ِکیادہاس فلا مکو ا سے سا تھھ سفر میں کی نے ہا ککتاے۔ اگ کی ےکک کے 
پر ہجو رک وکر اہے پر لیااو ر ای نے اک کاب ت غلا م کے ب کے بیس دی ری وکیا بعد می وہ 
اس اجر کوا ی سے والپیں نے کک ے۔ ما یکی فاقوالا لا نید 
ومن غصب عبدا فآجر العبد نفسه فاخذ الغاصب الاجر فاكله فلا ضمان عليه عند ابی حنیفةء وقالا هو 
ضامن» لانه اکل مال المالك بغير اذنهء اذ الاجارة قد صحت على مامرء وله ان الضمان الا بشت باتلاف مال 
محرزء لان التقوم به» وهذا غير محرز فی حق الغاصب» لان العبد لا بحرز نفسه عنه» فکیف يحرز ما فی یدہء 
وان وجد المولی الاجرہ قائما بعينه اخذه لانه وجد عين مالهء ویجوز قبض العبد الاجر فى قولهم جمیعاء لانه 
ماذون له فى التصرف على اعتبار الفراغ على مامر. ۱ 
تر جمہ :۔ اکر کی نے دوسرے غ کے ایک غلا مکو غص بک کے اپنے پا رکھا۔ اود ال فلام ےکی کے پا لان مت 
کر کے ایا ت اپنے پار یش فا نٹ ان کی تان ورل اکر کے خو رکماگیا۔ امام ابو یف کے نز دیک 
اس طاصب پر ر مکا مان لازم نیس آ ےگا گر صا یی نے فرماا کہ دو ضا کک م وکا( ن وور م اس کے ماک کے حوالہ 
کے )لان اکل ال خکی وکر ای تا عب نے شلام کے مال فکی اجا زت کے !خی راس کے خلا مکی رن یک یکر کر ڈالی سے۔ 
ای لے ا لک لاز مت ابی جک ہے ہوچی ہے۔ جلیراکہ پم پک یا نکر گے ںی ےک ولاز م تکر لیت کے باوجود جو 
سال ماس سے فار م وکیا ای کے موی نے ان تتام باتو لکی ا سے اجازت دید ی ی۔ امہ ماش کا بھی بی قول ے۔ 
وله ان الضمان الخ اور ابام الو ینہ گید“ ہے س ےک کی کی مان تی برای صورت میں لاز م مو ے ج بک 
کوئ کسی کے مال محرز یش محفوظ ما کو ضائ کر دے۔کی وک ہی ما لکی تت اور ا کاانرازہ تو ای صصورت میں ہو سا سے جس وہ 
رز می فون ہو اور موجودو صورت می فلا مکی مز دور کی اس خلام کے صب کے جن میں حفو ظط نیس ہے اس ےک ایا 
فلام تو خوداپنی ذا کی بھی حخفاظت نی سکر سکم ے و اپ پل کے مال وش روک یمس طرحع سے اف کر ےگا۔لاف یہ 
تخل اس صورت میں موی چ بکہ ایس غلام نے خوو تی لاز م تک ری ہے ۔کی وک اکر ا صب نے اپنے طور ہے اس ےکی 
لاز مت ب لوا ہو توا ی کی مز وور ی کا کک وی تا صب ب وکا اور ا لک مایک مز دور یکا تقر ار نہ ہوگا۔ ای لے جب ا صب اک 
مز دور یکو تصرف میس ے آ گا فو اس پر بالا تفا ا لکامان لازم یں آ ےک او راک ای کے مولی نے ای مور خلا مکواچارہ 
ب کایا مو وود قلا م اتی مزدوری وصول کی ںکر کے گا۔ الہتہ اس صور ت یں و صو کر گا جب اس کے آ قا نے اسے مز دور ی 
وصول کر ن ےکا تیار د بھی واا سے وکیل بنادیاہوسغ)۔ ۱ 
وان وجد الخاد راک راس کے آ6 ان لات یغ رو صو کر ی یا پر الو یالیا ودای کی و خائے ا 
کر ےکی ضرورت نیس ہگ یک وکل ای نے حقیقت می اپناتی اکل مال پایاہے۔ویجوز قبض الخ معلوم ہنا پاس کہ ال 


نالہداے چدید ۲۵ ۱ چل تشم 
صو رت ڈیل فلا مک ت پر نض ہک تا بالا ماع جاتے ےک دک ودای ذم داری ےکم سے پا گل E‏ 
کی طرف سے اسے تر فک اجازت کی م کی کہ م نے پیل ما نک دیاسے۔ (ف ن جب اک باز مت ل وتام کاو 
ام فار ہو تووہ موی کے جم می فی ہو نی بے اک لئ کچھا جا اک گیا کو موی نے ا لک اسے اماز ت دی کا )۔ 

وج اکر ایک مھ نے دوصرے کے غلا مکو خحص بک کے اے پاش رکھا ای عر صہ 
اغلام نے دوسرے کے امس علاز مم یکر کے اج مت و صو لک رک کان ا کا نا صب 

وہ اتتا ی سے نے ک رخو دکھا ایا را الر اک اصعب نے ورا غلا م کو ب ام ړلو ال ` 

ا سکی اج ت خو و صو ل کر لی ۔ ار اییے فلا مکی اجر ت ا کااپتا موی تی و صو ل کر کے 

استعال میں ے ۲ے اک لک یتیل گم _اختلا ف امہ _ وگل 


ومن استاجر عبدا هذين الشهرين شهرا باربعة وشهرا بخمسة فهو جائز والاول منهما باربعةء لان 
الشهر المذ کور اولا ینصرف الى ما يلى العقد تحريا للجواز ونظرا الى تنجز الحاجةء فينصرف الٹانی الى ما يلى 
الاول ضرورةء ومن استاجر عبدا شهرا بدرهم فقبضه فى اول الشهر ثم جاء آخر الشهرء وهو آبق او مريض 
فقال المستاجر ابق او مرض حين اخذته وقال المولى لم يكن ذلك الا قبل ان تاتينى بساعة فالقول قول 
المستاجرء وان جاء به وهو صحيح فالقول قول المواجرء لانهما اختلفا فی امر محتمل فيتر جح بحكم الحال 
اذ هو دليل على قيامه من قبلء وهو یصلح مرجحاء وان لم یصلح حجة فى نفسہء اصله الاختلاف فى جريان ماء 
الطاحونة وانقطاعه. 
ترجہ :۔ اکر ایک شی نے ایک لا موان دو مپیوں کے لے اس شط کے ساتھ اجادہ یہ یاک ایک مید کے اسے چار 
در ہماورایک ہین کے پر در ہ میس کے۔ یہ محاللہ چا کاود پیل ہیدہ کے اسے ارد ہ میں کے کرک ای نیش جس 
یل پیک رکرو چوا ےاے ا موابلہ la EA‏ ےکنا کےا ۔ اک نے شد معال کو چا قراردیاجا کے _ 
کی مناء کہ ا یکی فورگااور کی ضرورت وی جو جائے۔ اس ط رحاس بھلہ ینہ کے بعد کا ہی می دوس راید ہوگا۔(. 
خلاصہ ہے ہواکہ موا کر ے وقت اییے رو یٹول کا پان ہو ان نکاوقت صا ف کر تی سکیاکیاے۔ لپ اا ہے محال کو پار ی 
ہنا سے جس کے وق یک اکن کیاکی ہو گر ما ین ےم کو ای خر سے ےا سے لے یہنا ڑا 
ہے۔ائی منا بر معابلہ کے ساتھ کے صل ہی یکو پہلا بیغ کگھاجاسے گیا کیٹا کہ ارہ یہ لے اور د سی ےکامعا لہ انان 
7 ےی ےا م ےن 2 رر کے سا تھ کے ی کی ہلا کیا جات ےگا ۔ برجب پا ہین 
ہوناا ںکا ن موک زاس کے بعد آنےوالا مہ یدوم ا ہیۂ ہوگا)۔ 
ومن استاجر عبدا الخا ار ایک شس ےکی کے فلا مکوباہوارایک در ہم کے عون سکاب پرلیااور اس کے بعد اس ی 
اور ازع کھ یکر لیا پھر دہ ینہ کے خر میں آیااور ای عر ص یں بھا گے رب ے یا ییار کی وج سے اس کے اس سے تاک دبا 
اس وت اس تاج نے ماک ے یا ی الا ای ات کک اا رای کے ان نے 
کہاکہ ابی بات کی سے ما تو ابی تہارے آنے سے ذدا لہ بھاگا یا ار ہو اسے تو ای متا ہکی بات مقبول گی اور اکر وہ 
متا ج اس خلا مکو اس کے پاس تند سک کی حالت میس ےکر او اک موب( اک )کی بات مقول موی کیو کہ النادونوں نے 
ایک ای بات کے بار ے میں اختلا فکراے جج اہو کن اور تل ہے۔ اپ زابوت و ۶وی اس مک فی لیف غیت یال جا ۓگ ای 


ین الد اے جد یر 2 لا تشم 
ےت رت د می عالت کیل سے موجود شی اور مو جودہ 
کیفیت نی ایک د بل ہو لی سے جس سک بناء تر نکد کی جا کے ار ہا نکیفیت سے ستل 00۳۷ 6 
اص دوا لاف ہے ج نپ کراب پر بعد اکت ہونے برد عو کیاکہ می بات ٹیس ی بک ہا تا اور 
ی " ھی توا یوقت می یکہاجا ےکک اہ اس اختلاف کے وقت پالی بہہ رہ امو تو مو ج مکی بات مقبول ہوگی . 
ےکا ہوگ۔ 
و .کر ایک یں نے ایی فلا مکوالنادمینوں کے لئے اس شر کے سا تھ اچادہ پہ 
یاکہ ایک ہیدہ کے اسے چچاد ددم اور ایک ”ہین کے اسے پا در ہم میس کے ا 
ھی ےکی کے لا مکوماہوار ایک در ہم کے عو اہارہ پر لھااور راا س پر ند بھی 
لیا کی نار ی کیا دجہ سے ہا بھاگے رت ےکی وجہ سے وتاک را ہرد 2 
ا و ان د د کی توا ےکہاکنہ دہ تاب سے ذ ایم 
سے تاک ے اور اس سے لے غاب نہ تر سای کی تفحبیل م اتال 
ا 
باب الاختلاف 
قال واذا اختلف الخياط ورب الٹثوبء فقال رب الثوب امرتك ان تعمله قباء وقال الخياط قمیصا او قال 
صاحب الثوب للصبا غ امرتك اب تصبغه احمر فصبغته اصفرء وقال الصباغ لا بل امرتنی اصفر فالقول لصاحب 
الثوبء لان الاذن يستفاد من جهته الا ترى انه لو انكر اصل الاذن كان القول قوله فکذا اذا انکر صفته لکن 
یحلف لانه انکر شیئا لو اقر به لزمه. قال واذا حلف فالخیاط ضامن ومعناه مامر من قبل انه بالخیار ان شاء 
ضمنه وان شاء اخذه واعطاه اجر مثلهء لا يجاوز به المسمى» وذكر فى بعض النسخ يضمنه ما زاد الصبغ فيه 
لانه بمنزلة الغاصب. 
ترجہ :۔ ہاب مو جر اور متا ج کے در مان اختلاف ہونا۔ 
قال و اذا اختلف الخ تد ور نے فرہایاس کہ اکر درز کاو رکپٹڑے کے ماک کے در ماناک طر کا اختلاف ہہو جاۓے 
کہ ماک لول کہ میس سے مکو اس پڑڑے سے قباء سی ےک کہاتھاادردد زی سک ہک نیس با تم نے اس سے یس یغ کے لئے 
کہا تھا یڑ سے کے مالک اور رر یڑ کے در میا ای ط ر عکااختااف ہو آکہ ماکک ےکہاکہ شش نے تم کواسے لال رنک ےر کے 
کے بتاک تم نے فو اسے ذذ رنک سے رک دیاس ادد رک یڑ کاک نیس بکلہ کے زرو رک سے بی ر کل ےک ہکہا تھا لو 
ان دونوں صور قول می ليکپٹڑے کے ماک ککی بات مقول وی کی وک اجاز ت د سی ےکاکا مکپٹرے کے مان ککی طرف سے کی ہو تا 
سے ۔کیابہ یں سیت ہ ھک ار وہ کل احجازت د سے سے بی ایا رکرو ے تب بھی اک کی بات مقبول موی _ یس جب اماز تک 
ت ادا ات انا کی کی ا کی بات قد وگ ایت اک سے اس کے د گوقا یہ سمل جا گی ۔کیوکلہ ای نے 
ابی بات کاانیا کیا ےک اکر ا کاا ترا رکر جا فذاس راج تلاز م آجای۔ 
قال واذا حلف الخ ترود کاک کے کا کے تدر ری شامن بوکایاپی ظط رکاج کا ی 


ین البد اے جد یر ۱ ۱ 2 بل م ۱ 
یا کیاجاچکاے۔ متا کہ مالک TT‏ اکر جا سے اودر زک سے اپ یڑ ےکا تادان اور ا یکی تهت وصول 
7 اکر اے نود سلاہو 1 ااا ایل ات2 کو و مل ان رت ظز ران ےل 
یش بھی ےک اکر مالک ش مکھالے تڑاے انخقیار ہوگاکہ کر چاج فا سے ا سکیٹ ےکی تمت وصو لکر نے او رکپٹراائ کو 
ھ۶ ارجا 027 اکپرااس سے ےکر ا یکی اچ ت(اج ا شل اسے دیرے۔ گھرجواججرت مسل لے مو یکی تھی اس 
ےتا کے ار و و ا نی کن ی کک رت نے 
میس جوزیاد کی موی وود ید ےکی ھک رگ ینان وت س فطاع کے کے شن وک کے 
تخاس رر ان ا ےلت اون سے 
دزی کے در میالن ىہ اختلاف م وکہ مال ککپتا ہ کہ ٹیس نے قب ین هک کہا تاعکر تم نے 
نی ی دی اور درز یکہتاہ وک ی یی ہی ی ای رح رگ ری یکچ ہ وک تم نے 
زدو رک سے بی ر کک ےک وکیا تیا اور پاک کفکتتا وک و 0 ط2 سے رک ک وکیا 
تھا٠‏ سا لک یتصیل. م وروک 
وان قال صاحب الثوب عملته لى بغیر اجرء وقال الصانع باجرء فالقول قول صاحب الثوب لانه ینکر 
تقوم عمله اذ هو يتقوم بالعقدء وينكر الضمانء والصانع يدعيه» والقول قول المنكرء وقال ابویوسف ان كان ٠‏ 
الرجل حريفا له اى خليطا له فله الاجرء والا فلاء لان سبق ما بينهما يعيّن جهة الطلب باجر جريا على معتادھماء 
وقال محمد ان كان الصانع معروفا بهذه الصنعة بالاجرء فالقول قوله لانه لما فتح الحانوت لاجله جری ذلك 
مجری التنصيص على الاجر اعتبارا للظاہرء والقياس ما قاله ابو حنيفة لانه منکرء والجواب عن استحسانهما 
ان الظاهر للدفع والحاجة ههنا الى الاستحقاقء والله اعلم۔ 
رجہ ۔ اراک سے کے مالک ن ےکہانہ کے کرای ےکی اجقرت کے بضر( مفت میں )یکر دیا ےکر در زی نے 
ای ےت ات ی ا ی کک کے ا ل کک اا 
درز کےکام (سلائی کے ق ہو جانے سے ا رک تا ہے کی وک ہکا مکی اجر کا ہون یا تی محاللہ کے ہے سے یمو 
ہے۔ اور دہ مالک الال ا کا م کا ضا کی ہونے سے شی اجرت کے لاذ م ہو نےکا ایا رک ہے۔ ج بک دودر کی الت دووں 
باقول کا مھ کی ے۔ل یکا م قائل اچ ت ے اور یں نے ا یکی امیر سکیا ےکی وک باضاوطہ ا کا معاملہ سے پا ہے )اور ہے 
بات سے شد ہے ی00 م 72ئ0 یہ گے لام ہو گا کاک دواد وک 
ا 
فالات الخ اور اام او لو سف نے فرمیا ےکآ رر ےکا اک ائی در ذ اکر یکی یٹ رک بک مو نان 
دونوں می نیشن دی نکامعابلہ لے سے جو رپا چو توا کار یگ کو سکی اج ت ےکی ودنہ نی کی وتک ان کے در میان جو معاللہ ۔ 
بی سے جا کی ہے اس سے اک با تک جات ہو ے کہ اس عالیہ معا کی کی اجر ت مول چاگۓ۔ وقال محمد الخ ادر اام 
نے فر مایا ےک اک اکا ری رای پیش ہواورلو کے ان اتی ارات جات بون ایک بات قول کی 02 ا 
لی نے اکم کے لے دوکا نکھولی سے توا اوا مطلب بجی ہواکہ دہ ارت یکم پک نے دالا ہے۔ لف اا تلاپ ری 
0 - لے گی لن قا ںوی چاہتاے جو امام ابد عیفر الا ےکی وک کپ ےکا ماک میمرے۔ 


ین البد اے جد یر ۱ ۸ بلر ہش 
زین م کے بعد ای ماک کی بات ماف جات ےکی )اور صان کے اقسا نکاج اب ہے س ےکہ داشان ظاہ اتپا رکر کن کی بناء 
بر ہے۔ادر نہ رکا کم تو صر ف سید عوئ یکو کے کے لے ہو تا دادر ای سے کی پا کان خاب نمی ںکیاجا لت ای 
۱ لے موچ دہ صو رت بی اے اپنا ن اہ کر ےکی ضرورت ہے( ف اس لے پجھ ای و عل می کرک جا جس سے انی 
بات کا تماق ثابت ہو تاو ۔ اور دوش یگواو ہو جا ہے اک لیے م نے ی ےکہاہ ےک اس پر اپنےد عوکیب گواو ی کر نالا م م وگا۔ 
والٹراصم پااصواب)۔ ۱ 
وج اگ یڑ سے کے مالک او کار یکر ( درز کیا رر )کے در میالنااس با تکااختلاف 
ہوک کار مجر اہ ےکا مکی اججر تک طالب ہو اور مالک ےتا کہ تم نے مر سے لے ےکم 
پوں ہی لین کسی اجقزت کے بن رکیاے صمل م ای _ کم اقوال ا ۔ وکل 
باب فسخ الأجارة. 
قال ومن استاجر دارا فوجد بها عيبا يضر بالسکنی فله الفسخء لان المعقود عليه المنافع وانها توجد شيئا 
فشيئاء فكان هذا عيبا حادثا قبل القبض فیوجب الخیارء كما فى البیعء ٹم المستاجر اذا استوفی المنفعة فقد 
رضی بالعیب فيلزمه جميع المبدل كما فى البیعء وان فعل المواجر ما ازال به العیب فلا خيار للمستاجر لزوال 
لىسە . 
تم :۔ جاب۔ اجار مکایان۔ 
قال ومن استاجر الخ فنردر کی نے فرہایاے نی نے ایک مکا کرای پر لیا ان ین کوک ای رای جس کی 
وچ سے اس مکان یں ر اش تکایف دہ ہو تو ای مستا جر کر ایے دار )کو ہف م وکاک اسے کر دے کی کک ا یکا حقو علیہ ن 
ٹس مقصصد کے لئ ہے معام سے مو اس وہای مرکان سے مائ ما س کر نا سے ج کہ رف ر فتۃ ما کل ہوگا۔ لپ اا یکا ہے عیب 
ما ل ہو نے وا لے ماپ نکر سے سے پیک یپ یاکیاہے۔ اک لے اسے نکر ن ےکا عقیار ہوگا جج اکہ کی صورت میں 
ہو ہے۔ پچ راکر وہ متا ج اکی عالت می ال گے متاح حا صل کہ تار با تب ہةکہاجا ےکک وہای عیب رای م کیاے۔ لزا 
اس پر پور اک ایے اداکرنالازم ہو جا ۓگا۔ جلی اکہ خر یدارک یکی صورت می ہو جا ہے۔ سکن اکر خر یار ا کے مال میس رای اکر بھی 
رای ہو جا فو اس پر اس ما لک پا ری تمت( من ) لاز م گی اور اک ماک مکا نل( ہو 2 )نے معاملہ کے ب ہو نے سے پل ی 
اس خرال یکی اصلاں کر دیی کک کی وج سے دہ عیب وگ وک ا دا کواب اسے ر کر ن ےکااخقتیارنہ وک کوک کر ن ےکا 
ج سب ب اگیاخادداب سخ م وکیا ے۔( ف اور اکر مکان سکوی ر الی ہو کر ایک نہ ہو ننس سے راش سکوی نتدانں غلل 
۲ ہو و سے کر نے کاافقیارضہ ا انی ط رآ کی سے ابفی خد مت کے لے ایک خلا م کر بے بے املا رکھا مر بعد شی 
ای کے سر کے با لگ ر کے ۔ یا ا کک ایگ کے ی ر دش چاق دب یکر ا نکیا وچ ےرم تک ادا ےکی می ںکوکی رن 1ج ہو تو 
اس متا ج رکواس کے رک ن کاکوئی اخقیارنہ ہوگاں ‏ 
کمافی الااضا ح :اور قوی صر کاو رتب می شککھا ےک رگھ رک یکوکی دی ارگ گی یا ی کاکو یکره یٹ یٹوٹ وٹ 
گیا) توا کر ای دا رکواچارہ کے کر ن کا اقضیار م وکا کان بظاہر ىہ عم اس صو رت پر ول ہو گاج بکہ الس د لوار کرو کے 
کہ با ےکی وجہ سے رماش میس غلل ٦‏ جاہو۔ واوڈہ تیا یی اعم مء معلوم ہو ناا ےکہ مال کک عدم موجو دی ر 
کراب کو کر نبال مار جائزنہ ہوگا کی دکمہ یہ اور وا ھی عیب ا سے کی وج سے موی ۔ چ بک الک پر ایی ین مال ٹل 


4 


ین البد اے چدیے r‏ ` لم 
لے تاد ینا الا ما شر ط ے۔الہت ہاگ لور امکالن یکر جاۓ حب مال ککوبتاۓ لخر کی اسے م کرد ہی ۓےکاخقیار م وکا کان جب 
تک این اچاد ہک رر ےگا ب کک اجادہ رنہ ہوگا ۔کیدکلہ بھی لی میدران سے بھی ناکد وھ س کرت کن ہو جاے اور یں 
الاک سر ھن ےکہا ےکہ جب کہ اجار ن ہوگالہت اس متا ج ےج کر اے لاز م آجادولا زم نہ م وکا خواودوا اجار مکو ح 
کے یا کے اور گر زر اعت کے ےکوی ز مین اجارہ یہ اور اس می ںکھیتی بھ یکی ر میک یکو آفت اھان ے وہ ضا موی تو 
کہاگیاس کہ ا آت کے نے سے سیل کن کک اک امہ اس کے ذ مہ لام ہوگگااو راس کے بح کا اس کے ذ مہ سے سماقط ہو جا ےگا۔. 

و :۔ جاب۔ رن اجار ہکا یالن۔ اگ کسی نے ایک مکا کرای پر لیا۔ کن اس شکوگ ای ٠‏ 

خر ای ای جر اش کے سکیف دو ہے سیا کی ف دہ یں ے۔ پ نیف دہ ہو نے کے 

ا اتا ر کی ال کک عد م موجو وی میں تا رکا ر کر نا 

قال و اذا اخربت الداروانقطع شرب الضيعة او انقطع الماء عن الرحى انفسخت الاجارۃ لان المعقود 

عليه قد فات» وهى المنافع المخصوصة قبل القبضء فشابه فوت المبيع قبل القبضء وموت العبد المستاجرء 
ومن اصحابنا من قال ان العقد لا ينفسخ لان المنافع قد فاتت على وجه يتصور عودها فاشبه الاباق فى البيع قبل 
القبض» وعن محمد ان الآجر لو بناها لیس للمستاجر ان يمتنع ولا للآجر وهذا تنصيص منه على انه لم ينفسخ 
لكنه فسخ ولو انقطع ماء الرحى والبيت مما ينتفع به لغیر الطحن فعليه من الاجر بحصته لانه جزء من المعقود 
عليه 


یکن شر ہو گیا تواچارہ خود سے ےگ( تول امام مالک دامام شا وا کا سے )کوک متود علیہ مجن جس 
نز کا معام کیاکی اتی ہا نہ ر ہی میتی جن خصو س منائع کے حصول کے لئ معام ہو اتان کے ما س کر نے سے ممل ہی 
وہ ت مو گے نوا ی کی شال اہک مو گئی جی ےک بش مہ ہے بعل کے ضا موک مو ۔ اکرارہ ر لیا ہو اغلام یماگ ا 
ا بے مشار شلا : الا سلام اور یں الا کے روخ رجمانے فر مایا کہ معاملہ از خد نیس واج بک یک مت کیا 
جاے کی کہ ہے ماح اس طور سے شخم مو تے ہی ںکے دودوباردیاۓے ہا کے ہیں۔ اس لے ا نک مال ایی موی یی ےک تج س 
قحضہ سے بے فلا م ھاگ جاۓ تڈوہمحالہ ب نمی ہہو جا ۓگا۔ جللہ خ بدا رکواختیار ہوگاکہ چا کہ دے(یا اک کے سے ےکک 
انا رک ے)۔ اک طر ںیہا کی کااختیار ہوگا۔ اور ورا ا نیس ہو جا ۓگا۔ ا یکی د نل امام مکی دوردایت ے اکر مکان 
کے ٹوٹ پچلوٹ جانے کے بد ال کے ب ہو نے سے پیل الک ا کی مر م کر د ے اجنو ادے ج کرای دا رکو اس کے لیے 
سے اکا رکااخقلار نہ ہوگا۔ ای ط رع مالک دکالنکو بی اب اس کے د سے سے انا رکا عق نہ م وگ و ے رایت ائس بات بر مر 6 
دلاات ےک عقد اجار واز خود ری نیس مواقھاال ہت سی کے لا کی ہ وکیا تھا( ف ]ینار متام رک تاب ری ہو جاتا۔ اور کی قول 
ا ہے۔اکان). ۱ ۱ 

ولو انقطع الخ او رار جن کی کاپان تو تم ہو جاۓ پچ کی وہ گرا تاک ر کہ ہے کے ای کے سوادوص رےکام اس 
سے لے ماک ہوں تو موجود ہگ مکی حییت سے ا کاکرارہ اس متا جج سے و صو کیا ہا ےگا کی کے معاللہ کے وقت ی 
چ ری شال یں ان میس ےگ بھی تھا۔ (ف معلوم ہو نا جا کہ اس ن ےکور مستل ہکااستد لال اس بات سے کہ اجار ەکا معاملہ 
ازخود رح خی ہو جا سے بل کراىہ دا رکواس با کا اختیار ہو تا کار جا سے و او و ا واںم 
امل مقصوداس ے اب صصرف بین یکی ہیں بللہ و ہگ بھی م وگ اور تھی کر ایر ان دونو کا موں کے در مان تی مر ے 


کھت تور کی نے رمیا ےک ہاگ رکرا ےک کا نگ کر با کل ماب وکیا کی یکو سیر ا بکر نے کاپای نگ پیا با بین 


ین ابد اے جد ید ۱ ۲٢‏ جل م 
صرف مکا کک ایے اد اکر ےگیا۔ او ر اکر ای عر ص س کی کے کک نے پا کک ی کیان ہو ن کی شکایت دو ر کر دی شی با یکا 
حب ابق نظا م کر دی تب اسے ب کااختیار نہ ہوگا۔ یی ےک مکان کے بارے میں ہو جاے. لیکن ہے کم ی کے سل کی 
بوک کاک کرای ہکی کی کے مت ٹوٹ باوث گے بعد یں مالک نے اسے در س کر اداو ری تال استعال اوی ت بھی 
ووائ کرای دا رکو ای ر سے پر مجبور ی کر ےگا ہک وک اس کے مت لکودوبار جو کر ی باو ےے سے اب ب دوس ر ی ئی شتی 
7 ا کی مد تی تی ای ا ری ےت IL‏ ےس کی کک 
تق انس سے تم ہو جاجدے۔ ۱ ۱ 
من اک رکوئ ی س ےگھ رکے می ران شی اپ اگھر ہنا لے تایز مین کے بک کان یں بد لا ے۔ اکر ین یکین اک 

جاۓ نس سے اس چ یکا بڑا قصال ہو جا فذ ال ک ےکر ایے دا رکو رح کر نے کا انار دہ جا ےگاورنہ ہیں قدو ری نے بے 
نان :ا فقصان فا لکاانداذہہہ تایا کہ یکی پہائی موا ی ہو لی باک اس کے تصف سے بھی پپائی کے بی ےکم میں تو 
اسے نتصالن فا لکہاجا ۓےگااور خلاصہ مل نا شف سے مہ روابیت ےک نکی مسل جتنا ع جس ی اکر اس کے نیف ےک بیط 
اس متا ب کواہار وای کرد ہی ےکاا تار ہوا خطاضہ مج کہا کہ ہے ددایت تد ودک کے تالف ے۔او راک اس متا ج نے اجار 
وائیں نی سکیا لک گی سے پیا کاکام شر و کدی توا گل سے ا کی رضامت کی ظاہر ہ وگی۔ اپا اک کے بعد وای ہیں 
کر ےکااور ارم کے ےک فلا مکوا ہار وم لیا کر دہ ہیا ہ وکیا نذا کا عم بھی بین گی جیا عم ہوگا گی کے دویاٹوں میں 
اکر ایک ٹوٹ جاۓ تو یہ زر مس شا وکا ای سے اچاد مک کیا چاسکترہے راک چیا کے مالک نے اچارہ کے رح ہونے سے لے 
ی خرالی دو رکر وی نے ری کااخقیار تم ہو جات ۓےگااگر ان وول کے در میالن مدت کے بارے می اختلاف ہوا کے علا: مالک ن کہ 
کہ رف ایک ہین پان یں تھا مک نک ابی دار ےکہا کے دو مین تک چک بنلد ر تی اور انی ٹنیس تھا۔ توا یکر ا دا رکا قول متبوال 
ہوگا کی وک وواک خر ای کیو جہ سے دو ”یٹول ےکر ایے کے د ےکا کر ہر اے اور کر یکی بات مقبول مون ہۓے۔ 
ا کا ےکا مک کک بر باد ہو ہا ے۔ کیت ٹیس ڈالا جانے والاالی نگ ہو ہاے 

ان چگ یکاپالی تم ہد ہے کر ایے لیا ہو اغلام ہاگ جائے۔ اکر نی لگھ کاپان و ل 

ہوجاۓ پھر بھی دوگھردوہ رےکام نیس آنے کے تقایل با ہو۔ اکر تی کے سے ٹوٹ 
گر الک نے مخ جو کر ی ورس کراوبی۔ ما لک یتفصیبل. کم اقوال اہ ۔ 

و ۱ ۱ 

قال و اذا مات احد المتعاقدين وقد عقد الاجارۃ لنفسه انفسخت الاجارةء لانه لو بقى العقد تصير 
المنفعة المملوكة له او الاجرۃ المملوكة له لغير العاقد مستحقة بالعقدء لانه ينتقل بالموت الى الوارثء 
وذلك لا یجوزء وان عقدها لغيره لم تنفسخ مثل الو كيل والوصى والمتولى فی الوقف لانعدام ما اشرنا اليه من 
المعنى. 
رم نړوزی کہا ےک اکر اچارہ کے معا کر نے وانے دونوں ران یں ےکوی ایک م جاے اور معاممہ خور 
انی ذات کے ل ےکیاہو ن ک دوسر ےکی طرف ے وکال نہک ہو فو مر نے سے بی اجار ما ہو جا گا۔( ناخ امام شافیہ 
واوا و رى عر تلم ای تول سے۔ رم کی وک اصوٹی طور سے مر نے وا ےکی سار ی علکیت اس کے تار 


سے فک لکر اس کے ور کی کیت میں قل ہو یکی ے۔ ا باکر ا اجار مکو مفسوخ یا ب ل ترار تہ دیا ہاے توا یکی وچ سے اگر 


ان البدایہ دی ٠ ۱ ۲٢‏ خلا مم 


تک تی a‏ ں ہو جاۓ جو 


قیقت ٹیس معاعل کر نے ولا یں سے یا ر ل ہونا پا یں ے۔(ف یی ازفاح ن 
یس عق د اجار ٥کر‏ نے والا 020 کے کی چ رک ککیستکا مالک ہو ہاے)۔ 

وان عقد ھا الخ اور اچاد کا متام ہکر نے واے نے ہے محالمہ اس لے ٹیب ہکسی دوسرے کے لئ بل کیل یو ھی یا 
کی وتف کے وی ک ےکیاہوقوال کے مر نے سے اجادہ رنہ ہوگا کی وک جو وج ہم نے با نکی ہے ودای صورت می نمی پان 
ہا ے۔( ف“ سن اعات کے ر ےی وچ سےا یکا کن ای کے ور کو ل ہیں م وار اس طر ا تک ودار ث عقہ کے 
ار ا ا نکیا ما لک اتک مخ ہوجاتے۔ کی کیہ اس صورت یل عق رکر نے والا خود ہی دوسرے شف سکاناب تھا 
از اا ی کے مم نے سے معاللہ می کی نتصان یں آ گا ۔کیو 0808+ کا جا سی ماک ے وواب بھی موچور 


ےُ۔ 


چندمسائل 
ی ن ےک یکا جو رکرایہ پر لیاوہ ای کے سا ھ راستہ یل تھاکمہ اند رکا مالک م گیا تمہ اجار نہ ہوگااود ا کر اہے 
دا رکوہ اخقیار و کہ چا کک اسے نے جا ےکا موا لہ ع ےکر رکھا تماد ا کک سواہ وکر چلا جاے ۔ اور جو اجمرت نے ہو گی سے 


وی ا اكھرے۔ اس طر گذشنہ قاع ہے ہے ایک رور تک وجہ سے اسشاء مچھا جات ےگا 9ص ء ء0 ۱ 


ل نہ ادوا اول جاور سنہ اورت ی تی جس کے پا پاک سورت مال جیا نکیا جا کے ای عناء بر بچھ مشا نے 
فرمایا ےک اگ اس مہ دوسا الو جاور سکیا ہو پا کا تام ہو کد و اجار ور ہو جا ےگا اس طر اکر وال 


۰ 


کو تا ی موجود ہو تو بھی اجارہ م ہو جات ےگا کی کے اب مجبدری بای یں ری ے۔ المسوطا۔ والز خر ہ_ (۲)) از روش 


(مات ن )یش ےی ایی کوجون مطلق م وگ نواچارہ 7 نیس ہوگا۔ ا قلاصہ۔ 
(r)‏ 7 و "تورم ۶و کے سا تھے مقر رک لیا اس باپ کے مرنے 
ایا م ن ہکا ۔الاجناں۔(۴)اگر مرت متمینہ شخم ہونے سے یک کی وو دددھ مال رک اد یچ گیب اہارہ شح 


ہو ہا ےگا اا کے سل گر شت ونو لکی اجرت سے شد حاب سے لازم موی _ اکر ی( ۵ )ار وف کے واے نے ووی 


ز ین یا مکاناجارہ پر لگایا یکر بد رت مقر دہ کے اندر خی وہ گیا تو قیا کا تفاضا ہے کے دہاچارہہا ولا تو لکو 
و کر الا کا ے بن رکیلے۔ کنا ان ی ےک بے اچاپ ل چ الا رہ 


رخ نر کن ےدوس ہی ےکرک ےا نے 


ووا سپچ لے یہ معاللہ سکیا دی یادوسر ےکی طرف سے وی لباو ھی باتو ہو ۔کسی 
ن یکا ھاو راچا دلاو بن ےکر زامن چا تال چاو رکا مالک م گیا :انل 
یتیل اقوال ا ۔ولا گل 
قال ويصح شرط الخیارفی الاجارةء وقال الشافعی لا يصح لان الا سرد المعقود عليه 
بکمالە لو كان الخیار له لفوات بعضہء ولو كان للمواجر فلا يمكنه التسلیم ایضا على الكمال وکل ذلك یمنع 
الخيارء ولنا انه عقد معاملة لا یستحق القبض فيه فى المجلس فجاز اشتراط الخيار فيه كالبيع والجامع بينهما 
دفع الحاجةء وفوات بعض المعقود عليه فى الاجارة لا يمنع الرد بخيار العيب» فكذا بخيار الشرط بخلاف 


مین اابد اے جد یھ rrr‏ لر“ م 
البیعء وهذا لان رد الكل ممکن فى البيع دون الاجارة فیشترط فيه دونھا ولهذا يجبر المستاجر على الْقبْضِ اذا 
سلّم المواجر بعد مضى بعض المدة. 

ترجہ :۔ فدو ری نے فرمیا کہ اجار ہشن شرط خیار رکا اا طدخیار کے نے 
بعد ے شش رو ہوگی۔ امام امک بجی قول ہےر ای شر اک صورت یہ مو کہ یس نے بے مکان چا در پم ماہو ار کے حاب 
سے اس رط ب لیاکہ سے ن ون کک اخقیار ہوگا۔م)۔ وقال الشافعی الخ ادر اام غا کے فرایاے خا ا کن 
یں سب وتک اس کے قبول ھکر ےکی صورت میں نہ کرای دار اس وق ت کک کے تنام مود علی کو واب یکر کے کی وک 
اس عر ص ہکا متتور علیہ اما تم ہو کے ہیں۔ ی اکر خیار ایت ہو جا ئے یړت خیار کے اتد ر جو مناخ ہو کے ے وہ سب اس 
ط رج ضا ہگ کیہ ا کواب واب کر نا کن نہ داعال اک ای صورت میں سسارامتقودعلیہ وا کرد تامو تا ے او راگ ماک نے 
ا سے لے خاد رکھا ہو نوہ بھی تنام ”حقو علیہ ا یکر ای دا رکو سرد خی سکرسکتاہے۔ ٹن مہ ت شیار یل یھ منانعح تم ہو کے ہیں۔ 
وک کی ی کو وا کر نے سے سط بی اس کے بے صے ضا ہو گے ہیں اور ہے دو ول صور خی بی شوت خیار کے لے ماع ہیں۔ 

ولنا انه عقد الخ اور مار کید یل ہے س کہ اجار وکا معاطلہ مواو ض ہکا محامطہ ہت ہے۔ کی ہے کا کے مان نیس ہو تا سے 
ہلگ ای میں مالی محاوضہ ہو جا سے جس میں کا کے اندر ی ہکرناواجب نیل ہو جا ہے۔ ن ہے اجارہ یع صرف اور تم سلم 
کے ماد بھی یں ہے۔ اس بنا راس میں تاس کے ان رر کر لیزاش رط نویس ے۔ لبذر اس یں خیار شر طا رکھنا چائز ہوگا جاک 
س ش رط خیار رکھناجائزے اور کے پر ان کو تیا کر ےکی عل مت رک ہے ےک ضرورت مرو لکی ضرورت لور کی ہو۔ سن 
زی کر نے سے پیل اس میں دومن دنو کیک غور وخو کر لی باک بعر سکس یکو قان نہ ہو۔ پھر اجار ویش س ط رن خیار 
عی ب کی وچہ سے بعر بی وای یکر ےکی صو ر ت می بالا تا